فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    فِقہِ اسلامی کے رُو سے مُسافر پر روزے کا وُجوب ساقِط ہے (بلکہ جعفری شیعی فِقہ میں تو لازم ہے کہ مُسافرت کے دوران روزہ نہ رکھا جائے)۔ نیز، عیدَین کے روز روزہ رکھنا بھی شریعتِ اسلامی میں حرام ہے۔۔۔ «کِشوَرِ کشمیر» کے ایک شاعر «میرزا داراب بیگ جویا کشمیری» کی ایک بیت دیکھیے جس میں اِن فِقہی مسائل کی مدد سے ایک شعری مضمون خَلق کیا گیا ہے:

    نمی‌باشد ز مرگ اندیشه‌ای پرهیزگاران را
    سفر فیضِ صباحِ عید بخشد روزه‌داران را
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    پرہیزگاروں کو مَوت سے کوئی اندیشہ و خوف نہیں ہوتا، [کیونکہ] سفر روزہ‌داروں کو صُبحِ عید کا فَیض بخشتا ہے۔ (یعنی سفر، عید کی مانند، اُن پر سے رنج و مشقّتِ روزہ کو ساقِط کر دیتا ہے، اِس لحاظ سے سفر بھی روزہ‌داروں کے لیے ایک طرح کی عید ہے۔ اور چونکہ موت بھی ایک سفر ہے تو لہٰذا مُسافرانِ پرہیزگار کو موت سے کیا باک؟)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    نصیبی گر ز سوزِ سینه‌ام می‌بود مجنون را
    ز ابرِ چشمِ تر دریایِ خون می‌کرد هامون را
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    اگر «مجنون» کے پاس میرے سینے کے سوز کا کوئی [ذرا سا] حِصّہ ہوتا تو وہ [اپنی] چشمِ تر کے ابر سے دشتِ ہموار کو بحرِ خُون [میں تبدیل] کر دیتا۔۔۔ (یعنی مَیں «مجنون» سے کئی چند زیادہ عاشقِ سینہ‌سوختہ ہوں۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,445
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    چہ پروا دارم از بے مہریِ گردوں کہ ہر صُبحے
    ز داغِ عشق بر دل آفتابے ساکنے دارم


    غنیمت کنجاہی

    میں آسمان کی بے رحمی اور بے مروتی کی کیا پروا کروں کہ ہر صبح میرے دل پر داغِ عشق کی وجہ سے ایک غیر متحرک، ساکن آفتاب چمکتا ہے۔ (آسمان کی بے مروتی سے اُس کا متحرک آفتاب غروب ہو جاتا ہے لیکن میرے دل پر عشق کے داغ ایسے آفتاب ہیں جو غروب نہیں ہوتے)۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    می‌تراشد فکرِ ما هر دم خداوندِ دگر
    رست از یک بند تا افتاد در بندی دگر

    ہماری فکر ہر لمحہ ایک نیا آقا تراشتی ہے۔ جب وہ ایک قید سے نکلتی ہے تو دوسرے بند/قید میں گرفتار ہوجاتی ہے۔ گویا ہماری مادی حرص و ہوس نت نئی مادی آرزوئیں پیدا کرنے میں لگی رہتی ہے۔

    بر سرم آ، نقاب از چهره بی‌باکانه کش
    نیست در کویِ تو چون من آرزومندی دگر

    تو (اے محبوب) بام پر آ اور بے خوف ہو کر اپنے چہرے سے نقاب اٹھا دے، اس لیے کہ تیرے کوچے میں میرے جیسا کوئی اور آرزومند/عاشق نہیں ہے۔ گویا میں ہی تیرا سچا عاشق ہوں، باقی سب اس پُرخلوص جذبے سے عاری ہیں
    (علامه اقبالِ لاهوری)
    کتاب:
    پیامِ مشرق
    مترجم و شارح:دکتر خواجه حمید یزدانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ز شعرِ دل‌کشِ اقبال می‌توان دریافت
    که درسِ فلسفه می‌داد و عاشقی ورزید
    (علامه اقبالِ لاهوری)

    اقبال کی دل کش شاعری سے یہ بات جانی جاسکتی ہے کہ وہ فلسفہ کا درس دیتا ہے اور ساتھ عاشقی اختیار کیے ہوئے تھا۔مطلب یہ کہ اس نے عقل و خرد کے ساتھ ساتھ عشق بھی اختیار کیا جو اس کی دل کش شاعری سے واضح ہے۔
    کتاب: پیامِ مشرق
    شارح و مترجم:دکتر خواجہ حمید یزدانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    هزار خیبر و صد گونه اژدرست این‌جا
    نه هر که نانِ جوین خورد، حیدری داند
    (علامه اقبالِ لاهوری)

    یہاں ہزار قسم کے خیبر اور سو قسم کے اژدہا ہیں۔ضروری نہیں کہ جو کوئی بھی جو کی روٹی کھاتا ہے وہ حیدری/بےحد شجاعت سے بھی آگاہ ہو۔مطلب یہ کہ خیبر جیسے قلعے فتح کرنا اور اژدہا مارنا یہ جسمانی طاقت کے بس کی بات نہیں اور نہ یہ طاقت مرغن غذائیں کھانے سے آتی ہے۔اس کے لیے پختہ ایمان اور حضور اکرمﷺ سے عشق کا ہونا بنیادی شرط ہے۔
    کتاب: پیامِ مشرق
    شارح و مترجم:دکتر خواجہ حمید یزدانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    خاکِ یثرب از دو عالم خوش‌تر است
    ای خنک شهری که آنجا دلبر است
    (علامه اقبالِ لاهوری)

    میرے لئے یثرب کی مٹی دونوں جہانوں سے زیادہ محبوب ہے۔ کس قدر حسین اور ٹھنڈک پہنچانے والی ہے وہ بستی جس میں محبوب رہتا ہو۔
    کتاب:اسرارِ خودی
    مترجم: غلام احمد پرویز
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    نسخه‌ی کونین را دیباچه اوست
    جمله عالم بندگان و خواجه اوست
    (علامه اقبال لاهوری)

    کتابِ دو عالم کا دیباچہ حضور رسالت مآبﷺ ہیں۔ تمام دنیا کے رہنے والے غلام اور آپﷺ ان کے آقا ہیں۔
    کتاب:اسرارِ خودی
    مترجم: غلام احمد پرویز
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «مُلکِ کشمیر» کے «کشمیری» فارسی شاعروں کی غزلوں میں جگہ جگہ اُن کے وطن «کشمیر» کا سِتائش‌آمیز ذِکر نظر آ جاتا ہے۔ «میرزا داراب بیگ جُویا کشمیری» کی ایک بیت دیکھیے جس میں اُنہوں نے اپنے دل کو یادِ حبیب کے سبب سے ایک کِھلے ہوئے گُلزار سے تشبیہ دی ہے اور اُس گُلزار سے اُن کو وطنِ خود «گُلشنِ کشمیر» کی خوشبو آ رہی ہے:

    دلم بِشگُفت زیرِ بارِ کُهسارِ غم از یادش
    ازین گُلزار بُویِ گُلشنِ کشمیر می‌آید
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    کوہسارِ غم کے بار تلے میرا دل اُس (محبوب) کی یاد سے کِھل گیا۔۔۔ اِس گُلزار سے «گُلشنِ کشمیر» کی خوشبو آتی ہے۔

    یہ چیز لائقِ توجُّہ ہے کہ «وادیِ کشمیر» اطراف میں کوہوں سے گِھری ہوئی ہے، لہٰذا اِس لحاظ سے بھی کُہسارِ غم کے بار کے نیچے موجود شاعر کے گُلزارِ دل کا «گُلشنِ کشمیر» سے مُشابِہ ہونا قابلِ فہم نظر آتا ہے۔ شاعر یہ بھی کہنا چاہ رہا ہے کہ دلِ مُحِب خواہ جس قدر بھی پژمُردہ و ویران ہو، وہ یادِ محبوب کے آ جانے سے «کشمیر» جیسے ایک شاداب و خُرّم گُلزار میں تبدیل ہو جاتا ہے۔
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 5, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    پیراهنی از تارِ وفا دوخته بودم
    چون تابِ جفایِ تو نیاورد کفن شد
    (طالب آمُلی)


    میں نے تارِ وفا سے ایک پیراہن سِیا تھا۔۔۔ جب وہ تمہاری جفا کی تاب نہ لایا تو کفن بن گیا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    به خُدایی که جُز او نیست خُداوندِ جهان
    که مرا عشقِ تو شد در همه دم هم‌دمِ جان

    (جهان‌ملِک خاتون)

    اُس خُدا کی قسم کہ جِس کے بجُز [کوئی] خُداوندِ جہان نہیں ہے!۔۔۔ کہ تمہارا عشق ہر دم میری جان کا ہم‌دم ہو گیا [ہے]۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    معاصر افغانستانی فارسی شاعر خلیل اللہ خلیلی کی علامہ اقبالِ لاہوری پر ایک نظم بنامِ ’’بر مزارِ اقبال درلاهور‘‘:

    ای که ما را گردشِ چشمِ عقاب آموختی!
    دیده‌یِ بیدارِ خود را از چه خواب آموختی؟

    اے وہ کہ تو نے ہمیں عقاب کی چشم کی گردش سکھائی۔اپنے دیدہٗ بیدار کو کس خواب سے سیکھا؟
    شامِ جمعی را نمودی از فروغِ فیض، روز
    تیره شب را روز کردن، ز آفتاب آموختی

    تو نے ایک شامِ قیامت کو نورِ فیض سے روز دکھایا۔تو نے تاریک شب کو روز کرنا (یعنے روز میں تبدیل کرنا) آفتاب سے سیکھا۔
    خفتگان را با صریرِ شعله‌انگیزِ قلم
    صد تکان دادی و چندین انقلاب آموختی

    تو نے سوئے ہووٗں کو قلم کی شعلہ انگیز صریر(آوازِ قلم) سے صدہا جنبش و حرکت دی اور بہت سے انقلاب سکھائے۔
    گردنِ احرار در یوغِ اسارت بود خم
    بند بگسستن به‌ مردم از رقاب، آموختی

    آزاد لوگوں کی گردن غلامی کی طوق میں خم (جھکی ہوئی) تھی۔لوگوں کو گردنوں سے بند توڑنا تو نے سکھایا۔
    زندگی،گفتی، خطِ فاصل بود با بندگی
    این دلیلِ قاطع از فصل‌الخطاب آموختی

    تو نے کہا کہ زندگی غلامی سے جدا کنندہ لکیر ہے (یعنے زندگی اور غلامی یکجا نہیں رہ سکتیں۔غلامی موت ہے)۔ یہ دلیلِ قاطع و برندہ(جو کسی شک کو باقی نہیں رہنے دیتی) تو نے فصل الخطاب (احادیثِ نبویﷺ جو حق و باطل کو جدا کردیتی ہیں) سے سیکھی۔
    هرسوالی را که مشکل بود بر عقلِ سلیم،
    از دبستانِ دل آن را صد جواب آموختی

    ہر ایک سوال جو عقلِ سلیم پر مشکل تھا، (ان سارے سوالوں کو)تو نے دل کے دبستان (مدرسے) سے صدہا جواب سکھائے۔
    با «رموزِ بی‌خودی»، رازِ خودی آمیختی
    مشتِ خاکِ مرده را رفتارِ آب آموختی

    تو نے «رموزِ بےخودی» کے ساتھ رازِ خودی ملایا اور مشت بھر مردہ خاک کو آبِ(رواں) کی رفتارِ(تیز) سکھائی۔
    کاروان در راه و منزل دور و دشمن در کمین
    رهروانِ شرق را درسِ شتاب آموختی

    کاروان راستے میں ہے اور منزل دور ہے اور دشمن کمین(گھات) میں (بیٹھا) ہے۔ مشرق کے رہرووٗں کو تُندی و سرعت کا درس سکھایا۔
    عقل را ره، شوق را جان، قلب را ذوق حضور
    این به در واماندگان را فتح باب آموختی

    عقل کو راہ(دکھائی)، عشق کو جان (دی) اور قلب کو حاضری کا ذوق (دیا)۔تو نے ان راندہٗ درگاہ لوگوں کو فتحِ باب سکھایا۔
    خواجه را گفتی ننوشد بعد ازین خونِ فقیر
    بینوا را راه و رسمِ اعتصاب آموختی

    سرمایہ دار کو تو نے کہا کہ وہ اس کے بعد فقیر کا خون نہ پیے۔بےنوا کو تو نے اعتصاب (ہڑتال) کی راہ و رسم سکھائی۔
    آه از آن ملّت که باشد یأس در راهش حجاب
    ای امیدِ قوم! تو رفعِ حجاب آموختی

    اس ملت سے فریاد کہ نومیدی اس کے راستے میں حجاب(حائل) ہے۔ اے قوم کی امید! تو نے حجاب ہٹانا سکھایا۔
    مولوی در گوشِ جانت گفت رازی بس بزرگ
    زان معلّم معنیِ ام الکتاب آموختی

    مولوی رومی نے تیری جان کے گوش(کان) میں ایک بہت بڑا راز کہا۔ اس استاد سے تو نے ام الکتاب (قرآن) سیکھا۔
    ملّتِ توحید را از مکرِ دنیای فرنگ
    حرف حرف و فصل فصل و باب باب آموختیُ

    ملتِ توحید کو تو نے دنیائے فرنگ کے مکر و فریب سے حرف بہ حرف، فصل بہ فصل اور باب بہ باب سکھایا۔
    در کهن تاریخِ شرق انگیختی شورِ نوین
    شوکتِ پارینه را عهدِ شباب آموختی

    مشرق کی تاریخِ کُہَن میں تو نے نئے شور کو دوبارہ زندہ کیا۔ پرانی شوکت کو جوانی کا دَور سکھایا۔
    (خلیل الله خلیلی)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تصحیح: تم نے اپنے دیدۂ بیدار کو کس لیے خواب سِکھا دیا؟ (یعنی تم خود کس لیے خوابِ ابدی میں چلے گئے)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  14. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    حسان خان کیا یہ نشان زدہ واژوں کے ترجمے درست ہیں؟

    کیا یہ ترجمہ درست ہے؟
     
  15. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    کیا یہ ترجمہ بھی ٹھیک ہے؟ حسان خان
     
  16. عبید انصاری

    عبید انصاری محفلین

    مراسلے:
    2,455
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    شیخ سعدی کے اس شعر کا ترجمہ درکار ہے:

    مرو با سر رشته بار دگر
    مبادا که دیگر کند رشته سر

    دوسری روایت:
    مرو بر سر رشته بار دگر
    مبادا که ناگه كشد رشته سر

    پہلی اور دوسری روایت کے پہلے مصرع میں "سر رشتہ" کا مفہوم ٹھیک سے سمجھ نہیں آرہا۔ اسی طرح "مبادا کہ دیگر کند" کا مفہوم۔
    از راہِ کرم رہنمائی فرمائیں۔ شکریہ
    حسان خان محمد وارث اریب آغا وغیرہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ای موجِ ناشِکیب، تُرا این شِتاب چیست؟
    عاشق منم، به نبضِ تو این اضطراب چیست؟
    ای بحر گر نیامده چون من دِلت به تنگ
    در سینهٔ فَراخِ تو، این انقلاب چیست؟

    (رازق فانی)

    اے مَوجِ بےصبر! تم کو یہ جَلدی کس لیے ہے؟۔۔۔ عاشق مَیں ہوں، تمہاری نبض میں یہ اِضطِراب کیا ہے [اور کس لیے ہے]؟۔۔۔ اے بحر! اگر میری طرح تمہارا دل تنگ نہیں آ گیا ہے تو پھر تمہارے سینۂ وسیع میں یہ اِنقِلاب کیا ہے [اور کس لیے ہے]؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  18. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    آن سُرمهٔ صِفاهان، من از دیارِ کشمیر
    منظورِ چشمِ یاریم، گشته غُبار هر دو
    (مُلّا محمد علی آگه کشمیری)


    «اِصفہان» کا وہ سُرمہ، اور دِیارِ «کشمیر» سے مَیں۔۔۔ ہم دونوں غُبار ہو کر چشمِ یار کے منظورِ نظر ہیں۔۔۔ (یعنی یار نے ہم دونوں کے غُبار کو تحسین و پسندیدگی کے ساتھ اپنی چشم پر لگایا ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «رایج سیالکوتی» کی مندرجۂ ذیل بیت مجھ کو پسند آئی ہے، لیکن اِس کے مصرعِ اوّل کا ایسا ترجمہ کر پانا میرے لیے مشکل ہو رہا ہے کہ جس میں مصرعے کی شعریت و معنائیت ترجمے میں مُنتَقِل ہو سکیں:

    سُویت ز عجز سعیِ فلک‌تازم آرزوست
    پر ریختم که شوخیِ پروازم آرزوست
    (رایج سیالکوتی)


    مجھے تمہاری جانب، عَجز و ناتوانی [کے ذریعے] سے، فلک پر حملہ کرنے والی سعی و کوشش کی آرزو ہے۔۔۔ میں نے [اپنے] پر گِرا دیے کیونکہ مجھ کو شوخیِ پرواز کی آرزو ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    صبر فرماید مرا در عاشقی آن بی‌وفا
    تا کَی آخر طفلِ مسکین صبر بِتْواند ز شِیر
    (جهان‌ملِک خاتون)


    وہ بےوفا [معشوق] مجھ کو عاشقی میں صبر کا حُکم کرتا ہے۔۔۔ [کوئی شِیرخوار] طِفلِ مِسکین آخر کب تک شِیر (دودھ) سے صبر کر سکتا ہے؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر