شام، شفق، تنہائی ۔۔ خالد علیم

الف عین نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 3, 2006

  1. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شام، شفق، تنہائی


    خالد علیم




    خزینۂ علم و ادب ، لاہور






    جملہ حقوق بحق شاعر محفوظ
    سال اشاعت نومبر 2001ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    انتساب

    ہمشیرہ مرحومہ کے نام
    جو 29اکتوبر 1998ءکو ٹریفک کے حادثے میں
    انتقال کر گئیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  3. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آنکھوں میں ترا عکس جمال آ جائے
    سورج کو بھی ادھر زوال آ جائے
    پھر تو ہی بتا کہ کیا کروں، مجھ کو اگر
    چلتے چلتے ترا خیال آ جائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  4. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بازیافت

    بازیافت
    ہمارے ارد گرد مسلسل شکست و ریخت کا عمل جاری ہے- تہذیبی، ثقافتی، سماجی، مذہبی اور سیاسی قدروں کی توڑ پھوڑ نے ہماری ذات کی اکائی کو بھی توڑ کر رکھ دیا ہے- ہم زندگی کے ان گنت خانوں میں تقسیم ہو کر رہ گئے ہیں- ہمارا سفر مرکزیت سے لامرکزیت کی طرف بڑھتا ہی چلا جا رہا ہے اور اس میں ہم نے اپنے بے ڈھب قدموں سے اتنی دھول اڑائی ہے کہ ہمارے پیچھے چلنے والے تو بے چارے راہ ناآشنا ہو ہی چکے ہیں، ہمیں خود اپنی پہچان نہیں رہی- اور اب ہم شاید ایسی جگہ پہنچ چکے ہیں، جہاں سے ہمیں خود سے آگے جانے والے قافلوں کا سراغ نہیں ملتا کہ ہم نے اپنے بے ڈھب سفر کی دھن میں ان کے قدموں کے نشان مٹا دینے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی، سو، اب ہم نے اپنی تساہل پسندی سے رفتگاں کی تلاش کا عمل ہی ترک کر دیا ہے-
    بے مقصد سفر میں اٹھنے والا ہمارا ہر قدم ہمیں ایسے مقام پر لے جانا چاہتا ہے جو ہمارے تہذیبی و فطری مزاج کے یکسر خلاف ہے- اس لحاظ سے دیکھا جائے تو ہم اپنے آپ سے بغاوت کرکے ان سمتوں کے سفر پر آمادہ ہیں جن کا تعین ہماری ذہنی، تہذیبی اور سماجی شکست و ریخت سے ہوا ہے- یہ شکست و ریخت اتنی تیزی سے ہو رہی ہے کہ ہمارا ادراک اس کی تیز رفتاری کو گرفت میں لانے سے قاصر ہے- ہم کبھی کبھی اس پہلو پر وجدانی طور پر محسوس کرکے آگے گزر جاتے ہیں اور کوئی چیز ہمارے ہاتھ آتے آتے رہ جاتی ہے- اور اگر کبھی گرفت میں آ بھی جائے تو ریزہ ریزہ ہو کر بکھر جاتی ہے- شاید ہماری مٹھیاں اپنے ہی نیزوں سے چھلنی ہو چکی ہیں-
    یوں لگتا ہے کہ ”چلو تم ادھر کو ہوا ہو جدھر کی“ کے اصول پر کاربند ہو کر ہم نے خود کو بادبانوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیا ہے- ہم میں اب وہ دم خم نہیں رہا کہ سمندروں کے سینوں کو چیریں اور صحراؤں کی دھول چھان کر کوہ ندا کی خبر لائیں کہ ہم نے دوسروں کے لیے اپنی جان کو ہلاکت میں ڈالنا چھوڑ دیا ہے-
    اپنی کوتاہیوں کو دوسروں کے کھاتے میں ڈال دینا بہت آسان ہے، اور اپنی خامیوں پر نظر رکھنا اور اس کے اسباب و محرکات کو کھوجنا مشکل ترین امر ہے- یہ تبھی ممکن ہے جب ہمارے اندر دریافت کا عمل شروع ہوگا---- لیکن ہم نے یہ عمل چھوڑ دیا ہے- یہ عمل ذات کے حوالے سے ہو یا اشیائے عالم کے حوالے سے، اس میں جگر کا خون پانی ہو جاتا ہے اور آنکھ کی بینائی زائل ہونے کا اندیشہ لاحق رہتا ہے- کبھی کبھی --- کبھی کبھی نہیں بلکہ اس عمل میں اکثر خود کو گم کرنا پڑتا ہے تب کہیں جا کر اپنی دریافت کا سفر شروع ہوتا ہے اور پھر یہ سفر، اگر ارادے توانا ہوں تو اس وقت تک جاری رہتا ہے جب تک سینوں میں جاری رہنے والا سانسوں کا سلسلہ ٹوٹ نہ جائے اور آدمی بے دم ہو کر نہ گر جائے-
    بازیافت کا عمل شاید دریافت کے عمل سے بھی زیادہ مشکل ہے کہ یہ عمل زندگی کی سچائیوں کو ہمارے سامنے آئینہ کر سکتا ہے جب کہ ہمیں ان سچائیوں کو محسوس کرنے سے خوف آتا ہے- اس لیے ہمیں کہانیوں پر زیادہ یقین ہے حالانکہ کہانیاں بھی انھی سچائیوں سے جنم لیتی ہیں ، لیکن کہانیاں ہمیں محض اس لیے اچھی لگتی ہیں کہ ہمارے اندر بسنے والا طلسم ان کی طلسماتی فضا کا اسیر ہے اور خواب نگر کے رہنے والے شہزادے کی خواہشوں کو باب تکمیل کی تسخیر میں ہمکنار دیکھنے کا آرزو مند--- اس طلسماتی فضا میں خواب نگر کے اس شہزادے کے طویل اور جانکاہ سفر میں ہم اس کی کامیابی کی خواہش تو رکھتے ہیں لیکن اس کا ہم سفر ہونا ہمارے بس میں نہیں کہ یہاں پھر وہی خوف ہماری رگیں کھینچنے لگتا ہے --- اعتبار اور بے اعتباری کے درمیان کا خوف --- ہونے اور نہ ہونے کے بیچ میں اترنے والی بے سمتی کا خوف- اس خوف نے ہم پر لرزہ طاری کر رکھا ہے- مخالف سمتوں سے آنے والا لشکر ظلمات ہمارے دل کی سرحدوں پر آ بیٹھا ہے اور ہم کچھ ہونے سے پہلے ادھ موئے ہو چکے ہیں---ہمیں کچھ نہیں سوجھتا --- ہمیں کچھ نظر نہیں آتا-
    مگر اس کے باوجود آخر وہ کیا ہے؟ جو ہم نے دیکھا اور آنکھیں بند کر لیں- وہ سب کیا ہے؟ جو ہم نے سنا اور کانوں میں انگلیاں ٹھونس لیں- سچائی کی آنکھ سے دیکھا جائے تو وہ ہمارے اصل احساسات کا نمائندہ ہے- ہم جو کچھ لکھنا چاہتے ہیں، جو کچھ کہنا چاہتے ہیں، یہ اس کو اپنی میزان میں تول کر تخلیق کے سانچے میں ڈھالتا ہے، اور تب ہم پر اپنی تلاش کا عمل آسان دکھائی دینے لگتا ہے- اسی لیے خود کو پا لینے کی جستجو میں انشراح ذات کا عمل وجود میں آتا ہے-
    میرے خیال میں شاعری اسی انشراح ذات کا ذریعہ ہے، جس سے اپنی پہچان کا اصل سفر شروع ہوتا ہے اور ہم اپنی ذات سے لے کر اپنے چارسو کی تلخ و شیریں سچائیوں کو لمحہ لمحہ محسوس کرتے ہوئے زندگی آمیز حقیقتوں کا ادراک حاصل کرتے ہیں- اپنے جوہر خاص کی بازیافت کے لیے پہلے اپنی ذات ہی کا شعور ضروری ٹھہرتا ہے جو ہمیں لامرکزیت سے مرکزیت کی طرف لانے کا امکان پیدا کرتا ہے-
    شاید اسی امکان کی تلاش میں آج سے بائیس سال پہلے میرا شعری سفر ایک خاموش اور تنہا مسافر کی طرح شروع ہوا- تاہم اس مجموعے میں جو کچھ شامل ہے، پچھلے دس سال کی غیر مسلسل تخلیقی کاوشوں کا انتخاب ہے- غیر مسلسل اس لیے کہ آج کا تخلیقی منظر نامہ تخلیق کے جن محرکات کا متقاضی ہے، اس سے میں اپنی کم آمیزی کے باعث اگرچہ صد فی صد الگ تھلگ رہا، تاہم غیر شعوری طور پر اس منظر نامے کے دل آویز عکس میری تخلیقی جہتوں پر اثر انداز ضرور ہوئے ہیں اور میں اپنے قافلے سے جدا ہو کر بھی فکری و ذہنی اعتبار سے اس کا ہم سفر رہا ہوں- اس ہم سفری میں ، میں نے کتنے پائیدار یا ناپائیدار نقوش تراشے ہیں، اس کا فیصلہ تو آپ کریں گے- میں تو صرف یہ کہوں گا کہ جو کچھ میں نے لکھنا چاہا، اسے اپنے دل کی آواز بنانے کی کوشش ضرور کی ہے ---فیصلہ تو آپ ہی نے کرنا ہے-
    خالد علیم
    6 جولائی 1991ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نئی اشاعت
    اس مجموعہ کی پہلی اشاعت ”کوئی آنکھ دل سے بھری رہی“ کے نام سے غزلوں ، نظموں اور رباعیات پر مشتمل تھی- اس اشاعت کے وقت رباعیات کا مجموعہ ”تمثال“ اگرچہ ترتیب دیا جا چکا تھااور اس کا اشتہار بھی ایک دو ادبی پرچوں میں شائع ہوا، تاہم”کوئی آنکھ دل سے بھری رہی“ کی اشاعت میں تقریباً ایک صد رباعیات کا انتخاب محض اس لیے شامل کر لیا گیا کہ ”تمثال“ کی اشاعت بعض وجوہ کی بنا پر مؤخر ہورہی تھی - اب جبکہ اس کی اشاعت اپنی اولیں صورت گری کے ساتھ عنقریب متوقع ہے تو ”کوئی آنکھ دل سے بھری رہی“ کی ترتیب میں بھی تبدیلی کر دی گئی ہے- اس تبدیلی کے اثرات مجموعے کے نام میں بھی دیکھے جا سکتے ہیں-
    اب یہ مجموعہ ”شام، شفق، تنہائی“ کے نام سے (ترمیم واضافہ کے ساتھ) غزلوں اور نظموں پر مشتمل ہے- نئی غزلوں کو مجموعے کے شروع میں رکھا گیا ہے جبکہ کچھ نظموں کا اضافہ آخر میں کر دیا گیا ہے- اس طرح ”کوئی آنکھ دل سے بھری رہی“ کی مجموعی حیثیت تبدیل بلکہ منسوخ ہو چکی ہے ، لہٰذا ”شام، شفق، تنہائی“ غزلوں اور نظموں پر مشتمل کلام کی اشاعت میرے پہلے مجموعۂ کلام ہی کی نئی اشاعت تصور کی جائے-
    آخر میں اپنے دوستوں سعد اللہ شاہ، ثنا اللہ شاہ اور خزینۂعلم و ادب کے مہتمم جناب محمد نذیر صاحب کا شکریہ مجھ پر واجب ہے کہ جن کی محبتوں کے طفیل اس مجموعہ کی نئی اشاعت ممکن ہوئی-
    خالد علیم
    یکم اکتوبر 2001ء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    نارسائی
    بنایا دشت میں خوشبو نے راستا بھی تو کیا
    کہ آندھیوں کے مقابل چلی ہوا بھی تو کیا
    ٹھہر ٹھہر کے سلگتا ہوا شرارۂ جاں
    جلا کے پیرہن خاک بجھ گیا بھی تو کیا
    کہیں ہوا نہ سبکسار عکس آئنہ ساز
    خود اپنی تاب سے آئینہ جل اٹھا بھی تو کیا
    ملی نہ اس کو تگ و دَو کی گرمیِ آفاق
    لہو بدن کی رگوں میں رواں ہوا بھی تو کیا
    وہ سیل موج کہ اپنے حصار میں گم ہے
    سمندروں کی تہوں سے ابل پڑا بھی تو کیا
    بقدر رنگ نمو ہے فقط مہک اُس کی
    ”نفس کے زور سے وہ غنچہ وا ہوا بھی تو کیا
    جسے نصیب نہیں آفتاب کا پرتو“
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    [align=center]غزلیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گرفتِ خاک سے باہر مجھے نکلنے دے
    اے دشت خواب مجھے دو قدم تو چلنے دے
    جو ہو سکے مرے اشکوں کو منجمد مت کر
    ہوائے شہر خرابی مجھے پگھلنے دے
    اے دشت شام کی پاگل ہوا بجھا نہ مجھے
    نواحِ شب میں کوئی تو چراغ جلنے دے
    نہ روک مجھ کو کہیں بھی تو اے ستارۂ ہجر
    میں چل پڑا ہوں، کوئی راستہ نکلنے دے
    وہ قطرہ قطرہ سحر آنکھ میں طلوع تو ہو
    اے ماہِ شب، نم شبنم میں مجھ کو ڈھلنے دے
    اسے کہو، نہ ابھی بال و پر کشادہ کرے
    ابھی کچھ اور ہواؤں کو رخ بدلنے دے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اک انتخاب وہ یادوں کے ماہ و سال کا تھا
    جو حرف ابر زدہ آنکھ میں ملال کا تھا
    شکست آئنۂ جاں پہ سنگ زن رہنا
    ہنر اسی کا تھا، جتنا بھی تھا، کمال کا تھا
    یہ دیکھنا ہے کہ کھل کر بھی بادباں نہ کھلے
    تو اس سے کتنا تعلق ہوا کی چال کا تھا
    قبائے زخم کی بخیہ گری سے کیا ہوتا
    مرے لہو میں تسلسل ترے خیال کا تھا
    پرانے زخم بھی خالد! مرے، ادھیڑ گیا
    جو ایک زخم، کف جاں پہ پچھلے سال کا تھا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    دامن چاک ہی اے ہم نفساں ایسا تھا
    رات ایسی تھی کہاں، چاند کہاں ایسا تھا
    ہم ہواؤں کو لیے پھرتے تھے زنجیر بکف
    رات اس دشت کی وحشت پہ گماں ایسا تھا
    دل کہاں بوجھ اٹھاتا شب تنہائی کا
    یہ ترا قرب جدائی مری جاں ایسا تھا
    قدم اٹھتا ہی نہ تھا گو کہ زمیں پاؤں میں تھی
    آسماں بھی تو مرے سر پہ گراں ایسا تھا
    رہ گئے کٹ کے ترے ہجر کے گرداب میں ہم
    ورنہ یہ زور سمندر میں کہاں ایسا تھا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ٹوٹ کر جو کف مژگاں پہ بکھر جاتا ہے
    وہ تعلق تو رگ جاں میں اتر جاتا ہے
    ریزہ ریزہ جو کیا خود کو، چلو ہم نے کیا
    ورنہ الزام تو یہ بھی ترے سر جاتا ہے
    اے مرے عکس فراموش ذرا سوچ کہ کیوں
    آئنہ دیکھ کے صورت تری ڈر جاتا ہے
    اس سے کس بات کا شکوہ، وہ مرے پاس کبھی
    آ تو جاتا ہے، مری آنکھ تو بھر جاتا ہے
    چھوڑ جاتا ہے مرا جسم، مری جاں لے کر
    جاتے جاتے وہ کوئی کام تو کر جاتا ہے
    وہ کہ آتا تھا بچھڑنے کو مگر اب خالد
    مجھ کو مجھ سے ہی جدا کرکے گزر جاتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    گزارتے ہیں یہ دن بھی ترے ملال میں ہم
    کہ لے کے پھرتے ہیں ماضی کو اپنے حال میں ہم
    اب آنکھ میں کوئی آنسو، کوئی ستارہ نہیں
    کچھ ایسے ٹوٹ کے روئے ترے وصال میں ہم
    جو اپنے عہد زیاں کا حساب تازہ کرے
    وہ لفظ لائیں کہاں سے تری مثال میں ہم
    گزشتگاں کا بھی آئندگاں سے ربط رہے
    بندھے ہوئے تو ہیں زنجیر ماہ و سال میں ہم
    عروج کا کوئی لمحہ کہاں سے نکلے گا
    رکے ہوئے ہیں کسی عہد کے زوال میں ہم
    وہ عکس ہے پس منظر سے پیش منظر تک
    سو دیکھتے ہیں اسے اپنے خد و خال میں ہم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    سیل گریہ ہے کوئی جو رگ جاں کھینچتا ہے
    رنگ چاہت کے وہ آنکھوں پہ کہاں کھینچتا ہے
    دل کہ ہر بار محبت سے لہو ہوتا ہے
    دل کو ہر بار یہی کار زیاں کھینچتا ہے
    شاید اب کے بھی مری آنکھ میں تحریر ہے وہ
    لمحۂ یاد کوئی حرف گماں کھینچتا ہے
    ایک بے نام سی آہٹ پہ دھڑکتا ہوا دل
    عکس تیرا ہی سر شیشۂ جاں کھینچتا ہے
    جا چکا ہے وہ مرے حال سے باہر پھر بھی
    اپنی جانب مرے ماضی کے نشاں کھینچتا ہے
    تیر نکلے گا تو سوچیں گے، ابھی تو خالد
    وہ فقط میری طرف اپنی کماں کھینچتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    مرے چہرے کے پیچھے عکس اس کا جاگتا ہے
    کہ آئینے میں اک منظر پرانا جاگتا ہے
    ذرا تم چاند کی مشعل کو گل کرنے سے پہلے
    فلک پر دیکھنا لینا، کوئی تارا جاگتا ہے؟
    یہ آنسو رک سکیں تو روک لو، بہتر یہی ہے
    جب آنسو خشک ہو جائیں تو دریا جاگتا ہے
    اچانک داستان وصل اس نے ختم کر دی
    فقط یہ دیکھنے کو، کون کتنا جاگتا ہے
    فضا خاموش ہے اور رات کے بستر پہ خالد
    زمیں سے آسماں تک کوئی گریہ جاگتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    اے ہوا بتا مجھ کو کیوں یہ دل دھڑکتا ہے
    راستہ تو چپ چپ ہے، دیکھ! کون آیا ہے
    سوچتے تو رہتے ہیں پھر بھی کب یہ سوچا ہے
    حرف حرف سوچوں میں کون جاگ اٹھتا ہے؟
    گرم گرم سانسوں میں نرم نرم ہونٹوں میں
    کوئی آنچ رہتی ہے، کوئی غم پگھلتا ہے
    برف برف لہجوں میں، سرد سرد جذبوں میں
    میں سلگ سا اٹھتا ہوں، جب بھی تو اترتا ہے
    آئنے میں پھر کوئی عکس ہے مگر اے دل!
    دیکھ، دیکھتا کیا ہے؟ آئنہ اسی کا ہے
    دھول اڑتی پھرتی ہے دور دور تک کوئی
    اک نیا مسافر ہے، راستہ پرانا ہے
    لہر لہر دریا کے تیز رو بہاؤ میں
    کیا خبر ابھی مجھ کو کتنی دور جانا ہے
    ڈھونڈتے ہو تم کس کو خالی خالی آنکھوں سے
    وہ تو سامنے خالد، دوسرا کنارا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    وہ کف جاں پہ رگ جاں کی طرح رہتا ہے
    اس تعلق پہ بھی امکاں کی طرح رہتا ہے
    میں تو بس خاک ہوں،اور خاک سے تجسیم مری
    اور وہ ماہ زر افشاں کی طرح رہتا ہے
    دیکھتا ہے نہ دکھاتا ہے کوئی عکس اپنا
    آئنہ وصل گریزاں کی طرح رہتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کسی کے سامنے مت اپنا دل نکال کے رکھ
    یہ دشت خواب ہے، اپنے قدم سنبھال کے رکھ
    ستارے کارگہِ آسماں میں ڈھلتے ہیں
    کبھی کبھی سر مژگاں انھیں اجال کے رکھ
    نکھار حجلۂ جاں میں گزشتگاں کے نقوش
    چراغ، طاق تمنا میں ماہ و سال کے رکھ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    بہت دنوں سے ہوں خالد اسیر حلقۂ خواب
    خبر نہیں کہ کہاں ختم ہو یہ قصۂ خواب
    شکست تار رگ جاں ہے زیر و بم دل کا
    سکوت شب میں کہیں مرتعش ہے نغمۂ خواب
    ہوائے شام نے اس کو بجھا دیا خالد
    مری نگاہ پہ جب بھی کھلا دریچۂ خواب
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کسی ہجر کی رات کا کوئی منظر اٹھائے ہوئے
    ہوا رُک گئی سر پہ بادل کا بستر اٹھائے ہوئے
    مری آنکھ کے شہر بے خواب کو دیکھنے کے لیے
    نکل آیا سورج مرے سر پہ پھر سر اٹھائے ہوئے
    مجھے گھر سے باہر نکلنے کا رستہ تو معلوم تھا
    کھڑا تھا مگر گھر کی دیوار کو در اٹھائے ہوئے
    کبھی میں بھی تھا پیش رو اس کی منزل کا منزل سے دور
    اور اب اپنی منزل پہ ہے وہ مرے پر اٹھائے ہوئے
    مرے ساتھ کچھ دیر میرا وہ نامحرم چشم و دل
    مرے گھر تک آ تو گیا تھا مگر سر اٹھائے ہوئے
    وہ کیا رات تھی آنکھ میں آ گیا دل اچھلتا ہوا
    کف جاں پہ اپنے لہو کا سمندر اٹھائے ہوئے
    اٹھائے نہ اپنے گنہگار ہاتھوں میں پتھر کوئی
    مگر کیا ہوا آ گئے سب ہی پتھر اٹھائے ہوئے
    وہ خالد مرے رُوبرو آ گیا آئنے کی طرح
    مگر میں کہ اپنے ہی ہونے کا تھا ڈر اٹھائے ہوئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    کیا ضروری ہے وہ ہم رنگ نوا بھی ہو جائے
    تم جدھر چاہو، ادھر کو یہ ہوا بھی ہو جائے
    اپنے پر نوچ رہا ہے ترا زندانیِ دل
    اسے ممکن ہے رہائی کی سزا بھی ہو جائے
    دل کا دامانِ دریدہ نہیں سلتا تو میاں
    بھاڑ میں جائے اگر چاک ردا بھی ہو جائے
    تم یقیں ہو تو گماں ہجر کا کم کیا ہوگا
    چشمِ بے خواب اگر خواب نما بھی ہو جائے
    کہیں ایسا نہ ہو، اس ڈوبتے خورشید کے ساتھ
    تیری آواز میں گم میری صدا بھی ہو جائے
    ہم اسیرِ دل و جاں خود سے بھی سہمے ہوئے ہیں
    خلقتِ شہر تو ہونے کو خدا بھی ہو جائے
    مجلسِ شاہ کے ہیں سارے مصاحب خاموش
    ہم نوا دل کا امیر الامرا بھی ہو جائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر