فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «کُردستان» کے ایک «کُرد» شاعر کی ایک فارسی بیت:

    سرگُذشتِ من و دل‌دارِ جفاپیشهٔ من
    داستانی‌ست که از قصّهٔ مجنون بتر است
    (میرزا فضل‌الله 'شکیبی' کُردستانی)


    میری اور میرے دل‌دارِ جفاپیشہ کی سرگُذشت اِک ایسی داستان ہے کہ جو «مجنون» کے قِصّے سے بدتر [و غم‌ناک‌تر] ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    من ز هجرانِ تو مانندهٔ ابرم گِریان
    تو به حالِ منِ بی‌چاره چو گُل می‌خندی
    (جهان‌ملِک خاتون)


    میں تمہارے ہجر کے باعث ابر کی مانند گِریاں ہوں۔۔۔ [اور] تم مجھ بےچاری کے حال پر گُل کی طرح ہنستے ہو۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    برگِ گُل را شورِ لب‌خندت گریبان‌چاک کرد
    شد قیامت در چمن برپا ز آشوبِ لبت
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    برگِ گُل کو تمہارے لب‌خَند (تبسُّم) کے فِتنہ و آشوب نے گریباں‌چاک کر دیا۔۔۔ تمہارے لب کے آشوب سے چمن میں قِیامت برپا ہو گئی۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    شرق‌شِناس «ای جی براؤن» نے اپنی مشہور کتاب «فارس کی ادبی تاریخ» میں مندرجۂ ذیل بیت کو «صائب تبریزی» سے منسوب کر دیا تھا، جس کے باعث میں کئی مُدّت تک اِس بیت کو «صائب» کی سمجھتا آیا تھا، لیکن «صائب» کی غزلیات میں مجھے وہ بیت مِل نہ سکی تھی۔ ابھی «قُدسی مشهدی» کے تصحیح‌شدہ مطبوعہ دیوان میں مجھے وہ بیت ایک غزل میں نظر آ گئی ہے، جس کی بِنا پر یہ سمجھنا چاہیے کہ بیتِ مذکور «صائب» کی نہیں، بلکہ «قُدسی» کی ہے:

    سُبحه بر کف، توبه بر لب، دل پُر از ذَوقِ گُناه
    معصیت را خنده می‌آید ز استغفارِ ما
    (قُدسی مشهدی)


    دست میں تسبیح، لب پر توبہ، اور دل گُناہ کی لذّت و رغبت سے پُر۔۔۔ ہمارے [ایسے] اِستِغفار سے [خود] گُناہ کو ہنسی آتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    یہ مشہور رسم رہی ہے کہ شب کے وقت سُلانے کے لیے داستانیں اور افسانے سُنائے جاتے ہیں اور داستان سُنتے سُنتے سامِع کو نیند آ جاتی ہے اور وہ عالَمِ خواب میں چلا جاتا ہے۔۔۔۔ علاوہ بریں، آپ کو شاید معلوم ہو گا کہ بختِ نامُساعِد و بختِ بد کو «بختِ خُفتہ/خوابیدہ» یعنی سویا ہوا بخت کہا جاتا ہے۔۔۔ ایک «کشمیری» شاعر کی بیت دیکھیے جس میں وہ اپنے بخت سے گِلہ کرتے ہوئے کہہ رہے ہیں کہ:

    نرسیدی دمی ای بخت به فریادِ دلم
    بهرِ خوابِ تو مگر ناله‌ام افسانه شده‌ست
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    اے بخت! تم کسی [بھی] لمحہ میرے دل کی فریاد پر نہیں پہنچے۔۔۔ شاید میرا نالہ تمہاری نیند کے لیے افسانہ بن گیا ہے۔۔۔ (یعنی شاید تم میرا نالہ سُنتے سُنتے سو گئے ہو۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک نعتیہ مِصرع:

    گوشِ جهان حلقه‌کشِ میمِ اوست
    (نظامی گنجَوی)


    دُنیا کا کان اُن کی مِیم کا حلقہ‌کَش ہے

    (یعنی دُنیا کے کان پر میمِ مُحمّدی غُلامی کے حلقے کے طور پر موجود ہے، اور دُنیا اُس مِیم کی حلقہ بگوش ہے، جو اِس چیز کی علامت ہے کہ دُنیا حضرتِ محمد کی غُلام و مُطیع ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    آپ نے یقیناً دیکھا ہو گا کہ بہتے ہوئے آب میں (مثلاً دریا وغیرہ میں) چیزوں کا عکس بھی ساکِن و غیرمُتَحَرِّک نہیں ہوتا اور ذرا حرَکت کرتا رہتا ہے۔۔۔ دیکھیے ایک «کشمیری» شاعر نے اِس کے ذریعے سے کیسا شعری مضمون باندھا ہے:

    می‌شود در چشمِ گریانم خیالش شوخ‌تر
    باشد آری عکس بی‌آرام در آبِ روان
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    میری چشمِ گِریاں میں اُس (یار) کا خیال شوخ‌تر ہو جاتا ہے۔۔۔ ہاں! آبِ رواں میں عکس بےآرام و بےسُکون ہوتا ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زُهد و تقویٰ را تو ای زاهد شفیعِ خویش ساز
    من کسی دارم که در محشر به فریادم رسد
    (طالب آمُلی)


    زُہد و تقویٰ کو، اے زاہد، تم اپنا شفیع بناؤ!۔۔۔ میں تو اِک [ایسا] شخص رکھتا ہوں کہ جو محشر میں میری فریاد کو پہنچے گا۔۔۔ (یعنی اے زاہد! زُہد و تقویٰ کی شفاعت‌گری کی ضرورت تم کو ہے، مجھ کو نہیں۔ لہٰذا اُن چیزوں کو اپنا شفیع تم ہی بناؤ!۔۔۔ میرے پاس تو بہ روزِ محشر میری فریاد کو پہنچنے والا اور میری شفاعت کرنے والا ایک شخص موجود ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اسلامی روایات میں «حضرتِ رسول» سے ایک مُعجِزہ منسوب ہے کہ اُنہوں نے انگُشت کے اشارے سے ماہِ آسمان کو دوپارہ کر دیا تھا، اور اُس مُعجِزے کو «مُعجِزهٔ شقُّ القمر» کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ «محمد فُضولی بغدادی» ایک فارسی نعتیہ بَیت میں اُس روایت کی جانب اشارہ کرتے ہوئے اُس مُعجِزے کے لیے اِس شاعرانہ حُسنِ تعلیل کو بروئے کار لائے ہیں:

    از آن دو پاره به انگُشتِ مُعجِزت شد ماه
    که باشد از پَیِ اِثباتِ دعویت دو گواه
    (محمد فُضولی بغدادی)


    آپ کی انگُشتِ مُعجِز سے ماہ اِس لیے دو نِیم ہوا تاکہ آپ کے دعوے کے اِثبات کے لیے دو گواہ ہوں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «نِظامی گنجَوی» ایک نعتیہ بیت میں «حضرتِ یوسف» پر «حضرتِ محمد» کی برتری بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں:

    گر آمد بُرون ماهِ یوسف ز چاه
    شد آن چشمه از چاه بر اوجِ ماه
    (نظامی گنجَوی)


    اگر ماہِ «یوسُف» (یعنی ماہ جیسا «یوسُف») چاہ سے بیرون آیا تھا تو وہ چشمہ (یعنی «حضرتِ مُحمّد») تو چاہ سے [نِکل کر] اَوجِ ماہ پر پہنچ گیا۔ (چاہ = کُنواں)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «حضرتِ محمّد» یتیم تھے، یعنی اُن کے والِدَین اُن کی طِفلی میں وفات کر گئے تھے۔۔۔ شہرِ «سیالکوٹ» کے شاعر «رایج سیالکوتی» (وفات: ۱۱۵۰ھ) نے ایک نعتیہ بیت میں اُن کی یتیمی کی جانب یوں اِشارہ کیا ہے:

    بر بی‌کسان نظر که فِگَندی به چشمِ لُطف
    نِسبت نبودی ار به جنابت یتیم را
    (رایج سیالکوتی)


    اگر یتیم کی نِسبَت آپ کی درگاہ (یا آپ کی شخصیتِ عالی) کے ساتھ نہ ہوتی تو بے‌کَسوں پر چشمِ لُطف کے ساتھ نظر کون ڈالتا؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک نعتیہ بَیت:

    از چه شد شقُّ القمر دانی؟ ز شَوقِ رُویِ او
    سینه را مه چاک زد در وقتِ پیراهن‌دری
    (نظیری نیشابوری)


    [کیا] تم جانتے ہو کہ «شقُّ القمر» کس لیے ہوا؟۔۔۔ اُن کے چہرے کے اِشتِیاق کے باعث ماہ نے پیراہن پھاڑنے کے وقت [اپنے] سینے کو چاک کر دیا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «صائب تبریزی» نے ایک بَیت میں اپنے معشوق کے رُخسار کی زیبائی کی سِتائش کرتے ہوئے «شقُّ القمر» کی جانب اشارہ کیا ہے:

    این شُکوهی که به رُخسارِ تو داده‌ست خُدا
    بیمِ آن است کُنَد شق چو قمر آینه را
    (صائب تبریزی)


    مجھے اِس چیز کا خَوف ہے کہ خُدا نے جو یہ شَوکت و جلالت و بُزُرگواری تمہارے رُخسار کو دی ہے، وہ آئینے کو قمر کی طرح شق کر دے گی۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    دَورِ گردون گر دو روزی بر مُرادِ ما نرفت
    دائماً یک‌سان نباشد حالِ دَوران غم مخور
    (حافظ شیرازی)


    اگر گردشِ فلک ایک دو روز ہماری مُراد کے مُوافِق نہیں چلی تو غم مت کھاؤ کیونکہ حالِ زمانہ ہمیشہ یکساں نہیں رہتا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    از چه درگیرد زبانم هر نفَس مانندِ شمع
    نیست آهِ من اگر با آتش از یک دودمان
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    آگر میری آہ اور آتش دونوں ایک ہی خاندان سے نہیں ہیں تو پھر میری زبان ہر دم شمع کی مانند کیوں جلنے لگتی ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «رایج سیالکوتی» کی ایک بیت میں «کاشُروں» کے وطن «کشمیر» کا ذِکر:

    اشک و آهم چه قدر روح‌افزاست
    عشق ازین آب و هوا کشمیر است
    (رایج سیالکوتی)


    میرے اشک و آہ کس قدر رُوح‌افزا ہیں!۔۔۔ عِشق اِس آب و ہوا سے «کشمیر» [بن گیا] ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,843
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    (مصرع)
    معجونِ محبّت خور و جاوید جوان باش
    (طالب آمُلی)

    معجونِ محبّت کھاؤ اور دائماً جوان رہو!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,280
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    تو خندہ زناں می گذری بے خبر از من
    من گریہ کناں می کنم از دُور دعائے


    مولانا عبدالرحمٰن جامی

    تُو ہنستا مسکراتا ہوا، میری موجودگی سے بے خبر ہی گزر جاتا ہے، میں گریہ کناں، دُور ہی سے تیرے لیے دعائے خیر کر دیتا ہوں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  19. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    950
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    یہ شعر دونوں طریقوں سے موجود ہے۔ گنجور نے اول الذکر شعر جبکہ لغت نامہ دہخدا نے موخر الذکر شعر کو درج کیا ہے۔
    غلام عباس ماہو نے اس شعر کا ترجمہ یوں کیا ہے:
    نہروا کی جڑ کی طرح پھر دوبارہ نہ جانا، ایسا نہ ہو کہ دوبارہ نہروا سر ابھارے.

    لغت نامہ دہخدا کے مطابق، دوسرے مصرعے میں موجود رشتہ سر کردن کا معنی بیماریِ رشتہ شروع کرنا۔ بیماریِ رشتہ کو فارسی ہی میں پیوک بھی کہا جاتا ہے اور انگریزی میں Dracunculiasis کہا جاتا ہے۔ غلام عباس ماہو کے ترجمے کے مطابق، اسے اردو میں شاید ’’نہرا‘‘ کہا جاتا ہے۔
    سید شہاب الدین دسنوی اور فہمیدہ بیگم (ترقیِ اردو بیورو، دہلی) کی کتاب ’’جامع اردو لغات‘‘ کے مطابق، ’’نہروا‘‘ کا یہ معنی درج ہے:
    رشتہ کی بیماری۔وہ گول تاگا سا جو بدن میں سے نکلتا چلا آتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 14, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. عبید انصاری

    عبید انصاری محفلین

    مراسلے:
    2,658
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    "نہرو" کیا ہے؟ طرح یا طرف؟ ذرا وضاحت فرما دیں۔ شکریہ
     

اس صفحے کی تشہیر