غفلت میں کٹی عمر نہ ہشیار ہوئے ہم - راسخ عظیم آبادی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 11, 2016

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,389
    غزل
    (راسخ عظیم آبادی - 1757-1823 پٹنہ بہار ہندوستان)
    غفلت میں کٹی عمر نہ ہشیار ہوئے ہم
    سوتے ہی رہے آہ نہ بیدار ہوئے ہم

    یہ بےخبری دیکھ کہ جب ہم سفر اپنے
    کوسوں گئے تب آہ خبردار ہوئے ہم

    صیاد ہی سے پوچھو کہ ہم کو نہیں معلوم
    کیا جانئے کس طرح گرفتار ہوئے ہم

    تھی چشم کہ تو رحم کرے گا کبھو سو ہائے
    غصہ کے بھی تیرے نہ سزا وار ہوئے ہم

    آتا ہی نہ اس کوچے سے تابوت ہمارا
    دفن آخر اسی کے پس دیوار ہوئے ہم

    زخم کہن اپنا ہوا ناسور پہ راسخ
    مرہم کے کسو سے نہ طلب گار ہوئے ہم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر