فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مردُم جب شراب پیتے ہیں تو اُن کو نشئہ آتا ہے، لیکن دُرّانی پادشاہ «تیمور شاه دُرّانی» کے محبوب کا لب اِس قدر مستی‌آور ہے کہ اُس سے سُخن سُن کر خود شراب کو نشئہ چڑھ گیا ہے:

    لبت چو کرد سُخن از صُراحی و مَی و جام
    ز حَرفِ لعلِ لبت نشئه را شراب گرفت
    (تیمور شاه دُرّانی)


    [اے یار!] تمہارے لب نے جب صُراحی و مَے و جام کے بارے میں تکلُّم کیا تو تمہارے لعلِ لب کی گُفتار سے شراب نشئے میں آ گئی۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «علی‌قُلی خان والِه داغِستانی» ایک رُباعی میں اپنی معشوقہ «خدیجه سُلطان» کی والِدہ «سروِ جهان خانُم» کے بارے میں کہتے ہیں:

    آن سروِ جهان خانمِ رشکِ ناهید
    آن والدهٔ خدیجهٔ چون خورشید
    شُد در سرِ کارِ دُخترش دین و دِلم
    دُختر نه بلا برایِ جانم زایید
    (والِه داغستانی)


    وہ «سروِ جہان خانُم»، کہ جو رشکِ ناہید ہے اور جو خورشید جیسی «خدیجہ» کی والِدہ ہے۔۔۔ اُس کی دُختر کے چکّر میں میرا دین و دِل چلا گیا۔۔۔ [گویا] اُس نے دُختر نہیں، [بلکہ] میری جان کے لیے ایک بلا جَنی تھی۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مُژده ای یعقوبِ دل کان یوسفِ کنعان رسید
    محنتِ بی‌انتهایِ هجر را پایان رسید
    (خالد نقش‌بندی)


    مُژدہ ہو، اے یعقوبِ دل (یعنی یعقوب جیسے دل)، کہ وہ یوسُفِ کنعان آ گیا۔۔۔ ہجر کے رنجِ بےانتہا کا اِختِتام آ گیا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بازگَرد ای جانِ بر لب آمده کان نازَنین
    عیسیِ مریم‌صِفَت بهرِ علاجِ جان رسید
    (خالد نقش‌بندی)


    اے لب پر آئی ہوئی جان، واپَس پلٹ جاؤ کیونکہ [میرا] وہ نازَنین، «عیسیٰ بن مریَم» کی طرح جان کے عِلاج کے لیے آ گیا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اختلاطِ ظاهری گر نیست با یارم چه شد
    با خیالش می‌کنم والِه فراوان اختلاط
    (والِه داغستانی)


    اگر [میری] میرے یار کے ساتھ ظاہری ہم‌نشینی نہیں ہے تو کیا ہوا؟۔۔۔ اے «والِہ»! میں اُس کے خیال و تصوُّر کے ساتھ فراواں ہم‌نشینی کرتا ہوں۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «علی‌قُلی خان والِه داغِستانی» ایک رُباعی میں اپنی معشوقہ «خدیجه سُلطان» کی خالہ «هاجَر خانُم» کو مُخاطَب کر کے کہتے ہیں:

    ای هاجر خانُم ای فلک چاکرِ تو
    ای سُرمهٔ چشمِ حور خاکِ درِ تو
    تا کَی نکند خدیجه جان رحم به من
    فریاد ز دستِ دُخترِ خواهرِ تو
    (والِه داغستانی)


    اے «ہاجَر خانُم»! اے کہ فلک تمہارا چاکَر ہے۔۔۔ اے کہ تمہارے در کی خاک حُور کی چشم کا سُرمہ ہے۔۔۔۔ [آخر] کب تک «خدیجہ جان» مجھ پر رحم نہ کرے گی؟۔۔۔۔ تمہاری خواہر کی دُختر کے باعث فریاد!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    یارِ من چون بهتر از لیلیٰ بُوَد
    پس نه مَردم گر ز مجنون کم‌ترم
    (والِه داغستانی)


    میرا یار چونکہ «لیلیٰ» سے بہتر ہے، تو پس اگر مَیں [عاشِقی میں] «مجنون» سے کم‌تر ہوں تو مَیں مَرد نہیں ہوں!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ای رُویِ تو مصدوقهٔ انوارِ کلیم
    روشن ز رُخِ تو قِصّهٔ ابراهیم
    در دوزخِ هجر بیش از اینم مپِسَند
    دُوری ز تو ای دوست عذابی‌ست الیم
    (والِه داغستانی)


    اے کہ تمہارا چہرہ انوارِ حضرتِ کلیم کا مِصداق ہے۔۔۔ [اور اے کہ] تمہارے چہرے [کے ذریعے] سے قِصّۂ حضرتِ ابراہیم روشن و واضِح ہے۔۔۔۔ دوزخِ ہجر میں میرا مزید رہنا روا مت رکھو!۔۔۔ [کیونکہ] اے یار، تم سے دُوری اِک عذابِ الیم ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    آن‌جا که بُوَد عشق شوَد بنده خُداوند
    یک شاهدِ من قِصّهٔ محمود و ایاز است
    (والِه داغستانی)


    جس جگہ عشق ہو، وہاں مالِک غُلام ہو جاتا ہے۔۔۔ میرا ایک گواہ محمود و ایاز کا قِصّہ ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    گر بلا چون تیر بارد بر سرت ای یارِ من!
    یک سرِ مو غم مخور چون خود خدا غم‌خوارِ ماست
    (خواجه قطب الدین بختیار کاکی)

    اے میرے یار! اگر بلا تیرے سر پر تیر کی طرح برسے تو سر کے ایک بال جتنا (بھی) غم مت کھاوٗ کہ خدا خود ہمارا غم خوار و مونس ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    897
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تو مگویی در جهان یک بایزیدی بود بس!
    هرکه واصل شد به‌جانان، بایزیدِ دیگرست
    (خواجه قطب الدین بختیار کاکی)

    تو مت کہہ کہ دنیا میں ایک بایزید تھا (اور) بس! ہر کوئی جو جاناں میں واصل و فنا ہوگیا، وہ ایک اور بایزید ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مِلّتِ «کاشُر» کے مِلّی وطن «کشمیر» کی سِتائش میں کہے «عُرفی شیرازی» کے قصیدے سے ایک بیت:

    زیبنده عَروسی که نیَفزوده جمالش
    هر دم به نظر خوش‌تر و شاداب‌تر آید
    (عُرفی شیرازی)


    [مُلکِ کشمیر] اِک ایسی خوش‌نُما و آراستہ و زیبا عَرُوس (دُلہن) ہے کہ اپنی آرائش و جمال و زیب و زِینت میں اِضافہ کیے بغیر ہی وہ ہر لمحہ نِگاہ کو قبل سے بھی زیادہ خوب‌تر و شاداب‌تر محسوس ہوتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «کشمیر» و «قومِ کاشُر» اور «بلتِستان» و «قومِ بلتی» کے ایک مُقدّس‌ترین و مُحترم‌ترین دینی شخص «امیرِ کبیر میر سیِّد علی همَدانی» کی ایک غزل:

    گشته تا محوِ تجلّایِ جمالش جانم
    دیده‌ام حُسن و جمالی که در او حیرانم


    جب سے میری جان اُس کے جمال کی تجلّی میں محو ہو گئی ہے، میں نے اِک ایسا حُسن و جمال دیکھا ہے کہ میں اُس پر حَیران و مبہوت و مدہوش ہوں۔۔۔۔

    ==========

    تا شد از صفحهٔ دل محو نُقوشِ کَونَین
    خطِ رُخسارِ تو هر لحظه در او می‌خوانم


    جب سے صفحۂ دل سے نُقوشِ کَونَین محو و زائل ہوئے ہیں، میں اُن میں ہر لحظہ تمہارے رُخسار کا خط پڑھتا ہوں۔۔۔ (خط= لکیر؛ خطِ رُخسار = رُخسار پر بالوں کی لکیر)

    ==========

    روزگاری‌ست که هم طالب و هم مطلوبم
    طُرفه حالی‌ست که هم دردم و هم درمانم


    ایک زمانہ ہو گیا ہے کہ میں طالب بھی ہوں اور مطلوب بھی ہوں۔۔۔۔ اِک عجیب حال ہے کہ میں درد بھی ہوں اور درمان بھی ہوں۔۔۔

    ==========

    کافرِ عشق منِ بی‌دل و دین تا گشتم
    فارغ از شکّ و یقین بی‌خبر از ایمانم


    جب سے مَیں بےدِل و دین [شخص] کافرِ عشق ہوا، میں شکّ و یقین سے آسودہ و بےپروا اور ایمان سے بےخبر ہوں۔۔۔

    ==========

    تا شدم همچو علی پادشهِ مُلکِ فنا
    اسبِ هِمّت به سُویِ مُلک بقا می‌رانم


    جب سے میں «علی» کی مانند پادشاہِ مُلکِ فنا ہوا، میں اِرادہ و عزم کے اسْپ کو مُلکِ بقا کی جانب دَوڑاتا ہوں۔

    (میر سیِّد علی همَدانی)
    مُتَرجِم: حسّان خان
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تیموری سلطنت کے دَور میں حاکمِ مُلکِ کشمیر «ظفر خان احسن» نے «گُلشنِ کشمیر» کی فَوق‌العادت زیبائی اور اُس کی بے‌نظیری کا یہ سبب بتایا تھا کہ خُلدِ بریں «کشمیر» کا پدر، جبکہ فِردوسِ اعلیٰ «کشمیر» کی مادر ہے۔۔۔ "خِطّۂ دل‌پذیرِ کشمیر اور اُس بوستانِ جنّت‌نظیر کی آب و ہوا" کی سِتائش میں لِکھی ایک مثنوی کی ایک بیت میں وہ کہتے ہیں:

    چُنان گُلشن ندیده چشمِ اختر
    بُوَد خُلدش پدر فردوس مادر
    (ظفر خان احسن)


    چشمِ ستارہ نے ویسا [کوئی دیگر] گُلشن نہیں دیکھا ہے۔۔۔‌ خُلد اُس کا پدر، اور فِردَوس اُس کی مادر ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    گرچه دانم که به وصلِ تو رسیدن نتَوان
    لیکن از راهِ طلب پای کشیدن نتَوان
    (شیخ یعقوب صَرفی کشمیری)


    اگرچہ میں جانتا ہوں کہ تمہارے وصل تک نہیں پہنچا جا سکتا۔۔۔ لیکن راہِ طلب سے پاؤں نہیں کھینچا جا سکتا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  16. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,445
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    مسجد چہ روم چندیں، آخر چہ نماز است ایں
    رُویم بہ سوئے قبلہ، دل جانبِ ابرویت


    امیر خسرو

    میں مسجد کی طرف بار بار کیا جاؤں، آخر یہ کونسی نماز ہے کہ میرا چہرہ تو قبلے کی طرف ہے اور دل تیرے ابروؤں کی جانب۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    افغانستان کے ایک پشتون قوم‌پرست «عبدالحَی حبیبی» اپنی ایک فارسی نظم «پشتو» کی چند ابتدائی ابیات میں پشتونوں کو اُن کی پشتو زبان کی جانب راغب کرنے کی سعی کرتے ہوئے کہتے ہیں:

    قومِ من! ای تودهٔ والانژاد
    وی نیاکانِ غیورت مرد و راد
    با تو دارم گُفتگویِ محرَمی:
    تا ز اسرارِ حیات آگه شوی
    بِشْنَو ای پشتونِ باصِدق و صفا!
    حافظِ کُهسارِ قلبِ آسیا!
    گر بُزُرگی خواهی و آزادگی
    یا چو اسلافِ غیورت زندگی
    اوّلاً پشتو لِسانت زنده ساز
    هم برین شالوده کاخَت برفراز
    قصرِ مِلّیّت بران تعمیر کُن!
    تا توانی تکیه بر شمشیر کُن!

    (عبدالحی حبیبی)

    اے میری قوم! اے مردُمِ والانِژاد!۔۔۔ اے کہ تمہارے اجدادِ غَیُور مرد و نجیب و سخی تھے۔۔۔ میں تمہارے ساتھ اِک محرَمانہ گُفتگو کر رہا ہوں۔۔۔ تاکہ تم اَسرارِ حیات سے آگاہ ہو جاؤ۔۔۔۔ سُنو، اے پشتونِ باصِدق و صفا!۔۔۔ اے نگہبانِ کُہسارِ قلبِ ایشیا!۔۔۔ اگر تم بُزُرگی و آزادگی چاہو یا اپنے اسلافِ غَیُور کی مانند زندگی چاہو تو اوّلاً اپنی زبان کو زندہ کرو، اور اِسی بُنیاد پر اپنا قصر بالا اُٹھاؤ۔۔۔ قصرِ مِلّیت کو اُس [زبان کی بُنیاد] پر تعمیر کرو!۔۔۔ اور جہاں تک مُمکِن ہو شمشیر پر تکیہ کرو!۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    در کُویِ عشق حاجِب و دربان و بنده‌اند
    سُلطانِ رُوم و خُسرَوِ ایران و پِطرِ رُوس

    (ماه‌شرَف خانم 'مستوره' کُردستانی)

    سُلطانِ رُوم، شاہِ ایران، اور پِطرِ کبیرِ رُوس۔۔۔ [تینوں] کُوئے عشق میں [حقیر] حاجِب و دربان و غُلام ہیں۔۔۔
     
    آخری تدوین: ‏اکتوبر 28, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    میں ایسے «مُلکِ کشمیر» کا آرزومند ہوں کہ جس میں «مِلّتِ کاشُر» کا ہر فرد تسلُّطِ اغیار و اجانِب اور غلبۂ مرگ و تیرَگی سے نِجات پا کر بےغمی و خوش‌دِلی و اِبتِہاج کے ساتھ اپنے وطنِ عزیز «کشمیر» کے بارے میں یہ چیز کہہ سکے جو چار صدیوں قبل «ابوطالب کلیم کاشانی» نے ایک بیت میں اُس کے بارے میں کہی تھی:

    در گُلستانِ کشمیر هر روز کام‌یاب است
    چشم از جمالِ ساقی گوش از صدایِ باران
    (ابوطالب کلیم کاشانی)


    «گُلستانِ کشمیر» میں ہر روز چشم جمالِ ساقی سے، اور کان صدائے باران سے بہرہ‌مند و شادکام ہوتا اور مُراد پاتا ہے۔۔۔
     
    آخری تدوین: ‏اکتوبر 31, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,610
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    حُسن اگر این است ناصح همچو ما خواهد شُدن
    چوبِ تر آخر به آتش آشنا خواهد شُدن

    (ابوطالب کلیم کاشانی)

    حُسن اگر ایسا ہے تو ناصِح [بھی] ہم جیسا [عاشق و دل‌باختہ] ہو جائے گا۔۔۔۔۔ [یہ] تر لکڑی [بھی] بالآخر آتش کے ساتھ آشنا ہو جائے گی (جل جائے گی)۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر