بہادر شاہ ظفر ہمارے آپ خفا ہو کے کیا مکاں سے گئے ۔ بہادر شاہ ظفر

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 22, 2010

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ہمارے آپ خفا ہو کے کیا مکاں سے گئے
    تمہارے جانے سے یاں ہم بھی اپنی جاں سے گئے

    گئے جو کوچۂ قاتل میں آہ! حضرتِ دل
    مری طرف سے وہ اے ہمدمو جہاں سے گئے

    نہ آیا شام کے وعدے پہ تو جو ماہ لقا
    خدنگ آہ! گزر اپنی آسماں سے گئے

    گئے جو ہم سے خفا ہو کے حضرتِ ناصح
    بُرا بھلا ہمیں کہتے ہوئے زباں سے گئے

    قطعہ
    گلی میں یار کی ہم آج شب کو اے ہمدم
    بتائیں کیا کہ کدھر سے گئے کہاں سے گئے

    صبا کی طرح سے آنکھوں میں سب کی ڈال کے خاک
    نظر بچا کے ہر اک داں کے پاسباں سے گئے

    لگایا تجھ سے جو دو روز ہم نے اپنا دل
    تو کچھ نہ پوچھو کہ آرامِ جاوداں سے گئے

    ظفر جو پہنچے وہاں ہم خدا خدا کر کے
    تمام عمر نہ پھر کوچۂ بتاں سے گئے

    (بہادر شاہ ظفر)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  2. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,377
    واہ ! بہت ہی عمدہ جناب سخنور صاحب۔۔ ہمیشہ کی طرح بہت خوب انتخاب۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,698
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت شکریہ کاشفی صاحب، اعجاز صاحب اور یونس عارف صاحب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر