1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $413.00
    اعلان ختم کریں

انشا اللہ خان انشا جگر کی آگ بجھے جلد جس میں وہ شے لا - اِنشاء اللہ خاں "انشا"

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 13, 2014

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    غزل
    (اِنشاء اللہ خاں "انشا")
    جگر کی آگ بجھے جلد جس میں وہ شے لا
    لگا کے برف میں ساقی صراحیء مے لا

    قدم کو ہاتھ لگاتا ہوں، اُٹھ کہیں گھر چل
    خدا کے واسطے اِتنے تو پانو مت پھیلا

    نکل کے وادیء وحشت سے دیکھ، اے مجنوں
    کہ زور دھن میں اب آتا ہے ناقہء لیلا

    گرا جو ہاتھ سے فرہاد کے کہیں تیشہ
    دردنِ کوہ سے نکلی صدائے واویلا

    نزاکت اُس کے یہ مکھڑے کی دیکھیو، انشا
    نسیمِ صبح جو چھو جائے رنگ ہو میلا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر