1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

جمال احسانی غزل ۔ جو تو گیا تھا تو تیرا خیال رہ جاتا ۔ جمال احسانی

محمداحمد نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 9, 2011

  1. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    غزل

    جو تو گیا تھا تو تیرا خیال رہ جاتا
    ہمارا کوئی تو پُرسانِ حال رہ جاتا

    بُرا تھا یا وہ بھلا، لمحۂ محبت تھا
    وہیں پہ سلسلہ ماہ و سال رہ جاتا

    بچھڑتے وقت ڈھلکتا نہ گر اُن آنکھو ں سے
    اُس ایک اشک کا کیا کیا ملال رہ جاتا

    تمام آئینہ خانے کی لاج رہ جاتی
    کوئی بھی عکس اگر بے مثال رہ جاتا

    گر امتحانِ جنوں میں نہ کرتے قیس کی نقل
    جمالؔ سب سے ضروری سوال رہ جاتا

    جمالؔ احسانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 1
  2. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,371
    بہت ہی خوب!
     
  3. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,169
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بہت شکریہ احمد صاحب خوبصورت غزل شیئر کرنے کیلیے۔
     
  4. محمداحمد

    محمداحمد لائبریرین

    مراسلے:
    21,675
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    شکریہ کاشفی بھائی اور وارث بھائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر