یہ کس فضا میں نامِ خدا جا رہا ہوں میں - مُنشی بشیشور پرشاد منوّر لکھنوی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 21, 2017

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (مُنشی بشیشور پرشاد منوّر لکھنوی)
    یہ کس فضا میں نامِ خدا جا رہا ہوں میں
    مانندِ جبرئیل اُڑا جا رہا ہوں میں


    منزل مری کہاں ہے، مجھے کچھ خبر نہیں
    دریا ہوں اپنی رَو میں بہا جا رہا ہوں میں


    پردے سے لاؤں کیا تمہیں باہر نکال کر
    اپنی نظر سے آپ چھپا جا رہا ہوں میں


    نو واردانِ محفلِ ہستی، خوش آمدید
    بیٹھو یہاں تم آ کے، اُٹھا جا رہا ہوں میں


    ناکامیوں کے داغ منوّر لئے ہوئے
    مثلِ چراغِ صبح بجھا جا رہا ہوں میں
     

اس صفحے کی تشہیر