نہ جانے کیسی کرامت ہوئی صدا سے مری

عاطف ملک نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 30, 2019

  1. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,241
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    نہ جانے کیسی کرامت ہوئی صدا سے مری
    کہ آسماں بھی لرزنے لگا دعا سے مری

    جو عمر قید ملی عالمِ مصائب میں
    ہوا تھا ایسا بھی کیا سانحہ خطا سے مری

    میں رب سے اس لیے کرتا ہوں زندگی کی دعا
    کسی کا چَین ہے وابستہ اب بقا سے مری

    یہ اور بات انا اعتراف سے روکے
    پگھل رہا ہے وہ پتھر بھی التجا سے مری

    میں بانٹتا ہوں ترے در کی خاک لوگوں میں
    تمام شہر شفا پاتا ہے دوا سے مری

    جو مجھ کو وہ ہی میسر نہ ہو سکا عاطفؔ
    بھلے جہاں میں کوئی بھی نہ ہو بلا سے مری

    عاطفؔ ملک
    اگست ۲۰۱۹​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
    • زبردست زبردست × 2
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    26,564
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    واہ واہ واہ، بہت خوب ڈاکٹر صاحب۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد تابش صدیقی

    محمد تابش صدیقی منتظم

    مراسلے:
    25,388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    بہت خوب عاطف بھائی۔ بہت عمدہ

    ہمارے اسلام آباد میں ایک مشہور بزرگ ہیں کمر کے درد کے علاج کے لیے۔ ان کے پاس کوئی بھی کسی بھی نوعیت کا مریض آئے، تو ایک بڑے تھال میں سے ایک پڑیا اٹھا کر دے دیتے ہیں۔ شاید یہی معاملہ ہے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  4. محمد عدنان اکبری نقیبی

    محمد عدنان اکبری نقیبی لائبریرین

    مراسلے:
    18,772
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ماشاء اللہ ،
    بہت عمدہ لاجواب بھیا
    واہ واہ ،
    کیا کہنے ہیں ۔
    شاندار غزل ۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,241
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    حوصلہ افزائی کیلیے بہت شکریہ سر:)
    شکریہ:)
    :unsure::p
    بہت شکریہ عدنان بھائی:)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 2

اس صفحے کی تشہیر