شفیق خلش

  1. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: پیار ::::: Shafiq Khalish

    شفیق خلش پیار ہمارا پیار نہ دِل سے کبھی بُھلا دینا ہمیشہ جینے کا تم اِس سے حوصلہ دینا بھٹک پڑوں یا کبھی راستہ نظر میں نہ ہو ! ستارہ بن کے مجھے راستہ دِکھا دینا دیے تمام ہی یادوں کے ضُوفشاں کرکے ہو تیرگی کبھی راہوں پہ تو مِٹا دینا تم اپنے پیار کے روشن خوشی کے لمحوں سے غموں سے بُجھتے...
  2. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: یا خُدا کچھ آج ایسا رحم مجھ پہ کرجائیں ::::: Shafiq Khalish

    یا خُدا کچھ آج ایسا رحم مجھ پہ کرجائیں! شفیق خلش یا خُدا کچھ آج ایسا رحم مجھ پہ کر جائیں اپنے اِک تبسّم سے زخْم میرے بھرجائیں ہو کوئی کرشمہ اب، جس کی مہربانی سے ساتھ اپنے وہ ہولیں، یا ہم اُن کے گھرجائیں دُور ہو سیاہی بھی وقت کی یہ لائی سی اپنی خوش نوائی سے روشنی جو کرجائیں روشنی مُدام...
  3. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: دِل میں ہجرت کے نہیں آج تو کل ہوں گے خلش ::::: Shafiq Khalish

    غزلِ شفیق خلش دِل میں ہجرت کے نہیں آج تو کل ہوں گے خلش زخم ہوں گے کبھی لمحے، کئی پَل ہوں گے خلش بے اثر تیرے کِیے سارے عمل، ہوں گے خلش جو نہیں آج، یہ اندیشہ ہے کل ہوں گے خلش زندگی بھر کے لئے روگ سا بن جائیں گے! گرنہ فوراّ ہی خوش اسلوبی سے حل ہوں گے خلش کارگر اُن پہ عملِ راست بھی ہوگا...
  4. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: مِری حیات پہ حق تجھ کو ہے صنم کِتنا ::::: Shafiq Khalish

    غزلِ شفیق خلش مِری حیات پہ حق تجھ کو ہے صنم کِتنا ہے دسترس میں خوشی کتنی اور الم کِتنا دُھواں دُھواں سا مِرے جسم میں ہے دَم کِتنا کروں گا پیرَہن اشکوں سے اپنے نم کِتنا کبھی تو رحم بھی آئے مچلتے ارماں پر ! خیال و خواب میں رکھّوں تجھے صنم کِتنا گلو خلاصی مِری ہو بھی پائے گی، کہ نہیں رہے گا...
  5. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: مجھ سے کیوں بَد گُمان ہے پیارے ::::: Shafiq Khalish

    غزلِ شفیق خلش مجھ سے کیوں بدگُمان ہے پیارے تجھ پہ صدقے یہ جان ہے پیارے ہلکی لرزِش سے ٹُوٹ جاتا ہے دِل وہ کچّا مکان ہے پیارے میں ہی کیوں موردِ نِشانہ یہاں مہرباں آسمان ہے پیارے کب اِشارہ ہو سب اُلٹنے کا مُنتظر پاسبان ہے پیارے کیوں نہ جمہوریت یہاں پَھلتی اِک عجب داستان ہے پیارے چور...
  6. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: اِس دِل کا خوُب رُوؤں پہ آنا نہیں گیا ::::: Shafiq Khalish

    غزلِ شفیق خلش اِس دِل کا خوُب رُوؤں پہ آنا نہیں گیا یہ شوق اب بھی جی سے پُرانا نہیں گیا میں دیکھتا ہُوں اب بھی گُلوں کو چمن میں روز پُھولوں سے اپنے جی کو لُبھانا نہیں گیا اب بھی طلَب ہے میری نِگاہوں کو حُسن کی جینے کو زندگی سے بہانہ نہیں گیا کیا کیا نہ کُچھ گزرتا گیا زندگی کے ساتھ اِک...
  7. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: جان ودِل ہجرمیں کُچھ کم نہیں بےجان رہے ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش جان ودِل ہجرمیں کُچھ کم نہیں بےجان رہے لڑ کر اِک دردِ مُسلسل سے پریشان رہے سوچ کر اور طبیعت میں یہ ہیجان رہے ! کیوں یُوں درپیش طلاطُم رہے، طوُفان رہے بُت کی چاہت میں اگر ہم نہ مُسلمان رہے رب سے بخشش کی بھی کیا کُچھ نہیں امکان رہے مگراب دل میں کہاں میرے وہ ارمان رہے ضُعف سے...
  8. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: میں نے فرطِ شوق میں دی تھی زباں جاتا رہا ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش میں نے فرطِ شوق میں دی تھی زباں جاتا رہا ورنہ مِلنے کو کسی سے کب کہاں جاتا رہا میں لبِ دم تھا غمِ فُرقت میں لاحق وہم سے جی اُٹھا آنے پہ اُس کے، ہر گُماں جاتا رہا وہ جو آئے جیسے آئیں زندگی کی رونقیں 'میری تنہا زندگی کا سب نشاں جاتا رہا' شوق اب بھی جی کو ہیں لاحق وہی پہلے جو...
  9. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: خزانہ::: "بارشیں یاد دِلائیں وہ زمانہ میرا" ::::: Shafiq Khalish

    خزانہ بارشیں یاد دِلائیں وہ زمانہ میرا شِیٹ کی دھار کے پانی میں نہانا میرا سُوکھے پتوں کی طرح تھی نہ کہانی میری آئی مجھ پرکہ ابھی تھی نہ جوانی میری دل، کہ محرومئ ثروت پہ بھی نا شاد نہ تھا لب پہ خوشیوں کے تھے نغمے، کبھی فریاد نہ تھا پُھول ہی پُھول نظر آتے تھے ویرانے میں موجزن رنگِ بہاراں...
  10. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: نہ دوست بن کے مِلے وہ ، نہ دُشمنوں کی طرح ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش نہ دوست بن کے مِلے وہ ، نہ دشمنوں کی طرح جُدا یہ ُدکھ بھی، مِلے اور سب دُکھوں کی طرح یُوں اجنبی سی مُصیبت کبھی پڑی تو نہ تھی سحر کی آس نہ جس میں وہ ظلمتوں کی طرح نہ دل میں کام کی ہمّت، نہ اوج کی خواہش ! کٹے وہ حوصلے سارے مِرے پروں کی طرح ستارے توڑ کے لانے کا کیا کہوں میں...
  11. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: نہیں جو عِشق میں رُتبہ امین رکھتا تھا ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش نہیں جو عِشق میں رُتبہ امین رکھتا تھا میں اپنا دِل تک اُسی کا رہین رکھتا تھا رہی جو فکر تو نادان دوست ہی سے مجھے وگرنہ دشمنِ جاں تک ذہین رکھتا تھا خیال جتنا بھی اُونچا لیے پھرا ، لیکن میں اپنے پاؤں کے نیچے زمین رکھتا تھا خُدا کا شُکر کہ عاجز کِیا نہ دل نے کبھی میں اِس کو...
  12. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: کچھ سفیدی نے سحرکی رنگ بھی پکڑا نہ تھا ::::: Shafiq Khalish

    شفیق خلش کچھ سفیدی نے سحرکی رنگ بھی پکڑا نہ تھا رات کی اُس تِیرَگی کو بھی ابھی جکڑا نہ تھا خواب میں تھے سب مکینِ وادئ جنّت نظیر رات کے سب خواب تھے دن کا کوئی دُکھڑا نہ تھا سحری کرکے پانی پی کے سو گئے تھے روزہ دار وہ بھی حاصل جن کو روٹی کا کوئی ٹکڑا نہ تھا حُسن فِطرت میں کہ تھے پالے...
  13. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: کیسی یہ روشنی ہے بکھرتی نہیں کبھی ::::: Shafiq Khalish

    شفیق خلش کیسی یہ روشنی ہے بکھرتی نہیں کبھی تاریک راستوں پہ تو پڑتی نہیں کبھی کیسا یہ چھا گیا ہے مِری زندگی پہ زنگ کوشش ہزار پہ بھی اُترتی نہیں کبھی یکسانیت کا ہوگئی عنوان زندگی ! بگڑی ہے ایسی بات سنْورتی نہیں کبھی رہتا ہے زندگی کو بہاروں کا اِنتظار حرکاتِ کج رَواں سے تو ڈرتی نہیں کبھی ہے...
  14. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: دی خبر جب بھی اُنھیں اپنے وہاں آنے کی ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش دی خبر جب بھی اُنھیں اپنے وہاں آنے کی راہیں مسدُود ہُوئیں میرے وہاں جانے کی اور کُچھ پانے کی دِل کو نہیں خواہش کوئی نِکلے بس راہ کوئی میرے وہاں جانے کی وجہ کیا خاک بتائیں تمھیں کھُل کر اِس کی کوئی تدبیر چلی ہی نہیں دِیوانے کی میری قسمت میں کہاں یار سے جاکر مِلنا کوشِشیں...
  15. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: مناظر حَسِیں ہیں جو راہوں میں میری ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش مناظر حَسِیں ہیں جو راہوں میں میری تمہیں ڈھونڈتے ہیں وہ بانہوں میں میری اِنہیں کیا خبر مجھ میں رَچ سے گئے ہو بچھڑ کر بھی مجھ سے، ہو آہوں میں میری عجب بیخُودی آپ ہی آپ چھائے تِرا نام آئے جو آہوں میں میری ہر اِک سُو ہے رونق خیالوں سے تیرے ابھی بھی مہک تیری بانہوں میں میری...
  16. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: مجھ سے آنکھیں لڑا رہا ہے کوئی ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش مجھ سے آنکھیں لڑا رہا ہے کوئی میرے دِل میں سما رہا ہی کوئی ہے تِری طرح روز راہوں میں مجھ سے تجھ کو چُھڑا رہا ہے کوئی پھر ہُوئے ہیں قدم یہ من من کے پاس اپنے بُلا رہا ہے کوئی نِکلوں ہر راہ سے اُسی کی طرف راستے وہ بتا رہا ہے کوئی کیا نِکل جاؤں عہدِ ماضی سے ! یادِ بچپن دِلا...
  17. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: بہت سے لوگ تھے باتیں جہاں ہماری تھیں ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش بہت سے لوگ تھے باتیں جہاں ہماری تھیں تمھارے وصف تھے رُسوائیاں ہماری تھیں نہیں تھا کوئی بھی، دیتا جو ساتھ محفل میں تمھاری یاد تھی، تنہائیاں ہماری تھیں عجب تماشا تھا، ہرآنکھ کا وہ مرکز تھا وجود اُس کا تھا، پرچھائیاں ہماری تھیں تباہ ہو نہ سکے، یہ کمال تھا اپنا تمھارے خواب تھے...
  18. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: پھر وہی گونج ہے باتوں کی بیاں سے باہر ::::: Shafiq Khalish

    غزل شفیق خلش پھر وہی گونج ہے باتوں کی بیاں سے باہر پھر وہی تیغ ہے نظروں میں، مَیاں سے باہر کیسا یہ درد سمایا ہے جگر میں میرے ! خود پہ کُھلتا نہیں، اُن کے بھی گُماں سے باہر کبھی باہر تھی بیاں سے، تو تھی اُلفت اُن کی اُن کی رنجش بھی ابھی ہے تو بیاں سے باہر کاش ہوتے نہ جو اپنے، تو نِکلتا...
  19. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: کرتے ہیں اگر مجھ سے وہ پیار تو آجائیں ::::: Shafiq Khalish

    غزلِ شفیق خلش کرتے ہیں اگر مجھ سے وہ پیار تو آجائیں پھر آ کے چلے جائیں ، اِک بار تو آ جائیں ہے وقت یہ رُخصت کا، بخشش کا، تلافی کا سمجھیں نہ جو، گر اِس کو بیکار تو آجائیں اِک دِید کی خواہش پہ اٹکا ہے یہ دَم میرا کم کرنا ہو میرا کچھ آزار تو آ جائیں جاں دینے کو راضی ہُوں، اے پیکِ اجل لیکن...
  20. طارق شاہ

    شفیق خلش شفیق خلش ::::: اُس حُسن کے پیکر کو کچھ پیار بھی آجائے ::::: Shafiq Khalish

    غزلِ شفیق خلش اُس حُسن کے پیکر کو کچھ پیار بھی آجائے ہونٹوں پہ محبّت کا اِقرار بھی آجائے لبریز ہو چاہت سے پیمانۂ دِل اُس کا ہونٹوں سے چَھلک کر کچھ اِظہار بھی آجائے رُت آئی ہے برکھا کی، ہیں پُھول کِھلے دِل میں کیا خُوب ہو ایسے میں دِلدار بھی آ جائے کیا کیا نہ کِیا ہم نے، پُوری نہ...
Top