شاکرالقادری

لائبریرین
سلام
اعلی ٰحضرت امام احمد رضا خان بریلویؒ
کے چند منتخب اشعار پر فارسی تضمین
از
سید شاکر القادری
(1)
ای دلا از رہِ عشقِ خیر الانام
ہم چو بادِ صبا سوی طیبہ خرام
با ادب خوش بخواں گردِ دارالسلام
’’مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام،،

(2)
کاکلِ مصطفی نافۂ دل کشا
طرہ جاں فزا بوسہ گاہِ صبا
بندِ زلفِ دوتا دام عشاق را
’’وہ کرم کی گھٹا گیسوئے مشک سا
لکۂ ابرِ رحمت پہ لاکھوں سلام،،

(3)
لعلِ شکر فشاں چشمۂ آبِ جاں
سلسبیلِ کرم نطقِ گوھر فشاں
انگبیں لہجۂ شاہِ معجز بیاں
’’جس میں نہریں ہیں شیر و شکر کی رواں
اس گلے کی نضارت پہ لاکھوں سلام‘‘

(4)
دیدۂ شاہِ مُلکِ وَراء الورأ
شاہد ِجلوۂ سِد٘رَۃُ المُن٘تَہیٰ
شرحِ مَازَاغ و تفسیرِ اَدنیٰ دَنیٰ
’’معنیٔ قَد٘رایٔ،مقصدِمَا طَغیٰ
نرگسِ باغِ قدرت پہ لاکھوں سلام‘‘
﴿5﴾
سَوفَ یُع٘طِیکَبابِ دیارِ قبول
از فَتَر٘ضیٰ بوَد اعتبارِ قبول
آبِ روئے گلِ خندہ دارِ قبول
آبشارِ کرم جوئبارِ قبول
’’وہ دعا جس کا جوبن بہارِ قبول
اُس نسیمِ اِجابت پہ لاکھوں سلام‘‘
(6)
اعظم و افقر افضل المومنیں
سالم و اسلم و اول المسلمیں
اعلم و اقدس و اصدق الصادقیں
’’مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں
ساقی شیر و شربت پہ لاکھوں سلام‘‘
﴿6﴾
آں امامِ عَرَب(۱) سیدالمتقیں(۲)
قائدِ گل عذارانِ روشن جبیں(۳)
دِیدنِ چہرہ اش بندگی بالیقیں(۴)
’’مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں
ساقی شیر و شربت پہ لاکھوں سلام‘‘
______________________________________________
۱۔ عن عائشۃ رضی اللہ عنھاقالت: قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ادعو الی سید العرب فقلت: یا رسول اللہ الست سید العرب؟ قال انا سید ولد آدم وعلی سید العرب۔ رواہ الحاکم۔
۲۔ عن عبداللہ بن عکیم رضی اللہ عنہ قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ان اللہ تعالی اوحی الی فی علی ثلاثۃ اشیاء لیلۃ اسری بی: انہ سیدالمومنین وامام المتقین و قائد الغرالمحجلین۔ رواہ الطبرانی
۳۔ قائد الغرالمحجلین (حوالہ مذکور)
۴۔ عَن٘ عَائِشَۃ رَضیَ اللّہ عنھا قَالَت : رَای٘ت ابَا بَکررضی اللہ عنہ یکثرالنَّظر اِلی وجہ عَلِیّ فقلت لہ یا ابت ! اراک تکثر النظر الی وجہ علی فقال یا بنیۃ سمعت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم یقول: النظر الی وجہ علی عبادۃ۔ رواہ ابن عساکر فی تاریخہ۔[/font]
 

شاکرالقادری

لائبریرین

دُختِ خیرالوراؐ ہمسرِ ُمرتضیٰؑ
بانوی بانوانِ جہاں فاطمہؑ(۱)
پیکرِ صبر و تسلیم و شرم و حیا
’’اُس بتولِ جگر پارۂ مصطفی ؐ
حجلہ آرائے عفت پہ لاکھوں سلام‘‘
/
۱۔ عن عائِشَۃَ رضی اللہ عنھا: قَالَت٘ کُنَّ أَز٘وَاجُ النَّبِیِّ صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلم عِن٘دَہُ لَم٘ یُغَادِر٘ مِن٘ھُنَّ وَاحِدَۃً فَأَق٘بَلَت٘ فَاطِمَۃُ تَم٘شِی مَا تُخ٘طِیُٔ مِش٘یَتُھَا مِن٘ مِش٘یَۃِ رَسُولِ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم شَیًٔا فَلَمَّا رَآھَا رَحَّبَ بِھَا فَقَالَ مَر٘حَبَا بِاب٘نَتِی ثُمَّّ أَج٘لَسَھَا عَن٘ یَمِینِہِ أَو٘ عَن شِمَالِہِ ثُمَّ سَارَّھَا فَبَکَت٘ بُکَائً شَدِی٘دًا فَلَمَّا رَأَی جَزَعَھَاسَارَّھَا الثَّانؑیَۃَ فَضَحِکَت٘ فَقُل٘تُ لَھَا خَصَّکِ رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم مِن٘ بَی٘نِ نِسَائِہِ بِالسِّرَارِ ثُمَّ أَن٘تِ تَب٘کِی٘نَ فَلَمَّا قَا٘مَ رَسُو٘لُ اللَّہِ صَلی اللَّہ عَلیہِ وآلہِ وَسَلم سَأَل٘تُھَا٘ مَا قَالَ لَکِ رَسُولُ اللَّہِ صَلی اللَّہ عَلیہِ وَآلہِ وَسَلم قَالَت٘ مَا کُن٘تُ أُف٘شِی عَلَی رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم سِرَّہُ قَالَت٘ فَلَمَّا تُوَفِّی رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم قُل٘تُ عَزَم٘تُ عَلَی٘کِ بِمَا٘ لِی عَلَی٘کِ مِنَ ال٘حَقِّ لَمَا٘ حَدَّث٘تِنِی مَاقَالَ لَکِ رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم فَقَالَت٘ أَمَّاال٘آنَ فَنَعَم٘ أَمَّا حِینَ سَارَّنِی ِفی ال٘مَرَّۃِ الأُولَی فَأَخ٘بَرَنِی أَنَّ جِب٘رِی٘لَ کَانَ ُیعَا٘رِضُہُ ال٘قُر٘آنَ فِی٘ کُلِّ سَنَۃٍ مَرَّۃً أَو٘ مَرَّتَی٘نِ وَاِنَّہُ عَارَضَہُ الآنَ مَرَّتَی٘نِ وَ اِنِّی لا اری الاجل الا قد اقترب فاتقی اللہ واصبری فانہ نعم السلف انک لک قالت فبکیت بکائی الذی رایت فلما رای جزعی سارنی الثانیہ فقال یَا فَاطِمَۃُ اَمَا تَرضَی٘ اَن تَکُونِی سَیِّدَۃَ نِسَائِ ال٘مُؤ٘مِنِی٘نَ أَو٘ سَیِّدَۃَ نِسَائِ ھَذِہِ ال٘ٔأُمَّۃِ( مسلم: باب فضائل الصحابہ)
 

محمد وارث

لائبریرین
ای دلا از رہِ عشقِ خیر الانام
ہم چو بادِ صبا سوی طیبہ خرام
با ادب خوش بخواں گردِ دارالسلام
’’مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام،،

بہت اعلٰی تضمین ہے شاکر القادری صاحب، بہت خوب۔

جزاک اللہ خیراً
 

الف نظامی

لائبریرین
سلامِ اعلی ٰ حضرت امام احمد رضا خان بریلوی
کے چند منتخب اشعار پر فارسی تضمین
از
سید شاکر القادری
﴿1﴾
ای دلا از رہِ عشقِ خیر الانام
ہم چو بادِ صبا سوی طیبہ خرام
با ادب خوش بخواں گردِ دارالسلام
’’مصطفی جانِ رحمت پہ لاکھوں سلام
شمعِ بزمِ ہدایت پہ لاکھوں سلام،،
﴿2﴾
کاکلِ مصطفی نافۂ دل کشا
طرہ جاں فزا بوسہ گاہِ صبا
بندِ زلفِ دوتا دام عشاق را
’’وہ کرم کی گھٹا گیسوئے مشک سا
لکۂ ابرِ رحمت پہ لاکھوں سلام،،
﴿3﴾
لعلِ شکر فشاں چشمۂ آبِ جاں
سلسبیلِ کرم نطقِ گوھر فشاں
انگبیں لہجۂ شاہِ معجز بیاں
’’جس میں نہریں ہیں شیر و شکر کی رواں
اس گلے کی نضارت پہ لاکھوں سلام‘‘
﴿4﴾
دیدۂ شاہِ مُلکِ وَراء الورأ
شاہد ِجلوۂ سِد٘رَۃُ المُنتَہیٰ
شرحِ مَازَاغ و تفسیرِ اَدنیٰ دَنیٰ
’’معنیٔ قَد٘رایٔ،مقصدِمَا طَغیٰ
نرگسِ باغِ قدرت پہ لاکھوں سلام‘‘
﴿5﴾
سَوفَ یُعطِیکَ بابِ دیارِ قبول
از فَتَر٘ضیٰ بوَد اعتبارِ قبول
آبِ روئے گلِ خندہ دارِ قبول
آبشارِ کرم جوئبارِ قبول
’’وہ دعا جس کا جوبن بہارِ قبول
اُس نسیمِ اِجابت پہ لاکھوں سلام‘‘
﴿6﴾
اعظم و افقر افضل المومنیں​
سالم و اسلم و اول المسلمیں​
اعلم و اقدس و اصدق الصادقیں​
’’مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں
ساقی شیر و شربت پہ لاکھوں سلام‘‘
﴿6﴾
آں امامِ عَرَب(۱) سیدالمتقیں(۲)
قائدِ گل عذارانِ روشن جبیں(۳)
دِیدنِ چہرہ اش بندگی بالیقیں(۴)
’’مرتضیٰ شیرِ حق اشجع الاشجعیں
ساقی شیر و شربت پہ لاکھوں سلام‘‘
______________​
1- عن عائشۃ رضی اللہ عنھاقالت: قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ادعو الی سید العرب فقلت: یا رسول اللہ الست سید العرب؟ قال انا سید ولد آدم وعلی سید العرب۔ (رواہ الحاکم)​
2- عن عبداللہ بن عکیم رضی اللہ عنہ قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ان اللہ تعالی اوحی الی فی علی ثلاثۃ اشیاء لیلۃ اسری بی: انہ سیدالمومنین وامام المتقین و قائد الغرالمحجلین۔ (رواہ الطبرانی)​
3- قائد الغرالمحجلین (حوالہ مذکور)​
4-عَن٘ عَائِشَۃ رَضیَ اللّہ عنھا قَالَت : رَایت ابَا بَکررضی اللہ عنہ یکثرالنَّظر اِلی وجہ عَلِیّ فقلت لہ یا ابت ! اراک تکثر النظر الی وجہ علی فقال یا بنیۃ سمعت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم یقول: النظر الی وجہ علی عبادۃ۔ رواہ ابن عساکر فی تاریخہ)​
______________​
﴿7﴾
دُختِ خیرالوراؐ ہمسرِ ُمرتضیٰؑ
بانوی بانوانِ جہاں فاطمہؑ(۱)
پیکرِ صبر و تسلیم و شرم و حیا
’’اُس بتولِ جگر پارۂ مصطفی ؐ
حجلہ آرائے عفت پہ لاکھوں سلام‘‘
1- عن عائِشَۃَ رضی اللہ عنھا: قَالَت٘ کُنَّ أَز٘وَاجُ النَّبِیِّ صلی اللّٰہ علیہ وآلہ وسلم عِن٘دَہُ لَم٘ یُغَادِر٘ مِن٘ھُنَّ وَاحِدَۃً فَأَق٘بَلَت٘ فَاطِمَۃُ تَم٘شِی مَا تُخ٘طِیُٔ مِش٘یَتُھَا مِن٘ مِش٘یَۃِ رَسُولِ اللّٰہِ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم شَیًٔا فَلَمَّا رَآھَا رَحَّبَ بِھَا فَقَالَ مَر٘حَبَا بِاب٘نَتِی ثُمَّّ أَج٘لَسَھَا عَن٘ یَمِینِہِ أَو٘ عَن شِمَالِہِ ثُمَّ سَارَّھَا فَبَکَت٘ بُکَائً شَدِی٘دًا فَلَمَّا رَأَی جَزَعَھَاسَارَّھَا الثَّانؑیَۃَ فَضَحِکَت٘ فَقُل٘تُ لَھَا خَصَّکِ رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم مِن٘ بَی٘نِ نِسَائِہِ بِالسِّرَارِ ثُمَّ أَن٘تِ تَب٘کِی٘نَ فَلَمَّا قَا٘مَ رَسُو٘لُ اللَّہِ صَلی اللَّہ عَلیہِ وآلہِ وَسَلم سَأَل٘تُھَا٘ مَا قَالَ لَکِ رَسُولُ اللَّہِ صَلی اللَّہ عَلیہِ وَآلہِ وَسَلم قَالَت٘ مَا کُن٘تُ أُف٘شِی عَلَی رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم سِرَّہُ قَالَت٘ فَلَمَّا تُوَفِّی رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم قُل٘تُ عَزَم٘تُ عَلَی٘کِ بِمَا٘ لِی عَلَی٘کِ مِنَ ال٘حَقِّ لَمَا٘ حَدَّث٘تِنِی مَاقَالَ لَکِ رَسُو٘لُ اللَّہِ صلی اللَّہ عَلَیہِ وَآلہ وَسَلَّم فَقَالَت٘ أَمَّاال٘آنَ فَنَعَم٘ أَمَّا حِینَ سَارَّنِی ِفی ال٘مَرَّۃِ الأُولَی فَأَخ٘بَرَنِی أَنَّ جِب٘رِی٘لَ کَانَ ُیعَا٘رِضُہُ ال٘قُر٘آنَ فِی٘ کُلِّ سَنَۃٍ مَرَّۃً أَو٘ مَرَّتَی٘نِ وَاِنَّہُ عَارَضَہُ الآنَ مَرَّتَی٘نِ وَ اِنِّی لا اری الاجل الا قد اقترب فاتقی اللہ واصبری فانہ نعم السلف انک لک قالت فبکیت بکائی الذی رایت فلما رای جزعی سارنی الثانیہ فقال یَا فَاطِمَۃُ اَمَا تَرضَی٘ اَن تَکُونِی سَیِّدَۃَ نِسَائِ ال٘مُؤ٘مِنِی٘نَ أَو٘ سَیِّدَۃَ نِسَائِ ھَذِہِ ال٘ٔأُمَّۃِ( مسلم: باب فضائل الصحابہ)
 
Top