جہاں میں ہونے کو اے دوست یوں تو سب ہوگا - شہریار

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 27, 2018

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (شہریار)
    جہاں میں ہونے کو اے دوست یوں تو سب ہوگا
    ترے لبوں پہ مرے لب ہوں ایسا کب ہوگا


    اسی امید پہ کب سے دھڑک رہا ہے دل
    ترے حضور کسی روز یہ طلب ہوگا


    مکاں تو ہوں گے مکینوں سے سب مگر خالی
    یہاں بھی دیکھوں تماشا یہ ایک شب ہوگا


    کوئی نہیں ہے جو بتلائے میرے لوگوں کو
    ہوا کے رخ کے بدلنے سے کیا غضب ہوگا


    نہ جانے کیوں مجھے لگتا ہے ایسا حاکم شہر
    جو حادثہ نہیں پہلے ہوا وہ اب ہوگا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,645
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مکاں تو ہوں گے مکینوں سے سب مگر خالی
    یہاں بھی دیکھو تماشا یہ ایک شب ہوگا


    :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر