ٹائپنگ مکمل دیوانِ غالبؔ کامل (نسخہ رضاؔ) از کالی داس گپتا رضا

چھوٹاغالبؔ نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 1, 2012

  1. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    1821 ء

    قصائد


    سازِ یک ذرہّ نہیں، فیضِ چمن سے، بے کار
    سایۂ لالۂ بے داغ، سویدائےبہار
    مستیِ بادِ صبا سے ہے، بہ عرضِ سبزہ
    ریزۂ شیشۂ مے ،جوہرِ تیغِ کُہسار
    سنگ ، یہ کارگہِ ربطِ نزاکت ہے ،کہ ہے
    خندۂ بے خودیِ کبک، بہ دندانِ شرار
    سبز ہے جامِ زمردکی طرح، داغِ پلنگ
    تازہ ہے ، ریشۂ نارنج صفت روئےشرار
    کشتۂ افعیِ زلفِ سیہِ شیریں کو
    بے ستوں، سبزے سے، ہے سنگِ زمرد کامزار
    حسرتِ جلوۂ ساقی ہے کہ ہر پارۂ ابر
    سینہ ، بیتابی سے ، ملتا ہے بہ تیغ کُہسار
    دشمنِ حسرتِ عاشق ہے ، رگِ ابرِ سیاہ
    جس نے برباد کیا ریشۂ چندیں شبِ تار
    مستیِ ابر سے گلچینِ طرب ہے حسرت
    کہ اس آغوش میں ممکن ہے دو عالم کا فشار
    کوہ و صحرا ہمہ، معموریِ شوقِ بلبل
    راہِ خوابیدہ ہوئی خندۂ گل سے بیدار
    چشم بر چشم چنے ہے بہ تماشا ، مجنوں
    ہر دو سو خانۂ زنجیر، نگہ کا بازار
    خانۂ تنگ، ہجومِ دو جہاں کیفیت
    جامِ جمشید ہے یاں قالبِ خشتِ دیوار
    سونپے ہے فیضِ ہوا ، صورت مژگانِ یتیم
    سرنوشتِ دو جہاں ابر، بہ یک سطرِ غبار
    کفِ ہر خاک بگردوں شدہ، قمری پرواز
    دامِ ہر کاغذِ آتش زدہ ، طاؤس شکار
    سنبل و دام ِکمیں خانۂ خوابِ صیاد
    نرگس و جام سیہ مستیِ چشمِ بیدار
    طرہ ہا ، بس کہ، گرفتارِ صبا ہیں، شانہ
    زانوئے آئنہ پر مارے ہے دستِ بے کار
    بس کہ یکرنگ ہیں دل، کرتی ہے ایجاد نسیم
    لالے کے داغ سے ، جوں نقطہ و خط، سنبلِ زار
    اے خوشا! فیضِ ہوائےچمنِ نشو و نما
    بادہ پُر زور و نفس مست و مسیحا بیمار
    کاٹ کر پھینکیے ناخن، تو باندازِ ہلال
    قوت نامیہ اس کو بھی نہ چھوڑے بیکار
    ہمتِ نشو ونما میں یہ بلندی ہے کہ سرو
    پرِ قمری سے کرے صیقلِ تیغِ کہسار
    ہر کفِ خاک، جگر تشنۂ صد رنگِ ظہور
    غنچے کے میکدے میں مستِ تامل، ہے بہار
    کس قدر عرض کروں ساغرِ شبنم، یا رب؟
    موجۂ سبزۂ نوخیز ،ہے لبریزِ خمار
    غنچۂ لالہ ،سیہ مستِ جوانی ہے ہنوز
    شبنمِ صبح ، ہوئی رعشۂ اعضائے بہار
    جوشِ بیدادِ تپش سے ہوئی عریاں آخر
    شاخِ گلبن پہ ،صبا ، چھوڑ کے پیراہنِ خار
    سازِ عریانیِ کیفیتِ دل ہے ، لیکن
    یہ مئے تند ، نہیں موجِ خرامِ اظہار
    موجِ مے پر ہے ، براتِ نگرانی امید
    گلِ نرگس سےکفِ جام پہ ہے، چشمِ بہار
    گلشن و میکدہ ،سیلابی یک موجِ خیال
    نشہ و جلوۂ گل ، برسرِ ہم فتنہ عیار
    میکدے میں ہو اگر ، آرزوئےگل چینی
    بھول جا یک قدحِ بادہ بہ طاقِ گلزار
    موجِ گل ڈھونڈھ بہ خلوت کدۂ غنچۂ باغ
    گم کرے ، گوشۂ میخانہ میں گر تو، دستار
    پشتِ لب، تہمتِ خط کھینچے ہے بے جا یعنی
    سبز ہے موجِ تبسم بہ ہوائےگفتار
    کھینچے گر مانیِ اندیشہ چمن کی تصویر
    سبز ،مثلِ خطِ نوخیز، ہو خطِ پرکار
    جائےحیرت ہے کہ گلبازیِ اندیشۂ شوق
    اس زمیں میں نہ کرے سبز قلم کی رفتار


    مطلعِ ثانی


    لعل سی، کی ہے پے زمزمہ مدحتِ شاہ
    طوطیِ سبزۂ کُہسار نے پیدا، منقار
    کسوتِ تاک میں ہے نشۂ ایجادِ ازل
    سبحۂ عرضِ دو عالم، بکفِ آبلہ دار
    بہ نظر گاہِ گلستانِ خیالِ ساقی
    بیخودی، دامِ رگِ گل سے ہے پیمانہ شکار
    بہ ہوائےچمنِ جلوہ ، ہے طاؤس پرست
    باندھے ہے پیرِ فلک موجِ شفق سے زنّار
    یک چمن جلوۂ یوسف ہے بہ چشمِ یعقوب
    لالہ ہا داغ برافگندہ، وگل ہا بے خار
    بیضۂ قمری کے آئینے میں پنہاں صیقل
    سروِ بیدل سے عیاں، عکسِ خیالِ قدِ یار
    عکسِ موجِ گل و سرشاریِ اندازِ حباب
    نگہِ آئینۂ ، کیفیتِ دل سے دوچار
    کس قدر سازِ دو عالم کو ملی جرأتِ ناز
    کہ ہوا ،ساغرِ بے حوصلۂ دل ،سرشار
    ورنہ وہ ناز ہے ،جس گلشنِ بیداد سے تھا
    طور ،مشعل بکف از جلوۂ تنزیہہِ بہار
    سایۂ تیغ کو دیکھ اُس کے، بہ ذوقِ یک زخم
    سینۂ سنگ پہ کھینچے ہے الف، بالِ شرار
    بت کدہ ،بہرِ پرستش گریِ قبلۂ ناز
    باندھے زنارِ رگِ سنگ ، میانِ کُہسار
    سبحہ گرداں ہے اسی کی کفِ امید کا، ابر
    بیم سے جس کے، صبا ، توڑے ہے صد جا زنار
    رنگریزِ گل و جامِ دو جہاں ناز و نیاز
    اولیں دورِ امامت ،طرب ایجادِ بہار
    جوشِ طوفانِ کرم، ساقیِ کوثر ساغر
    نُہ فلک ،آئنہ ایجادِ کفِ گوہر بار
    پہنے ہے پیرہنِ کاغذِ ابری، نیساں
    یہ تُنک مایہ ، ہے فریادیِ جوشِ ایثار
    وہ شہنشاہ کہ جس کی پئے تعمیرِ سرا
    چشمِ جبریل ،ہوئی قالبِ خشتِ دیوار
    فلک العرش ،ہجومِ خمِ دوشِ مزدور
    رشتۂ فیضِ ازل، سازِ طنابِ معمار
    سبزۂ نُہ چمن، ویک خطِ پشتِ لبِ بام
    رفعتِ ہمتِ صد عارف، ویک اوجِ حصار
    واں کے خاشاک سے حاصل ہو جسے، یک پرِ کاہ
    وہ رہے مِروحۂ بالِ پری سے بیزار
    پر یہ دولت تھی ،نصیبِ نگہِ معنیِ ناز
    کہ ہوا صورتِ آئینہ میں، جوہر، بیدار
    ذرہ اس گرد کا خورشید کو ،آئینۂ ناز
    گرد اُس دشت کی، امید کو ، احرامِ بہار
    خاکِ صحرائےنجف، جوہرِ سیرِ عُرفا
    چشمِ نقشِ قدم ،آئینۂ بختِ بیدار
    اے خوشا! مکتبِ شوق و بلدستانِ مراد
    سبقِ نازکی ، ہے عجز کو صد جا، تکرار
    مشقیِ نقشِ قدم ، نسخہ آبِ حیواں
    جادۂ دشتِ نجف ، عمرِ خضر کا طومار
    جلوہ تمثال ہے، ہر ذرۂ نیرنگ سواد
    بزمِ آئینۂ تصویر نما، مشتِ غبار
    دو جہاں طالبِ دیدار تھا، یا رب کہ، ہنوز
    چشمکِ ذرہ سے ہے گرم، نگہ کا بازار
    ہے ،نفس مایہ شوقِ دو جہاں ریگِ رواں
    پائےرفتار کم، و حسرتِ جولاں بسیار
    آفرینش کوہے، واں سے، طلبِ مستیِ ناز
    عرضِ خمیازۂ ایجاد ہے ہر موجِ غبار
    دشتِ الفت چمن، و آبلہ مہماں پرور
    دلِ جبریل، کفِ پا پہ ملے ہے رخسار
    یاں تک انصاف نوازی کہ اگر ریزۂ سنگ
    بے خبر دے بکفِ پائےمسافر آزار
    یک بیاباں تپشِ بالِ شرر سے، صحرا
    مغزِ کُہسار میں کرتا ہے فرو ،نشترِ خار
    فرش اِس دشتِ تمنا میں نہ ہوتا ، گر ،عدل
    گرمیِ شعلۂ رفتار سے جلتے خس و خار
    ابرِ نیساں سے ملے موجِ گُہر کا تاواں
    خلوتِ آبلہ میں گم کرے ، گر تو، رفتار
    یک جہاں بسملِ اندازِ پر افشانی ہے
    دام سے اُس کے ،قضا کو ہے رہائی دشوار
    موجِ طوفانِ غضب چشمۂ نُہ چرخِ حباب
    ذوالفقارِ شہِ مرداں، خطِ قدرت آثار
    موجِ ابروئے قضا ، جس کے تصور سے، دونیم
    بیم سے جس کے، دلِ شحنہ تقدیر ،فگار
    شعلہ تحریر سے اُس بر ق کی ،ہے کلکِ قضا
    بالِ جبریل سے مسطر کشِ سطرِ زنہار
    موجِ طوفاں ہو، اگر خونِ دو عالمِ ہستی
    ہے حنا کو سرِ ناخن سے گزرنا دشوار
    دشتِ تسخیر ہو ،گر گردِ خرامِ دُلدل
    نعلِ در آتشِ ہر ذرہ ہے، تیغِ کہسار
    بالِ رعنائیِ دُم ،موجۂ گلبندِ قبا
    گردشِ کاسۂ سُم، چشمِ پری آئنہ دار
    گردِ راہ اس کی بھریں شیشۂ ساعت میں اگر
    ہر نفس راہ میں ٹوٹے ، نفسِ لیل و نہار
    نرم رفتار ہو جس کوہ پہ وہ برق گداز
    رفتنِ رنگِ حنا ہے ،تپشِ بالِ شرار
    ہے سراسر رویِ عالمِ ایجاد اُسے
    جَیبِ خلوت کدۂ غنچہ میں، جولانِ بہار
    جس کے حیرت کدۂ نقشِ قدم میں ،مانی
    خونِ صد برق سے باندھے بکفِ دست نگار
    ذوقِ تسلیمِ تمنا سے بہ گلزارِ حضور
    عرضِ تسخیرِ تماشا سے بہ دامِ اظہار
    مطلعِ تازہ ہوا موجۂ کیفیتِ دل
    جامِ سرشارِ مے و غنچۂ لبریزِ بہار
     
  2. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    مطلعِ ثالث


    فیض سے تیرے ہے، اے شمعِ شبستانِ بہار
    دلِ پروانہ چراغاں، پرِ بلبل گُلزار
    شکلِ طاؤس کرے، آئنہ خانہ پرواز
    ذوق میں جلوے کے تیرے بہ ہوائےدیدار
    گردِ جولاں سے ہے تیری ، بگریبانِ خرام
    جلوۂ طور، نمک سودۂ زخمِ تکرار
    جس چمن میں ہو ،ترا جلوۂ محروم نواز
    پرِ طاؤس ،کرے گرم نگہ کا بازار
    جس ادب گاہ میں تو آئنۂ شوخی ہو
    جلوہ ،ہے ساقی ِمخموریِ تابِ دیوار
    تو وہ ساقی ہے کہ ہر موجِ محیطِ تنزیہہ
    کھینچے خمیازےمیں تیرے لبِ ساغر کا خمار
    گرد باد آئنہ فتراکِ دماغِ دل ہا
    تیرا صحرائے طلب ،محفلِ پیمانہ شکار
    ذوقِ بیتابیِ دیدار سے تیرے، ہے ہنوز
    جوشِ جوہر سے ،دلِ آئنہ ،گلدستۂ خار
    تیری اولاد کے غم سے ہے بروئے گردوں
    سلکِ اختر میں مہِ نو ،مژۂ گوہر بار
    مدح میں تیری نہاں ،زمزمۂ نعت نبیؐ
    جام سے تیرے عیاں ،بادۂ جوشِ اسرار
    ہم عبادت کو، ترا نقشِ قدم ، مُہرِ نماز
    ہم ریاضت کو، ترے حوصلے سے استظہار
    تیرا پیمانۂ مے ،نسخۂ ادوارِ ظہور
    تیرا نقشِ قدم ،آئینۂ شانِ اظہار
    آیتِ رحمتِ حق، بسملۂ مصحفِ ناز
    مسطرِ موجۂ دیباچۂ درسِ اسرار
    قبلۂ نورِ نظر، کعبۂ ایجادِ مسیح
    مژۂ دیدۂ نخچیر سے ،نبضِ بیمار
    تہمتِ بے خودیِ کفر نہ کھینچے، یارب
    کمیِ ربطِ نیاز، و خطِ نازِ بسیار
    ناز پروردۂ صد رنگِ تمنا ہوں، ولے
    پرورش پائی ہے ،جوں غنچہ، بہ خونِ اظہار
    تنگیِ حوصلہ ،گردابِ دو عالم آداب
    دیدِ یک غنچہ سے ہوں بسملِ نقصانِ بہار
    رشکِ نظارہ تھی یک برقِ تجلی کہ ہنوز
    تشنۂ خونِ دو عالم ہوں ،بہ عرضِ تکرار
    وحشتِ فرصتِ یک جیبِ کشش نے کھویا
    صورتِ رنگِ حنا ،ہاتھ سے دامانِ بہار
    شعلہ آغاز ولے حیرتِ داغِ انجام
    موجِ مے لیک زسر تا قدم آغوشِ خمار
    ہے اسیرِ ستمِ کشمکشِ دامِ وفا
    دلِ وارستۂ ہفتاد و دو ملت بیزار
    مژۂ خواب سے کرتا ہوں، بآسائشِ درد
    بخیۂ زخمِ دلِ چاک، بہ یک دستہ شرار
    محرمِ دردِ گرفتاریِ مستی معلوم
    ہوں نفس سے، صفتِ نغمہ، بہ بندِ رگِ تار
    تھا سرِ سلسلہ جنبانیِ صد عمرِ ابد
    ساز ہا مفت ِبہ ریشم کدۂ نالۂ زار
    لیکن اس رشتۂ تحریر میں سرتا سرِ فکر
    ہوں بقدرِ عددِ حرفِ علیؓ سجہ شمار
    جوہرِ دستِ دعا آئنہ، یعنی تاثیر
    یک طرف نازشِ مژگاں ، و دگر سو غمِ خار
    مردمک سے ہو، عزاخانۂ اقبالِ نگاہ
    خاکِ درکی ترے، جو چشم، نہ ہو آئنہ دار
    دشمنِ آل نبی کو، بہ طرب خانۂ دہر
    عرضِ خمیازۂ سیلاب ہو، طاقِ دیوار
    دوست اس سلسلۂ ناز کے جوں سنبل و گل
    ابرِ میخانہ کریں ساغرِ خورشید شکار
    لنگرِ عیش پہ سر شارِ تماشائےدوام
    کہ رہے خونِ خزاں سے بہ حنا پائےبہار
    زلفِ معشوق کشش، سلسلۂ وحشتِ ناز
    دلِ عاشق ،شکن آموزِ خمِ طرۂ یار
    مئے تمثالِ پری، نشۂ مینا آزاد
    دلِ آئینہ طرب، ساغرِ بختِ بیدار
    دیدہ تا دل، اسد ؔآئینۂ یک پرتوِشوق
    فیضِ معنی سے، خطِ ساغرِ راقم سرشار


    دہر ،جز جلوہِ یکتائی معشوق نہیں
    ہم کہاں ہوتے، اگر حسن نہ ہوتا خود بیں
    توڑے ہے عجزِ تُنک حوصلہ ،بر روئے زمیں
    سجدہ تمثال وہ آئینہ، کہیں جس کو جبیں
    توڑے ہے نالہ ، سرِ رشتۂ پاسِ انفاس
    سر کرے ہے، دلِ حیرت زدہ ، شغلِ تسکین
    بیدلی ہائےتماشا ،کہ نہ عبرت ہے، نہ ذوق
    بیکسی ہائےتمنا ، کہ نہ دنیا ہے نہ دیں
    ہر زہ ہے، نغمۂ زیر و بمِ ہستی و عدم
    لغو ہے ،آئنۂ فرقِ جنون و تمکیں
    یاس، تمثالِ بہار آئنۂ استغنا
    وہم، آئینۂ پیدائیِ تمثالِ یقیں
    خوں ہوا ، جوشِ تمناسے دو عالم کا دماغ
    بزمِ یاس ، آں سوئے پیدائیِ و اخفا رنگیں
    مثلِ مضمونِ وفا ،باد بدستِ تسلیم
    صورتِ نقشِ قدم، خاک بفرقِ تمکیں
    خانہ ویرانیِ امید و پریشانیِ بیم
    جوشِ دوزخ، ہے خوانِ چمنِ خلدِ بریں
    لافِ دانش غلط ،و نفعِ عبادت معلوم
    دُردِ یک ساغرِ غفلت ہے، چہ دنیا ،وچہ دیں
    بادِ افسانۂ بیمار ہے، عیسیٰ کا نفس
    استخواں ریزۂ موراں ہے، سلیماں کا نگیں
    نقشِ معنی ہمہ ، خمیازۂ عرضِ صورت
    سخنِ حق ہمہ، پیمانۂ ذوقِ تحسیں
    عشق، بے ربطیِ شیرازۂ اجزائےحواس
    وصل، زنگارِ رخِ آئینۂ حسنِ یقیں
    کوہ کن ،گرسنہ مزدورِ طرب گاہِ رقیب
    بے ستوں، آئینۂ خوابِ گرانِ شیریں
    موجِ خمیازۂ یک نشّہ، چہ اسلام، و چہ کفر
    کجیِ یک خطِ مسطر ،چہ توہّم، چہ یقیں
    قبلہ و ابروئے بت، یک رہِ خوابیدۂ شوق
    کعبہ و بتکدہ، یک محملِ خوابِ سنگیں
    کس نے دیکھا ،نفسِ اہلِ وفا آتش خیز؟
    کس نے پایا ، اثرِ نالۂ دل ہائے حزیں
    عیشِ بسمل کدۂ عیدِ حریفاں معلوم
    خوں ہو آئینہ، کہ ہو جامۂ طفلاں رنگیں
    سامعِ زمزمۂ اہلِ جہاں ہوں، لیکن
    نہ سر و برگِ ستائش، نہ دماغِ نفریں
    نزعِ مخمور ہوں اُس دید کی دھن میں کہ مجھے
    رشتۂ سازِ ازل ہے، نگہِ بازپسیں
    حیرت ،آفت زدۂ عرضِ دو عالم نیرنگ
    مومِ آئینۂ ایجاد ہے ،مغزِ تمکیں
    وحشتِ دل سے پریشاں ہیں، چراغانِ خیال
    باندھوں ہوں آئنے پر چشمِ پری سے آئیں
    کوچہ دیتا ہے پریشاں نظری پر، صحرا
    رمِ آہوکو ہے ہر ذرے کی چشمک میں کمیں
    چشمِ امید سے گرتے ہیں ،دوعالم ، جوں اشک
    یاس پیمانہ کشِ گریۂ مستانہ نہیں
    کس قدر فکر کو ہے نالِ قلم موئےدماغ
    کہ ہوا خونِ نگہ شوق میں نقشِ تمکیں
    عذرِ لنگ ،آفتِ جولانِ ہوس ہے، یارب
    جل اُٹھے گرمیِ رفتار سے، پائے چوبیں
    نہ تمنا، نہ تماشا، نہ تحیر، نہ نگاہ
    گردِ جوہر میں ہے، آئینۂ دل پردہ نشیں
    کھینچوں ہوں آئنے پر خندۂ گل سے مسطر
    نامہ، عنوانِ بیانِ دلِ آزردہ نہیں
    رنجِ تعظیم مسیحا نہیں اُٹھتا مجھ سے
    درد ہوتا ہے مرے دل میں، جو توڑوں بالیں
    بسکہ گستاخیِ اربابِ جہاں سے ہوں ملول
    پرِ پروانہ ، مری بزم میں ہے خنجرِ کیں
    اے عبارت ، تجھے کس خط سے ہے درسِ نیرنگ
    اے نگہ ، تجھ کو ہے کس نقطے میں مشقِ تسکیں؟
    کس قدر ہرزہ سرا ہوں کہ عیاذاً باللہ!
    یک قلم خارجِ آدابِ وقار و تمکیں
    جلوۂ ریگِ رواں دیکھ کہ گردوں ہر صبح
    خاک پر توڑے ہے آئینۂ نازِ پرویں
    شورِ اوہام سے، مت ہو شبِ خونِ انصاف
    گفتگو بے مزہ، و زخمِ تمنا نمکیں
    ختم کر ایک اشارت میں عباراتِ نیاز
    جوں مہِ نو ،ہے نہاں گوشۂ ابرو میں ، جبیں
    نقشِ "لاحول" لکھ، اے خامۂ ہذیاں تحریر
    "یا علی "عرض کر، اے فطرتِ وسواس قریں
    معنیِ لفظِ کرم ، بسملۂ نسخۂ حسن
    قبلۂ اہلِ نظر، کعبۂ اربابِ یقیں
    جلوہ رفتارِ سرِ جادۂ شرعِ تسلیم
    نقشِ پا جس کا ہے توحید کو معراجِ جبیں
    کس سے ممکن ہےتری مدح، بغیر ازواجب؟
    شعلۂ شمع ،مگر شمع پہ باندھے آئیں
    ہو، وہ سرمایۂ ایجاد، جہاں ناز خرام
    ہر کفِ خاک ہے واں گردۂ تصویرِ زمیں
    مظہرِ فیضِ خدا ،جان و دلِ ختمِ رسل
    قبلۂ آلِ نبی، کعبۂ ایجادِ یقیں
    نسبتِ نام سے اس کی ہے یہ رتبہ کہ رہے
    ابداً ،پشتِ فلک، خم شدۂ نازِ زمیں
    جلوہ پرداز ہو، نقشِ قدم اُس کا، جس جا
    وہ کفِ خاک ہے ناموسِ دو عالم کی امیں
    فیضِ خلق اُس کا ہی شامل ہے کہ ہوتا ہے سدا
    بوئےگل سے ،نفسِ بادِ صبا ،عطر آگیں
    بُرّشِ تیغ کا اُس کی ،ہے جہاں میں چرچا
    قطع ہو جائے نہ ،سر رشتۂ ایجاد کہیں
    کوہ کو ،بیم سے، اُس کے ہے جگر باختگی
    نہ کرے نذرِ صدا ،ورنہ ،متاعِ تمکیں
    کفر سوز اُس کا وہ جلوہ ہے کہ جس سے ٹوٹے
    رنگِ عاشق کی طرح، رونقِ بت خانۂ چیں
    وصفِ دُلدُل ، ہے مرے مطلعِ ثانی کی بہار
    جنتِ نقشِ قدم سے ہوں، میں اس کے گلچیں

    مطلع


    گردِ رہ ،سرمہ کشِ دیدۂ اربابِ یقیں
    نقشِ ہر گام، دو عالم صفہاں زیرِ نگیں
    برگِ گل کا، ہو جو طوفانِ ہوا میں عالم
    اُس کے جولاں میں نظر آئے ہے یوں، دامنِ دیں
    اُس کی شوخی سے بہ حسرت کدۂ نقشِ خیال
    فکر کو حوصلۂ فرصتِ ادراک نہیں
    جلوۂ برق سے ہو جائے نگہ، عکس پذیر
    اگر آئینہ بنے حیرتِ صورت گرِ چیں
    جاں پناہا! دل و جاں فیض رسانا!شاہا!
    وصیِ ختمِ رسل تو ہے، بفتوائے یقیں
    ذوقِ گل چینیِ نقشِ کفِ پاسے تیرے
    عرش چاہے ہے کہ ہو در پہ ترے خاک نشیں
    تجھ میں اور غیر میں نسبت ہے، ولیکن بہ تضاد
    وصیِ ختمِ رسل تو ہے بہ اثباتِ یقیں
    جسمِ اطہر کو ترے، دوشِ پیمبر ،منبر
    نامِ نامی کو ترے ناصیۂ عرش، نگیں
    تیری مدحت کے لیے ہیں دل وجاں ،کام و زباں
    تیری تسلیم کو ہیں لوح و قلم ،دست و جبیں
    آستاں پرہے ترے جوہرِ آئینۂ سنگ
    رقمِ بندگیِ حضرتِ جبریلِ امیں
    تیرے در کے لیے، اسبابِ نثار، آمادہ
    خاکیوں کو جو خدا نے دیے جان و دل و دیں
    دادِدیوانگیِ دل کہ ترا مدحت گر
    ذرّے سے باندھے ہے خورشیدِ فلک پر آئیں
    کس سے ہو سکتی ہے، مداحیِ ممدوحِ خدا؟
    کس سے ہوسکتی ہے، آرائشِ فردوسِ بریں؟
    جنسِ بازارِمعاصی، اسد اللہ اسدؔ
    کہ سوا تیرے کوئی اُس کا خریدار نہیں
    شوخِی عرض مطالب میں ہے گستاخ طلب
    ہے ترے حوصلۂ فضل پہ از بسکہ، یقیں
    دے دعا کو مری وہ مرتبۂ حُسنِ قبول
    کہ اجابت کہے ہر حرف پہ سو بار" آمیں"
    غمِ شبیرؓ سے ہو سینہ یہاں تک لبریز
    کہ رہیں خونِ جگر سے مری آنکھیں رنگیں
    طبع کو ،الفتِ دُلدل میں، یہ سرگرمیِ شوق
    کہ جہاں تک چلے، اُس سے قدم اور مجھ سے جبیں
    دلِ اُلفت نسب، و سینۂ توحید فضا
    نگہِ جلوہ پرست، و نفسِ صدق گزیں
    صرفِ اعدا، اثرِ شعلۂ دودِ دوزخ
    وقفِ احباب ،گل و سنبلِ فردوسِ بریں




    بہ گمانِ قطعِ زحمت نہ دو چارِ خامشی ہو
    کہ زبانِ سرمہ آلود ،نہیں تیغِ اصفہانی
    بہ فریبِ آشنائی، بہ خیالِ بے وفائی
    نہ رکھ آپ سے تعلق ،مگر ایک بدگمانی
    نظرے سوئےکہستان نہیں غیرِ شیشہ ساماں
    جو گدازِ دل ہو مطلب، تو چمن ہے سنگ جانی
    بہ فراز گاہِ عبرت، چہ بہار و کُو تماشا؟
    کہ نگاہ ہے سیہ پوش بہ عزائےزندگانی
    پہ فراقِ رفتہ یاراں، خط و حرف، مو پریشاں
    دلِ غافل از حقیقت ہمہ ذوقِ قصّہ خوانی
    تپشِ دلِ شکستہ، پئےعبرت آگہی ہے
    کہ نہ دے عنانِ فرصت بہ کشاکشِ زبانی
    نہ وفا کو آبرو ہے، نہ جفا تمیز جُو ہے
    چہ حسابِ جانفشانی؟ چہ غرورِ دلستانی؟
    بہ شکنجِ جستجو ہا، بہ سرابِ گفتگو ہا
    تگ و تازِ آرزو ہا ، بہ فریبِ شادمانی
    نہیں شاہراہِ او ہام، بجز آں سوئے سیدن
    تری سادگی ہے، غافل، درِ دل پہ پاسبانی
    چہ امید و نا امیدی ؟چہ نگاہ و بے نگاہی؟
    ہمہ عرضِ ناشکیبی؟ ہمہ سازِ جانستانی
    اگر آرزو ہے راحت، تو عبث بہ خوں تپیدن
    کہ خیال ہو تعب کش بہ ہوائےکامرانی
    شر و شورِ آرزو سے، تب و تابِ عجز بہتر
    نہ کرے اگر ہوس پر ، غمِ بیدلی، گرانی
    ہوسِ فروختن ہا، تب و تابِ سوختن ہا
    سرِ شمع نقشِ پا ہے، بسپاسِ ناتوانی
    شررِ اسیرِ دل کو ملے اوجِ عرضِ اظہار
    جو بہ صورتِ چراغاں کرے ، شعلہ نردبانی
    ہوئی مشقِ جرأت ناز، رہ و رسمِ طرحِ آداب
    خمِ پشت خوش نما تھا بہ گزارشِ جوانی
    اگر آرزو رسا ہو، پئے دردِ دل دوا ہو
    وہ اجل کہ خوں بہا ہو بہ شہیدِ ناتوانی
    غمِ عجز کا سفینہ بہ کنارِ بیدلی ہے
    مگر ایک شہپرِ مور کرے سازِ بادبانی
    مجھے انتعاشِ غم نے پئے عرضِ حال بخشی
    ہوسِ غزل سرائی، تپشِ فسانہ خوانی
    (اس قصیدے کے کُل 29 اشعار میں سے3 شعرغزل؎ "جو نہ نقدِ داغِ دل کی کرے شعلہ پاسبانی" کے طور پر الگ سےمتداول دیوان میں درج ہوئےہیں ۔ اس لیے اب یہ قصیدہ26 اشعار پر مشتمل ہے)


    دلِ نا اُمید کیونکر، بہ تسلی آشنا ہو
    جو امیدوار رہیے، نہ بہ مرگ نا گہانی
    مجھے بادۂ طرب سے بہ خمار گاہِ قسمت
    جو ملی تو تلخ کامی، جو ہوئی تو سر گرانی
    نہ ستم کراب تو مجھ پر کہ وہ دن گئے کہ ہاں تھی
    مجھے طاقت آزمانی، تجھے اُلفت آزمانی
    بہ ہزار اُمید واری رہی ایک اشک باری
    نہ ہوا حصولِ زاری، بجز آستیں فشانی
    کروں عذرِ ترکِ صحبت، سو کہاں وہ بے دماغی؟
    نہ غرورِ میرزائی، نہ فریبِ ناتوانی
    ہمہ یک نفس تپش سے تب و تابِ ہجر مت پوچھ
    کہ ستم کشِ جنوں ہوں، نہ بقدرِ زندگانی
    کفِ موجۂ حیا ہوں بہ گذارِ عرضِ مطلب
    کہ سرشک قطرہ زن ہے بہ پیامِ دل رسانی
    یہی بار بار جی میں مرے آئےہے کہ غالبؔ
    کروں خوانِ گفتگو پر دل و جاں کی مہمانی
     
  3. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    غزلیات


    عالم ،جہاں بہ عرضِ بساطِ وجود تھا
    جوں صبح ،چاکِ جیب، مجھے تار و پود تھا
    بازی خورِ فریب ہے اہلِ نظر کا ذوق
    ہنگامہ ،گرمِ حیرتِ بود و نبود تھا
    عالم، طلسمِ شہرِخموشاں ہے سر بسر
    یا میں غریبِ کشورِگفت و شنود تھا
    جز قیس اور کو ئی نہ آیا بروئے کار
    صحرا ،مگر ، بہ تنگیِ چشمِ حسود تھا
    آشفتگی نے نقشِ سویدا کیا درست
    ظاہر ہوا کہ داغ کا سرمایہ دود تھا
    تھا، خواب میں ،خیال کو تجھ سے معاملہ
    جب آنکھ کھل گئی، نہ زیاں تھا، نہ سود تھا
    تیشے بغیر مر نہ سکا کوہ کن، اسدؔ
    سر گشتۂ خمارِ رسوم و قیود تھا


    تنگی رفیقِ رہ تھی، عدم یا وجود تھا
    میرا سفر بہ طالعِ چشمِ حسود تھا
    تویک جہاں قماشِ ہوس جمع کر ، کہ میں
    حیرت متاعِ عالمِ نقصان و سود تھا
    گردش محیطِ ظلم رہا جس قدر، فلک
    میں پائمالِ غمزۂ چشمِ کبود تھا
    پوچھا تھا گر چہ یار نے احوالِ دل، مگر
    کس کو دماغِ منتِ گفت و شنود تھا
    لیتا ہوں ، مکتبِ غمِ دل میں، سبق ہنوز
    لیکن یہی کہ "رفت" گیا اور "بود" تھا
    ڈھانپا کفن نے داغِ عیوبِ برہنگی
    میں ورنہ ہر لباس میں ننگِ وجود تھا
    خور شبنم آشنا نہ ہوا، ورنہ میں اسدؔ
    سر تا قدم گزارشِ ذوقِ سجود تھا


    کہتےہو:" نہ دیں گے ہم" دل اگر پڑا پایا
    دل کہاں کہ گم کیجے؟ ہم نے مدعا پایا
    شورِ پندِ ناصح نے زخم پر نمک چھڑکا
    آپ سے کوئی پوچھے، "تم نے کیا مزا پایا؟"
    ہے کہاں تمنا کا دوسرا قدم یا رب؟
    ہم نے دشتِ امکاں کو ایک نقشِ پا پایا
    بے دماغِ خجلت ہوں، رشکِ امتحاں تاکے؟
    ایک بے کسی، تجھ کو عالم آشنا پایا
    سادگی و پرکاری، بے خودی و ہشیاری
    حُسن کو تغافل میں جرأت آزما پایا
    خاکبازئیِ اُمید، کارخانۂ طفلی
    یاس کو دو عالم سے لب بخندہ واپایا
    کیوں نہ وحشتِ غالبؔ باج خواہِ تسکیں ہو؟
    کشتۂ تغافل کو خصمِ خوں بہا پایا



    عشق سے طبیعت نے ،زیست کا مزہ پایا
    درد کی پائی، دردِ بے دوا پایا
    غنچہ پھر لگا کھلنے، آج ہم نے اپنا دل
    خوں کیا ہوا دیکھا، گُم کیا ہوا پایا
    فکرِ نالہ میں ،گویا، حلقہ ہوں ز سر تا پا
    عضو عضو ،جوں زنجیر، یک دلِ صدا پایا
    حالِ دل نہیں معلوم، لیکن اس قدر یعنی
    ہم نے بارہا ڈھونڈا، تم نے بارہا پایا
    شب ،نظارہ پرور تھا، خواب میں خرام اُس کا
    صبح ،موجۂ گُل کو نقشِ ِبوریا پایا
    جس قدر جگر خوں ہو، کوچہ دادنِ دل ہے
    زخمِ تیغِ قاتل کو طرفہ دلکشا پایا
    ہےنگیں کی پا داری، نامِ صاحبِ خانہ
    ہم سے تیرے کوچے نے، نقشِ مدعا پایا
    دوست دارِ دشمن ہے، اعتمادِ دل معلوم
    آہ بے اثر دیکھی، نالہ نارسا پایا
    نے اسد جفا سائل، نے ستمِ جنوں مائل
    تجھ کو جس قدر ڈھونڈا، اُلفت آزما پایا



    کارخانے سے جنوں کے بھی، میں عریاں نکلا
    میری قسمت کا نہ ایک آدھ گریباں نکلا
    ساغرِ جلوۂ سرشار ہے، ہر ذرۂ خاک
    شوقِ دیدار بلا آئنہ ساماں نکلا
    زخم نے داد نہ دی تنگیِ دل کی، یا رب!
    تیر بھی سینۂ بسمل سے پرافشاں نکلا
    بوئے گل، نالہ دل، دودِ چراغِ محفل
    جو تری بزم سے نکلا، سو پریشاں نکلا
    کچھ کھٹکتا تھا مرے سینے میں، لیکن آخر
    جس کو دل کہتے تھے سو تیر کا پیکاں نکلا
    کس قدر خاک ہوا ہے دلِ مجنوں، یا رب
    نقشِ ہر ذرہ ،سویدائےبیاباں نکلا
    دل میں پھر گریے نے اک شور اُٹھایا، غالبؔ
    آہ !جو قطرہ نہ نکلا تھا، سو طوفاں نکلا


    دہر میں نقشِ وفا وجہِ تسلی نہ ہوا
    ہے یہ وہ لفظ کہ شرمندۂ معنی نہ ہوا
    نہ ہوئی ہم سے رقم حیرتِ خطِ رخِ یار
    صفحہ آئنہ، جولاں گِہ طوطی نہ ہوا
    وسعتِ رحمتِ حق دیکھ کہ بخشا جاوے
    مجھ سا کافر کہ جوممنونِ معاصی نہ ہوا تھا
    سبزۂ خط سے ترا کاکلِ سرکش نہ دبا
    یہ زمرد بھی حریفِ دمِ افعی نہ ہوا
    میں نے چاہا تھا کہ اندوہِ وفا سے چھوٹوں
    وہ ستمگر مرے مرنے پہ بھی راضی نہ ہوا
    دل گزر گاہ خیالِ مے و ساغر ہی سہی
    گر نفَس، جادۂ سر منزلِ تقوی نہ ہوا
    ہوں ترے وعدہ نہ کرنے پر بھی راضی کہ کبھی
    گوش ،منت کشِ گلبانگِ تسلّی نہ ہوا
    کس سے محرومئ قسمت کی شکایت کیجیے ؟
    ہم نے چاہا تھا کہ مر جائیں، سو وہ بھی نہ ہوا
    مر گیا صدمۂ یک جنبشِ لب سے غالبؔ
    ناتوانی سے ،حریف دمِ عیسی نہ ہوا
     
  4. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    جب بہ تقریبِ سفر، یار نے محمل باندھا
    تپشِ شوق نے ہر ذرّے پہ اک دل باندھا
    ناتوانی ہے تماشائی عمرِ رفتہ
    رنگ نے آئنہ آنکھوں کے مقابل باندھا
    اہل بینش نے بہ حیرت کدۂ شوخئ ناز
    جوہرِ آئینہ کو طوطئ بسمل باندھا
    اصطلاحاتِ اسیرانِ تغافل مت پوچھ
    جو گرہ آپ نہ کھولی، اسے مشکل باندھا
    یاس و امید نے اک عرَبدہ میداں مانگا
    عجزِ ہمت نے طِلِسمِ دلِ سائل باندھا
    نہ بندھے تِشنگئ ذوق کے مضموں، غالبؔ
    گرچہ دل کھول کے ،دریا کو بھی ساحل باندھا
    نوکِ ہر خار سے تھابس کہ سر دزدیِ زخم
    جوں نمد، ہم نے کفِ پا پہ، اسدؔ، دل باندھا




    شوق، ہر رنگ رقیبِ سر و ساماں نکلا
    قیس تصویر کے پردے میں بھی عریاں نکلا
    دلِ حسرت زدہ تھا مائدۂ لذتِ درد
    کام یاروں کا بہ قدرٕ لب و دنداں نکلا
    شورِ رسوائی ِ دل دیکھ کہ یک نالہ شوق
    لاکھ پردے میں چھپا، پر وہی عریاں نکلا
    شوخیِ رنگِ حنا ،خونِ وفا سے، کب تک؟
    آخر، اے عہد شکن، تو بھی پشیماں نکلا
    ہے نو آموزِ فنا، ہمتِ دشوار پسند
    سخت مشکل ہے کہ یہ کام بھی آساں نکلا
    میں بھی معذورِ جنوں ہوں ، اسدؔ، اے خانہ خراب
    پیشوا لینے مجھے گھر سے بیاباں نکلا



    نہ ہوگا ،یک بیاباں ماندگی سے، ذوق کم میرا
    حبابِ موجۂ رفتار ہے ، نقشِ قدم میرا
    رہِ خوابیدہ، تھی گردن کشِ یک درس آگاہی
    زمیں کو سیلیِ استاد ہے، نقشِ قدم میرا
    محبت تھی چمن سے، لیکن اب یہ بیدماغی ہے
    کہ موجِ بوئے گل سے، ناک میں آتا ہے، دم میرا
    سراغ آوارہ عرضِ دو عالم شورِ محشر ہوں
    پر افشاں ہے غبار، آں سوئے صحرائے عدم، میرا
    نہ ہو وحشتِ کشِ درسِ سرابِ سطرِ آگاہی
    غبارِ رہ ہوں، بے مدعا ہے پیچ و خم میرا
    ہوائے صبح، یک عالم گریباں چاکی ِگل ہے
    دہانِ زخم پیدا کر، اگر کھاتا ہے غم میرا
    اسدؔ، وحشت پرستِ گوشہ تنہائی ِدل ہوں
    برنگِ موجِ مے، خمیازہ ساغر ہے، رم میرا




    ضعفِ جنوں کو، وقتِ تپش، در بھی دور تھا
    اک، گھر میں، مختصر سابیاباں ضرور تھا
    اے وائے غفلتِ نگہِ شوق! ورنہ یاں
    ہر پارہ سنگ لختِ دلِ کوہِ طور تھا
    درسِ تپش ہے برق کو اب جس کے نام سے
    وہ دل ہے یہ کہ جس کا تخلص صبور تھا
    شاید کہ مر گیا ترے رخسار دیکھ کر
    پیمانہ رات، ماہ کا لبریزِ نور تھا
    آئینہ دیکھ، اپنا سا منہ لے کے رہ گئے
    صاحب کو دل نہ دینے پہ کتنا غرور تھا
    قاصد کو، اپنے ہاتھ سے، گردن نہ ماریے
    اس کی خطا نہیں ہے، یہ میرا قصور تھا
    جنت ہے تیری تیغ کے کشتوں کی منتظر
    جوہر سواد، جلوۂ مژگانِ حور تھا
    ہر رنگ میں جلااسدؔ فتنہ انتظار
    پروانہ تجلی شمعِ ظہور تھا
     
    • زبردست زبردست × 1
  5. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    خود پرستی سے رہےباہمدگر نا آشنا
    بیکسی میری شریک، آئینہ تیرا آشنا
    آتش ِموئے دماغ ِ شوق ہے، تیرا تپاک
    ورنہ ہم کس کے ہیں، اے داغِ تمنا، آشنا؟
    رشک کہتا ہے کہ اس کا غیر سے اخلاص حیف!
    عقل کہتی ہے کہ وہ بے مہر کس کا آشنا ؟
    بے دماغی شکوہ سنجِ رشکِ ہم دیگر نہیں
    یار تیرا جامِ مے، خمیازہ میرا آشنا
    جوہرِ آئینہ، جز رمزِ سرِ مژگاں نہیں
    آشنا کی ، ہمدگر سمجھے ہے، ایما آشنا
    ربطِ یک شیرازہ وحشت ہیں ، اجزائے بہار
    سبزہ بیگانہ، صبا آوارہ، گل نا آشنا!
    ذرّہ ذرّہ ساغرِ مے خانۂ نیرنگ ہے
    گردشِ مجنوں بہ چشمک‌ہاے لیلیٰ آشنا
    شوق ہے ساماں طرازِ نازشِ اربابِ عجز
    ذرّہ صحرا دست گاہ ، و قطرہ دریا آشنا
    میں اور ایک آفت کا ٹکڑا وہ دلِ وحشی، کہ ہے
    عافیت کا دشمن، اور آوارگی کا آشنا
    شکوہ سنجِ رشکِ ہم دیگر نہ رہنا چاہیے
    میرا زانو مونس، اور آئینہ تیرا آشنا
    کوہکن نقّاشِ یک تمثالِ شیریں تھا ،اسدؔ
    سنگ سے ،سر مار کر، ہووے نہ پیدا آشنا



    شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا
    تا محیطِ بادہ ،صورت خانۂ خمیازہ تھا
    یک قدم وحشت سے، درسِ دفتر امکاں کھلا
    جادہ، اجزائے دو عالم دشت کا شیرازہ تھا
    ہوں چراغانِ ہوس، جوں کاغذِ آتش زدہ
    داغ،گرمِ کوششِ ایجادِ داغِ تازہ تھا
    مانعِ وحشت خرامی ہائے لیلیٰ کون ہے؟
    خانۂ مجنونِ صحرا گرد ،بے دروازہ تھا
    پوچھ مت رسوائیِ اندازِ استغنائے حسن
    دست مرہونِ حنا، رخسار رہنِ غازہ تھا
    نالۂ دل نے دیئے، اوراقِ لختِ دل، بہ باد
    یادگارِ نالہ، اک دیوانِ بے شیرازہ تھا
    بے نوائی تر صدائے نغمہ شہرت، اسدؔ
    بوریا، یک نیستاں عالم بلند آوازہ تھا


    وہ میری چینِ جبیں سے ،غمِ پنہاں سمجھا
    رازِ مکتوب، بہ بے ربطئِ عنواں سمجھا
    یک الِف بیش نہیں، صیقلِ آئینہ ہنوز
    چاک کرتا ہوں ، میں جب سے کہ گریباں سمجھا
    شرحِ اسبابِ گرفتارئِ خاطر مت پوچھ
    اس قدر تنگ ہوا دل کہ میں زنداں سمجھا
    ہم نے وحشت کدہ بزمِ جہاں میں، جوں شمع
    شعلہ عشق کو اپنا سروساماں سمجھا
    تھا گریزاں مژہِ یار سے ،دل ،تا دمِ مرگ
    دفعِ پیکانِ قضا اِس قدر آساں سمجھا
    عجز سے اپنے یہ جانا کہ وہ بد خو ہوگا
    نبضِ خس سے ،تپشِ شعلۂ سوزاں سمجھا
    سفرِ عشق میں کی ضعف نے راحت طلبی
    ہر قدم، سائے کو میں اپنے شبستان سمجھا
    بدگمانی نے نہ چاہا اسے سرگرمِ خرام
    رخ پہ ہر قطرہ عرق، دیدۂ حیراں سمجھا
    دل دیا جان کے، کیوں، اس کو وفادار، اسدؔ
    غلطی کی کہ جو کافر کو مسلماں سمجھا




    گلہ ہے شوق کو دل میں بھی تنگیِ جا کا
    گہر میں محو ہوا، اضطراب دریا کا
    یہ جانتا ہوں کہ تو اور پاسخِ مکتوب
    مگر ستم زدہ ہوں، ذوقِ خامہ فرسا کا
    حنائے پائے خزاں ہے، بہار اگر ہے یہی
    دوامِ کلفتِ خاطر ،ہے عیش دنیا کا
    ملی نہ وسعتِ جولانِ یک جنوں ہم کو
    عدم کولے گئے دل میں غبار صحرا کا
    مرا شمول ہر اک دل کےپیچ تاب میں ہے
    میں مدعا ہوں تپش نامہ تمنا کا
    غمِ فراق میں تکلیفِ سیرِ باغ نہ دو
    مجھے ، دماغ نہیں خندہ ہائے بے جا کا
    ہنوز محرمئ حسن کو ترستا ہوں
    کرے ہے ،ہر بُنِ مو ، کام چشمِ بینا کا
    دل اس کو، پہلے ہی ناز و ادا سے، دے بیٹھے
    ہمیں دماغ کہاں، حسن کے تقاضا کا؟
    نہ کہہ کہ گریہ بہ مقدارِ حسرتِ دل ہے
    مری نگاہ میں ہے جمع و خرچ دریا کا
    فلک کو دیکھ کے ، کرتا ہوں اُس کو یاد، اسدؔ
    جفا میں اس کی ،ہے انداز کارفرما کا




    کس کا خیال، آئنہ انتظار تھا
    ہر برگِ گل کے پردے میں دل بیقرار تھا
    کس کا جنونِ دید، تمنا کا شکار تھا
    آئینہ خانہ، وادیِ جوہرِ غبار تھا
    جوں غنچہ و گل، آفتِ فالِ نظر نہ پوچھ
    پیکاں سے تیرے،جلوہ زخم، آشکار تھا
    ایک ایک قطرے کا ،مجھے دینا پڑا ،حساب
    خونِ جگر، ودیعتِ مژگانِ یار تھا
    اب میں ہوں اور ماتمِ یک شہرِ آرزو
    توڑا جو تو نے آئنہ، تمثال دار تھا
    کم جانتے تھے ہم بھی غمِ عشق کو، پر اب
    دیکھا، تو کم ہوئے پہ ،غمِ روزگار تھا
    دیکھی وفائے فرصتِ رنج و نشاطِ دہر
    خمیازہ،یک درازیِ عمرِ خمار تھا
    گلیوں میں میری نعش کو کھینچے پھرو، کہ میں
    جاں دادۂ ہوائے سرِ رہگزار تھا
    موجِ سرابِ دشتِ وفا کا نہ پوچھ حال
    ہر ذرہ، مثلِ جوہرِ تیغ، آب دار تھا
    صبحِ قیامت ایک دُمِ گرگ تھی، اسدؔ
    جس دشت میں وہ شوخِ دوعالم شکار تھا



    بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا
    آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا
    گریہ چاہے ہے خرابی مرے کاشانے کی
    در و دیوار سے ٹپکے ہے بیاباں ہونا
    وائےدیوانگیِ شوق! کہ ہر دم مجھ کو
    آپ جانا اُدھر، اور آپ ہی حیراں ہونا
    جلوہ ازبسکہ، تقاضائےنگہ کرتا ہے
    جوہرِ آئنہ بھی چاہے ہے مژگاں ہونا
    عشرتِ قتل گہِ اہلِ تمنا مت پوچھ
    عیدِ نظارہ ہے ،شمشیر کا عریاں ہونا
    لے گئے خاک میں ہم داغِ تمنائے نشاط
    تو ہو اور آپ بصد رنگ گلستاں ہونا
    عشرتِ پارۂ دل ،زخمِ تمنا کھانا
    لذتِ ریشِ جگر ،غرقِ نمکداں ہونا
    کی مرے قتل کے بعد، اُس نے جفا سے توبہ
    ہائے!اُس زود پشیماں کا پشیماں ہونا
    حیف! اُس چار گرہ کپڑے کی قسمت، غالبؔ
    جس کی قسمت میں ہو عاشق کا گریباں ہونا



    پھر مجھے دیدۂ تر یاد آیا
    دل جگر تشنۂ فریاد آیا
    دم لیا تھا نہ قامت نے ہنوز
    پھر ترا وقتِ سفر یاد آیا
    سادگی ہائےتمنا، یعنی
    پھر وہ نیرنگِ نظر یاد آیا
    عذرِ واماندگی، اے حسرتِ دل
    نالہ کرتا تھا ، جگر یاد آیا
    زندگی یوں بھی گزر ہی جاتی
    کیوں ترا راہ گزر یاد آیا
    کیا ہی رضواں سے لڑائی ہوگی
    گھر ترا، خلد میں گر یاد آیا
    آہ وہ جرأتِ فریاد کہاں
    دل سے تنگ آکے جگر یاد آیا
    پھر ترے کوچے کو جاتا ہے خیال
    دلِ گم گشتہ ، مگر یاد آیا
    کوئی ویرانی سی ویرانی ہے
    دشت کو دیکھ کے گھر یاد آیا
    میں نے مجنوں پہ لڑکپن میں، اسدؔ
    سنگ اُٹھایا تھا کہ سر یاد آیا
     
  6. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    تو دوست کسی کا بھی، ستمگر، نہ ہوا تھا
    اوروں پہ ہے وہ ظلم کہ مجھ پر نہ ہوا تھا
    چھوڑا ، مہِ نخشب کی طرح، دستِ قضا نے
    خورشید، ہنوز، اس کے برابر نہ ہوا تھا
    توفیق بہ اندازۂ ہمت ہے، ازل سے
    آنکھوں میں ہے وہ قطرہ کہ گوہر نہ ہوا تھا
    جب تک کہ نہ دیکھا تھا قدِ یار کا عالم
    میں معتقدِ فتنۂ محشر نہ ہوا تھا
    میں سادہ دل، آزردگیِ یار سے خوش ہوں
    یعنی ، سبقِ شوقِ مکرّر نہ ہوا تھا
    دریائے معاصی تُنک آبی سے ہوا خشک
    میرا سرِ دامن بھی ابھی تر نہ ہوا تھا
    جاری تھی اسدؔ! داغِ جگر سے مری تحصیل
    آ تشکدہ ، جاگیرِ سَمَندر نہ ہوا تھا




    نفس نہ انجمنِ آرزو سے باہر کھینچ
    اگر شراب نہیں، انتظارِ ساغر کھینچ
    کمالِ گرمیِ سعیِ تلاشِ دیدنہ پوچھ
    برنگِ خار، مرے آئنے سے جوہر کھینچ
    تجھے بہانۂ راحت ہے انتظار ،اے دل
    کیا ہے کس نے اشارہ کہ نازِ بستر کھینچ
    تری طرف ہے بہ حسرت، نظارۂ نرگس
    بہ کوریِ دل و چشمِ رقیب، ساغر کھینچ
    بہ نیم غمزہ ادا کر حقِ ودیعتِ ناز
    نیامِ پردۂ زخمِ جگر سے خنجر کھینچ
    مرے قدح میں ہے صہبائےآتشِ پنہاں
    بہ روئےسفرہ ،کبابِ دلِ سمندر کھینچ
    نہ کہہ کہ طاقتِ رسوائیِ وصال نہیں
    اگر یہی عرقِ فتنہ ہے ،مکرر کھینچ
    جنونِ آئنہ ،مشتاقِ یک تماشا ہے
    ہمارے صفحے پہ بالِ پری سے مسطر کھینچ
    خمارِ منتِ ساقی اگر یہی ہے، اسدؔ
    دلِ گداختہ کے میکدے میں ساغر کھینچ




    حُسن ،غمزے کی کشاکش سے چُھٹا میرے بعد
    بارے آرام سے ہیں اہلِ جفا، میرے بعد
    منصبِ شیفتگی کے، کوئی، قابل نہ رہا
    ہوئی معزولیِ انداز و ادا ،میرے بعد
    شمع بجھتی ہے، تو اُس میں سے دُھواں اُٹھتا ہے
    شعلۂ عشق سیہ پوش ہوا، میرے بعد
    خوں ہے دل خاک میں احوالِ بتاں پر ، یعنی
    اُن کے ناخن ہوئےمحتاجِ حنا ، میرے بعد
    در خورِ عرض نہیں، جوہرِ بیداد کو، جا
    نگہِ ناز ہے سُرمے سے خفا، میرے بعد
    ہے جنوں، اہلِ جنوں کے لیے ، آغوشِ وداع
    چاک ہوتا ہے گریباں سے جدا ،میرے بعد
    کون ہوتا ہے حریفِ مئےمرد افگنِ عشق
    ہے مکرر لبِ ساقی میں صلا، میرے بعد
    غم سے مرتا ہوں ،کہ اتنا نہیں دنیا میں کوئی
    کہ کرے تعزیتِ مہر و وفا ،میر ے بعد
    تھی، نگہ میری نہاں خانہ دل کی نقاب
    بے خطر جیتے ہیں اربابِ ریا ،میرے بعد
    تھا میں گلدستۂ احباب کی بندش کی گیاہ
    متفرق ہوئےمیرے رفقا ،میرے بعد
    آئےہے بیکسیِ عشق پہ رونا، غالبؔ
    کس کے گھر جائےگا سیلابِ بلا ،میرے بعد



    بلا سے، ہیں جو یہ پیشِ نظر در و دیوار
    نگاہِ شوق کو ہیں بال و پر، در و دیوار
    وفورِ اشک نے کاشانے کا کیا یہ رنگ
    کہ ہوگئے مرے دیوار و در، در و دیوار
    نہیں ہے سایہ کہ سُن کر نویدِ مقدمِ یار
    گئے ہیں چند قدم پیشتر ،در و دیوار
    ہوئی ہے کس قدر ارزانیِ مئے جلوہ
    کہ مست ہے ترے کوچے میں ،ہر در و دیوار
    جو ہے تجھے سرِ سودائےانتظار ،تو آ
    کہ ہیں دکانِ متاعِ نظر ،در و دیوار
    ہجومِ گریہ کا سامان کب کیا میں نے؟
    کہ گر پڑے نہ مرے پاؤں پر، در و دیوار
    وہ آرہا مرے ہمسایے میں، تو سایے سے
    ہوئے فدا در و دیوار پر، در و دیوار
    نظر میں کھٹکے ہے بن تیرے گھر کی آبادی
    ہمیشہ روتے ہیں ہم، دیکھ کر، در و دیوار
    نہ پوچھ بے خودیِ عیشِ مقدمِ سیلاب
    کہ ناچتے ہیں پڑے سر بسر، در و دیوار
    نہ کہہ کسی سے کہ غالبؔ، نہیں زمانے میں
    حریفِ رازِ محبت ،مگر، در و دیوار




    لرزتا ہے مرا دل زحمتِ مہرِ درخشاں پر
    میں ہوں وہ قطرۂ شبنم کہ ہو خارِ بیاباں پر
    نہ چھوڑی حضرت یوسفؑ نےیاں بھی خانہ آرائی
    سفیدی دیدۂ یعقوبؑ کی پھرتی ہے زنداں پر
    دلِ خونیں جگر بے صبر، و فیضِ عشق مستغنی!
    الہٰی یک قیامت خاور آٹوٹے بدخشاں پر
    فنا تعلیمِ درسِ بیخودی ہوں اُس زمانے سے
    کہ مجنوں" لام الف" لکھتا تھا دیوارِ دبستاں پر
    فراغت کس قدر رہتی مجھے ، تشویشِ مرہم سے
    بہم گر صلح کرتے پارہ ہائےدل نمکداں پر
    نہیں اقلیمِ الفت میں کوئی طومارِ ناز ایسا
    کہ پشتِ چشم سے جس کے ،نہ ہووے مہُر عنواں پر
    مجھے اب دیکھ کر ابرِ شفق آلودہ ، یاد آیا!
    کہ فرقت میں تری ،آتش برستی تھی گلستاں پر
    بجز پروازِ شوقِ ناز کیا باقی رہا ہوگا!
    قیامت اک ہوائےتند ہے خاکِ شہیداں پر
    نہ لڑ ناصح سے، غالبؔ، کیا ہواگر اس نے شدت کی
    ہمارا بھی تو ،آخر، زور چلتا ہے گریباں پر




    حریفِ مطلبِ مشکل نہیں ،فسونِ نیاز
    دعا قبول ہو ، یارب، کہ "عمرِ خضر دراز!"
    نہ ہو، بہ ہرزہ، بیاباں نوردِ وہمِ وجود
    ہنوز تیرے تصور میں ہے نشیب و فراز
    فریبِ صنعتِ ایجاد کا تماشا دیکھ
    نگاہ عکس فروش ،و خیال آئنہ ساز
    وصال، جلوہ تماشا ہے، پر دماغ کہاں؟
    کہ دیجے آئنۂ انتظار کو پرواز
    ہنوز ،اے اثرِ دید،ننگِ رسوائی
    نگاہ فتنہ خرام، و درِ دو عالم باز
    ز بس کہ جلوۂ صیاد حیرت آرا ہے
    اڑی ہے صفحۂ خاطر سے صورتِ پرواز
    ہجومِ فکر سے دل مثلِ موج لرزاں ہے
    کہ شیشہ نازک، وصہبائے ہےآبگینہ گداز
    ہر ایک ذرۂ عاشق ہے آفتاب پرست
    گئی نہ ،خاک ہوئےپر، ہوائےجلوۂ ناز
    نہ پوچھ وسعتِ میخانۂ جنوں، غالبؔ
    جہاں یہ کاسۂ گردوں ہے ایک خاک انداز
    اسدؔ سے ترکِ وفا کا گماں وہ معنی ہے
    کہ کھینچیے پرِ طائر سے صورتِ پرواز




    نہ گلِ نغمہ ہوں، نہ پردۂ ساز
    میں ہوں اپنی شکست کی آواز
    تو اور آرائشِ خمِ کاکل
    میں اور اندیشہ ہائےدور دراز
    لافِ تمکیں، فریبِ سادہ دلی
    ہم ہیں اور راز ہائےسینہ گداز
    ہوں گرفتارِ اُلفتِ صیاد
    ورنہ باقی ہے طاقتِ پرواز
    وہ بھی دن ہو! کہ اُس ستمگر سے
    ناز کھینچوں ، بجائےحسرتِ ناز
    نہیں دل میں مرے وہ قطرۂ خوں
    جس سے مژگاں ہوئی نہ ہو گل باز
    اے ترا غمزہ، یک قلم انگیز!
    اے ترا ظلم! سربسر انداز
    تُو ہوا جلوہ گر، مبارک ہو
    ریزشِ سجدۂ جبینِ نیاز
    مجھ کو پوچھا توکچھ غضب نہ ہوا
    میں غریب اور تو غریب نواز
    اسد اللہ خاں تمام ہوا
    اے دریغا، ، وہ رندِ شاہد باز!
     
  7. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    زخم پر چھڑکیں کہاں، طفلانِ بے پروا نمک
    کیا مزہ ہوتا، اگر پتھر میں بھی ہوتا نمک
    گردِ راہِ یار ،ہے سامانِ نازِ زخمِ دل
    ورنہ ہوتا ہے جہاں میں کس قدر پیدا نمک
    مجھ کو ارزانی رہے، تجھ کو مبارک ہو جیو!
    نالۂ بلبل کا درد، اور خندۂ گل کا نمک
    شورِ جولاں تھا کنارِ بحر پر کس کا؟ کہ آج
    گردِ ساحل ہے بہ زخمِ موجۂ دریا نمک
    چھوڑ کر جانا تنِ مجروحِ عاشق حیف ہے
    دل طلب کرتاہے زخم، اور مانگیں ہیں اعضا نمک
    داد دیتا ہے مرے زخمِ جگر کی، واہ وا!
    یاد کرتا ہے مجھے، دیکھے ہے وہ جس جا نمک
    غیر کی منت نہ کھینچوں گا ، پئےتوفیرِ درد!
    زخمِ ، مثل ِخندۂ قاتل، ہےسر تا پا نمک
    یاد ہیں، غالبؔ ،تجھے وہ دن کہ وجدِ ذوق میں
    زخم سے گرتا ،تو میں پلکوں سے چنتا تھا نمک
    اس عمل میں عیش کی لذت نہیں ملتی، اسدؔ
    زور نسبت مے سے رکھتا ہے، نصارا کا نمک



    آہ کو چاہیے اک عمر، اثر ہوتے تک
    کون جیتا ہے، تری زلف کے سر ہوتے تک؟
    دامِ ہر موج میں ہے، حلقۂِ صد کامِ نہنگ
    دیکھیں، کیا گزرے ہے قطرے پہ گہر ہوتے تک
    عاشقی صبر طلب، اور تمنا بے تاب
    دل کا کیا رنگ کروں خونِ جگر ہوتے تک
    تاقیامت شبِ فرقت میں گزر جائےگی عمر
    سات دن ہم پہ بھی بھاری ہیں، سحر ہوتے تک
    ہم نے مانا کہ تغافل نہ کروگے، لیکن
    خاک ہو جائیں گے ہم ،تم کو خبر ہوتے تک
    پرتوِ خور سے، ہے شبنم کو فنا کی تعلیم
    میں بھی ہوں، ایک عنایت کی نظر ہوتے تک
    یک نظر بیش نہیں، فرصتِ ہستی، غافل
    گرمیِ بزم ہے، اک رقصِ شرر ہوتے تک
    غمِ ہستی کا، اسدؔ ،کس سے ہو، جز مرگ علاج؟
    شمع ہر رنگ میں جلتی ہے سحر ہوتے تک




    رہتے ہیں افسردگی سے سخت بیدردانہ، ہم
    شعلہ ہا نذرِ سمندر، بلکہ آتش خانہ ،ہم
    حسرتِ عرضِ تمنا یاں سے سمجھا چاہیے
    دو جہاں حشرِ زبانِ خشک ہیں، جوں شانہ، ہم
    کشتیِ عالم بہ طوفانِ تغافل دے، کہ ہیں
    عالمِ آبِ گدازِ جوہرِ افسانہ، ہم
    وحشتِ بے ربطی پیچ و خمِ ہستی نہ پوچھ
    ننگِ بالیدن ہیں، جوں موئےسرِ دیوانہ ہم



    پاؤں میں جب وہ حنا باندھتے ہیں
    میرے ہاتھوں کو جدا باندھتے ہیں
    آہ کا ،کس نے، اثر دیکھا ہے؟
    ہم بھی ایک اپنی ہوا باندھتے ہیں
    حسنِ افسردہ دلی ہا رنگیں
    شوق کو پا بہ حنا باندھتے ہیں
    تیرے بیمار پہ ہیں فریادی
    وہ جو کاغذ میں دوا باندھتے ہیں
    قید میں بھی ہے، اسیری، آزاد
    چشمِ زنجیر کو وا باندھتے ہیں
    شیخ جی کعبے کا جانا معلوم
    آپ مسجد میں گدھا باندھتے ہیں
    کس کا دل زلف سے بھاگا ؟ کہ اسدؔ
    دستِ شانہ بہ قفا باندھتے ہیں


    تیرے توسن کو صبا باندھتے ہیں
    ہم بھی مضموں کی ہوا باندھتے ہیں
    تیری فرصت کے مقابل، اے عمر
    برق کو پا بہ حنا باندھتے ہیں
    قیدِ ہستی سے رہائی معلوم
    اشک کو بے سرو پا باندھتے ہیں
    نشۂ رنگ سے ہے، واشدِ گل
    مست کب بندِ قبا باندھتے ہیں
    غلطی ہائےمضامیں مت پوچھ
    لوگ نالے کو رسا باندھتے ہیں
    اہلِ تدبیر کی واماندگیاں
    آبلوں پر بھی حنا باندھتے ہیں
    سادہ پُر کار ہیں خوباں، غالبؔ
    ہم سے پیمانِ وفا باندھتے ہیں




    طاؤس نمط، داغ کے گر رنگ نکالوں
    یک فردِ نسب نامۂ نیرنگ نکالوں
    کوُ تیزیِ رفتار؟ کہ صحرا سے زمیں کو
    جوں قمریِ بسمل ،تپش آہنگ نکالوں
    دامانِ شفق ،طرفِ نقابِ مہِ نو ہے
    ناخن کو جگر کاوی میں بےرنگ نکالوں
    کیفیتِ دیگر ہے، فشارِ دلِ خونیں!
    یک غنچہ سے صد خُم مےگلرنگ نکالوں
    پیمانۂ وسعت کدۂ شوق ہوں، اے رشک
    محفل سے مگر شمع کو دل تنگ نکالوں
    گر ہو بلدِ شوق مری خاک کو وحشت
    صحرا کو بھی گھر سے کئی فرسنگ نکالوں
    فریاد! اسدؔ غفلتِ رسوائیِ دل سے
    کس پردے میں فریاد کی آہنگ نکالوں




    کیا ضعف میں امید کو دل تنگ نکالوں؟
    میں خار ہوں، آتش میں چبھوں، رنگ نکالوں
    نے کوچۂ رسوائی و زنجیر پریشاں
    کس پردے میں فریاد کی آہنگ نکالوں
    یک نشو و نما جا نہیں جولانِ ہوس کو
    ہر چند بمقدارِ دلِ تنگ نکالوں
    گر جلوۂ خورشید خریدارِ وفا ہو
    جوں ذرۂ صد آئینہ بے زنگ نکالوں
    افسردۂ تمکیں ہے ،نفس گرمی احباب
    پھر شیشے سے عطرِ شررِ سنگ نکالوں
    ضعف ،آئنہ پردازیِ دستِ دگراں ہے
    تصویر کے پردے میں مگر رنگ نکالوں
    ہے غیرتِ الفت کہ، اسدؔ، اُس کی ادا پر
    گر دیدہ و دل صلح کریں ،جنگ نکالوں




    بقدرِ لفظ و معنی ،فکرت احرامِ گریباں ہیں
    وگرنہ کیجیے جو ذرہ عریاں ،ہم نمایاں ہیں
    عروجِ نشۂ واماندگی پیمانہ محمل تر
    برنگِ ریشۂ تاک، آبلے جادے میں پنہاں ہیں
    بہ وحشت گاہِ امکاں اتفاقِ چشم مشکل ہے
    مہ و خورشید باہم سازِ یک خوابِ پریشاں ہیں
    طلسمِ آفرینش ،حلقۂ یک بزمِ ماتم ہے
    زمانے کے، شبِ یلدا سے ،موئےسر پریشاں ہیں
    یہ کس بے مہرکی تمثال کا ہے جلوہ سیمابی
    کہ مثلِ ذرہ ہائےخاک ،آئینے پر افشاں ہیں
    نہ انشا معنیِ مضموں، نہ املا صورتِ موزوں
    عنایت نامہ ہائےاہلِ دنیا ،ہرزہ عنواں ہیں
    مگر آتش ہماراکوکبِ اقبال چمکاوے
    وگرنہ، مثلِ خارِخشک،مردودِگلستاں ہیں
    اسد ؔ،بزمِ تماشا میں تغافل پردہ داری ہے
    اگر ڈھانپے، تو آنکھیں ڈھانپ ،ہم تصویرِ عریاں ہیں




    ہم سے کھُل جاؤ بوقتِ مے پرستی ،ایک دن
    ورنہ ہم چھیڑیں گے ،رکھ کر عذرِ مستی ،ایک دن
    غرۂ اوجِ بنائےعالمِ امکاں نہ ہو
    اس بلندی کے نصیبوں میں ہے پستی ،ایک دن
    قرض کی پیتے تھے مے، لیکن سمجھتے تھے کہ ہاں
    رنگ لاوےگی ہماری فاقہ مستی، ایک دن
    نغمہ ہائےغم کو بھی ،اے دل غنیمت جانیے
    بے صدا ہو جائےگا، یہ سازِ ہستی، ایک دن
    دھول دھپّا، اس سراپا ناز کا شیوہ نہیں
    ہم ہی کر بیٹھے تھے، غالبؔ، پیش دستی ،ایک دن



    رنگِ طرب ہے صورتِ عہدِ وفا گرو
    تھا کس قدر شکستہ کہ ہے جابجا گرو
    پروازِ نقد، دامِ تمنائےجلوہ تھا
    طاؤس نے اک آئنہ خانہ رکھا گرو
    عرضِ بساطِ انجمنِ رنگ مفت ہے
    موجِ بہار رکھتی ہے اک بوریا گرو
    ہر ذرّہ خاک ،عرضِ تمنا ئےرفتگاں
    آئینہ ہا شکستہ ،و تمثال ہا گرو
    ہے تاک میں سلم ہوسِ صد قدح شراب
    تسبیحِ زاہداں، بکفِ مدعا گرو
    برق آبیارِ فرصتِ رنگِ دمیدہ ہوں
    جوں نخلِ شمع ،ریشے میں نشو و نما گرو
    طاقت، بساطِ دستگہِ یک قدم نہیں
    جوں اشک، جب تلک نہ رکھوں دست و پا گرو
    ہے وحشتِ جنونِ بہار اس قدر کہ ہے
    بالِ پری ،بہ شوخیِ موجِ صبا گرو
    بے تابِ سیرِ دل ہے سرِ ناخنِ نگار
    یاں نعل ہے بہ آتشِ رنگِ حنا گرو
    ہوں سخت جانِ کاوشِ فکرِ سخن اسدؔ
    تیشے کی ، کوہسار میں ہے ،یک صدا گرو




    شکوہ و شکر کو ثمر بیم و امید کا سمجھ
    خانۂ آگہی خراب! دل نہ سمجھ، بلا سمجھ
    ریگِ روان و ہرتپش درسِ تسلّیِ شعاع
    آئنہ توڑ،اے خیال جلوے کو خوں بہا سمجھ
    وحشتِ دردِ بیکسی ،بے اثر اس قدر نہیں
    رشتۂ عمرِ خضر کو نالۂ نا رسا سمجھ
    شوقِ عناں گسل اگر درسِ جنوں ہوس کرے
    جادۂ سیرِ دوجہاں ،یک مژہ خوابِ پا سمجھ
    گاہ بخلد امیدوار، گہ بہ جحیم بیم ناک
    گر چہ خدا کی یاد ہے، کلفتِ ماسوا سمجھ
    شوخیِ حسن و عشق ہے آئنہ دارِ ہمد گر
    خار کو بے نیام جان، ہم کو برہنہ پا سمجھ
    اے بہ سرابِ حسنِ خلق تشنۂ سعیِ امتحاں
    شوق کو منفعل نہ کر، ناز کو التجا سمجھ
    نغمۂ بے دلاں، اسدؔ، سازِ فسانگی نہیں
    بسملِ دردِ خفتہ ہوں، گریےکو ماجرا سمجھ




    کلفتِ ربطِ این و آں ،غفلتِ مدعا سمجھ
    شوق کرے جو سرگراں ،محملِ خوابِ پا سمجھ
    جلوہ نہیں ہے دردِ سر، آئنہ صندلی نہ کر
    عکس کجا ؟و کُو نظر؟ نقش کو مدّعا سمجھ
    حیرت اگر خرام ہے، کارِ نگہ تمام ہے
    گر کفِ دست بام ہے، آئنے کو ہوا سمجھ
    ہے خطِ عجزِ ما و تُو، اولِ درسِ آرزو
    ہے یہ سیاقِ گفتگو، کچھ نہ سمجھ، فنا سمجھ
    شیشہ شکست اعتبار، رنگ بگردش استوار
    گر نہ مٹیں یہ کوہسار، آپ کو تو صدا سمجھ
    نغمہ ہے ،محوِ ساز رہ ،نشہ ہے، بے نیازِ رہ
    رندِ تمام ناز رہ ،خلق کو پارسا سمجھ
    چربیِ پہلوئےخیال ،رزقِ دو عالم احتمال
    کل ہے جو وعدۂ وصال ،آج بھی، اے خدا ،سمجھ
    نے سرو برگِ آرزو، نے رہ و رسمِ گفتگو
    اے دل و جانِ خلق ،تو ہم کو آشنا سمجھ
    لغزشِ پا کو ہے بلد، نغمۂ" یا علی مدد"
    ٹوٹے گر آئنہ ، اسد ؔ،سبحہ کو خوں بہا سمجھ




    دل ہی نہیں کہ منتِ درباں اُٹھائیے
    کس کو وفا کا سلسلہ جنباں اُٹھائیے؟
    تا چند داغ بیٹھیے، نقصاں اُٹھائیے؟
    اب چار سوئےعشق سے دوکاں اُٹھائیے
    صد جلوہ روبرو ہے جو مژگاں اُٹھائیے
    طاقت کہاں کہ دید کا احساں اُٹھائیے
    ہستی ،فریب نامۂ موجِ سراب ہے
    یک عمر نازِ شوخیِ عنواں اُٹھائیے
    ہے سنگ پر ،براتِ معاشِ جنونِ عشق
    یعنی ،ہنوز منتِ طفلاں اُٹھائیے
    ضبطِ جنوں سے، ہر سرِ مو ہے ترانہ خیز
    یک نالہ بیٹھیے تو ،نیستاں اُٹھائیے
    نذرِخراشِ نالہ ،سرشکِ نمک اثر
    لطفِ کرم، بدولتِ مہماں اُٹھائیے
    دیوار ،بارِ منتِ مزدور سے ہے خم
    اے خانماں خراب، نہ احساں اُٹھائیے
    یا میرے زخمِ رشک کو رسوا نہ کیجیے
    یا پردۂ تبسمِ پنہاں اُٹھائیے
    انگور ،سعیِ بے سرو پائی سے سبز ہے
    غالب ؔ،بدوشِ دل خُمِ مستاں اُٹھائیے
     
  8. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    ہےبزمِ بتاں میں ،سخن آزردہ لبوں سے
    تنگ آئے ہیں ہم ایسے خوشامد طلبوں سے
    ہے دورِ قدح ،وجہِ پریشانیِ صہبا
    یک بارلگادو خُمِ مے میرے لبوں سے
    رندانِ درِ میکدہ گستاخ ہیں، زاہد
    زنہار ،نہ ہونا طرف ان بے ادبوں سے
    بیدادِ وفا دیکھ ،کہ جاتی رہی آخر
    ہر چند مری جان کو تھا ربط لبوں سے
    کیا پوچھے ہے بر خود غلطی ہائےعزیزاں؟
    خواری کو بھی اک عار ہے، عالی نسبوں سے
    گو تم کو رضا جوئیِ اغیار ہے، لیکن
    جاتی ہے ملاقات کب ایسے سببوں سے؟
    مت پوچھ، اسدؔ، غصۂکم فرصتیِ زیست
    دو دن بھی جو کاٹے، تو قیامت تعبوں سے




    غمِ دنیا سے، گر پائی بھی ، فرصت سر اُٹھانے کی
    فلک کا دیکھنا، تقریب تیرے یاد آنے کی
    کھلے گا کس طرح مضموں مرے مکتوب کا، یارب؟
    قسم کھائی ہے اُس کافر نے کاغذ کے جلانے کی
    لپٹنا پرنیاں میں شعلۂ آتش کا آساں ہے
    ولے مشکل ہے حکمت دل میں سوزِ غم چھپانے کی
    اُنہیں منظور اپنے زخمیوں کا دیکھ آنا تھا
    اُٹھے تھے سیرِ گل کو، دیکھنا شوخی بہانے کی
    ہماری سادگی تھی، التفاتِ ناز پر مرنا
    ترا آنا نہ تھا ،ظالم، مگر تمہید جانے کی
    لکدکوبِِ حوادث کا تحمل کر نہیں سکتی
    مری طاقت کہ ضامن تھی ،بتوں کے ناز اُٹھانے کی
    کہوں کیا خوبیِ اوضاعِ ابنائےزماں، غالبؔ
    بدی کی اُس نے جس سے ہم نے کی تھی بارہا نیکی




    بساط ِعجز میں تھا ایک دل، یک قطرہ خوں وہ بھی
    سو رہتا ہے بہ اندازِ چکیدن سر نگوں، وہ بھی
    رہے اُس شوخ سے آزردہ ہم چندے تکلف سے
    تکلف بر طرف، تھا ایک اندازِ جنوں، وہ بھی
    خیالِ مرگ کب تسکین دلِ آزردہ کو بخشے؟
    مرے دامِ تمنا میں ہے اک صیدِ زبوں ،وہ بھی
    نہ کرتا کاش! نالہ،مجھ کو کیا معلوم تھا، ہمدم
    کہ ہوگا باعثِ افزائشِ دردِ دروں، وہ بھی
    مئے، عشرت کی خواہش، ساقیِ گردوں سے کیا کیجے؟
    لیے بیٹھا ہے اک دو چار جامِ واژگوں، وہ بھی
    مجھے معلوم ہے جو تو نے میرے حق میں سوچا ہے
    کہیں ہو جائےجلد اے گردشِ گردونِ دوں، وہ بھی
    نظر راحت پہ میری، کر نہ وعدہ شب کے آنے کا
    کہ میری خواب بندی کیلئے ہوگافسوں، وہ بھی
    میرے دل میں ہے، غالبؔ، شوقِ وصل و شکوۂ ہجراں
    خدا وہ دن کرے ،جو اُس سے میں یہ بھی کہوں، وہ بھی




    سرگشتگی میں ،عالمِ ہستی سے یاس ہے
    تسکیں کو دے نوید کہ مرنے کی آس ہے
    لیتا نہیں مرے دلِ آوارہ کی خبر
    اب تک وہ جانتا ہے کہ ،میرے ہی پاس ہے
    کیجے بیاں سرورِ تبِ غم کہاں تلک؟
    ہر مو ،مرے بدن پہ ،زبانِ سپاس ہے
    ہے وہ ،غرورِ حُسن سے بیگانۂ وفا
    ہر چند اُس کے پاس دلِ حق شناس ہے
    پی ،جس قدر ملے ،شبِ مہتاب میں شراب
    اس بلغمی مزاج کو گرمی ہی راس ہے
    کیا غم ہے اُس کو، جس کا علی سا امام ہو
    اتنا بھی اے فلک زدہ ،کیوں بے حواس ہے
    ہر ایک مکان کو ہے مکیں سے شرف، اسدؔ
    مجنوں جو مرگیا ہے، تو جنگل اُداس ہے



    گر خامشی سے فائدہ اخفائےحال ہے
    خوش ہوں کہ ،میری بات سمجھنی محال ہے
    کس کو سناؤں حسرتِ اظہار کا گلہ؟
    دل ،فردِ جمع و خرچِ زباں ہائےلال ہے
    کس پردے میں ہے آئنہ پرداز؟ اے خدا
    رحمت ، کہ عذر خواہِ لبِ بے سوال ہے
    ہے ہے! خدا نخواستہ، وہ اور دشمنی
    اے شوق، منفعل، یہ تجھے کیا خیال ہے
    مشکیں ،لباسِ کعبہ، علی کے قدم سے جان
    نافِ زمین ہے ،نہ کہ نافِ غزال ہے
    وحشت پہ میری عرصہ آفاق، تنگ تھا
    دریا، زمین کو عرقِ انفعال ہے
    ہستی کے مت فریب میں آ جائیو ، اسدؔ
    عالم تمام ،حلقہ دامِ خیال ہے
    پہلو تہی نہ کر غم و اندوہ سے، اسدؔ
    دل وقفِ درد رکھ کہ فقیروں کا مال ہے




    رفتارِ عمر، قطعِ رہِ اضطراب ہے
    اِس سال کے حساب کو، برق ،آفتاب ہے
    مینائےمے ہے، سرو،نشاطِ بہار سے
    بالِ تدرو، جلوۂ موجِ شراب ہے
    زخمی ہوا ہے،پاشنہ پائے ثبات کا
    نے بھاگنے کی گوں، نہ اقامت کی تاب ہے
    جادادِبادہ نوشیِ رنداں ہے، شش جہت
    غافل گماں کرے ہے کہ گیتی خراب ہے
    نظارہ کیا حریف ہو اُس برقِ حسن کا
    جوشِ بہار ،جلوے کو جس کے نقاب ہے
    میں نامراد دل کی تسلی کو کیا کروں
    مانا کہ تیرے رخ سے نگہ کامیاب ہے
    گزرا اسدؔ، مسرتِ پیغامِ یار سے
    قاصد پہ مجھ کو رشکِ سوال و جواب ہے




    جس جانسیم شانہ کشِ زلفِ یار ہے
    نافہ ،دماغِ آہوئےدشتِ تتار ہے
    دل مت گنوا ، خبر نہ سہی ،سیر ہی سہی
    اے بے دماغ ،آئنہ تمثال دار ہے
    زنجیر یاد پڑتی ہے ،جادے کو دیکھ کر
    اُس چشم سے ہنوز نگہ یادگار ہے
    بے پردہ ، سوئےوادیِ مجنوں گزر نہ کر
    ہر ذرے کے نقاب میں، دل بے قرار ہے
    سودائیِ خیال ہے طوفانِ رنگ و بو
    یاں ہے کہ داغِ لالہ ،دماغِ بہار ہے
    بھونچال میں گرا تھا یہ آئینہ طاق سے
    حیرت شہیدِ جنبشِ ابروئےیار ہے
    حیراں ہوں شوخیِ رگِ یاقوت دیکھ کر
    یاں ہے کہ صحبتِ خس و آتش برار ہے
    اے عندلیب ،یک کفِ خس بہرِ آشیاں
    طوفانِ آمد آمدِ فصلِ بہار ہے
    غفلت کفیلِ عمر، و اسدؔ ضامنِ نشاط
    اے مرگِ ناگہاں، تجھے کیا انتظار ہے




    حاصل سے ہاتھ دھو بیٹھ، اے آرزو خرامی
    دل، جوشِ گریہ میں ہے ڈوبی ہوئی اسامی
    کرتے ہو شکوہ کس کا؟ تم اور بے وفائی
    سر پیٹتے ہیں اپنا، ہم اور نیک نامی
    صد رنگ گل کترنا، درپردہ قتل کرنا
    تیغِ ادا نہیں ہے پابندِ بے نیامی
    اس شمع کی طرح سے جس کو کوئی بجھا دے
    میں بھی، جلے ہوؤں میں، ہوں داغِ ناتمامی
    طرفِ سخن نہیں ہے مجھ سے، خدا نکردہ
    ہے نامہ بر کو اُس سے دعوائےہم کلامی
    طاقت فسانۂ باد، اندیشہ شعلہ ایجاد
    اے غم، ہنوز آتش، اے دل ہنوز خامی!
    ہر چند عمر گزری آزردگی میں لیکن
    ہے شرحِ شوق کو بھی ، جوں شکوہ ، ناتمامی
    ہے یاس میں اسد ؔکو ساقی سے بھی فراغت
    دریا سے خشک گزری مستوں کی تشنہ کامی




    تغافل دوست ہوں ،میرا دماغِ عجز عالی ہے
    اگر پہلو تہی کیجے ،تو جا میری بھی خالی ہے
    بتانِ شوخ کا دل سخت ہوگا کس قدر ، یار ب!
    مری فریاد کو ،کہسار، سازِ عجز نالی ہے
    نشان بے قرارِ شوق، جز مژگاں نہیں باقی
    کئی کانٹے ہیں، اور پیراہنِ شکلِ نہالی ہے
    جنوں کر ، اے چمن تحریرِ درسِ شغلِ تنہائی
    نگاہِ شوق کو ،صحرا بھی ،دیوانِ غزالی ہے
    سیہ مستی ہے اہلِ خاک کو ابرِ بہاری سے
    زمیں جوشِ طرب سے ، جامِ لبریزِ سفالی ہے
    رہا آباد عالم ،اہلِ ہمت کے نہ ہونے سے
    بھرے ہیں جس قدر جام و سبو ،میخانہ خالی ہے
    اسدؔ، مت رکھ تعجب خر دماغی ہائےمنعم کا
    کہ یہ نامرد بھی شیرافگنِ میدانِ قالی ہے




    ہر قدم ،دوریِ منزل ہے نمایاں مجھ سے
    میری رفتار سے، بھاگے ہے بیاباں مجھ سے
    درسِ عنوانِ تماشا، بہ تغافل خوشتر
    ہے نگہ، رشتۂ شیرازۂ مژگاں مجھ سے
    وحشتِ آتشِ دل سے ،شبِ تنہائی میں
    صورت ِدُود ، رہا سایہ گریزاں مجھ سے
    اثرِ آبلہ سےجادہ صحرائے جنوں
    صورتِ رشتۂ گوہر ،ہے چراغاں مجھ سے
    بے خودی بسترِ تمہیدِ فراغت ہو جو!
    پُر ہے سائےکی طرح ،میرا شبستاں مجھ سے
    شوقِ دیدار میں ،گر تو مجھے گردن مارے
    ہونگہ، مثلِ گلِ شمع ،پریشاں مجھ سے
    بیکسی ہائےشبِ ہجر کی وحشت ، ہے ہے!
    سایہ ،خورشیدِ قیامت میں ہے پنہاں مجھ سے
    گردشِ ساغرِ صد جلوۂ رنگیں ،تجھ سے
    آئنہ داریِ یک دیدۂ حیراں مجھ سے
    نگہِ گرم سے اک آگ ٹپکتی ہے، اسدؔ
    ہے چراغاں ،خس و خاشاکِ گلستاں مجھ سے




    وحشت کہاں کہ بے خودی انشا کرے کوئی؟
    ہستی کو لفظِ معنیِ عنقا کرے کوئی
    لختِ جگر سے ہے، رگِ ہر خار، شاخِ گل
    تا چند باغبانیِ صحرا کرے کوئی
    جو کچھ ہے، محوِ شوخیِ ابروئےیار ہے
    آنکھوں کو رکھ کے طاق پہ دیکھا کرے کوئی
    ہر سنگ وخشت ، ہے صدفِ گوہرِ شکست
    نقصاں نہیں جنوں سےجو سودا کرے کوئی
    ہے وحشتِ طبیعت ایجاد، یاس خیز
    یہ درد وہ نہیں کہ نہ پیدا کرے کوئی
    ناکامیِ نگاہ ، ہے برقِ نظارہ سوز
    تو وہ نہیں کہ تجھ کو تماشا کرے کوئی
    عرضِ سرشک پر ہے ،فضائےزمانہ ،تنگ
    صحرا کہاں کہ دعوتِ دریا کرے کوئی
    خوانا نہیں ہےخط رقم اضطرارکا
    تدبیرِ پیچ تابِ نفس کیا کرے کوئی
    وہ شوخ اپنے حسن پہ مغرور ہے، اسدؔ
    دکھلا کے اس کو آئنہ توڑا کرے کوئی




    جب تک دہانِ زخم نہ پیدا کرے کوئی
    مشکل کہ تجھ سے راہِ سخن وا کرے کوئی
    سر بر ہوئی نہ وعدۂ صبر آزما سے عمر
    فرصت کہاں کہ تیری تمنا کرے کوئی
    عالم غبارِ وحشتِ مجنوں ہے، سربسر
    کب تک خیالِ طرۂ لیلا کرے کوئی
    افسردگی ،نہیں طرب انشائےالتفات
    ہاں، درد بن کے دل میں ، مگر، جا کرے کوئی
    رونے سے،اے ندیم، ملامت نہ کر مجھے
    آخر ، کبھی تو عقدۂ دل وا کرے کوئی
    تمثالِ جلوہ عرض کر،اے حسن ،کب تلک
    آئینۂ خیال کو دیکھا کرے کوئی
    چاکِ جگر سے ،جب رہِ پرسش نہ وا ہوئی
    کیا فائدہ کہ جیب کو رسوا کرے کوئی
    بے کاریِ جنوں کو ہے سر پیٹنے کا شغل
    جب ہاتھ ٹوٹ جائیں تو پھر کیا کرے کوئی
    حسنِ فروغِ شمعِ سخن دور ہے ،اسدؔ
    پہلے دلِ گداختہ پیدا کرے کوئی


    جو نہ نقدِ داغِ دل کی کرے شعلہ پاسبانی
    تو فسردگی نہاں ہے بہ کمینِ بے زبانی
    مجھے اس سے کیا توقّع بہ زمانۂ جوانی
    کبھی کودکی میں جس نے نہ سنی مری کہانی
    یوں ہی دکھ کسی کو دینا نہیں خوب، ورنہ کہتا
    کہ "مرے عدو کو ،یا رب، ملے میری زندگانی"
    (یہ اشعارنسخہ حمیدیہ کے ایک قصیدے کے ہیں۔ غالبؔ نے وہیں سے الگ کر کےاپنے دیوان(اشاعت اول)میں بطور غزل شامل کر لیے)
     
  9. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    آ ،کہ مری جان کو قرار نہیں ہے
    طاقتِ بیدادِ انتظار نہیں ہے
    دیتے ہیں جنت حیاتِ دہر کے بدلے
    نشّہ بہ اندازۂ خمار نہیں ہے
    گریہ نکالے ہے تیری بزم سے مجھ کو
    ہائے!کہ رونے پہ اختیار نہیں ہے
    ہم سے عبث ہے گمانِ رنجشِ خاطر
    خاک میں عشّاق کی غبار نہیں ہے
    دل سے اُٹھا لطفِ جلوہ ہائے معانی
    غیرِ گل! آئینۂ بہار نہیں ہے
    قتل کا میرے کیا ہے عہد تو ،بارے
    وائے!اگر عہد اُستوار نہیں ہے
    تو نے قسم میکشی کی کھائی ہے ، غالبؔ
    تیری قسم کا کچھ اعتبار نہیں ہے




    نہ ہوئی گر مرے مرنے سے تسلی، نہ سہی
    امتحاں اور بھی باقی ہو ،تو یہ بھی نہ سہی
    خار خارِ المِ حسرتِ دیدار تو ہے
    شوق ، گلچینِ گلستانِ تسلی نہ سہی
    مے پرستاں خُمِ مے منہ سے لگائےہی بنے
    ایک دن گر نہ ہوا بزم میں ساقی، نہ سہی
    نفسِ قیس کہ ہے چشم و چراغِ صحرا
    گر نہیں شمعِ سیہ خانۂ لیلی ،نہ سہی
    ایک ہنگامے پہ موقوف ہے گھر کی رونق
    نوحۂ غم ہی سہی، نغمۂ شادی، نہ سہی
    نہ ستایش کی تمنا، نہ صلے کی پروا
    گر نہیں ہیں مرے اشعار میں معنی ،نہ سہی
    عشرتِ صحبتِ خوباں ہی غنیمت سمجھو
    نہ ہوئی، غالبؔ، اگر عمرِ طبیعی، نہ سہی



    پھونکتا ہے نالہ ہر شب صور اسرافیل کی
    ہم کو جلدی ہے ،مگر تو نے قیامت ڈھیل کی
    کی ہیں کس پانی سے یاں یعقوب ؑنے آنکھیں سفید
    ہے جو آبی پیرہن، ہر موج رودِ نیل کی
    عرش پر تیرے قدم سے ہے، دماغِ گردِ راہ
    آج تنخواہِ شکستن ہے کُلہْ جبریل کی
    مدعا درپردہ ،یعنی جو کہوں باطل سمجھ
    وہ فرنگی زادہ کھاتا ہے قسم انجیل کی
    خیر خواہِ دید ہوں از بہرِ دفعِ چشم زخم
    کھینچتا ہوں اپنی آنکھوں میں سلائی نیل کی
    نالہ کھینچا ہے، سراپا داغِ جرأت ہوں، اسدؔ
    کیا سزا ہے میرے جرمِ آرزو تاویل کی؟



    کیا ہے ترکِ دنیا کاہلی سے
    ہمیں حاصل نہیں بے حاصلی سے
    خراجِ دیہہِ ویراں ، یک کفِ خاک
    بیاباں خوش ہوں تیری عاملی سے
    پرافشاں ہو گئے شعلے ہزاروں
    رہے ہم داغ، اپنی کاہلی سے
    خدا ، یعنی پدر سے مہرباں تر
    پھرے ہم در بدر ناقابلی سے
    اسدؔ قربانِ لطفِ جورِ بیدل
    خبر لیتے ہیں، لیکن بیدلی سے



    ربطِ تمیزِ اعیاں، دُردِ مئےصدا ہے
    اعمیٰ کو سرمۂ چشم، آوازِ آشنا، ہے
    موئےدماغِ وحشت ،سر رشتۂ فنا ہے
    شیرازۂ دو عالم ،یک آہِ نارسا ،ہے
    دیوانگی ہے، تجھ کو درسِ خرام دینا
    موجِ بہار یکسر زنجیرِ نقشِ پا ،ہے
    پروانے سے ہو، شاید ،تسکینِ شعلۂ شمع
    آسایشِ وفاہا ،بیتابیِ جفا ،ہے
    اے اضطرابِ سرکش، یک سجدہ وار تمکیں
    میں بھی ہوں شمعِ کشتہ، گر داغ خوں بہا ہے
    نے حسرتِ تسلی، نے ذوقِ بے قراری
    یک درد و صد دوا ہے ،یک دست و صد دعا ہے
    دریائےمے ہے ساقی، لیکن خمار باقی
    تا کوچہ دادنِ موج خمیازہ آشنا ہے
    وحشت نہ کھینچ ،قاتل، حیرت نفس ہے بسمل
    جب نالہ خوں ہو، غافل، تاثیر کیا بلا ہے
    بت خانے میں اسدؔ بھی بندہ تھا گاہ گاہے
    حضرت چلے حرم کو، اب آپ کا خدا ہے




    گر یاس سر نہ کھینچے ، تنگی عجب فضا ہے
    وسعت گہِ تمنا ،یک بام و صد ہوا ہے
    برہم زنِ دو عالم ،تکلیفِ یک صدا ،ہے
    مینا شکستگاں کو کہسار خوں بہا ہے
    فکرِ سخن یک انشا زندانیِ خموشی
    دودِ چراغ، گویا، زنجیرِ بے صدا ہے
    موزونیِ دو عالم ،قربانِ سازِ یک درد
    مصراعِ نالۂ نَے، سکتہ ہزار جا ہے
    درسِ خرام تا کَے خمیازۂ روانی؟
    اِس موجِ مے کو ،غافل، پیمانہ نقشِ پاہے
    گردش میں لا ،تجلی، صد ساغرِ تسلی!
    چشمِ تحیر آغوش، مخمورِ ہر ادا ہے
    یک برگِ بے نوائی ،صد دعوتِ نیستاں
    طوفانِ نالۂ دل ،تا موجِ بوریا ہے
    اے غنچۂ تمنا ،یعنی کفِ نگاریں
    دل دے ،تو ہم بتا دیں ،مٹھی میں تیری کیا ہے
    ہر نالۂ اسد ؔہے مضمونِ داد خواہی
    یعنی ،سخن کو کاغذ احرامِ مدعا ہے



    ذوقِ خود داری، خرابِ وحشتِ تسخیر ہے
    آئنہ خانہ ،مری تمثال کو، زنجیر ہے
    ذرہ دے مجنوں کے کس کس داغ کو پردازِعرض؟
    ہر بیاباں، یک بیاباں حسرتِ تعمیر ہے
    میکشِ مضموں کو حسنِ ربطِ خط کیا چاہیے؟
    لغزشِ رفتارِ خامہ ،مستیِ تحریر ہے
    خانمانِ جبریانِ غافل از معنی ِخراب!
    جب ہوئےہم بے گنہ، رحمت کی کیا تقصیر ہے؟
    چاہے گر جنت، جز آدم وارثِ آدم نہیں
    شوخیِ ایمانِ زاہد ،سُستیِ تدبیر ہے
    شب دراز و آتشِ دل تیز ، یعنی ، مثلِ شمع!
    مہ ،ز سر تا ناخنِ پا ،رزقِ یک شبگیر ہے
    آب ہو جاتے ہیں، ننگِ ہمتِ باطل سے، مرد
    اشک پیدا کر، اسدؔ، گر آہ بے تاثیر ہے


    رباعیات

    دل ، سوزِ جنوں سے جلوہ منظر ہے آج
    نیرنگِ زمانہ ،فتنہ پرور ہے آج
    یک تارِ نفس میں، جوں طنابِ صباغ
    ہر پارۂ دل، بہ رنگِ دیگر ہے آج



    مشکل ہے ،ز بس ،کلام میرا،اے دل
    سُن سُن کے اُسے سخنورانِ کامل
    آساں کہنے کی، کرتے ہیں فرمایش
    "گویم مشکل، وگر نہ گویم مشکل"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بعد از 1821ء



    دھمکی میں مر گیا، جو نہ بابِ نبرد تھا
    عشقِ نبرد پیشہ، طلب گارِ مرد تھا
    تھا زندگی میں مرگ کا کھٹکا لگا ہوا
    اڑنے سے پیشتر بھی، مرا رنگ، زرد تھا
    تالیفِ نسخہ ہائے وفا کر رہا تھا میں
    مجموعۂ خیال ابھی فرد فرد تھا
    دل تا جگر، کہ ساحلِ دریائے خوں ہے اب
    اس رہ گزر میں ، جلوۂ گل، آگے گرد تھا
    جاتی ہے کوئی کشمکش اندوہِ عشق کی
    دل بھی اگر گیا، تو وُہی دل کا درد تھا
    احباب چارہ سازئ وحشت نہ کر سکے
    زنداں میں بھی، خیال، بیاباں نورد تھا
    یہ لاشِ بے کفن، اسدؔ خستہ جاں کی ہے
    حق مغفرت کرے! عجب آزاد مرد تھا



    محرم نہیں ہے تو ہی ، نوا ہائے راز کا
    یاں ورنہ جو حجاب ہے، پردہ ہے ساز کا
    رنگِ شکستہ ، صبحِ بہارِ نظارہ ہے
    یہ وقت ہے، شگفتنِ گل ہائے ناز کا
    تو اور سوئے غیر نظر ہائے تیز تیز!
    میں اور دُکھ تری مِژہ ہائے دراز کا
    صرفہ ہے ضبطِ آہ میں میرا، وگرنہ میں
    طُعمہ ہوں، ایک ہی نفَسِ جاں گداز کا
    ہیں، بسکہ جوشِ بادہ سے شیشے اچھل رہے
    ہر گوشۂ بساط ، ہے سر شیشہ باز کا
    کاوش کا دل کرے ہے تقاضا، کہ ہے ہنوز
    ناخن پہ قرض، اس ، گرہِ نیم باز کا
    تاراجِ کاوشِ غمِ ہجراں ہوا، اسدؔ
    سینہ، کہ تھا دفینہ گہر ہائے راز کا



    دوست ، غمخواری میں میری، سعی فرماویں گے کیا؟َ
    زخم کے بھرنے تلک ،ناخن نہ بڑھ جاویں گے کیا?
    بے نیازی حد سے گزری ،بندہ پرور، کب تلک
    ہم کہیں گے حالِ دل، اور آپ فرماویں گے "کیا"؟
    حضرتِ ناصح گر آویں، دیدہ و دل فرشِ راہ
    کوئی مجھ کو یہ تو سمجھا دو کہ سمجھاویں گے کیا؟
    آج واں تیغ و کفن باندھے ہوئے جاتا ہوں میں
    عذر ،میرے قتل کرنے میں وہ اب لاویں گے کیا؟
    گر کیا ناصح نے ہم کو قید، اچھا، یوں، سہی
    یہ جنونِ عشق کے انداز چھٹ جاویں گے کیا؟
    خانہ زادِ زلف ہیں، زنجیر سے بھاگیں گے کیوں؟
    ہیں گرفتارِ وفا، زنداں سے گھبراویں گے کیا؟
    ہے اب اس معمورے میں قحطِ غمِ الفت، اسدؔ
    ہم نے یہ مانا کہ دلّی میں رہیں، کھاویں گے کیا؟



    عشرتِ قطرہ ہے ،دریا میں فنا ہو جانا
    درد کا حد سے گزرنا، ہے دوا ہو جانا
    تجھ سے، قسمت میں مری، صورتِ قفلِ ابجد
    تھا لکھا بات کے بنتے ہی جدا ہو جانا
    دل ہوا ، کشمکشِ چارۂ زحمت میں تمام
    مِٹ گیا ، گھسنے میں ، اُس عُقدے کا وا ہو جانا
    اب جفا سے بھی ہیں محروم ہم، اللہ ، اللہ!
    اس قدر دشمنِ اربابِ وفا ہو جانا
    ضعف سے، گریہ ، مبدّل بدمِ سرد ہوا
    باور آیا ہمیں پانی کا ہوا ہو جانا
    دِل سے مِٹنا تری انگشتِ حنائی کا خیال
    ہو گیا گوشت سے ناخن کا جُدا ہو جانا
    ہے مجھے، ابرِ بہاری کا برس کر کھُلنا
    روتے روتے غمِ فُرقت میں فنا ہو جانا
    گر نہیں نکہتِ گل کو ترے کوچے کی ہوس
    کیوں ہے گردِ رہِ جَولانِ صبا ہو جانا
    تاکہ تجھ پر کھُلے اعجازِ ہوائےصَیقل
    دیکھ برسات میں سبز آئنے کا ہو جانا
    بخشے ہے جلوۂ گُل، ذوقِ تماشا، غالبؔ
    چشم کو چاہئےہر رنگ میں وا ہو جانا



    پھر ہوا وقت کہ ہو بال کُشا موجِ شراب
    دے بطِ مے کو دل و دستِ شنا ،موجِ شراب
    پوچھ مت وجہ سیہ مستیِ اربابِ چمن
    سایۂ تاک میں ہوتی ہے، ہَوا ،موجِ شراب
    جو ہوا غرقۂ مئے، بختِ رسا رکھتا ہے
    سر پہ گزرے پہ بھی ہے بالِ ہما ،موجِ شراب
    ہے یہ برسات وہ موسم کہ عجب کیا ہے، اگر
    موجِ ہستی کو کرے، فیضِ ہوا ، موجِ شراب
    چار موج اٹھتی ہے، طوفانِ طرب سے ہر سو
    موجِ گل، موجِ شفق، موجِ صبا، موجِ شراب
    جس قدر روح نباتی ہے جگر تشنۂ ناز
    دے ہے تسکیں ، بَدَمِ آبِ بقا ، موجِ شراب
    بس کہ دوڑے ہے رگِ تاک میں، خوں ہو ہو کر
    شہپرِ رنگ سے ہے بال کشا ، موجِ شراب
    موجۂ گل سے چراغاں ہے گزرگاہِ خیال
    ہے تصوّر میں ز بس جلوہ نما ، موجِ شراب
    نشّے کے پردے میں ہے محوِ تماشائےدماغ
    بس کہ رکھتی ہے سرِ نشو و نما موجِ شراب
    ایک عالم پہ ہے طوفانئِ کیفیّتِ فصل
    موجۂ سبزۂ نوخیز سے تا موجِ شراب
    شرحِ ہنگامۂ مستی ہے، زہے! موسمِ گل
    رہبرِ قطرہ بدریا ہے، خوشا !موجِ شراب
    ہوش اڑتے ہیں مرے، جلوۂ گل دیکھ، اسدؔ
    پھر ہوا وقت، کہ ہو بال کُشا، موجِ شراب



    رہا گر کوئی تا قیامت سلامت
    پھر اک روز مرنا ہے ،حضرت سلامت
    جگر کو مرے ،عشقِ خوں نابہ مشرب
    لکھے ہے"خداوندِ نعمت سلامت"!
    دو عالم کی ہستی پہ خطِ وفا کھینچ
    دل و دستِ اربابِ ہمت سلامت !
    علی اللّرغمِ دشمن، شہیدِ وفا ہوں
    مبارک !مبارک! سلامت! سلامت!
    نہیں گر بہ کامِ دلِ خستہ، گردوں
    جگر خوائیِ جوشِ حسرت سلامت!
    نہیں گر سر و برگِ ادراک معنی
    تماشائےنیرنگ صورت سلامت
    نہ اوروں کی سنتا، نہ کہتا ہوں اپنی
    سرِ خستہ وشورِ وحشت سلامت!
    وفورِ بلا ہے ،ہجومِ وفا ہے
    سلامت ملامت، ملامت سلامت!
    نہ فکر سلامت، نہ بیم ملامت
    ز خود رفتگی ہائےحیرت سلامت!
    رہے غالبِ خستہ، مغلوبِ گردوں
    یہ کیا بے نیازی ہے ، حضرت سلامت؟


    کب فقیروں کو رسائی بتِ میخوار کے پاس
    تو نبے بو دیجیے میخانے کی دیوار کے پاس
    مُژدہ ، اے ذَوقِ اسیری ! کہ نظر آتا ہے!
    دامِ خالی ، قفَسِ مُرغِ گِرفتار کے پاس
    جگرِ تشنۂ آزار ، تسلی نہ ہوا !
    جُوئے خُوں ہم نے بہائی بُنِ ہر خار کے پاس
    مُند گئیں ،کھولتے ہی کھولتے، آنکھیں ،ہَے ہَے!
    خُوب وقت آئے تم اِس عاشقِ بیمار کے پاس
    مَیں بھی رُک رُک کے نہ مرتا ، جو زباں کے بدلے
    دشنہ اِک تیز سا ہوتا مِرے غمخوار کے پاس
    دَہَنِ شیر میں جا بیٹھیے ، لیکن، اے دل
    نہ کھڑے ہوجیے خُوبانِ دل آزار کے پاس
    دیکھ کر تجھ کو ، چمن بسکہ نُمو کرتا ہے
    خُود بخود پہنچے ہے گُل ،گوشۂ دستار کے پاس
    مر گیا پھوڑ کے سر، غالبؔ وحشی ، ہَے ہَے !
    بیٹھنا اُس کا وہ ، آ کر ، تری دیوار کے پاس



    ہے کس قدر ہلاکِ فریبِ وفائے گُل !
    بُلبُل کے کاروبار پہ ہیں، خندہ ہائے گُل
    آزادئ نسیم مبارک !کہ ہر طرف
    ٹوٹے پڑے ہیں حلقۂ دامِ ہوائے گُل
    جو تھا ، سو موجِ رنگ کے دھوکے میں مر گیا
    اے وائے ، نالۂ لبِ خونیں نوائے گُل
    دیوانگاں کا چارہ فروغِ بہار ہے
    ہے شاخِ گل میں ،پنجۂ خوباں، بجائےگل
    خوش حال اُس حریفِ سیہ مست کا، کہ جو
    رکھتا ہو ،مثلِ سایۂ گُل ، سر بہ پائے گُل
    ایجاد کرتی ہے اُسے تیرے لیے، بہار
    میرا رقیب ہے، نَفَسِ عطر سائے گُل
    مژگاں تلک رسائیِ لختِ جگر کہاں؟
    اے وائے!گر نگاہ نہ ہو آشنائےگل
    شرمندہ رکھتے ہیں مجھے بادِ بہار سے
    مینائےبے شراب، و دلِ بے ہوائے گُل
    سطوت سے تیرے جلوۂ حُسنِ غیور کی
    خوں ہے مری نگاہ میں، رنگِ ادائے گُل
    تیرے ہی جلوے کا ہے یہ دھوکا کہ آج تک
    بے اختیار دوڑے ہے گُل در قفائے گُل
    غالبؔ ! مجھے ہے اُس سے ہم آغوشی آرزو
    جس کا خیال، ہے گُلِ جیبِ قبائے گُل


    اپنا احوالِ دلِ زار، کہوں یا نہ کہوں؟
    ہے حیا مانعِ اظہار، کہوں یا نہ کہوں؟
    نہیں کرنے کا، میں،تقریر ادب سے باہر
    میں بھی ہوں محرمِ اسرار ، کہوں یا نہ کہوں؟
    شکر سمجھو اسے ، یا کوئی شکایت سمجھو
    اپنی ہستی سے ہوں بیزار، کہوں یا نہ کہوں؟
    اپنے دل ہی سے، میں، احوال گرفتاری دل
    جب نہ پاؤں کوئی غم خوار، کہوں یا نہ کہوں؟
    دل کے ہاتھوں سے، کہ ہے دشمنِ جانی میرا
    ہوں اک آفت میں گرفتار،کہوں یا نہ کہوں؟
    میں تو دیوانہ ہوں ، اور ایک جہاں ہے غماز
    گوش ہیں در پسِ دیوار، کہوں یا نہ کہوں؟
    آپ سے وہ مرا احوال نہ پوچھے، تو ، اسدؔ
    حسبِ حال اپنے پھر اشعار، کہوں یا نہ کہوں؟
    (یہ غزل دیوانِ نواب الہی بخش خان معروفؔ متوفی 1826 کے ایک مخمس میں ملتی ہے ۔ قیاس ہے کہ یہ1821 کے بعدہی کہی گئی ہوگی کیونکہ یہ نسخہ بھوپال (قدیم) بخطِ غالب(1816) اور نسخہ بھوپال(1821) دونوں میں شامل نہیں)
     
  11. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    مانع دشت نوردی کوئی تدبیر نہیں
    ایک چکّر ہے مرے پاؤں میں زنجیر نہیں
    شوق اس دشت میں دوڑائے ہے مجھ کو،کہ جہاں
    جادہ ،غیر از نگہِ دیدۂ تصویر، نہیں
    حسرتِ لذّتِ آزار رہی جاتی ہے
    جادۂ راہِ وفا ،جز دمِ شمشیر، نہیں
    رنجِ نو میدیِ جاوید گوارا رہیو !
    خوش ہوں، گر نالہ زبونی کشِ تاثیر ،نہیں
    سر کھجاتا ہے ، جہاں زخمِ سر اچھا ہو جائے
    لذّتِ سنگ، بہ اندازۂ تقریر ،نہیں
    آئنہ دام کو سبزے میں چھپاتا ہے عبث
    کہ پری زادِ نظر ،قابلِ تسخیر، نہیں
    مثلِ گل، زخم ہے میرا بھی سناں سے توام
    تیرا ترکش ہی کچھ آبستنیِ تیر، نہیں
    جب کرم رخصتِ بیباکی و گستاخی دے
    کوئی تقصیر ،بجُز خجلتِ تقصیر، نہیں
    میرؔ کے شعر کا احوال کہوں کیا، غالبؔ
    جس کا دیوان کم از گلشنِ کشمیر نہیں
    غالبؔ، اپنا یہ عقیدہ ہے بقولِ ناسخ ؔ
    "آپ بے بہرہ ہے ،جو معتقدِ میر، نہیں"



    دیکھنا قسمت کہ آپ اپنے پہ رشک آ جائے ہے
    میں اسے دیکھوں، بھلا کب مجھ سے دیکھا جائے ہے
    ہاتھ دھو دل سے یہی گرمی گر اندیشے میں ہے
    آبگینہ ،تندئِ صہبا سے پگھلا جائے ہے
    غیر کو ،یا رب ،وہ کیوں کر منعِ گستاخی کرے؟
    گر حیا بھی اس کو آتی ہے، تو شرما جائے ہے
    شوق کو یہ لت کہ ہر دم نالہ کھینچے جائیے
    دل کی وہ حالت ،کہ دم لینے سے گھبرا جائے ہے
    دور ،چشمِ بد تری بزمِ طرب سے! واہ ، واہ !
    نغمہ ہو جاتا ہے، واں گر نالہ میرا جائے ہے
    گرچہ ہے طرزِ تغافل ،پردہ دارِ رازِ عشق
    پر ہم ایسے کھوئے جاتے ہیں کہ وہ پا جائے ہے
    اس کی بزم آرائیاں سن کر، دلِ رنجور، یاں
    مثلِ نقشِ مدّعائےغیر، بیٹھا جائے ہے
    ہو کے عاشق، وہ پری رخ اور نازک بن گیا
    رنگ کھُلتا جائے ہے، جتنا کہ اڑتا جائے ہے
    نقش کو اس کے ،مصوّر پر بھی کیا کیا ناز ہیں !
    کھینچتا ہے، جس قدر، اتنا ہی کھنچتا جائے ہے
    سایہ میرا ،مجھ سے ،مثلِ دود بھاگے ہے، اسدؔ!
    پاس مجھ آتش بجاں کے کس سے ٹھہرا جائے ہے؟


    مسجد کے زیرِ سایہ ، خرابات چاہیے
    بَھوں پاس آنکھ، قبلۂ حاجات چاہیے
    وہ بات چاہتے ہو کہ جو بات چاہیے
    صاحب کے ہم نشیں کو کرامات چاہیے
    عاشق ہوئےہیں آپ بھی اک اور شخص پر
    آخر ،ستم کی کچھ تو مکافات چاہیے
    دے داد، اے فلک دلِ حسرت پرست کی
    ہاں، کچھ نہ کچھ تلافیِ ما فات چاہیے
    سیکھے ہیں ،مہ رخوں کے لیے ہم مصوری
    تقریب کچھ تو بہرِ ملاقات چاہیے
    مے سے غرض نشاط ہے ، کس روسیاہ کو؟
    اک گونہ بیخودی مجھے دن رات چاہیے
    قطعہ
    نشو و نما ہے اصل سے، غالبؔ، فروع کو
    خاموشی ہی سے نکلے ہے، جو بات چاہیے
    ہے رنگِ لالہ و گل و نسریں جدا جدا
    ہر رنگ میں بہار کا اثبات چاہیے
    سر، پائےخُم پہ چاہیے ہنگامِ بیخودی
    رو ،سوئےقبلہ وقتِ مناجات چاہیے
    یعنی ،بحسبِ گردشِ پیمانۂ صفات
    عارف ہمیشہ مستِ مے ئے ذات چاہیے




    گرمِ فریاد رکھا شکلِ نہالی نے مجھے
    تب اماں ہجر میں دی بردِ لیالی نے مجھے
    نسیہ و نقد دو عالم کی حقیقت معلوم
    لے لیا مجھ سے مری ہمتِ عالی نے مجھے
    کثرت آرائی وحدت، ہے پرستاریِ وہم
    کردیا کافر ان اصنامِ خیالی نے مجھے
    زندگی میں بھی رہا ذوق فنا کا مارا
    نشہ بخشا غضب اس ساغرِ خالی نے مجھے
    ہوسِ گل کا تصور میں بھی کھٹکا نہ رہا
    عجب آرام دیا بے پر و بالی نے مجھے
    بسکہ تھی فصلِ خزانِ چمنستانِ سخن
    رنگِ شہرت نہِ دیاتازہ خیالی نے مجھے
    جلوۂ خور سے ،فنا ہوتی ہے شبنم ،غالبؔ
    کھو دیا سطوتِ اسمائےجلالی نے مجھے




    کبھی نیکی بھی اُس کے جی میں ، گر آ جائے ہے ، مُجھ سے
    جفائیں کر کے اپنی یاد ، شرما جائے ہے ، مُجھ سے
    خُدایا ! جذبۂ دل کی مگر تاثیر اُلٹی ہے ؟
    کہ جتنا کھینچتا ہوں ، اور کھِنچتا جائے ہے مُجھ سے
    وہ بَد خُو ، اور میری داستانِ عشق طُولانی
    عبارت مُختصر ، قاصد بھی گھبرا جائے ہے ، مُجھ سے
    اُدھر وہ بدگمانی ہے ، اِدھر یہ ناتوانی ہے
    نہ پُوچھا جائے ہے اُس سے ، نہ بولا جائے ہے مجھ سے
    سنبھلنے دے مجھے، اے نا اُمیدی ، کیا قیامت ہے
    کہ دامانِ خیالِ یار ، چھُوٹا جائے ہے مُجھ سے
    تکلف بر طرف ، نظارگی میں بھی سہی ، لیکن
    وہ دیکھا جائے ، کب یہ ظُلم دیکھا جائے ہے ، مُجھ سے
    ہوئے ہیں پاؤں ہی پہلے، نبردِ عشق میں زخمی
    نہ بھاگا جائے ہے مجھ سے ، نہ ٹھہرا جائے ہے مجھ سے
    قیامت ہے کہ ہووے مُدعی کا ہمسفر، غالبؔ
    وہ کافر ، جو خُدا کو بھی نہ سونپا جائے ہے مُجھ سے



    وہ آ کے ، خواب میں ، تسکینِ اضطراب تو دے
    ولے مجھے تپشِ دل ، مجالِ خواب تو دے
    کرے ہے قتل ، لگاوٹ میں تیرا رو دینا
    تری طرح کوئی تیغِ نگہ کو آب تو دے
    دِکھا کے جنبشِ لب ہی ، تمام کر ہم کو
    نہ دے جو بوسہ ، تو منہ سے کہیں جواب تو دے
    پلا دے اوک سے ساقی ، جو ہم سے نفرت ہے
    پیالہ گر نہیں دیتا ، نہ دے ،شراب تو دے
    یہ کون کہوے ہے آباد کر ہمیں؟ لیکن
    کبھی زمانہ مرادِ دلِ خراب تو دے
    اسدؔ ! خوشی سے مرے ہاتھ پاؤں پھُول گئے
    کہا جو اُس نے ، ”ذرا میرے پاؤں داب تو دے“



    1826 ء


    عشق ،تاثیر سے نومید نہیں
    جاں سپاری ،شجرِ بید نہیں
    سلطنت دست بَدَست آئی ہے
    جامِ مے ، خاتمِ جمشید نہیں
    ہے تجلی تری ،سامانِ وجود
    ذرّہ ،بے پرتوِ خورشید نہیں
    رازِ معشوق نہ رسوا ہو جائے
    ورنہ مر جانے میں کچھ بھید نہیں
    گردشِ رنگِ طرب سے ڈر ہے
    غمِ محرومئ جاوید نہیں
    کہتے ہیں "جیتے ہیں اُمّید پہ لوگ"
    ہم کو جینے کی بھی امّید نہیں
    مے کشی کو نہ سمجھ بے حاصل
    بادہ، غالبؔ! عرقِ بید نہیں



    دیوانگی سے ،دوش پہ زنّار بھی نہیں
    یعنی ہمارےجیب میں اک تار بھی نہیں
    دل کو نیازِ حسرتِ دیدار کر چکے
    دیکھا تو ہم میں طاقتِ دیدار بھی نہیں
    ملنا ترا اگر نہیں آساں تو سہل ہے
    دشوار تو یہی ہے کہ دشوار بھی نہیں
    بے عشق عُمر کٹ نہیں سکتی ہے، اور یاں
    طاقت بہ قدرِ لذّتِ آزار بھی نہیں
    شوریدگی کے ہاتھ سے ہے ، سر، وبالِ دوش
    صحرا میں، اے خدا ،کوئی دیوار بھی نہیں
    گنجائشِ عداوتِ اغیار یک طرف
    یاں دل میں ،ضعف سے، ہوسِ یار بھی نہیں
    ڈر نالہ ہائے زار سے میرے، خُدا کو مان
    آخر، نوائے مرغِ گرفتار بھی نہیں
    دل میں ہے، یار کی صفِ مژگاں سے روکشی
    حالانکہ طاقتِ خلشِ خار بھی نہیں
    اس سادگی پہ کون نہ مر جائے ،اے خُدا؟
    لڑتے ہیں اور ہاتھ میں تلوار بھی نہیں
    دیکھا اسدؔ کو خلوت و جلوت میں بارہا
    دیوانہ گر نہیں ہے، تو ہشیار بھی نہیں



    مزے جہان کے، اپنی نظر میں خاک نہیں
    سوائے خونِ جگر، سو جگر میں خاک نہیں
    مگر غبار ہُوے پر ،ہَوا اُڑا لے جائے
    وگرنہ تاب و تواں، بال و پر میں خاک نہیں
    یہ کس بہشت شمائل کی آمد آمد ہے؟
    کہ غیرِ جلوۂ گُل ،رہ گزر میں خاک نہیں
    بھلا اُسے نہ سہی، کچھ مجھی کو رحم آتا
    اثر ،مرے نفسِ بے اثر میں خاک نہیں
    خیالِ جلوۂ گُل سے خراب ہیں میکش
    شراب خانے کے دیوار و در میں خاک نہیں
    ہُوا ہوں عشق کی غارت گری سے شرمندہ
    سوائے حسرتِ تعمیر،گھر میں خاک نہیں
    ہمارے شعر ہیں اب صرف دل لگی کے، اسدؔ
    کھُلا، کہ فائدہ عرضِ ہُنر میں خاک نہیں



    عجب نشاط سے جلاّد کے، چلے ہیں ہم، آگے
    کہ اپنے سائے سے سر، پاؤں سے ہے دو قدم آگے
    قضا نے تھا مجھے چاہا خرابِ بادۂ الفت
    فقط "خراب" لکھا، بس نہ چل سکا قلم آگے
    غمِ زمانہ نے جھاڑی نشاطِ عشق کی مستی
    وگرنہ ہم بھی اٹھاتے تھے لذّتِ الم آگے
    خدا کے واسطے! داد اس جنونِ شوق کی دینا
    کہ اس کے در پہ پہنچتے ہیں نامہ بر سے، ہم، آگے
    یہ ،عمر بھر، جو پریشانیاں اٹھائی ہیں ہم نے
    تمہارے آئیو ،اے طرّہ‌ ہائےخم بہ خم، آگے
    دل و جگر میں پَر افشاں جو ایک موجۂ خوں ہے
    ہم اپنے زعم میں سمجھے ہوئے تھے اس کو دم آگے
    قسم جنازے پہ آنے کی میرے کھاتے ہیں، غالبؔ
    ہمیشہ کھاتے تھے جو میری جان کی قسم آگے



    فریاد کی کوئی لَے نہیں ہے
    نالہ، پابندِ نَے نہیں ہے
    کیوں بوتے ہیں باغباں تونبے؟
    گر باغ گدائے مَے نہیں ہے
    ہر چند ہر ایک شے میں تُو ہے
    پَر تُجھ سی کوئی شے نہیں ہے
    ہاں ، کھائیو مت فریبِ ہستی!
    ہر چند کہیں کہ "ہے" ، نہیں ہے
    شادی سے گُذر کہ ، غم نہ ہووے
    اُردی جو نہ ہو ، تو دَے نہیں ہے
    انجامِ شمارِ غم نہ پوچھو
    یہ مصرفِ تابکے نہیں ہے
    کیوں ردِ قدح کرے ہے، زاہد !
    مَے ہے یہ مگس کی قَے نہیں ہے
    جس دل میں کہ "تابکے" سما جائے
    واں عزتِ تختِ کے نہیں ہے
    ہستی ہے ، نہ کچھ عَدم ہے ، غالبؔ
    آخر تُو کیا ہے ، ”اَے نہیں ہے“



    دیکھ کر در پردہ گرمِ دامن افشانی مجھے
    کر گئی وابستۂ تن ،میری عُریانی ،مجھے
    بن گیا تیغِ نگاہِ یار کا سنگِ فَساں
    مرحبا !مَیں، کیا مبارک ہے ،گراں جانی مجھے
    کیوں نہ ہو بے التفاتی ؟ اُس کی خاطر جمع ہے
    جانتا ہے محوِ پُرسش ہائے پنہانی مجھے
    میرے غم خانے کی قسمت جب رقم ہونے لگی
    لِکھ دیا منجملۂ اسبابِ ویرانی مجھے
    بدگماں ہوتا ہے وہ کافر ، نہ ہوتا ، کاشکے!
    اِس قدر ذوقِ نوائے مُرغِ بُستانی مجھے
    وائے ! واں بھی شورِ محشر نے نہ دَم لینے دیا
    لے گیا تھا گور میں ،ذوقِ تن آسانی مجھے
    وعدہ آنے کا وفا کیجے ، یہ کیا انداز ہے ؟
    تم نے کیوں سونپی ہے میرے گھر کی دربانی مجھے؟
    ہاں، نشاطِ آمدِ فصلِ بہاری ، واہ ،واہ !
    پھر ہُوا ہے تازہ ،سودائے غزل خوانی مجھے
    دی مرے بھائی کو حق نے از سرِ نَو زندگی
    میرزا یوسف ہے ، غالبؔ ، یوسفِ ثانی مجھے
    (اس غزل کے دو شعر(تیسرا اور چوتھا)نسخہ شیرانی(1826)میں موجود ہیں۔ اور جس غزل میں یہ دو شعر اضافہ کیے گئے ہیں۔ وہ اصلاً نسخہ بھوپال میں ہےاور اس کی جداگانہ حیثیت ہے۔ اس لیے اصول کے مطابق اس غزل کو نسخہ شیرانی میں ہی رکھا جائے گاتاہم مکمل غزل گلِ رعنامیں شامل ہے۔ آخری شعر سے معلوم ہوتا ہےکہ غالب نے متداول غزل کے باقی شعر اپنے بیمار بھائی یوسف کی صحت یابی کی خبر (اپریل 182ءسن کر کلکتے کے قیام کے دوران فکر کیے ہونگے۔ چونکہ گلِ رعنا کلام کا انتخاب ہےاس لیے تین شعر (مطلع ، مقطع اور پانچواں شعر)انتخاب نہیں کیے گئے)
     
  12. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بعد از 1826

    ستائش گر ہے زاہد ، اس قدر جس باغِ رضواں کا
    وہ اک گلدستہ ہے ہم بے خودوں کے طاقِ نسیاں کا
    بیاں کیا کیجئے بیدادِ کاوش ہائے مژگاں کا
    کہ ہر یک قطرۂ خوں دانہ ہے تسبیحِ مرجاں کا
    نہ آئی سطوتِ قاتل بھی مانع ، میرے نالوں کو
    لیا دانتوں میں جو تنکا ، ہوا ریشہ نَیَستاں کا
    دکھاؤں گا تماشہ ، دی اگر فرصت زمانے نے
    مِرا ہر داغِ دل ، اِک تخم ہے سروِ چراغاں کا
    کیا آئینہ خانے کا وہ نقشہ تیرے جلوے نے
    کرے جو ، پرتوِ خُورشید عالم شبنمستاں کا
    مری تعمیر میں مُضمر ہے اک صورت خرابی کی
    ہیولٰی برقِ خرمن کا ، ہے خونِ گرم دہقاں کا
    اُگا ہے گھر میں ہر سُو سبزہ ، ویرانی تماشہ کر
    مدار اب کھودنے پر گھاس کے ہے، میرے درباں کا
    خموشی میں نہاں ، خوں گشتہ، لاکھوں آرزوئیں ہیں
    چراغِ مُردہ ہوں ، میں بے زباں ، گورِ غریباں کا
    ہنوز اک پرتوِ نقشِ خیالِ یار باقی ہے
    دلِ افسردہ ، گویا، حجرہ ہے یوسف کے زنداں کا
    بغل میں غیر کی ، آج آپ سوتے ہیں کہیں ، ورنہ
    سبب کیا ، خواب میں آ کر، تبسم ہائے پنہاں کا؟
    نہیں معلوم ، کس کس کا لہو پانی ہوا ہوگا !
    قیامت ہے، سرشک آلودہ ہونا تیری مژگاں کا
    نظر میں ہے ہماری، جادۂ راہِ فنا، غالبؔ
    کہ یہ شیرازہ ہے عالَم کے اجزائے پریشاں کا





    ہوس کو ہے نشاطِ کار کیا کیا؟
    نہ ہو مرنا، تو جینے کا مزا کیا?
    تجاہل پیشگی سے مدعا کیا?
    کہاں تک اے سراپا ناز ، "کیا ، کیا؟"
    نوازش ہائے بے جا دیکھتا ہوں
    شکایت ہائے رنگیں کا گلا کیا؟
    نگاہِ بے محابا چاہتا ہوں
    تغافل ہائے تمکیں آزما کیا؟
    فروغِ شعلۂ خس، یک نفَس ہے
    ہوس کو پاسِ ناموسِ وفا کیا?
    نفس موجِ محیطِ بیخودی ہے
    تغافل ہائے ساقی کا گلا کیا؟
    دماغِ عطر پیراہن نہیں ہے
    غمِ آوارگی ہائے صبا کیا؟
    دلِ ہر قطرہ ہے سازِ "انا البحر"
    ہم اس کے ہیں، ہمارا پوچھنا کیا؟
    محابا کیا ہے؟ مَیں ضامن، اِدھر دیکھ
    شہیدانِ نگہ کا خوں بہا کیا؟
    سن ،اے غارت گرِ جنسِ وفا، سن
    شکستِ قیمتِ دل کی صدا کیا؟
    کیا کس نے جگر داری کا دعویٰ؟
    شکیبِ خاطرِ عاشق بھلا کیا؟
    یہ ،قاتل، وعدۂ صبر آزما کیوں؟
    یہ، کافر، فتنۂ طاقت ربا کیا؟
    بلائے جاں ہے، غالبؔ، اس کی ہر بات
    عبارت کیا، اشارت کیا، ادا کیا؟




    آبرو کیا خاک اُس گُل کی، کہ گلشن میں نہیں؟
    ہے گریبان ننگِ پیراہن، جو دامن میں نہیں
    ضعف سے اے گریہ، کچھ باقی مرے تن میں نہیں
    رنگ ہو کر اڑ گیا، جو خوں کہ دامن میں نہیں
    ہو گئے ہیں جمع، اجزائے نگاہِ آفتاب
    ذرّے، اُس کے گھر کی دیواروں کے روزن میں نہیں
    کیا کہوں تاریکئِ زندانِ غم، اندھیر ہے
    پنبہ ،نورِ صبح سے کم جس کے روزن میں‌ نہیں
    رونقِ ہستی ہے عشقِ خانہ ویراں ساز سے
    انجمن بے شمع ہے ،گر برق خرمن میں نہیں
    زخم سِلوانے سے مجھ پر چارہ جوئی کا ہے طعن
    غیر سمجھا ہے کہ لذّت زخمِ سوزن میں نہیں
    بس کہ ہیں، ہم اک بہارِ ناز کے مارے ہوئے
    جلوۂ گُل کے سِوا ،گرد اپنے مدفن میں نہیں
    قطرہ قطرہ اک ہیولیٰ ہے نئے ناسور کا
    خُوں بھی ،ذوقِ درد سے، فارغ مرے تن میں نہیں
    لے گئی ساقی کی نخوت ،قلزم آشامی مری
    موجِ مے کی، آج، رگ مینا کی گردن میں نہیں
    ہو فشارِ ضعف میں کیا نا توانی کی نمود؟
    قد کے جھکنے کی بھی گنجائش مرے تن میں نہیں
    تھی وطن میں شان کیا ،غالبؔ ،کہ ہو غربت میں قدر
    بے تکلّف، ہوں وہ مشتِ خس کہ گلخن میں نہیں




    ذکر میرا، بہ بدی بھی، اُسے منظور نہیں
    غیر کی بات بگڑ جائے ،تو کچھ دُور نہیں
    وعدۂ سیرِ گلستاں ہے، خوشا! طالعِ شوق
    مژدۂ قتل مقدّر ہے، جو مذکور نہیں
    شاہدِ ہستیِ مطلق کی کمر ہے، عالَم
    لوگ کہتے ہیں کہ ہے،پر ہمیں‌منظور نہیں
    قطرہ اپنا بھی حقیقت میں ہے دریا ،لیکن
    ہم کو تقلیدِ تُنک ظرفئ منصور نہیں
    حسرت! اے ذوقِ خرابی، کہ وہ طاقت نہ رہی
    عشقِ پُر عربَدہ کی گوں تنِ رنجور نہیں
    ظلم کر ظلم! اگر لطف دریغ آتا ہو
    تُو تغافل میں‌کسی رنگ سے معذور نہیں
    میں جو کہتا ہوں کہ ہم لیں گے قیامت میں تمھیں
    کس رعونت سے وہ کہتے ہیں کہ “ ہم حور نہیں“
    پیٹھ محراب کی قبلے کی طرف رہتی ہے
    محوِ نسبت ہیں، تکلف ہمیں منظور نہیں
    صاف دُردی کشِ پیمانۂ جم ہیں ہم لوگ
    وائے! وہ بادہ کہ افشردۂ انگور نہیں
    ہُوں ظہوری کے مقابل میں خفائی غالبؔ
    میرے دعوے پہ یہ حجّت ہے کہ مشہور نہیں




    نالہ جُز حسنِ طلب، اے ستم ایجاد نہیں
    ہے تقاضائے جفا، شکوۂ بیداد نہیں
    عشق و مزدوریِ عشرت گہِ خسرو، کیا خُوب!
    ہم کو تسلیم ،نکو نامئ فرہاد ،نہیں
    کم نہیں وہ بھی خرابی میں، پہ وسعت معلوم
    دشت میں ہے مجھے وہ عیش کہ گھر یاد نہیں
    اہلِ بینش کو ہے، طوفانِ حوادث ،مکتب
    لطمۂ موج، کم از سیلئِ استاد نہیں
    وائے ،محرومئ تسلیم ، و بدا! حالِ وفا
    جانتا ہے کہ ہمیں طاقتِ فریاد نہیں
    رنگِ تمکینِ گُل و لالہ پریشاں کیوں ہے؟
    گر چراغانِ سرِ راہ گُزرِ باد نہیں
    سَبَدِ گُل کے تلے بند کرے ہے گلچیں
    مژدہ ،اے مرغ، کہ گلزار میں صیّاد نہیں
    نفی سے کرتی ہے، اثبات، طراوش، گویا
    دی ہی جائے دہن، اس کو دمِ ایجاد ،نہیں
    کم نہیں جلوہ گری میں ترے کوچے سے ، بہشت
    یہی نقشہ ہے ، ولے اس قدر آباد نہیں
    کرتے کس منہ سے ہو غربت کی شکایت ،غالبؔ
    تم کو بے مہرئ یارانِ وطن یاد نہیں؟




    واں پہنچ کر، جو غش آتا پے ہم ہے ہم کو
    صد رہ آہنگِ زمیں بوسِ قدم ہے ہم کو
    دل کو میں اور مجھے دل محوِ وفا رکھتا ہے
    کس قدر ذوقِ گرفتاریِ ہم ہے ہم کو
    ضعف سے نقشِ پئے مور، ہے طوقِ گردن
    ترے کوچے سے کہاں طاقتِ رم ہے ہم کو
    جان کر کیجے تغافل، کہ کچھ امّید بھی ہو
    یہ نگاہِ غلط انداز تو سَم ہے ہم کو
    رشکِ ہم طرحی و دردِ اثرِ بانگِ حزیں
    نالۂ مرغِ سحر، تیغِ دو دم ہے ہم کو
    سر اڑانے کے جو وعدے کو مکرّر چاہا
    ہنس کے بولے کہ "ترے سر کی قسم ہے ہم کو"
    دل کے خوں کرنے کی کیا وجہ؟ ولیکن ناچار
    پاسِ بے رونقیِ دیدہ اہم ہے ہم کو
    تم وہ نازک کہ خموشی کو فغاں کہتے ہو
    ہم وہ عاجز کہ تغافل بھی ستم ہے ہم کو
    لکھنؤ آنے کا باعث نہیں کھلتا ،یعنی
    ہوسِ سیر و تماشا، سو وہ کم ہے ہم کو
    مقطعِ سلسلۂ شوق نہیں ہے، یہ شہر
    عزمِ سیرِ نجف و طوفِ حرم ہے ہم کو
    لیے جاتی ہے کہیں ایک توقّع غالبؔ
    جادۂ رہ ، کششِ کافِ کرم ہے ہم کو
    ابر روتا ہے ، کہ بزمِ طرب آمادہ کرو
    برق ہنستی ہے کہ فرصت کوئی دم ہے ہم کو
    طاقتِ رنجِ سفر بھی نہیں پاتے اتنی
    ہجرِ یارانِ وطن کابھی الم ہے ہم کو
    لائی ہے معتمد الدولہ بہادر کی امید
    جادۂ رہ ، کششِ کافِ کرم ہے ہم کو



    ظلمت کدے میں میرے، شبِ غم کا جوش ہے
    اک شمع ہے دلیلِ سحر، سو خموش ہے
    نے مژدۂ وصال، نہ نظّارۂ جمال
    مدّت ہوئی کہ آشتیِ چشم و گوش ہے
    ہو کر شہید عشق میں، پائے ہزار جسم
    ہر موجِ گردِ رہ،مرے سر کو دووش ہے
    مے نے کِیا ہے حسنِ خود آرا کو بے حجاب
    اے شوق، ہاں، اجازتِ تسلیمِ ہوش ہے
    گوہر کو عقدِ گردنِ خوباں میں دیکھنا
    کیا اوج پر ستارۂ گوہر فروش ہے
    دیدار بادہ، حوصلہ ساقی، نگاہ مست
    بزمِ خیال ،مے کدۂ بے خروش ہے
    ق
    اے تازہ واردانِ بساطِ ہوائےدل!
    زنہار !اگر تمہیں ہوسِ نائے و نوش ہے
    دیکھو مجھے، جو دیدۂ عبرت نگاہ ہو
    میری سنو! جو گوشِ نصیحت نیوش ہے
    ساقی بہ جلوہ، دشمنِ ایمان و آگہی
    مطرب بہ نغمہ، رہزنِ تمکین و ہوش ہے
    یا شب کو دیکھتے تھے کہ ہر گوشۂ بساط
    دامانِ باغبان و کفِ گل فروش ہے
    یا صبح دم جو دیکھیے آ کر تو بزم میں
    نے وہ سرور و سوز، نہ جوش و خروش ہے
    داغِ فراقِ صحبتِ شب کی جلی ہوئی
    اک شمع رہ گئی ہے ،سو وہ بھی خموش ہے
    لطفِ خرامِ ساقی و ذوقِ صدائےچنگ
    یہ جنّتِ نگاہ ،وہ فردوسِ گوش ہے
    آتے ہیں غیب سے، یہ مضامیں خیال میں
    غالبؔ ،صریرِ خامہ، نوائےسروش ہے



    کب وہ سنتا ہے کہانی میری
    اور پھر وہ بھی زبانی میری
    خلشِ غمزۂ خوں ریز نہ پوچھ
    دیکھ خوننابہ فشانی میری
    کیا بیاں کر کے مرا روئیں گے یار؟
    مگر آشفتہ بیانی میری
    ہوں ز خود رفتۂ بیدائےخیال
    بھول جانا ہے نشانی میری
    متقابل ہے ، مقابل میرا
    رک گیا ،دیکھ روانی میری
    قدرِ سنگِ سرِ رہ رکھتا ہوں
    سخت ارزاں ہے ،گرانی میری
    گرد بادِ رہِ بیتابی ہوں
    صرصرِ شوق، ہے بانی میری
    دہن اس کا جو نہ معلوم ہوا
    کھل گئی ہیچمدانی میری
    کر دیا ضعف نے عاجز ،غالبؔ
    ننگِ پیری ہے ،جوانی میری




    سادگی پر اس کی، مر جانے کی حسرت دل میں ہے
    بس نہیں چلتا کہ پھر خنجر کفِ قاتل میں ہے
    دیکھنا تقریر کی لذّت، کہ جو اس نے کہا
    میں نے یہ جانا کہ گویا یہ بھی میرے دل میں ہے
    گرچہ ہے کس کس برائی سے، ولے با ایں ہمہ
    ذکر میرا مجھ سے بہتر ہے کہ اس محفل میں ہے
    بس ہجومِ نا امیدی، خاک میں مل جائے گی
    یہ جو اک لذّت ہماری سعیِ بے حاصل میں ہے
    رنجِ رہ کیوں کھینچیے؟ واماندگی کو عشق ہے !
    اٹھ نہیں سکتا ،ہمارا جو قدم منزل میں ہے
    جلوہ زارِ آتشِ دوزخ ،ہمارا دل سہی
    فتنۂ شورِ قیامت کس کی آب و گِل میں ہے؟
    ہے دلِ شوریدۂ غالبؔ طلسمِ پیچ و تاب
    رحم کر اپنی تمنّا پر کہ کس مشکل میں ہے
     
  13. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    1828/29 ء
    قطعہ
    دیکھنے میں ہیں گرچہ دو، پر ہیں یہ دونوں یار ایک
    وضع میں گو ہوئی دو سر، تیغ ہے ذوالفقار ایک
    ہم سخن اور ہم زباں، حضرتِ قاسم و طپاں
    ایک تپش کا جانشین، درد کا یادگار ایک
    نقدِ سخن کے واسطے، ایک عیارِ آگہی
    شعر کے فن کے واسطے، مایۂ اعتبار ایک
    ایک وفا و مہر میں، تازگئِ بساطِ دہر
    لطف و کرم کے باب میں، زینتِ روزگار ایک
    گُل کدۂ تلاش کو، ایک ہے رنگ، اک ہے بو
    ریختے کے قماش کو، پود ہے ایک، تار ایک
    مملکتِ کمال میں، ایک امیرِ نامور
    عرصۂ قیل و قال میں، خسروِ نامدار ایک
    گلشنِ اتّفاق میں، ایک بہارِ بے خزاں
    مے کدۂ وفاق میں، بادۂ بے خمار ایک
    زندۂ شوقِ شعر کو، ایک چراغِ انجمن
    کُشتۂ ذوقِ شعر کو، شمعِ سرِ مزار ایک
    دونوں کے دل حق آشنا، دونوں رسول ﷺ پر فِدا
    ایک مُحبِّ چار یار، عاشقِ ہشت و چار ایک
    جانِ وفا پرست کو، ایک شمیمِ نو بہار
    فرقِ ستیزہ مست کو، ابرِ تگرگِ بار ایک
    لایا ہے کہہ کے یہ غزل، شائبۂ رِیا سے دور
    کر کے دل و زبان کو، غالبِؔ خاکسار، ایک



    قطعہ
    ہے جو صاحب کے کفِ دست پہ یہ چکنی ڈلی
    زیب دیتا ہے، اُسے جس قدر اچھّا کہیے
    خامہ، انگشت بدنداں، کہ اسے کیا لکھیے
    ناطقہ سر بہ گریباں کہ اسے کیا کہیے
    مُہرِ مکتوبِ عزیزانِ گرامی لکھیے
    حرزِ بازوئےشگرفانِ خود آرا کہیے
    مِسی آلود ہ سر انگشتِ حسیناں لکھیے
    داغِ طرفِ جگرِ عاشقِ شیدا ،کہیے
    خاتمِ دستِ سلیماں کے مشابہ لکھیے
    سرِ پستانِ پریزاد سے مانا کہیے
    اخترِ سوختۂ قیس سے نسبت دیجے
    خالِ مشکینِ رُخِ دل کشِ لیلیٰ کہیے
    حجر الاسود ِ دیوارِ حرم کیجے فرض
    نافہ ، آہوئے بیابانِ خُتن کا کہیے
    وضع میں اس کو اگر سمجھیے قافِ تریاق
    رنگ میں، سبزۂ نو خیزِ مسیحا کہیے
    صَومعے میں، اسے ٹھہرائیے گر مُہرِ نماز
    مے کدے میں اسے خشتِ خُمِ صہبا کہیے
    کیوں اسے قُفلِ درِ گنجِ محبّت لکھیے؟
    کیوں اسے نقطۂ پَرکارِ تمنّا کہیے؟
    کیوں اسے گوہرِ نایاب تصوّر کیجے؟
    کیوں اسے مردُمکِ دیدۂ عَنقا کہیے؟
    کیوں اسے تکمۂ پیراہنِ لیلا لکھیے؟
    کیوں اسے نقشِ پئےناقۂ سلما کہیے؟
    بندہ پرور کے کفِ دست کو دل کیجے فرض
    اور اِس چِکنی سُپاری کو سُویدا کہیے!
     
  14. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    1833 ء


    قطعہ
    کلکتے کا جو ذکر کیا تُو نے ہم نشیں
    اِ ک تِیر میرے سینے میں مارا کہ ہائے !ہائے!
    وہ سبزہ زار ہائےمُطرّا کہ ، ہے غضب !
    وُہ نازنیں بُتانِ خود آرا کہ ہائے !ہائے!
    صبر آزما وہ اُن کی نگاہیں کہ حف نظر !
    طاقت رُبا وہ اُن کا اشارا کہ ہائے !ہائے!
    وہ میوہ ہائےتازۂ شیریں کہ ، واہ !واہ!
    وہ بادہ ہائےنابِ گوارا کہ ہائے !ہائے!


    غزلیات

    مند گئیں ،کھولتے ہی کھولتے، آنکھیں غالبؔ
    یار لائےمری بالیں پہ اسے، پر کس وقت!


    لو ،ہم مریضِ عشق کے بیمار دار ہیں
    اچھاّ اگر نہ ہو، تو مسیحا کا کیا علاج


    کیوں جل گیا نہ، تابِ رخِ یار دیکھ کر؟
    جلتا ہوں، اپنی طاقتِ دیدار دیکھ کر
    آتش پرست کہتے ہیں اہلَ جہاں مجھے
    سرگرمِ نالہ ہائےشرربار دیکھ کر
    کیا آبروئےعشق، جہاں عام ہو جفا؟
    رکتا ہوں، تم کو بے سبب آزار دیکھ کر
    آتا ہے میرے قتل کو، پَر جوشِ رشک سے
    مرتا ہوں، اس کے ہاتھ میں تلوار دیکھ کر
    ثابت ہوا ہے گردنِ مینا پہ خونِ خلق
    لرزے ہے موجِ مے، تری رفتار دیکھ کر
    وا حسرتا! کہ یار نے کھینچا ستم سے ہاتھ
    ہم کو حریصِ لذّتِ آزار دیکھ کر
    بِک جاتے ہیں ہم آپ، متاعِ سخن کے ساتھ
    لیکن عیارِ طبعِ خریدار دیکھ کر
    زُنّار باندھ، سبحۂ صد دانہ توڑ ڈال
    رہرو چلے ہے، راہ کو ہموار دیکھ کر
    ان آبلوں سے پاؤں کے گھبرا گیا تھا میں
    جی خوش ہوا ہے، راہ کو پُر خار دیکھ کر
    کیا بد گماں ہے مجھ سے! کہ آئینے میں مرے
    طوطی کا عکس سمجھے ہے، زنگار دیکھ کر
    گرنی تھی ہم پہ برقِ تجلّی، نہ طور پر
    دیتے ہیں بادہ، ظرفِ قدح خواردیکھ کر
    سر پھوڑنا وہ ،غالبؔ شوریدہ حال کا
    یاد آگیا مجھے ،تری دیوار دیکھ کر



    مجھ کو دیارِ غیر میں مارا، وطن سے دور
    رکھ لی مرے خدا نے مری بیکسی کی شرم
    وہ حلقۂ ہائےزلف کمیں میں ہیں، اے خدا
    رکھ لیجو ،میرے دعویِ وارستگی کی شرم
     
  15. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    مہرباں ہو کے بلا لو مجھے، چاہو جس وقت
    میں گیا وقت نہیں ہوں‌کہ پھر آ بھی نہ سکوں
    ضعف میں طعنۂ اغیار کا شکوہ کیا ہے؟
    بات کچھ سَر تو نہیں ہے کہ اٹھا بھی نہ سکوں
    زہر ملتا ہی نہیں مجھ کو، ستمگر، ورنہ
    کیا قسم ہے ترے ملنے کی کہ کھا بھی نہ سکوں



    یہ ہم جو ہجر میں دیوار و در کو دیکھتے ہیں
    کبھی صبا کو، کبھی نامہ بر کو دیکھتے ہیں
    وہ آئے گھر میں ہمارے، خدا کی قدرت ہے
    کبھی ہم ان کو، کبھی اپنے گھر کو دیکھتے ہیں
    نظر لگے نہ کہیں اُس کے دست و بازو کو
    یہ لوگ کیوں مرے زخمِ جگر کو دیکھتے ہیں
    ترے جواہرِ طرفِ کُلہ کو کیا دیکھیں ؟
    ہم اوجِ طالعِ لعل و گہر کو دیکھتے ہیں



    واں اس کو ہولِ دل ہے تو یاں میں ہوں شرمسار
    یعنی یہ میری آہ کی تاثیر سے نہ ہو
    اپنے کو دیکھتا نہیں، ذوقِ ستم کو دیکھ
    آئینہ تاکہ دیدۂ نخچیر سے نہ ہو



    رہیے اب ایسی جگہ چل کر جہاں کوئی نہ ہو
    ہم سخن کوئی نہ ہو، اور ہم زباں کوئی نہ ہو
    بے در و دیوار سا اک گھر بنایا چاہیے
    کوئی ہم سایہ نہ ہو، اور پاسباں کوئی نہ ہو
    پڑیے گر بیمار ،تو کوئی نہ ہو تیمارر دار
    اور اگر مر جائیے، تو نوحہ خواں کوئی نہ ہو



    گھر میں تھا کیا کہ ترا غم اسے غارت کرتا
    وہ جو رکھتے تھے ہم اک حسرتِ تعمیر، سو ہے



    پینس میں گزرتے ہیں جو کوچے سے، وہ ،میرے
    کندھا بھی کہاروں کو بدلنے نہیں دیتے



    دل سے تری نگاہ ،جگر تک اتر گئی
    دونوں کو اک ادا میں رضامند کر گئی
    شق ہو گیا ہے سینہ، خوشا! لذّتِ فراغ
    تکلیفِ پردہ داریِ زخمِ جگر گئی
    وہ بادۂ شبانہ کی سر مستیاں کہاں؟
    اٹھیے بس اب کہ لذّتِ خوابِ سحر گئی
    اڑتی پھرے ہے، خاک مری کوئےیار میں
    بارے اب، اے ہوا، ہوسِ بال و پر گئی
    دیکھو تو دل فریبیِ اندازِ نقشِ پا
    موجِ خرامِ یار بھی کیا گل کتر گئی
    ہر بو‌الہوس نے حسن پرستی شعار کی
    اب آبروئےشیوہ اہلِ نظر گئی
    نظّارے نے بھی کام کِیا واں نقاب کا
    مستی سے ہر نگہ ترے رخ پر بکھر گئی
    فردا و دی کا تفرِقہ یک بار مٹ گیا
    کل تم گئے کہ ہم پہ قیامت گزر گئی
    مارا زمانے نے، اسدؔ اللہ خاں ،تمہیں
    وہ ولولے کہاں، وہ جوانی کدھر گئی؟
     
  16. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    جس بزم میں تو ناز سے گفتار میں آوے
    جاں ،کالبدِ صورتِ دیوار میں آوے
    سائے کی طرح ساتھ پھریں، سرو و صنوبر
    تو اس قدِ دلکش سے جو گلزار میں آوے
    تب نازِ گراں مایگیِ اشک بجا ہے
    جب لختِ جگر دیدۂ خونبار میں آوے
    دے مجھ کو شکایت کی اجازت ،کہ ستمگر!
    کچھ تجھ کو مزہ بھی مرے آزار میں آوے
    اس چشمِ فسوں گر کا، اگر پائے، اشارہ
    طوطی کی طرح آئینہ گفتار میں آوے
    کانٹوں کی زباں سوکھ گئی پیاس سے، یا رب
    اک آبلہ پا وادیِ پر خار میں آوے
    مر جاؤں نہ کیوں رشک سے؟ جب وہ تنِ نازک
    آغوشِ خمِ حلقۂ زُنّار میں آوے
    غارت گرِ ناموس نہ ہو ،گر ہوسِ زر
    کیوں شاہدِ گل باغ سے بازار میں آوے
    تب چاکِ گریباں کا مزا ہے، دلِ نالاں!
    جب اک نفس الجھا ہوا ہر تار میں آوے
    آتش کدہ ہے سینہ مرا، رازِ نہاں سے
    اے وائے! اگر معرضِ اظہار میں آوے
    گنجینۂ معنی کا طلسم اس کو سمجھیے
    جو لفظ کہ، غالبؔ ،مرے اشعار میں آوے

    رباعیات

    آتشبازی ہے جیسے شغلِ اطفال
    ہے سوزِ جگر کا بھی اسی طور کا حال
    تھا مُوجدِ عشق بھی قیامت کوئی
    لڑکوں کے لئے گیا ہے کیا کھیل نکال


    دل ،سخت نژند ہو گیا ہے ،گویا
    اُس سے گِلہ مند ہو گیا ہے، گویا
    پَر یار کے آگے بول سکتے ہی نہیں
    غالبؔ، منہ بند ہو گیا ہے ، گویا


    دکھ ،جی کے پسند ہو گیا ہے، غالبؔ
    دل، رُک رُک کر بند ہو گیا ہے، غالبؔ
    واللہ ،کہ شب کو نیند آتی ہی نہیں!
    سونا ،سَوگند ہو گیا ہے، غالبؔ
     
  17. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    1835 ء



    اور تو رکھنے کوہم دہر میں کیا رکھتے تھے
    فقط اک شعر میں اندازِ رسا رکھتے تھے
    اس کا یہ حال کہ کوئی نہ ادا سنج ملا
    آپ لکھتے تھے ہم اورآپ اٹھا رکھتے تھے
    زندگی اپنی جب اس شکل سے گزری ،غالبؔ
    ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے



    دھوتا ہوں جب میں ،پینے کو، اس سیم تن کے پاؤں
    رکھتا ہے ،ضد سے کھینچ کے، باہر لگن کے پاؤں
    دی سادگی سے جان ،پڑوں کوہکن کے پاؤں
    ہیہات !کیوں نہ ٹوٹ گئے پیر زن کے پاؤں
    بھاگے تھے ہم بہت، سو اسی کی سزا ہے یہ
    ہو کر اسیر، دابتے ہیں راہ زن کے پاؤں
    مرہم کی جستجو میں پھرا ہوں جو دور دور
    تن سے سوا فِگار ہیں ،اس خستہ تن کے پاؤں
    اللہ رے !ذوقِ دشت نوردی کہ بعدِ مرگ
    ہلتے ہیں خود بہ خود مرے، اندر کفن کے پاؤں
    ہے جوشِ گل بہار میں یاں تک کہ ہر طرف
    اڑتے ہوئے، الجھتے ہیں مرغِ چمن کے پاؤں
    بیچارہ کتنی دور سےآیا ہے ، شیخ جی
    کعبے میں،کیوں دبائیں نہ ہم برہمن کے پاؤں
    شب کو کسی کے خواب میں آیا نہ ہو کہیں؟
    دکھتے ہیں، آج، اس بتِ نازک بدن کے پاؤں
    غالبؔ ،مرے کلام میں کیوں کر مزا نہ ہو
    پیتا ہوں دھو کے خسروِ شیریں سخن کے پاؤں

    بعد از 1838 ء


    قطعہ
    گئےوہ دن کہ نا دانستہ غیروں کی وفا داری
    کیا کرتے تھے تم تقریر، ہم خاموش رہتے تھے
    بس اب بگڑے پہ کیا شرمندگی ! جانے دو ، مل جاؤ
    قَسم لو ہم سے، گر یہ بھی کہیں "کیوں ہم نہ کہتے تھے"


    غزلیات

    تا ہم کو شکایت کی بھی باقی نہ رہے، جا
    سن لیتے ہیں ،گو ذکر ہمارا نہیں کرتے
    غالبؔ، ترا احوال سنا دیں گے ہم ان کو
    وہ سن کے بلا لیں ،یہ اجارا نہیں کرتے



    ہم رشک کو اپنے بھی گوارا نہیں کرتے
    مرتے ہیں ، ولے ، اُن کی تمنا نہیں کرتے
    در پردہ اُنھیں غیر سے ہے ربطِ نہانی
    ظاہر کا یہ پردہ ہے کہ پردہ نہیں کرتے
    یہ باعثِ نومیدیِ اربابِ ہوس ہے
    غالبؔ کو بُرا کہتے ہو ، اچھا نہیں کرتے



    لاغر اتنا ہوں کہ گر تو بزم میں جا دے مجھے
    میرا ذمہ، دیکھ کر گر کوئی بتلا دے مجھے
    کیا تعجب ہے ،کہ اُس کو دیکھ کر آ جائے رحم؟
    وا ں تلک کوئی کسی حیلے سے پہنچا دے مجھے
    منہ نہ دکھلاوے، نہ دکھلا، پر بہ اندازِ عتاب
    کھول کر پردہ ،ذرا آنکھیں ہی دکھلا دے مجھے
    یاں تلک میری گرفتاری سے وہ خو ش ہے کہ مَیں
    زلف گر بن جاؤں ،تو شانے میں اُلجھا دے مجھے

    رباعیات

    بھیجی ہے جو مجھ کو شاہِ جَمِجاہ نے دال
    ہے لُطف و عنایتِ شہنشاہِ پہ دال
    یہ شاہ پسند دال ،بے بحث و جِدال
    ہے دولت و دین و دانش و داد کی دال

    1841 ء

    ہیں شہ میں صفاتِ ذوالجلالی باہم
    آثارِ جلالی و جمالی باہم
    ہوں شاد نہ کیوں ،سافل و عالی باہم
    ہے اب کے شبِ قدر و دِوالی باہم
     
  18. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    1845 ء

    غزل
    نویدِ امن ہے بیدادِ دوست ،جاں کے لئے
    رہی نہ ،طرزِ ستم کوئی آسماں کے لئے
    بلا سے، گر مژہِ یار تشنۂ خوں ہے
    رکھوں کچھ اپنی ہی مژگانِ خونفشاں کے لئے
    وہ زندہ ہم ہیں کہ ہیں روشناسِ خلق، اے خضر
    نہ تم کہ چور بنے عمرِ جاوداں کے لئے
    رہا بلا میں بھی، میں مبتلائے آفتِ رشک
    بلائے جاں ہے ،ادا ،تیری اک جہاں کے لئے
    فلک، نہ دور رکھ اُس سے مجھے، کہ میں ہی نہیں
    دراز دستئِ قاتل کے امتحاں کے لئے
    مثال یہ مری کوشش کی ہے کہ مرغِ اسیر
    کرے قفس میں فراہم خس آشیاں کے لئے
    گدا سمجھ کے وہ چپ تھا، مری جو شامت آئے
    اٹھا اور اٹھ کے قدم، میں نے پاسباں کے لئے
    بہ قدرِ شوق نہیں ظرفِ تنگنائے غزل
    کچھ اور چاہیے وسعت، مرے بیاں کے لئے
    دیا ہے خلق کو بھی، تا اسے نظر نہ لگے
    بنا ہے عیش تجمُّل حسین خاں کے لئے
    زباں پہ، بارِ خدایا، یہ کس کا نام آیا؟
    کہ میرے نطق نے بوسے مر ی زباں کے لئے
    نصیرِ دولت و دیں اور معینِ ملّت و ملک
    بنا ہے چرخِ بریں ،جس کے آستاں کے لئے
    زمانہ عہد میں اُس کے، ہے محوِ آرائش
    بنیں گے اور ستارے اب آسماں کے لئے
    ورق تمام ہوا، اور مدح باقی ہے
    سفینہ چاہیے ،اس بحرِ بیکراں کے لئے
    ادائے خاص سے، غالبؔ ہوا ہے نکتہ سرا
    صلائے عام ہے، یارانِ نکتہ داں کے لئے
    (غزل میں نواب تجمل حسین خاں فرخ آبادی سے متعلق مدحیہ اشعار ہیں۔ نواب صاحب کا انتقال 9 نومبر 1846 کو ہوا تھا۔ غزل نسخہ کراچی مکتوبہ 30 اگست 1845 میں نہیں ہےلہذا اسے 30 اگست 1845 تا 9 نومبر 1846 کی فکر کردہ تسلیم کرنا چاہیے۔ دیوانِ ذوقؔ مرتبہ آزادؔ میں درج ہےکہ یہ غزل نواب اصغر علی خاں نسیمؔ رام پوری مقیم دہلی کےطرحی مشاعرہ منعقدہ 1845 میں پڑھی گئی تھی۔ ذوق ؔ، مومنؔ، داغؔ وغیرہ بھی موجود تھے۔ گویا مشاعرہ 1845 ء میں بعد از 30 اگست منعقد ہوا تھا۔ ظاہر ہے غزل بھی اسی زمانے میں کہی گئی ہوگی)


    1847 ء


    قطعہ
    نہ پُوچھ اِس کی حقیقت ، حُضُورِ والا نے
    مجھے جو بھیجی ہے بیسن کی رَوغَنی روٹی
    نہ کھاتے گیہوں ، نکلتے نہ خُلد سے باہر
    جو کھاتے حضرتِ آدم یہ بیسَنی روٹی



    غزلیات


    جس دن سے کہ ہم غمزدہ زنجیر بپا ہیں
    کپڑوں میں جویں، بخیے کے ٹانکوں سے سوا ہیں



    کی وفا ہم سے ،تو غیر اس کو جفا کہتے ہیں
    ہوتی آئی ہے کہ اچھوں کو برا کہتے ہیں
    آج ہم اپنی پریشانیِ خاطر ان سے
    کہنے جاتے تو ہیں، پر دیکھئے ،کیا کہتے ہیں
    اگلے وقتوں کے ہیں یہ لوگ، انہیں کچھ نہ کہو
    جو مے و نغمہ کو اندوہ رُبا کہتے ہیں
    دل میں آ جائے ہے، ہوتی ہے جو فرصت غش سے
    اور پھر کون سے نالے کو رسا کہتے ہیں
    ہے پرے سرحدِ ادراک سے، اپنا مسجود
    قبلے کو، اہلِ نظر، قبلہ نما کہتے ہیں
    پائے افگار پہ، جب سے تجھے، رحم آیا ہے
    خارِ رہ کو ترے، ہم مہرِ گیا کہتے ہیں
    اک شرر دل میں ہے، اُس سے کوئی گھبرائے گا کیا؟
    آگ مطلوب ہے ہم کو ،جو ہَوا کہتے ہیں
    دیکھیے، لاتی ہے اُس شوخ کی نخوت کیا رنگ
    اُس کی ہر بات پہ ،ہم "نامِ خدا"کہتے ہیں
    وحشت و شیفتہ اب مرثیہ کہویں شاید
    "مر گیا غالبؔ آشفتہ نوا"کہتے ہیں



    ہم پر جفا سے ،ترکِ وفا کا گماں نہیں
    اِک چھیڑ ہے ،وگرنہ مراد امتحاں نہیں
    کس منہ سے شکر کیجئے اس لطف خاص کا؟
    پرسش ہے، اور پائے سخن درمیاں نہیں
    ہم کو ستم عزیز، ستم گر کو ہم عزیز
    نا مہرباں نہیں ہے، اگر مہرباں نہیں
    بوسہ نہیں، نہ دیجیے، دشنام ہی سہی
    آخر زباں تو رکھتے ہو تم، گر دہاں نہیں
    ہر چند جاں گدازئِ قہر و عتاب ہے
    ہر چند پشت گرمئِ تاب و تواں نہیں
    جاں ،مطربِ ترانہ" ہَل مِن مَزِید" ہے
    لب پر دہ سنجِ زمزمۂ" الاَماں" نہیں
    خنجر سے چیر سینہ، اگر دل نہ ہو دو نیم
    دل میں چھُری چبھو ،مژہ گر خونچکاں نہیں
    ہے ننگِ سینہ ،دل اگر آتش کدہ نہ ہو
    ہے عارِ دل ،نفس اگر آذر فشاں نہیں
    نقصاں نہیں، جنوں میں بلا سے ہو گھر خراب
    سو گز زمیں کے بدلے بیاباں گراں نہیں
    کہتے ہو “ کیا لکھا ہے تری سرنوشت میں؟“
    گویا جبیں پہ سجدۂ بت کا نشاں نہیں
    پاتا ہوں اس سے داد کچھ اپنے کلام کی
    رُوح القُدُس اگرچہ مرا ہم زباں نہیں
    جاں ہے بہائے بوسہ ،ولے کیوں کہے ابھی؟
    غالبؔ کو جانتا ہے کہ وہ نیم جاں‌نہیں


    ملتی ہے خُوئے یار سے، نار، التہاب میں
    کافر ہوں ،گر نہ ملتی ہو راحت عذاب میں
    کب سے ہُوں، کیا بتاؤں جہانِ خراب میں؟
    شب ہائے ہجر کو بھی رکھوں گر حساب میں
    تا پھر نہ، انتظار میں ،نیند آئے عمر بھر
    آنے کا عہد کر گئے، آئے جو خواب میں
    قاصد کے آتے آتے، خط اک اور لکھ رکھوں
    میں جانتا ہوں، جو وہ لکھیں گے جواب میں
    مجھ تک کب ان کی بزم میں آتا تھا دورِ جام؟
    ساقی نے کچھ ملا نہ دیا ہو شراب میں
    جو منکرِ وفا ہو ،فریب اس پہ کیا چلے؟
    کیوں بدگماں ہوں دوست سے دشمن کے باب میں
    میں مضطرب ہُوں، وصل میں، خوفِ رقیب سے؟
    ڈالا ہے تم کو وہم نے کس پیچ و تاب میں؟
    میں اور حظِّ وصل، خدا ساز بات ہے
    جاں نذر دینی بھول گیا اضطراب میں
    ہے تیوری چڑھی ہوئی اندر نقاب کے
    ہے اک شکن پڑی ہوئی طرفِ نقاب میں
    لاکھوں لگاؤ، ایک چُرانا نگاہ کا
    لاکھوں بناؤ، ایک بگڑنا عتاب میں
    وہ نالہ دل میں خس کے برابر جگہ نہ پائے!
    جس نالے سے شگاف پڑے آفتاب میں
    وہ سحر ،مدعا طلبی میں نہ کام آئے!
    جس سِحر سے سفینہ رواں ہو سراب میں
    غالبؔ چھُٹی شراب، پر اب بھی کبھی کبھی
    پیتا ہوں روزِ ابر و شبِ ماہتاب میں



    کل کے لئے، کر آج نہ خسّت شراب میں
    یہ سُوء ظن ہے ،ساقئ کوثر کے باب میں
    ہیں آج کیوں ذلیل ؟کہ کل تک نہ تھی پسند
    گستاخئ فرشتہ ،ہماری جناب میں
    جاں کیوں نکلنے لگتی ہے تن سے دمِ سماع؟
    گر وہ صدا سمائی ہے چنگ و رباب میں
    رَو میں‌ہے رخشِ عمر، کہاں، دیکھیے، تھمے
    نے ہاتھ باگ پر ہے، نہ پا ہے رکاب میں
    اتنا ہی مجھ کو اپنی حقیقت سے بُعد ہے
    جتنا کہ وہمِ غیر سے ہُوں پیچ و تاب میں
    اصلِ شہود و شاہد و مشہود ایک ہے
    حیراں ہوں پھر مشاہدہ ہے کس حساب میں
    ہے مشتمل نمُودِ صُوَر پر وجودِ بحر
    یاں کیا دھرا ہے قطرہ و موج و حباب میں
    شرم اک ادائے ناز ہے، اپنے ہی سے سہی
    ہیں کتنے بے حجاب کہ ہیں یُوں حجاب میں
    آرائشِ جمال سے فارغ نہیں ہنوز
    پیشِ نظر ہے آئنہ، دائم نقاب میں
    ہے غیبِ غیب، جس کو سمجھتے ہیں ہم شہود
    ہیں‌خواب میں ہنوز، جو جاگے ہیں خواب میں
    غالبؔ، ندیمِ دوست سے آتی ہے بوئے دوست
    مشغولِ حق ہوں، بندگی ِ بو تراب میں
     
  19. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بعد از 1847 ء


    قطعہ
    اے شہنشاہِ فلک منظرِ بے مثل و نظیر
    اے جہاندارِ کرم شیوۂ بے شبہ و عدیل
    پاؤں سے تیرے مَلے فرقِ ارادت، اَورنگ
    فرق سے تیرے کرے کسبِ سعادت، اِ کلیل
    تیرا اندازِ سُخن، شانۂ زُلفِ اِلہام
    تیری رفتارِ قلم ،جُنبشِ بالِ جبریل
    تجھ سے ، عالم پہ کھُلا رابطۂ قُربِ کلیم
    تُجھ سے، دنیا میں بِچھا مائدۂ بَذلِ خلیل
    بہ سُخَن، اَوجِ دہِ مرتبۂ معنی و لفظ
    بہ کرم، داغِ نہِ ناصیۂ قُلزُم و نِیل
    تا ، ترے وقت میں ہو عَیش و طرب کی توفیر
    تا ، ترے عہد میں ہو رنج و اَلَم کی تقلیل
    ماہ نے چھوڑ دیا ثَور سے جانا باہر
    زُہرہ نے ترک کیا حُوت سے کرنا تحویل
    تیری دانش ، مری اصلاحِ مَفاسدؔ کی رَہین
    تیری بخشش ، مِرے اِنجاحِ مقاصد کی کفیل
    تیرا اقبالِ تَرَحُّم ،مِرے جینے کی نَوِید
    تیرا اندازِ تَغافُل ،مِرے مرنے کی دلیل
    ق
    بختِ ناساز نے چاہا کہ نہ دے مُجھ کو اماں
    چرخِ کج باز نے چاہا کہ کرے مُجھ کو ذلیل
    پیچھے ڈالی ہے ،سرِ رشتۂ اوقات میں گانٹھ
    پہلے ٹھونکی ہے بُنِ ناخُنِ تدبیر میں کیل
    تَپِشِ دل نہیں بے رابطۂ خَوفِ عظیم
    کششِ دم نہیں بے ضابطۂ جَرِّ ثقیل
    دُرِ معنی سے مِرا صفحہ ، لقا کی ڈاڑھی
    غَمِ گیتی سے مِرا سینہ عمر کی زنبیل
    فکر میری ،گُہر اندوزِ اشاراتِ کثیر
    کِلک میری رقَم آموزِ عباراتِ قلیل
    میرے ابہام پہ ہوتی ہے تصدُق، توضیح
    میرے اجمال سے کرتی ہے تراوش ،تفصیل
    نیک ہوتی مِری حالت تو نہ دیتا تکلیف
    جمع ہوتی مِری خاطر، تو نہ کرتا تعجیل
    قبلۂ کون و مکاں ، خستہ نوازی میں یہ دیر؟
    کعبۂ امن و اماں ، عُقدہ کُشائی میں یہ ڈھیل؟



    میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں
    گر میں نے کی تھی توبہ، ساقی کو کیا ہوا تھا؟
    ہے ایک تیر جس میں دونوں چھِدے پڑے ہیں
    وہ دن گئے کہ اپنا دل سے جگر جدا تھا
    درماندگی میں غالبؔ کچھ بن پڑے تو جانوں
    جب رشتہ بے گرہ تھا، ناخن گرہ کشا تھا


    غزلیات


    میں اور بزمِ مے سے یوں تشنہ کام آؤں!
    گر میں نے کی تھی توبہ، ساقی کو کیا ہوا تھا؟
    ہے ایک تیر،جس میں دونوں چھدے پڑے ہیں
    وہ دن گئے کہ اپنا، دل سے، جگر جدا تھا
    در ماندگی میں، غالبؔ،کچھ بن پڑے ، تو جانوں
    جب رشتہ بے گرہ تھا،ناخن گرہ کشا تھا



    گھر ہمارا ،جو نہ روتے بھی تو ،ویراں ہوتا
    بحر گر بحر نہ ہوتا ،تو بیاباں ہوتا
    تنگیِ دل کا گلہ کیا؟ یہ وہ کافر دل ہے
    کہ اگر تنگ نہ ہوتا ،تو پریشاں ہوتا
    بعد یک عمرِ وَرع ،بار تو دیتا ،بارے
    کاش! رِضواں ہی درِ یار کا درباں ہوتا


    ہوئی تاخیر ،تو کچھ باعثِ تاخیر بھی تھا
    آپ آتے تھے، مگر کوئی عناں گیر بھی تھا
    تم سے بے جا ہے، مجھے اپنی تباہی کا گلہ
    اس میں کچھ شائبۂ خوبیِ تقدیر بھی تھا
    تو مجھے بھول گیا ہو، تو پتا بتلا دوں
    کبھی فتراک میں تیرے ،کوئی نخچیر بھی تھا؟
    قید میں ہے ،ترے وحشی کو، وہی زلف کی یاد
    ہاں! کچھ اک رنجِ گرانباریِ زنجیر بھی تھا
    بجلی اک کوند گئی آنکھوں کے آگے، تو کیا؟
    بات کرتے، کہ میں لب تشنۂ تقریر بھی تھا
    یوسف اس کو کہوں، اور کچھ نہ کہے، خیر ہوئی
    گر بگڑ بیٹھے، تو میں لائقِ تعزیر بھی تھا
    دیکھ کر غیر کو ،ہو کیوں نہ کلیجا ٹھنڈا؟
    نالہ کرتا تھا، ولے طالبِ تاثیر بھی تھا
    پیشے میں عیب نہیں، رکھیے نہ فرہاد کو نام
    ہم ہی آشفتہ سروں میں وہ جواں میر بھی تھا
    ہم تھے مرنے کو کھڑے، پاس نہ آیا، نہ سہی
    آخر، اُس شوخ کے ترکش میں کوئی تیر بھی تھا
    پکڑے جاتے ہیں فرشتوں کے لکھے پر ناحق
    آدمی کوئی ہمارا دمِ تحریر بھی تھا؟
    ریختے کے تمہیں استاد نہیں ہو، غالبؔ
    کہتے ہیں اگلے زمانے میں کوئی میر بھی تھا
     
  20. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصالِ یار ہوتا
    اگر اور جیتے رہتے ، یہی انتظار ہوتا
    ترے وعدے پر جئے ،ہم تو یہ جان، جھوٹ جانا
    کہ خوشی سے مر نہ جاتے، اگر اعتبار ہوتا
    تری نازکی سے جانا کہ بندھا تھا عہد بودا
    کبھی تو نہ توڑ سکتا ،اگر استوار ہوتا
    کوئی میرے دل سے پوچھے، ترے تیرِ نیم کش کو
    یہ خلش کہاں سے ہوتی، جو جگر کے پار ہوتا
    یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح؟
    کوئی چارہ ساز ہوتا، کوئی غم گسار ہوتا
    رگِ سنگ سے ٹپکتا وہ لہو کہ پھر نہ تھمتا
    جسے غم سمجھ رہے ہو، یہ اگر شرار ہوتا
    غم اگر چہ جاں گسل ہے، پہ کہاں بچیں ؟کہ دل ہے
    غمِ عشق گر نہ ہوتا، غم روزگار ہوتا
    کہوں کس سے میں کہ کیا ہے؟شب غم بری بلا ہے
    مجھے کیا برا تھا مرنا، اگر ایک بار ہوتا
    ہوئے مر کے ہم جو رسوا، ہوئے کیوں نہ غرق دریا؟
    نہ کبھی جنازہ اٹھتا، نہ کہیں مزار ہوتا
    اسے کون دیکھ سکتا، کہ یگانہ ہے وہ یکتا
    جو دوئی کی بو بھی ہوتی، تو کہیں دو چار ہوتا
    یہ مسائل تصّوف یہ ترا بیان، غالبؔ
    تجھے ہم ولی سمجھتے ،جو نہ بادہ خوار ہوتا


    نہ تھا کچھ تو خدا تھا، کچھ نہ ہوتا تو خدا ہوتا
    ڈُبویا مجھ کو ہونے نے، نہ ہوتا میں تو کیا ہوتا؟
    ہُوا جب غم سے یوں بے حِس تو غم کیا سر کے کٹنے کا؟
    نہ ہوتا گر جدا تن سے، تو زانو پر دھرا ہوتا
    ہوئی مدت کہ غالبؔ مرگیا، پر یاد آتا ہے
    وہ ہر اک بات پر کہنا کہ" یوں ہوتا تو کیا ہوتا"


    گھر جب بنا لیا ترے در پر ،کہے بغیر
    جانے گا اب بھی تو نہ مرا گھر ،کہے بغیر؟
    کہتے ہیں، جب رہی نہ مجھے طاقتِ سخن
    جانوں کسی کے دل کی میں کیونکر، کہے بغیر
    کام اس سے آ پڑا ہے کہ جس کا جہان میں
    لیوے نہ کوئی نام ستم گر کہے بغیر
    جی میں ہی کچھ نہیں ہے ہمارے، وگرنہ ہم
    سر جائےیا رہے، نہ رہیں پر کہے بغیر
    چھوڑوں گا میں نہ اس بتِ کافر کا پوجنا
    چھوڑے نہ خلق، گو، مجھے کافَر کہے بغیر
    مقصد ہے ناز و غمزہ، ولے گفتگو میں کام
    چلتا نہیں ہے، دُشنہ و خنجر کہے بغیر
    ہر چند ہو مشاہدۂ حق کی گفتگو
    بنتی نہیں ہے بادہ و ساغر کہے بغیر
    بہرا ہوں میں، تو چاہیےدونا ہوالتفات
    سنتا نہیں ہوں بات ،مکرّر کہے بغیر
    غالبؔ نہ کر حضور میں تو بار بار عرض
    ظاہر ہے تیرا حال سب اُن پر ،کہے بغیر


    تم جانو، تم کو غیر سے جو رسم و راہ ہو
    مجھ کو بھی پوچھتے رہو ،تو کیا گناہ ہو
    بچتے نہیں مواخذۂ روزِ حشر سے
    قاتل اگر رقیب ہے ،تو تم گواہ ہو
    کیا وہ بھی بے گنہ کش و حق نا سپاس ہیں ؟
    مانا کہ تم بشر نہیں خورشید و ماہ ہو
    ابھرا ہوا نقاب میں ہے ان کے ،ایک تار
    مرتا ہوں میں کہ یہ نہ کسی کی نگاہ ہو
    جب مے کدہ چھٹا ،تو پھر اب کیا جگہ کی قید
    مسجد ہو، مدرسہ ہو، کوئی خانقاہ ہو
    سنتے ہیں جو بہشت کی تعریف، سب درست
    لیکن، خدا کرے، وہ ترا جلوہ گاہ ہو
    غالبؔ بھی گر نہ ہو تو کچھ ایسا ضرر نہیں
    دنیا ہو ،یا رب، اور مرا بادشاہ ہو



    تسکیں کو ہم نہ روئیں، جو ذوقِ نظر ملے
    حورانِ خلد میں تری صورت ،مگر، ملے
    اپنی گلی میں مجھ کو نہ کر دفن، بعدِ قتل
    میرے پتے سے خلق کو کیوں تیرا گھر ملے؟
    ساقی گری کی شرم کرو آج، ورنہ ہم
    ہر شب پیا ہی کرتے ہیں مے ،جس قدر ملے
    تجھ سے تو کچھ کلام نہیں، لیکن ،اے ندیم
    میرا سلام کہیو، اگر نامہ بر ملے
    تم کو بھی ہم دکھائیں کہ مجنوں نے کیا کِیا
    فرصت، کشاکشِ غمِ پنہاں سے گر، ملے
    لازم نہیں کہ خضر کی ہم پیروی کریں
    جانا* کہ اک بزرگ ہمیں ہم سفر ملے
    اے ساکنانِ کوچۂ دلدار، دیکھنا
    تم کو کہیں جو غالبِؔ آشفتہ سر ملے



    کوئی دن گر زندگانی اور ہے
    اپنے جی میں ہم نے ٹھانی اور ہے
    آتشِ دوزخ میں یہ گرمی کہاں؟
    سوزِ غم ہائےنہانی اور ہے
    بارہا دیکھی ہیں ان کی رنجشیں
    پر کچھ اب کے سر گرانی اور ہے
    دے کے خط، منہ دیکھتا ہے نامہ بر
    کچھ تو پیغامِ زبانی اور ہے
    قاطعِ اعمار ہیں، اکثر نجوم
    وہ بلائےآسمانی اور ہے
    ہو چکیں ، غالبؔ ،بلائیں سب تمام
    ایک مرگِ ناگہانی اور ہے
     

اس صفحے کی تشہیر