غزل

Sabra Amin نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 12, 2020

ٹیگ:
  1. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    کردار کی پرکھ کو تو چند لمحے ہی درکار

    خورشید کی کرن پتہ دیتی ہے سحر کا



    کیونکر ہو وہ شمشیر بکف برسر میداں

    عادی ا گر ہو جائے بد ن لقمہء تر کا



    احبا ب تو کیا سایہ بھی پھر ساتھ نہ دے گا

    تقدیر کے بھنور میں گھرے بندہ بشر کا



    اوروں کی بھری جھولی اور میں تہی داماں

    رکھا نہ بھرم اس نے میرے کاسہء سر کا



    کس زعم سے دل رکھا تھا پہلو میں چھپا کے

    لو پار ہوا جاتا ہے اب تیر نظر کا



    _صابرہ امین
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    محترمین الف عین صاحب، شاہد شاہنواز صاحب، خلیل الرحمن صاحب، سیّد عاطف علی صاحب

    آداب
    آپ سب سے رھنمائ کی درخواست ہے ۔ دعاؤں کے ساتھ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  3. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,223
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    آپ کی غزل " مفعول مفاعیل مفاعیل فاعلن" بحر میں ہے۔ اسی بحر میں غالب کا یہ شعر دیکھیے۔
     
  4. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    کردار کی پرکھ کو محض لمحہ ہی درکار
    یا
    کردار کی پرکھ کو چند لمحے ہی درکار
    یا
    کردار کے پرکھنے کو چند لمحے ہی درکار
    یا
    کردار کے پرکھنے کو لمحات ہی کافی

    سر کونسا مناسب ہے
    مفعول مفاعیل مفاعیل فاعلن یہ سب بھی نہیں پتہ مگر کوشش کر رہی ہوں۔
    غالب کے ساتھ اپنے ناچیز کام کا موازنہ دیکھ کر حیران ہوِں ۔ ۔ آپ غلط بھی نہیں ہو سکتے ۔ ۔ یا الٰہی یہ ماجرا کیا ہے
     
  5. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    محترم محمد ریحان قریشی شکریہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  6. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    محترم محمد خلیل الرحمٰن صاحب
    اسلام و علیکم
    آپ کے وقت کا شکریہ ۔ ۔ آخری شعر کی تعریف کا شکریہ ۔ ۔ اللہ کا کرم ہو گیا تھا بس اچانک ذہن میں آگیا تھا بلا ارادہ
    جن اشعار کو آپ نے بحر میں لانے کا کہا ہے وہ بالکل بحر میں آ سکتے ہیں مگر ناچیز کو بحر کا "ب" بھی معلوم نہیں ۔ ۔ اگر پتہ ہوتا تو بحر سے خارج ہی نہ ہونے دیتی ۔ ۔ ابھی گوگل کر کے دیکھتی ہوں ۔ ۔ ایک اور لڑی حاضر ٰہے ۔ ۔ بحر سیکھنے کے بعد سب کو ایک ساتھ ہی بحر برد کر دوں گی،:) انشااللہ
    جزاک اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  7. محمد عدنان اکبری نقیبی

    محمد عدنان اکبری نقیبی محفلین

    مراسلے:
    18,434
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    وعلیکم السلام،
    صابرہ بہن آپ اس کتاب کا مطالعہ کریں۔یہ کتاب شاعری سیکھنے میں آپ کے لیے مددگار ثابت ہوگی ۔
     
  8. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    محترم محمد عدنان اکبری نقیبی صاحب
    یہ تو "کن" ہو گیا ۔ ۔ غیب سے مدد آ گئ ۔ ۔آپ ذریعہ بن گئے ۔ ۔ اور اپنے رب کی کونسی کونسی نعمت کو جھٹلاؤ گے ۔ ۔ جزاک اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
    • متفق متفق × 1
  9. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    ٭نعمتوں
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,535
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اس بحر میں یہ کنفیوژن بہت سے مبتدیوں کو ہو جاتا ہے کہ وہ دو بحور کو خلط ملط کر دیتے ہیں، مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن اور مفعول فاعلات مفاعیل فاعلات
    فاعلن/فاعلات یعنی آدھا مصرع اس بھر میں اور آدھا مصرع دوسری بحر میں ہو جاتا ہے، اس غزل میں بھی دو ایک جگہ تم سے یہی غلطی ہوئی ہے
    مطلع بھی کہہ لو تو غزل مکمل کہی جا سکے

    کردار کی پرکھ کو تو چند لمحے ہی درکار

    خورشید کی کرن پتہ دیتی ہے سحر کا
    ... الفاظ بدلنے سے روانی بھی محسوس ہوتی ہے اور بحر بھی درست ہو جاتی ہے، اسے یوں دیکھو
    کردار کو پرکھو گے تو کچھ پل ہی لگیں گے
    سورج کی کرن جوں پتہ دیتی ہے سحر کا
    تکنیکی طور پر تو درست ہو گیا، لیکن واضح نہیں ہو رہا ہے مفہوم کے اعتبار سے

    کیونکر ہو وہ شمشیر بکف برسر میداں

    عادی ا گر ہو جائے بد ن لقمہء تر کا
    ... 'اگرو جائے' تقطیع ہوتا ہے یعنی ہو جائے کی ہ کا اسقاط غلط ہے
    ہو جائے جو عادی یہ بدن.....
    سے درست ہو جائے گا


    احبا ب تو کیا سایہ بھی پھر ساتھ نہ دے گا

    تقدیر کے بھنور میں گھرے بندہ بشر کا
    .. دوسرا مصرع وہی دو بحور کے اختلاط کا نتیجہ ہے جیسا شروع میں کہا تھا میں نے، اس مصرعے کو درست کیا جا سکتا ہے اگر مطلب واضح ہو، موجودہ صورت میں شعر دو لخت لگ رہا ہے



    اوروں کی بھری جھولی اور میں تہی داماں

    رکھا نہ بھرم اس نے میرے کاسہء سر کا
    ... پہلے مصرع میں بحر کی معمولی سی غلطی ہے
    اوروں کی تو جھولی ہے بھری، میں تہی داماں
    کر دو، درست اور اچھا ہو جائے گا شعر


    کس زعم سے دل رکھا تھا پہلو میں چھپا کے

    لو پار ہوا جاتا ہے اب تیر نظر کا
    .. مکمل درست ماشاء اللہ
     
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,535
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بحر برد مت کرو، ہم لوگ ہیں نا انہیں بچانے کے لئے!
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    34,535
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    'شاعری سیکھیے' گوگل کرنے سے ان لائن بھی بہت جگہ ٹیوٹوریل ملتے ہیں
     
  13. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    محترم عین صاحب
    آداب
    اشعار کو بچانے کا فریضہ تو اٹھانا ہی پڑے گا کہ یہ بحر، قافیہ اور ردیف کا درد بھی آپ لوگوں کی عطا ہے تو چارہ گری تو کرنی پڑے گی۔ میں میر جیسی سادہ بھی نہیں کہ کسی کے صاحبزادوں سے دوا لوں۔ ۔ ۔ اچھی خاصی شاعری ہو رہی تھی تھوک کے حساب سے۔ احباب بھی تعریفوں کے ڈونگرے پچھلے ایک مہینے سے برسا رہے تھے۔ لاعلمی بھی کیا مزہ رکھتی ہے یہ کوئ مجھ سے پوچھے۔ اور اب آگہی کا عذاب بھی گنوا سکتی ہوں۔ دل تو خاصا مطمئن تھا، یہ سب حسب روایت خرد کا کمال ہے کہ جاؤ بڑوں اور استادوں سے رائے لو۔ ۔ اب حال یہ ہے کہ جیسے ہی کوئ شعر وارد ہونے کی کوشش کرتا ہے قافیہ اور ردیف اسے ڈرانے لگتے ہیں۔ ۔ بحر دانت نکوسے حملہ آور ہوتی ہے ۔ ۔ اور شعر بھاگ جاتا ہے ۔ ۔ کہاں ایک دن میں دس دس بیس بیسا اشعار اور کہاں ایک بھی ہاتھ نہیں آرہا ۔ ۔ فعلن فعولن کا ورد اسے پاس ہی پھٹکنے نہیں دیتا ۔ ۔ مگر عقل تسلی دیتی ہے کہ ایک پختہ شعر بہت سے خام اشعار پر فوقیت رکھتا ہے۔ جانتی ہوں تخلیق کا وقتی درد نعمت اور رحمت کی دائمی خوشیوں کے آگے ہیچ ہے ۔ ۔ سو تیار ہیں ۔ ۔ کتاب بھی مل گئ ہے اور چند یو ٹیوب ویڈیوز بھی ۔ ۔ اور اپ لوگ بھی ھمدرد معلوم ہوتے ۔ ۔ نیا پار لگ ہی جائے گی ۔ ۔ انشا اللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  14. محمد عدنان اکبری نقیبی

    محمد عدنان اکبری نقیبی محفلین

    مراسلے:
    18,434
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    واہ بہنا ،
    کیا خوب انداز بیاں ہے،
    آپ کو ایک بلکل مفت مشورہ دیں ،
    آپ سخن کے ساتھ افسانہ نگاری پر بھی توجہ دیں تو آپ بہترین رائٹر بن سکتی ہیں ۔
     
  15. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  16. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    محترم محمد عدنان اکبری صاحب
    آداب
    آپ کے قیمتی مشورے سے بالکل اتفاق ہے۔ بس ذرا شاعری سے دودو ہاتھ ہو جائیں، پھرانشااللہ ۔ آپ کی حوصلہ افزائ کا شکریہ۔ جزاک اللہ
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  17. محمد عدنان اکبری نقیبی

    محمد عدنان اکبری نقیبی محفلین

    مراسلے:
    18,434
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    ان شاء اللہ ،
    ہم پر امید ہیں کہ آپ ضرور میدان سخن میں کامیاب ہوں گی اور آپ کی ہنستی مسکراتی اور شگفتہ انداز بیان سے بھرپور تحریر کے منتظر ہیں ۔
     
  18. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    :)
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. Sabra Amin

    Sabra Amin محفلین

    مراسلے:
    104
    آداب
    کہیے غزل میں کچھ بہتری آئ یا نہیں

    موجوں کی روا نی میں جو حصہ ہے لہر کا
    سورج کی کرن یوں پتہ دیتی ہے سحر کا


    کردار کو پرکھو گے تو کچھ پل ہی لگیں گے
    وہ شخص بھلے ہو کسی گاؤں یا شہر کا
    یا
    وہ شخص ہو چاہے کسی گاؤں یا شہر کا

    کیونکر ہو وہ شمشیر بکف برسر میداں
    ہو جائے جو عادی یہ بدن لقمئہ تر کا

    احبا ب تو کیا سایہ بھی پھر ساتھ نہ دے گا
    حا لات کی چکی میں پسے بندہ بشر کا

    اوروں کی تو جھولی ہے بھری، میں تہی داماں
    رکھا نہ بھرم اس نے میرے کاسہء سر کا

    کس زعم سے دل رکھا تھا پہلو میں چھپا کے
    لو پار ہوا جاتا ہے اب تیر نظر کا
     
    مدیر کی آخری تدوین: ‏مئی 14, 2020
  20. محمد خلیل الرحمٰن

    محمد خلیل الرحمٰن مدیر

    مراسلے:
    9,223
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    اب بہت بہتر صورتحال ہے۔ سوائے قوافی کے دو الفاظ کے پوری غزل بحر میں ہے۔ لہر، بحر، شہر ان تینوں الفاظ میں درمیانی حرف ساکن ہے جبکہ آپ نے وزن کے حساب سے تینوں کے درمیانی حرف کو متحرک باندھا ہے۔
     
    • متفق متفق × 1

اس صفحے کی تشہیر