جدا وہ ہوتے تو ہم ان کی جستجو کرتے - پنڈت رتن پنڈوری

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 13, 2016

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (پنڈت رتن پنڈوری)
    جدا وہ ہوتے تو ہم ان کی جستجو کرتے
    الگ نہیں ہیں تو پھر کس کی آرزو کرتے

    ملا نہ ہم کو کبھی عرضِ حال کا موقع
    زباں نہ چلتی تو آنکھوں سے گفتگو کرتے

    اگر یہ جانتے ہم بھی انہیں کی صورت ہیں
    کمالِ شوق سے اپنی ہی آرزو کرتے

    دلِ حزیں کے مکیں تو اگر صدا دیتا
    تری تلاش کبھی ہم نہ کُو بہ کُو کرتے

    کمال جوشِ طلب کا یہی تقاضا ہے
    ہمیں وہ ڈھونڈتے ہم ان کی جستجو کرتے

    نمازِ عشق تمہاری قبول ہو جاتی
    اگر شراب سے تم اے رتن وضو کرتے
     

اس صفحے کی تشہیر