1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

اردو میں تذکیر و تانیث کو سمجھنا

سرفراز احمد نے 'لکھنے پڑھنے میں مدد' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 5, 2020

  1. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    13,661
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    لیکن بھئی پھر بھی ۔ یہ نہ بھولے کہ۔
    جو ناز ہو بھی تو بے لذت نیاز نہیں ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 3
  2. ٹائپنگ ماسٹر

    ٹائپنگ ماسٹر محفلین

    مراسلے:
    35
    اس سلسلے میں مرحوم معین اختر کا ایک ٹی وی کلپ نظر سے گزرا‘ جس میں صاحب نے ایک لطیفہ سنایا۔ کہتے ہیں کہ :-
    ایک پارک میں دو اشخاص بیٹھے تھے‘ اچانک ایک بول اُٹھا،
    ’’درخت کی شاخ پہ بیٹھ کے بلبل بولی‘‘
    دوسرے نے فوراً لقمہ دیا، ’’نہیں صاحب! ایسے نہیں بولتے‘‘ آپ کو کہنا چاہیے کہ ’’درخت کی شاخ پہ بیٹھ کے بلبل بولا‘‘
    خیر پہلے نے کہا نہیں بھائی صحیح یہ ہے کہ
    ’’درخت کی شاخ پہ بیٹھ کے بلبل بولی‘‘
    دوسرے صاحب بھی اَڑ گئے کہ ’’درخت کی شاخ پہ بیٹھ کے بلبل بولا‘‘
    خیر دونوں میں تکرار بڑھی تو اُنہوں نے فیصلہ کیا کہ پاس سے جاگنگ کرکے گزرتے ایک بڑے میاں سے پوچھیں، جو اُن کے خیال میں زیادہ پڑھے لکھے تھے اور پختہ عمری کے باعث اُردو زبان دانی کو زیادہ جانتے ہوں گے‘ چنانچہ بڑے میاں کو روکا تاکہ اُن سے تصحیح کروائی جاسکے کہ کون صحیح کہہ رہا ہے‘
    بڑے میاں نے دونوں کو غور سے سنا
    ایک نے کہا کہ
    ’’درخت کی شاخ پہ بیٹھ کے بلبل بولی‘‘
    دوسرے نے کہا کہ ’’درخت کی شاخ پہ بیٹھ کے بلبل بولا‘‘
    بڑے میاں نے کہا، جی نہیں آپ دونوں ہی غلط بول رہے ہو۔
    دونوں نے حیرانگی سے اُن سے استفسار کیا کہ اچھا آپ فرما دیں کہ دُرست جملہ کیا ہوسکتا ہے۔
    بڑے میاں نے ایک لمحہ توقف کیا‘ گہری سوچ میں خود کو غرق کیا پھر طویل اور گہری سانس لی اور بولے کہ لغت کے اعتبار سے بالکل ٹھیک جو ہے وہ یہ ہے کہ

    ’’درختاں کی شاخ پہ بیٹھ کو بُلبُلا بولاتئیں‘‘
    اور بڑے میاں کی پختہ عمری کے باعث اُن سے اُردو زبان دانی کی بابت مستند معلومات ملنے کا تصور کرکے اُن سے پوچھنے کی غلطی کرنے والے دونوں افراد سر پکڑ کر بیٹھ گئے۔
     
    آخری تدوین: ‏جنوری 11, 2020
    • پر مزاح پر مزاح × 5
  3. عدنان عمر

    عدنان عمر محفلین

    مراسلے:
    1,303
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    اردو میں چاند مذکر ہے لیکن چاندنی مونث ہے۔:)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  4. یاقوت

    یاقوت محفلین

    مراسلے:
    550
    موڈ:
    Breezy
    مرشدی یوسفی صاحب نے بھی ""زرگزشت"" میں ""خان سیف الملوک خان"" والے باب میں یہ بات لکھی ہے الفاظ میں کمی بیشی ہوسکتی ہے لیکن مدعا یہی ہے۔
    فرماتے ہیں کہ ""تلور اور اردو زبان کی تذکروتانیث میں فرق کرنے کیلئے چھٹی حس درکار ہے""
     
    • پر مزاح پر مزاح × 3
  5. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,983
    اور کڑوا سچ بھی یہی ہے کہ بہت کم زبانوں میں تذکر و تانیث کے باقاعدہ اصول موجود ہیں۔
     
    • متفق متفق × 1
  6. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    30,983
    اردو و پشتو کے مذکر مونث میں کافی فرق ہے۔ تو ظاہر ہے دیگر زبانوں میں بھی ہوگا۔ اس حوالہ سے ایک لطیفہ نما سچا واقعہ یاد آیا۔
    میرے نانا جان مرحوم دوسری جنگ عظیم کے دوران سنگاپور میں جاپانیوں کی جیل میں قید تھے۔ ان کے ساتھ بڑی تعداد میں دیگر ہندوستانی فوجی بھی تھے جو برما کے محاذ پر شکست کھا کر جاپانیوں کے ہتھے چڑھ گئے تھے۔ وہ بتاتے ہیں کہ جیل کی اذیت اور بوریت کم کرنے کیلئے قیدی ایک ساتھی پٹھان کو تقریبا روزانہ تختہ مشق بناتے۔
    اسی سلسلہ میں ایک روز سب نے مل کر اس سے پوچھا کہ شیر انڈہ دیتی ہے یا بچہ دیتی ہے؟ اپنا کافی ریکارڈ لگوانے کے بعد بولے: "خوچا تم ہم کو بیوقوف سمجھتا! شیر انڈہ دیتی ہے نہ بچہ دیتی ہے، اس کی عورت دیتی ہے!" :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 4
  7. ٹائپنگ ماسٹر

    ٹائپنگ ماسٹر محفلین

    مراسلے:
    35
    بھائی اگر آپ کو یہ پتہ نہیں کہ فاعل مذکر ہے یا مؤنث تو آپ اس کا کھانے کا طریقہ دیکھیں۔
    اگر وہ نخرے دِکھا دِکھا کر تھوڑا تھوڑا چگتی ہے پھر اِدھر اُدھر دیکھتی ہے پھر تھوڑا تھوڑا چگتی ہے تو مطلب اُس کو اپنی ڈائیٹ کا خیال ہے لہٰذا مؤنث ہے۔
    اگر وہ سر جھکا کر بیبا بچہ بن کر بغیر نخرے دِکھائے دَھڑلّے سے نان سٹاپ چگتا ہے اور کھانے پر ٹوٹ پڑتا ہے تو مذکر ہے۔
    وما علینا الا البلغ ۔۔۔۔۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  8. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    13,661
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    بھائی ماسٹر صاحب ! نہ تو نخرے دکھانا تانیث کی علامت ہے نہ سر جھکانا اور بے خوف ہونا تذکیر کی علامت ہے ( خصوصا اس زمانے میں :) :) :) ) ۔ البتہ یہ جان کر خوشی ہوئی کہ آپ اس زمانے میں ہو کر بھی کسی بھلے زمانے میں رہتے ہیں ۔ آپ اس زمانے میں اگر یہ اصول لاگو کر کے بولیں گے تو آپ کی گفتگو یکسر دگرگوں ہو جانے کا اندیشہ ہو گا :) ۔
    در اصل قاعدے کسی بھی زبان میں زبان میں زبان بولنے اور لکھنے والوں کی اتباع سے سیکھے جائیں گے اور بس ۔اس کا کوئی اور طریقہ نہیں ۔
     
    • متفق متفق × 2
  9. فہد اشرف

    فہد اشرف محفلین

    مراسلے:
    7,495
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Relaxed
    درست کیا ہے؟
    آنکھوں کو کھلا رکھنے تلقین یا آنکھوں کو کھلی رکھنے کی تلقین
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    13,661
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    آنکھوں کو کھلا رکھنے کی تلقین اور
    آنکھیں کھلی رکھنے کی تلقین
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • متفق متفق × 1
  11. فہد اشرف

    فہد اشرف محفلین

    مراسلے:
    7,495
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Relaxed
    بہت شکریہ۔ کچھ وضاحت ہو سکتی کہ آنکھوں کے ساتھ کھلا اور آنکھیں کے ساتھ کھلی کیوں ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  12. سید عاطف علی

    سید عاطف علی لائبریرین

    مراسلے:
    13,661
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Cheerful
    گویم مشکل وگرنہ گویم مشکل
    ویسے آپ کی رائے کیا ہے ؟
    ۔
    آنکھیں کھلی اس لیے کہ کھلی یہاں آنکھوں کی صفت ہے جو موصوف سے متصل ہے اور اس لیے موصوف کے تابع ہے ۔ یہ تو ہو نہیں سکتا کہ آنکھیں کھلا رکھو۔آنکھیں کھلا رہ گئیں وغیرہ۔
    اب جب "کو" استعمال ہو گا تو کھلا ایک براہ راست متصل صفت نہیں بلکہ ایک حال کا بیان ہے جس کا موصوف سے بے نیاز ہونا زیادہ قرین بیان ہے یعنی اب جنس میں صفت کا تابع ہونا ضروری نہیں رہا ۔

    واللہ اعلم ۔ یہ میری اپنی ہی رائے (ہانک) ہے ۔
    اس میں اپنے اساتذہ کی رائے بھی لی جائے تو اچھا ہو ۔
    الف عین ظہیراحمدظہیر محمّد احسن سمیع :راحل:
    محمد وارث محمد خلیل الرحمٰن
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
    • متفق متفق × 1
  13. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    2,452
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    یہ بھی بتا دیں کہ اس علاقے میں خالہ ہوتا ہے اور پھوپھا ہوتی ہے؟
     
  14. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    2,452
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    عروج۔ فردوس (جمال یا عاشق اعوان)۔ نسیم (احمد۔ آراء)۔
     
  15. فہد اشرف

    فہد اشرف محفلین

    مراسلے:
    7,495
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Relaxed
    "آنکھیں کھلی رکھنے" میں تو کوئی مسئلہ نہیں کیونکہ آنکھیں مؤنث ہے۔ "آنکھوں کو کھلا رکھنے" کی وجہ سمجھ میں نہیں آ رہی تھی جب کہ سپنا "کھلی آنکھوں" سے دیکھا جاتا ہے۔ آپ کی وضاحت سے بات کچھ کچھ سمجھ میں آ گئی ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2
  16. AinAlif

    AinAlif محفلین

    مراسلے:
    46
    جھنڈا:
    Pakistan
    :noxxx:
     
  17. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    فہد بھائی ، مسئلۂ مذکور کا تعلق حروفِ ربط سے ہے ۔ حروفِ ربط کو حروفِ عامل بھی کہا جاتا ہے ۔ اردو میں نو حروفِ ربط ہیں: کا ، کی ، کے ، کو ، نے ، پر ، سے ، میں ، تک ۔ پہلے تین تو حروفِ اضافت ہیں (مثلاً نکاح کا چھوہارا ، چھوہارے کی گٹھلی ، گٹھلی کے ٹکڑے وغیرہ) ۔ آخری چار حروف علاماتِ ظرف ہیں اور زمان و مکان کو ظاہر کرتے ہیں ( چوبارے سے چھوہارے تک ، چھوہارے میں گٹھلی ، گٹھلی پر جھگڑا وغیرہ) ۔ جبکہ "نے" علامتِ فاعل ہے اور "کو" علامتِ مفعول ۔ مثلاً بکری نے دنبے کو ٹکر ماری ۔

    ان حروف کو حروفِ عامل اس لئے کہا جاتا ہے کہ جملے میں ان کی آمد سے اسم اور فعل کی لفظی ہیئت میں کچھ تبدیلیاں واقع ہوتی ہیں ۔ یعنی یہ حروف اسم اور فعل پر عمل کرکے ان میں لفظی تغیر پیدا کرتے ہیں ۔ ویسے تو یہ موضوع قواعد کی کتابوں میں کئی صفحات پر محیط ہوتا ہے لیکن میں تفصیلات میں جائے بغیر چند متعلقہ بنیادی نکات مثالوں کے ذریعے واضح کرنے کی کوشش کرتا ہوں ۔ تفصیل کے لئے قواعد کی کوئی بھی کتاب دیکھ لیجئے ۔ مسئلۂ مذکور میں علامتِ مفعول "کو" کی وجہ سے جو صرفی تبدیلیاں پیدا ہوتی ہیں انہیں دیکھئے:
    1۔ کتاب پڑھی جاتی ہے ، کتابیں پڑھی جاتی ہیں (کتاب اور کتابیں مؤنث ہیں اور ان کا فعل بھی مؤنث ہے)
    2۔ کتاب کو پڑھا جاتا ہے ، کتابوں کو پڑھا جاتا ہے ( یہاں علامتِ مفعول "کو" لگانے سے فعل کی جنس بھی تبدیل ہوگئی اور کتابیں بھی کتابوں میں تبدیل ہوگئیں ۔)
    3۔بجلی گرائی جاتی ہے ۔ (بجلی مؤنث ہے سو اس کا فعل بھی مؤنث )
    4۔ بجلی کو گرایا جاتا ہے ۔( "کو" لگانے کی وجہ سے فعل مذکر ہوگیا)
    5۔بجلیاں گرائی جاتی ہیں ( فعل اور مفعول دونوں مؤنث ہیں )
    6۔ بجلیوں کو گرایا جاتا ہے ( فعل مذکر کی شکل اختیار کرگیا ۔ مفعول کی شکل بھی تبدیل ہوگئی۔)
    7۔ آنکھ کھلی رکھئے ۔ آنکھ کو کھلا رکھئے
    8۔ آنکھیں کھلی رکھئے ۔ آنکھوں کو کھلا رکھئے
    9۔ آنکھیں کھلی رکھنے کی تلقین ۔ آنکھوں کو کھلا رکھنے کی تلقین

    خلاصہ ان ساری مثالوں کا یہ ہے کہ جب جملۂ مجہول میں مفعول کے بعد حرفِ عامل "کو" آجائے تو فعل مذکر بن جائے گا خواہ مفعول مؤنث ہی کیوں نہ ہو ۔ مفعول مذکر کی صورت میں تو فعل مذکر ہی رہتا ہے ۔ مثلاً مضمون لکھا جاتا ہے اور مضمون کو لکھا جاتا ہے ۔ لیکن کتاب لکھی جاتی ہے اور کتاب کو لکھا جاتا ہے ۔ وغیرہ وغیرہ

    فہد بھائی ، امید ہے اب وضاحت ہوگئی ہوگی ۔ اب بھی کوئی بات تشریح طلب رہ گئی ہو تو بلا تکلف لکھ دیجئے ۔ ان شاء اللہ روزوں میں دعا کروں گا اور عید بعد مزید کچھ لکھنے کی کوشش کروں گا ۔ :):):)
     
    • زبردست زبردست × 3
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    36,447
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کیا نکاح کی تقریب میں شرکت کر کے آ رہے تھے؟
    بالفاظ دیگر، 'کو' لگانے سے فاعل بدل جاتا ہے۔ پڑھنا فعل مذکر ہے اس لئے کتاب/کتابوں کو پرھا جاتا ہے۔ یعنی فاعل اس صورت میں کتاب نہیں رہی، بلکہ پرھنے کا فعل ہو گیا ہے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. ظہیراحمدظہیر

    ظہیراحمدظہیر محفلین

    مراسلے:
    3,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Busy
    اعجاز بھائی ، فاعل تبدیل نہیں ہوتا ۔ "کو" علامت مفعول ہے اس لئے مفعول اور اس سے متعلق فعل میں تغیر پیدا کرتا ہے ۔ یہ تغیر ہر زمانے میں نہیں بلکہ چند مخصوص زمانوں ہی میں پیدا ہوتا ہے ۔ مثلاً دلہن کتابیں پڑھتی ہے ، دلہن کتابوں کو پڑھتی ہے ۔ فعل میں کوئی تغیر واقع نہیں ہوا ، صرف مفعول منصرف ہوگیا ۔ دلہن نے کتابیں پڑھیں ، دلہن نے کتابوں کو پڑھا ۔ یہاں زمانہ ماضی مطلق میں مفعول اور فعل دونوں منصرف ہوگئے ۔ جیسا کہ پہلے لکھا کہ مفعول مذکر کیلئے فعل ہمیشہ مذکر ہی رہتا ہے ۔ دولہا نے چھوہارا کھایا ، دولہا نے چھوہارے کو کھایا وغیرہ ۔
    بالکل ایسا ہی تھا اعجاز بھائی ۔ حیرت کی بات ہے ۔ آپ کو کیسے پتہ چلا؟!
    :D
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    40,893
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Aggressive
    دنیا میں تذکیر و تانیث کا سٹینڈرڈ ہونا چاہیئے۔ اردو اور فراسیسی میں ایک شے ایک ہی جنس ہو یہ نہیں کہ زبان کے ساتھ جنس بھی بدل جائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر