چند ادبی لطیفے

جیہ نے 'علمی و ادبی لطیفے' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 12, 2009

  1. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    عمدہ چیز

    ایک مرتبہ اکبر الٰہ آبادی کے دوست نے انہیں ایک ٹوپی دکھائی جس پر قل ہو اللہ کڑھا ہوا تھا۔ آپ نے دیکھتے ہی فرمایا “بھئی عمدہ چیز ہے۔ کسی دعوت میں کھانا ملنے مین دیر ہو تو یہ ٹوپی پہن لیا کرو، سب سمجھ جائیں گے کہ انتڑیاں قل ہو اللہ پڑھ رہی ہیں۔“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    قبلہ

    اکبر الٰہ آبادی کو کسی صاحب نے خط لکھا اور خط میں انہیں قبلہ کہہ کر مخاطب کیا۔ اکبر نے جواب دیا “آپ نے مجھے قبلہ لکھا ہے جو کہ مسلمانوں کے لیے قابل احترام جگہ سمجھی جاتی ہے۔ میری سمجھ میں نہیں آتا کہ آپ کو کیا لکھوں۔ یہی لکھ سکتا ہوں کہ و علیکم السلام جامع مسجد۔“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    میں نہیں جانتا

    سر سید احمد خان ایک دفعہ ریل مین سوار تھے۔ کسی اسٹیشن پر دو انگریز ان کے ڈبے میں آ بیٹھے۔ ان میں سے ایک پادری تھا۔ اسے کسی طرح معلوم ہو گیا سر سید احمد خان یہی شخص ہے۔ پادری ان سے یوں مخاطب ہوا “مدت سے آپ سے ملاقات کا اشتیاق تھا۔ آپ سے خدا کی باتیں کرنا چاہتا تھا۔“

    سر سید احمد کان نے کہا “میں نہین سمجھا، آپ کس کی باتیں کرنا چاہتے ہیں؟“

    پادری “خدا کی۔“

    سر سید احمد خان “(کمال سنجیدگی سے) میری تو کبھی ان سے ملاقات نہیں ہوئی۔“

    پادری “(متعجب ہو کر) ہیں ۔۔۔ آپ خدا کو نہیں جانتے۔“

    سر سید احمد خان “مجھ ہی پر کیا موقوف، جس سے ملاقات نہ ہوئی ہو، اسے کوئی بھی نہیں جانتا۔“ پھر کسی کا نام لیکر پوچھا “آپ اسے جانتے ہیں۔“

    پادری “نہیں میں اس سے کبھی نہیں ملا۔“

    سر سید احمد خان “پھر جس سے میں کبھی نہ ملا ہوں، نہ میں نے کبھی اسے اپنے ہاں کھانے پر بلایا ہو، نہ مجھے اس کے ہاں کھانے پر جانے کا اتفاق ہوا ہو، اسے میں کیوں کر جان سکتا ہوں۔

    پادری یہ سن کر خاموش رہا اور دوسرے انگریز سے انگریزی میں کہا “یہ تو سخت کافر ہے۔“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  4. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    خامی

    جگر مراد آبادی کے ایک شعر کی تعریف کرتے ہوئے ایک زندہ دل نے ان سے کہا “حضرت آپ کی غزل کے فلاں شعر کو لڑکیوں کی ایک محفل میں پڑھنے کے بعد بڑی مشکل سے میں پٹنے سے بچا ہوں۔“

    جگر صاحب ہنس کر بولے “عزیزم، میرا خیال ہے کہ اس شعر میں کوئی خامی رہ گئی ہو گی، ورنہ یہ کس طرح ممکن تھا کہ آپ پٹنے سے بچ جاتے۔“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 7
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  5. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ڈرانے کے لیے

    لکھنؤ کے ایک مشاعرے میں جگر مراد آبادی غزل پڑھ رہے تھے۔ ان کے ایک قریبی دوست جب ان کی تصویر کھینچنے لگے، تو جگر صاحب بولے “میر تصویر ایسی نہیں آتی کہ تم گھر میں سجا سکو۔“ (جگر صاحب بہت کالے تھے)۔

    ان کے دوست نے کہا “تصویر سجانے کے لیے نہیں، بچوں کو ڈرانے کے لیے لے جا رہا ہوں۔“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  6. مہتاب

    مہتاب محفلین

    مراسلے:
    16
    غالب صاحب جیسے باکمال لوگ ناپید ہیں
     
  7. مہتاب

    مہتاب محفلین

    مراسلے:
    16
    بہت خوب مزہ آگیا
    اچھی شئیرنگ ہے
     
  8. مہتاب

    مہتاب محفلین

    مراسلے:
    16
    بہت خوب ۔۔۔۔۔۔۔ بہت اچھے لطائف ہیں
     
  9. مہتاب

    مہتاب محفلین

    مراسلے:
    16
    بہت خوب ۔۔۔۔۔۔۔ عمدہ شئیرنگ ہے
     
  10. مہتاب

    مہتاب محفلین

    مراسلے:
    16
    دلچسپ مکالمہ ہے انہوں نے اپنے اندازہ سے صحیح کہا
     
  11. مہتاب

    مہتاب محفلین

    مراسلے:
    16
    اچھا لطیفہ ہے گُڈ
     
  12. بندہ مومن

    بندہ مومن محفلین

    مراسلے:
    9

    بجا فرمایا۔۔۔ اگر تخلص مصرع میں با معنی بھی ہو تو مصرعہ کا حسن دوبالا ہوجاتا ہے۔
     
  13. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ایک سے بڑھ کر ایک

    ہری چند اختر جوش صاحب سے ملنے گئے، جاتے ہی پوچھا، “جناب! آپ کے مزاج کیسے ہیں؟“

    جوش صاحب نے فرمایا، “آپ تو غلط اردو بولتے ہیں، یہ آپ نے کیسے کہا کہ آپ کے مزاج کیسے ہیں، جب کہ میرا تو ایک مزاج ہے نا کہ بہت سے مزاج۔“

    کچھ دن بعد اختر کی پھر جوش سے ملاقات ہوئی۔ جوش نے فرمایا، “ابھی ابھی جگن ناتھ آزاد صاحب کے والد تشریف لائے تھے۔“

    اس پر اختر صاحب نے فرمایا، “کتنے؟“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 9
  14. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    بلڈانہ کے آل انڈیا مشاعرے میں مالی گاؤں کے مترنم شاعر، ارشد مینا نگری غزل سنا رہے تھے۔ غزل ختم ہونے کے بعد کچھ اور پڑھنے کی فرمائش ہوئی۔ ارشد صاحب دوسری غزل سنانے لگے۔ پھر فرمائش ہوئی کہ انہوں نے پھر غزل شروع کر دی۔ اس طرح یہ سلسلہ چلتا رہا اور ڈائس پر بیٹھے ہوئے دوسرے شعرا اور اناؤنسر بہت پریشان ہوئے کہ کسی طرح یہ مائک چھوڑنے کا نام ہی نہیں لیتے تھے۔ اتنے میں مختار یوسفی کو شرارت سوجھی، انہوں نے ایک پرچی لکھ کر ارشد مینا نگری کو تھما دی۔ ارشد مینا نگری غزل ادھوری چھوڑ کر مائک سے ہٹ گئے اور اپنی جگہ پر آ کر بیٹھ گئے۔

    دیگر شعرا نے مختار یوسفی سے استفسار کیا کہ آخر آپ نے پرچی میں کیا لکھ دیا تھا۔ مختار یوسفی نے بڑی سنجیدگی سے کہا کہ "میں نے صرف اتنا ہی لکھا تھا کہ "ارشد صاحب آپ کی پتلون پھٹی ہوئی ہے۔"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • پر مزاح پر مزاح × 2
  15. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    محمڈن ایجوکیشنل کانفرنس کے سالانہ جلسے میں مولوی رضی الدین بسمل نے ایک بڑی درد انگیز قومی نظم حاضرین جلسہ کو سنائی۔ جسے سن کر ہر آنکھ پُرنم ہو گئی۔ نظم کے خاتمے پر نواب محسن الملک نے اٹھ کر کہا "مولوی رضی الدین انے اپنا تخلص تو بسمل رکھا ہے مگر نظم ایسی سنائی کہ دوسروں کو بسمل کر دیا۔"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  16. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    مولانا ظفر علی خان ایڈیٹر زمیندار نے ایک مرتبہ لالہ نانک چند ناز کی ہنگامی اور بمعنی تُک بندی پر تبصرہ کرتے ہوئے انہیں مخلصانہ مشورہ دیا۔

    توڑتا ہے شاعری کی ٹانگ کیوں، اے بے ہُنر!
    شعر کہنے کا سلیقہ سیکھ میلا رام سے​

    مولانا ظفر علی خان، پنڈت میلا رام وفا کو استاد شاعر تسلیم کرتے تھے۔ اس لیے انہوں نے اپنے حریف کو یہ نیک مشورہ دیا تھا۔ جب ناز صاحب نے اپنا پہلا مجموعہ کلام تبصرے کے لیے پنڈت میلا رام وفا کی خدمت میں پیش کیا تو وفا صاحب نے اس پر مندرجہ ذیل تبصرہ کیا۔

    "ناز صاحب کی کتاب برائے تبصرہ ملی۔ کتابت اچھی نہیں، لیکن کلام سے بدرجہا بہتر ہے، جس کے پڑھنے کے بعد یہ پتا آسانی سے لگ سکتا ہے کہ تعزیرات ہند میں شعر کہنے پر کوئی پابندی نہیں ہے۔"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  17. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    خواجہ حسن نظامی بعض اوقات بڑی دُور کی کوڑی لاتے تھے۔ سر تیج بہادر سپرو کے متعلق الٰہ آباد کے ایک ادبی اجتماع میں آپ نے فرمایا کہ "آپ یوں تو سرتیج ہیں، مگر اردو کے سرتاج ہیں، اور اردو آپ کو سپرو نہیں اپنا سپر سمجھتی ہے۔" خواجہ صاحب کی تشریح صرف صناعی نہیں، واقعہ بھی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  18. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ایک دفعہ محمد دین تاثیر نے ہری چند اختر سے پوچھا۔

    "یار پنڈت، سُنا ہے تُو حفیظ کا شاگرد ہے۔"

    اختر صاحب نے کہا "ہاں یہ بات تو صحیح ہے۔" تاثیر نے برجستہ کہا۔ "میں تو تیری بڑی عزت کرتا تھا۔"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  19. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    ایک بار مولانا ظرا علی خاں کو دھن سمائی کہ اگر ہند بھر کے مسلمان ایک ایک روپیہ بھی چندے کے طور پر جمع کریں تو کروڑوں روپے جمع ہو سکتے ہیں۔ اس خطیر رقم سے خانہ خدا کی تعمیر ہونا ممکن ہے۔ اپنے ہمراہیوں کو لے کر جب وہ ایک میراثی کے درِ دولت پر گئے تو میراثی اور میراثن دروازے کی دہلیز پر کھڑے ہو گئے۔ مولانا نے عجز و انکساری کے ساتھ مقصد بیان کیا تو میراثی نے بڑے فخر سے کہا "مولانا! لکھ لیجیے پانچ روپے ۔۔۔" ابھی مولانا قلم کو حرکت میں لانا ہی چاہتے تھے کہ میراثن بول اٹھی۔ "واہ میاں وا، خانہ خدا کی تعمیر اور صرف پانچ روپے چندہ، میاں یہ تو ہم سے نہ ہو گا، ذرا زیادہ رقم دو۔"

    میراثی نے منہ پھلا کر کہا۔ "مولانا دس روپے لکھ دو۔" پیش تر اس کے کہ مولانا قلم کو جنبش دیتے میراثن پکار اٹھی۔ "نا میاں! دس روپے کوئی عطیہ ہوتا ہے؟" میراثی نے جھٹ سے کہا "مولانا پندرہ روپے لکھ لیں۔"

    میراثن تڑپ کر بولی۔ "میاں! کیوں شرمندہ کرتے ہو، پندرہ روپے، بھلا کیا ہوتے ہیں؟"

    میراثی بیس سے تیس اور پھر چھلانگ لگا کر پچاس پر پہنچا۔

    زچ ہو کر مولانا نے کہا "دادا جتنی رقم دینا چاہتے ہو، اتنی ہی لکھوا دو۔"

    میراثی نے نہایت سادگی سے جواب دیا "مولانا غریبوں کے ہاں نمک، نہ آٹا، بھلا ہم کیا چندہ دیں گے، البتہ ہم نے یہ ثابت کر دیا کہ گنتی ہم لوگوں کو بھی آتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  20. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    204,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    چوہدری شہاب الدین لاہور کے میئر تھے۔ ایک دن لاہور کے خاکروبوں نے ہڑتال کر دی۔ اس پر چوہدری صاحب نے ان سب کو ٹاؤں ہال کے میدان میں جمع ہونے کا حکم دیا۔ جب سب جمع ہو گئے تو چوہدری صاھب ان سے مخاطب ہوئے۔

    "بہنو اور بھائیو!"

    ابھی وہ اتنا ہی کہہ پائے تھے کہ ایک بھنگن کا بچہ رونے لگا۔ اس پر بھنگن نے اپنے بچے سے کہا۔ "ارے چپ، ورنہ ماموں ماریں گے۔"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 2

اس صفحے کی تشہیر