تیرہویں سالگرہ محترم سید عمران صاحب سے گفتگو

نور سعدیہ شیخ نے 'محفل کی سالگرہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 21, 2018

  1. م حمزہ

    م حمزہ محفلین

    مراسلے:
    3,408
    موڈ:
    Cool
    گفتگو ابھی جاری ہے


    بس سید عمران صاحب ایام حج کے بعد حج پر چلے گئے ہیں۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. نور سعدیہ شیخ

    نور سعدیہ شیخ مدیر

    مراسلے:
    5,059
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Asleep
    محترم سید عمران اپنا انٹرویو جاری رکھیں گوکہ سالگرہ پایہ تکمیل کو پہنچی مگر یہ سلسلہ ابھی نا مکمل ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    7,177
    جھنڈا:
    Pakistan
    ان شاء اللہ۔۔۔
    والدہ کی طبیعت کچھ ناساز چل رہی ہے۔۔۔
    اس لیے یہاں آمد کم کم ہے۔۔۔
    جیسے ہی افاقہ ہوتا ہے ان شاء اللہ آپ کے کہے پر عمل کرتے ہیں!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. اے خان

    اے خان محفلین

    مراسلے:
    4,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    زبردست ماشاءاللہ جزاک اللہ
     
  5. اے خان

    اے خان محفلین

    مراسلے:
    4,087
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    اللہ تعالیٰ آپ کی والدہ کو جلد صحت کاملہ عطا فرمائے آمین
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • متفق متفق × 1
  6. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    7,177
    جھنڈا:
    Pakistan
    آمین۔۔۔
    جزاک اللہ خیرا!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. محمد عدنان اکبری نقیبی

    محمد عدنان اکبری نقیبی محفلین

    مراسلے:
    12,088
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    اللہ کریم آپ کی والدہ کو صحت کاملہ عطا فرمائیں ،آمین
     
  8. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    7,177
    جھنڈا:
    Pakistan
    نہ جانے اس نظریہ کی داغ بیل کب اور کیسے پڑی کہ عشق حقیقی کا راستہ عشق مجازی سے ہوکر گزرتا ہے۔۔۔
    توبہ، نعوذ باللہ!!!
    کیا یہ اسلام کی تعلیمات ہیں کہ کسی کی ماں بہن بیٹی پر ڈورے ڈالیں جائیں، تنہائیوں میں ان کو یاد کرکے آہیں بھری جائیں؟؟؟
    کیا کوئی غیرت مند انسان یہ سوچ سکتا ہے کہ کوئی مرد اس کی خواتین کے بارے میں ایسا رویہ رکھے؟؟؟
    اور کیا اللہ تعالیٰ اور اللہ کے رسول اس کا حکم تو کیا ترغیب بھی دے سکتے ہیں؟؟؟
    عشق حقیقی سراسر طاعت و پاکیزگی۔۔۔
    عشق مجازی سر تا پا مصیبت و معصیت۔۔۔
    عشق حقیقی دلوں کی سرشاری اور سرمستی ۔۔۔
    عشق مجازی دل کی وہ بے چینی اور بدمستی جو لوگوں کو پاگل کرکے پاگل خانے تک پہنچا دے۔۔۔
    ایک عشق دونوں جہاں کے اطمینان و سکون کا نام۔۔۔
    دوسرا عشق دونوں جہاں کی تباہی و بربادی کا عنوان۔۔۔
    کیا کسی کی ماں بہن پر ڈورے ڈالنے والا یا بری نظر سے دیکھنے والا ولی اللہ ہوسکتا ہے؟؟؟
    اللہ تعالیٰ تو حکم دے رہے ہیں:
    قل للمؤمنین یغضوا من ابصارھم۔۔۔
    اے ہمارے نبی مومن مردوں سے کہہ دیجیے کہ (نامحرم عورتیں سے) اپنی نگاہیں نیچی رکھیں کہ یہ عصمت کی حفاظت کا راستہ ہے۔۔۔
    آگے یہی حکم عورتوں کو بھی دیا ہے۔۔۔
    اور رسول اللہ کی حدیث پاک ہے۔۔۔
    لعن اللہ الناظر و المنظور الیہ۔۔۔
    خدا کی لعنت ہو بدنظری کرنے والے پر ، اور اس پر جو اپنے آپ کو بدنظری کروانے کے لیے پیش کرے۔۔۔
    ان وعیدوں کے ہوتے ہوئے عشق مجازی میں مبتلا واصل باللہ ہونے کا خواب بھی نہیں دیکھ سکتا۔۔۔
    خدا کے غضب کے اعمال میں ملوث ہونے والا ان کی بارگاہ محبت میں کیسے داخل ہوسکتا ہے؟؟؟
    اللہ اور اس کے رسول نے برے راستے پر پڑنے والے ہر ہر قدم پر تنبیہ کی ہے مثلاً مرد و زن کا اختلاط نہ ہو، کسی ضرورت سے بات کرنی ہو تو نگاہوں کو ہر ممکنہ طور پر نیچے رکھیں اور خواتین اپنے فطری لوچ و نزاکت سے بات نہ کریں، راستوں میں خوشبوئیں بکھیرتی، زیور بجاتی نہ چلیں تاکہ غیر مردوں کا دل ان کی طرف راغب نہ ہو۔۔۔
    اتنی احتیاطیں اسی لیے بتائیں کہ نہ ہمارے بندے معاشرے میں ذلیل و رسوا ہوں، نہ ان کے متعلقین بے عزت ہوں۔۔۔
    کسی لڑکے یا لڑکی کی غلط کاری طشت از بام ہوجاتی ہے تو سارے خاندان کا سر شرم سے جھک جاتا ہے۔۔۔
    البتہ اتنی بات ہوسکتی ہے کہ اگر کوئی عاشق مجازی تائب ہوجائےاور خدا کی طرف رجوع کرے تو چوں کہ اس نے عشق کا کچھ ذائقہ چکھ لیا ہے ، تو جب اس کے عشق کا رُخ خدا کی طرف ہوجائے گا تو اس کی رفتار تیز ہوسکتی ہے۔۔۔
    بس سارے فسانے کا نچوڑ اتنی سی بات ہے ۔۔۔
    تاریخ میں آج تک اللہ کے کسی ولی نے اس حوالے سے شہرت نہیں پائی کہ وہ عشق مجازی سے گزر کر عشق حقیقی تک پہنچا ہو۔۔۔
    شیخ عبدالقادر جیلانی ہوں یا حسن بصری، جنید بغدادی ہوں یا ابراہیم ابن ادھم تمام بزرگ متبع شریعت و سنت تھے۔۔۔
    اتباع شریعت اور کسی متبع سنت بزرگ کی رہبری خدا تک پہنچنے کا ذریعہ ہے۔۔۔
    آج تک تمام اولیاء اسی راستے سے خدا تک پہنچے ہیں۔۔۔
    اور یہی سنت صحابہ ہے۔۔۔
    مستند رستے وہی مانے گئے
    جن سے ہوکر ترے دیوانے گئے!!!
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 8, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • متفق متفق × 1
  9. نور سعدیہ شیخ

    نور سعدیہ شیخ مدیر

    مراسلے:
    5,059
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Asleep
    واہ ، بہت خوب لکھا ہے ۔ آپ سے کسی قدر متفق تو ہوں مگر دل میں ایک سوال آیا ہے کہ مجاز سے مراد تو انسان ہے اور حقیقت سے مراد تو اللہ تعالیٰ ہیں ۔۔۔۔، کیا حضور پاک ﷺ سے صحابہ کی محبت مجازی حیثیت نہ رکھتی تھی ؟
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. سید عمران

    سید عمران محفلین

    مراسلے:
    7,177
    جھنڈا:
    Pakistan
    جو محبت اللہ کے لیے ہو وہ حب فی اللہ ہی میں شمار ہوتی ہے۔۔۔
    نبی کریم اور صحابہ کی آپس میں محبت تو بہت اعلیٰ و ارفع درجہ ہے۔۔۔
    عام انسان کی بیوی بچوں سے، والدین سے، رشتے داروں سے، اللہ والوں سے غرض وہ تمام محبتیں جو اللہ کے لیے کی جائیں اللہ تعالیٰ انہیں اپنی اطاعت میں ہی شمار کرتے ہیں کیوں کہ اس کی ترغیب اللہ و رسول خود دیتے ہیں۔۔۔
    عشق مجازی عموماً ممنوعہ عشق کے لیے استعمال ہوتا ہے!!!
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 10, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر