Khursheed

محفلین
مسکراتے ہوئے سُرخ ہونٹوں تلے
جگمگائے ترے موتیوں کی دمک

جب میں تھک ہار کے پاس آیا ترے
ہار بانہوں کے ڈالے گلے میں مرے
اپنے ہاتھوں مرے بال بکھرا دیے
گدگدائے تری چوڑیوں کی کھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔

اک مصور کی جیسے ہو تصویر تم
یا ہو جنت سے اتری کوئی حور تم
میری مشتاق نظروں سے شرماؤ تم
گورے گالوں پہ آئے گلابی چمک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔۔۔۔

جیسے مندر میں سونے کی اک مورتی
ہاتھ باندھے مقابل پجارن کھڑی
چاندی کی گھنٹیاں جب بجانے لگی
گنگنائے تری پائلوں کی چھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔

دیکھو بارش کی بوندوں میں ٹھندی ہوا
مہکے خوش رنگ پھول ہے معطر فضا
یہ سہانا سماں بھی ادھورا لگا
یاد آئے ترے بانکپن کی جھلک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔

جب ہو قوسِ قزح سے سجا آسماں
اور ہوں پھولوں پہ اڑتی ہوئی تتلیاں
تو تصور میں آتا ہے چہرہ ترا
جھلملائے تری اوڑھنی کی دھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔
 

Khursheed

محفلین
مسکراتے ہوئے سُرخ ہونٹوں تلے
جگمگائے ترے موتیوں کی دمک

جب میں تھک ہار کے پاس آیا ترے
ہار بانہوں کے ڈالے گلے میں مرے
اپنے ہاتھوں مرے بال بکھرا دیے
گدگدائے تری چوڑیوں کی کھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔

اک مصور کی جیسے ہو تصویر تم
یا ہو جنت سے اتری کوئی حور تم
میری مشتاق نظروں سے شرماؤ تم
گورے گالوں پہ آئے گلابی چمک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔۔۔۔

جیسے مندر میں سونے کی اک مورتی
ہاتھ باندھے مقابل پجارن کھڑی
چاندی کی گھنٹیاں جب بجانے لگی
گنگنائے تری پائلوں کی چھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔

دیکھو بارش کی بوندوں میں ٹھندی ہوا
مہکے خوش رنگ پھول ہے معطر فضا
یہ سہانا سماں بھی ادھورا لگا
یاد آئے ترے بانکپن کی جھلک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔

جب ہو قوسِ قزح سے سجا آسماں
اور ہوں پھولوں پہ اڑتی ہوئی تتلیاں
تو تصور میں آتا ہے چہرہ ترا
جھلملائے تری اوڑھنی کی دھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔
 

محمد عبدالرؤوف

لائبریرین
جو آپ نے "پابندِ بحور شاعری" زمرے میں لڑی بنائی تھی اسی کا زمرہ تبدیل کرا لیتے، خیر اب آپ پہلی لڑی کے مراسلے کے نیچے دیکھیں رپورٹ کا آپشن ہے وہاں جا کر رپورٹ کر دیں تو منتظمین اسے حذف کر دیں گے
 

Khursheed

محفلین
سر محمد احسن سمیع صاحب حوصلہ افزائی کا شکریہ
مسکرانے کا منظر ہے کوئی مسکرا رہا ہے اور اس کے سرخ ہونٹوں کے نیچے دانت موتیوں کی طرح دمک رہے ہیں
 
مسکراتے ہوئے سُرخ ہونٹوں تلے
جگمگائے ترے موتیوں کی دمک
یہاں دیکھیے ۔دمک نہیں جگمگاتی ۔بلکہ موتی جگمگا سکتے ہیں ۔ اس کا خیال کیجیے۔
گدگدائے تری چوڑیوں کی کھنک
کھنک کے لیے گدگدانا سے بہتر مناسبت والا لفظ آنا چاہیئے ۔
مہکے خوش رنگ پھول ہے معطر فضا
یہ مصرع وزن سے گر رہا ہے ۔
چاندی کی گھنٹیاں جب بجانے لگی
گھنٹیاں چاندی کی کیوں بھئی ؟ چاندی لفظ ذرا دبتا محسوس ہو رہا ہے ۔ گھٹیاں تو آہنی ہوسکتی ہیں ۔
دیکھو بارش کی بوندوں میں ٹھندی ہوا
دیکھو اور تیرا ۔ یہ جمع نہ کریں پوری نظم میں ایک ہی انداز اختیار کریں ۔ یا تو دیکھ تیرا یا دیکھو تمہارا ۔
اور ہوں پھولوں پہ اڑتی ہوئی تتلیاں
یہاں "ہوں" کی کیا ضرورت ہے ؟ اس کے بغیر مصرع مکمل ہے اور یہ زائد لگ رہا ہے ۔وزن بھی ٹھیک نہیں اسی وجہ سے۔
 

الف عین

لائبریرین
راحل سے متفق ہوں اور بھائی عاطف سے بھی
کچھ مزید....

مسکراتے ہوئے سُرخ ہونٹوں تلے
جگمگائے ترے موتیوں کی دمک

جب میں تھک ہار کے پاس آیا ترے
ہار بانہوں کے ڈالے گلے میں مرے
اپنے ہاتھوں مرے بال بکھرا دیے
گدگدائے تری چوڑیوں کی کھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔
.. اس بند میں پہلے کہانی بیان کی گئی ہے، پگر ٹیپ کے مصرعے میں گدگدائے تمنائی کا صیغہ کیوں؟ اس کی معنویت سمجھ نہیں سکا

اک مصور کی جیسے ہو تصویر تم
یا ہو جنت سے اتری کوئی حور تم
میری مشتاق نظروں سے شرماؤ تم
گورے گالوں پہ آئے گلابی چمک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔۔۔۔
... بند کے مصرعے آزاد نظم ہو گئے! کوئی قافیہ نہیں!

جیسے مندر میں سونے کی اک مورتی
ہاتھ باندھے مقابل پجارن کھڑی
چاندی کی گھنٹیاں جب بجانے لگی
گنگنائے تری پائلوں کی چھنک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔
... نقرئی گھنٹیاں... کہا جا سکتا ہے

دیکھو بارش کی بوندوں میں ٹھندی ہوا
مہکے خوش رنگ پھول ہے معطر فضا
یہ سہانا سماں بھی ادھورا لگا
یاد آئے ترے بانکپن کی جھلک

مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔
.. شتر گربہ کی بات ہو چکی، لیکن ٹیپ کے مصرعے میں وہی تمنائی صیغہ! جو بند کے ماضی سے میل نہیں کھاتا

جب ہو قوسِ قزح سے سجا آسماں
اور ہوں پھولوں پہ اڑتی ہوئی تتلیاں
تو تصور میں آتا ہے چہرہ ترا
جھلملائے تری اوڑھنی کی دھنک
تو تصور میں تنافر ہے اگرچہ تو پورا ادا ہو رہا ہے
 
Top