ٹائپنگ مکمل دیوانِ غالبؔ کامل (نسخہ رضاؔ) از کالی داس گپتا رضا

چھوٹاغالبؔ نے 'غالبیات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 1, 2012

  1. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    جنبشِ ہر برگ سے ہے گل کے لب کو اختلاج
    حَبِّ شبنم سے صبا ہر صبح کرتی ہے علاج
    شاخِ گل جنبش میں ہے گہوارہ آسا ہر نفس
    طفلِ شوخِ غنچۂ گل بسکہ ہے وحشی مزاج
    سیرِ ملکِ حسن کر، میخانہ ہا نذرِ خمار
    چشمِ مستِ یار سے ہے گردنِ مینا پہ باج
    گریہ ہائے ئےبیدلاں گنجِ شرر در آستیں
    قہرمانِ عشق میں حسرت سے لیتے ہیں خراج
    رنگریز جسم و جاں نے، از خمستانِ عدم
    خرقہ ءِہستی نکالا ہے برنگِ احتیاج
    ہے سوادِ چشمِ قربانی میں یک عالم مقیم
    حسرتِ فرصت جہاں دیتی ہےحیرت کو رواج
    اے اسد ؔ، ہے مستعدِ شانہ گیسو شدن
    پنجۂ مژگاں بخود بالیدنی رکھتا ہے آج




    بیدل ، نہ نازِ وحشتِ جیبِ دریدہ کھینچ
    جوں بوئےغنچہ، یک نفسِ آرمیدہ کھینچ
    یک مشتِ خوں ہے پرتوِ خور سے تمام دشت
    دردِ طلب بہ آبلۂ نادمیدہ کھینچ
    پیچیدگی، ہے حاملِ طومارِ انتظار
    پا ئےنظر بہ دامنِ شوقِ دویدہ کھینچ
    برقِ بہار سے ہوں میں پادر حنا ہنوز
    اے خارِ دشت ، دامنِ شوقِ رمیدہ کھینچ
    بیخود بہ لطفِ چشمکِ عبرت ہے، چشمِ صید
    یک داغِ حسرتِ نفسِ ناکشیدہ کھینچ
    بزمِ نظر ہیں بیضۂ طاؤس خلوتاں
    فرشِ طرب بہ گلشنِ نا آفریدہ کھینچ
    دریا بساطِ دعوتِ سیلاب ہے اسدؔ
    ساغر بہ بارگاہِ دماغِ رسیدہ کھینچ


    قطعِ سفرِ ہستی و آرامِ فنا ہیچ
    رفتار نہیں بیشتر از لغزشِ پا ہیچ
    حیرت ہمہ اسرار پہ مجبورِ خموشی
    ہستی نہیں جز بستنِ پیمانِ وفا ہیچ
    تمثال گداز آئنہ، ہے عبرتِ بینش
    نظارہ تحیر ، چمنسانِ بقا ہیچ
    گلزارِ دمیدن، شررستانِ رمیدن
    فرصت تپش و حوصلۂ نشو و نما ہیچ
    آہنگِ عدم نالہ بہ کہسار گرو ہے
    ہستی میں نہیں شوخیِ ایجادِ صدا ہیچ
    کس بات پہ مغرور ہے اے عجزِ تمنا؟
    سامانِ دعا وحشت و تاثیرِ دعا، ہیچ
    آہنگِ اسدؔ میں نہیں جز نغمۂ بیدلؔ
    عالم ہمہ افسانۂ ما دارد و ما ہیچ



    دعوئ عشقِ بتاں سے بہ گلستاں گل و صبح
    ہیں رقیبانہ بہم دست و گریباں گل و صبح
    ساقِ گلرنگ سے، اور آئنۂ زانو سے
    جامہ زیبوں کے سدا ہیں، تہِ داماں گل و صبح
    وصلِ آئینہ رخاں ہم نفسِ یک دیگر
    ہیں دعا ہائےسحرگاہ سے خواہاں گل وصبح
    آئنہ خانہ ہے صحنِ چمنستاں یکسر
    بسکہ ہیں بے خود و وارفتہ و حیراں گل و صبح
    زندگانی نہیں بیش از نفسِ چند اسدؔ
    غفلت آرامیِ یاراں پہ ہیں خنداں گل و صبح



    بس کہ وہ پا کوبیاں در پردۂ وحشت ہیں یاد
    ہے غلافِ دفچۂ خورشید، ہر یک گرد باد
    طرفہ موزونی ہے صرفِ جنگجوئی ئے ہائےیار
    ہے سرِ مصراعِ صافِ تیغ، خنجر، مستزاد
    ہاتھ آیا زخمِ تیغِ یار سا پہلو نشیں
    کیوں نہ ہو وے آج کے دن ، بیکسی کی روح شاد
    کیجے آہوئے ختن کو خضرِ صحرائے طلب
    مشک ہے سنبلستانِ زلف ہیں ، گردِ سواد
    ہم نے سو زخمِ جگر پر بھی زباں پیدا نہ کی
    گل ہوا ہے ایک زخمِ سینہ پر خواہانِ داد
    بس کہ ہیں در پردہ مصروفِ سیہ کاری تمام
    آستر ہے خرقۂ زہاد کا، صوفِ مداد
    تیغ درکف، کف بلب، آتا ہے قاتل اس طرف
    مژدہ باد، اے آرزوئے مرگِ غالب ؔ، مژدہ باد



    تو پست فطرت اور خیالِ بسا بلند
    اے طفلِ خود معاملہ، قد سے عصا، بلند
    ویرانےسے، جز آمد و رفتِ نفس نہیں
    ہے کوچہ ہائے نَے میں، غبار صدا، بلند
    رکھتا ہے انتظارِ تماشائےحسنِ دوست
    مژگانِ باز ماندہ سے، دستِ دعا، بلند
    موقوف کیجیے یہ تکلف نگاریاں
    ہوتا ہے، ورنہ ، شعلۂ رنگِ حنا، بلند
    قربانِ اوج ریزیِ چشمِ حیا پرست
    یک آسماں ہے، مرتبۂ پشتِ پا، بلند
    ہے دلبری، کمیں گر ایجادِ یک نگاہ
    کارِ بہانہ جوئی چشمِ حیا، بلند
    بالیدگی نیازِ قدِ جاں فزا ، اسدؔ
    در ہر نفس، بقدرِ نفس ہے ، قبا، بلند


    حسرتِ دست گہ و پائےتحمل تا چند؟
    رگِ گردن، خطِ پیمانۂ بے مُل تا چند؟
    ہے گلیمِ سیہِ بختِ پریشاں کاکل
    موئنہ بافتنِ ریشۂ سنبل تاچند؟
    کوکبِ بخت، بجز روزنِ پر دود نہیں
    عینکِ چشمِ جنوں، حلقۂ کاکل تا چند؟
    چشم بے خونِ دل ، و دل تہی از جوشِ نگاہ
    بزباں عرضِ فسونِ ہوسِ گُل تا چند؟
    بزم داغِ طرب و باغ کشادِ پرِ رنگ
    شمع و گل تاکے؟ و پروانہ و بلبل تا چند؟
    نالہ دامِ ہوس و دردِ اسیری معلوم
    شرحِ بر خود غلطی ہائے تحمل تا چند؟
    جوہرِ آئنہ فکرِ سخنِ ہوئےئے دماغ
    عرضِ حسرت، پسِ زانوئے تامل تا چند؟
    سادگی ہے عدمِ قدرتِ ایجادِ غنا
    نا کسی،آئنۂ نازِ توکل تاچند؟
    اسدِؔ خستہ، گرفتارِ دو عالم اوہام
    مشکل آساں کنِ یک خلق،ےغافل تا چند؟




    بہ کامِ دل کریں کس طرح گمرہاں فریاد؟
    ہوئی ہے، لغزشِ پا ، لکنتِ زباں فریاد!
    کمالِ بندگیِ گل ہے رہنِ آزادی
    ز دستِ مشتِ پر و خارِ آشیاں فریاد
    نواز شِ نفسِ آشنا کہاں ؟ ورنہ
    برنگِ نَے ہے نہاں در ہر استخواں فریاد
    تغافل، آئنہ دارِ خموشیِ دل ہے
    ہوئی ہے محو بہ تقریبِ امتحاں فریاد
    ہلاکِ بے خبری، نغمۂ وجود و عدم
    جہاں و اہلِ جہاں سے، جہاں جہاں فریاد
    جوابِ سنگدلی ہائے دشمناں، ہمت
    ز دست شیشۂ دلی ہائےدوستاں فریاد
    ہزار آفت و یک جانِ بے نوائے اسدؔ
    خدا کے واسطے ، اے شاہِ بے کساں !فریاد



    شیشۂ آتشیں، رخِ پُر نور
    عرق از خط چکیدہ، روغنِ مور
    بس کہ ہوں بعدِ مرگ بھی نگراں
    مردمک سے ہے خال برلبِ گور
    بار لاتی ہے دانہ ہائے سرشک
    مژہ ہےریشۂ رزِ انگور
    ظلم کرنا گدائے عاشق پر
    نہیں شاہانِ حُسن کا دستور
    دوستو ، مجھ ستم رسیدہ سے
    دشمنی ہے، وصال کا مذکور
    زندگانی پہ اعتماد غلط
    ہے کہاں قیصرؔ اور کہاں فغفورؔ؟
    کیجے ، جوں اشک اور قطرہ زنی
    اے اسد ؔ، ہے ہنوز دلی دور




    بس کہ مائل ہے وہ رشکِ ماہتاب آئینے پر
    ہے نفس، تارِ شعاعِ آفتاب آئینے پر
    بازگشتِ جادہ پیمائےرہِ حیرت کہاں؟
    غافلاں غش جان کر ، چھڑکے ہیں آب آئینے پر
    بدگماں کرتی ہے عاشق کو خود آرائی تری
    بے دلوں کو ہے براتِ اضطراب آئینے پر
    نازِ خودبینی کے باعث مجرم صد بے گناہ
    جوہرِ شمشیر کو ہے پیچ و تاب آئینے پر
    ناتوانی نے نہ چھوڑابس کہ بیش از عکس ِ جسم
    مفت وا گستردنی ہے، فرشِ خواب آئینے پر
    مدعی میرے صفائےدل سے ہوتا ہے خجل
    ہے تماشا زشت رویوں کا عتاب آئینے پر
    سد اسکندر بنے بہرِ نگاہ گل رخاں
    گر کرے یوں امر، نہی بو تراب، آئینے پر
    دل کو توڑا جوشِ بیتابی سے، غالبؔ کیا کیا؟
    رکھ دیا پہلو بہ وقتِ اضطراب آئینے پر؟



    دنداں کا خیال، چشمِ تر، کر
    ہر دانہ ءِ اشک کو گہر کر
    آتی نہیں نیند، اے شبِ تار
    افسانہءِ زلفِ یار سر کر
    اے دل، بہ خیالِ عارض یار
    یہ شامِ غم آپ پر سحر کر
    ہر چند امیدِ دور تر ہو
    اے حوصلے! سعیِ بیشتر کر
    میں آپ سے جا چکا ہوں اب بھی
    اے بے خبری ، اسے خبر کر
    افسانہ، اسدؔ، بایں درازی
    اے غمزدہ! قصہ مختصر کر



    بینش بہ سعیِ ضبطِ جنوں، نو بہار تر
    دل ، درگدازِ نالہ، نگہ آبیار تر
    قاتل بہ عزمِ ناز و دل از زخم در گداز
    شمشیر آب دار و نگاہ آب دار تر
    ہے کسوتِ عروجِ تغافل، کمالِ حسن
    چشمِ سیہ بہ مرگِ نگہ ، سوگوار تر
    سعیِ خرام، کاوشِ ایجادِ جلوہ ہے
    جوشِ چکیدنِ عرق، آئینہ کار تر
    ہر گرد باد ، حلقۂ فتراکِ بے خودی
    مجنونِ دشتِ عشق، تحیر شکار تر
    اے چرخ !خاک برسرِ تعمیرِ کائنات
    لیکن بنائےعہدِ وفا استوار تر
    سمجھاہوا ہوں عشق میں نقصاں کو فائدہ
    جتنا کہ ناامید تر، امیدوار تر
    آئینہ داغِ حیرت و حیرت شکنجِ یاس
    سیماب بے قرار و اسد ؔبے قرار تر



    فسونِ یک دلی ہے لذتِ بیداد دشمن پر
    کہ وجدِ برق چوں پروانہ بال افشاں ہے خرمن پر
    تکلف خار خارِ التماسِ بے قراری ہے
    کہ رشتہ باندھتا ہے پیرہن انگشتِ سوزن پر
    یہ کیا وحشت ہے؟ اے دیوانے! پیش از مرگ واویلا
    رکھی بے جا بنائےخانۂ زنجیر شیون پر
    جنوں کی دست گیری کس سے ہو گر ہو نہ عریانی
    گریباں چاک کا حق ہو گیا ہے میری گردن پر
    برنگِ کاغذِ آتش زدہ، نیرنگِ بے تابی
    ہزار آئینہ دل باندھے ہے بالِ یک تپیدن پر
    فلک سے ہم کو عیشِ رفتہ کا کیا کیا تقاضا ہے
    متاعِ بردہ کو سمجھے ہوئےہیں قرض رہزن پر
    ہم اور وہ بے سبب رنج، آشنا دشمن کہ رکھتا ہے
    شعاعِ مہر سے، تہمت نگہ کی، چشمِ روزن پر
    فنا کو سونپ گر مشتاق ہے اپنی حقیقت کا
    فروغِ طالعِ خاشاک ہے موقوف گلخن پر
    اسدؔ بسمل ہے کس انداز کا؟ قاتل سے کہتاہے
    کہ" مشقِ ناز کر،خونِ دو عالم میری گردن پر"



    صفائےحیرتِ آئینہ، ہے سامانِ زنگ آخر
    تغیر آبِ برجا ماندہ کا، چلتاہے رنگ آخر
    نہ کی سامانِ عیش و جاہ نےتدبیر وحشت کی
    ہوا جام زمرد بھی مجھے، داغِ پلنگ آخر
    خطِ نوخیز نیلِ چشم زخمِ صافیِ عارض
    لیا آئینے نے حرزِ پرِ طوطی بچنگ آخر
    ہلال آسا تہی رہ، گر کشادن ہائےدل چاہے
    ہوا مہ کثرتِ سرمایہ اندوزی سے تنگ آخر
    تڑپ کر مرگیا وہ صیدِ بال افشاں کہ مضطر تھا
    ہوا ناسورِ چشمِ تعزیت، چشمِ خدنگ، آخر
    لکھی یاروں کی بدمستی نے میخانے کی پامالی
    ہوئی قطرہ فشانی ہائےمے بارانِ سنگ آخر
    اسدؔ پیری میں بھی آہنگِ شوقِ یار قائم ہے
    نہیں ہے نغمے سے خالی، خمیدن ہائےچنگ آخر



    دیا یاروں نے بے ہوشی میں درماں کا فریب آخر
    ہُوا سکتے سے میں آئینۂ دستِ طبیب آخر
    رگِ گل ، جادۂ تارِ نگہ سے حد موافق ہے
    ملیں گے منزلِ الفت میں ہم اور عندلیب آخر
    غرورِ ضبط ، وقتِ نزع ٹوٹا بے قراری سے
    نیاز پر افشانی ہوگیاصبر و شکیب آخر
    ستم کش مصلحت سے ہوں، کہ خوباں تجھ پہ عاشق ہیں
    تکلف برطرف، مل جائےگا تجھ سا رقیب، آخر
    اسدؔ کی طرح میری بھی بغیر از صبح رخساراں
    ہوئی شامِ جوانی، اے دلِ حسرت نصیب، آخر
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    حسنِ خود آرا کو ہے مشقِ تغافل ہنوز
    ہے کفِ مشاطہ میں آئنۂ گل ہنوز
    سادگیِ یک خیال، شوخیِ صد رنگ نقش
    حیرتِ آئینہ ہے جیبِ تامل ہنوز
    سادہ و پرکار تر، غافل و ہشیار تر
    مانگے ہے شمشاد سے شانۂ سنبل ہنوز
    ساقی و تعلیمِ رنج، محفل و تمکیں گراں
    سیلیِ استاد ہے ساغرِ بے مُل ہنوز
    شغلِ ہوس در نظر، لیک حیا بے خبر
    شاخِ گلِ نغمہ ہے، نالۂ بلبل ہنوز
    دل کی صدائےشکست، سازِ طرب ہے اسدؔ
    شیشۂ بے بادہ سے چاہے ہے قلقل ہنوز




    چاکِ گریباں کو ہے ربطِ تامل ہنوز
    غنچے میں دل تنگ ہے حوصلۂ گل ہنوز
    دل میں ہے سودائے، زلف مستِ تغافل ہنوز
    ہے مژۂ خواب ناک ریشۂ سنبل ہنوز
    پرورشِ نالہ ہے وحشتِ پرواز سے
    ہے تہِ بالِ پری بیضۂ بلبل ہنوز
    عشق کمیں گاہِ درد، وحشتِ دل دور گرد
    دامِ تہِ سبزہ ہے حلقۂ کاکل ہنوز
    لذتِ تقریرِ عشق، پردگیِ گوشِ دل
    جوہرِ افسانہ ہے عرضِ تحمل ہنوز
    آئنۂ امتحاں ، نذرِ تغافل، اسدؔ
    شش جہت اسباب ہے وہمِ توکل ہنوز



    بیگانۂ وفا ہے ہوائےچمن ہنوز
    وہ سبزہ سنگ پر نہ اُگا کوہ کن ہنوز
    فارغ مجھے نہ جان کہ مانند صبح و مہر
    ہے داغِ عشق ، زینت جیبِ کفن ہنوز
    ہے نازِ مفلساں زرِ از دست رفتہ پر
    ہوں گل فروشِ شوخیِ داغِ کہن ہنوز
    مے خانۂ جگر میں یہاں خاک بھی نہیں
    خمیازہ کھینچے ہے بت بےداد فن ہنوز
    یارب! یہ دردمند ہے کس کی نگاہ کا؟
    ہے ربطِ مشک و داغِ سوادِ ختن ہنوز
    جوں جادہ سر بکوئےتمنائےبیدلی
    زنجیرِ پا ہے رشتۂ حب الوطن ہنوز
    میں دور گردِ قربِ بساطِ نگاہ تھا
    بیرونِ دل نہ تھی تپشِ انجمن ہنوز
    تھا مجھ کو خار خارِ جنونِ وفا ، اسدؔ
    سوزن میں تھا، نہفتہ گلِ پیرہن ہنوز



    میں ہوں سرابِ یک تپش آموختن ہنوز
    زخمِ جگر ہے تشنۂ لب دوختن ہنوز
    اے شعلہ فرصتے کہ سویدائےدل سے ہوں
    کشتِ سپندِ صد جگر اندوختن ہنوز
    فانوسِ شمع ہے کفنِ کشتگانِ شوق
    در پردہ ہے معاملۂ سوختن ہنوز
    مجنوں ، فسونِ شعلہ خرامی فسانہ ہے
    ہے شمعِ جادہ داغِ نیفروختن ہنوز
    کُویک شرر؟ کہ سازِ چراغاں کروں اسدؔ
    بزمِ طرب ہے پردگیِ سوختن ہنوز



    داغِ اطفال ہے دیوانہ بہ کہسار ہنوز
    خلوتِ سنگ میں ہے نالہ طلبگار ہنوز
    خانہ ہے سیل سے خُوکردۂ دیدار ہنوز
    دوربیں درزدہ ہے رخنۂ دیوار ہنوز
    آئی یک عمر سے معذورِ تماشا نرگس
    چشمِ شبنم میں نہ ٹوٹا مژۂ خار ہنوز
    کیوں ہوا تھا طرفِ آبلۂ پا، یا رب؟
    جادہ ہے واشدنِ پیچشِ طومار ہنوز
    وسعتِ سعیِ کرم دیکھ کہ سر تا سرِ خاک
    گزرے ہے آبلہ پا، ابرِ گہر بار ہنوز
    یک قلم کاغذِ آتش زدہ ہے صفحۂ دشت
    نقشِ پا میں ہے تبِ گرمیِ رفتار ہنوز
    ہوں خموشی چمنِ حسرتِ دیدار، اسدؔ
    مژہ ہے شانہ کشِ طرۂ گفتار ہنوز



    نہ بندھا تھا بہ عدم نقشِ دلِ مور ہنوز
    تب سے ہے یاں دہنِ یار کا مذکور ہنوز
    سبزہ ہے نوکِ زبانِ دہنِ گور ہنوز
    حسرتِ عرضِ تمنا میں ہوں رنجور ہنوز
    صد تجلی کدہ ہے صرفِ جبینِ غربت
    پیرہن میں ہے غبارِ شررِ طور ہنوز
    زخمِ دل میں ہے نہاں غنچۂ پیکانِ نگار
    جلوۂ باغ ہے درپردۂ ناسور ہنوز
    پا پُر از آبلہ راہِ طلبِ مے میں ہؤا
    ہاتھ آیا نہیں یک دانۂ انگور ہنوز
    گل کھلے، غنچے چٹکنے لگے اور صبح ہوئی
    سر خوش ِ خواب ہے، وہ نرگس مخمور ہنوز
    اے اسدؔ، تیرگی بختِ سیہ ظاہر ہے
    نظر آتی نہیں صبحِ شبِ دیجور ہنوز



    کُو بیابانِ تمنا و کجا جولانِ عجز؟
    آبلے پا کے ہیں یاں رفتار کو دندانِ عجز
    ہو قبولِ کم نگاہی ، تحفۂ اہلِ نیاز
    اے دل وائےجانِ ناز ، اے دین وائےایمانِ عجز
    بوسہءِ پاانتخابِ بدگمانی ہائے حسن
    یاں ہجومِ عجز سے تا سجدہ ہے جولانِ عجز
    حسن کو غنچوں سے ہے پوشیدہ چشمی ہائےناز
    عشق نے وا کی ہے ہر یک خار سے مژگانِ عجز
    اضطرابِ نارسائی، مایہِ شرمندگی
    ہے عرق ریزیِ خجلت جوششِ طوفانِ عجز
    وہ جہاں مسند نشینِ بارگاہِ ناز ہو
    قامتِ خوباں ، ہو محرابِ نیازستانِ عجز
    بس کہ بے پایاں ہے صحرائےمحبت، اے اسدؔؔ
    گردباد اس راہ کا، ہے عقدۂ پیمانِ عجز



    حاصلِ دل بستگی ہے عمرِ کوتہ اور بس
    وقفِ عرضِ عقدہ ہائےمتصّل تارِ نفس
    کیوں نہ طوطیِ طبیعت نغمہ پیرائی کرے
    باندھتا ہے رنگِ گل آئینہ تا چاکِ قفس
    اےا دافہماں،صدا ہے تنگیِ فرصت سے خوں
    ہے بہ صحرائےتحیر چشمِ قربانی، جرس
    تیز تر ہوتا ہے خشمِ تند خویاں عجز سے
    ہے رگِ سنگِ فسانِ تیغِ شعلہ، خار و خس
    سختیِ راہِ محبت ، منعِ دخلِ غیر ہے
    پیچ و تابِ جادہ ہے یاں جوہرِ تیغِ عسس
    اے اسد ؔ،ہم خود اسیرِ رنگ و بوئےباغ ہیں
    ظاہرا ، صیادِ ناداں ہے گرفتارِ ہوس



    دشتِ الفت میں ہے خاکِ کشتگاں محبوس و بس
    پیچ و تابِ جادہ ہے، خطِ کفِ افسوس و بس
    نیم رنگی ہائےشمع محفلِ خوباں سے ہے
    پیچکِ مہ، صرفِ چاکِ پردۂ فانوس و بس
    ہے تصور میں نہاں سرمایۂ صد گلستاں
    کاسۂ زانو ہے مجھ کو بیضۂ طاؤس و بس
    کفر ہے غیر از وفورِشوق رہبر ڈھونڈھتا
    راہِ صحرائےحرم میں ہے، جرس، ناقوس و بس
    یک جہاں گل تختۂ مشق شگفتن ہے اسدؔ
    غنچۂ خاطر رہا افسردگی مانوس و بس




    کرتا ہے بہ یادِ بتِ رنگیں دلِ مایوس
    رنگِ ز نظر رفتہ حنائےکفِ افسوس
    تھا خواب میں کیا جلوہ پرستارِ زلیخا؟
    ہے بالشِ دل سوختگاں میں پرِ طاؤس
    حیرت سے ترے جلوے کی از بس کہ، ہیں بیکار
    خور، قطرۂ شبنم میں ہے جوں شمع بہ فانوس
    دریافتنِ صحبتِ اغیار غرض ہے
    اے نامہ رساں! نامہ رساں چاہیے جاسوس
    ہے مشق، اسدؔ، دستگہِ وصل کی منظور
    ہوں خاک نشیں از پئے ادراکِ قدم بوس




    ہوئی ہے بس کہ صرفِ مشقِ تمکینِ بہار آتش
    بہ اندازِ حنا ہے رونقِ دستِ چنار آتش
    شرر ہے رنگ بعد اظہارِتابِ جلوہ تمکیں
    کرے ہے سنگ پر، خرشید، آبِ روئے کار آتش
    گدازِ موم ہےافسونِ ربط پیکر آرائی
    نکالے کب، نہالِ شمع، بے تخم شرار آتش
    نہ لیوے گر خسِ جوہر، طراوت، سبزۂ خط سے
    لگاوے خانۂ آئینہ میں روئےنگار ، آتش
    فروغِ حسن سے ہوتی ہے حلِ مشکلِ عاشق
    نہ نکلے شمع کے پا سے، نکالے گر نہ خار، آتش
    خیالِ دود تھا ، سر جوشِ سودائےغلط فہمی
    اگر رکھتی نہ خاکستر نشینی کا غبار، آتش
    ہوائےپرفشانی، برقِ خرمن ہائےخاطر ہے
    بہ بالِ شعلۂ بیتاب ہے، پروانہ زار ، آتش
    نہیں برق و شرر، جز و حشت و ضبطِ تپیدن ہا
    بلا گردانِ بے پروا ، خرامی ہائےیار آتش
    دھوئیں سے آگ کے ، اک ابرِ دریا بار ہو پیدا
    اسدؔ، حیدر پرستوں سے اگر ہووے دو چار آتش



    بہ اقلیمِ سخن ہے جلوۂ گردِ سواد ، آتش
    کہ ہے دودِ چراغاں سے، ہیولائے مداد، آتش
    اگر مضمون خاکستر کرے دیباچہ آرائی
    نہ باندھے شعلۂ جوالہ غیر از گرد باد ، آتش
    کرے ہے لطفِ اندازِ برہنہ گوئیِ خوباں
    بہ تقریبِ نگارش ہائےسطر شعلہ باد آتش
    دیا داغِ جگر کو آہ نے ساماں شگفتن کا
    نہ ہو بالیدہ ، غیر از جنبشِ دامانِ باد، آتش
    اسدؔ، قدرت سے حیدر کی، ہوئی ہر گبر و ترساکو
    شرارِ سنگِ بت ، بہرِ بنائےاعتقاد، آتش



    جادۂ رہ خور کو وقتِ شام ہے، تارِ شعاع
    چرخ وا کرتا ہے، ماہِ نو سے آغوشِ وداع
    شمع سے ہے ، بزم انگشتِ تحیر در دہن
    شعلۂ آوازِ خوباں پر بہنگامِ سماع
    جوں پرِ طاؤس، جوہر ، تختہ مشقِ رنگ ہے
    بس کہ ہے وہ قبلۂ آئینہ محوِ اختراع
    رنجشِ حیرت سرشتاں ، سینہ صافی پیشکش
    جوہرِ آئینہ ہے یاں، گردِ میدانِ نزاع
    چار سوئےدہر میں بازارِ غفلت گرم ہے
    عقل کے نقصان سے اُٹھتا ہے خیال انتفاع
    آشنا ، غالبؔ، نہیں ہیں دردِ دل کے آشنا
    ورنہ کس کو میرے افسانے کی تابِ استماع؟



    رخِ نگار سے ہے سوزِ جاودانیِ شمع
    ہوئی ہے آتشِ گل، آبِ زندگانیِ شمع
    زبانِ اہلِ زباں میں ہے مرگ خاموشی
    یہ بات بزم میں روشن ہوئی زبانیِ شمع
    کرے ہے صرف بایمائےشعلہ قصہ تمام
    بہ طرزِ اہلِ فنا ہے فسانہ خوانیِ شمع
    غم اِس کو حسرتِ پروانہ کا ہے اے شعلے
    ترے لرزنے سے ظاہر ہے ناتوانی ِشمع
    ترے خیال سے روح اہتزاز کرتی ہے
    بجلوہ ریزئیِ باد و بپرفشانی ِشمع
    نشاطِ داغِ غمِ عشق کی بہار نہ پوچھ
    شگفتگی ، ہے شہیدِ گلِ خزانی ِشمع
    جلے ہے دیکھ کے بالینِ یار پر مجھ کو
    نہ کیوں ہودل پہ مرےداغِ بدگمانیِ شمع




    عشاق اشکِ چشم سے دھوویں ہزار داغ
    دیتا ہے اور، جوں گل و شبنم ، بہار داغ
    جوں چشمِ، باز ماندہ ہے ہر یک بسوئےدل
    رکھتا ہے داغِ تازہ کا یاں انتظار، داغ
    بے لالہ عارضاں مجھے گلگشتِ باغ میں
    دیتی ہے ، گرمیِ گل و بلبل، ہزار داغ
    جوں اعتماد نامہ و خط کا ہو مہر سے
    یوں عاشقوں میں ہے سببِ اعتبار، داغ
    ہوتے ہیں محو جلوۂ خور سے، ستارگاں
    دیکھ اُس کو دل سے مٹ گئے بے اختیار داغ
    وقتِ خیالِ جلوۂ حسنِ بتاں اسدؔ
    دکھلائےہے مجھے دو جہاں لالہ زار داغ




    بلبلوں کو دور سے کرتا ہے منعِ بارِ باغ
    ہے زبانِ پاسباں خارِ سرِ دیوارِ باغ
    کون آیا جو چمن بیتابِ استقبال ہے؟
    جنبشِ موجِ صبا، ہے شوخیِ رفتارِ باغ
    میں ہمہ حیرت، جنوں بیتابِ دورانِ خمار
    مردمِ چشمِ تماشا ، نقطۂ پرکارِ باغ
    آتشِ رنگِ رخِ ہر گل کو بخشے ہے فروغ
    ہے دمِ سردِ صبا سے ، گرمی ِبازارِ باغ
    کون گل سے ضعف و خاموشیِ بلبل کہہ سکے؟
    نے زبانِ غنچہ ، گویا نے زبانِ خارِ باغ
    جوشِ گل، کرتا ہے استقبالِ تحریرِ اسدؔ
    زیرِ مشقِ شعر ، ہے نقش از پئے احضارِ باغ
     
    • زبردست زبردست × 1
  3. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    نامہ بھی لکھتے ہو، تو بخطِ غبار، حیف!
    رکھتے ہو مجھ سے اتنی کدورت، ہزار حیف!
    بیش از نفس، بتاں کے کرم نے وفا نہ کی
    تھا محملِ نگاہ بدوشِ شرار، حیف!
    تھی میرے ہی جلانے کو، اے آہ شعلہ ریز
    گھر پر پڑا نہ غیر کے کوئی شرار، حیف!
    گل چہرہ ہے کسو خفقانی مزاج کا
    گھبرا رہی ہے بیمِ خزاں سے بہار، حیف!
    بیمِ رقیب سے نہیں کرتے وداعِ ہوش
    مجبور یاں تلک ہوئے، اے اختیار ، حیف!
    جلتا ہے دل کہ کیوں نہ ہم اک بار جل گئے
    اے ناتمامیِ نفسِ شعلہ بار ، حیف!
    ہیں میری مشتِ خاک سے اُس کو کدورتیں
    پائی جگہ بھی دل میں تو ہو کر غبار، حیف!
    بنتا، اسد ؔ، میں سرمۂ چشمِ رکابِ یار
    آیا نہ میری خاک پہ وہ شہسوار، حیف!




    عیسّیِ مہرباں ہے شفا ریز یک طرف
    درد آفریں ہے طبعِ الم خیز یک طرف
    سنجیدنی ہے ایک طرف رنجِ کوہ کن
    خوابِ گرانِ خسروِ پرویز یک طرف
    خرمن بباد دادۂ دعوے ہیں، ہو سو ہو
    ہم یک طرف ہیں برقِ شرربیز، یک طرف
    مفتِ دل و جگر خلشِ غمزہ ہائےناز
    کاوش فروشیِ مژۂ تیز یک طرف
    ہر موبدن پہ شہپر پرواز ہے مجھے
    بے تابیِ دلِ تپش انگیز یک طرف
    یک جانب، اے اسدؔ، شبِ فرقت کا بیم ہے
    دامِ ہوس ہے، زلفِ دلاویز، یک طرف




    گر تجھ کو ہے یقینِ اجابت، دعا نہ مانگ
    یعنی، بغیرِ یک دلِ بے مدعا نہ مانگ
    اے آرزو! شہیدِ وفا !خوں بہا نہ مانگ
    جز بہرِ دست و بازوئےقاتل، دعا نہ مانگ
    گستاخیِ وصال، ہے مشاطۂ نیاز
    یعنی دعا بجز خمِ زلفِ دوتا نہ مانگ
    برہم ہے، بزِم غنچہ، بیک جنبشِ نشاط
    کاشانہ بس کہ تنگ ہے، غافل ہوا نہ مانگ
    عیسیٰ !طلسمِ حسن تغافل ہے، زینہار
    جز پشتِ چشم ،نسخۂ عرضِ دوانہ مانگ
    میں دور گردِ عرضِ رسومِ نیاز ہوں
    دشمن سمجھ ،ولے نگہِ آشنا نہ مانگ
    نظارہ دیگر و دلِ خونیں نفس دگر
    آئینہ دیکھ ،جوہرِ برگ حنا نہ مانگ
    آتا ہے داغِ حسرتِ دل کا شمار یاد
    مجھ سے مرے گنہ کا حساب، اے خدانہ مانگ
    یک بختِ اوج، نذرِ سبک باری، اسدؔ
    سر پر، وبالِ سایۂ بالِ ہما نہ مانگ



    بدر، ہے آئینۂ طاقِ ہلال
    غافلاں،نقصان سے پیدا ہے کمال
    ہے بیادِ زلفِ مشکیں سال و ماہ
    روزِ روشن شامِ آں سوئےخیال
    بس کہ ہے اصلِ دمیدن ہا، غبار
    ہے نہالِ شکوہ،ریحانِ سفال
    صافیِ رخ سےتر ے، ہنگامِ شب
    عکسِ داغِ مہ ہوا عارض پہ خال
    نور سے تیرےہے اس کی روشنی
    ورنہ ہے خورشید یک دستِ سوال
    شورِ حشر اُس فتنہ قامت کے حضور
    سایہ آسا ہو گیا ہے پائمال
    ہو جو بلبل پیروِ فکرِ اسد
    غنچۂ منقارِ گُل ہو زیرِ بال




    ہوں بہ وحشت، انتظار آوارۂ دشتِ خیال
    اک سفیدی مارتی ہے دور سے ، چشمِ غزال
    ہے نفس پروردہ ،گلشن، کس ہوائےبام کا؟
    طوقِ قمری میں ہے، سروِ باغ ، ریحانِ سفال
    ہم غلط سمجھے تھے ، لیکن زخمِ دل پر رحم کر
    آخر اس پردے میں تو ہنستی تھی، اے صبحِ وصال
    بیکسی افسردہ ہوں، اے ناتوانی، کیا کروں؟
    جلوۂ خرشید سے ہے گرم، پہلوئےہلال
    شکوہ درد و درد داغ، اے بے وفا، معذور رکھ
    خوں بہائےیک جہاں اُمید ہے، تیرا خیال
    عرضِ دردِ بے وفائی، وحشتِ اندیشہ ہے
    خوں ہوا دل تا جگر، یا رب زبانِ شکوہ لال
    اُس جفا مشرب پہ عاشق ہوں کہ سمجھے ہے، اسدؔ
    مالِ سُنّی کو مباح اور خونِ صوفی کو حلال




    ہر عضو، غم سے ہے شکن آسا شکستہ دل
    جوں زلفِ یار، ہوں میں سراپا شکستہ دل
    ہے سر نوشت میں رقمِ وا شکستگی
    ہوں ، جوں خطِ شکستہ، بہر جا شکستہ دل
    امواج کی جو یہ شکنیں آشکار ہیں
    ہے چشمِ اشک ریز سے، دریا، شکستہ دل
    ناسازیِ نصیب و درشتیِ غم سے ہے
    امید وناامید و تمنا شکستہ دل
    ہے سنگِ ظلمِ چرخ سے میخانے میں، اسدؔ
    صہبا فتادہ خاطر و مینا شکستہ دل




    بہرِ عرضِ حالِ شبنم، ہے رقم ایجاد گل
    ظاہرا ہے اس چمن میں لالِ مادر زاد، گل
    گر کرے انجام کو آغاز ہی میں یاد، گل
    غنچے سے منقارِ بلبل وار ہو فریاد، گل
    گر بہ بزمِ باغ، کھینچے نقشِ روئےیار کو
    شمع ساں ہو جائےقطِّ خامۂ بہزاد، گل
    دست رنگیں سے جو رُخ پروا کرے زلفِ رسا
    شاخِ گل میں ہو نہاں جوں شانہ در شمشاد گل
    سعیِ عاشق ہے فروغ افزائےآبِ روئےکار
    ہے شرارِ تیشہ بہرِ تربتِ فرہاد، گل
    ہے تصور صافیِ قطعِ نظر از غیرِ یار
    لختِ دل سے لاوے ہے، شمعِ خیال آباد، گل
    گلشن آبادِ دلِ مجروح میں ہو جائےہے
    غنچۂ پیکانِ شاخِ ناوکِ صیاد، گل
    برقِ سامانِ نظر ہے ، جلوۂ بےباکِ حسن
    شمعِ خلوت خانہ کیجے، ہر چہ بادا باد، گل
    خاک ہے عرضِ بہارِ صد نگارستاں، اسدؔ
    حسرتیں کرتی ہے، میری خاطرِ آزاد، گل



    گر چہ ہے یک بیضۂ طاؤس آسا تنگ، دل
    ہے چمن سرمایۂ بالیدنِ صد رنگ، دل
    بے دلوں سے ہے ، تپش، جوں خواہشِ آب از سراب
    ہے شرر موہوم، اگر رکھتا ہووے سنگ دل
    رشتۂ فہمیدِ ممسک ہے بہ بندِ کوتہی
    عقدہ ساں ہے کیسۂ زر پر خیالِ تنگ دل
    ہوں زپا افتادۂ اندازِ یادِ حسنِ سبز
    کس قدر ہے نشہ فرسائےخمارِ بنگ، دل
    شوقِ بے پروا کے ہاتھوں مثلِ سازِ نادرست
    کھینچتا ہے آج نالے خارج از آہنگ، دل
    اے اسد خامُش ہے طوطیِ شکر گفتارِ طبع
    ظاہرا رکھتا ہے آئینہ اسیرِ زنگ دل



    اثر کمندیِ فریادِ نارسا معلوم
    غبارِ نالہ کمیں گاہِ مدعا معلوم
    بقدرِ حوصلۂ عشق جلوہ ریزی ہے
    وگرنہ خانۂ آئینہ کی فضا معلوم
    بہار در گروِ غنچہ، شہر جولاں ہے
    طلسمِ ناز بجز ، تنگیِ قبا معلوم
    بنالہ حاصلِ دل بستگی فراہم کر
    متاعِ خانۂ زنجیر، جز صدا معلوم
    طلسمِ خاک، کمیں گاہِ یک جہاں سودا
    بہ مرگ، تکیۂ آسائشِ فنا معلوم
    تکلف، آئنۂ دوجہاں مدارا ہے
    سُراغِ یک نگہِ قہر آشنا معلوم
    اسد فریفتۂ انتخابِ طرزِ جفا
    وگرنہ دلبرئیِ وعدۂ وفا معلوم




    ازاں جا کہ حسرت کشِ یار ہیں ہم
    رقیبِ تمنائےدیدار ہیں ہم
    رمیدن ، گلِ باغِ واماندگی ہے
    عبث محمل آرائےرفتار ہیں ہم
    نفس ہو نہ معزولِ شعلہ درودن
    کہ ضبطِ تپش سے شرر کار ہیں ہم
    تغافل، کمیں گاہ ، وحشت شناسی
    تماشائےگلشن، تمنّائےچیدن
    بہار آفرینا ! گنہگار ہیں ہم
    نہ ذوقِ گریباں، نہ پروائےداماں
    نگہ آشنائےگل و خار ہیں ہم
    اسد ؔ، شکوہ کفر ، و دعا ناسپاسی
    ہجومِ تمنا سے لاچار ہیں ہم




    یاں اشک جدا گرم ہے، اور آہ جدا گرم
    حسرت کدہ عشق کی ہے آب و ہوا گرم
    اس شعلے نے گلگوں کوجو گلشن میں کیا گرم
    پھولوں کو ہوئی باد بہاری،وہ ہوا گرم
    وا کر سکے یاں کون بجز کا وشِ شوخی
    جوں برق ہے پیچیدگیِ بندِ قبا گرم
    گر ہے سر دریوزگی جلوہ دیدار
    جوں پنجہ خرشید ہو، اے دستِ دعا، گرم
    یہ آتشِ ہمسایہ کہیں گھر نہ جلا دے
    کی ہے دلِ سوزاں نے مرے پہلو میں جا گرم
    غیروں سے اسے گرمِ سخن دیکھ کے ، غالبؔ
    میں رشک سے، جوں آتشِ خاموش ، رہاگرم




    بس کہ ہیں بدمستِ بشکن بشکنِ میخانہ ہم
    موئے شیشہ کو سمجھتے ہیں خطِ پیمانہ ہم
    بس کہ ہریک موئےزلف افشاں سے ہے تارِ شعاع
    پنجۂ خرشید کو سمجھے ہیں دستِ شانہ ہم
    ہے فروغِ ماہ سے ہر موج ، اک تصویرِ خاک
    سیل سے ، فرشِ کتاں کرتے ہیں تا ویرانہ ہم
    مشقِ از خود رفتگی سے ہیں بہ گلزارِ خیال
    آشنا تعبیر خوابِ سبزۂ بیگانہ ہم
    فرطِ بے خوابی سے ہیں شب ہائے ہجرِ یار میں
    جوں زبانِ شمع، داغِ گرمیِِ افسانہ ہم
    جانتے ہیں، جوششِ سودائےزلفِ یار میں
    سنبلِ بالیدہ کو موئےسرِ دیوانہ ہم
    بس کہ وہ چشم و چراغِ محفلِ اغیار ہے
    چپکے چپکے جلتے ہیں، جوں شمعِ ماتم خانہ ہم
    شامِ غم میں سوزِ عشقِ آتشِ رخسار سے
    پر فشانِ سوختن ہیں ، صورتِ پروانہ ہم
    غم نہیں ہوتا ہے آزادوں کو بیش از یک نفس
    برق سے کرتے ہیں روشن شمعِ ماتم خانہ ہم
    محفلیں برہم کرے ہے ، گنجفہ بازِ خیال
    ہیں ورق گردانیِ نیرنگِ یک بتخانہ ہم
    باوجود یک جہاں ہنگامہ، پیدائی نہیں
    ہیں چراغانِ شبستانِ دلِ پروانہ ہم
    ضعف سے ہے، نے قناعت سے، یہ ترکِ جستجو
    ہیں وبالِ تکیہ گاہِ ہمت مردانہ ہم
    دائم الجس اس میں ہیں لاکھوں تمنائیں اسدؔ
    جانتے ہیں سینۂ پرخوں کو زنداں خانہ ہم



    جس دم کہ جادہ وار ہو تارِ نفس تمام
    پیمائشِ زمینِ رہِ عمر بس تمام
    کیا دے صدا ؟کہ الفتِ گم گشتگاں سے، آہ
    ہے سرمہ، گردِ رہ ، بہ گلوئےجرس تمام
    ڈرتاہوں کوچہ گردیِ بازارِ عشق سے
    ہیں، خارِ راہ ، جوہرِ تیغِ عسس تمام
    اے بالِ اضطراب! کہاں تک فسردگی؟
    یک پرزدن تپش میں ہے، کارِ قفس تمام
    گذرا جو آشیاں کا تصور بہ وقتِ بند
    مژگانِ چشمِ دام ہوئے، خار و خس تمام
    کرنے نہ پائےضعف سے شورِ جنوں، اسدؔ
    اب کے بہار کا یہیں گزرا برس تمام
     
  4. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    خوش وحشتے کہ عرضِ جنونِ فنا کروں
    جوں گردِ راہ، جامۂ ہستی قبا کروں
    گر بعدِ مرگ و حشتِ دل کا گلہ کروں
    موجِ غبار سے پرِ یک دشت وا کروں
    آ، اے بہارِ ناز! کہ تیرے خرام سے
    دستار گردِ شاخِ گلِ نقشِ پا کروں
    خوش اوفتادگی ! کہ بہ صحرائےانتظار
    جوں جادہ ، گردِ رہ سے نگہ سرمہ سا کروں
    صبر اور یہ ادا کہ دل آوے اسیرِ چاک
    درد اور یہ کمیں کہ رہِ نالہ وا کروں
    وہ بے دماغِ منتِ اقبال ہوں کہ میں
    وحشت بہ داغِ سایۂ بالِ ہما کروں
    وہ التماسِ لذتِ بیداد ہوں کہ میں
    تیغِ ستم کو پشتِ خمِ التجا کروں
    وہ رازِ نالہ ہوں کہ بشرحِ نگاہِ عجز
    افشاں غبارِ سرمہ سے فردِ صدا کروں
    لوں وام بختِ خفتہ سے ، یک خوابِ خوش، ولے
    غالبؔ !یہ خوف ہے کہ کہاں سے ادا کروں



    جہاں تیرا نقشِ قدم دیکھتے ہیں
    خیاباں خیاباں ارم دیکھتے ہیں
    کسو کو زخود رستہ کم دیکھتے ہیں
    کہ آہو کو پابندِ رم دیکھتے ہیں
    خطِ لختِ دل یک قلم دیکھتے ہیں
    مژہ کو جواہر رقم دیکھتے ہیں
    دل آشفتگاں خالِ کنجِ دہن کے
    سویدا میں سیرِ عدم دیکھتے ہیں
    ترے سروِ قامت سے اک قدِّ آدم
    قیامت کے فتنے کو کم دیکھتے ہیں
    تماشا کہ ، اے محوِ آئینہ داری!
    تجھے کس تمنا سے ہم دیکھتے ہیں
    سراغِ تفِ نالہ لے داغِ دل سے
    کہ شب رو کا نقشِ قدم دیکھتے ہیں
    سرابِ یقین ہیں پریشان نگاہاں
    اسدؔ کو گر از چشمِ کم دیکھتے ہیں
    کہ ہم بیضہءِ طوطیِ ہند ، غافل
    تہِ بالِ شمعِ حرم دیکھتے ہیں
    بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالب
    تماشائےاہلِ کرم دیکھتے ہیں



    مت مردمک دیدہ میں سمجھو یہ نگاہیں
    ہیں جمع سویدائےدلِ چشم میں ، آہیں
    جوں مردمکِ چشم میں ہوں جمع نگاہیں
    خوابیدہ بہ حیرت کدۂ داغ ہیں آہیں
    پھر حلقۂ کاکل میں پڑیں دید کی راہیں
    جوں دود ، فراہم ہوئیں روزن میں نگاہیں
    پایا سرِ ہر ذرّہ جگر گوشۂ وحشت
    ہیں داغ سے معمور شقایق کی کلاہیں
    کس دل پہ ہے عزمِ صفِ مژگانِ خود آرا؟
    آئینے کی پایاب سے اتری ہیں سپاہیں
    دیر و حرم ، آئینۂ تکرارِ تمنا
    واماندگیِ شوق تراشے ہے پناہیں
    یہ مطلع، اسدؔ، جوہرِ افسونِ سخن ہو
    گر عرضِ تپاکِ نفسِ سوختہ چاہیں
    حسرت کشِ یک جلوۂ معنی ہیں نگاہیں
    کھینچوں ہوں سویدائےدلِ چشم سے آہیں




    جس جاکہ پائےسیلِ بلا درمیاں نہیں
    دیوانگاں کو واں ہوسِ خانماں نہیں
    کس جرم سے ہے چشم تجھے حسرتِ قبول
    برگِ حنا مگر مژۂ خوں فشاں نہیں
    ہر رنگ گردش، آئنہ ایجادِ درد ہے
    اشکِ سحاب، جز بوداعِ خزاں، نہیں
    جز عجز کیا کروں بہ تمنائے بے خودی!
    طاقت، حریفِ سختیِ خوابِ گراں نہیں
    عبرت سے پوچھ دردِ پریشانیِ نگاہ
    یہ گردِ وہم جز بسرِ امتحاں نہیں
    گل ، غنچگی میں غرقۂ دریائےرنگ ہے
    اے آگہی، فریبِ تماشا کہاں نہیں
    برقِ بجانِ حوصلہ آتش فگن ، اسدؔ
    اے دل فسردہ! طاقتِ ضبطِ فغاں نہیں



    مرگِ شیریں ہوگئی تھی کوہکن کی فکر میں
    تھا ، حریرِ سنگ سے ، قطعِ کفن کی فکر میں
    فرصتِ یک چشمِ حیرت، شش جہت آغوش ہے
    ہوں سپند آسا وداعِ انجمن کی فکر میں
    وہ غریبِ وحشت آبادِ تسلی ہوں، جسے
    کوچہ دے ہے زخمِ دل، صبحِ وطن کی فکر میں
    سایۂ گل داغ و جوشِ نکہتِ گل موجِ دُود
    رنگ کی گرمی ہے تاراجِ چمن کی فکر میں
    فالِ ہستی، خار خارِ وحشتِ اندیشہ ہے
    شوخیِ سوزن ہے ساماں پیرہن کی فکر میں
    غفلتِ دیوانہ ، جز تمہیدِ آگاہی نہیں
    مغزِ سر ، خوابِ پریشاں ہے ، سخن کی فکر میں
    مجھ میں اور مجنوں میں، وحشت سازِ دعویٰ ہے ،اسدؔ
    برگ برگِ بید ہے ناخن زدن کی فکر میں




    ہے ترحم آفریں، آرائشِ بیداد، یاں
    اشکِ چشمِ دام ہے، ہردانۂ صیاد ، یاں
    ہے ، گدازِ موم، اندازِ چکیدن ہائےخوں
    نیشِ زنبورِ عسل، ہے نشترِ فصاد ، یاں
    ناگوارا ہے ہمیں، احسانِ صاحب دولتاں
    ہے، زرِ گل بھی ، نظر میں جوہرِ فولاد، یاں
    جنبشِ دل سے ہوئےہیں، عقدہ ہائے کار، وا
    کمتریں مزدورِ سنگیں دست ہے، فرہاد ، یاں
    دل لگا کر لگ گیا ان کو بھی تنہا بیٹھنا
    بارے اپنی بیکسی کی ہم نے پائی داد ، یاں
    ہیں زوال آمادہ، اجزا آفرینش کے تمام
    مہرِ گردوں، ہے چراغِ رہگزارِ باد، یاں
    قطرہ ہائےخونِ بسمل زیبِ داماں ہیں، اسدؔ
    ہے تماشا کردنی گل چینیِ جلاد ، یاں



    اے نوا سازِ تماشا، سر بکف جلتا ہوں میں
    یک طرف جلتا ہے دل، اور یک طرف جلتا ہوں میں
    شمع ہوں ، لیکن بپا در رفتہ خارِ جستجو
    مدعا گم کردہ، ہر سو، ہر طرف جلتا ہوں میں
    ہے ، مساسِ دستِ افسوس ، آتش انگیزِ تپش
    بے تکلف آپ پیدا کر کے تف جلتا ہوں میں
    ہے تماشا گاہِ سوزِ تازہ ، ہر یک عضوِ تن
    جوں چراغانِ دوالی، صف بہ صف جلتا ہوں میں
    شمع ہوں ،تو بزم میں جا پاؤں غالبؔ کی طرح
    بے محل ،اے مجلس آرائےنجف! جلتا ہوں میں




    فتادگی میں قدم استوار رکھتے ہیں
    برنگِ جادہ ، سرِ کوئےیار رکھتے ہیں
    برہنہ مستیِ صبحِ بہار رکھتے ہیں
    جنونِ حسرتِ یک جامہ دار رکھتے ہیں
    طلسمِ مستیِ دل آں سوئےہجومِ سرشک
    ہم ایک میکدہ دریا کے پار رکھتے ہیں
    ہمیں ، حریرِ شرر بافِ سنگ ، خلعت ہے
    یہ ایک پیرہنِ زرنگار رکھتے ہیں
    نگاہِ دیدۂ نقشِ قدم ہے جادۂ راہ
    گزشتگاں ، اثرِ انتظار رکھتے ہیں
    ہوا ہے ، گریۂ بے باک، ضبط سے تسبیح
    ہزار دل پہ ہم ایک اختیار رکھتے ہیں
    بساطِ ہیچ کسی میں، برنگِ ریگِ رواں
    ہزار دل بہ وداعِ قرار رکھتے ہیں
    برنگ سایہ سروکارِ انتظار نہ پوچھ
    سراغِ خلوتِ شب ہائے تار رکھتے ہیں
    جنونِ فرقتِ یارانِ رفتہ ہے، غالبؔ
    بسانِ دشت، دلِ پُر غبار رکھتے ہیں



    تنِ بہ بندِ ہوس در ندادہ رکھتے ہیں
    دلِ زکارِ جہاں اوفتادہ رکھتے ہیں
    تمیزِ زشتی ونیکی میں لاکھ باتیں ہیں
    بہ عکسِ آئنہ یک فردِ سادہ رکھتے ہیں
    برنگِ سایہ ہمیں بندگی میں ہے تسلیم
    کہ داغِ دل بہ جبینِ کشادہ رکھتے ہیں
    بزاہداں، رگِ گردن، ہے رشتۂ زنار
    سرِبپائے بتے نا نہادہ رکھتے ہیں
    معافِ بیہُدہ گوئی ہیں ناصحانِ عزیز
    دلے بہ دستِ نگارے نہ دادہ رکھتے ہیں
    برنگِ سبزہ ، عزیزانِ بدزباں یک دست
    ہزار تیغ بہ زہراب دادہ رکھتے ہیں
    ادب نے سونپی ہمیں سرمہ سائیِ حیرت
    زبانِ بستہ و چشمِ کشادہ رکھتے ہیں
    زمانہ سخت کم آزار ہے بجانِ اسدؔ
    وگر نہ ہم تو توقع زیادہ رکھتے ہیں



    بہ غفلت عطرِ گل، ہم آگہی مخمور، مَلتے ہیں
    چراغانِ تماشا ، چشمِ صد ناسور مَلتے ہیں
    رہا کس جرم سے میں بے قرارِ داغِ ہم طرحی؟
    سمندر کو پرِ پروانہ سے کافور مَلتے ہیں
    چمن نا محرمِ آگاہیِ دیدارِ خوباں ہے
    سحر گلہائےنرگس چند چشمِ کور مَلتے ہیں
    کجا جوہر؟ چہ عکسِ خط؟ بتاں ، وقتِ خود آرائی
    دلِ آئینہ زیرِ پائےخیلِ مور مَلتے ہیں
    تماشائےبہار آئینۂ پردازِ تسلی ہے
    کفِ گل برگ سے پائےدلِ رنجور مَلتے ہیں
    گراں جانی سبک سار، و تماشا بے دماغ آیا
    کفِ افسوسِ فرصت، سنگِ کوہِ طور مَلتے ہیں
    اسد ؔحیرت کشِ یک داغِ مشک اندودہ ہے، یا رب
    لباسِ شمع پر عطرِ شبِ دیجور مَلتے ہیں




    سرشک آشفتہ سر تھا قطرہ زن مژگاں سے جانے میں
    رہے یاں ، شوخیِ رفتار سے، پا آستانے میں
    ہجومِ مژدۂ دیدار، و پردازِ تماشا ہا
    گلِ اقبالِ خس ہے چشمِ بلبل ، آشیانے میں
    ہوئی یہ بیخودی چشم و زباں کو تیرے جلوے سے
    کہ طوطی قفلِ زنگ آلودہ ہے آئینہ خانے میں
    ترے کوچے میں ہے ، مشاطۂ واماندگی، قاصد
    پرِ پرواز، زلفِ بازہے ہد ہد کے شانے میں
    کجا معزولیِ آئینہ؟ کُو ترکِ خود آرائی؟
    نمد در آب ہے، اے سادہ پُرکار، اس بہانے میں
    بحکمِ عجز، ابروئےمہِ نو حیرت ایما ہے
    کہ یاں گم کر جبینِ سجدہ فرسا آستا نے میں
    قیامت ہے، کہ سن لیلیٰ کا دشتِ قیس میں آنا
    تعجب سے وہ بولا"یوں بھی ہوتا ہے زمانے میں؟"
    دلِ نازک پہ اُس کے رحم آتاہے مجھے غالبؔ
    نہ کر سرگرم اس کافر کو الفت آزمانے میں
     
  5. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    فزوں کی دوستوں نے حرصِ قاتل ذوقِ کشتن میں
    ہوئےہیں بخیہ ہائےزخم، جوہر تیغِ دشمن میں
    نہیں ہے، زخم کوئی، بخیے کے در خور مرے تن میں
    ہوا ہے تارِ اشکِ یاس ، رشتہ چشمِ سوزن میں
    تماشا کردنی ہے لطفِ زخمِ انتظار، اے دل
    سویدا داغِ مرہم ، مردمک ہے چشمِ سوزن میں
    دل و دین و خرد ، تاراجِ نازِ جلوہ پیرائی
    ہوا ہے جوہرِ آئینہ ، خیلِ مور خرمن میں
    نکوہش، مانعِ بے ربطی شورِجنوں آئی
    ہواہے ، خندۂ احباب ، بخیہ جیب و دامن میں
    ہوئی ہے مانع ِ ذوقِ تماشا، خانہ ویرانی
    کفِ سیلاب باقی ہے، برنگِ پنبہ روزن میں
    ودیعت خانہ بےدادِ کاوشہائےمژگاں ہوں
    نگینِ نامِ شاہد ہےمرے، ہر قطرہ خوں، تن میں
    یہاں کس سے ہو ظلمت گستری میرے شبستاں کی؟
    شبِ مہ ہو، جو رکھ دیں ، پنبہ دیواروں کے روزن میں
    ہوئے اس مہر وش کے جلوہ تمثال کے آگے
    پر افشاں جوہر آئینے میں ، مثلِ ذرہ روزن میں
    نہ جانوں نیک ہوں یا بد ہوں، پر صحبت مخالف ہے
    جو گل ہوں تو ہوں گلخن میں، جو خس ہوں، تو ہوں گلشن میں
    ہزاروں دل دیےجوشِ جنونِ عشق نے مجھ کو
    سیہ ہوکر سویدا ہوگیا، ہر قطرہ خوں ، تن میں
    اسد زندانیِ تاثیرِ الفت ہائےخوباں ہوں
    خمِ دستِ نوازش، ہوگیا ہے طوق گردن میں




    خوں در جگر نہفتہ، بہ زردی رسیدہ ہوں
    خود آشیانِ طائرِ رنگِ پریدہ ہوں
    ہے دستِ رد بہ سیرِ جہاں، بستنِ نظر
    پائےہوس بہ دامنِ مژگاں کشیدہ ہوں
    میں چشم واکشادہ و گلشن نظر فریب
    لیکن عبث کہ شبنمِ خرشید دیدہ ہوں
    تسلیم سے یہ نالۂ موزوں ہوا حصول
    اے بے خبر، میں نغمۂ چنگِ خمیدہ ہوں
    پیدا نہیں ہے اصلِ تگ و تازِ جستجو
    مانندِ موجِ آب، زبانِ بریدہ ہوں
    سر پرمرےوبالِ ہزار آرزو رہا
    یارب، میں کس غریب کا بختِ رمیدہ ہوں
    میں بے ہنر کہ جوہرِ آئینہ تھا ، عبث
    پائےنگاہِ خلق میں خارِ خلیدہ ہوں
    میرا نیاز و عجز ہے مفتِ بتاں، اسدؔ
    یعنی کہ بندۂ بہ درم ناخریدہ ہوں



    سودائےعشق سے دمِ سردِ کشیدہ ہوں
    شامِ خیالِ زلف سے صبحِ دمیدہ ہوں
    دورانِ سر سے گردشِ ساغر ہے متصل
    خمخانۂ جنوں میں دماغِ رسیدہ ہوں
    کی متصل ستارہ شماری میں عمر ، صرف
    تسبیحِ اشک ہائےز مژگاں چکیدہ ہوں
    ظاہر ہیں مری شکل سے افسوس کے نشاں
    خارِ الم سے، پشت بدنداں گزیدہ ہوں
    ہوں گرمیِ نشاطِ تصور سے نغمہ سنج
    میں عندلیبِ گلشنِ نا آفریدہ ہوں
    دیتا ہوں کشتگاں کو سخن سے سرِ تپش
    مضرابِ تار ہائےگلوئےبریدہ ہوں
    ہے جنبشِ زباں بدہن سخت ناگوار
    خو نابۂ ہلاہلِ حسرت چشیدہ ہوں
    جوں بوئےگل ، ہوں گر چہ گرانبارِ مشتِ زر
    لیکن ، اسدؔ، بہ وقتِ گزشتن جریدہ ہوں




    ہوئی ہیں آب، شرمِ کوششِ بے جا سے، تدبیریں
    عرق ریزِ تپش ہیں، موج کی مانند، زنجیریں
    خیالِ سادگی ہائےتصور، نقشِ حیرت ہے
    پرِ عنقا پہ رنگِ رفتہ سے کھینچی ہیں تصویریں
    زبس ہر شمع یاں آئینۂ حیرت پرستی ہے
    کرے ہیں غنچۂ منقارِ طوطی نقش گل گیریں
    سپند ، آہنگیِ ہستی و سعیِ نالہ فرسائی
    غبار آلودہ ہیں، جوں دودِ شمعِ کشتہ، تقریریں
    ہجومِ سادہ لوحی، پنبۂ گوشِ حریفاں ہے
    وگرنہ خواب کی مضمر ہیں افسانے میں، تعبیریں
    بتانِ شوخ کی تمکینِ بعد از قتل کی حیرت
    بیاضِ دیدۂ نخچیر پر کھینچے ہے تصویریں
    اسد ؔ، طرزِ عروجِ اضطرابِ دل کو کیا کہیے
    سمجھتا ہوں تپش کو الفتِ قاتل کی تاثیریں




    بے دماغی ، حیلہ جوئےترکِ تنہائی نہیں
    ورنہ کیا موجِ نفس ، زنجیرِ رسوائی نہیں؟
    وحشیِ خو کردۂ نظارہ ہے، حیرت، جسے
    حلقۂ زنجیر، جز چشمِ تماشائی نہیں
    قطرے کو جوشِ عرق کرتا ہے دریا دستگاہ
    جز حیا، پر کارِ سعیِ بے سروپائی نہیں
    چشمِ نرگس میں نمک بھرتی ہے شبنم سے، بہار
    فرصتِ نشو و نما، سازِ شکیبائی نہیں
    کس کو دوں، یا رب ، حسابِ سوزناکی ہائےدل؟
    آمد و رفتِ نفس، جز شعلہ پیمائی نہیں
    مت رکھ، اے انجام غافل! سازِ ہستی پر غرور
    چیونٹی کے پر ، سر و برگِ خودآرائی نہیں
    سایۂ افتادگی بالین و بستر ہوں، اسدؔ
    جوں صنوبر، دل سراپا قامت آرائی نہیں



    ظاہرا سر پنجۂ افتادگاں گیرا نہیں
    ورنہ کیا حسرت کشِ دامن پہ نقشِ پانہیں
    آنکھیں پتھرائی نہیں، نا محسوس ہے تارِ نگاہ
    ہے زمیں از بس کہ سنگیں جادہ بھی پیدا نہیں
    ہو چکے ہم جادہ ساں صد بار قطع، اور پھر ہنوز
    زینتِ یک پیرہن جوں دامنِ صحرا نہیں
    ہوسکے ہے، پردۂ جوشیدنِ خونِ جگر
    اشک ، بعدِ ضبط ، غیر از پنبۂ مینا نہیں
    ہوسکے کب کلفتِ دل، مانعِ طوفانِ اشک
    گردِ ساحل ، سنگِ راہِ جوششِ دریا نہیں
    ہے طلسم ِدہر میں ، صد حشرِ پاداشِ عمل
    آگہی غافل ، کہ یک امروز بے فردا نہیں
    بسمل اس تیغِ دو دستی کا نہیں بچتا، اسدؔ
    عافیت بیزار، ذوقِ کعبتین اچھا نہیں



    ضبط سے مطلب ، بجز وارستگی، دیگر نہیں
    دامنِ تمثال، آبِ آئنہ سے تر نہیں
    ہے وطن سے باہر اہلِ دل کی قدر ومنزلت
    عزلت آبادِ صدف میں قیمتِ گوہر نہیں
    باعثِ ایذا ہے، برہم خوردنِ بزمِ سرور
    لخت لختِ شیشۂ بشکستہ ، جز نشتر نہیں
    واں سیاہی مردمک ہے، اور یاں داغِ شراب
    مہ ، حریفِ نازشِ ہم چشمیِ ساغر نہیں
    ہے فلک بالا نشینِ فیضِ خم گردیدنی
    عاجزی سے، ظاہراا رتبہ کوئی برتر نہیں
    دل کو اظہارِ سخن ، اندازِ فتح الباب ہے
    یاں صریرِ خامہ ، غیر از اصطکاکِ در نہیں
    ہوگئی ہے غیر کی شیریں بیانی کارگر
    عشق کا، اس کو گماں، ہم بے زبانوں پر نہیں
    کب تلک پھیرے اسدؔ لب ہائےتفتہ پر زباں
    تابِ عرض ِتشنگی، اے ساقیِ کوثر، نہیں



    ضمانِ جادہ رویاندن ہےخطِ جامِ مے نوشاں
    وگرنہ منزلِ حیرت سے کیا وقف ہیں مدہوشاں؟
    نہیں ہے ضبط، جز مُشاطگی ہائے غم آرائی
    کہ میلِ سرمہ چشمِ داغ میں ہے، آہِ خاموشاں
    بہ ہنگامِ تصورساغرِ زانوسے پیتا ہوں
    مئے کیفیتِ خمیازہ ہائے صبح آغوشاں
    نشانِ روشنیِ دل نہاں ہے تیرہ بختوں کا
    نہیں محسوس، دودِ مشعلِ بزمِ سیہ پوشاں
    پریشانی، اسدؔ،در پردہ ہے سامانِ جمیعت
    کہ آبادیِ صحرا، ہجومِ خانہ بر دوشاں



    نہیں ہے بے سبب قطرے کو، شکلِ گوہر، افسردن
    گرہ ہے حسرتِ آبےبروئے کار آورن
    مہ نو سے ہے، رہزن وار، نعلِ واژگوں باندھا
    نہیں ممکن بجولاں ہائےگردوں دخل ِ پے بردن
    خمارِ ضبط سے بھی نشہ اظہارپیدا ہے
    تراوش شیرہ انگور کی ہےمفتِ افشردن
    خراب آبادِ غربت میں عبث ، افسوسِ ویرانی
    گل از شاخِ دور افتادہ ہے نزدیکِ پژمردن
    فغان و آہ سے حاصل بجز دردِ سرِ یاراں
    خوشا! اے غفلت آگاہاں، نفس دزدیدن و مردن
    دریغا!بستنِ رختِ سفر سےہوکے میں غافل
    رہا پامالِ حسرت ہائےفرش ِ بزم گستردن
    اسدؔ، ہے طبع مجبور ِتمنا آفرینی ہا
    فغاں! بے اختیاری و فریبِ آرزو خوردن




    دیکھیے مت چشمِ کم سے سوئےضبط افسردگاں
    جوں صدف پُر دُر ہیں، دنداں در جگر افشردگاں
    گرمِ تکلیفِ دلِ رنجیدہ ہے از بس کہ، چرخ
    قرصِ کافوری ہے، مہر، از بہرِ سرما خوردگاں
    رنجشِ دل یک جہاں ویراں کرے گی، اے فلک
    دشت ساماں ہے، غبارِ خاطرِ آزردگاں
    ہاتھ پر ہو ہاتھ، تو درسِ تاسف ہی سہی
    شوق مفتِ زندگی ہے، اے بہ غفلت مُردگاں
    خار سے گل سینہ افگارِ جفا ہے، اے اسدؔ
    برگ ریزی ہے پر افشانیِ ناوک خوردگاں
     
  6. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    سازشِ صلحِ بتاں میں ہےنہاں جنگیدن
    نغمہ و چنگ، ہیں جوںتیر و کماں فہمیدن
    بس کہ شرمندہ بوئےخوشِ گل رویاں ہے
    نکہتِ گل کو ہےغنچے میں نفس دزدیدن
    ہے فروغِ رخِ افروختہ خوباں سے
    شعلہ شمع، پر افشانِ بخود لرزیدن
    گلشنِ زخم کھلاتا ہے جگر میں ، پیکاں
    گرہِ غنچہ ہے، سامانِ چمن بالیدن
    چمنِ دہر میں ہوں سبزہ بیگانہ ، اسدؔ
    وائے! اے بے خودی و تہمت آرامیدن




    صاف ہے از بس کہ عکسِ گل سے، گلزارِ چمن
    جانشینِ جوہرِ آئینہ ہے، خارِ چمن
    ہے نزاکت بس کہ فصلِ گل میں معمارِ چمن
    قالبِ گل میں ڈھلی ہے خشتِ دیوارِ چمن
    برشگال گریہ عاشق ہے، دیکھا چاہیے
    کِھل گئی ، مانند ِ گل سو جا سے دیوارِ چمن
    الفتِ گل سے غلط ہے دعویِ وارستگی
    سرو ہے، با وصفِ آزادی ، گرفتارِ چمن
    تیری آرایش کا استقبال کرتی ہے بہار
    جوہرِ آئینہ ، ہے یاں نقشِ احضارِ چمن
    بس کہ پائی یارکی رنگیں ادائی سے شکست
    ہے کلاہِ نازِ گل، بر طاقِ دیوارِ چمن
    وقت ہے ، گر بلبلِ مسکیں زلیخائی کرے
    یوسفِ گل جلوہ فرما ہے بہ بازارِ چمن
    وحشت افزا گریہ ہا موقوفِ فصلِ گل، اسدؔ
    چشمِ دریابار ہے میزابِ سرکارِ چمن



    منقار سے رکھتا ہوں بہم چاکِ قفس کو
    تاگل ز جگرزخم میں ہے راہِ نفس کو
    بیباک ہوں از بس کہ بہ بازارِ محبت
    سمجھا ہوں زرہ جوہرِ شمشیرِ عسس کو
    رہنے دو گرفتار بہ زندانِ خموشی
    چھیڑو نہ مجھ افسردہ دزدیدہ نفس کو
    پیدا ہوئے ہیں ہم الم آبادِ جہاں میں
    فرسودنِ پائے طلب و دستِ ہوس کو
    نالاں ہو، اسدؔ، تو بھی سرِ راہ گزر پر
    کہتے ہیں کہ تاثیر ہے فریادِ جرس کو




    اگر وہ آفتِ نظارہ جلوہ گستر ہو
    ہلال ، ناخنکِ دیدہ ہائےاختر ہو
    بہ یادِ قامت، اگر ہو بلند آتشِ غم
    ہر ایک داغِ جگر ، آفتابِ محشر ہو
    ستم کشی کا، کیا دل نے ، حوصلہ پیدا
    اب اُس سے ربط کروں جو بہت ستمگر ہو
    عجب نہیں ، پئے تحریرِ حالِ گریۂ چشم
    بروئےآب جو، ہر موج ، نقشِ مسطر ہو
    امیدوار ہوں ، تاثیرِ تلخ کامی سے
    کہ قندِ بوسۂ شیریں لباں مکرر ہو
    صدف کی ، ہے ترے نقشِ قدم میں، کیفیّت
    سرشکِ چشمِ اسد ؔ، کیوں نہ اس میں گوہر ہو




    بے درد سر بہ سجدۂ الفت فرو نہ ہو
    جوں شمع غوطہ داغ میں کھا ، گر وضو نہ ہو
    دل دے کفِ تغافلِ ابروئےیار میں
    آئینہ ایسے طاق پہ گم کر کہ تو نہ ہو
    زلفِ خیال نازک و اظہار بے قرار
    یا رب، بیان شانہ کشِ گفتگو نہ ہو
    تمثالِ ناز ، جلوۂ نیرنگِ اعتبار
    ہستی عدم ہے، آئنہ گر روبرو نہ ہو
    مژگاں خلیدۂ رگِ ابرِ بہار ہے
    نشتر بہ مغز، پنبۂ مینا فرو نہ ہو
    عرضِ نشاطِ دید ہے ، مژگانِ انتظار
    یارب کہ خارِ پیرہنِ آرزو نہ ہو
    واں پرفشانِ دامِ نظر ہوں جہاں، اسدؔ
    صبحِ بہار بھی ، قفسِ رنگ و بو نہ ہو



    حسد سے دل اگر افسردہ ہے، گرمِ تماشا ہو
    کہ چشمِ تنگ، شاید کثرتِ نظارہ سے وا ہو
    بہم بالیدنِ سنگ و گلِ صحرا یہ چاہے ہے
    کہ تارِ جادہ بھی کہسار کو زنارِ مینا ہو
    حریفِ وحشتِ نازِ نسیمِ عشق جب آؤں
    کہ مثلِ غنچہ، سازِ یک گلستاں دل مہیا ہو
    بجائےدانہ خرمن یک بیابان بیضۂ قمری
    مرا حاصل وہ نسخہ ہے کہ جس سے خاک پیدا ہو
    کرے کیا سازِ بینش وہ شہیدِ دردِ آگاہی
    جسے موئےدماغِ بے خودی ، خوابِ زلیخا ہو
    بہ قدرِ حسرتِ دل چاہیے ذوقِ ِمعاصی بھی
    بھروں یک گوشۂ دامن، گر آبِ ہفت دریا ہو
    دلِ چوں شمع ، بہرِ دعوتِ نظارہ لا، جس سے
    نگہ لبریزِ اشک و سینہ معمورِ تمنا ہو
    اگر وہ سر و قد، گرمِ خرامِ ناز آجاوے
    کفِ ہر خاکِ گلشن، شکلِ قمری، نالہ فرسا ہو
    نہ دیکھیں روئےیک دل سر د، غیر از شمعِ کافوری
    خدایا ، اس قدر بزمِ اسد ؔگرمِ تماشا ہو



    مبادا ! بے تکلف فصل کا برگ و نوا گم ہو
    مگر طوفانِ مے میں پیچشِ موجِ صبا گم ہو
    سبب وارستگاں کو ننگِ ہمت ہے، خداوندا
    اثر سر مے سے اور لب ہائےعاشق سے صدا گم ہو
    نہیں جز درد ، تسکینِ نکوہش ہائےبے درداں
    کہ موجِ گریہ میں صد خندۂ دنداں نما گم ہو
    ہوئی ہے ناتوانی ، بے دماغِ شوخیِ مطلب
    فرو ہوتا ہے سر سجدے میں اے دست دعا گم ہو
    تجھے ہم مفت دیویں یک جہاں چینِ جبیں ، لیکن
    مباد، اے پیچ تابِ طبع، نقشِ مدّعا گم ہو
    بلا گردانِ تمکینِ بتاں، صد موجۂ گوہر
    عرق بھی جن کے عارض پر بہ تکلیفِ حیا گم ہو
    اُٹھا وے کب وہ جانِ شرم تہمت قتلِ عاشق کی
    کہ جس کے ہاتھ میں، مانندِ خوں ، رنگِ حنا گم ہو
    کریں خوباں جو سیرِ حسن، اسدؔ، یک پردہ ناز ک تر
    دمِ صبحِ قیامت، در گریبانِ قبا گم ہو




    خشکیِ مے نے تلف کی مے کدے کی آبرو
    کاسۂ دریوزہ ہے، پیمانۂ دستِ سبو
    بہرِ جاں پرور دنِ یعقوب، بالِ چاک سے
    وام لیتے ہیں پرِ پرواز ، پیراہن کی بو
    گردِ ساحل ، ہے نمِ شرمِ جبینِ آشنا
    گر نہ باندھے قلزمِ الفت میں سر، جائےکدو
    گرمیِ شوقِ طلب، ہے عین تاپاکِ وصال
    غافلاں، آئینہ داں ہے ، نقشِ پائےجستجو
    رہن خاموشی میں ہے، آرائشِ بزمِ وصال
    ہے پرِ پروازِ رنگِ رفتۂ خوں ، گفتگو
    ہے تماشا ، حیرت آبادِ تغافل ہا ئےشوق
    یک رگِ خواب و سراسر جوشِ خونِ آرزو
    خوئےشرمِ سرد بازاری، ہے سیلِ خانماں
    ہے ، اسد ؔنقصاں میں مفت اور صاحبِ سرمایہ تو



    اشک ِچکیدہ ، رنگ ِپریدہ
    ہر طرح ہوں میں ازخود رمیدہ
    گو، یاد مجھ کو کرتے ہیں خوباں
    لیکن بسانِ دردِ کشیدہ
    ہے رشتہ جاں فرطِ کشش سے
    مانندِ نبضِ دستِ بریدہ
    ٹوٹاہے، افسوس!موئے خمِ زلف
    ہے شانہ یکسر دستِ گزیدہ
    خالِ سیاہ رنگیں رخاں سے
    ہے داغِ لالہ در خوں طپیدہ
    جوشِ جنوں سے جوں کسوتِ گل
    سر تا بہ پا ہوں جیبِ دریدہ
    یارو، اسدؔ کا نام و نشان کیا؟
    بیدل، فقیرِ آفت رسیدہ
     
  7. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    خوشا! طوطی و کنجِ آشیانہ
    نہاں در زیرِ بال آئینہ خانہ
    سرشکِ بر زمیں افتادہ آسا
    اٹھا یاں سے نہ میرا آب و دانہ
    حریفِ عرضِ سوزِ دل نہیں ہے
    زباں ہر چند ہو جاوے زبانہ
    دلِ نالاں سے ہے بے پردہ پیدا
    نوائے بربط و چنگ و چغانہ
    کرے کیا دعوی ِآزادیِ عشق
    گرفتارِ الم ہائے زمانہ
    اسدؔ، اندیشہ ششدر شدن ہے
    نہ پھریے مہرہ ساں خانہ بخانہ




    رفتار سے شیرازۂ اجزائےقدم باندھ
    اے آبلے! محمل پئے صحرائےعدم باندھ
    بے کاریِ تسلیم ، بہر رنگ چمن ہے
    گر خاک ہو، گلدستۂ صد نقشِ قدم باندھ
    اے جادے بسر رشتۂ یک ریشہ دویدن
    شیرازۂ صد آبلہ جوں سبحہ بہم باندھ
    حیرت، حدِ اقلیمِ تمنائےپری ہے
    آئینے پہ آئینِ گلستانِ ارم باندھ
    پامردِ یک انداز نہیں، قامتِ ہستی
    طاقت اگر اعجاز کرے ، تہمتِ خم باندھ
    دیباچۂ وحشت ہے ، اسدؔ، شکوۂ خوباں
    خوں کر دلِ اندیشہ و مضمونِ ستم باندھ




    خلق ہے صفحۂ عبرت سے سبق ناخواندہ
    ورنہ ہے چرخ و زمیں یک ورقِ گرداندہ
    دیکھ کر بادہ پرستوں کی دل افسردگیاں
    موجِ مے ، مثلِ خطِ جام، ہے برجا ماندہ
    خواہشِ دل ہے زباں کو سببِ گفت و بیاں
    ہے ، سخن ، گرد ز دامانِ ضمیر افشاندہ
    کوئی آگاہ نہیں باطنِ ہم دیگر سے
    ہے ، ہر اک فرد جہاں میں ورقِ ناخواندہ
    حیف ! بے حاصلیِ اہلِ ریا پر، غالبؔ
    یعنی ہیں ماندہ ا زا ں سو و ازیں سو راندہ




    بس کہ مے پیتے ہیں اربابِ فنا پوشیدہ
    خطِ پیمانۂ مے، ہے نفسِ دزدیدہ
    بہ غرورِ طرحِ قامت و رعنائیِ سرو
    طوق ہے گردنِ قمری میں رگِ بالیدہ
    کی ہے وا اہلِ جہاں نے بہ گلستانِ جہاں
    چشمِ غفلت نظرِ شبنمِ خور نادیدہ
    اے دریغا! کہ نہیں طبع ِنزاکت ساماں
    ورنہ کانٹے میں تُلے ہے سخنِ سنجیدہ
    یاس آئینۂ پیدائی استغنا ہے
    نا امیدی ہے پرستارِ دلِ رنجیدہ
    واسطے فکرِ مضامینِ متیں کے، غالبؔ
    چاہیے خاطرِ جمع و دلِ آرامیدہ



    از مہر تا بہ ذرہ دل و دل ہے آئنہ
    طوطی کو، شش جہت سے، مقابل ہے آئنہ
    حیرت، ہجوم لذتِ غلطانیِ تپش
    سیماب بالش، و کمرِ دل ہے آئنہ
    غفلت ، بہ بالِ جوہرِ شمشیرِ پرفشاں
    یاں پشتِ چشمِ شوخیِ قاتل ہے آئنہ
    حیرت نگاہ برق، تماشا بہار شوخ
    در پردۂ ہوا پرِ بسمل ہے آئنہ
    یاں رہ گئے ہیں ناخنِ تدبیر ٹوٹ کر
    جوہر ِطلسمِ عقدۂ مشکل ہے آئنہ
    ہم زانوئےتامل و ہم جلوہ گاہِ گل
    آئینہ بندِ خلوت و محفل ہے آئنہ
    دل کارگاہِ فکر و اسدؔ بے نوائےدل
    یاں سنگِ آستانۂ بیدل ہے آئنہ




    جوشِ دل ہے مجھ سےحسنِ فطرتِ بیدل نہ پوچھ
    قطرے سے میخانہ دریائےبے ساحل نہ پوچھ
    پہن ِگشتن ہائےدل بزمِ نشاطِ گردِباد
    لذتِ عرضِ کشادِ عقدۂ مشکل نہ پوچھ
    آبلہ پیمانۂ اندازۂ تشویش تھا
    اے دماغِ نارسا! خم خانۂ منزل نہ پوچھ
    نے صبا بالِ پری، نے شعلہ سامانِ جنوں
    شمع سے جز عرضِ افسونِ گدازِ دل نہ پوچھ
    یک مژہ برہم زدن، حشرِ دو عالم فتنہ ہے
    یاں سراغِ عافیت ، جز دیدۂ بسمل نہ پوچھ
    بزم ہے یک پنبۂ مینا، گدازِ ربط سے
    عیش کر ، غافل، حجابِ نشۂ محفل نہ پوچھ
    تا تخلص جامۂ شنگرفی ارزانی، اسدؔ
    شاعری جز سازِ درویشی نہیں، حاصل نہ پوچھ




    جز، دل سراغِ درد بدل خفتگاں نہ پوچھ
    آئینہ عرض کر، خط و خالِ بیاں نہ پوچھ
    پرواز، یک تپِ غمِ تسخیرِ نالہ ہے
    گرمئیِ نبضِ خار و خسِ آشیاں نہ پوچھ
    ہے سبزہ زار ہر در و دیوارِ غم کدہ
    جس کی بہار یہ ہو پھر اس کی خزاں نہ پوچھ
    ہندوستان سایۂ گل پائےتخت تھا
    جاہ وجلالِ عہد وصلِ بتاں نہ پوچھ
    تو مشقِ ناز کر، دلِ پروانہ ہے بہار
    بے تابیِ تجلیِ آتش بجاں نہ پوچھ
    غفلت متاع کفۂ میزانِ عدل ہیں
    یارب، حسابِ سختیِ خوابِ گراں نہ پوچھ
    ہر داغِ تازہ یک دلِ داغ انتظار ہے
    عرضِ فضائےسینۂ درد امتحاں نہ پوچھ
    ناچار بے کسی کی بھی حسرت اٹھائیے
    دشورای رہ و ستمِ ہمرہاں نہ پوچھ
    کہتا تھا کل وہ محرم راز اپنے سے کہ آہ
    دردِ جدائیِ اسداللہ خاں نہ پوچھ



    ضبط سے ، جوں مردمک، اسپند اقامت گیر ہے
    مجمرِ بزمِ فسردن، دیدۂ نخچیر ہے
    آشیاں بندِ بہارِ عیش ہوں ہنگامِ قتل
    یاں پرِ پروازِ رنگِ رفتہ، بالِ تیر ہے
    ہے جہاں فکرِ کشیدن ہائےنقشِ روئےیار
    ماہتابِ ہالہ پیرا گردۂ تصویر ہے
    وقتِ حسن افروزیِ زینت طرازاں، جائے گل
    ہر نہالِ شمع میں ا ک غنچۂ گل گیر ہے
    گریے سے بندِ محبت میں ہوئی نام آوری
    لخت لختِ دل ، مکینِ خانۂ زنجیر ہے
    ریزشِ خونِ وفا ہے جرعہ نوشی ہائےیار
    یاں گلوئےشیشۂ مے ، قبضۂ شمشیر ہے
    جو بشامِ غم چراغِ خلوتِ دل تھا، اسدؔؔ
    وصل میں وہ سوز، شمعِ مجلسِ تقریر ہے
     
  8. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    کرےہے رہرواں سے خضرِ راہِ عشق جلادی
    ہوا ہے موجہءِ ریگِ رواںشمشیرِ فولادی
    نظر بندِ تصور ہے قفس میں، لطفِ آزادی
    شکستِ آرزو کے رنگ کی کرتا ہوں صیادی
    کرے ہے حسنِ ویراں کاررُوئے سادہ رویاں پر
    غبارِ خط سےتعمیرِ بنائے خانہ بربادی
    چنار آسا عدم سے بادلِ پُر آتش آیا ہوں
    تہی آغوشیِ دشتِ تمناکا ہوں فریادی
    اسدؔ، از بس کہ فوجِ درد و غم سرگرمِ جولاں ہے
    غبارِ راہ ویرانی ہے ملک ِدل کی آبادی



    یہ سر نوشت میں میری ہے، اشک افشانی
    کہ موجِ آب ہے ، ہر ایک چینِ پیشانی
    جنونِ وحشتِ ہستی ، یہ عام ہے کہ بہار
    رکھے ہے کسوتِ طاؤس میں پر افشانی
    لبِ نگار میں آئینہ دیکھ، آبِ حیات
    بہ گمرہیِ سکندر ہے ، محوِ حیرانی
    نظر بہ غفلتِ اہلِ جہاں، ہوا ظاہر
    کہ عیدِ خلق پہ حیراں ہے چشمِ قربانی
    کہوں وہ مصرعِ برجستہ وصفِ قامت میں
    کہ سرو ہو نہ سکے اُس کا مصرعِ ثانی
    اسد نے کثرتِ دل ہائےخلق سے جانا
    کہ زلفِ یار ہے مجموعۂ پریشانی



    ہے آرمیدگی میں نکوہش بجا مجھے
    صبحِ وطن ، ہے خندۂ دنداں نما مجھے
    ہے پیچ تابِ رشتۂ شمعِ سحر گہی
    خجلت گدازیِ نفسِ نارسا مجھے
    واں رنگ ہا بہ پردۂ تدبیر ہیں ہنوز
    یاں شعلۂ چراغ ہے، برگِ حنا مجھے
    ڈھونڈھےہے اس مغنی آتشِ نفس کو، جی
    جس کی صدا ، ہو جلوہِ برقِ فنا مجھے
    مستانہ طے کروں ہوں رہِ وادیِ خیال
    تا بازگشت سے نہ رہے مدعا مجھے
    پرواز ہا نیازِ تماشائےحسنِ دوست
    بالِ کشادہ ہے، نگہِ آشنا مجھے
    کرتا ہے ،بس کہ باغ میں تو، بے حجابیاں
    آنے لگی ہے نکہتِ گل سے حیا مجھے
    از خود گزشتگی میں خموشی پہ حرف ہے
    موجِ غبارِ سرمہ ہوئی ہے صدا مجھے
    کھلتا کسی پہ کیوں مرے دل کا معاملہ؟
    شعروں کے انتخاب نے رسوا کیا مجھے
    تا چند پست فطرتیِ طبعِ آرزو؟
    یا رب ملے بلندیِ دستِ دعا مجھے
    یاں آب و دانہ، موسمِ گل میں، حرام ہے
    زنارِ واگسستہ ہے، موجِ صبا مجھے
    یکبار امتحانِ ہوس بھی ضرور ہے
    اے جوشِ عشق، بادۂ مرد آزما مجھے
    میں نے جنوں سے کی جو، اسدؔ، التماسِ رنگ
    خونِ جگر میں ایک ہی غوطہ دیا مجھے



    ہر رنگِ سوز، پردۂ یک ساز ہے مجھے
    بال سمندر، آئنۂ ناز ہے مجھے
    طاؤسِ خاک، حسنِ نظر باز ہے مجھے
    ہر ذرہ ، چشمکِ نگہِ ناز ہے مجھے
    آغوشِ گل ہے آئنۂ ذرّہ ذرّہ خاک
    عرضِ بہار، جوہرِ پرداز ہے مجھے
    ہے بوئےگل غریبِ تسلی گہِ وطن
    ہر جزوِ آشیاں ،پرِ پرواز ہے مجھے
    ہے جلوۂ خیال ، سویدائےمردمک
    جوں داغ، شعلہ سر خطِ آغاز ہے مجھے
    وحشت بہارِ نشّہ وگل ساغرِ شراب
    چشمِ پری ، شفق کدۂ راز ہے مجھے
    فکرِ سخن بہانۂ پردازِ خامشی
    دودِ چراغ ، سرمۂ آواز ہے مجھے
    ہے خامہ فیضِ بیعتِ بیدل بکف ، اسدؔ
    یک نیستاں قلمروِ اعجاز ہے مجھے



    کہوں کیا گرمجوشی مے کشی میں شعلہ رویاں کی
    کہ شمعِ خانۂ دل ،آتشِ مے سے فروزاں کی
    سیاہی جیسے گرجاوےدمِ تحریر کاغذ پر
    میری قسمت میں یوں تصویر ہے شب ہائے ہجراں کی
    بہ زلفِ مہ وشاں، رہتی ہے، شب بیدار، ظاہر ہے
    زبانِ شانہ سےتعبیرِ صد خوابِ پریشاں کی
    ہمیشہ مجھ کو طفلی میں بھی مشقِ تیرہ روزی تھی
    سیاہی ہے مرے ایام میں، لوحِ دبستاں کی
    دریغ! آہِ سحر گہ کارِ بادِ صبح کرتی ہے
    کہ ہوتی ہے زیادہ، سرد مہری شمعِ رویاں کی
    مجھے اپنے جنوں کی، بے تکلف، پردہ داری تھی
    ولیکن کیا کروں، آوے جو رسوائی گریباں کی
    ہنر پیدا کیا ہے میں نے، حیرت آزمائی میں
    کہ جوہر آئینے کا، ہر پلک ہے ، چشمِ حیراں کی
    خدایا، کس قدر اہلِ نظر نے خاک چھانی ہے!
    کہ ہیں صد رخنہ، جوں غربال، دیواریں گلستاں کی
    ہوا شرمِ تہیدستی سے وہ بھی سرنگوں آخر
    بس ، اے زخمِ جگر ، اب دیکھ لی شورش نمک داں کی
    بیادِ گرمیِ صحبت، برنگِ شعلہ دہکے ہے
    چھپاؤں کیونکہ غالبؔ، سوزشیں داغِ نمایاں کی



    جنوں تہمت کشِ تسکیں نہ ہو، گوشادمانی کی
    نمک پاشِ خراشِ دل ہے لذت زندگانی کی
    کشاکش ہائےہستی سے کرے کیا سعیِ آزادی
    ہوئی زنجیر موجِ آب کو، فرصت روانی کی
    نہ کھینچ اے سعیِ دستِ نارسا، زلفِ تمنا کو
    پریشاں تر ہے موئےخامہ سے تدبیر مانی کی
    کماں ہم بھی رگ وپے رکھتے ہیں انصاف بہتر ہے
    نہ کھینچے ، طاقتِ خمیازہ، تہمت ناتوانی کی
    تکلف بر طرف، فرہاد اور اتنی سبک دستی
    خیال آساں تھا ، لیکن خوابِ خسرو نے گرانی کی
    پس از مُردن بھی ، دیوانہ ، زیارت گاہِ طفلاں ہے
    شرارِ سنگ نے تربت پہ میری گل فشانی کی
    اسدؔ کو بوریے میں دھر کے پھونکا موجِ ہستی نے
    فقیری میں بھی باقی ہے شرارت نوجوانی کی




    نکوہش ہے سزا فریادیِ بیدادِ دلبر کی
    مبادا !خندۂ دنداں نما ہو، صبح محشر کی
    رگِ لیلٰی کو ، خاکِ دشتِ مجنوں ریشگی بخشے
    اگر بو دے بجائےدانہ، دہقاں ، نوک نشتر کی
    مرا دل مانگتے ہیں عاریت اہل ہوس، شاید
    یہ جایا چاہتے آج دعوت میں سمندر کی
    پرِ پروانہ شاید بادبانِ کشتیِ مے تھا
    ہوئی مجلس کی گرمی سے، روانی دورِ ساغر کی
    کروں بیدادِ ذوقِ پر فشانی عرض، کیا قدرت!
    کہ طاقت اڑ گئی اڑنے سے پہلے، میرے شہپر کی
    غرورِ لطفِ ساقی نشۂ بے باکیِ مستاں
    نمِ دامانِ عصیاں ہے، طراوت موجِ کوثر کی
    کہاں تک روؤں اس کے خیمے کے پیچھے؟ قیامت ہے!
    مری قسمت میں یا رب، کیا نہ تھی دیوار پتھر کی؟
    تھکا جب قطرہ بے دست و پابالادویدن سے
    زِ بہرِ یادگاری ہاگرہ دیتا ہے گوہر کی
    بجز دیوانگی ہوتا نہ انجامِ خود آرائی
    اگر پیدا نہ کرتا آئنہ زنجیر جوہر کی
    اسد ؔ، جز آب بخشیدن ز دریا خضر کو کیا تھا!
    ڈبوتا چشمۂ حیواں میں، گر ، کشتی سکندر کی




    آنکھوں میں انتظار سے جاں پر شتاب ہے
    آتا ہے آ، وگرنہ یہ پا در رکاب ہے
    حیراں ہوں، دامنِ مژہ کیوں جھاڑتا نہیں
    خط صفحہءِ عذار پہ گردِ کتاب ہے
    جوں نخلِ ماتم، ابر سے مطلب نہیں مجھے
    رنگِ سیاہِ نیل، غبارِ سحاب ہے
    ممکن نہیں کہ ہودلِ خوباں میں کارگر
    تاثیر جستن اشک سےنقش بر آب ہے
    ظاہرہے، طرزِ قید سے، صیاد کی غرض
    جو دانہ دام میں ہے، سواشکِ کباب ہے
    بے چشمِ دل نہ کر ہوسِ سیرِ لالہ زار
    یعنی یہ ہر ورق، ورقِ انتخاب ہے
    دیکھ ، اے اسدؔ، بہ دیدہ باطن کہ ظاہرا
    ہر ایک ذرہ غیرتِ صد آفتاب ہے



    بے خود زِ بس خاطرِ بے تاب ہوگئی
    مژگانِ بازماندہ، رگِ خواب ہوگئی
    موجِ تبسم ِلب آلودہ مسی
    میرے لیے تو تیغِ سیہ تاب ہوگئی
    رخسارِ یار کی جو کھلی جلوہ گستری
    زلفِ سیاہ بھی، شبِ مہتاب ہوگئی
    بیدادِ انتظار کی طاقت نہ لا سکی
    اے جانِ بر لب آمدہ،بے تاب ہوگئی
    غالبؔ، زِ بس کہ سوکھ گئےچشم میں سرشک
    آنسو کی بوند گوہرِ نایاب ہوگئی




    ہجوم ِغم سے یاں تک سرنگونی مجھ کو حاصل ہے
    کہ تارِ دامن و تارِ نظر میں فرق مشکل ہے
    ہوا ہے مانعِ عاشق نوازی، نازِ خود بینی
    تکلف بر طرف، آئینۂ تمییز حائل ہے
    بہ سیلِ اشک ، لختِ دل ہے دامن گیر مژگاں کا
    غریقِ بحر جویائےخس و خاشاکِ ساحل ہے
    نکلتی ہے تپش میں بسملوں کی، برق کی شوخی
    غرض اب تک خیالِ گرمیِ رفتارِ قاتل ہے
    بہا ہے یاں تک اشکوں میں، غبارِ کلفتِ خاطر
    کہ چشمِ تر میں ہر اک پارۂ دل پائےدر گل ہے
    رفوئےزخم سے مطلب، ہے لذت زخمِ سوزن کی
    سمجھیو مت کہ پاسِ درد سے دیوانہ غافل ہے
    وہ گُل جس گلستاں میں جلوہ فرمائی کرے غالبؔؔؔ
    چٹکنا غنچۂ گُل کا صدائےخندۂ دل ہے



    جنوں رسوائیِ وارستگی؟ زنجیر بہتر ہے
    بقدرِ مصلحت دل بستگی، تدبیر بہتر ہے
    خوشا خود بینی و تدبیر و غفلت نقد اندیشہ
    بہ دینِ عجز اگر بدنامیِ تقدیر بہتر ہے
    کمالِ حسن اگر موقوفِ اندازِ تغافل ہو
    تکلف برطرف، تجھ سے تری تصویر بہتر ہے
    دلِ آگاہ تسکیں خیزِ بے دردی نہ ہو یا رب!
    نفس آئینہ دارِ آہِ بے تاثیر بہتر ہے
    خدایا، چشم تا دل درد ہے ، افسونِ آگاہی!
    نگہ ، حیرت سوادِ خوابِ بے تعبیر بہتر ہے
    درونِ جوہرِ آئینہ ، جوں برگِ حنا، خوں ہے
    بتاں، نقشِ خود آرائی ، حیا تحریر بہتر ہے
    تمناہے، اسدؔ، قتلِ رقیب اور شکر کا سجدہ
    دعائےدل بہ محرابِ خمِ شمشیر بہتر ہے



    مژہ ، پہلوئےچشم، اے جلوۂ ادراک باقی ہے
    ہوا وہ شعلہ داغ ، اور شوخیِ خاشاک باقی ہے
    چمن میں کچھ نہ چھوڑا تو نے غیر از بیضۂ قمری
    عدم میں ، بہرِ فرقِ سرو ، مشتِ خاک باقی ہے
    گدازِ سعیِ بینش شست و شو ے نقشِ خود کامی
    سراپا شبنم آئیں، یک نگاہِ پاک باقی ہے
    ہوا ترکِ لباسِ زعفرانی دلکشا، لیکن
    ہنوز آفت نسب یک خندہ، یعنی چاک ، باقی ہے
    چمن زارِ تمنا ہوگئی صرفِ خزاں، لیکن
    بہارِ نیم رنگِ آہِ حسرت ناک باقی ہے
    نہ حیرت چشمِ ساقی کی ، نہ صحبت دورِ ساغر کی
    مری محفل میں، غالبؔ ، گردشِ افلاک باقی ہے




    خموشیوں میں "تماشا ادا "نکلتی ہے
    نگاہ، دل سے ترے سرمہ سا نکلتی ہے
    بہ حلقۂ خمِ گیسوہےراستی آموز
    دہانِ مار سے گویا صبا نکلتی ہے
    بہ رنگِ شیشہ ہوں یک گوشۂ دلِ خالی
    کبھی پری مری خلوت میں آنکلتی ہے
    فشارِ تنگیِ خلوت سے بنتی ہے شبنم
    صبا جو غنچے کے پردے میں جا نکلتی ہے
    نہ پوچھ سینۂ عاشق سے آبِ تیغِ نگاہ
    کہ زخمِ روزنِ در سے ہوا نکلتی ہے
    بہار شوخ و چمن تنگ و رنگِ گل دلچسپ
    نسیم ، باغ سے پا در حنا نکلتی ہے
    اسد کو حسرتِ عرضِ نیاز تھی دمِ قتل
    ہنوز ، یک سخنِ بے صدا نکلتی ہے



    ز بس کہ، مشقِ تماشا ، جنوں علامت ہے
    کشاد و بستِ مژہ، سیلیِ ندامت ہے
    نہ جانوں، کیونکہ مٹے داغِ طعنِ بد عہدی
    تجھے کہ آئنہ بھی ورطۂ ملامت ہے
    بہ پیچ و تابِ ہوس، سلکِ عافیت مت توڑ
    نگاہِ عجز، سرِ رشتۂ سلامت ہے
    وفا مقابل و دعوائےعشق بے بنیاد
    جنونِ ساختہ و فصلِ گل ، قیامت ہے
    اسدؔ، بہارِ تماشائےگلستانِ حیات
    وصالِ لالہ عذارانِ سرو قامت ہے
     
  9. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    تر جبیں رکھتی ہے ، شرمِ قطرہ سامانی مجھے
    موجِ گردابِ حیا ہے، چینِ پیشانی مجھے
    شبنم آسا کُو مجالِ سبحہ گردانی مجھے؟
    ہے ، شعاعِ مہر ، زنارِ سلیمانی مجھے
    بلبلِ تصویر ہوں بیتابِ اظہارِ تپش
    جنبشِ نالِ قلم ، جوشِ پریشانی مجھے
    ضبطِ سوزِ دل ہے وجہِ حیرتِ اظہارِ حال
    داغ ہے مُہرِ دہن، جوں چشمِ قربانی مجھے
    شوخ ، ہے مثلِ حباب از خویش بیروں آمدن
    ہے گریباں گیرِ، فرصت ذوقِ عریانی مجھے
    واکیا ہرگز نہ میرا عقدۂ تارِ نفس
    ناخنِ بریدہ ہے تیغِ صفاہانی مجھے
    ہوں ہیو لائےدو عالم، صورتِ تقریر، اسدؔ
    فکر نے سونپی خموشی کی گریبانی مجھے



    ہم زباں آیا نظر فکرِ سخن میں تُو مجھے
    مردمک ، ہے طوطئ آئینۂ زانو مجھے
    باعث ِواماندگی ہے عمرِ فرصت جُو مجھے
    کر دیا ہے پا بہ زنجیرِ رمِ آہو مجھے
    پا بدامن ہو رہا ہوں، بس کہ، میں صحرا نورد
    خارِ پا ہیں جوہرِ آئینۂ زانو مجھے
    خاکِ فرصت بر سرِ ذوقِ فنا ! اے انتظار
    ہے غبارِ شیشۂ ساعت، رمِ آہو مجھے
    یادِمژگاں میں بہ نشتر رازِ صحرائےخیال
    چاہیے وقتِ تپش یک دست صد پہلو مجھے
    دیکھنا حالت مرے دل کی، ہم آغوشی کے وقت
    ہے نگاہِ آشنا ، تیرا سرِ ہر مو، مجھے
    کثرتِ جور وستم سے ، ہو گیا ہو ں بے دماغ
    خوبرویوں نے بنایا عاقبت بدخو مجھے
    ہوں سراپا سازِ آہنگِ شکایت کچھ نہ پوچھ
    ہے یہی بہتر کہ لوگوں میں نہ چھیڑے تو مجھے
    اضطرابِ عمر بے مطلب نہیں آخر، کہ ہے
    جستجوئےفرصتِ ربطِ سرِ زانو مجھے
    چاہیے درمانِ ریشِ دل بھی تیغِ ناز سے
    مرہمِ زنگار ہے وہ وسمۂ ابرو مجھے
    فرصتِ آرام غش، ہستی ہے بحرانِ عدم
    ہے شکستِ رنگِ امکاں ، گردشِ پہلو مجھے
    سازِ ایمائےفنا ہے عالمِ پیری ، اسدؔ
    قامتِ خم سے ہے حاصل شوخیِ ابرو مجھے



    یاد ہے شادی میں بھی ہنگامہ " یارب" مجھے
    سبحۂ زاہد ہوا ہے خندہ زیرِ لب مجھے
    ہے کشادِ خاطرِ وابستہ، در رہنِ سخن
    تھا طلسمِ قفلِ ابجد، خانۂ مکتب مجھے
    یا رب، اس آشفتگی کی داد کس سے چاہیے؟
    رشک آسایش پہ ہے زندانیوں کی اب مجھے
    صبح، ناپیدا ہے کلفت خانۂ ادبار میں
    توڑنا ہوتا ہے رنگِ یک نفس، ہر شب مجھے
    شومئیِ طالع سے ہوں ذوقِ معاصی میں اسیر
    نامۂ اعمال ہے ، تاریکیِ کوکب مجھے
    درد نا پیدا و بے جا تہمتِ وارستگی
    پردہ دارِ یاوگی ہے، وسعتِ مشرب مجھے
    طبع ہے مشتاقِ لذت ہائےحسرت کیا کروں!
    آرزو سے ہے ، شکستِ آرزو، مطلب مجھے
    دل لگا کر آپ بھی، غالبؔ، مجھی سے ہوگئے
    عشق سے آتے تھے مانع ، میرزا صاحب مجھے




    کاوشِ دزدِ حنا پوشیدہ افسوں ہے مجھے
    ناخنِ انگشتِ خوباں ، لعلِ واژوں ہے مجھے
    ریشۂ شہرت دوانیدن ہے، رفتن زیرِ خاک
    خنجرِ جلاد ، برگِ بیدِ مجنوں، ہے مجھے
    ساقیا! دے ایک ہی ساغر میں سب کو مے، کہ آج
    آرزوئے بوسۂ لب ہائےمے گوں ہے مجھے
    ہو گئےباہم دگر، جوشِ پریشانی سے، جمع
    گردشِ جامِ تمنا ، دورِ گردوں ، ہے مجھے
    دیکھ لی جوشِ جوانی کی ترقّی بھی کہ اب
    بدر کے مانند، کاہش روز افزوں ہے مجھے
    غنچگی ہے، برنفس پیچیدنِ فکر، اے اسدؔ
    وا شگفتن ہائےدل در رہنِ مضموں ہے مجھے




    دیکھ تری خوئے گرم، دل بہ تپش رام ہے
    طائرِ سیماب کو، شعلہ، رگِ دام ہے
    شوخیِ چشمِ حبیب، فتنۂ ایام ہے
    قسمتِ بختِ رقیب، گردشِ صد جام ہے
    جلوۂ بینش پناہ بخشے ہے ذوقِ نگاہ
    کعبۂ پوشش سیاہ مردمک احرام ہے
    کُو نفس و چہ غبار؟ جرأتِ عجز آشکار
    در تپش آبادِ شوق ، سرمہ ، صدا نام ہے
    غفلتِ افسردگی، تہمتِ تمکیں نہ ہو
    اے ہمہ خوابِ گراں، حوصلہ بدنام ہے
    بزمِ وداعِ نظر، یاس طربِ نامہ بر
    فرصتِ رقصِ شرر، بوسہ بہ پیغام ہے
    گریۂ طوفاں رکاب، نالۂ محشر عناں
    بے سر و ساماں اسدؔ، فتنہ سر انجام ہے




    بس کہ سودائےخیالِ زلف، وحشت ناک ہے
    تا دلِ شب ، آبنوسی شانہ آسا، چاک ہے
    یاں ، فلاخن باز ، کس کا نالۂ بے باک ہے؟
    جادہ تا کہسار ، موئےچینیِ افلاک ہے
    ہے دو عالم ناز یک صیدِ شہِ دُلدل سوار
    یاں، خطِ پرکارِ ہستی ، حلقۂ فتراک ہے
    خلوتِ بال و پرِ قمری میں وا کر راہِ شوق
    جادۂ گلشن، بہ رنگِ ریشہ، زیرِ خاک ہے
    عیش گرمِ اضطراب و اہلِ غفلت سرد مہر
    دورِ ساغر ، یک گلستاں برگ ریزِ تاک ہے
    عرضِ وحشت پر ہے، نازِ ناتوانی ہائےدل
    شعلۂ بے پردہ ، چینِ دامنِ خاشاک ہے
    ہے کمندِ موجِ گل، فتراکِ بیتابی، اسدؔ
    رنگ یاں بوُ سے، سوارِ توسنِ چالاک ہے




