شفیق خلش شفیق خلش ::::: منظر مِرے خیال میں کیا دِید کے رہے ::::: Shafiq Khalish

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏دسمبر 6, 2015

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,645
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    غزلِ
    [​IMG]
    شفیق خلش

    منظر مِرے خیال میں کیا دِید کے رہے
    جب وہ رہے قریب تو دِن عید کے رہے

    مِلنے کی، تھے وہاں تو نِکلتی تھی کچھ سبِیل
    پردیس میں سہارے اب اُمّید کے رہے

    بارآور اُن سے وصل کی کوشِش بَھلا ہو کیوں
    لمحے نہ جب نصِیب میں تائید کے رہے

    اب کاٹنے کو دوڑے ہیں تنہایاں مِری
    کچھ روز و شب تصوّرِخوش دِید کے رہے

    خود پر اُداسیوں کا سبب کیا کہیں، بُجز
    کچھ کم کرَم نہ ہم پہ وہ خورشید کے رہے

    اپنا خیال رکھنا، خبر بھیجنا ضرور !
    منظر نظر میں روتے بھی تاکید کے رہے

    کم گو بِچھڑ کے اُس سے ہیں احباب پر خلِش
    اب دن کہاں وہ قصّے، وہ تمہید کے رہے

    شفیق خلش
     

اس صفحے کی تشہیر