ابوالاثرحفیظ جالندھری ::::: عاشِق سا بدنصیب کوئی دُوسرا نہ ہو ::::: Hafeez Jullundhri

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 26, 2015

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,645
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    غزل
    [​IMG]
    حفیظ جالندھری

    عاشِق سا بدنصیب کوئی دُوسرا نہ ہو
    معشُوق خود بھی چاہے تو اِس کا بَھلا نہ ہو

    ہے مُدّعائے عِشق ہی دُنیائے مُدّعا
    یہ مُدّعا نہ ہو تو کوئی مُدّعا نہ ہو

    عِبرت کا درس ہے مجھے ہر صورتِ فقِیر
    ہوتا ہے یہ خیال کوئی بادشاہ نہ ہو

    پایانِ کارموت ہی آئی بروئے کار
    ہم کو تو وصل چاہیے کوئی بہانہ ہو

    میرے عزیز مجھ کو نہ چھوڑیں گے قبر تک
    اے جان! اِنتظار نہ کر، توُ رَوانہ ہو

    کعبے کو جارہا ہُوں نِگہ سُوئے دیر ہے
    ہِر پِھر کے دیکھتا ہُوں کوئی دیکھتا نہ ہو

    ہاں اے حفِیظ چھیڑتا جا نغمۂ حیات
    جب تک تِرا ربابِ سُخن بے صدا نہ ہو

    ابوالاثرحفیظ جالندھری
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,389
    بہت عمدہ!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. ادب دوست

    ادب دوست معطل

    مراسلے:
    3,429
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    واہ واہ کیا کہنے
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر