ٹائپنگ مکمل دیوانِ غالبؔ کامل (نسخہ رضاؔ) از کالی داس گپتا رضا

چھوٹاغالبؔ نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 1, 2012

  1. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    دیوانِ غالبؔ کامل

    (نسخہ رضاؔ)

    تاریخی ترتیب سے

    کالی داس گپتا رضا

    از ۔۔۔۔۔۔ تا 1812 ء

    مثنوی

    ایک دن مثل پتنگ کاغذی
    لے کے دل سر رشتہ آزادگی
    خود بخود کچھ ہم سے کنیانے لگا
    اس قدر بگڑا کہ سر کھانے گا
    میں نے کہا اے دل، ہوائے دلبراں
    بس کہ تیرے حق میں کہتی ہے زباں
    پیچ میں ان کے نہ آنا زینہار
    یہ نہیں ہیں گے کسو کے یار غار
    گورے پنڈے پر،نہ کر، ان کےنظر
    کھینچ لیتے ہیں یہ ڈورے ڈال کر
    اب تو مل جائے گی تیری ان سے سانٹھ
    لیکن آخر کو پڑے گی ایسی گانٹھ
    سخت مشکل ہوگا سلجھانا تجھے
    قہر ہے دل ان سے الجھانا تجھے
    یہ جو محفل میں بڑھاتے ہیں تجھے
    بھول مت اس پر اڑاتے ہیں تجھے
    ایک دن تجھ کو لڑا دیں گے کہیں
    مفت میں نا حق کٹا دیں گے کہیں
    دل نے سن کر ،کانپ کر، کھا پیچ و تاب
    غوطے میں جا کر دیا ، کٹ کر جواب

    "رشتہ در گردنم افگندہ دوست ٭٭ می برد ہر جا کہ خاطر خواہ اوست"

    غزلیات

    نیاز عشق ، خرمن سوز ِ اسبابِ ہوس بہتر
    جو ہو جاوے نثار برق مشت خار وخس بہتر


    یاد آیا جو وہ کہنا ،کہ نہیں، واہ غلط
    کی تصور نے بہ صحرائے ہوس راہ غلط


    آئے ہیں پارہ ہائے جگر درمیان اشک
    لایا ہے لعل بیش بہا، کاروان اشک
    ظاہر کرے ہے جنبش مژگاں سےمدعا
    طفلانہ ہاتھ کا ہے اشارہ، زبانِ اشک
    میں وادی طلب میں ہوا جملہ تن غرق
    از بس کہ قطرہ زنی تھابسان ِاشک
    رونے نے طاقت اتنی نہ چھوڑی کہ ایک بار
    مژگاں کو دوں فشار، پئے امتحان ِ اشک
    دل خستگاں کو ہے طربِ صد چمن بہار
    باغ ِ بخون تپیدن، و آبِ روانِ اشک
    سیل بنائے ہستیِ شبنم ہے آفتاب
    چھوڑے نہ چشم میں، تپش ِ دل نشانِ اشک
    ہنگامِ انتظارِ قدوم ِبتاں، اسدؔ
    ہے بر سر مژہ نگراں، دید بان اشک


    آنسو کہوں کہ ، آہ ، سوار ِ ہوا کہوں
    ایسا عناں گسیختہ آیا کہ کیا کہوں
    اقبال ِ کلفتِ دلِ بے مدعا رسا
    اختر کو داغِ سایہ ِ بال ہما کہوں
    مضمون وصل ہاتھ نہ آیا مگر اسے
    اب طائر پریدہ رنگ حنا کہوں
    عہدے سے مدح ِ ناز کے باہر نہ آ سکا
    گر ایک ادا ہو، تو اسے اپنی قضا کہوں
    حلقے ہیں، چشم ہائے کشادہ بسوئے دل
    ہر تار زلف کو نگہ سرمہ سا کہوں
    ظالم میرے گمان سے مجھے منفعل نہ چاہ
    ہے ہے خدا نہ کردہ، تجھے بے وفا کہوں
    دزدیدنِ دلِِ ستم آمادہ ہے محال
    مژگاں کہوں کہ جوہر تیغِ قضا کہوں
    طرزآفرینِ نکتہ سرائی طبع ہے
    آئینہ خیال کو طوطی نما کہوں
    میں اور صد ہزار نوائے جگر خراش
    تو اور وہ ایک نشنیدن کہ کیا کہوں
    غالبؔ ہے رتبہ فہم تصورسے کچھ پرے
    ہے عجز بندگی کہ علی کو خدا کہوں


    مجلس شعلہ عذاراں میں جو آجاتا ہوں
    شمع ساں میں تہہ دامان صبا جاتا ہوں
    ہووے ہے، جادہ راہ ، رشتہ گوہر ہر گام
    جس گزرگاہ سے میں آبلہ پا جاتا ہوں
    سر گراں مجھ سے سُبک رو کے، نہ، رہنے سے رہو
    کہ بیک جنبش لب، مثل صدا جاتا ہوں


    دیکھتا ہوں اسے، تھی جس کی تمنا مجھ کو
    آج بیداری میں ہے خوابِ زلیخا مجھ کو


    شمشیر صافِ یار، جو زہراب دادہ ہو
    وہ خط سبز ہے کہ بہ رخسارِ سادہ ہو


    ہنستے ہیں، دیکھ دیکھ کے، سب، ناتواں مجھے
    یہ رنگ ِ زرد، ہے چمن ِ زعفراں مجھے


    دیکھ وہ برقِ تبسم، بس کہ، دل بیتاب ہے
    دیدہ گریاں میرا، فوارہ سیماب ہے
    کھول کر دروازہِ میخانہ، بولا مے فروش
    اب شکست توبہ میخواروں کو فتح الباب ہے


    اک گرم آہ کی تو ہزاروں کے گھر جلے
    رکھتے ہیں عشق میں یہ اثر ہم جگر جلے
    پروانے کا نہ غم ہوتو پھر کس لیے اسدؔ
    ہر رات، شمع، شام سے لے تا سحر جلے

    زخم دل تم دکھایا ہے کہ جی جانے ہے
    ایسے ہنستے کو رلایا ہے کہ جی جانے ہے


    صبا لگا وہ طمانچے طرف سے بلبل کی
    کہ روئے غنچہ گل، سوئے آشیاں پھر جائے


    بتو! توبہ کرو، تم کیا ہو؟ جب وہ ادبار آتا ہے
    تو یوسف سا حسیں، بکنے سرِ بازار آتا ہے


    طرز بیدل میں ریختہ کہنا
    اسدااللہ خان قیامت ہے

    1813 تا 1816


    نقش فریادی ہے کس کی شوخیِ تحریر کا
    کاغذی ہے پیرہن، ہر پیکر ِتصویر کا
    کاو کا وِ سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ
    صبح کرنا شام کا، لانا ہے جوئے شیر کا
    جذبہ بے اختیارِ شوق دیکھا چاہیے
    سینہ شمشیر سے باہر ہے دم شمشیر کا
    آگہی دامِ شنیدن جس قدر چاہے بچھائے
    مدعا عنقا ہے اپنے عالم تقریر کا
    شوخی ِ نیرنگ، صید وحشتِ طاؤس ہے
    دام، سبزے میں ہے، پروازِ چمن تسخیر کا
    لذت ایجاد ناز،افسون ِعرضِ ذوقِِ قتل
    نعل، آتش میں ہےتیغِ یار سے، نخچیر کا
    خشت پشتِ دستِ عجز و قالب آغوشِ وداع
    پر ہوا ہے سیل سے، پیمانہ کس تعمیر کا
    وحشتِ خوابِ عدم، شور تماشا ہے،اسدؔ
    جز مژہ جوہر نہیں آئینہ ِ تعبیر کا
    بسکہ ہوں غالبؔ اسیری میں بھی آتش زیرِ پا
    موئے آتش دیدہ ہے،حلقہ میری زنجیر کا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 4
    • زبردست زبردست × 1
  2. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    جنوں گرم انتظار، و نالہ بیتابی کمند آیا
    سُویدا، تا بلب، زنجیری دودِ سپند آیا
    مہ اختر فشاں کی بہرِ استقبال آنکھوں سے
    تماشا، کشورِ آئینہ میں آئینہ بند آیا
    تغافل، بدگمانی، بلکہ میری سخت جانی سے
    نگاہِ بے حجابِ ناز کو، بیمِ گزند آیا
    فضائے خندہ گل تنگ و ذوقِ عیش بے پرواہ
    فراغت گاہِ آغوشِوداعِ دل، پسند آیا
    عدم ہے خیر خواہِ جلوہ کو زندانِ بیتابی
    خرامِ ناز، برقِ خرمنِ سعیِ سپند آیا
    جراحت تحفہ، الماس ارمغان، داغِ جگر ہدیہ
    مبارکباد اسدؔ، غمخوارِ جانِ درد مند آیا





    شمارِ سبحہ ، مرغوبِ بتِ مشکل پسند آیا
    تماشائے بیک کف بردن صد دل پسند آیا
    بہ فیضِ بے دلی، نومیدی جاوید آساں ہے
    کشایش کو، ہمارا عقدہ ء مشکل،پسند آیا
    ہوائے سیرِ گل، آئینہ بے مہری قاتل
    کہ اندازِ بخون غلطیدن بسمل پسند آیا
    سوادِ چشمِ بسمل، انتخابِ نقطہ آرائی
    خرامِ نازِ بے پروائیِ قاتل پسند آیا
    روانی ہائےموجِ خونِ بسمل سے ٹپکتا ہے
    کہ لطفِ بےتحاشارفتنِ قاتل پسند آیا
    ہوئی جس کو بہارِ ہستیِ فرصت سے آگاہی
    برنگِ لالہ، جامِ بادہ پرمحمل پسند آیا
    اسد، ہر جا سخن نے طرحِ باغِ تازہ ڈالی ہے
    مجھے رنگِ بہار ایجادی بیدل پسند آیا





    خود آرا وحشتِ چشمِ پری سےشب وہ بد خو تھا
    کہ موم، آئینہِ تمثال کوتعویذ بازو تھا
    بشیرینیِ خواب آلودہ مژگاں، نشترِ زنبور
    خود آرائی سے، آئینہ، طلسمِ مومِ جادو تھا
    نہیں ہے باز گشتِ سیل غیر از جانبِ دریا
    ہمیشہ دیدہ ئِ گریاں کو، آبِ رفتہ در جو تھا
    رہانظارہ وقتِ بے نقابی، آپ پر لرزاں
    سرشک آگیں مژہ سے، دست از جاں شستہ برو تھا
    غمِ مجنوں، عزادارانِ لیلیٰ کا پرستش گر
    خمِ رنگِ سیاہ، پیمانہ ہر چشمِ آہو تھا
    رکھا غفلت نے دور افتادہ، ذوقِ فنا ورنہ
    اشارت فہم کو،ہر ناخنِ بریدہ، ابرو تھا
    اسدؔخاکِ درِ میخانہ اب سر پر اڑاتا ہوں
    گئے وہ دن کہ پانی، جامِ مے سے زانو زانو تھا





    دویدن کے کمیں، جوں ریشہ زیرِ زمیں پایا
    بہ گردِسرمہ، اندازِ نگاہِ شرمگیں پایا
    اگی اک پنبہ ئِ روزن سے ہی چشم چشمِ سفید آخر
    حیا کو، انتظارِ جلوہ ریزی کے کمیں پایا
    بہ حسرت گاہِ نازِ کشتہ جاں بخشیِ خوباں
    خضر کو چشمہِ آبِ بقا سے تر جبیں پایا
    پریشانی سے، مغزِ سر، ہوا ہے پنبہءِ بالش
    خیالِ شوخیِ خوباں کوراحت آفریں پایا
    نفس، حیرت پرستِ طرزِ ناگیرائیِ مژگاں
    مگر یک دست ودامانِ نگاہِ واپسیں پایا
    اسدؔکو پیچ تابِ طبعِ برق آہنگ مسکن سے
    حصارِ شعلہ جوالہ میں عزلت گزیں پایا



    نزاکت، ہے فسونِ دعویِٰ طاقت شکستن ہا
    شرارِسنگ، اندازِ چراغ ازچشمِ جستن ہا
    سیہ مستیِ چشمِ شوخ سے ہیں، جوہر مژگاں
    شرار آسا، زسنگِ سرمہ یکسر بارِ جستن ہا
    ہوا نے ابر سے کی موسمِ گل میں نمد بافی
    کہ تھا آئینہ خود بے نقابِ زنگ بستن ہا
    دل از اضطراب آسودہ، طاعت گاہِ داغ آیا
    بہ رنگِ شعلہ ہے، مہرِنماز، از پا نشستن ہا
    تکلف عاقبت میں ہے ولا، بندِ قبا وا کر
    نفس ہا بعدِ وصلِ دوست، تاوانِ گسستن ہا
    اسد ہر اشک ہے یک حلقہ بر زنجیر افزودن
    بہ بندِ گریہ ہے، نقش بر آب، امیدِ رستن ہا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  3. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بسانِ جوہرِ آئینہ از ویرانیِ دل ہا
    غبارِ کوچہ ہائے موج ہے خاشاکِ ساحل ہا
    نگہ کی ہم نے پیدا رشتۂ ربطِ علائق سے
    ہوئے ہیں پردہ ہائے چشمِ عبرت جلوہ حائل ہا
    نہیں ہے باوجودِ ضعف سیرِ بے خودی آساں
    رہِ خوابیدہ میں افگندنی ہے طرحِ منزل ہا
    غریبی بہرِ تسکینِ ہوس درکار ہے ورنہ
    بہ وہمِ زرگرہ میں باندھتے ہیں برقِ حاصل ہا
    تماشا کردنی ہے انتظار آبادِ حیرانی
    نہیں غیر از نگہ جوں نرگسستاں فرشِ محفل ہا
    اسد تارِ نفس ہے نا گزیرِ عقدہ پیرائی
    بہ نوکِ ناخنِ شمشیر کیجئے حلِ مشکل ہا
    بہ شغلِ انتظارِ مہ وشاں در خلوتِ شب ہا
    سرِ تارِ نظر ہے رشتۂ تسبیحِ کوکب ہا
    کرے گر فکر تعمیرِ خرابی ہائے دل گردوں
    نہ نکلے خشت مثلِ استخواں بیرونِ قالب ہا
    عیادت ہائے طعن آلودِ یاراں زہرِ قاتل ہے
    رفوئے زخم کرتی ہے بہ نوکِ نیشِ عقرب ہا
    کرے ہے حسنِ خوباں پردے میں مشاطگی اپنی
    کہ ہے تہ بندئیِ خط سبزۂ خط در تہِ لب ہا
    فنا کو عشق ہے بے مقصداں حیرت پرستاراں
    نہیں رفتارِ عمرِ تیز رو پابندِ مطلب ہا
    اسد کوبت پرستی سے غرض درد آشنائی ہے
    نہاں ہیں نالہ ءِ ناقوس میں در پردہ "یا رب"ہا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
  4. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بہ رہنِ شرم ہے با وصفِ شہرت اہتمام اس کا
    نگیں میں جوں شرارِ سنگ ناپیدا ہے نام اُس کا
    سرو کارِ تواضع تا خمِ گیسو رسانیدن
    بسانِ شانہ زینت ریز ہے دستِ سلام اُس کا
    مسی آلودہ ہے مہرِ نوازش نامہ، پیدا ہے
    کہ داغِ آرزوئے بوسہ لایا ہے پیام اُس کا
    بہ امیدِ نگاہِ خاص ہوں محمل کشِ حسرت
    مبادا ہو عناں گیرِ تغافل لطفِ عام اُس کا
    لڑاوے گر وہ بزمِ میکشی میں قہر و شفقت کو
    بھرے پیمانۂ صد زندگانی ایک جام اُس کا
    اسد سودائے سر سبزی سے ہے تسلیم رنگیں تر
    کہ کشتِ خشک اُس کا ابرِ بے پروا خرام اُس کا
    یادِ روزےکہ نفس سلسلہ ءِ یارب تھا
    نالہءِ دل، بہ کمر دامنِ قطع شب تھا
    بہ تحیّر کدۂ فرصتِ آرائشِ وصل
    دلِ شب،آئینہ دارِ تپشِ کوکب تھا
    بہ تمنا کدۂ حسرتِ ذوقِ دیدار
    دیدہ گو خوں ہو، تماشائے چمن مطلب تھا
    جوہرِ فکر پر افشانئیِ نیرنگِ خیال
    حسن آئینہ و آئینہ چمن مشرب تھا
    پردۂ دردِ دل آئینۂ صد رنگِ نشاط
    بخیۂ زخمِ جگر خندۂ زیرِ لب تھا
    نالہ ہا حاصلِ اندیشہ کہ جوں گشتِ سپند
    دلِ ناسوختہ آتش کدۂ صد تب تھا
    عشق میں ہم نے ہی ابرام سے پرہیز کیا
    ورنہ جو چاہیے، اسبابِ تمنا سب تھا
    آخر کار گرفتارِ سرِ زلف ہوا
    دلِ دیوانہ کہ وارستہ ء ہر مذہب تھا
    شوق سامان فضولی ہے وگرنہ غالبؔ
    ہم میں سرمایہء ِایجادِ تمناکب تھا
    اسدؔافسردگی آوارہءِ کفر و دیں ہے
    یادِ روزے کہ نفس در گرہِ "یا رب" تھا
    شب کہ دل زخمی عرضِ دو جہاں تیر آیا
    نالہ بر خود غلطِ شوخی تاثیر آیا
    وسعتِ جیبِ جنونِ تپشِ دل مت پوچھ
    محملِ دشت بدوشِ رمِ نخچیر آیا
    ہے گرفتارئیِ نیرنگِ تماشا ہستی
    پرِ طاؤس سے، دل پائے بہ زنجیر آیا
    دید حیرت کش ، و خورشید چراغانِ خیال
    عرضِ شبنم سے، چمن آئنہ تعمیر آیا
    عشقِ ترسا بچہ و نازِ شہادت مت پوچھ
    کہ کلہ گوشہ ،بہ پروازِ پرِ تیر آیا
    ائے خوشا ذوقِ تمنائےئے شہادت کہ اسد
    بے تکلف بہ سجودِ خمِ شمشیر آیا

    سیر آں سوئے تماشا ہے طلب گاروں کا
    خضر مشتاق ہے اس دشت کے آواروں کا
    سرخطِ بند ہوا ،نامہ گنہگاروں کا
    خونِ ہدہد سے لکھا نقش گرفتاروں کا
    فردِ آئینہ میں بخشیں شکنِ خندۂ گل
    دلِ آزردہ پسند، آئنہ رخساروں کا
    داد خواہِ تپش و مہرِ خموشی برلب
    کاغذِ سرمہ ہے ،جامہ ترے بیماروں کا
    وحشتِ نالہ بہ واماندگی ِوحشت ہے
    جرسِ قافلہ، یاں دل ہے گراں باروں کا
    پھر وہ سوئے ئےچمن آتا ہے، خدا خیر کرے!
    رنگ اُڑتا ہے گلستاں کے ہوا داروں کا
    جلوہ مایوس نہیں دل ،نگرانی غافل
    چشمِ امید ہے، روزن تری دیواروں کا
    ! اسدؔ، اے ہرزہ درا،نالہ بہ غوغا تا چند
    حوصلہ تنگ نہ کر، بے سبب آزاروں کا


    طاؤس در رکاب ہے ہر ذرہ آہ کا
    یارب نفس غبار ہے کس جلوہ گاہ کا
    عزلت گزینِ بزم ہیں واماندگانِ دید
    مینائےئے مے ہے، آبلہ پائے نگاہ کا
    ہر گام آبلے سے ہے، دل، در تہِ قدم
    کیا بیم اہلِ درد کو سختیِ راہ کا
    غافل بہ وہمِ ناز خود آرا ہے ورنہ یاں
    بے شانۂ صبا نہیں، طرہ گیاہ کا
    جیبِ نیازِ عشق نشاں دارِ ناز ہے
    آئینہ ہوں ،شکستنِ طرفِ کلام کا
    بزمِ قدح سے عیش تمنا نہ رکھ کہ رنگ
    صیدِ ز دام جستہ ہے ،اس دام گاہ کا
    رحمت اگر قبول کرے، کیا بعید ہے
    شرمندگی سے عذر نہ کرنا گناہ کا
    مقتل کو کس نشاط سے جاتا ہوں میں کہ ہے
    پُر گل، خیالِ زخم سےدامن نگاہ کا
    جاں، در ہوائے ئےیک نگہِ گرم ہے اسدؔ
    پروانہ، ہے وکیل ترے داد خواہ کا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • زبردست زبردست × 2
  5. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    یک ذرّہ زمیں نہیں بیکار ،باغ کا
    یاں جادہ بھی ،فتیلہ ہے لالے کے داغ کا
    بے مے، کسے ہے طاقتِ آشوبِ آگہی
    کھینچا ہے عجزِ حوصلہ نے خط ایاغ کا
    بلبل کے کروبار پہ ہیں خندہائے گل
    کہتے ہیں جس کو عشق، خلل ہے دماغ کا
    تازہ نہیں ہے نشۂ فکرِ سخن مجھے
    تریاکیِ قدیم ہوں دودِ چراغ کا
    سو بار بندِ عشق سے آزاد ہم ہوئے
    پر کیا کریں؟کہ دل ہی عدو ہے فراغ کا
    بے خونِ دل ہے چشم میں،موجِ نگہ غبار
    یہ میکدہ ،خراب ہے مے کے سراغ کا
    باغِ شگفتہ، تیرا بساطِ ہوائے دل
    ابرِ بہار، خم کدہ کس کے دماغ کا؟
    جوشِ بہار کلفتِ نظارہ ہے اسد
    ہے ابر پنبہ روزنِ دیوارِ باغ کا



    نہ بھولا اضطرابِ دم شماری ،انتظار اپنا
    کہ آخر شیشۂ ساعت کے کام آیا غبار اپنا
    ز بس آتش نے فصلِ رنگ میں رنگِ دگر پایا
    چراغِ گل سے ڈھونڈے ہے چمن میں شمع خار اپنا
    اسیرِ بے زباں ہوں، کاشکے! صیادِ بے پروا
    بہ دامِ جوہرِ آئینہ، ہو جاوے شکار اپنا
    مگر ہو مانعِ دامن کشی، ذوقِ خود آرائی
    ہوا ہے نقش بندِ آئنہ، سنگِ مزار اپنا
    دریغ! اے ناتوانی، ورنہ ہم ضبط آشنایاں نے
    طلسمِ رنگ میں باندھا تھا عہدِ استوار اپنا
    اگر آسودگی ہے مدعائے ئےرنجِ بے تابی
    نیازِگردشِ پیمانۂ مے روزگار اپنا
    اسدؔ! ہم وہ جنون جولاں گدائے بے سر وپا ہیں
    کہ ہے، سر پنجۂ مژگانِ آہو، پشت خار اپنا



    بس کہ جوشِ گریہ سے زیرو زبر ویرانہ تھا
    چاکِ موجِ سیل، تا پیراہنِ دیوانہ تھا
    داغِ مہرِ ضبطِ بے جا مستیِ سعئ سپند
    دودِ مجمر، لالہ ساں، دُردِ تہِ پیمانہ تھا
    وصل میں بختِ سیہ نے سنبلستاں گل کیا
    رنگِ شب، تہ بندیِ دودِ چراغِ خانہ تھا
    شب ،تری تاثیرِ سحرِ شعلۂ آواز سے
    تارِ شمع، آہنگِ مضرابِ پرِ پروانہ تھا
    موسمِ گل میں مئے گلگوں حلالِ مے کشاں
    عقدِ وصلِ دختِ رز، انگور کا ہر دانہ تھا
    انتظارِ جلوہءِ کاکل میں شمشاد ِ باغ
    صورتِ مژگاں عاشق، صرف عرضِ شانہ تھا
    حیرت، اپنے نالۂ بے درد سے،غفلت بنی
    راہِ خوابیدہ کو غوغائے ئےجرس افسانہ تھا
    کُو بہ وقتِ قتل حقِ آشنائی، اے نگاہ!
    خنجرِ زہراب دادہ، سبزۂ بیگانہ تھا
    جوشِ بے کیفیتی ہے اضطراب آرا ،اسدؔ
    ورنہ بسمل کا تڑپنا ، لغزشِ مستانہ تھا



    رات، دل گرمِ خیالِ جلوۂ جانانہ تھا
    رنگِ روئے ئےشمع ، برقِ خرمنِ پروانہ تھا
    شب کہ تھی کیفیتِ محفل بیادِ روئےئے یار
    ہر نظرمیں، داغِ مے،ئے خالِ لبِ پیمانہ تھا
    شب کہ باندھا خواب میں آنے کا قاتل نے، جناح
    وہ فسونِ وعدہ میرے واسطے افسانہ تھا
    دود کو آج اُس کے ماتم میں سیہ پوشی ہوئی
    وہ دلِ سوزاں کہ کل تک شمعِ ماتم خانہ تھا
    ساتھ جنبش کے بہ یک برخاستن طے ہوگیا
    تو کہے،صحرا غبارِ دامنِ دیوانہ تھا
    دیکھ اُس کے ساعدِ سیمین و دستِ پر نگار
    شاخِ گل جلتی تھی مثلِ شمع، گل پروانہ تھا
    شکوہ یاراں، غبارِ دل میں پنہاں کر دیا
    غالبؔ، ایسے گنج کو شایاں یہی ویرانہ تھا
    اے اسدؔ! رویا جو دشتِ غم میں میں حیرت زدہ
    آئنہ خانہ زسیلِ اشک ، ہر ویرانہ تھا



    پےءنذرِ کرم تحفہ ہے، شرمِ نارسائی کا
    بہ خوں غلطیدۂ صد رنگ دعویٰ پارسائی کا
    جہاں مٹ جائے ئےسعئِ دید خضر آبادِ آسائش
    بہ جیبِ ہر نگہ پنہاں ہے، حاصل رہنمائی کا
    بہ عجز آبادِ وہمِ مدعا تسلیم شوخی ہے
    تغافل کو نہ کر مغرورتمکین آزمائی کا
    زکٰوۃِ حسن دے ،ائے ےجلوۂ بینش کہ مہر آسا
    چراغِ خانۂ درویش ہو، کاسہ گدائی کا
    نہ مارا جان کر بے جرم، غافل، تیری گردن پر
    رہا مانندِ خونِ بے گنہ، حق آشنائی کا
    دہانِ ہر بتِ پیغارہ جو، زنجیرِ رسوائی
    عدم تک ،بے وفا ،چرچا ہے تیری بے وفائی کا
    وہی اک بات جو ہے یاں نفس، واں نکہتِ گل ہے
    چمن کا جلوہ، باعث ہے، میری رنگیں نوائی کا
    نہ دے نامے کو اتنا طول، غالبؔ!مختصر لکھ دے
    کہ حسرت سنج ہوں، عرضِ ستم ہائے جدائی کا



    نہ ہو حسنِ تماشا دوست، رسوا بے وفائی کا
    بہ مہرِ صد نظر ثابت ہے دعویٰ پارسائی کا
    ہوس گستاخیِ آئینہ، تکلیفِ نظر بازی
    بہ جیبِ آرزو پنہاں ہے، حاصل دلربائی کا
    نظر بازی طلسمِ وحشت آبادِ پرستاں ہے
    رہا بیگانۂ تاثیر افسوں آشنائی کا
    نہ پایا درد مندِ دوریِ یارانِ یک دل نے
    سوادِ خطِ پیشانی سے نسخہ مومیائی کا
    تمنائےئے زباں ،محوِ سپاسِ بے زبانی ہے
    مٹا ،جس سے ،تقاضا شکوۂ بے دست و پائی کا
    اسد یہ عجز و بے سامانئِ فرعون توام ہے
    جسے تو بندگی کہتا ہے، دعویٰ ہے خدائی کا



    کرے گر حیرتِ نظارہ ،طوفاں نکتہ گوئی کا
    حبابِ چشمۂ آئینہ ہو وے،ئے بیضہ طوطی کا
    بروئے ےقیس، دستِ شرم، ہے مژگانِ آہو سے
    مگر روزِ عروسی گم ہوا تھا شانہ لیلی کا
    فسانِ تیغِ نازک قاتلاں، سنگِ جراحت ہے
    دلِ گرمِ تپش، قاصد ہے پیغامِ تسلی کا
    نہیں گرداب جز سر گشتگی ہائے طلب ہرگز
    حبابِ بحر کے، ہے ،آبلوں میں خار ماہی کا
    نیازِ جلوہ ریزی، طاقتِ بالیں شکستن ہا
    تکلف کو خیال آیا ہو گر بیمار پرسی کا
    نہ بخشی فرصتِ یک شبنمستاں جلوۂ خور نے
    تصور نے کیا ساماں ہزار آئینہ بندی کا
    اسد تاثیرِ صافی ہائےئے حیرت جلوہ پرور ہو
    گر آبِ چشمۂ آئینہ دھووے ئے عکس زنگی کا



    ز بس خوں گشتۂ رشکِ وفا تھا وہم بسمل کا
    چرایا زخم ہائے ئےدل نے پانی تیغِ قاتل کا
    نگاہِ چشمِ حاسد وام لے، اے ذوقِ خود بینی
    تماشائی ہوں، وحدت خانۂ آئینۂ دل کا
    شرر فرصت نگہ، سامانِ یک عالم چراغاں ہے
    بقدرِ رنگ یاں گردش میں ہے پیمانہ محفل کا
    سراسر تاختن کو شش جہت یک عرصہ جولاں تھا
    ہوا واماندگی سے رہرواں کی، فرق منزل کا
    سراپا رہنِ عشق و ناگزیرِ الفتِ ہستی
    عبادت برق کی کرتا ہوں اور افسوس حاصل کا
    بہ قدرِ ظرف ہے ساقی خمارِ تشنہ کامی بھی
    جو تو دریائے مے ہے تو میں خمیازہ ہوں ساحل کا
    مجھے راہ ِ سخن میں خوفِ گمراہی نہیں غالبؔ
    عصائے خضرِ صحرائے ئےسخن ہے، خامہ بیدلؔ کا



    فرو پیچیدنی ہےفرش بزمِ عیش گستر کا
    دریغا! گردش آموزِ فلک ہے، دور ساغر کا
    خطِ نوخیز کی، آئینے میں دی کس نے، آرائش
    کہ ہے تہ بندیِ پرہائےطوطی رنگ جوہر کا
    گیا جو نامہ بر، واں سے برنگِ باختہ آیا
    خطوطِ روئے قالیں، نقش ہے پشتِ کبوتر کا
    شکستِ گوشہ گیراں، ہے فلک کو حاصل گردش
    صدف سے آسیائے آب میں ہےدانہ گوہر کا
    فزوں ہوتا ہے ہر دم جوشِ خونباری، تماشا ہے
    نفس کرتا ہے رگ ہائے مژہ پرکام نشتر کا
    خیالِ شربتِ عیسیٰ، گدازِ تر جبینی ہے
    اسدؔ! ہوں مستِ دریا، بخشی ِساقیِ کوثر کا



    کیا کس شوخ نے ناز از سرِ تمکیں نشستن کا
    کہ شاخِ گل کا خم، انداز ہے بالیں شکستن کا
    نہاں ہے ،مردمک میں، شوقِ رخسارِ فروزاں سے
    سپندِ شعلہ نادیدہ صفت، انداز جستن کا
    گدازِ دل کو کرتی ہے، کشودِ چشم، شب پیما
    نمک ہے ،شمع میں جوں مومِ جادو ،خواب بستن کا
    نفس در سینہ ہائے ئے ہم د گر رہتا ہے پیوستہ
    نہیں ہے رشتۂ الفت کو اندیشہ گسستن کا
    ہوا نے ابر سے کی موسم گل میں نمدبانی
    کہ تھا آئینۂ خور پر تصور رنگ بستن کا
    تکلف عافیت میں ہے ،دلا !بند قبا واکر
    نفس، بعد از وصالِ دوست تاواں ہے گسستن کا
    ہر اشکِ چشم سے یک حلقۂ زنجیر بڑھتا ہے
    بہ بندِ گریہ ہے نقشِ بر آب، اندیشہ رستن کا
    عیادت سے، اسدؔ، میں بیشتر بیمار رہتا ہوں
    سبب ہے ناخنِ دخلِ عزیزاں، سینہ خستن کا



    عیادت سے زبس ٹوٹا ہے دل ،یارانِ غمگیں کا
    نظر آتا ہے موئے ئےشیشہ، رشتہ شمعِ بالیں کا
    صدا ہے کوہ میں حشر آفریں، اے غفلت اندیشاں
    پئے سنجیدنِ یاراں ہوں، حامل خوابِ سنگیں کا
    بجائےئے غنچہ و گل ہے، ہجومِ خار و خس، یاں تک
    کہ صرفِ بخیۂ دامن ہوا ہے خندہ گلچیں کا
    نصیبِ آستیں ہے، حاصلِ روئےئے عرق آگیں
    چنے ہے کہکشاں ،خرمن سے مہ کے خوشہ پرویں کا
    بہ وقتِ کعبہ جوئی ہا، جرس کرتا ہے ناقوسی
    کہ صحرا فصلِ گل میں رشک ہے، بتخانۂ چیں کا
    تپیدن دل کو سوزِ عشق میں خوابِ فرامش ہے
    رکھا اسپند نے مجمر میں پہلو گرم تمکیں کا
    اسد ؔ! اربابِ فطرت قدردانِ لفظ و معنیٰ ہیں
    سخن کا بندہ ہوں، لیکن نہیں مشتاق تحسیں کا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بہارِ رنگِ خونِ گل ہے، ساماں اشک باری کا
    جنونِ برق، نشتر ہے رگِ ابرِ بہاری کا
    برائے ئےحلِ مشکل ہوں زپا افتادۂ حسرت
    بندھا ہے عقدۂ خاطر سے پیماں خاکساری کا
    بہ وقتِ سرنگونی ہے ،تصور انتظارستاں
    نگہ کو آبلوں سے شغل ہے اختر شماری کا
    لطافت ،بے کثافت، جلوہ پیدا کر نہیں سکتی
    چمن زنگار ہے آئینۂ بادِ بہاری کا
    حریفِ جوششِ دریا نہیں ،خود داریِ ساحل
    جہاں ساقی ہو تو ،باطل ہے دعویٰ ہوشیاری کا
    اسدؔ ساغر کشِ تسلیم ہو گردش سے گردوں کی
    کہ ننگِ فہمِ مستاں ہے، گلہ بد روزگاری کا


    وردِ اسمِ حق سے، دیدارِ صنم حاصل ہوا
    رشتۂ تسبیح، تارِ جادۂ منزل ہوا
    محتسب سے تنگ ہے، از بس کہ کارِ مے کشاں
    رز میں جو انگور نکلا، عقدۂ مشکل ہوا
    قیس نے از بس کہ کی سیرِ گریبانِ نفس
    یک دو چیں دامانِ صحرا ،پردۂ محمل ہوا
    وقتِ شب اُس شمع رو کے شعلۂ آواز پر
    گوشِ نسریں عارضاں ،پروانۂ محفل ہوا
    خاکِ عاشق بس کہ ہے،فرسودہ پروازِ شوق
    جادہ ہر دشت، تارِ دامنِ قاتل ہوا
    عیب کا دریافت کرنا ہے ہنر مندی اسدؔ
    نقص پر اپنے ہوا جو مطّلع، کامل ہوا

    قطرۂ مے، بس کہ حیرت سے نفس پرور ہوا
    خطِ جامِ مے، سراسر رشتۂ گوہر ہوا
    اعتبارِ عشق کی خانہ خرابی دیکھنا
    غیر نے کی آہ لیکن وہ خفا مجھ پر ہوا
    گرمئِ دولت ہوئی آتش زنِ نامِ نکو
    خانۂ خاتم میں، یاقوتِ نگیں، اخگر ہوا
    نشے میں گم کردہ رہ آیا، وہ مستِ فتنہ خو
    آج رنگِ رفتہ، دورِ گردشِ ساغر ہوا
    درد سے در پردہ دی، مژگاں سیاہاں نے شکست
    ریزہ ریزہ استخواں کا ،پوست میں نشتر ہوا
    زہد گر دیدن ہے گردِ خانہ ئےہائے ئےمنعماں
    دانۂ تسبیح سے میں مہرہ درششدر ہوا
    اے بہ ضبطِ حال خوناکردگاں، جوشِ جنوں
    نشۂ مے ہے، اگر یک پردہ نازک تر ہوا
    اس چمن میں ریشہ داری جس نے سر کھینچا اسدؔ
    تر زبانِ شکرلطفِ عامِ ساقئِ کوثر ہوا


    وحشی بن صیاد نے ہم رم خور دوں کو کیا رام کیا
    رشتۂ چاکِ جیبِ دریدہ ،صرفِ قماشِ دام کیا
    عکسِ رخِ افروختہ تھا تصویر بہ پشتِ آئینہ
    شوخ نے وقتِ حُسن طرازی تمکیں سے آرام کیا
    ساقی نے ازبہرِ گریباں چاکئِ موجِ بادۂ ناب
    تارِ نگاہِ سوزنِ مینا، رشتۂ خطِ جام کیا
    مہر بجائےئے نامہ لگائی بر لبِ پیکِ نامہ رساں
    قاتلِ تمکیں سنج نے یوں خاموشی کا پیغام کیا
    شامِ فراقِ یار میں جوشِ خیرہ سری سے ہم نے اسدؔ
    ماہ کو، درتسبیحِ کواکب ، جائے ےنشینِ امام کیا

    گر نہ اندوہِ شبِ فرقت بیاں ہو جائے گا
    بے تکلف داغِ مہ مُہرِ دہاں ہو جائےئے گا
    زہرہ گر ایسا ہی شامِ ہجر میں ہوتا ہے آب
    پرتوِ مہتاب سیلِ خانماں ہو جائےئے گا
    لے تو لوں سوتے میں اُس کےپاؤں کا بوسہ
    ایسی باتوں سے وہ کافر بدگماں ہو جائےئے گا
    دل کو ہم صرفِ وفاسمجھےتھے، کیا معلوم تھا
    یعنی یہ پہلے ہی نذرِ امتحاں ہو جائے گا
    سب کے دل میں ہے جگہ تیری جو تو راضی ہوا
    مجھ پہ، گویا، اک زمانہ مہرباں ہو جائے گا
    گر نگاہِ گرم فرماتی رہی تعلیمِ ضبط
    شعلہ خس میں جیسے، خوں رگ میں نہاں ہو جائےئے گا
    باغ میں مجھ کو نہ لے جا، ورنہ میرے حال پر
    ہر گل تر ، ایک خوں فشاں ہوجائے گا
    وائے! گر میرا تراانصاف محشر میں نہ ہو
    اب تلک تو یہ توقع ہے کہ واں ہو جائے گا
    گر وہ مستِ نازِ تمکیں دیوےگا صلائےئے عرضِ حال
    خارِ گل، بہرِ د ہانِ گُل، زباں ہو جائےئے گا
    گر شہادت آرزو ہے، نشے میں گستاخ ہو
    بال شیشے کا، رگِ سنگِ فساں ہو جائےئے گا
    فائدہ کیا؟ سوچ، آخر تو بھی دانا ہے، اسدؔ
    دوستی ناداں کی ہے، جی کا زیاں ہو جائےئے گا


    تنگ ظرفوں کا رتبہ جہد سے برتر نہیں ہوتا
    حبابِ مےبصد بالیدنی ساغر نہیں ہوتا
    عجب ، اے آبلہ پایانِ صحرائے نظر بازی
    کہ تارِ جادہ رہ رشتہ گوہر نہیں ہوتا
    خوشا! عجزے کہ عاشق جل بجھے جوں شعلہ خامش
    کہ کم از سرمہ اس کا مشتِ خاکستر نہیں ہوتا
    تماشائے، گل و گلشن ہے مفت ِ سر بجیبی ہا
    بہ ازچاکِ گریباں، گلستاں کا در نہیں ہوتا
    نہ رکھ چشمِ حصولِ نفع،صحبت ہائے ممسک سے
    لبِ خشکِ صدف،آبِ گہر سے تر نہیں ہوتا
    نہ دیکھا کوئی ہم نے آشیاں بلبل کاگلشن میں
    کہ جس کے در پہ غنچہ شکلِ قفلِ زر نہیں ہوتا
    صفا کب جمع ہو سکتی ہےغیر از گوشہ گیری ہا
    صدف بن قطرہ نیساں، اسدؔ، گوہر نہیں ہوتا


    لبِ خشک در تشنگی مردگاں کا
    زیارت کدہ ہوں دل آزردگاں کا
    ہمہ نا امیدی، ہمہ بدگمانی
    میں دل ہوں فریبِ وفا خوردگاں کا
    شگفتن کمیں گاہِ تقریب جوئی
    تصور ہوں بے موجب آزردگاں کا
    غریبِ ستم دیدہءِ باز گشتن
    سخن ہوں سخن برلب آوردگاں کا
    سراپا یک آئینہ دارِ شکستن
    ارادہ ہوں، یک عالم افسردگاں کا
    بہ صورت تکلف، بہ معنی تاسف
    اسد میں تبسم ہوں، پژمردگاں کا


    ہے تنگ زِ واماندہ شدن حوصلۂ پا
    جو اشک گرا خاک میں، ہے آبلۂ پا
    سرمنزلِ ہستی سے ہے صحر ائے طلب دور
    جو خط ہے کفِ پا پہ، سو ہے سلسلۂ پا
    دیدار طلب ہے دلِ واماندہ کہ آخر
    نوکِ سرِ مژگاں سے رقم ہو گلۂ پا
    آیا نہ بیابانِ طلب گامِ زباں تک
    تبخالۂ لب ہو نہ سکا آبلۂ پا
    فریاد سے پیدا ہے اسد گرمئِ وحشت
    تبخانۂ لب ہے جرسِ آبلۂ پا


    وہ فلک رتبہ کہ بر توسنِ چالاک چڑھا
    ماہ پر، ہالہ صفت،حلقہءِ فتراک چڑھا
    نشہ مے کے اتر جانے کے غم سے انگور
    صورتِ اشک، بہ مژگانِ رگِ تاک چڑھا
    بوسہ لب سے ملی طبع کیفیتِ حال
    مے کشیدن سے مجھے نشہ تریاک چڑھا
    میں جو گردوں کو بہ میزانِ طبیعت تولا
    تھا یہ کم وزن کہ ہم سنگِ کفِ خاک چڑھا
    اے اسدؔ! واشدن ِ عقدہءِغم گر چاہے
    حضرتِ زلف میں جوں شانہ دلِ چاک چڑھا


    شب کہ ذوقِ گفتگو سے تیری دل بیتاب تھا
    شوخئِ وحشت سے افسانہ فسونِ خواب تھا
    شب کہ برقِ سوزِ دل سے زہرہ ابر آب تھا
    شعلۂ جوالہ، ہر یک حلقۂ گرداب، تھا
    واں کرم کو عذرِ بارش تھا عناں گیرِ خرام
    گریے سے یاں پنبۂ بالش کفِ سیلاب تھا
    لے زمیں سے آسماں تک فرش تھیں بے تابیاں
    شوخیِ بارش سے مہ فوارۂ سیماب تھا
    واں ہجومِ نغمہ ہائے سازِ عشرت تھااسدؔ
    ناخنِ غم، یاںسر تارِ نفس، مضراب تھا
    واں خود آرائی کو تھا موتی پرونے کا خیال
    یاں ہجومِ اشک سے تارِ نگہ نایاب تھا
    جلوہءِ گل نے کیا تھاواں چراغاں، آبجو
    یاں رواں مژگاںچشمِ ترسے خونِ ناب تھا
    یاں سرِ پر شور،بے خوابی سے تھا دیوار جُو
    واں وہ فرقِ ناز، محوِ بالشِ کمخواب تھا
    یاں نفس کرتا تھا روشن، شمعِ بزمِ بے خودی
    جلوہءِ گلواں بساطِ صحبتِ احباب تھا
    فرش سے تا عرش، واں طوفان تھا موجِ رنگ کا
    یاں زمیں سے آسماں تک سوختن کا باب تھا
    ناگہاں اس رنگ سے خونابہ ٹپکانے لگا
    دل کہ ذوقِ کاوشِ ناخن سےلذت یاب تھا


    نالۂ دل میں شب اندازِ اثر نایاب تھا
    تھا سپندِ بزمِ وصلِ غیر گو بیتاب تھا
    دیکھتے تھے ہم بچشمِ خود وہ طوفانِ بلا
    آسمانِ سفلہ جس میں یک کفِ سیلاب تھا
    موج سے پیدا ہوئے پیراہنِ دریا میں خار
    گریہ وحشت بے قرارِ جلوۂ مہتاب تھا
    جوشِ تکلیفِ تماشا محشر آبادِ نگاہ
    فتنۂ خوابیدہ کو آئینہ مشتِ آب تھا
    بے خبر مت کہہ ہمیں بیدرد، خود بینی سے پوچھ
    قلزمِ ذوقِ نظر میں آئنہ پایاب تھا
    بیدلی ہائےئے اسدؔ افسردگی آہنگ تر
    یادِ ایّ۔۔امے کہ ذوقِ صحبتِ احباب تھا
    مقدمِ سیلاب سے دل کیا نشاط آہنگ ہے
    خانۂ عاشق مگر سازِ صدائے ئےآب تھا
    نازشِ ایامِ خاکستر نشینی کیا کہوں
    پہلوئے اندیشہ وقفِ بسترِ سنجاب تھا
    کچھ نہ کی اپنے جنونِ نارسا نے ورنہ یاں
    ذرہ ذرہ روکشِ خورشیدِ عالم تاب تھا
    آج کیوں پروا نہیں اپنے اسیروں کی تجھے
    کل تلک تیرا بھی دل مہر و وفا کا باب تھا
    یاد کر وہ دن کہ ہر اک حلقہ تیرے دام کا
    انتظارِ صید میں اک دیدۂ بے خواب تھا
    میں نے روکارات غالبؔ کو وگرنہ دیکھتے
    اس کی سیلِ گریہ میں گردوں کفِ سیلاب تھا



    شب کہ وہ مجلس فروزِ خلوتِ ناموس تھا
    رشتہءِ ہر شمع، خارِ کسوتِ فانوس تھا
    بت پرستی ہے بہارِ نقش بندی ہائے دہر
    ہر صریرِ خامہ میں، یک نالۂ ناقوس تھا
    مشہدِ عاشق سے کوسوں تک جو اگتی ہے حنا
    کس قدر، یارب، ہلاکِ حسرتِ پا بوس تھا
    حاصلِ الفت نہ دیکھا جز شکستِ آرزو
    دل بہ دل پیوستہ ،گویا، یک لبِ افسوس تھا
    کیا کہوں بیماریِ غم کی فراغت کا بیاں
    جوکہ کھایا خونِ دل بے منتِ کیموس تھا
    طبع کی واشد نے رنگِ گلستاں یک گل کیا
    یہ دل وابستہ، گویا، بیضہءِ طاؤس تھا
    کل اسد کو ہم نے دیکھا گوشۂ غم خانہ میں
    دست برسر، سربہ زانوئے دلِ مایوس تھا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    شبِ اختر قدحِ عیش نے محمل باندھا
    باریک قافلۂ آبلہ منزل باندھا
    سبحہ واماندگیِ شوق و تماشا منظور
    جادے پر زیورِ صد آئنہ منزل باندھا
    ضبطِ گریہ ،گُہرِ آبلہ لایا آخر
    پائے ئےصد موج بہ طوفان کدۂ دل باندھا
    حیف ! اے ننگِ تمنا، کہ پے عرضِ حیا
    یک عرق آئینہ، بر جبہہءِ سائل باندھا
    حسن آشفتگیِ جلوہ ،ہے عرضِ اعجاز
    دستِ موسیٰ بہ سرِ دعویِ باطل باندھا
    تپشِ آئینہ، پروازِ تمنا لائی
    نامۂ شوق، بہ بالِ پرِ بسمل باندھا
    دیدہ تا دل ہے یک آئینہ چراغاں، کس نے
    خلوتِ ناز پہ پیرایۂ محفل باندھا؟
    نا اُمیدی نے ،بہ تقریبِ مضامینِ خمار
    کوچۂ موج کو خمیازۂ ساحل باندھا
    مطربِ دل نے مرے تارِ نفس سے غالبؔ
    ساز پر رشتہ ،پے نغمۂ بیدل باندھا


    عرضِ نیازِ عشق کے قابل نہیں رہا
    جس دل پہ ناز تھا مجھے، وہ دل نہیں رہا
    جاتا ہوں داغِ حسرتِ ہستی لیے ہوئے
    ہوں شمعِ کشتہ ،در خورِ محفل نہیں رہا
    مرنے کی اے دل اور ہی تدبیر کر کہ میں
    شایانِ دست و بازوئے قاتل نہیں رہا
    بر روئےئے شش جہت درِ آئینہ باز ہے
    یاں امتیازِ ناقص و کامل نہیں رہا
    وا کر دیے ہیں شوق نے ہندِ نقابِ حسن
    غیر از نگاہ اب کوئی حائل نہیں رہا
    گو میں رہا رہینِ ستم ہائےئے روزگار
    لیکن ترے خیال سے غافل نہیں رہا
    دل سے ہوائے کشتِ وفا مٹ گئی کہ واں
    حاصل، سوائے حسرتِ حاصل نہیں رہا
    جاں دادگاں کا حوصلہ فرصت گداز ہے
    یاں عرصۂ طپیدنِ بسمل نہیں رہا
    ہوں قطرہ زن بمرحلہ یاس روز و شب
    جز تارِ اشک جادۂ منزل نہیں رہا
    اے آہ !میری خاطرِ وابستہ کے سوا
    دنیا میں کوئی عقدۂ مشکل نہیں رہا
    ہر چند ہوں میں طوطیِ شیریں سخن ،ولے
    آئینہ، آہ،!میرے مقابل نہیں رہا
    بیدادِ عشق سے نہیں ڈرتا، مگر ، اسؔد
    جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا


    خلوتِ آبلۂ پا میں ہے ،جولاں میرا
    خوں ہے دل تنگیِ وحشت سے بیاباں میرا
    ذوقِ سرشار سے بے پردہ ہے طوفاں میرا
    موجِ خمیازہ ہے ہر زخمِ نمایاں میرا
    عیشِ بازی کدۂ حسرتِ جاوید رسا
    خونِ آدینہ سے رنگیں ہے دبستاں میرا
    حسرتِ نشۂ وحشت نہ بسعیِ دل ہے
    عرضِ خمیازۂ مجنوں ہے گریباں میرا
    عالمِ بے سروسامانیِ فرصت مت پوچھ
    لنگرِ وحشتِ مجنوں ہے بیاباں میرا
    بے دماغِ تپشِ رشک ہوں اے جلوۂ حسن
    تشنۂ خونِ دل و دیدہ ہے پیماں میرا
    فہم زنجیرئیِ بے ربطیِ دل ہے یارب
    کس زباں میں ہے لقب خوابِ پریشاں میرا
    بہ ہوس دردِ سرِ اہلِ سلامت تا چند؟
    مشکلِ عشق ہوں، مطلب نہیں آساں میرا
    سرمۂ مفت نظر ہوں، مری قیمت یہ ہے
    کہ رہے چشمِ خریدار پہ احساں میرا
    رخصتِ نالہ مجھے دے کہ مبادا !ظالم
    تیرے چہرے سے ہو ظاہر غمِ پنہاں میرا
    بوئے ئےیوسف مجھے گلزار سے آتی تھی اسدؔ
    دَے نے برباد کیا پیرہنستاں میرا


    بہ مہرِ نامہ جو بوسہ گلِ پیام رہا
    ہمارا کام ہوا اور تمہارا نام رہا
    ہوا نہ مجھ سے بجز درد حاصلِ صیاد
    بسانِ اشک ،گرفتارِ چشمِ دام رہا
    دل و جگرتف فرقت سے جل کے خاک ہوئے
    ولے ہنوز خیالِ وصال خام رہا
    شکستِ رنگ کی لائی سحر شبِ سنبل
    پہ زلفِ یار کا افسانہ ناتمام رہا
    دہانِ تنگ مجھے کس کا یاد آیا تھا
    کہ شب خیال میں بوسوں کا ازدحام رہا
    نہ پوچھ حال شب و روزِ ہجر کا غالبؔ
    خیالِ زلف و رخِ دوست صبح و شام رہائے


    خط جو رخ پر، جانشینِ ہالہءِ مہ ہو گیا
    ہالہ دودِ شعلہ جوالہءِ مہ ہوگیا
    حلقہءِ گیسو کھلادورِ خطِ رخسار پر
    ہالہ دیگربہ گردِ ہالہ مہ ہو گیا
    شب کہ مستِ دیدن مہتاب تھا وہ جامہ زیب
    پارہ چاکِ کتاں ، پر کالہءِ مہ ہوگیا
    شب کہ وہ باغ میں تھا جلوہ فرما ، اے اسدؔ!
    داغِ مہ جوشِ چمن سے، لالہءِ مہ ہو گیا



    بس کہ عاجز نارسائی سے کبوتر ہوگیا
    صفحۂ نامہ، غلافِ بالشِ پر ہوگیا
    صورتِ دیبا تپش سے میری، غرقِ خوں ہے آج
    خارِ پیراہن رگِ بستر کو نشتر ہوگیا
    بس کہ آئینے نے پایا گرمیِ رخ سے گداز
    دامنِ تمثال ،مثلِ برگِ گل، تر ہو گیا
    شعلہ رخسارا! تحیر سے تیری رفتار کے
    خارِ شمعِ آئنہ، آتش میں جوہر ہو گیا
    بس کہ وقتِ گریہ نکلا تیرہ کاری کا غبار
    دامنِ آلودۂ عصیاں ،گراں تر ہوگیا
    حیرتِ اندازِ رہبر ہے عناں گیر ائے ےاسدؔ
    نقشِ پائے ئےخضر یاں، سدِّ سکندر ہوگیا


    یک گامِ بے خودی سے لوٹیں بہارِ صحرا
    آغوشِ نقشِ پا میں کیجے فشارِ صحرا
    وحشت اگر رسا ہے بے حاصلی ادا ہے
    پیمانۂ ہوا ہے، مشتِ غبارِ صحرا
    اے آبلہ کرم کر، یاں رنجہ یک قدم کر
    اے نورِ چشمِ وحشت، اے یادگارِ صحرا
    دل در رکابِ صحرا، خانہ خرابِ صحرا
    موجِ سرابِ صحرا، عرضِ خمارِ صحرا
    ہر ذرہ یک دلِ پاک، آئینہ خانہ بے خاک
    تمثالِ شوقِ بیباک، صدجا دو چارِ صحرا
    دیوانگی اسدؔ کی حسرت کشِ طرب ہے
    سرمیں ہوائے ئےگلشن، دل میں غبارِ صحرا


    دلِ بے تاب کہ سینے میں دمِ چند رہا
    بہ دمِ چند ، گرفتارِ غمِ چند رہا
    زندگی کے ہوئے ناگہ نفس چند تمام
    کوچہءِ یار جو مجھ سے قدمِ چند رہا
    لکھ سکا نہ میں اسے شکوہ پیماں شکنی
    لاجرم، توڑ کے،عاجز، قلم چند رہا
    الفتِ زر ہمہ نقصان ہے، کہ آخر قارون
    زیر بارِ غمِ دام و درم چند رہا
    عمر بھر ہوش نہ یک جا ہوئے میرے کہ، اسدؔ
    میں پرستندہ روئے صنم چند رہا



    جگر سے ٹوٹی ہوئی ہوگئی سناں پیدا
    دہانِ زخم میں آخر ہوئی زباں پیدا
    بسانِ سبزہ رگِ خواب ہےزباں ایجاد
    کرے ہے خامشی احوال ِبے خوداں پیدا
    صفا و شوخی و اندازِحسن پا بہ رکاب
    خط سیاہ سے ہے، گردِ کارواں پیدا
    نہیں ہے آہ کو ایمائے تیرہ بالیدن
    وگرنہ ہے خمِ تسلیم سے کماں پیدا
    نصیبِ تیرہ، بلا گردش آفریں ہے، اسدؔ
    ؎زمیں سے ہوتے ہیں ،صد دامن آسماں پیدا


    دل میرا سوزِ نہاں سے بے محابا جل گیا
    آتشِ خاموش کی مانند گویا جل گیا
    دل میں ذوقِ وصل و یادِ یار تک باقی نہیں
    آگ اس گھر میں لگی ایسی کہ جو تھا جل گیا
    میں عدم سے بھی پرے ہوں ورنہ غافل بارہا
    میری آہِ آتشیں سے بالِ عنقا جل گیا
    عرض کیجے جوہرِ اندیشہ کی گرمی کہاں
    کچھ خیال آیا تھا وحشت کا کہ صحرا جل گیا
    دل نہیں تجھ کو دکھاتا ورنہ داغوں کی بہار
    اس چراغاں کا کروں کیا، کارفرما جل گیا
    دود میرا سنبلستاں سے کرے ہے ہمسری
    بسکہ شوقِ آتشِ گُل سے سراپا جل گیا
    شمع رویوں کی سر انگشتِ حنائی دیکھ کر
    غنچۂ گل پرفشاں پروانہ آسا جل گیا
    خانمانِ عاشقاں دوکانِ آتش باز ہے
    شعلہ رویاں جب ہوگئےئے گرمِ تماشا جل گیا
    تا کجا افسوسِ گرمی ہائے ئےصحبت؟ اے خیال
    دل بہ سوزِ آتشِ داغِ تمنا، جل گیا
    میں ہوںاور افسردگی کی آرزو، غالبؔ، کہ دل
    دیکھ کر طرزِ تپاکِ اہلِ دنیا جل گیا


    نہاں کیفیتِ مے میں ہےسامان ِحجاب اس کا
    بُنا ہے پنبہءِ سینا سےساقی نے نقاب اس کا
    اگر اس شعلہ رو کو دوں پیامِ مجلس افروزی
    زبانِ شمعِ خلوت خانہ دیتی ہے جواب اس کا
    عیاں کیفیت میخانہ ہے جوئے گلستاں میں
    کہ مے عکس شفق ہے ، اور ساغر ہے حباب اس کا
    اٹھائے ہیں جو میں افتادگی میں متصل صدمے
    کروں گا اشک ہائے وا چکیدہ سے حساب اس کا
    اسد ؔ کے واسطے رنگے بروئے کار ہو پیدا
    غبار، آواہ و سر گشتہ ہے یا بو تراب اس کا



    زِ بس ہے ناز پروا زِ غرورِ نشہ صہبا
    رگِ بالیدہ، گردن ہے ، موجِ بادہ در مینا
    در آبِ آئینہ ازجوشِ عکسِ گیسوئے مشکیں
    بہارِ سنبلستان جلوہ گر ہےآں سوئے دریا
    کہاں ہے دیدہ روشن کہ دیکھے بے حجابانہ
    نقابِ یار ہے از پردہ ہائے چشمِ نابینا
    نہ دیجئے پاسِ ضبطِ آبرو،وقتِ شکستن بھی
    تحمل پیشہ تمکیں رہیے آئینہ آسا
    اسدؔ، طبع متیں سے گر نکالوں شعر برجستہ
    شرر، ہو قطرہ خونِ فسردہ در رگِ خارا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  8. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    گرفتاری میں فرمانِ خطِ تقدیر ہے پیدا
    کہ طوقِ قمری از ہر حلقۂ زنجیر ہے پیدا
    زمیں کو صفحۂ گلشن بنایا خونچکانی نے
    چمن بالیدنی ہا، از رمِ نخچیر ہے پیدا
    مگر وہ شوخ ہے طوفاں طرازِ شوقِ خو نریزی
    کہ در بحرِ کہاں بالیدہ موجِ تیر ہے پیدا
    نہیں ہے کف لبِ نازک پہ فرطِ نشۂ مے سے
    لطافت ہائےجوشِ حسن کا سر شیر ہے پیدا
    عروجِ اُمیدی چشم زخمِ چرخ کیا جانے؟
    بہارِ بے خزاں از آہِ بے تاثیر ہے پیدا
    اسد جس شوق سے ذرے تپش فرساہوں روزن میں
    جراحت ہا ئےدل سے جوہرِ شمشیر ہے پیدا



    سحر گہ باغ میں وہ حیرتِ گلزار ہو پیدا
    اُڑے رنگِ گل اور آئینۂ دیوار ہو پیدا
    بتاں!زہر آب اس شدت سے دوپیکانِ ناوک کو
    کہ خطِ سبز تا پشتِ لبِ سوفار ہو پیدا
    لگے گرسنگ سر پر یار کے دست نگاریں سے
    بجا ئےزخم گل بر گوشۂ دستار ہو پیدا
    کروں گر عرض سنگینیِ کہسار اپنی بے تابی
    رگِ ہر سنگ سے نبضِ دلِ بیمار ہو پیدا
    بہ سنگِ شیشہ توڑوں، ساقیا !پیمانۂ پیماں
    اگر ابرِ سیہ مست از سوئے کہسار ہو پیدا
    اسد مایوس مت ہو ، گرچہ رونے میں اثر کم ہے
    کہ غالب ہے کہ بعد از زاریِ بسیار ہو پیدا


    بس کہ ہے میخانہ ویراں، جوں بیابانِ خراب
    عکسِ چشمِ آہوئے رم خوردہ ہے داغِ شراب
    تیرگئیِ ظاہری ہے طبعِ آگہ کا نشاں
    غافلاں عکسِ سوادِ صفحہ ہے گردِ کتاب
    یک نگاہِ صاف ،صد آئینۂ ،تاثیر ہے
    ہے رگِ یاقوت عکسِ خطِ جامِ آفتاب
    ہے عرق افشاں مشی سے ادہمِ مشکینِ یار
    وقتِ شب اختر گنےہے چشمِ بیدارِ رکاب
    ہے شفق سوز جگر کی آگ کی بالیدگی
    ہر یک اختر سےفلک پر قطرۂ اشکِ کباب
    بس کہ شرمِ عارضِ رنگیں سے حیرت جلوہ ہے
    ہے شکستِ رنگِ گل آئینہ پردازِ نقاب
    شب کہ تھا نظارگی رو ئےبتاں کا اے اسدؔ
    گر گیا بامِ فلک سے صبح، طشتِ ماہتاب



    ہے بہاراں میں خزاں پرور خیال عندلیب
    رنگِ گل آتش کدہ ہے زیرِ بالِ عندلیب
    عشق کو ہر رنگ شانِ حسن ہے مدِ نظر
    مصرعِ سروِ چمن ہے حسبِ حالِ عندلیب
    حیرتِ حسنِ چمن پیرا سے تیرے رنگِ گل
    بسمل ذوق ِپریدن ہے بہ بالِ عندلیب
    عمر میری ہوگئی صرفِ بہارِ حسنِ یاد
    گردشِ رنگِ چمن ہے ماہ و سالِ عندلیب
    منع مت کر حسن کی ہم کو پرستش سے کہ ہے
    بادۂ نظارۂ گلشن، حلالِ عندلیب
    ہے مگر موقوف بر وقتِ دگر، کارِ اسدؔ
    اے شبِ پرانہ و روزِ وصالِ عندلیب


    آمد خط سے ہوا ہے سرد جو بازارِ دوست
    دودِ شمع کشتہ تھا شاید، خطِ رخسارِ دوست
    اے دلِ نا عاقبت اندیش ضبطِ شوق کر
    کون لا سکتا ہےتابِ جلوہ دیدارِ دوست
    خانہ ویراں سازی حیرت تماشا کیجئے
    صورتِ نقشِ قدم ،ہوں رفتہ ء رفتارِ دوست
    عشق میں بیدادِ رشکِ غیر نے مارا مجھے
    کشتہ دشمن ہوں آخر،گرچہ تھا بیمارِ دوست
    چشمِ ما روشن! کہ اس بیدرد کا دل شاد ہے
    دیدہ پرخوں ہمارا،ساغرِ سرشارِ دوست
    غیر یوں کرتا ہے میری پرسش اس کے ہجر میں
    بے تکلف دوست ہوجیسے کوئی، غمخوارِ دوست
    تاکہ میں جانوں کہ ہے اس کی رسائی واں تلک
    مجھ کو دیتا ہے پیامِ وعدہءِ دیدارِ دوست
    جبکہ میں کرتا ہوں اپنا شکوہ ضعفِ دماغ
    سر کرے ہے وہ حدیث زلف عنبر بارِ دوست
    چپکے چپکے مجھ کو روتے دیکھ پاتا ہے اگر
    ہنس کے کرتا ہے بیانِ شوخیِ گفتارِ دوست
    مہربانی ہائے دشمن کی شکایت کیجئے
    یا بیاں کیجئے سپاسِ لذتِ آزارِ دوست
    یہ غزل اپنی، مجھے جی سے پسند آئی ہے آپ
    ہے ردیفِ شعر میں ، غالب، ز بس تکرارِ دوست
    چشم بندِ خلق غیراز نقشِ خود بینی نہیں
    آئنہ ہے قالبِ خشتِ در و دیوارِ دوست
    برقِ خرمن زارِ گوہر ہے نگاہِ تیزیاں
    اشک ہو جاتے ہیں خشک از گرمیِ رفتارِ دوست
    ہے سوا نیزے پہ اس کے قامتِ نوخیز سے
    آفتابِ روزِ محشر ہے گلِ دستارِ دوست
    لغزشِ مستانہ و جوش تماشا ہے اسد
    آتشِ مے سے بہارِ گرمیِ بازار دوست


    جاتا ہوں جدھر سب کی اُٹھے ہے اُدھر انگشت
    یک دست جہاں مجھ سے پھرا ہے، مگر انگشت
    الفت ِمژگاںمیں جو انگشت نما ہوں
    لگتی ہے مجھے تیر کے مانند، ہر انگشت
    ہر غنچۂ گل صورتِ یک قطرۂ خوں ہے
    دیکھا ہے کسو کا جو حنا بستہ، سر انگشت
    گرمی ہے زباں کی سببِ سوختنِ جاں
    ہر شمع شہادت کو ہےیاں سر بسر انگشت
    خوں دل میں جو میر ے نہیں باقی تو پھر اس کی
    جوں ماہی بے آب تڑپتی ہے ہر انگشت
    شوخی تری کہہ دیتی ہے احوال ہمارا
    رازِ دلِ صد پارہ کی ہے پردہ در انگشت
    بس رتبے میں باریکی و نرمی ہے کہ جوں گل
    آتی نہیں پنجے میں بس اس کے نظر انگشت
    افسوس کہ دنداں کا کیا رزق فلک نے
    جن لوگوں کی تھی درخورِ عقدِ گہر انگشت
    کافی ہے نشانی تری چھلّے کا نہ دینا
    خالی مجھے دکھلا کے بہ وقت سفر انگشت
    لکھتا ہوں اسد سوزشِ دل سے سخنِ گرم
    تا رکھ نہ سکے کوئی مرے حرف پر انگشت



    دودِ شمعِ کشتۂ گل بزم سامانی عبث
    یک شبہ آشفتہ نازِ سنبلستانی عبث
    ہے ہوس محمل بہ دوشِ شوخیِ ساقی مست
    نشۂ مے کے تصور میں نگہبانی عبث
    باز ماندن ہا ئےمژگاں ہے یک آغوشِ وداع
    عید در حیرت سوارِ چشمِ قربانی عبث
    جز غبارِ کردہ سیر آہنگیِ پرواز کوُ ؟
    بلبلِ تصویر و دعوا ئےپرافشانی عبث
    سر نوشتِ خلق ہے طغرا ئےعجزِ اختیار
    آرزوہا خار خارِ چینِ پیشانی عبث
    جب کہ نقشِ مدعا ہووے نہ جز موجِ سراب
    وادئیِ حسرت میں پھر آشفتہ جولانی عبث
    دست برہم سودہ ہے مژگانِ خوابیدہ اسدؔ
    اے دل از کف دادۂ غفلت پیشمانی عبث


    نازِ لطفِ عشق با وصفِ توانائی عبث
    رنگ ہے سنگِ محک دعوا ئےمینائی عبث
    ناخنِ دخلِ عزیزاں یک قلم ہے نقب زن
    پاسبانیِ طلسمِ کنجِ تنہائی عبث
    محملِ پیمانۂ فرصت ہے بر دوشِ حباب
    دعوئ دریا کشی و نشہ پیمائی عبث
    جانِ عاشق حاملِ صد غلبۂ تاثیر ہے
    دل کو اے بیداد خو تعلیمِ خارائی عبث
    یک نگاہ ِگرم ہے، جوں شمع، سر تا پا گداز
    بہرِ از خود رفتگاں،رنجِ خود آرائی عبث
    قیس بھاگا شہر سے شرمندہ ہو کر سوئے دشت
    بن گیا تقلید سے میری یہ سودائی عبث
    اے اسد ؔ، بے جا ہے نازِ سجدہ، عرض نیاز
    عالمِ تسلیم میں یہ دعویٰ آرائی عبث


    گلشن میں بندوبست بہ رنگِ دگر ہے آج
    قمری کا طوق حلقۂ بیرونِ در ہے آج
    آتا ہے ایک پارۂ دل ہر فغاں کے ساتھ
    تارِ نفس کمندِ شکارِ اثر ہے آج
    اے عافیت کنارہ کر، اے انتظام چل
    سیلابِ گریہ دشمنِ دیوار و در ہے آج
    معزولیِ تپش ہوئی افراطِ انتظار
    چشمِ کشودہ حلقۂ بیرونِ در ہے آج
    حیرت فروشِ صد نگرانی ہے اضطرار
    ہر رشتہ چاکِ جیب کا تارِ نظر ہے آج
    ہوں داغِ نیمِ رنگیِ شامِ وصالِ یار
    نورِ چراغِ بزم سے جوشِ سحر ہے آج
    کرتی ہے عاجزی سفرِ سوختن تمام
    پیراہنِ خسک میں غبارِ شرر ہے آج
    تا صبح ہے بہ منزلِ مقصد رسیدنی
    دودِ چراغِ خانہ غبارِ سفر ہے آج
    دور اوفتادۂ چمنِ فکر ہے اسدؔ
    مرغِ خیال بلبلِ بے بال و پر ہے آج
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    آپ کے گراں قدر جذبے کو سلام۔
    ایک عرض کرما چاہوں گا کہ بجائے از سر نو ٹائپنگ کے آپ "دیوان غالب نسخۂ اردو ویب" سے غزلیات اور اشعار کاپی پیسٹ کرتے چلے جائیں، یوں ایک تو دوبارہ وہی محنت کرنے سے بچ جائیں گے دوم یہ کہ اس نسخے میں تمام اشعار کی پروف ریڈنگ بھی ہو چکی ہے۔ بس خیال یہ کیجیے گا کہ جس غزل کے جتنے اشعار رضا صاحب نے جس سن کے تحت لکھے ہیں اسی قدر لکھیے گا کیونکہ کچھ ایسی غزلیات بھی ہیں جن کے کچھ اشعار ایک سن کے تحت ہیں اور چند دوسرے سن کے تحت۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • متفق متفق × 1
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,655
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکریہ غالب کودک۔ کیا اس نسخے میں تاریخیں نہیں ہیں؟ ان کا بھی اضافہ کر دیں۔
    @فاتح۔ان کو یہی مشورہ دیا تھا کہ میری سائٹ سے کمپائل کیا ہوا دیوان غالب سے کاپی پیسٹ کریں، اور شاید وہ یہی کام کر رہے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    ویسے میرے پاس جو دیوان غالب کامل از کالی داس گپتا رضا ہے اس میں کچھ مختلف سن وغیرہ ہیں مثلاً انھوں نے مثنوی (ایک دن مثلِ پتنگِ کاغذی) کو از ۔۔۔ تا 1812 لکھا ہے جب کہ میرے پاس جو نسخہ ہے اس میں صراحت سے مثنوی پر "تقریباً 1807" مندرج ہے۔
    علاوہ ازیں زیادہ بڑا کام اس نسخے کے شروع میں دیے گئے "حرفے چند" کے تحت مضامین ٹائپ کرنا ہے اور انھی نثری مضامین کی وجہ سے ہم نے چند برس قبل اس نسخے کو برقیانے کا ارادہ ترک کر دیا تھا۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,655
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    میرے پاس کے نسخے میں بھی تاریخ وار ترتیب کے ساتھ سنین بھی تھے۔اسی لئے مشورہ دیا تھا۔ نثری مضامین اگر ہو سکیں تو بہت بہتر، ورنہ پھر بھی محض یہ نسخہ بھی ہو جائے تو اچھا نہیں ہے فاتح؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    کچھ نہ ہونے سے کچھ ہونا بہتر ہے لیکن کم از کم سال درست درج ہونے چاہییں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • متفق متفق × 1
  14. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    شکریہ شکریہ شکریہ شکریہ بے حد شکریہ حوصلہ افزائی اور توجہ فرمانے کا
    بہت بہت بہت بہت خوشی ہوئی کہ مجھے وارث بھائی فاتح بھائی اور فرخ منظور بھائی کی توجہ اور سر الف عین صاحب کی سر پرستی حاصل ہے
    لیکن حیوان نیم ظریف فطرت سے مجبور ہے یہ کہنے پر بھی کہ :۔ شورِ پند "فاتح" نے زخم پر نمک چھڑکا :LOL: (یقین مانیے یہ صرف عادت سے مجبور ہوکر لکھا ہے ہاہاہاہاہاہاہا امید ہے گراں نہیں گزرے گا)
    تو صاحبو ! عرض یہ ہے کہ
    کاپی پیسٹ والا کام مجھے بہت مہنگا پڑا، کیونکہ
    1:۔ الفاظ اکثر مختلف ہیں تینوں نسخوں میں
    2:۔ غزلیات کی ترتیب تو ہے ہی مگر اشعار کی ترتیب بھی مختلف ہے
    3:۔ اس پر سہاگہ املا ، نسخہ حمیدیہ میں بعض جگہوں پر "ے" کے بغیر ہی کام چلایا گیا ہے مثلا نواہا جبکہ نسخہ رضا میں نواہائے

    لیکن میں نے کڑی احتیاط سے کام لیا ہے اور پوری کوشش کی ہے کہ کوئی غلطی نہ ہونے پائے (سست رفتاری کی وجہ بھی یہی ہے)، میں نے اپنی طرف سے ایک کومہ تک نہیں گھٹایا بڑھایا
    اشعار جس ترتیب سے تھے اسی ترتیب سے درج کیے ہیں، تاریخیں بھی جیسے جیسے درج ہیں ویسے ہی درج کی ہیں
    1813 سے 1816 ابھی جاری ہے اس لیے تاریخ چینج نہیں ہوئی،
    اور دیباچے کو آخر میں رکھنے کا ارادہ تھا (نام کا اثر ہے میرا کوئی قصور نہیں) اس ڈر سے کہ کہیں دیباچے میں ہی نہ اٹکا رہوں

    لیکن اس کا ایک فائدہ ضرور ہوا ہے کہ دیوان غالب کا نیم حافظ ہوگیا ہوں

    اب ایک گزارش ہے کہ درمیان سے یہ تبصرے حذف کر دئیے جائیں تاکہ میں کام کو جاری رکھ سکوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. فاتح

    فاتح لائبریرین

    مراسلے:
    15,751
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Hungover
    چند گزارشات:
    1. آپ املا کا فرق نظر انداز کر دیں اور وہی املا رہنے دیں جو نسخۂ اردو ویب میں ہے۔ ورنہ پانو کو کون پاؤں پڑھ پائے گا۔ الخ
    2. سال درست درج کریں۔۔۔ جیسا کہ میں نے اوپر مثنوی (مثل تنگ کاغذی) کی مثال دی۔
    3. درمیانی مراسلوں کی فکر مت کیجیے۔ آپ آگے لکھتے جائیں۔ درمیانی مراسلات منتظمین بعد میں بھی حذف کر سکتے ہیں یا تبصروں کا علیحدہ دھاگا بنا کر اس میں منتقل کر سکتے ہیں۔
     
    • متفق متفق × 2
  16. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    نئی تصویر بہت زبردست ہے جناب، چشمَ بد دور
    میرے پاس موجود کتاب میں اس مثنوی کو از ۔۔۔۔۔۔ تا 1812 کے ذیل میں درج کیا ہوا ہے
    پھر بھی آپ کہتے ہیں تو زنجیر ہلا دیتے ہیں:)
    (ویسے یادگارِ غالب کے مطابق بھی یہ مثنوی از ۔۔۔۔۔۔۔۔ تا 1812 کے درمیانی زمانے کی ہے)
    ایک اور مسئلہ در پیش ہے
    ایک لفظ آیا ہے جو کہ نسخہ حمیدیہ میں "رسیدہ کھینچ" ٹائپ کیا ہوا تھا، اور کالیداس میں "رمیدہ کھینچ " ہے یہ لفظ
    میری کنفیوژن کی وجہ یہ ہے کہ اس تضاد کا ذکر نہ تو کالیداس کے حواشی میں ہے نہ ہی نسخہ حمیدیہ میں، فی الحال تو میں نے اسے کالیداس کے مطابق "رمیدہ کھینچ" ہی لکھا ہے مگر اگر آپ کچھ مدد کر دیں تو ابھی درستی ہو جائے گی لگے ہاتھوں
    ایک اور لفظ جو نسخہ حمیدیہ میں "کہسار گرو" ٹائپ ہوا ہے مگر میرے پاس موجود کتاب میں "کہسار گرد" لکھا ہے، اور اس کا بھی حواشی میں ذکر نہیں
    آپ سے مدد کی درخواست ہے،
    ہیلپ کا طالب:۔ چھوٹا غالبؔ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,655
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    عزیزم، اس کا علاج بھی اردو ویب نسخے میں ہی ہے۔ ہم نے اکثر جگہ متن میں ایک املا یا لفظ لکھا ہے، اور فٹ نوٹ میں متبادل املا یا لفظ کا ذکر کر دیا ہے۔ بس یہ کوشش ہو کہ ایک ہی نسخہ اصل متن میں استعمال یا جائے۔ یہاں تو مختلف نسخوں کا ذکر ہے، اگر کالی داس کے بھی دو نسخوں میں فرق ہوتا تو اسے واضح کیا جا سکتا تھا، یہاں تو اصل نسخہ کالی داس رضا کا ہی ہے، اس لئے فرق واضح کر دو۔ مگر اس میں لگتی ہے محنت زیادہ۔ کہ ہر غزل کا فرق دیکھو اور پھر فٹ نوٹ کا اضافہ کرو کہ ’نسخہ حمیدیہ میں یہ شعر اس طرح لکھا گیا ہے‘۔ لیکن مکمل ٹائپ کرنے سے تو بہتر یہی ہے۔ کہ اس نسخے کی پروف ریڈنگ بھی کئی کئی بار ہو چکی ہے۔
     
    • متفق متفق × 2
  18. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    شروع میں ایسا کرتا رہا مگر "فرق ِ مدام سے گھبرا گیا دل"
    اب وہ لسٹ ادھوری پڑی ہے جس میں میں فرق لکھتا جا رہا تھا
    یہ سوچا کہ جب ٹائپ ہی دیوان کالیداس ہو رہا ہے تو ترجیح اسی کے متن کو دینی چاہیے
    آپ کا حکم سر آنکھوں پر، (مگر مجھے ابھی ہول ، اور پیٹ میں مروڑ اٹھنے لگے ہیں ھاھاھاھا :bomb:)
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,655
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    یہ طرز بیان اور چھوٹا غالب کا! بہر حال اسی لہجے میں ۔۔ لگے رہو منا بھائی!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    جناب عالی اللہ کے فضل سے 1816 تک کا کلام ترتیب پا جانے کے قریب ہے ، (انشاء اللہ کل کی رات بس)
    لیکن اس سے پہلے مجھے ان صاحبانِ گرامی کے نام بتائیے جنہوں نے نسخہ حمیدیہ کی پروف ریڈنگ کی
    میں ان کی زیارت تو کر لوں کم از کم
    میم سے ی تک کی پروف ریڈنگ میں نے کر دی ہے از سر ِ نو (وہ لسٹ میں آپ کی خدمت میں حاضر کر دوں گا)
    مگر الف سے ردیف ل م تک ری پروف ریڈنگ کروائی جائے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر