نہ رہبر نے نہ اس کی رہبری نے - شو رتن لال برق پونچھوی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 11, 2017

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,393
    غزل
    (شو رتن لال برق پونچھوی)
    نہ رہبر نے نہ اس کی رہبری نے
    مجھے منزل عطا کی گمرہی نے

    بنا ڈالا زمانے بھر کو دشمن
    فقط اک اجنبی کی دوستی نے

    وہ کیوں محتاج ہو شمس و قمر کا
    جلا بخشی ہو جس کو تیرگی نے

    بدن کانٹوں سے کر ڈالا ہے چھلنی
    ہمارا گُل رُخوں کی دوستی نے

    بدل ڈالا مذاق گُل پرستی
    چمن میں ادھ کھلی سی اک کلی نے

    قیامت بن گئی رحمت سراپا
    کیا کیا آپ کی ہم سائیگی نے

    شکایت برق کی اے برق کیسی؟
    مجھے پھونکا ہے گُل کی پنکھڑی نے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر