سیدعاطف علی

  1. Khursheed

    ایک نظم میں منظر نگاری

    مسکراتے ہوئے سُرخ ہونٹوں تلے جگمگائے ترے موتیوں کی دمک جب میں تھک ہار کے پاس آیا ترے ہار بانہوں کے ڈالے گلے میں مرے اپنے ہاتھوں مرے بال بکھرا دیے گدگدائے تری چوڑیوں کی کھنک مسکراتے ہوئےسرخ ہونٹوں تلے۔۔۔۔۔ اک مصور کی جیسے ہو تصویر تم یا ہو جنت سے اتری کوئی حور تم میری مشتاق نظروں سے شرماؤ تم...
  2. Khursheed

    مودٔبانہ جسارت (اصلاح کی گذارش)

    یارب میرے جذبات کو ایسی زباں ملے حالِ دل وہ جان لے مگر بنا کہے محبتوں کی چاہ ہو دِل کو دِل سے راہ ہو دو جسم ہوں ایک جان میں نہ تُو رہے کانٹا چُبھے مجھے اگر درد ہو اُسے روئے اُس کا دِل وہاں آنسو مراگرے ہو ہمارے مُلک کا ایسا نظامِ زندگی ہر بشر آزاد ہو انصاف بھی ملے بچوں کی...
  3. فاخر

    ایک سوال: بحور و اوزان کے متعلق :

    اہل عروض و اربابِ فن کی خدمت میں .................. السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ ! کل ناگاہ کسی شاعر کے ایک کلام پر نظر پڑی ،غزل رواں تھی اس لیے طبعاً اس کی طرف مائل ہوگیا ۔ اس کی تقطیع کی تو معلوم ہوا کہ یہ غزل ’’متدارک مسدس سالم بحر‘‘ میں ہے ۔علامہ سیمابؔ اکبرآبادی کی کتاب ’’رازِ عروض...
  4. جاسمن

    مبارکباد سید عاطف علی کے چھے ہزار مراسلے

    سید عاطف علی بھائی نے سات سالوں میں چھے ہزار مراسلوں کا سنگِ میل عبور کر لیا ہے۔ محمد عدنان اکبری نقیبی جھنڈیاں سجا چکے ہیں اور غبارے لگا رہے ہیں۔ محفلین سیدعاطف علی کو ایک محبت کرنے والے اور ہمدرد شخص کے طور پہ جانتے ہیں۔ سید صاحب کبھی کھیلوں کے زمرہ میں پائے جاتے ہیں تو کبھی ادب کے۔ کبھی...
  5. محمد شکیل خورشید

    اگلی غزل برائے اصلاح

    آنکھ میں اک سوال ہوتا ہے بس یونہی عرضِ حال ہوتا ہے بات میں بھی تھکن جھلکتی ہے اور لہجہ نڈھال ہوتا ہے بس کسی دن وہ یاد آتے ہیں اور وہ دن کمال ہوتا ہے ایک لمحہ تری جدائی میں جیسے فرقت کا سال ہوتا ہے رنج تو عشق نے اٹھائے ہیں حسن کیوں پُر ملال ہوتا ہے شہر میں یہ سکوت ہے یا حبس سانس لینا محال ہوتا...
  6. سید عاطف علی

    والد صاحب کی ایک نعت احباب کے لیے۔ضیائے خورشید سے منتخب ۔یہ قلب و نظر ہے برائے مدینہ

    نعت نبیﷺ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ قلب و نظر ہے برائے مدینہ نثارِ مدینہ ،فدائے مدینہ مدینے کے دن ہوں مدینے کی راتیں خدا دیکھیے ! کب دکھائے مدینہ وہ ذکر نبی ﷺ ہو کہ ذکرِ خدا ہو مجھے ہر طرح یاد آئے مدینہ مقام آپ کا عرشِ اعظم سے آگے زہے شانِ خیر الورائے مدینہ مدینہ مدینہ مدینہ مدینہ مجھے ہر طرح یاد...
  7. سید عاطف علی

    میری ایک تازہ غزل ... نویں غزل.کوئے بتاں میں تیرا نشاں ڈھونڈتے رہے

    عید الاضحی کے دن میری آٹھویں غزل کے بعد کچھ اشعار ایک تازہ غزل کے پیش ہیں تمام احبابِ محفلین ،دوستوں اور اساتذہ کی تنقیدی نظر کے لیے۔کہیں کہیں کچھ کسر لگ رہی ہے۔ کوئے بتاں میں تیرا نشاں ڈھونڈتے رہے ہم لامکاں میں ایک مکاں ڈھونڈتے رہے مسحور اک طلسم ِ ندیدہ سے عمر بھر تھامے چراغ تیرا نشاں...
Top