حمد

  1. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    خدایا ہر اک جہاں ہے تیرا(حمد )

    خدایا ہر اک جہاں ہے تیرا ازقلم : محمد حسین مشاہدرضوی خدایا! ہر اک جہاں ہے تیرا زمیں ہے تیری زماں ہے تیرا کرم کی حد ہے نہ رحمتوں کی جو بحر ہے بیکراں ہے تیرا ہے ذرّے ذرّے میں تیرا جلوہ عیاں ہے کیا سب نہاں ہے تیرا گلوں کی نکہت ہے تیری نکہت نواے بلبل بیاں ہے تیرا وہ نورِ اوّل بِنائے عالم...
  2. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    تجھے حمد ہے

    تجھے حمد ہے کلام : محمد حسین مشاہدرضوی مری ابتدا مری انتہا ترے فضل سے تجھے حمد ہے یہ مرا بیان و مری زباں ترے فضل سے تجھے حمد ہے :a4: یہ شفق میں جو ہے حنائی رنگ،یہ جو مہر میں ہے طلائی رنگ یہ قمر کا نور بھی یا خدا ترے فضل سے تجھے حمد ہے :a4: یہ ستارے تارے یہ کہکشاں،یہ زماں زمین یہ آسماں...
  3. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    حمد باری تعالی (برزمین اعلیٰ حضرت )

    "واہ کیا جود و کرم ہے شہِ بطحا تیرا " از: ڈاکٹر صابر سنبھلی، انڈیا( آرزوے بخشش 2008ء ص25) نام لوں کیوں نہ شب و روز خدایا تیرا تو ہے معبود مرا ، اور میں بندہ تیرا کون سی جا ہے ، نہیں جس میں اُجالا تیرا کون سی شَے ہے وہ ، جس میں نہیں جلوہ تیرا تم ہوجائے گی اک روز یہ دنیا ساری ذکر لیکن کبھی کم...
  4. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    حمد باری تعالی

    حمدِ باریِ تعالیٰ از قلم : مشاہد رضوی بُطونِ سنگ میں کیڑوں کو پالتا ہے تُوہی صدف میں گوہرِ نایاب ڈھالتا ہے تُوہی دلوں سے رنج و الم کو نکالتا ہے تُوہی نفَس نفَس میں مَسرّت بھی ڈالتا ہے تُوہی وہ جنّ و انس و مَلک ہوں کہ ہوں چرند و پرند تمام نوعِ خلائق کو پالتا ہے تُوہی بغیر لغزشِ پا...
  5. ڈاکٹر مشاہد رضوی

    حمد و نعت و منقبت

    حمد ہے بے حد۔۔۔۔۔۔ از قلم : محمد حسین مشاہد رضوی حمد ہے بے حد مرے پروردگار ہے تو ہی معبود تو ہی کردگار حمد ہے خالق ، خداے کارساز تیری بخشش زندگیِ ذی وقار تجھ سے قائم ہیں جہاںکے کا روبار ذرّے ذرّے پر ہے تیرا اختیار نور تیرا ہر جگہ موجود ہے تیرا جلوہ ہر طرف ہے آشکار رنگ و نکہت پھول کو دیتا...
  6. محمد اسامہ سَرسَری

    ہے سلطانوں کا ایک سلطان اللہ(حمد)

    ہے سلطانوں کا ایک سلطان :a1: ہے حنان اللہ ، ہے منان :a1: :a4: مہیمن ، حفیظ اور نگہبان :a1: عفُو اور رحیم اور رحمٰن :a1: :a4: زباں سے بھی کہنا ہے آسان ’’:a1:‘‘ دلوں میں بسانا ہے ایمان ’’:a1:‘‘ :a4: سرور و مسرّت کا سامان :a1: دلِ صاحبِ دل کا ارمان :a1: :a4: نرالا ، اکیلا جہاں بان :a1: ہے خلاقِ...
  7. محمد اسامہ سَرسَری

    تیری حمد کے علاوہ ، کوئی مشغلہ نہیں ہے(حمد)

    وَتُعِزُّ مَن تَشَاءُ وَتُذِلُّ مَن تَشَاءُ تیرے ہاتھ میں ہے عزت ، تیرے ہاتھ میں ذلت تیرے ہاتھ میں ہے قدرت ، تیرے ہاتھ میں ہے قسمت وَتُعِزُّ مَن تَشَاءُ وَتُذِلُّ مَن تَشَاءُ جسے چاہے دے ضلالت ، چسے چاہے دے ہدایت جسے چاہے دے ہلاکت ، جسے چاہے دے حفاظت وَتُعِزُّ مَن تَشَاءُ وَتُذِلُّ مَن تَشَاءُ...
  8. محمد اسامہ سَرسَری

    تعریف رب کی جس نے ، سارا جہاں بنایا(حمد)

    تعریف رب کی جس نے ، سارا جہاں بنایا ہر شے کو حسن دے کر ، پیارا سماں بنایا مخلوق ساری اپنی ، قدرت سے ہے بنائی کیسی زمیں بچھائی ، کیا آسماں بنایا رسوائی ہو کہ عزت ، غم یا خوشی کی حالت اللہ نے ہی سارا ، سود و زیاں بنایا شب روز کو کیا ہے ، اک دوسرے میں داخل شمسی نظام سارا ، گردش کناں بنایا...
  9. محمد اسامہ سَرسَری

    جس بات میں اللہ کی تعریف ہو شامل(حمد)

    جس بات میں اللہ کی تعریف ہو شامل وہ بات پسندیدہ ہے ہر بات سے بڑھ کر اچھے تو بہت لگتے ہیں نظروں کو ہماری جچتے نہیں ہرگز مگر اس ذات سے بڑھ کر یہ ارض و سما سات بنائے ہیں اسی نے قادر ہے ، بنا سکتا ہے وہ سات سے بڑھ کر دکھ تو ہمیں طاقت سے زیادہ نہیں دیتا ہاں سکھ وہ عطا کرتا ہے اوقات سے بڑھ کر...
  10. محمد اسامہ سَرسَری

    حمد اور ثنا اس کی(حمد)

    آؤ ، ہم سبھی مل کے رات دن کہیں دل سے حمد اور ثنا اس کی لا اِلٰہَ اِلاَّ اﷲ لائقِ عبادت وہ قابلِ اطاعت وہ ہر جگہ عطا اس کی لا اِلٰہَ اِلاَّ اﷲ شمس اور قمر اس کے سارے بحر و بر اس کے طیر اور فضا اس کی لا اِلٰہَ اِلاَّ اﷲ سَرسَری جو اللہ سے مانگ لے کوئی بھی شے سنتا ہے خدا اس کی لا اِلٰہَ اِلاَّ اﷲ
  11. جیلانی

    کلام میاں محمد بخش از سیف الملوک ۔۔۔۔۔۔۔۔, اول حمد ثنا الٰہی

  12. نوید صادق

    حمدیہ قصیدہ ۔۔۔ قاضی حبیب الرحمٰن

    قاضی حبیب الرحمٰن حمدیہ قصیدہ زوروں پر ہے چشمہء نور اپنا ظرف، اپنا مقدور! شمسِ حقیقت کے ہوتے سارے وہم و گُماں کافور ایک ہَوا کی آہٹ پر ناچ اُٹھا شہرِ مَزمور! کسی خیال کی لذّت میں رہتا ہے غم بھی مَسرور ایک خَلا کی نسبت سے دل ہے خَلوت سے مَعمور جیسے ہے ہر چیز، یہاں...
  13. سویدا

    مائیکل جیکسن کی آواز میں حمد؟؟

    کیا یہ حمد واقعی مائیکل جیکسن کی آواز میں ہے ؟ http://www.dailymotion.com/video/x4ot99_michael-jackson-give-thanks-to-alla_music
  14. manjoo

    حمد

    حمد تو ہے لاثانی، نہیں تیرا کوئی ہمسر سارے جہاں میں اعلیٰ، بزرگ و برتر تیرا کرم ہے ہر وقت جاری و ساری اٹھا رہے ہیں سب فیض خشک و تر قادرِ مطلق، منصف ہے نام تیرا بے شک تو ہے سارے جہاں کا جان پرور اک تنکا تک بھی حکمت سے خالی نہیں عادل و واحد تو ہی ہے اس کا کارگر سب مشکلیں تو...
  15. کاشفی

    کلی کے بس میں، نہ کچھ گل کے اختیار میں ہے - ضامن جعفری

    حمدِ غفور و رحیم (ضامن جعفری) کلی کے بس میں، نہ کچھ گل کے اختیار میں ہے یہ حسنِ کل کی جھلک حسنِ مستعار میں ہے لب و زباں کی، فقط لرزشوں میں، لطف کہاں؟ مزہ، جو روح صدا دے، تَو ایک بار میں‌ہے ہَوا کے دوش پہ مرکز کی سمت خاک چلی تڑپ جو دل میں تھی میرے، وہی غبار میں ہے فرازِ طُور پہ، جانے...
  16. کاشفی

    وہی جو خالق جہاں کا ہے وہی خدا ہے وہی خدا ہے - افتخار راغب

    بسم اللہ الرحمن الرحیم سبحان اللہ وبحمدہ سبحان اللہ العظیم حمد باری تعالٰی (از: افتخار راغب) وہی جو خالق جہاں کا ہے وہی خدا ہے وہی خدا ہے جو روح جسموں میں ڈالتا ہے وہی خدا ہے وہی خدا ہے وہ جس کی حکمت کی سرفرازی، وہ جس کی قدرت کی کارسازی ہر ایک ذرّہ میں رونما ہے وہی خدا ہے وہی خدا...
  17. کاشفی

    صبا اکبر آبادی ہر طرف کائنات میں تم ہو - از: صبا اکبر آبادی

    بسم اللہ الرحمن الرحیم سبحان اللہ وبحمدہ سبحان اللہ العظیم حمد باری تعالٰی (از: صبا اکبر آبادی) ہر طرف کائنات میں تم ہو صرف بزمِ حیات میں تم ہو کچھ نہ تھا کائنات میں تم تھے کچھ نہیں کائنات میں تم ہو ہر عدم ہر وجود تم سے ہے یعنی ہر نفی ہر ثبات میں تم ہو اور کچھ بھی نظر نہیں...
  18. کاشفی

    صبا اکبر آبادی پیش نگاہ خاص و عام، شام بھی تو، سحر بھی تو - صبا اکبر آبادی

    حمد باریء تعالٰی (صبا اکبر آبادی) پیش نگاہ خاص و عام، شام بھی تو، سحر بھی تو جلوہ طراز اِدھر بھی تو ، روح نواز اُدھر بھی تو ایک نگاہ میں‌جلال، ایک نگاہ میں جمال منزل طور پر بھی تو، مسند عرش پر بھی تو عجز و نیاز بندگی تیری نوازشوں سے ہے حاکم ہر دعا بھی تو، بارگہ اثر بھی تو پردہء...
  19. کاشفی

    درد دونوں جہاں کو روشن کرتا ہے نور تیرا - خواجہ میر درد

    حمد باریء تعالی سبحان اللہ وبحمدہ سبحان اللہ العظیم دونوں جہاں کو روشن کرتا ہے نور تیرا اعیان ہیں مظاہر، ظاہر ظہور تیرا یاں افتقار کا تو امکاں سبب ہوا ہے ہم ہوں نہ ہوں ولے ہے ہونا ضرور تیرا باہر نہ ہوسکی تو قیدِ خودی سے اپنی اے عقل بے حقیقت دیکھا شعور تیرا ہے جلوہ گاہ تیرا کیا...
  20. کاشفی

    درد مقدور ہمیں کب ترے وصفوں کی رقم کا - خواجہ میر درد

    حمد باریء تعالی سبحان اللہ وبحمدہ سبحان اللہ العظیم مقدور ہمیں کب ترے وصفوں کی رقم کا حقا کہ خداوند ہے تو لوح و قلم کا جس مسند عزت پہ کہ تو جلوہ نما ہے کیا تاب گزر ہووے تعقل کے قدم کا بستے ہیں ترے سائے میں سب شیخ و برہمن آباد ہے تجھ سے ہی تو گھر دَیر و حَرم کا ہے خوف اگر جی میں...
Top