    چشمِ خوباں خامشی میں بھی نوا پردازہے
    سرمہ تُو کہوےکہ دُودِ شعلۂ آواز ہے
    پیکرِ عشاق، سازِ طالعِ ناساز ہے
    نالہ، گویا، گردشِ سیار ، کی آواز ہے
    ہے صریرِ خامہ، ریز ش ہائےاستقبالِ ناز
    نامہ خود پیغام کو بال و پرِ پروازہے
    سرنوشتِ اضطراب انجامیِ الفت نہ پوچھ
    نالِ خامہ، خار خارِ خاطرِ آغاز ہے
    شرم ہے طرزِ تلاشِ انتخابِ یک نگاہ
    اضطرابِ چشمِ برپادوختہ غمّاز ہے
    نغمہ ہےکانوں میں اس کے، نالہ مرغِ اسیر
    رشتۂ پا، یاں نواسامانِ بندِ ساز ہے
    دستگاہ دیدہ خونبارِ مجنوں دیکھنا
    یک بیاباں جلوہ گل، فرشِ پا انداز ہے
    نقشِ سطرِصد تبسم ہے بر آب زیرِ گاہ
    حسن کا خط پر نہاں خندیدنی انداز ہے
    شوخیِ اظہار غیراز وحشتِ مجنوں نہیں
    لیلیٰ معنی، اسدؔ، محمل نشینِ راز ہے




    بس کہ حیرت سے ز پا افتادۂ زنہار ہے
    ناخنِ انگشت، بتخالِ لبِ بیمار ہے
    جی جلے ذوقِ فنا کی ناتمامی پر نہ کیوں؟
    ہم نہیں جلتے، نفس ہر چند آتشبار ہے
    زلف سے شب درمیاں دادن نہیں ممکن دریغ!
    ورنہ ، صد محشر بہ رہنِ جلوہ رخسار ہے
    ہے وہی بد مستیِ ہر ذرہ کا خود عذر خواہ
    جس کے جلوے سے، زمیں تا آسماں سرشار ہے
    بسکہ ویرانی سے کفر و دیں ہوئےزیر و زبر
    گردِ صحرائےحرم تا کوچۂ زنار ہے
    اے سرِ شوریدہ، ذوقِ عشق و پاسِ آبرو!
    جوشِ سوداکب حریفِ منتِ دستار ہے
    مجھ سے مت کہہ تو ہمیں کہتا تھا اپنی زندگی
    زندگی سے بھی، مرا جی ان دنوں بیزار ہے
    آنکھ کی تصویر، سرنامے پہ کھینچی ہے، کہ تا
    تجھ پہ کھل جاوے کہ اس کو حسرتِ دیدار ہے
    وصل میں دل انتظارِ طرفہ رکھتا ہے، مگر
    فتنہ، تاراجِ تمنا کے لیے درکار ہے
    ایک جا حرفِ وفا لکھا تھا، سو بھی مٹ گیا
    ظاہرا ، کاغذ ترے خط کا، غلط بردار ہے
    آگ سے پانی میں بجھتے وقت اٹھتی ہے صدا
    ہر کوئی ،درماندگی میں، نالے سے ناچار ہے
    در خیال آبادِ سودائےسرِ مژگانِ دوست
    صد رگِ جاں، جادہ آسا، وقفِ نشتر زار ہے
    خانماں ہا، پائمالِ شوخیِ دعویٰ، اسدؔ
    سایۂ دیوار، سیلابِ در و دیوار ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    کوہ کے ہوں بارِ خاطر، گر صدا ہو جائیے
    بے تکلف، اے شرارِ جستہ، کیا ہو جائیے؟
    یاد رکھیے ناز ہائےالتفاتِ اولیں
    آشیانِ طائرِ رنگِ حنا ہو جائیے
    بیضہ آسا، تنگِ بال و پر پہ ہے کنجِ قفس
    از سرِ نو زندگی ہو، گر رہا ہو جائیے
    لطفِ عشقِ ہر یک اندازِ دگر دکھلائےگا
    بے تکلف یک نگاہِ آشنا ہو جائیے
    داد از دستِ جفائےصدمۂ ضرب المثل!
    گر ہمہ اُفتادگی ، جوں نقشِ پا ہو جائیے
    از دلِ ہر دردمندےجوشِ بے تابی زدن
    اے ہمہ بے مدعائی، یک دعا ہو جائیے
    وسعتِ مشرب، نیازِ کلفتِ وحشت، اسدؔ
    یک بیاباں سایۂ بالِ ہُما ہو جائیے




    کوشش ، ہمہ بے تابِ تردد شکنی ہے
    صد جنبشِ دل، یک مژہ برہم زدنی ہے
    گو حوصلہ پامردِ تغافل نہیں، لیکن
    خاموشیِ عاشق ، گلۂ کم سخنی ہے
    دی لطفِ ہوا نے بہ جنوں، طرفہ نزاکت
    تا آبلہ، دعوائےتنک پیرہنی ہے
    رامشگرِ اربابِ فنا، نالۂ زنجیر
    عیشِ ابد، از خویش بروں تا ختنی ہے
    از بس کہ ہے محوِ بہ چمن تکیہ زدن پا
    گل برگ ، پرِ بالشِ سروِ چمنی ہے
    آئینہ و شانہ ، ہمہ دست و ہمہ زانو
    اے حسن ، مگر حسرتِ پیماں شکنی ہے
    فریاد، اسدؔ، بے نگہی ہائےبتاں سے
    سچ کہتے ہیں، واللہ ، کہ اللہ غنی ہے




    کاشانۂ ہستی کہ برانداختنی ہے
    یاں سوختنی ، اور وہاں ساختنی ہے
    ہے شعلۂ شمشیرِ فنا، حوصلہ پرداز
    اے داغِ تمنا ، سپر انداختنی ہے
    جز خاک بسر کردنِ بے فائدہ حاصل؟
    ہر چند بہ میدانِ ہوس تاختنی ہے
    اے بے ثمراں! حاصلِ تکلیفِ دمیدن
    گردن ،بہ تماشائےگل، افراختنی ہے
    ہے سادگیِ ذہن، تمنائےتماشا
    جائے کہ، اسد ؔ، رنگِ چمن باختنی ہے




    حکمِ بیتابی نہیں، اور آرمیدن منع ہے
    باوجودِ مشقِ و حشت ہا، رمیدن منع ہے
    شرم ، آئینہ تراشِ جبہۂ طوفان ہے
    آب گردیدن روا ، لیکن چکیدن منع ہے
    بیخودی، فرمانر وائےحیرت آبادِ جنوں
    زخم دوزی جرم و پیراہن دریدن منع ہے
    مژدۂ دیدار سے رسوائیِ اظہار دُور
    آج کی شب ، چشمِ کوکب تک پریدن منع ہے
    بیمِ طبعِ نازکِ خوباں سے ، وقتِ سیرِ باغ
    ریشۂ زیرِ زمیں کو بھی دویدن منع ہے
    یار معذورِ تغافل ہے، عزیزاں شفقتے!
    نالۂ بلبل بگوشِ گل شنیدن منع ہے
    مانعِ بادہ کشی ناداں ہے ، لیکن ، اسدؔ
    بے ولائےساقیِ کوثر کشیدن منع ہے




    چار سوئے عشق میں صاحب دکانی مفت ہے
    نقد ہے داغِ دل، اور آتش زبانی مفت ہے
    زخمِ دل پر باندھیے حلوائےمغزِ استخواں
    تندرستی فائدہ، اور ناتوانی مفت ہے
    نقدِ انجم تا بکے از کیسہ بیروں ریختن؟
    یعنی، اے پیرِ فلک، شامِ جوانی مفت ہے
    گر نہیں پاتا درونِ خانہ، ہر بیگانہ، جا
    بر درِ نکشودۂ دل، پاسبانی مفت ہے
    چونکہ بالائےہوس پر ہر قبا کوتاہ ہے
    بر ہوس ہائےجہاں دامن فشانی مفت ہے
    یک نفس، ہر یک نفس، جاتا ہے قسطِ عمر میں
    حیف ہے اُن کو جو سمجھیں زندگانی مفت ہے
    مال و جاہ دست و پابےزر خریدہ ہیں، اسدؔ
    پس بہ دل ہائےدگر راحت رسانی مفت ہے



    بے تابیِ یادِ دوست ، ہم رنگِ تسلی ہے
    غافل، تپشِ مجنوں ، محمل کشِ لیلی ہے
    کلفت کشیِ ہستی ، بدنامِ دو رنگی ہے
    یاں تیرگیِ اختر، خالِ رخِ زنگی ہے
    دیدن ہمہ بالیدن ، کردن ہمہ افسردن
    خوشتر ز گل و غنچہ، چشم و دلِ ساقی ہے
    وہمِ طربِ ہستی ، ایجادِ سیہ مستی
    تسکیں دہِ صد محفل ، یک ساغرِ خالی ہے
    زندانِ تحمل میں مہمانِ تغافل ہیں
    بے فائدہ یاروں کو فرقِ غم و شادی ہے
    ہو وے نہ غبارِ دل تسلیمِ زمیں گیراں
    مغرور نہ ہو، ناداں، سر تا سرِ گیتی ہے
    رکھ فکرِ سخن میں تو معذور مجھے ، غالبؔ
    یاں زورقِ خود داری، طوفانیِ معنی ہے




    گلشن کو تری صحبت، از بس کہ خوش آئی ہے
    ہر غنچے کا گل ہونا، آغوش کشائی ہے
    واں کنگرِ استغنا، ہردم ہے بلندی پر
    یاں نالے کو اور الٹا دعوائےرسائی ہے
    آئینہ ، نفس سے بھی ہوتا ہے کدورت کش
    عاشق کو ، غبارِ دل، اک وجہِ صفائی ہے
    از بس کہ سکھاتا ہے غم ضبط کے اندازے
    جو داغ نظر آیا ، اک چشم نمائی ہے
    ہنگامِ تصور ہوں دریوزہ گرِبوسہ
    یہ کاسۂ زانو بھی اک جامِ گدائی ہے
    وہ ، دیکھ کے حسن اپنا ، مغرور ہوا ، غالبؔ!
    صد جلوۂ آئینہ، یک صبحِ جدائی ہے




    دریوزۂ ساماں ہا، اے بے سر و سامانی
    ایجادِ گریباں ہا، در پردۂ عریانی
    تمثالِ تماشا ہا، اقبالِ تمنا ہا
    عجزِ عرقِ شرمے، اے آئنہ حیرانی
    دعوائےجنوں باطل، تسلیم عبث حاصل
    پروازِ فنا مشکل، میں عجزِ تن آسانی
    بیگانگیِ خوہا ، موجِ رمِ آہوہا
    دامِ گلۂ اُلفت، زنجیرِ پشیمانی
    پرواز تپش رنگی، گلزار ہمہ تنگی
    خوں ہو قفسِ دل میں ، اے ذوقِ پر افشانی
    سنگ آمد و سخت آمد ، دردِ سرِ خود داری
    معذورِ سبکساری ، مجبورِ گراں جانی
    گلزارِ تمنا ہوں ، گلچینِ تماشا ہوں
    صد نالہ اسدؔ، بلبل در بندِ زباں دانی




    نظر بہ نقصِ گدایاں ، کمالِ بے ادبی ہے
    کہ خارِ خشک کو بھی دعوئ چمن نسبی ہے
    ہوا وصال سے شوقِ دلِ حریص زیادہ
    لبِ قدح پہ، کفِ بادہ ، جوشِ تشنہ لبی ہے
    خوشا! وہ دل کہ سراپا طلسمِ بے خبری ہو
    جنون ِیاس و الم، رزقِ مدعا طلبی ہے
    تم اپنے شکوے کی باتیں نہ کھود کھود کے پوچھو
    حذر کرو مرے دل سے کہ اس میں آگ دبی ہے
    چمن میں کس کی، یہ برہم ہوئی ہے ، بزمِ تماشا؟
    کہ برگ برگِ سمن ، شیشہ ریزۂ حلبی ہے
    دلا!یہ درد والم بھی تو مُغْتَنَمْ ہے، کہ آخر
    نہ گریۂ سحری ہے، نہ آہِ نیم شبی ہے
    امامِ ظاہر و باطن، امیرِ صورت و معنی
    علی، ولی، اسداللہ ، جانشینِ نبیﷺ ہے



    دلا، عبث ہے تمنائےخاطر افروزی
    کہ بوسۂ لبِ شریں ہے اور گلو سوزی
    طلسمِ آئنہ زانوئےفکر ہے، غافل
    ہنوز حسن کو ہے ، سعیِ جلوہ اندوزی
    ہوئی ہے سوزشِ دل، بس کہ داغِ بے اثری
    اُگی ہے دودِ جگر سے شبِ سیہ روزی
    بہ پرفشانیِ پروانۂ چراغِ مزار!
    کہ بعدِ مرگ بھی ہے لذتِ جگر سوزی
    تپش تو کیا، نہ ہوئی مشقِ پرفشانی بھی
    رہا میں ضعف سے شرمندۂ نو آموزی
    اسدؔ، ہمیشہ پئے کفشِ پائے سیم تناں
    شعاعِ مہر سے کرتا ہے چرخ زر دوزی




    خبرنگہ کو نگہ چشم کو عدو جانے
    وہ جلوہ کر کہ نہ میں جانوں اور نہ توجانے
    نفس بہ نالہ رقیب و نگہ بہ اشک عدو
    زیادہ اُس سے گرفتار ہوں کہ تو جانے
    بہ کسوتِ عرقِ شرم قطرہ زن ہے خیال
    مباد ، حوصلہ معذورِ جستجو جانے
    جنوں فسردۂ تمکیں ہے، کاش !عہدِ وفا
    گدازِ حوصلہ کو پاسِ آبرو جانے
    نہ ہووے کیونکہ اُسے فرض قتلِ اہلِ وفا
    لہو میں ہاتھ کے بھرنے کو جو وضو جانے
    زباں سے عرضِ تمنائےخامشی معلوم
    مگر وہ خانہ برانداز گفتگو جانے
    مسیحِ کشتۂ اُلفت ببر علی خاں ہے
    کہ جو، اسدؔ، تپشِ نبضِ آرزو جانے




    اگر گُل حسن و اُلفت کی بہم جو شیدنی جانے
    پرِ بلبل کے افسردن کو دامن چیدنی جانے
    فسونِ حُسن سے ہے ، شوخیِ گلگونہ آرائی
    بہار، اس کی کفِ مشاطہ میں بالیدنی جانے
    نوائےبلبل و گل، پاسبانِ بے دماغی ہے
    بہ یک مژگانِ خوباں، صد چمن خوابیدنی جانے
    زہے! شب زندہ دارِ انتظارستاں، کہ وحشت سے
    مژہ ، پیچک میں مہ کی سوزن آسا، چیدنی جانے
    خوشا! مستی، کہ جوشِ حیرتِ اندازِ قاتل سے
    نگہ ، شمشیر میں جوں جوہر، آرامیدنی جانے
    جفا شوخ و ہوس گستاخِ مطلب ہے، مگر عاشق
    نفس، در قالبِ خشتِ لحد دزدیدنی جانے
    نوائےطائرانِ آشیاں گم کردہ آتی ہے
    تماشاہےکہ رنگِ رفتہ بر گردیدنی جانے
    اسدؔ، جاں نذرِ الطافے کہ ہنگامِ ہم آغوشی
    زبانِ ہر سرِ مُو ، حالِ دل پرسیدنی جانے



    گلستاں، بے تکلف پیشِ پا افتادہ مضموں ہے
    جو تو باندھے کفِ پا پر حنا ، آئینہ موزوں ہے
    بہارِ گلِ دماغِ نشۂ ایجادِمجنوں ہے
    ہجومِ برق سے، چرخ و زمیں، یک قطرۂ خوں ہے
    رجوعِ گریہ سوئےدل ،خوشا! سرمایۂ طوفاں
    برانگشتِ حسابِ اشک، ناخن، نعلِ واژوں ہے
    عدم وحشت سراغ و ہستی آئیں بندِ رنگینی
    دماغِ دو جہاں پر ، سنبل و گل، یک شبےخوں ہے
    تماشا ہے علاجِ بے دماغی ہائےدل، غافل
    سویدا مردمِ چشمِ پری ،نظّارہ افسوں ہے
    فنا ، کرتی ہے زائل سر نوشتِ کلفتِ ہستی
    سحر، از بہرِ شست و شوئےداغِ ماہ ، صابوں ہے
    اسدؔ، ہے آج مژگانِ تماشا کی حنا بندی
    چراغانِ نگاہ و شوخیِ اشکِ جگر گوں ہے



    صبح سے معلوم، آثارِ ظہورِ شام، ہے
    غافلاں، آغازِ کار ، آئینۂ انجام ہے
    بس کہ ہے صیاد راہِ عشق میں محوِکمیں
    جادۂ رہ سر بسر، مژگانِ چشمِ دام ہے
    بس کہ تیرے جلوۂ دیدار کا ہے اشتیاق
    ہر بتِ خرشید طلعت، آفتابِ بام ہے
    مستعدِ قتلِ یک عالم ہے ، جلادِ فلک
    کہکشاں ، موجِ شفق میں تیغِ خوں آشام ہے
    کیا کمالِ عشق نقص آبادِ گیتی میں ملے
    پختگی ہائےتصور، یاں خیالِ خام ہے
    ہو جہاں، وہ ساقیِ خرشید رُو ،مجلس فروز
    واں، اسد، ؔتارِ شعاعِ مہر خطِّ جام ہے




    دیکھتا ہوں وحشتِ شوقِ خروش آمادہ سے
    فالِ رسوائی، سرشکِ سر بصحرا دادہ سے
    دام گر سبزے میں پنہاں کیجیے طاؤس ہو
    جوشِ نیرنگِ بہارِ عرضِ صحرا دادہ سے
    آمدِ سیلابِ طوفانِ صدائےآب ہے
    نقشِ پا ، جو کان میں رکھتا ہے انگلی جادہ سے
    بزمِ مے، وحشت کدہ ہے کس کی چشمِ مست کا؟
    شیشے میں، نبضِ پری ، پنہاں ہے موجِ بادہ سے
    خیمۂ لیلیٰ سیاہ و خانۂ مجنوں خراب
    جوشِ ویرانی ہے عشقِ داغ بیروں دادہ سے
    بزمِ ہستی وہ تماشا ہے کہ جس کو ہم، اسدؔ
    دیکھتے ہیں چشمِ از خوابِ عدم نکشادہ سے
     
  11. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    اے خیالِ وصل، نادر ہے مے آشامی تری
    پختگی ہائےکبابِ دل ہوئی خامی تری
    رچ گیا جوشِ صفائےزلف کا، اعضا میں، عکس
    ہے نزاکت جلوہ، اے ظالم، سیہ فامی تری
    برگ ریزی ہائےگل ، ہے وضعِ زر افشاندنی
    باج لیتی ہے گلستاں سے گل اندامی تری
    بس کہ ہے عبرت ادیبِ یاوگی ہائےہوس
    میرے کام آئی دلِ مایوس ناکامی تری
    ہم نشینیِ رقیباں ، گرچہ ہے سامانِ رشک
    لیکن اس سے ناگوارا تر ہے بدنامی تری
    تجھ کو، اے غفلت نسب پروائے مشتاقاں کہاں
    یاں نگہ آلودہ ہے دستارِ بادامی تری
    سر بزانوئےکرم رکھتی ہے شرمِ ناکسی
    اے اسد ؔ، بے جا نہیں ہے غفلت آرامی تری




    چشمِ گریاں ، بسملِ شوقِ بہارِ دید ہے
    اشک ریزی ، عرضِ بال افشانیِ امید ہے
    دامنِ گردوں میں رہ جاتا ہے ہنگامِ وداع
    گوہرِ شب تاب، اشکِ دیدۂ خرشید ہے
    رتبۂ تسلیمِ خلت مشرباں، عالی سمجھ
    چشمِ قربانی ، گلِ شاخِ ہلالِ عید ہے
    کچھ نہیں حاصل تعلق میں بغیر از کشمکش
    اے خوشا! رندےکہ مرغِ گلشنِ تجرید ہے
    کثرتِ اندوہ سے حیران و مضطر ہے اسدؔ
    یا علی، وقتِ عنایات و دمِ تائید ہے



    دل سراپاوقفِ سودائے نگاہِ تیز ہے
    یہ زمیں ، مثلِ نیستاں، سخت ناوک خیز ہے
    ہوسکے کیا خاک دست و بازوئےفرہاد سے؟
    بیستوں، خوابِ گرانِ خسروِ پرویز ہے
    ان ستم کیشوں کے کھائےہیں، زبس، تیرِ نگاہ
    پردۂ بادام ، یک غربالِ حسرت بیز ہے
    خوں چکاں ہے جادہ ، مانندِ رگِ سودائیاں
    سبزۂ صحرائےاُلفت، نشترِ خوں ریز ہے
    ہے بہارِ تیز رو، گلگونِ نکہت پر سوار
    یک شکستِ رنگِ گل، صد جنبش مہمیز ہے
    کیوں نہ ہو ، چشمِ بتاں،محوِ تغافل، کیوں نہ ہو؟
    یعنی اس بیمار کو نظارے سے پرہیز ہے
    مرتے مرتے دیکھنے آرزو رہ جائے گی
    وائے ناکامی!کہ اس کافر کا خنجر تیز ہے
    عارضِ گل دیکھ، روئےیار یاد آیا ، اسدؔ
    جوششِ فصلِ بہاری، اشتیاق انگیز ہے



    نظر پرستی و بے کاری و خود آرائی
    رقیبِ آئنہ ہے ، حیرتِ تماشائی
    ز خود گزشتنِ دل ، کاروانِ حیرت ہے
    نگہ، غبارِ ادب گاہِ جلوہ فرمائی
    نہیں ہے حوصلہ، پامردِ کثرتِ تکلیف
    جنونِ ساختہ، حرزِ فسونِ دانائی
    بہ چشم درشدہ مژگاں ، ہے جوہرِ رگِ خواب
    نہ پوچھ نازکیِ وحشتِ شکیبائی
    خرابِ نالۂ بلبل ، شہیدِ خندۂ گل
    ہنوز دعویِ تمکین و بیمِ رسوائی
    شکستِ سازِ خیال، آں سوئےگریوۂ غم
    ہنوز نالہ پر افشانِ ذوقِ رعنائی
    ہزار قافلۂ آرزو، بیاباں مرگ
    ہنوز محملِ حسرت بہ دوشِ خود رائی
    وداعِ حوصلہ، توفیقِ شکوہ، عجزِ وفا
    اسدؔ ہنوز ، گمانِ غرورِ دانائی!



    گدائےطاقتِ تقریر ہے، زباں، تجھ سے
    کہ خامشی کو ہے پیرایۂ بیاں تجھ سے
    فسردگی میں ہے فریادِ بے دلاں تجھ سے
    چراغِ صبح و گلِ موسمِ خزاں تجھ سے
    بہارِ حیرتِ نظارہ، سخت جانی ہے
    حنائےپائےاجل، خونِ کشتگاں ، تجھ سے
    پری بہ شیشہ و عکسِ رخ اندر آئینہ
    نگاہِ حیرتِ مشاطہ ، خوں فشاں تجھ سے
    طراوتِ سحر ایجادی اثر یک سُو
    بہارِ نالہ و رنگینیِ فغاں تجھ سے
    چمن چمن گلِ آئینہ در کنارِ ہوس
    امید ، محوِ تماشائےگلستاں تجھ سے
    نیاز، پردۂ اظہارِ خود پرستی ہے
    جبینِ سجدہ فشاں تجھ سے، آستاں تجھ سے
    بہانہ جوئیِ رحمت، کمیں گرِ تقریب
    وفائےحوصلہ و رنجِ امتحاں تجھ سے
    اسدؔطلسمِ قفس میں رہے، قیامت ہے
    خرام تجھ سے، صبا تجھ سے، گلستاں تجھ سے





    شکلِ طاؤس ، گرفتار بنایا ہے مجھے
    ہوں وہ گلدام کہ سبزے میں چھپایا ہے مجھے
    پرِ طاؤس ، تماشا نظر آیا ہے مجھے
    ایک دل تھا کہ بصد رنگ دکھایا ہے مجھے
    عکسِ خط، تا سخنِ ناصحِ دانا سر سبز
    آئنہ ، بیضۂ طوطی نظر آیا ہے مجھے
    سُنبلستانِ جنوں ہوں ، ستمِ نسبتِ زلف
    مُوکشاں خانۂ زنجیر میں لایا ہے مجھے
    گردباد، آئنۂ محشرِ خاکِ مجنوں
    یک بیاباں دلِ بیتاب اُٹھایا ہے مجھے
    حیرتِ کاغذِ آتش زدہ ہے، جلوۂ عمر
    تہِ خاکسترِ صد آئنہ پایا ہے مجھے
    لالہ و گل بہم آئینۂ اخلاقِ بہار
    ہوں میں وہ داغ کہ پھولوں میں بسایا ہے مجھے
    دردِ اظہارِ تپش کسوتی گل معلوم!
    ہوں میں وہ چاک کہ کانٹوں سے سلایا ہے مجھے
    بے دماغِ تپش و عرضِ دو عالم فریاد
    ہوں میں وہ خاک کہ ماتم میں اُڑایا ہے مجھے
    جامِ ہر ذرہ ہے سرشارِ تمنا مجھ سے
    کس کا دل ہوں ؟کہ دو عالم سے لگایا ہے مجھے
    جوشِ فریاد سے لوں گا دیتِ خواب، اسدؔ
    شوخیِ نغمۂ بیدل نے جگایا ہے مجھے




    باغ تجھ بن گلِ نرگس سے ڈراتا ہے مجھے
    چاہوں گر سیرِ چمن، آنکھ دکھاتا ہے مجھے
    ماہِ نو ، ہوں کہ فلک عجز سکھاتا ہے مجھے
    عمر بھر ایک ہی پہلو پہ سلاتا ہے مجھے
    باغ، پا کرخفقانی، یہ ڈراتا ہے مجھے
    سایہ شاخِ گل، افعی نظر آتا ہے مجھے
    نالہ، سرمایۂ یک عالم و عالم، کفِ خاک
    آسماں بیضۂ قمری نظر آتا ہے مجھے
    جوہرِ تیغ بسر چشمۂ دیگر معلوم
    ہوں میں وہ سبزہ کہ زہراب اُگاتا ہے مجھے
    مدعا ، محوِ تماشائےشکستِ دل ہے
    آئنہ خانے میں کوئی لیے جاتا ہے مجھے
    شورِ تمثال ہے کس رشکِ چمن کا، یارب؟
    آئنہ، بیضۂ بلبل نظر آتا ہے مجھے
    حیرتِ آئنہ انجامِ جنوں ہوں جوں شمع
    کس قدر داغِ جگر شعلہ اُٹھاتا ہے مجھے
    میں ہوں اور حیرتِ جاوید ، مگر ذوقِ خیال
    بہ فسونِ نگہِ ناز ستاتا ہے مجھے
    زندگی میں تو وہ محفل سے اٹھا دیتے تھے
    دیکھوں، اب مر گئے پر کون اٹھاتا ہے مجھے
    حیرتِ فکرِ سخن ، ساز سلامت ہے، اسدؔ
    دل پسِ زانوئےآئینہ بٹھاتاہے مجھے




    قتلِ عشاق نہ غفلت کشِ تدبیر آوے
    یارب، آئینہ بہ طاقِ خمِ شمشیر آوے
    بالِ طاؤس ہے رعنائیِ ضعفِ پرواز
    کون ہے داغ کہ شعلے کا عناں گیر آوے
    عرضِ حیرانیِ بیمارِ محبت معلوم
    عیسیٰ، آخر بکفِ آئینہ تصویر آوے
    ذوقِ راحت اگر احرامِ تپش ہو، جوں شمع
    پائے خوابیدہ ، بہ دلجوئیِ شبگیر آوے
    اُس بیاباں میں گرفتارِ جنوں ہوں کہ جہاں
    موجۂ ریگ سے دل، پائےبہ زنجیر آوے
    وہ گرفتارِ خرابی ہوں کہ فوّارہ نمط
    سیل ، صیادِ کمیں خانۂ تعمیر آوے
    سرِ معنی بہ گریبانِ شقِ خامہ، اسدؔ
    چاکِ دل، شانہ کشِ طرّۂ تحریر آوے




    تشنۂ خونِ تماشا جو وہ پانی مانگے
    آئنہ ، رخصتِ اندازِ روانی مانگے
    رنگ نے گُل سے دمِ عرضِ پریشانیِ بزم
    برگِ گُل، ریزۂ مینا کی نشانی مانگے
    زلف تحریرِ پریشانِ تقاضا ہے، مگر
    شانہ ساں، مُو بہ زباں خامۂ مانی مانگے
    آمدِ خط ہے، نہ کر خندۂ شیریں کہ، مباد!
    چشمِ مور ، آئنۂ دل نگرانی مانگے
    ہوں گرفتارِ کمیں گاہِ تغافل کہ جہاں
    خوابِ صیاد سے، پرواز، گرانی مانگے
    چشمِ پرواز و نفس خفتہ، مگر ضعفِ امید
    شہپرِ کاہ، پئے مژدہ رسانی مانگے
    تو وہ بد خو کہ تحیر کو تماشا جانے
    غم وہ ، افسانہ کہ آشفتہ بیانی مانگے
    وحشتِ شورِ تماشا ہے کہ جوں نکہتِ گل
    نمکِ زخمِ جگر بال فشانی مانگے
    نقشِ نازِ بتِ طناز بآغوشِ رقیب
    پائےطاؤس، پئے خامۂ مانی مانگے
    وہ تبِ عشقِ تمنا ہے کہ پھر، صورتِ شمع
    شعلہ، تا نبضِ جگر ریشہ دوانی مانگے
    گر ملے حضرتِ بیدل کا خطِ لوحِ مزار
    اسد ؔ، آئینۂ پردازِ معانی مانگے




    خوابِ جمعیّتِ مخمل ہے پریشان مجھ سے
    رگِ بستر کو ملی شوخیِ مژگاں مجھ سے
    غمِ عشاق نہ ہو سادگی آموزِ بتاں
    کس قدر خانۂ آئینہ ہے ویراں مجھ سے
    کنجِ تاریک و کمیں گیری اختر شمری
    عینکِ چشم بنا روزنِ زنداں مجھ سے
    اے تسلی، ہوسِ وعدہ فریب افسوں ہے
    ورنہ کیا ہو نہ سکے نالہ بہ ساماں مجھ سے
    بستنِ عہدِ محبت ہمہ نادانی تھا
    چشمِ نکشودہ رہا عقدۂ پیماں مجھ سے
    آتش افروزیِ یک شعلۂ ایما تجھ سے
    چشمک آرائیِ صد شہرِ چراغاں مجھ سے
    اے اسدؔ، دسترسِ وصلِ تمنا ، معلوم
    کاش! ہو قدرتِ برچیدنِ داماں مجھ سے




    فرصت، آئینۂ صد رنگِ خود آرائی ہے
    روز و شب، یک کفِ افسوسِ تماشائی ہے
    وحشتِ زخمِ وفا دیکھ کہ سرتا سرِ دل
    بخیہ ، جوں جوہرِ تیغ ، آفتِ گیرائی ہے
    شمع آسا، چہ سرِ دعوی؟ و کُو پائےثبات؟
    گلِ صد شعلہ ، بیک جیبِ شکیبائی ہے
    نالہ خونیں ورق ، و دل گلِ مضمونِ شفق
    چمن آرائےنفس، و حشتِ تنہائی ہے
    بوئےگل فتنۂ بیدار و چمن جامۂ خواب
    وصل ہر رنگِ جنوں کسوتِ رسوائی ہے
    شرم طوفانِ خزاں رنگِ طرب گاہِ بہار
    گلِ مہتاب بہ کف چشمِ تماشائی ہے
    شرم، طوفانِ خزاں رنگِ طرب گاہِ بہار
    ماہتابی بکفِ چشمِ تماشائی ہے
    باغِ خاموشیِ دل سے سخنِ عشق، اسدؔ
    نفسِ سوختہ رمزِ چمن ایمائی ہے
    اُگ رہا ہے درو دیوار سے سبزہ غالبؔ
    ہم بیاباں میں ہیں، اور گھر میں بہار آئی ہے




    کارگاہِ ہستی میں لالہ، داغ ساماں ہے
    برقِ خرمنِ راحت، خونِ گرمِ دہقاں ہے
    ہم سے رنجِ بے تابی کس طرح اٹھایا جائے؟
    داغ ، پشتِ دستِ عجز ، شعلہ ، خس بہ دنداں ہے
    حیرتِ تپیدن ہا، خوں بہائےدیدن ہا
    رنگِ گل کے پردے میں آئنہ پرافشاں ہے
    عشق کے تغافل سے، ہرزہ گردہے عالم
    روئے شش جہت آفاق ، پشتِ چشمِ زنداں ہے
    غنچہ تا شگفتن ہا، برگِ عافیت معلوم!
    باوجودِ دل جمعی، خوابِ گل، پریشاں ہے
    وحشتِ انجمن ہے گل، دیکھ لالے کا عالم
    مثلِ دودِ مجمر کے، داغ بال افشاں ہے
    اے کرم نہ ہو غافل ، ورنہ ہے اسدؔ بیدل
    بےگُہر صدف گویا، پشتِ چشمِ نیساں ہے
    جورِ زلف کی تقریرپیچتابِ خاموشی
    ہند میں اسدؔ نالاں، نالہ در صفاہاں ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,655
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    شکریہ عزیزم۔ پہلے کے نسخوں کی پروف ریڈنگ میں مَیں بھی شامل تھا، بہر حال ممکن ہے کہ کچھ فروگزاشت ہو گئی ہو، میں یہ تو نہیں کہتا کہ مجھ سے کبھی غلطی چھوٹ نہیں سکتی۔ بہر حال اب ایک بار پھر کر لوں گا، بلکہ یوں کیا جائے کہ تمہارے نسخے کی کر دی جائے، اور یہ جب درست ہو جائے تو حمیدیہ یا اردو ویب نسخوں میں متن پیسٹ کر دیا جائے۔ تم مطمئن ہو جاؤ تو بتا دو، پھر میں یہاں سے اتار کر کام شروع کر لوں۔
     
  13. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    گریہ ، سرشاری شوق بہ بیاباں زدہ ہے
    قطرۂ خونِ جگر، چشمکِ طوفاں زدہ ہے
    گریہ بے لذّتِ کاوش نہ کرے جرأتِ شوق
    قطرۂ اشک، دل برصفِ مژگاں زدہ ہے
    بے تماشا نہیں جمعیّتِ چشمِ بسمل
    مژہ فالِ دو جہاں خوابِ پریشاں زدہ ہے
    فرصت آئینہ و پروازِ عدم تا ہستی
    یک شرر بالِ دل و دیدہ چراغاں زدہ ہے
    نقشِ رنگینیِ سعیِ قلمِ مانی ہے
    بکمردامنِ صد رنگ گلستان زدہ ہے
    درسِ نیرنگ ہے کس موجِ نگہ کا، یا رب؟
    غنچہ ، صد آئنہ زانوئےگلستاں زدہ ہے
    سازِ وحشت رقمی ہا ، کہ باظہارِ اسدؔ
    دشت و ریگ آئنۂ صفحۂ افشاں زدہ ہے




    خوابِ غفلت بہ کمیں گاہِ نظر پنہاں ہے
    شام ، سائےمیں بہ تاراجِ سحر پنہاں ہے
    دو جہاں ، گردشِ یک سبحۂ اسرارِ نیاز
    نقدِ صد دل بہ گریبانِ سحر پنہاں ہے
    خلوتِ دل میں نہ کر دخل، بجز سجدۂ شوق
    آستاں میں، صفتِ آئنہ در پنہاں ہے
    فکرِ پروازِ جنوں ہے، سببِ ضبط نہ پوچھ
    اشک، جوں بیضہ، مژہ سے تہِ پر پنہاں ہے
    ہوش ، اے ہرزہ درا ، تہمتِ بے دردی چند!
    نالہ، در گردِ تمنائےاثر پنہاں ہے
    وہمِ غفلت، مگر، احرامِ فسردن باندھے
    ورنہ ، ہر سنگ کے باطن میں شرر پنہاں ہے
    وحشتِ دل ہے، اسدؔ، عالمِ نیرنگِ نشاط
    خندۂ گل، بہ لبِ زخمِ جگر پنہاں ہے



    دامانِ دل بہ وہمِ تماشا نہ کھینچیے
    اے مدعی، خجالتِ بے جا نہ کھینچیے
    گل، سر بسر، اشارۂ جیبِ دریدہ ہے
    نازِ بہار جز بہ تقاضا نہ کھینچیے
    حیرت حجابِ جلوہ و وحشت غبارِ چشم
    پائے نظر بہ دامنِ صحرا نہ کھینچیے
    واماندگی بہانہ، و دل بستگی فریب
    دردِ طلب بہ آبلۂ پا نہ کھینچیے
    کرتے ہوئے تصورِ یارآئے ہے حیا
    کیا فائدہ کہ منتِ بیگانہ کھینچیے
    گر صفحے کو نہ دیجیے پروازِ سادگی
    جز خطِ عجز ، نقشِ تمنا نہ کھینچیے
    دیدارِ دوستانِ لباسی ہے ناگوار
    صورت بہ کارخانۂ دیبا نہ کھینچیے
    ہے بے خمار نشّۂ خونِ جگر، اسدؔ
    دستِ ہوس بہ گردنِ مینا نہ کھینچیے




    تا چند نازِ مسجد و بت خانہ کھینچیے
    جوں شمع، دل بہ خلوتِ جانانہ کھینچیے
    بہزاد ، نقشِ یک دلِ صد چاک عرض کر
    گر زلفِ یار کھینچ نہ سکے ، شانہ کھینچیے
    راحت کمینِ شوخیِ تقریبِ نالہ ہے
    پائے نظر بہ دامنِ افسانہ کھینچیے
    زلفِ پری ، بہ سلسلۂ آرزو رسا
    یک عمر، دامنِ دلِ دیوانہ کھینچیے
    یعنی دماغِ غفلتِ ساقی رسیدہ تر
    خمیازۂ خمار سے پیمانہ کھینچیے
    پرواز آشیانۂ عنقائےناز ہے
    بالِ پری بہ وحشتِ بے جا نہ کھینچیے
    عجز و نیاز سے تو نہ آیا وہ راہ پر
    دامن کو اُس کے آج حریفانہ کھینچیے
    ہے ذوقِ گریہ ، عزمِ سفر کیجیے، اسدؔ
    رختِ جنونِ سیل بہ ویرانہ کھینچیے


    آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے
    ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے
    ہے انتظار سے شرر آبادِ رستخیز
    مژگانِ کوہکن ، رگِ خارا کہیں جسے
    حسرت نے لا رکھا تری بزمِ خیال میں
    گلدستۂ نگاہ ، سویدا کہیں جسے
    کس فرصتِ وصال پہ ہے گل کو ، عندلیب
    زخمِ فراق، خندۂ بے جا کہیں جسے
    درکار ہے شگفتنِ گل ہائےعیش کو
    صبحِ بہار، پنبۂ مینا کہیں جسے
    پھونکا ہے کس نے گوشِ محبت میں ، اے خدا!
    افسونِ انتظار ، تمنا کہیں جسے
    یارب ، ہمیں تو خواب میں بھی مت دکھائیو
    یہ محشرِ خیال کہ دنیا کہیں جسے
    سر پر ہجومِ دردِ غریبی سے ، ڈالیے
    وہ ایک مشتِ خاک کہ صحرا کہیں جسے
    ہے چشمِ تر میں، حسرتِ دیدار سے نہاں
    شوقِ عناں گسیختہ، دریا کہیں جسے
    غالبؔ برا نہ مان ، جو واعظ برا کہے
    ایسا بھی کوئی ہے کہ سب اچھا کہیں جسے؟




    منت کشی میں حوصلہ بے اختیار ہے
    دامانِ صد کفن، تہِ سنگِ مزار ہے
    کس کا سراغِ جلوہ ہے ، حیرت کو، اے خدا؟
    آئینہ ، فرشِ شش جہتِ انتظار ہے
    عبرت طلب ہے ، حلِ معمائےآگہی
    شبنم، گدازِ آئنۂ اعتبار ہے
    ہے ذرہ ذرہ ، تنگیِ جا سے، غبارِ شوق
    گر دام یہ ہے ، وسعتِ صحرا شکار ہے
    دل مدعی، و دیدہ بنا مدعی علیہ
    نظارے کا مقدمہ پھر روبکار ہے
    چھڑ کے ہے شبنم، آئنۂ برگِ گل پہ ، آب
    اے عندلیب! وقتِ وداعِ بہار ہے
    خجلت کشِ وفا کو شکایت نہ چاہیے
    اے مدعی ، طلسمِ عرق بے غبار ہے
    پچ آپڑی ہے وعدہ دلدار کی مجھے
    وہ آئے یا نہ آئے، پہ یاں انتظار ہے
    کیفیتِ ہجومِ تمنا رسا، اسدؔ
    خمیازہ ، ساغرِ مئے رنجِ خمار ہے



    مستی ، بہ ذوقِ غفلتِ ساقی، ہلاک ہے
    موجِ شراب، یک مژۂ خواب نا ک ہے
    کلفت ، طلسمِ جلوۂ کیفیّتِ دگر
    زنگار خوردہ آئنہ ، یک برگِ تاک ہے
    ہے عرضِ جوہرِ خط و خالِ ہزار عکس
    لیکن ہنوز دامنِ آئینہ پاک ہے
    ہوں، خلوتِ فسردگیِ انتظار میں
    وہ بے دماغ جس کو ہوس بھی تپاک ہے
    جز زخمِ تیغِ ناز ، نہیں دل میں آرزو
    جیبِ خیال بھی ، ترے ہاتھوں سے چاک ہے
    جوشِ جنوں سے کچھ نظر آتا نہیں، اسدؔ
    صحرا ہماری آنکھ میں یک مشتِ خاک ہے




    حسنِ بے پروا، خریدارِ متاعِ جلوہ ہے
    آئنہ، زانوئےفکرِ اختراعِ جلوہ ہے
    عجزِ دیدن ہا بہ ناز، و نازِ رفتن ہا بہ چشم
    جادۂ صحرائےآگاہی ، شعاعِ جلوہ ہے
    اختلافِ رنگ و بو، طرحِ بہارِ بے خودی
    صلحِ کل ، گردِ ادب گاہِ نزاعِ جلوہ ہے
    تا کجا ، اے آگہی، رنگِ تماشا باختن؟
    چشمِ وا گردیدہ، آغوشِ وداعِ جلوہ ہے
    حسنِ خوباں بس کہ بے قدرِ تماشا ہے، اسدؔ
    آئنہ یک دستِ ردِّ امتناعِ جلوہ ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  14. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    خود فروشی ہائےہستی بس کہ جائےخندہ ہے
    ہرشکستِ قیمتِ دل میں صدائےخندہ ہے
    عرضِ نازِشوخیِ دندان ، برائےخندہ ہے
    دعوئ جمعیّتِ احباب، جائےخندہ ہے
    ہیں عدم میں ، غنچہ، محوِعبرت ِ انجامِ گل
    یک جہاں زانو تامّل، درقفا ئےخندہ ہے
    کلفتِ افسردگی کو عیشِ بے تابی حرام
    ورنہ دنداں در دل افشردن، بنائےخندہ ہے
    نقشِ عبرت در نظر، یانقدِ عشرت در بساط
    دو جہاں وسعت ،بہ قدرِ یک فضائےخندہ ہے
    شورش ِ باطن کے ہیں احباب منکر ورنہ یاں
    دل، محیطِ گریہ و لب، آشنائے خندہ ہے
    جائےاستہزا ہے، عشرت کوشیِ ہستی، اسدؔ
    صبح و شبنم ، فرصتِ نشو و نمائےخندہ ہے




    شوخیِ مضرابِ جولاں، آبیارِ نغمہ ہے
    بر گ ریزِ ناخنِ مطرب، بہارِ نغمہ ہے
    کس سے، اے غفلت، تجھے تعبیرِ آگاہی ملے؟
    گوش ہا سیمابی ،و دل بے قرارِ نغمہ ہے
    سازِ عیشِ بے دلی ہے، خانہ ویرانی، مجھے
    سیل، یاں کوکِ صدائےآبشارِ نغمہ ہے
    سنبلی خواں ہے، بہ ذوقِ تارِ گیسوئےدراز
    نالۂ زنجیرِ مجنوں، رشتہ دارِ نغمہ ہے
    شوخیِ فریاد سے ہے پردۂ زنبور ، گل
    کسوتِ ایجادِ بلبل، خار خارِ نغمہ ہے
    نشہ ہا ، شادابِ رنگ و ساز ہا مستِ طرب
    شیشۂ مے ، سروِ سبزِ جویبارِ نغمہ ہے
    ہم نشیں، مت کہہ کہ" برہم کر نہ بزمِ عیشِ دوست"
    واں تو ، میرے نالے کو بھی ، اعتبارِ نغمہ ہے
    غفلت استعداد ذوق، و مدعا غافل اسدؔ
    پنبۂ گوشِ حریفاں ، پود و تارِ نغمہ ہے



    نشۂ مے ، بے چمن، دودِ چراغِ کشتہ ہے
    جام، داغِ شعلہ اندودِ چراغِ کشتہ ہے
    رحم کر، ظالم، کہ کیا بودِ چراغِ کشتہ ہے
    نبضِ بیمارِ وفا ، دودِ چراغِ کشتہ ہے
    داغِ ربط ِ ہم ہیں اہلِ باغ، گر گُل ہو شہید
    لالہ، چشمِ حسرت آلودِ چراغِ کشتہ ہے
    شور ہے کس بزم کی عرضِ جراحت خانہ کا؟
    صبح ، یک زخمِ نمک سودِ چراغِ کشتہ ہے
    نامرادِ جلوہ، ہر عالم میں حسرت گُل کرے
    لالہ ، داغِ شعلہ فرسودِ چراغِ کشتہ ہے
    ہو جہاں، تیرا دماغِ ناز ، مستِ بے خودی
    خوابِ نازِ گلرخاں، دودِ چراغِ کشتہ ہے
    ہے دلِ افسردہ ، داغِ شوخیِ مطلب، اسدؔ
    شعلہ، آخر فالِ مقصودِ چراغِ کشتہ ہے



    تپش سے میری وقفِ کشمکش، ہر تارِ بستر ہے
    مرا سر رنجِ بالیں ہے، مرا تن بارِ بستر ہے
    بہ ذوقِ شوخیِ اعضا تکلف بارِ بستر ہے
    معافِ پیچ و تابِ کشمکش ، ہر تارِ بستر ہے
    خوشا!اقبالِ رنجوری کہ عیادت کو تم آئے ہو
    فروغِ شمعِ بالیں ، طالعِ بیدارِ بستر ہے
    معمائےتکلف، سر بمُہرِ چشم پوشیدن
    گدازِ شمعِ محفل پیچشِ طومارِ بستر ہے
    مژہ فرشِ رہ و دل ناتوان و آرزو مضطر
    بپائےخفتہ سیرِ وادیِ پُر خارِ بستر ہے
    سرشکِ سر بہ صحرا دادہ، نورالعینِ دامن ہے
    دلِ بے دست و پا افتادہ ، برخوردارِ بستر ہے
    بہ طوفاں گاہِ جوشِ اضطرابِ شامِ تنہائی
    شعاعِ آفتابِ صبحِ محشر تارِ بستر ہے
    ابھی آتی ہے بو بالش سے اس کی زلفِ مشکیں کی
    ہماری دید کو خوابِ زلیخا، عارِ بستر ہے
    کہوں کیا، دل کی کیا حالت ہےہجرِ یار میں، غالبؔ
    کہ بیتابی سے ہر یک تارِ بستر، خارِ بستر ہے




    خطر ہے، رشتۂ الفت، رگِ گردن نہ ہوجاوے
    غرورِ دوستی آفت ہے، تُو دشمن نہ ہو جاوے
    بہ پاسِ شوخیِ مژگاں، سرِ ہر خار سوزن ہے
    تبسم برگِ گل کو، بخیۂ دامن نہ ہو جاوے
    جراحت دوزیِ عاشق ہے، جائےرحم ، ترساں ہوں
    کہ، رشتہ ، تارِ اشکِ دیدۂ سوزن نہ ہو جاوے
    غضب شرم آفریں ہے رنگ ریزی ہائےخودبینی
    سفیدی آئنے کی پنبۂ روزن نہ ہو جاوے
    سمجھ اس فصل میں کوتاہیِ نشو و نما غالبؔ
    اگر گل ، سروْ کے قامت پہ ، پیراہن نہ ہو جاوے




    نوائے خفتۂ الفت، اگر بے تاب ہو جاوے
    پرِ پروانہ ، تارِ شمع پر مضراب ہو جاوے
    اگر وحشت عرق افشانِ بے پروا خرامی ہو
    بیاضِ دیدۂ آہو ، کفِ سیلاب ہو جاوے
    ز بس طوفانِ آب و گِل ہے، غافل ، کیا تعجب ہے!
    کہ ہر یک گردبادِ گلستاں گرداب ہو جاوے
    اثر میں یاں تک، اے دستِ دعا، دخلِ تصرف کر
    کہ سجدہ قبضۂ تیغِ خمِ محراب ہو جاوے
    برنگِ گل، اگر، شیرازہ بندِ بے خودی رہیے
    ہزار آشفتگی ، مجموعۂ یک خواب ہو جاوے
    نمک بر داغ، مشک آلودہ وحشت تماشا ہے
    سوادِ دیدہِ آہو، شبِ مہتاب ہو جاوے
    اسدؔ، باوصفِ مشق بے تکلف خاک گردیدن
    غضب ہے ،گر غبارِ خاطرِ احباب ہو جاوے




    دلِ بیمارِ ازخود رفتہ ،تصویرِ نہالی ہے
    کہ مژگاں ریشہ دارِ نیستانِ شیرِِ قالی ہے
    سرورِ نشۂ گردش ، اگر، کیفیت افزا ہو
    نہاں ہر گردبادِ دشت میں جامِ سفالی ہے
    عروجِ نشہ ہے سر تا قدم، قدِ چمن رویاں
    بجائےخود ، وگرنہ ، سرو بھی مینائےخالی ہے
    ہوا آئینہ، جامِ بادہ عکسِ روئےگلگوں سے
    نشانِ خالِ رخ ، داغِ شرابِ پرتگالی ہے
    بپائےخامۂ مو ، طے رہِ وصفِ کمر کیجے
    کہ تارِ جادۂ سر منزلِ نازک خیالی ہے
    اسدؔ، اُٹھنا قیامت قامتوں کاوقتِ آرایش
    لباسِ نظم میں بالیدنِ مضمونِ عالی ہے



    شبنم، بہ گلِ لالہ، نہ خالی ز ادا ہے
    داغِ دلِ بے درد ، نظر گاہِ حیا ہے
    دل خوں شدۂ کشمکشِ حسرتِ دیدار
    آئینہ، بدستِ بتِ بدمستِ حنا ہے
    تمثال میں تیری ہے وہ شوخی کہ بصد ذوق
    آئینہ، بہ اندازِ گُل، آغوش کشا ہے
    قمری کفِ خاکستر، و بلبل قفسِ رنگ
    اے نالہ! نشانِ جگرِ سوختہ کیا ہے؟
    مجبوری و دعوائےگرفتاریِ اُلفت
    دستِ تہِ سنگ آمدہ ،پیمانِ وفا ہے
    سر رشتۂ بے تابیِ دل ، در گرہِ عجز
    پرواز بہ خوں خفتہ و فریاد رسا ہے
    اے پرتوِ خرشیدِ جہاں تاب، ادھر بھی
    سایے کی طرح، ہم پہ عجب وقت پڑا ہے
    معلوم ہوا حالِ شہیدانِ گزشتہ
    تیغِ ستم ، آئینۂ تصویر نما ہے
    شعلے سے نہ ہوتی ، ہوسِ شعلہ نے جو کی
    جی ، کس قدر افسردگیِ دل پہ جلا ہے
    خو نے تری افسردہ کیا وحشتِ دل کو
    معشوقی و بے حوصلگی، طرفہ بلا ہے
    ناکردہ گناہوں کی بھی حسرت کی ملے داد
    یارب، اگر ان کردہ گناہوں کی سزا ہے
    بیگانگیِ خلق سے بیدل نہ ہو، غالبؔ
    کوئی نہیں تیرا ، تو ،مری جان خدا ہے




    زلفِ سیہ ،افعی نظرِ بد قلمی ہے
    ہر چند خطِ سبز و زمرد رقمی ہے
    ہے مشقِ وفا ،جانتے ہیں، لغزشِ پا تک
    اے شمع، تجھے دعویِ ثابت قدمی ہے
    ہے عرضِ شکست، آئنۂ جرأتِ عاشق
    جز آہ کہ سر لشکرِ وحشت عَلَمی ہے
    واماندۂ ذوقِ طربِ وصل نہیں ہوں
    اے حسرتِ بسیار ، تمنا کی کمی ہے
    وہ پردہ نشیں، اور اسد ؔآئینۂ اظہار
    شہرت چمنِ فتنہ و عنقا ارمی ہے




    اس قامتِ رعنا کی جہاں جلوہ گری ہے
    تسلیم فروشی، روشِ کبک دری ہے
    شرمندہ الفت ہوں مداوا طلبی سے
    ہر قطرہ شربت مجھے اشکِ شکری ہے
    سرمایہ وحشت ہے، دلا، سایہ گلزار
    ہر سبزہ نوخاستہ یاں بالِ پری ہے
    روشن ہوئی یہ بات دمِ نزع کہ آخر
    فانوس ، کفن بہرِ چراغِ سحری ہے
    ہم آئے ہیں، غالبؔ،رہ اقلیمِ عدم سے
    یہ تیرگی حالِ لباسِ سفری ہے




    تا چند ،نفس، غفلتِ ہستی سے بر آوے
    قاصد تپشِ نالہ ہے ،یا رب، خبر آوے!
    ہے طاقِ فراموشیِ سودائےدو عالم
    وہ سنگ کہ گلدستۂ جوشِ شرر آوے
    درد ، آئنہ کیفیتِ صد رنگ ہے ،یا رب
    خمیازہ طرب، ساغرِ زخمِ جگر آوے
    جمعیّتِ آوارگیِ دید نہ پوچھو
    دل تا مژہ، آغوشِ وداعِ نظر آوے
    اے ہر زہ دری ،منّتِ تمکینِ جنوں کھینچ
    تا آبلہ محمل کشِ موجِ گُہر آوے
    وہ تشنۂ سرشارِ تمنا ہوں کہ جس کو
    ہر ذرہ بہ کیفیتِ ساغر نظر آوے
    زاہد کہ جنوں سبحۂ تحقیق ہے، یا رب
    زنجیری ِصد حلقۂ بیرونِ در آوے
    تمثالِ بتاں گر نہ رکھے پنبۂ مرہم
    آئینہ بہ عریانیِ زخمِ جگر آوے
    ہر غنچہ، اسدؔ، بارگہِ شوکتِ گل ہے
    دل فرشِ رہِ ناز ہے، بیدل اگر آوے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    نگہ اُس چشم کی ، افزوں کرے ہے ناتوانائی
    پرِ بالش ہے وقتِ دید، مژگانِ تماشائی
    شکستِ قیمتِ دل، آں سوئےعذرِ شناسائی
    طلسمِ نااُمیدی ہے، خجالت گاہِ پیدائی
    پرِ طاوس ہے نیرنگِ داغِ حیرت انشائی
    دو عالم دیدۂ بسمل چراغاں جلوہ پیمائی
    تحیّر ہے گریباں گیرِ ذوقِ جلوہ پیرائی
    ملی ہے جوہرِ آئینہ کو ، جوں بخیہ گیرائی
    شرارِ سنگ سے پا در حنا گلگونِ شیریں ہے
    ہنوز اے تیشۂ فرہاد، عرضِ آتشیں پائی
    غرورِ دستِ رد نے شانہ توڑا فرقِ ہُدہُد پر
    سلیمانی ، ہے ننگِ بے دماغانِ خود آرائی
    جنوں افسردہ و جاں ناتواں، اے جلوہ شوخی کر
    گئی یک عمرِ خود داری باستقبالِ رعنائی
    نگاہِ عبرت افسوں، گاہ برق و گاہ مشعل ہے
    ہوا ہر خلوت و جلوت سے حاصل، ذوقِ تنہائی
    جنونِ بیکسی ساغر کشِ داغِ پلنگ آیا
    شرر کیفیتِ مے، سنگ محوِ نازِ مینائی
    خدایا،خوں ہو رنگِ امتیاز اور نالہ موزوں ہو
    جنوں کو سخت بیتابی ہے ، تکلیف شکیبائی
    خراباتِ جنوں میں ہے، اسدؔ، وقتِ قدح نوشی
    بہ عشقِ ساقیِ کوثر ، بہارِ بادہ پیمائی




    غم و عشرت، قدم بوسِ دلِ تسلیم آئیں ہے
    دعائےمدّعا گم کردگاں، لبریزِ آمیں ہے
    تماشا ہے کہ ناموسِ وفا رسوائےآئیں ہے
    نفس تیری گلی میں خوں ہو، اور بازار رنگیں ہے
    لبِ عیسیٰ کی جنبش کرتی ہے گہوارہ جنبانی
    قیامت ، کشتۂ لعلِ بتاں کا خوابِ سنگیں ہے
    ہمارا دیکھنا گر ننگ ہے ،سیرِ گلستاں کر
    شرارِ آہ سے ، موجِ صبا ، دامانِ گلچیں ہے
    پیامِ تعزیت پیدا ہے اندازِ عیادت سے
    شبِ ماتم ، تہِ دامانِ دودِ شمعِ بالیں ہے
    زبس جز حسن، منت ناگوارا ہے طبیعت پر
    کشادِ عقد، محوِ ناخنِ دستِ نگاریں ہے
    نہیں ہے ، سر نوشتِ عشق ، غیر از بے دماغی ہا
    جبیں پر میری، مدِّ خامۂ قدرت خطِ چیں ہے
    بہارِ باغ ، پامالِ خرامِ جلوہ فرمایاں
    حنا سے دست ، و خونِ کشتگاں سے تیغ رنگیں ہے
    بیابانِ فنا ہے بعدِ صحرائےطلب، غالبؔ
    پسینہ توسنِ ہمت کا سیلِ خانۂ زیں ہے




    محوِآرامیدگی ، سامانِ بے تابی کرے
    چشم میں توڑے نمک داں، تا شکر خوابی کرے
    آرزوئےخانہ آبادی نے ویراں تر کیا
    کیا کروں، گر سایۂ دیوار سیلابی کرے
    نغمہ ہا، وابستۂ یک عقدۂ تارِ نفس
    ناخنِ تیغِ بتاں، شاید کہ مضرابی کرے
    صبحدم وہ جلوہ ریزِ بے نقابی ہو اگر
    رنگِ رخسارِ گلِ خرشید، مہتابی کرے
    زخم ہائےکہنۂ دل رکھتے ہیں جوں مردگی
    اے خوشا !گر آبِ تیغِ ناز تیزابی کرے
    بادشاہی کا جہاں یہ حال ہو ، غالبؔ، تو پھر
    کیوں نہ دلی میں ہر اک ناچیز نوابی کرے




    اےخوشا! وقتے کہ ساقی یک خمستاں واکرے
    تار و پودِ فرشِ محفل، پنبۂ مینا کرے
    گر تبِ آسودۂ مژگاں تصرف وا کرے
    رشتۂ پا ، شوخیِ بالِ نفس پیدا کرے
    گر دکھاؤں صفحۂ بے نقشِ رنگِ رفتہ کو
    دستِ رد سطرِ تبسم یک قلم انشا کرے
    جو عزادارِ شہیدانِ نفس دزدیدہ ہو
    نوحۂ ماتم بہ آوازِ پرِ عنقا کرے
    حلقہ گردابِ جوہر کو بنا ڈالے تنور
    عکس ، گر طوفانیِ آئینۂ دریا کرے
    یک درِ بر روئےرحمت بستہ دورِ شش جہت
    نا امیدی ہے، خیالِ خانہ ویراں کیا کرے
    توڑ بیٹھےجب کہ ہم جام و سبو، پھر ہم کو کیا؟
    آسمان سے بادہ گلفام گر برسا کرے
    ناتوانی سے نہیں سر درگریبانی، اسدؔ
    ہوں سراپا یک خمِ تسلیم ، جو مولا کرے



    چاک کی خواہش، اگر وحشت، بہ عریانی کرے
    صبح کے مانند ، زخمِ دل، گریبانی کرے
    ہے شکستن سے بھی دل نومید، یارب، کب تلک
    آبگینہ، کوہ پر عرضِ گراں جانی کرے
    میکدہ گر چشمِ مستِ نازسے پاوے شکست
    موئے شیشہ ، دیدۂ ساغر کی مژگانی کرے
    خطِّ عارض سے لکھا ہے ، زلف کو اُلفت نے، عہد
    یک قلم منظور ہے، جو کچھ پریشانی کرے
    ہاتھ پر گر ہاتھ مارے یار وقتِ قہقہہ
    کرمکِ شب تاب آسا ،مہ پرافشانی کرے
    جلوے کا تیرےوہ عالم ہےکہ گر کیجئے خیال
    دیدہ دل کو زیارت گاہِ حیرانی کرے
    وقت اُس افتادہ کا خوش ، جو قناعت سے، اسدؔ
    نقشِ پائےمور کو تختِ سلیمانی کرے



    بہ نقصِ ظاہری، رنگِ کمالِ طبع، پنہاں ہے
    کہ بہرِ مدعائےدل، زبانِ لال ، زنداں ہے
    خموشی ، خانہ زادِ چشمِ بے پروانگاہاں ہے
    غبارِ سرمہ ، یاں گردِ سوادِ نرگسستاں ہے
    صفائےاشک میں داغِ جگر جلوہ دکھاتے ہیں
    پرِ طاؤس ، گویا، برقِ ابرِ چشمِ گریاں ہے
    بہ بوئےزلفِ مشکیں یہ، دماغ ، آشفتۂ رم ہیں
    کہ شاخِ آہواں، دودِ چراغ آسا پریشاں ہے
    تکلف بر طرف، ہے جانستاں تر لطفِ بدخویاں!
    نگاہِ بے حجابِ ناز، تیغِ تیز عریاں ہے
    اسدؔ، یہ فرطِ غم نے کی تلف کیفیتِ شادی
    کہ صبحِ عید مجھ کو بدتر از چاکِ گریباں ہے



    تمام اجزائے عالم صیدِ دامِ چشمِ گریاں ہے
    طلسمِ شش جہت، یک حلقہ گردابِ طوفاں ہے
    نہین ہے مردنِ صاحب دلاں، جز کسبِ جمیعت
    سویدا میں نفس، مانندِ خط نقطے میں، پنہاں ہے
    غبارِ دشتِ وحشت، سرمہ سازِ انتظار آیا
    کہ چشمِ آبلہ میں، طولِ میلِ راہ ، مژگاں ہے
    ز بس دوشِ رمِ آہو پہ ہے محمل تمنا کا
    جنونِ قیس سے بھی شوخیِ لیلیٰ نمایاں ہے
    نقابِ یارہے، غفلت نگاہی اہلِ بینش کی
    مژہ پوشیدنی ہا، پردہ تصویر عریاں ہے
    اسد بندِِ قبائے یار ہے فردوس کا غنچہ
    اگر وا ہو، تو دکھلادوں کہ یک عالم گلستاں ہے



    ہجوم ِ نالہ ، حیرت عاجزِ عرضِ یک افغاں ہے
    خموشی ریشۂ صدنیستاں سے خس بدنداں ہے
    دل و دیں نقد لا ساقی، سے گر سودا کیا چاہے
    کہ اس بازار میں ساغر، متاعِ دستگرداں ہے
    غمِ آغوشِ بلا میں پرورش دیتا ہے عاشق کو
    چراغِ روشن اپنا، قلزم صرصر کا مرجاں ہے
    کجامے؟ کُو عرق؟ سعیِ عروجِ نشّہ رنگیں تر
    خطِ رخسارِ ساقی، تا خطِ ساغر چراغاں ہے
    رہا بے قدر دل ، در پردۂ جوشِ ظہور آخر
    گل و نرگس بہم ، آئینہ و اقلیمِ کوراں ہے
    تکلف سازِ رسوائی ہے، غافل، شرمِ رعنائی
    دلِ خوں گشتہ ، در دستِ حنا آلودہ عریاں ہے
    تماشا ، سرخوشِ غفلت ہے باوصفِ حضورِ دل
    ہنوز آئینہ، خلوت گاہِ نازِ ربطِ مژگاں ہے
    تکلف برطرف ، ذوقِ زلیخا جمع کر، ورنہ
    پریشاں خواب آغوشِ و داعِ یوسفستاں ہے
    اسد ؔ، جمعیّتِ دل در کنارِ بے خودی خوشتر
    دو عالم آگہی، سامانِ یک خوابِ پریشاں ہے



    تغافل مشربی سے، نا تمامی بس کہ پیدا ہے
    نگاہِ ناز ، چشمِ یار میں زنارِ مینا ہے
    تصرف وحشیوں میں ہے تصور ہائےمجنوں کا
    سوادِ چشمِ آہو ، عکسِ خالِ روئےلیلیٰ ہے
    محبت ، طرزِ پیوندِ نہالِ دوستی جانے
    دویدن، ریشہ ساں، مفتِ رگِ خوابِ زلیخا ہے
    کیا یکسر گدازِ دل نیازِ جوششِ حسرت
    سویدا ، نسخۂ تہہ بندیِ داغِ تمنا ہے
    ہجومِ ریزشِ خوں کے سبب رنگ اُڑ نہیں سکتا
    حنائے پنجہ صیاد، مرغِ رشتہ بر پا ہے
    اسدؔ، گر نامِ والائےعلی تعویذِ بازو ہو
    غریقِ بحرِ خوں ، تمثال در آئینہ رہتا ہے



    اثر سوزِ محبت کا، قیامت بے محابا ہے
    کہ رگ سے سنگ میں تخمِ شرر کا ریشہ پیدا ہے
    نہاں ہے گوہرِ مقصود جیبِ خود شناسی میں
    کہ یاں غوّاص ہے تمثال ، اور آئینہ دریا ہے
    عزیزو، ذکرِ وصلِ غیر سے، مجھ کو نہ بہلاؤ
    کہ یاں افسونِ خواب، افسانۂ خوابِ زلیخا ہے
    تصورِ بہر تسکینِ تپیدن ہائےطفلِ دل
    بباغِ رنگ ہائےرفتہ ، گلچینِ تماشا ہے
    بہ سعیِ غیر ہے ، قطعِ لباسِ خانہ ویرانی
    کہ تارِ جادۂ رہ ، رشتۂ دامانِ صحرا ہے
    مجھے شب ہائےتاریکِ فراقِ شعلہ رویاں میں
    چراغِ خانۂ دل ، سوزشِ داغِ تمنا ہے
    ترے نوکر ترے در پراسدؔ کو ذبح کرتے ہیں
    ستمگر، ناخدا ترس ، آشنا کش، ماجرا کیا ہے؟
     
  16. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بہ بزمِ مے پرستی ، حسرتِ تکلیف بے جا ہے
    کہ جامِ بادہ ، کف برلب بتقریبِ تقاضا ہے
    مری ہستی ، فضائے حیرت آبادِ تمنا ہے
    جسے کہتے ہیں نالہ وہ اسی عالم کا عنقا ہے
    نہ لائی شوخیِ اندیشہ تابِ دردِ نومیدی
    کفِ افسوس سودن عہدِ تجدیدِ تمنا ہے
    نشاطِ دیدۂ بینا ہے، کُو خواب؟ و چہ بیداری؟
    بہم آوردہ مژگاں ، روئے بر روئے تماشا ہے
    نہ سووے آبلوں میں گر ،سرشکِ دیدۂ نم سے
    بجولاں گاہِ نومیدی ، نگاہِ عاجزاں پا ہے
    وفائےدلبراں ہے اتفاقی، ورنہ، اے ہمدم
    اثر فریادِ دل ہائےحزیں کا کس نے دیکھا ہے
    نگہ معمارِ حسرت ہا، چہ آبادی ؟چہ ویرانی؟
    کہ مژگاں جس طرف وا ہو، بکف دامانِ صحرا ہے
    بہ سختی ہائےقیدِ زندگی ، معلوم آزادی
    شرر بھی صیدِ دامِ رشتۂ رگ ہائےخارا ہے
    خزاں کیا؟فصلِ گل کہتے ہیں کس کو؟ کوئی موسم ہو
    وہی ہم ہیں، قفس ہے، اور ماتم بال و پر کا ہے
    اسدؔ، پاسِ تمنا سے نہ رکھ امیدِ آزادی
    گدازِ ہر تمنا آبیارِ صد تمنا ہے



    بہرِ پروردن سراسر لطف گستر، سایہ ، ہے
    پنجۂ مژگاں، بہ طفلِ اشک دستِ دایہ ہے
    فصلِ گل میں، دیدۂ خونیں نگاہانِ جنوں
    دولتِ نظّارۂ گل سے شفق سرمایہ ہے
    شورشِ باطن سے یاں تک مجھ کو غفلت ہے، کہ آہ!
    شیونِ دل ، یک سرودِ خانۂ ہمسایہ ہے
    کیوں نہ تیغِ یار کو مشاطۂ الفت کہوں؟
    زخم ،مثلِ گل، سراپا کا مرے پیرایہ ہے
    اے اسدؔ، آباد ہے مجھ سے جہانِ شاعری
    خامہ میرا تختِ سلطانِ سخن کا پایہ ہے



    وہ نہا کر آبِ گل سے ، سایہ گل کے تلے
    بال کس گرمی سے سُکھلاتا تھا، سنبل کےتلے
    کثرتِ جوشِ سویدا سےنہیں تل کی جگہ
    خال کب مشاطہ دے سکتی ہےکاکل کے تلے
    بس کہ خوباں باغ کو دیتے ہیں وقتِ مے شکست
    بال اگ جاتا ہے شیشے کا رگِ گل کے تلے
    ہے پر افشانِ طپیدن ہابہ تکلیفِ ہوس
    ورنہ صد گلزار ہےیک بالِ بلبل کے تلے
    پے بمقصد بردنی ہےخضرِ مے سے ، اے اسدؔ
    جادہ منزل ہےخطِ ساغر مل کے تلے



    جوہرِ آئینہ ساں ، مژگاں بدل آسودہ ہے
    قطرہ جو آنکھوں سے ٹپکا ، سو نگاہ آلودہ ہے
    دام گاہِ عجز میں سامانِ آسایش کہاں؟
    پرفشانی بھی فریبِ خاطرِ آسودہ ہے
    اے ہوس ، عرضِ بساطِ نازِ مشتاقی نہ مانگ
    جوں پرِ طاؤس، یکسر داغِ مشک اندودہ ہے
    ہے ریا کا رتبہ بالا تر تصور کردنی
    تیرگی سے داغ کی ، مہ سیمِ مس اندودہ ہے
    کیا کہوں پرواز کی آوارگی کی کشمکش؟
    عافیت ،سرمایۂ بال و پرِ نکشودہ ہے
    پنبۂ مینائےمے رکھ لو تم اپنے کان میں
    مے پرستاں ناصحِ بے صرفہ گو بیہودہ ہے
    جس طرف سے آئے ہیں، آخر اُدھر ہی جائیں گے
    مرگ سے وحشت نہ کر، راہِ عدم پیمودہ ہے
    ہے سوادِ خط پریشاں موئیِ اہلِ عزا
    خامہ میراشمعِ قبرِ کشتگاں کا دودہ ہے
    کثرتِ انشائےمضمونِ تحیر سے، اسدؔ
    ہر سرِ انگشت، نوکِ خامۂ فرسودہ ہے



    بہارِ تعزیت آبادِ عشق، ماتم ہے
    کہ تیغِ یار، ہلالِ مہِ محرم ہے
    نہ پوچھ نسخہ مرہم جراحتِ دل کا
    کہ اس میں ریزہ الماس جزو اعظم ہے
    بہ رہنِ ضبط ہے ، آئینہ بندی ِگوہر
    وگرنہ بحر میں ہر قطرہ چشمِ پُرنم ہے
    چمن میں کون ہے طرز آفرینِ شیوۂ عشق؟
    کہ گل ہے بلبلِ رنگین و بیضہ شبنم ہے
    اگر نہ ہو وے رگِ خواب صرفِ شیرازہ
    تمام دفترِ ربطِ مزاج، درہم ہے
    بہت دنوں میں تغافل نے تیرے پیدا کی
    وہ اک نگہ جو بظاہر نگاہِ کم ہے
    اسدؔ بہ نازکیِ طبعِ آرزو انصاف!
    کہ ایک وہمِ ضعیف و غمِ دو عالم ہے



    عذارِ یار ، نظر بندِ چشمِ گریاں ہے
    عجب کہ پرتوِ خور ، شمعِ شبنمستاں ہے
    ہجومِ ضبطِ فغاں سے،مری زبانِ خاموش
    برنگِ بستہ، بہ زہراب دادہ پیکاں ہے
    قبائے جلوہ فزاہے، لباسِ عریانی
    بطرزِ گل ، رگِ جاں مجھ کو تارِ داماں ہے
    لبِ گزیدۂ معشوق ہے دلِ افگار
    کہ بخیہ جلوہ آثارِ زخمِ دنداں ہے
    کشودِ غنچۂ خاطر عجب نہ رکھ غافل
    صبا خرامیِ خوباں، بہار ساماں ہے
    فغاں! کہ بہرِ شفائےحصولِ ناشدنی
    دماغ ، نازکشِ منّتِ طبیباں ہے
    طلسمِ منت ِیک خلق سے رہائی دی
    جہاں جہاں مرے قاتل کا مجھ پہ احساں ہے
    جنوں نےمجھ کو بنایا ہے مدعی میرا
    ہمیشہ ہاتھ میں میرےمرا گریباں ہے
    اسدؔ کو زیست تھی مشکل، اگر نہ سن لیتا
    کہ قتلِ عاشق ِ دلدادہ تجھ کو آساں ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    شفق بہ دعویِ عاشق گواہِ رنگیں ہے
    کہ ماہ دزدِ حنائےکفِ نگاریں ہے
    کرے ہے، بادہ ترے لب سے ، کسبِ رنگِ فروغ
    خطِ پیالہ، سراسر، نگاہِ گلچیں ہے
    عیاں ہے پائےحنائی برنگ پرتوِ خور
    رکاب، روزنِ دیوارِ خانۂ زیں ہے
    جبینِ صبحِ امیدِ فسانہ گویاں پر
    درازیِ رگِ خوابِ بتاں خطِ چیں ہے
    ہوا، نشانِ سوادِ دیارِ حسن ،عیاں
    کہ خط ، غبارِ زمیں خیزِ زلفِ مشکیں ہے
    بجا ہے ، گر نہ سنے نالہ ہائے بلبلِ زار
    کہ گوشِ گل، نمِ شبنم سے پنبہ آگیں ہے
    کبھی تو اس شوریدہ سرِ شوریدہ کی بھی ملے داد
    کہ اک عمر سےحسرت پرست بالیں ہے
    نہ پوچھ کچھ سروساما ن کاروبارِ اسدؔ!
    جنوں معاملہ، بیدل، فقیر مسکیں ہے
    اسدؔ ہے نزع میں، چل بے وفا، برائے خدا
    مقامِ ترکِ حجاب و وداعِ تمکیں ہے




    روتا ہوں بس کہ در ہوسِ آرمیدگی
    جوں گوہر، اشک کو ہےفرامش چکیدگی
    بر خاک اوفتادگیِ کشتگانِ عشق
    ہے سجدہ سپاسِ بمنزل رسیدگی
    انسان نیاز مندِ ازل ہےکہ جوں کماں
    مطلب ہے ربط سے رگ و پے کی خمیدگی
    ہے بسمل ِادائے چمن عارضاں، بہار
    گلشن کو رنگِ گل سےہے در خوں طپیدگی
    دیکھا نہیں ہے ہم نےبعشقِ بتاں، اسدؔ
    غیر از شکستہ حالی و حسرت کشیدگی




    عاشق، نقابِ جلوۂ جانانہ چاہیے
    فانوسِ شمع کو پرِ پروانہ چاہیے
    ہے وصل ہجر عالمِ تمکین و ضبط میں
    معشوقِ شوخ و عاشقِ دیوانہ چاہیے
    پیدا کریں دماغِ تماشائے سرو و گل
    حسرت کشوں کو ساغر و مینا نہ چاہیے
    دیوانگاں ہیں حاملِ رازِ نہانِ عشق
    اے بے تمیز، گنج کو ویرانہ چاہیے
    اُس لب سے مل ہی جائےگا بوسہ کبھی تو، ہاں
    شوقِ فضول و جراتِ رندانہ چاہیے
    ساقی، بہارِ موسمِ گل ہے سرور بخش
    پیماں سے ہم گزر گئے، پیمانہ چاہیے
    جادوہے یار کی روشِ گفتگو، اسدؔ
    یاں جز فسوں نہیں، اگر افسانہ چاہیے



    یوں، بعدِ ضبطِ اشک، پھروں گرد یار کے
    پانی پیے کسو پہ کوئی جیسے وارکے
    سیماب ، پشت گرمیِ آئینہ دے ہے، ہم
    حیراں کیے ہوئےہیں ، دلِ بے قرار کے
    بعد از وداعِ یار ، بخوں در تپیدہ ہیں
    نقشِ قدم ہیں، ہم ، کفِ پائےنگار کے
    ظاہر ہے ہم سے ، کلفتِ بختِ سیاہ روز
    گویا کہ تختۂ مشق ہیں خطِّ غبار کے
    حسرت سے دیکھ رہتے ہیں ، ہم، آب و رنگِ گُل
    مانندِ شبنم، اشک ہیں مژگانِ خار کے
    آغوشِ گل، کشودہ برائےوداع ہے
    اے عندلیب ، چل کہ چلے دن بہار کے
    ہم ،مشقِ فکرِ وصل و غمِ ہجر سے، اسدؔ
    لائق نہیں رہے ہیں ، غمِ روزگار کے



    بہ فکرِ حیرتِ رم ،آئنہ پرداز زانو ہے
    کہ مشکِ نافہ تمثالِ سوادِ چشمِ آہو ہے
    ترحّم میں ستم کوشوں کے ہے، سامانِ خونریزی
    سرشکِ چشمِ یار، آبِ دمِ شمشیرِ ابرو ہے
    کرے ہے دست فرسودِ ہوس، وہمِ توانائی
    پرِ افشاندہ در کنجِ قفس، تعویذِ بازو ہے
    ہوا چرخِ خمیدہ، ناتواں بارِ علائق سے
    کہ ظاہر، پنجۂ خرشید، دستِ زیرِ پہلو ہے
    اسدؔ، تا کے طبیعت طاقتِ ضبطِ الم لاوے؟
    فغانِ دل بہ پہلو، نالۂ بیمارِ بدخو ہے




    نہ چھوڑ و محفلِ عشرت میں جا، اے میکشاں، خالی
    کمیں گاہِ بلا ہے، ہوگیا شیشہ، جہاں خالی
    نہ دوڑا ریشہ دیوانگی صحنِ بیاباں میں
    کہ تارِ جادہ سے ہےلُجہ ریگِ رواں خالی
    دکانِ ناوکِ تاثیر ہے،از خود تہی ماندن
    سراسر عجز ہو، کر خانہ مانند ِ کماں خالی
    محبت، ہے نوا سازِ فغاں در پردہ دل ہا
    کرے ہے مغز سے مانندنےکےاستخواں خالی
    عبث ہے، خطِ ساغر جلوہ، طوقِ گردنِ قمری
    مئے الفت سے ہےمینائے سرو ِبوستاں خالی
    نہ پھولو ریزشِ اعداد کی قطرہ فشانی پر
    عزیزاں، ہے برنگِ صفر جامِ آسماں خالی
    اسدؔ، ہنستے ہیں میرے گریہ ہائے زار پر مردم
    بھرا ہے دہر بے دردی سے، دل کیجئے کہاں خالی




    ہوا جب حسن کم ، خط بر عذارِ سادہ آتا ہے
    کہ بعد از صافِ مے ، ساغر میں دُردِ بادہ آتا ہے
    نہیں ہے مزرعِ الفت میں حاصل غیرِ پامالی
    نظر دانہ ، سرشکِ بر زمیں افتادہ، آتا ہے
    محیطِ دہر میں بالیدن، از ہستی گزشتن ہے
    کہ یاں ہریک حباب آسا ، شکست آمادہ آتا ہے
    دیارِ عشق میں جاتا ہے جو سوداگری ساماں
    متاعِ زندگانی ہا بغاوت دادہ آتا ہے
    اسدؔ، وارستگاں با وصفِ ساماں بے تعلق ہیں
    صنوبر گلستاں میں با دلِ آزادہ آتا ہے




    نگاہِ یار نے جب عرضِ تکلیفِ شرارت کی
    دیا ابرو کو چھیڑ، اور اُس نے فتنے کو اشارت کی
    روانی موجِ مے کی، گر خطِ جام آشنا ہووے
    لکھے کیفیت اُس سطرِ تبسم کی عبارت کی
    شہِ گل نے کیا جب بندوبستِ گلشن آرائی
    عصائےسبز دے نرگس کو دی خدمت نظارت کی
    نہیں ریزش عرق کی ،اب اسے ذوبانِ اعضا ہے
    تبِ خجلت نے یہ نبضِ رگِ گل میں حرارت کی
    ز بس نکلا غبارِ دل بہ وقتِ گریہ آنکھوں سے
    اسدؔ، کھائےہوئےسر مے نے آنکھوں میں بصارت کی



    خدایا، دل کہاں تک دن بصد رنج و تعب کاٹے
    خمِ گیسو ہو شمشیرِ سیہ تاب اور شب کاٹے!
    کریں گر قدرِ اشکِ دیدۂ عاشق ، خود آرایاں
    صدف، دندانِ گوہر سے، بہ حسرت اپنے لب کاٹے
    دریغا! وہ مریضِ غم کہ فرطِ ناتوانی سے
    بقدرِ یک نفس جادہ ، بصد رنج و تعب کاٹے
    یقیں ہے ،آدمی کو دست گاہِ فقر حاصل ہو
    دمِ تیغِ توکل سے اگر پائےسبب کاٹے
    ہوے یہ رہرواں دل خستہ شرمِ نا رسائی سے
    کہ دستِ آرزو سےیک قلم پائے طلب کاٹے
    اسدؔ مجھ میں ہے اُس کے بوسۂ پاکی کہاں جرأت؟
    کہ میں نے دست و پا باہم بہ شمشیرِ ادب کاٹے




    تماشائے جہاں مفتِ نظر ہے
    کہ یہ گلزار باغِ رہ گزر ہے
    جہاں شمعِ خموشی جلوہ گر ہے
    پرِ پروانگاں بالِ شرر ہے
    بہ جیبِ اشکِ چشم سرمہ آلود
    مسی مالیدہ دندانِ گہر ہے
    شفق ساں موجہ خوں ہے، رگِ خواب
    کہ مژگانِ کشودہ نیشتر ہے
    کرے ہے روئے روشن آفتابی
    غبارِ خطِ رخ، گردِ سحر ہے
    ہوئی یک عمر صرفِ مشقِ نالہ
    اثر موقوف بر عمرِ دگر ہے
    اسدؔ، ہوں میں پر افشانِ رمیدن
    سوادِ شعر در گردِ سفر ہے




    بس کہ زیرِ خاک با آبِ طراوت راہ ہے
    ریشے سے ہر تخم کا دَلْو، اندرونِ چاہ ہے
    عکسِ گل ہائےسمن سے چشمہ ہائےباغ میں
    فلسِ ماہی آئنہ پردازِ داغِ ماہ ہے
    واں سے ہے تکلیفِ عرضِ بیدماغی ہائےدل
    یاں صریرِ خامہ، مجھ کو نالۂ جانکاہ ہے
    حسن و رعنائی میں وہمِ صد سر و گردن ہے فرق
    سرو کے قامت پہ ، گل، یک دامنِ کوتاہ ہے
    رشک ہے آسایشِ اربابِ غفلت پر، اسدؔ
    پیچ تابِ دل ، نصیبِ خاطرِ آگاہ ہے
    اسے اسدؔ، مایوس مت ہو از درِشاہِ نجف
    صاحب دل ہاوکیلِ حضرتِ اللہ ہے




    بس کہ چشم از انتظارِ خوش خطاں بے نور ہے
    یک قلم ، شاخِ گلِ نرگس، عصائےکور ہے
    بزمِ خوباں، بس کہ، جوشِ جلوہ سے پُر نور ہے
    پُشتِ دستِ عجزیاں ہر برگِ نخلِ طور ہے
    ہوں، تصور ہائےہمدوشی سے، بدمستِ شراب
    حیرتِ آغوشِ خوباں ،ساغرِ بلور ہے
    ہے عجب مُردوں کو غفلت ہائےاہل دہر سے
    سبزہ جوں انگشتِ حیرت در دہانِ گور ہے
    حسرت آبادِ جہاں میں ہے، الم ، غم آفریں
    نوحہ، گویا خانہ زادِ نالۂ رنجور ہے
    کیا کروں ؟غم ہائےپنہاں لے گئے صبر و قرار
    دزد گر ہوخانگی ، تو پاسباں معذورہے
    ہے ز پا افتادگیِ نشہ بیماری مجھے
    بے سخن،تبخالہ لب، دانہ انگور ہے
    جس جگہ ہو مسند آرا جانشینِ مصطفےٰ
    اس جگہ تختِ سلیماں ، نقشِ پائےمور ہے
    واں سے ہے تکلیفِ عرضِ بیدماغی، اور ، اسدؔ
    یاں صریرِ خامہ مجھ کو نالۂ رنجور ہے



    سوختگاں کی خاک میں ریزشِ نقشِ داغ ہے
    آئنۂ نشانِ حال مثلِ گلِ چراغ ہے
    لطفِ خمارِ مے کو ہے در دلِ ہمدگر اثر
    پنبۂ شیشۂ شراب ، کف بلبِ ایاغ ہے
    مفتِ صفائےطبع ہے ، جلوۂ نازِ سوختن
    داغِ دلِ سیہ دلاں، مردمِ چشمِ زاغ ہے
    رنجشِ یارِ مہرباں ،عیش و طرب کا ہے نشاں
    دل سے اُٹھے ہے ، جو غبار گردِ سوادِ باغ ہے
    شعر کی فکر کو، اسد ؔ، چاہیے ہے دل و دماغ
    وائے!کہ یہ فسردہ دل ، بیدل و بیدماغ ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    رباعیات


    ہر چند کہ دوستی میں کامل ہونا
    ممکن نہیں یک زبان ویک دل ہونا
    میں تجھ سے، اور مجھ سے تُو پوشیدہ
    ہے مفت ، نگاہ کا مقابل ہونا



    بعد از اتمامِ بزمِ عیدِ اطفال
    ایامِ جوانی رہے ساغر کشِ حال
    آ پہنچے ہیں تا سوادِ اقلیمِ عدم
    اے عمرِ گزشتہ یک قدم استقبال



    شب زلف و رخِ عرق فشاں کا غم تھا
    کیا شرح کروں ؟ کہ طرفہ تر عالم تھا
    رویا میں ہزار آنکھ سے صبح تلک
    ہر قطرۂ اشک، دیدہ پرنم تھا



    دل تھا کہ جو جانِ درد تمہید سہی
    بیتابیِ رشک و حسرتِ دید سہی
    ہم اور فسردن ، اے تجلی، افسوس!
    تکرار روا نہیں، تو تجدید سہی


    سامانِ ہزار جستجو ،یعنی، دل!
    ساغر کشِ خونِ آرزو ، یعنی دل
    پشت و رخِ آئنہ ہے ، دین و دنیا
    منظور ہے دو جہاں سے تُو ،یعنی دل


    اے کاش بتاں کا خنجرِ سینہ شگاف
    پہلوئےحیات سے گزر جاتا صاف
    ایک تسمہ لگا رہا کہ تا روزے چند
    رہیے نہ مشقتِ گدائی سے معاف


    اے کثرتِ فہمِ بے شمار اندیشہ
    ہے اصلِ خرد سے شرمسار اندیشہ
    یک قطرۂ خون، و دعوتِ صد نشتر
    یک وہم و عبادتِ ہزار اندیشہ



    بے گریہ کمالِ تر جبینی ہے مجھے
    در بزمِ وفا خجل نشینی ہے مجھے
    محرومِ صدا رہا بغیر از یک تار
    ابریشمِ ساز، موئے چینی ہے مجھے



    گر جوہرِ امتیاز ہوتا ہم میں
    رسوا کرتے نہ آپ کو عالم میں
    ہیں نام و نگیں، کمیں گہِ نقبِ شعور
    یہ چور پڑا ہے خانۂ خاتم میں


    ہے خلقِ حسد قماش لڑنے کے لیے
    وحشت کدۂ تلاش لڑنے کے لیے
    یعنی ، ہربارصورتِ کاغذِ باد
    ملتے ہیں یہ بدمعاش لڑنے کے لیے


    گلخن ، شرر اہتمام بستر ہے آج
    یعنی تبِ عشق شعلہ پرور ہے آج
    ہوں دردِ ہلاکِ نامہ بر سےبیمار
    قاردرہ مرا خونِ کبوتر ہے آج
     
    • زبردست زبردست × 1
  19. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    بعد از 1816


    غنچۂ ناشگفتہ کو دور سے مت دکھا کہ یوں
    بوسے کو پو چھتا ہوں میں ، منہ سے مجھے بتا کہ یوں
    پرسشِ طرزِ دلبری کیجیے کیا ؟کہ بِن کہے
    اُس کے ہر اک اشارے سے نکلے ہے یہ ادا کہ یوں
    رات کے وقت مے پیے، ساتھ رقیب کو لیے
    آئےوہ یاں، خدا کرے، پر نہ کرے خدا کہ یوں
    غیر سے رات کیا بنی ؟یہ جو کہا، تو دیکھیے
    سامنے آن بیٹھنا، اور یہ دیکھنا کہ یوں
    بزم میں اُس کے روبرو ، کیوں نہ خموش بیٹھیے؟
    اُس کی تو خامشی میں بھی، ہے یہی مدعا کہ یوں
    میں نے کہا کہ "بزمِ ناز چاہیے غیر سے تہی"
    سن کے ستم ظریف نے مجھ کو اُٹھا دیا کہ یوں
    مجھ سے کہا جو یار نے "جاتے ہیں ہوش کس طرح؟"
    دیکھ کے میری بیخودی ، چلنے لگی ہوا کہ یوں
    کب مجھے کوئےیار میں رہنے کی وضع یاد تھی؟
    آئنہ دار بن گئی حیرتِ نقشِ پا کہ یوں
    گرترے دل میں ہوں خیال ، وصل میں شوق کا زوال
    موج ، محیطِ آب میں مارے ہے دست و پا کہ یوں
    جو یہ کہے کہ "ریختہ کیونکہ ہو رشکِ فارسی؟"
    گفتہ غالبؔ ایکبار پڑھ کے اُسے سنا کہ یوں





    وہ فراق اور وہ وصال کہاں؟
    وہ شب و روز و ماہ و سال کہاں؟
    فرصتِ کاروبارِ شوق کسے؟
    ذوقِ نظارۂ جمال کہاں؟
    دل تو دل، وہ دماغ بھی نہ رہا
    شورِ سودائےخط و خال کہاں؟
    تھی وہ اک شخص کے تصور سے
    اب وہ رعنائیِ خیال کہاں؟
    ایسا آساں نہیں لہو رونا
    دل میں طاقت ، جگر میں حال کہاں؟
    ہم سے چھوٹا قمارخانۂ عشق
    واں جو جاویں، گرہ میں مال کہاں؟
    فلکِ سفلہ بے محابا ہے
    اس ستمگر کو انفعال کہاں؟
    بوسے میں وہ مضائقہ نہ کرے
    پر مجھے طاقتِ سوال کہاں؟
    فکر دنیا میں سر کھپاتا ہوں
    میں کہاں اور یہ وبال کہاں؟
    مضمحل ہو گئے قویٰ، غالبؔ
    وہ عناصر میں اعتدال کہاں؟



    وارستہ اس سے ہیں کہ محبت ہی کیوں نہ ہو
    کیجے ہمارے ساتھ ، عداوت ہی کیوں نہ ہو
    چھوڑا نہ مجھ میں ضعف نے رنگ اختلاط کا
    ہے دل پہ بار، نقشِ محبت ہی کیوں نہ ہو
    ہے مجھ کو تجھ سے تذکرۂ غیر کا گلہ
    ہر چند بر سبیل شکایت ہی کیوں نہ ہو
    "پیدا ہوئی ہے" کہتے ہیں" ہر درد کی دوا"
    یوں ہو، تو چارۂ غمِ الفت ہی کیوں نہ ہو
    ڈالا نہ بیکسی نے کسی سے معاملہ
    اپنے سے کھینچتا ہوں، خجالت ہی کیوں نہ ہو
    ہے آدمی، بجائےخود اک محشرِ خیال
    ہم انجمن سمجھتے ہیں، خلوت ہی کیوں نہ ہو
    ہنگامۂ زبونیِ ہمت ہے انفعال
    حاصل نہ کیجے دہر سے، عبرت ہی کیوں نہ ہو
    وارستگی بہانۂ بیگانگی نہیں
    اپنے سے کر، نہ غیرسے، وحشت ہی کیوں نہ ہو
    مٹتا ہے فوتِ فرصتِ ہستی کا غم کوئی
    عمرِ عزیز ، صرفِ عبادت ہی کیوں نہ ہو
    اُس فتنہ خو کے در سے اب اُٹھتے نہیں اسدؔ
    اس میں ہمارے سر پہ قیامت ہی کیوں نہ ہو




    سمجھاؤ اسے ، یہ وضع چھوڑے
    جو چاہے کرے، پہ دل نہ توڑے
    تقریرکا اس کی حال مت پوچھ
    معنیٰ ہیں بہت، تو لفظ تھوڑے
    نذرِ مژہ کر دل و جگر کو
    چیرے ہی سے جائیں گے یہ پھوڑے
    عاشق کو یہ چاہیے کہ ہر گز
    اندوہ سے (ڈر کے)منھ نہ موڑے
    آجا لبِ بام ، کوئی کب تک
    دیوار سے اپنے سر کو پھوڑے
    جاتے ہیں رقیب کو خط اس کے
    کاغذ کے دوڑتے ہیں گھوڑے
    ق
    غم خوار کو ہے قسم کہ زنہار
    غالب کو نہ تشنہ کام چھوڑے
    حسرت زدہ طرب ہے یہ شخص
    دم جب کہ بہ وقتِ نزع توڑے
    پانی نہ چوائے اس کے منھ میں
    گل مے میں بھگو بھگو نچوڑے
    (یہ غزل نسخہ بھوپال کے حاشیے پر کسی دوسرے کے قلم سے درج ہے، اس لیے اسے 1816 کے بعد کے کلام میں رکھا گیا۔ مگر غزل کاا سلوب غالبؔ کے اسلوب سے میل نہیں کھاتا۔ اگر یہ غالب ؔ ہی کا کلام ہےتو ابتدائی مشق کا نمونہ سمجھنا چاہیے، کیونکہ 20 سال کی عمر تک غالبؔ کے فکر و فن کی توانائی ظاہر ہو چکی تھی)



    کیا تنگ ہم ستم زدگاں کا جہان ہے
    جس میں کہ ایک بیضۂ مُور، آسمان ہے
    ہے کائنات کو حرکت تیرے ذوق سے
    پرتو سے ، آفتاب کے، ذرے میں جان ہے
    حال آں کہ ہے یہ سیلی خارا سے لالہ رنگ
    غافل کو میرے شیشے پہ مے کا گمان ہے
    کی اُس نے گرم ، سینۂ اہلِ ہوس میں ، جا
    آوے نہ کیوں پسند، کہ ٹھنڈا مکان ہے
    کیا خوب تم نے غیر کو بوسہ نہیں دیا؟
    بس چپ رہو، ہمارے بھی منہ میں زبان ہے
    بیٹھا ہے جو کہ سایۂ دیوارِ یار میں
    فرماں روائےکشورِ ہندوستان ہے
    ہستی کاا عتبار بھی غم نے مٹا دیا!
    کس سے کہوں کہ "داغ" جگر کا نشان ہے
    ہے، بارے، اعتمادِ وفاداری اس قدر
    غالب ؔ، ہم اس میں خوش ہیں کہ نا مہربان ہے
    دلی کے رہنے والو، اسدؔ کو ستاؤ مت
    بے چارہ، چند روز کا یاں میہمان ہے
     
  20. چھوٹاغالبؔ

    چھوٹاغالبؔ لائبریرین

    مراسلے:
    1,983
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Lonely
    درد سے میرے، ہے تجھ کو بیقراری ہائے ہائے!
    کیا ہوئی ،ظالم، تری غفلت شعاری ہائے ہائے!
    تیرے دل میں گر نہ تھا آشوبِ غم کا حوصلہ
    تُو نے پھر کیوں کی تھی میری غمگساری ہائے ہائے!
    کیوں مری غمخوارگی کا تجھ کو آیا تھا خیال؟
    دشمنی اپنی تھی ،میری دوستداری ہائے ہائے!
    عمر بھر کا تو نے پیمانِ وفا باندھا تو کیا؟
    عمر کو بھی تو نہیں ہے پائداری ہائے ہائے!
    زہر لگتی ہے مجھے آب و ہوائےزندگی
    یعنی ، تجھ سے تھی اسے ناسازگاری ہائے ہائے!
    گلفشانی ہائےنازِ جلوہ کو کیا ہوگیا؟
    خاک پر ہوتی ہے تیری لالہ کاری ہائے ہائے!
    شرمِ رسوائی سے جا چھپنا نقابِ خاک میں
    ختم ہے اُلفت کی، تجھ پر، پردہ داری ہائے ہائے!
    خاک میں ناموسِ پیمانِ محبت مل گئی
    اُٹھ گئی دنیا سے راہ و رسمِ یاری ہائے ہائے!
    ہاتھ ہی تیغ آزما کا کام سے جاتا رہا!
    دل پہ اک لگنے نہ پایا، زخمِ کاری ہائے ہائے!
    کس طرح کاٹے کوئی شب ہائےتارِ برشکال؟
    ہے ،نظر خو کردۂ اختر شماری ہائے ہائے! ئے
    گوش مہجورِ پیام و چشم محرومِ جمال
    ایک دل، تِس پر یہ نا امیدواری ہائے ہائے!
    عشق نے پکڑا نہ تھا، غالبؔ ابھی وحشت کا رنگ
    رہ گیا ، تھا دل میں جو کچھ ذوقِ خواری ہائے ہائے!
    گر مصیبت تھی، تو غربت میں اُٹھا لیتا، اسدؔ
    میری دلی ہی میں ہونی تھی یہ خواری ہائے ہائے!



    عشق مجھ کو نہیں ، وحشت ہی سہی
    میری وحشت، تری شہرت ہی سہی
    قطع کیجے نہ تعلق ہم سے
    کچھ نہیں ہے، تو عداوت ہی سہی
    میرے ہونے میں ہے کیا رسوائی؟
    اے وہ مجلس نہیں ،خلوت ہی سہی
    ہم بھی دشمن تو نہیں ہیں اپنے
    غیر کو تجھ سے محبت ہی سہی
    اپنی ہستی ہی سے ہو، جو کچھ ہو
    آگہی گر نہیں، غفلت ہی سہی
    عمر، ہر چند کہ ہے برق خرام
    دل کے خوں کرنے کی فرصت ہی سہی
    ہم کوئی ترکِ وفا کرتے ہیں
    نہ سہی عشق، مصیبت ہی سہی
    کچھ تو دے، اے فلکِ ناانصاف
    آہ و فریاد کی رخصت ہی سہی
    ہم بھی تسلیم کی خُو ،ڈالیں گے
    بے نیازی ،تری عادت ہی سہی
    یار سے چھیڑ چلی جائے، اسدؔ
    گر نہیں وصل ، تو حسرت ہی سہی




    چاہیے اچھوں کو، جتنا چاہیے
    یہ اگر چاہیں ، تو پھر کیا چاہیے
    صحبتِ رنداں سے واجب ہے حذر
    جائےمے اپنے کو کھینچا چاہیے
    دل توہو اچھا، نہیں ہے گر دماغ
    کچھ تو اسبابِ تمنا چاہیے
    چاہنے کو تیرے کیا سمجھا تھا دل؟
    بارے، اب اس سے بھی سمجھا چاہیے
    چاک مت کر جیب بے ایّامِ گل
    کچھ اُدھر کا بھی اشارا چاہیے
    دوستی کا پردہ ہے ، بیگانگی
    منہ چھپانا ہم سے چھوڑا چاہیے
    اپنی رسوائی میں کیا چلتی ہے سعی
    یار ہی ہنگامہ آرا چاہیے
    دشمنی نے میری کھویا غیر کو
    کس قدر دشمن ہے؟ دیکھا چاہیے
    منحصر مرنے پہ ہو جس کی اُمید
    نا اُمیدی اُس کی دیکھا چاہیے
    قطعہ
    چاہتے ہیں خوب رویوں کو اسدؔ
    آپ کی صورت تو دیکھا چاہیے
    غافل ان مہ طلعتوں کے واسطے
    چاہنے والا بھی اچھا چاہیے








    پھر کچھ اک، دل کو بے قراری ہے
    سینہ، جو یائےزخمِ کاری ہے
    پھر جگر کھودنے لگا ناخن
    آمدِ فصلِ لالہ کاری ہے
    قبلۂ مقصدِ نگاہِ نیاز
    پھر وہی پردۂ عماری ہے
    چشم ، دلالِ جنسِ رسوائی
    دل خریدارِ ذوقِ خواری ہے
    وہ ہی صد رنگ نالہ فرسائی
    وہ ہی صد گونہ اشک باری ہے
    دل ، ہوائےخرامِ ناز سے پھر
    محشرستانِ بے قراری ہے
    جلوہ ، پھر عرضِ ناز کرتا ہے
    روز بازارِ جاں سپاری ہے
    پھر اُسی بے وفا پہ مرتے ہیں
    پھر وہی زندگی ہماری ہے
    قطعہ
    پھر کھلا ہے درِ عدالتِ ناز
    گرم ، بازارِ فوجداری ہے
    ہو رہا ہے جہان میں اندھیر
    زلف کی پھر سررشتہ داری ہے
    پھر دیا پارۂ جگر نے سوال
    ایک فریاد و آہ و زاری ہے
    پھر ہوئےہیں گواہِ عشق طلب
    اشک باری کا حکم جاری ہے
    دل و مژگاں کا جو مقدمہ تھا
    آج پھر اس کی روبکاری ہے
    بے خودی بے سبب نہیں غالبؔ
    کچھ تو ہے جس کی پردہ داری ہے





    مدت ہوئی ہے، یار کو مہماں کیے ہوئے
    جوشِ قدح سے بزم چراغاں کیے ہوئے
    کرتا ہوں جمع ،پھر، جگرِ لخت لخت کو
    عرصہ ہوا ہے ، دعوتِ مژگاں کیےہوئے
    پھر، وضع احتیاط سے رکنے لگا ہے دم
    برسوں ہوئے ہیں چاک گریباں کیے ہوئے
    پھر، گرم نالہ ہائےشرر بار ہے نفس
    مدت ہوئی ہے سیرِ چراغاں کیے ہوئےئے
    پھر ، پرسشِ جراحتِ دل کو چلا ہے عشق
    سامانِ صد ہزار نمکداں کیےہوئے
    پھر، بھر رہا ہوں خامۂ مژگاں بخونِ دل
    سازِ چمن طرازیِ داماں کیے ہوئےئے
    باہمدگر ہوئے ہیں دل و دیدہ پھر رقیب
    نظارہ و خیال کا سامان کیے ہوئے
    دل پھر ، طوافِ کوئےملامت کو جائےہے
    پندار کا صنم کدہ ویراں کیے ہوئےئے
    پھر شوق کر رہا ہے خریدار کی طلب
    عرضِ متاعِ عقل و دل و جاں کیےہوئے
    دوڑے ہے، پھر، ہر ایک گل ولالہ پر خیال
    صد گلستاں نگاہ کا ساماں کیےہوئے
    پھر ،چاہتا ہوں نامۂ دلدار کھولنا
    جاں نذرِ دل فریبیِ عنواں کیے ہوئےئے
    ڈھونڈے ہے پھر، کسی کو لبِ بام پر، ہوس
    زلفِ سیاہ رخ پہ پریشاں کیے ہوئے
    چاہے ہے، پھر، کسی کو مقابل میں، آرزو
    سرمے سے تیز دشنۂ مژگاں کیے ہوئےئے
    اک نو بہارِ ناز کو چاہے ہے پھر، نگاہ
    چہرہ، فروغِ مے سے گلستاں کیےہوئے
    پھر، جی میں ہے کہ در پہ کسی کے پڑے رہیں
    سر زیرِ بارِ منتِ درباں کیے ہوئےئے
    جی ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت، کہ رات دن
    بیٹھے رہیں تصورِ جاناں کیے ہوئے
    غالب ؔ، ہمیں نہ چھیڑ کہ پھر جوشِ اشک سے
    بیٹھے ہیں ہم تہیۂ طوفاں کیے ہوئے



    بے اعتدالیوں سے ، سبُک سب میں ہم ہوئے
    جتنے زیادہ ہو گئے ، اتنے ہی کم ہوئے
    پنہاں تھا دام ، سخت قریب آشیان کے
    اڑنے نہ پائے تھے کہ گرفتار ہم ہوئے
    ہستی ہماری ،اپنی فنا پر دلیل ہے
    یاں تک مٹے کہ آپ ہم اپنی قَسم ہوئے
    سختی کشانِ عشق کی ، پوچھے ہے کیا خبر
    وہ لوگ رفتہ رفتہ سراپا الم ہوئے
    تیری وفا سے کیا ہو تلافی؟ کہ دہر میں
    تیرے سوا بھی ،ہم پہ بہت سے ستم ہوئے
    لکھتے رہے جنوں کی حکایاتِ خونچکاں
    ہر چند اس میں ہاتھ ہمارے قلم ہوئے
    اللہ رے! تیری تندیِ خو ،جس کے بیم سے
    اجزائےنالہ، دل میں مرے رزقِ ہم ہوئے
    اہلِ ہوس کی فتح ہے، ترکِ نبردِ عشق
    جو پاؤں اٹھ گئے ، وہی ان کے علم ہوئے
    نالے ،عدم میں ، چند ہمارے سپرد تھے
    جو واں نہ کھنچ سکے، سو وہ یاں آ کے دم ہوئے
    چھوڑی، اسدؔ ،نہ ہم نے گدائی میں دل لگی
    سائل ہوئے ، تو عاشقِ اہلِ کرم ہوئے



    جس زخم کی ہو سکتی ہو تدبیر رفو کی
    لکھ دیجیو، یا رب، اسے قسمت میں عدو کی
    اچّھا ہے سر انگشتِ حنائی کا تصوّر
    دل میں نظر آتی تو ہے اک بوند لہو کی
    کیوں ڈرتے ہو عشّاق کی بے حوصلگی سے؟
    یاں تو کوئی سنتا نہیں فریاد کسو کی
    اے بےخبراں، میرے لبِ زخمِ جگر پر
    بخیہ جسے کہتے ہو، شکایت ہے رفو کی
    گو زندگیِ زاہد بے چارہ عبث ہے
    اتنا ہے کہ رہتی تو ہے تدبیر وضو کی
    صد حیف! وہ نا کام کہ اک عمر سے، غالبؔ
    حسرت میں رہے، ایک بتِ عربدہ جو کی
    دشنے نے کبھی منہ نہ لگایا ہو جگر کو
    خنجر نے کبھی بات نہ پوچھی ہو گلو کی



    رونے سے ،اور عشق میں بےباک ہو گئے
    دھوئے گئے ہم اتنے کہ بس پاک ہو گئے
    صرفِ بہائےمے ہوئے،آلاتِ میکشی
    تھے یہ ہی دو حساب، سو یوں پاک ہو گئے
    رسوائے دہر گو ہوئے،آوارگی سے، تم
    بارے ، طبیعتوں کے تو چالاک ہو گئے
    کہتا ہے کون نالۂ بلبل کو بے اثر?
    پردے میں گُل کے، لاکھ جگر چاک ہو گئے
    پوچھے ہے کیا وجود و عدم اہلِ شوق کا؟
    آپ اپنی آگ کے خس و خاشاک ہو گئے
    کرنے گئےتھے اس سے تغافُل کا ،ہم گِلہ
    کی ایک ہی نگاہ کہ بس خاک ہو گئے
    پوچھے ہے کیا معاشِ جگر ، تفتگانِ عشق
    جوں شمع، آپ اپنی وہ خوراک ہوگئے
    اس رنگ سے اٹھائی کل اس نے اسدؔ کی نعش
    دشمن بھی جس کو دیکھ کے غمناک ہو گئے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر