اے عشق جنوں پیشہ۔۔۔ احمد فراز کی آخری کتاب سے انتخاب

محمد بلال اعظم نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 23, 2012

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    میں خوش ہوں راندۂ افلاک ہو کر
    مرا قد بڑھ گیا ہے خاک ہو کر

    مرا دل دُکھ گیا، لیکن وہ آنکھیں
    بہت اچھی لگیں نمناک ہو کر

    تکلف بر طرف اے جانِ خوباں
    کبھی ہم سے بھی مل بیباک ہو کر

    اٹھا لے جا یہ اپنا دام و دانہ
    مجھے مت صید کر چالاک ہو کر

    سجی ہے کس قدر اے سرو قامت
    ردائے گل تری پوشاک ہو کر

    اگر اتنی پرانی دوستی تھی
    تو پھر کر وار بھی سفاک ہو کر

    فرازؔ احساں ہے یاروں کا کہ یہ دل
    گریباں بن گیا ہے چاک ہو کر
    ٭٭٭
     
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    تجھے ہے مشقِ ستم کا ملال ویسے ہی
    ہماری جان تھی جاں پر وبال ویسے ہی

    چلا تھا ذکر زمانے کی بے وفائی کا
    سو آ گیا ہے تمہارا خیال ویسے ہی

    ہم آ گئے ہیں تہہِ دام تو نصیب اپنا
    وگرنہ اُس نے تو پھینکا تھا جال ویسے ہی

    میں روکنا ہی نہیں چاہتا تھا وار اُس کا
    گری نہیں مرے ہاتھوں سے ڈھال ویسے ہی

    زمانہ ہم سے بھلا دشمنی تو کیا رکھتا
    سو کر گیا ہے ہمیں پائمال ویسے ہی

    مجھے بھی شوق نہ تھا داستاں سنانے کا
    فرازؔ اُس نے بھی پوچھا تھا حال ویسے ہی
    ٭٭٭
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کسی کو بھی محبت میں مِلا کیا
    تو پھر اُس دشمنِ جاں سے گلہ کیا

    نہ عشق آساں نہ ترکِ عشق آساں
    سو ہم سے بزدلوں کا حوصلہ کیا

    کوئی بستی یہاں بسنے نہ پائے
    یہ دل ہے خوابگاہِ زلزلہ کیا

    وصال و ہجر بس کیفیتیں ہیں
    وگرنہ قرب کیسا فاصلہ کیا

    فرازؔ اب بھی وہی دیوانگی ہے
    تو قائم ہے پرانا سلسلہ کیا
    ٭٭٭​
     
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    احساں کئے تھے اُس نے جور عتاب کر کے
    ہم کس قدر ہیں نادم اُس سے حساب کر کے

    اُس سے کِیا تقاضا ہم عبث وفا کا
    اچھی بھلی محبت رکھ دی عذاب کر کے

    کس درجہ بد مزہ تھا واعظ کا وعظ یوں تو
    کچھ چاشنی سی آئی ذکرِ شراب کر کے

    رندوں نے صدقِ دل سے زاہد کو بھی پِلا دی
    اب سخت ہیں پشیماں کارِ ثواب کر کے

    یوں دلکش و مرصّع جیسے کوئی صحیفہ
    ہم کو تو اُس کا چہرہ پڑھنا کتاب کر کے

    احوال اہلِ غم کا سننا نہ تھا کہ تُو نے
    ہم کو ڈبو دیا ہے آنکھیں پُر آب کر کے

    غالبؔ کی پیروی میں یہ دن تو دیکھنے تھے
    ہم بھی ہوئے ہیں رسوا شعر انتخاب کر کے

    احمد فرازؔ ہو یا وہ میرؔ و میرزاؔ ہوں
    اے عشق تو نے چھوڑا سب کو خراب کر کے
    ٭٭٭
     
  5. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    خواب ہی خواب ہر اک شام میں لے آتی ہیں
    اپسرائیں جو ہمیں دام میں لے آتی ہیں

    پہلے پہلے تو کریں عہدِ وفا کی باتیں
    پھر کسی کوچۂ بدنام میں لے آتی ہیں

    یہ جو آ جاتی ہیں افسانہ سنانے والی
    اور قصے بھی ترے نام میں لے آتی ہیں

    تیری آنکھیں کہ بھُلا دیتی ہیں ساری دنیا
    آخرش گردشِ ایّام میں لے آتی ہیں

    چاہتیں کتنی بھی آغاز میں پیاری ہوں فرازؔ
    پھر وہی تلخیاں انجام میں لے آتی ہیں
    ٭٭٭​
     
  6. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    وادیِ عشق سے کوئی نہیں آیا جا کر
    آؤ آوازہ لگائیں سرِ صحرا جا کر

    بزمِ جاناں میں تو سب اہلِ طلب جاتے ہیں
    کبھی مقتل میں بھی دکھلائیں تماشا جا کر

    کن زمینوں پہ مری خاک لہو روئے گی
    کس سمندر میں گریں گے مرے دریا جا کر

    ایک موہوم سی اُمید ہے تجھ سے ورنہ
    آج تک آیا نہیں کوئی مسیحا جا کر

    دیکھ یہ حوصلہ میرا مرے بُزدل دشمن
    تجھ کو لشکر میں پکارا تنِ تنہا جا کر

    اُس شہِ حُسن کے در پر ہے فقیروں کا ہجوم
    یار ہم بھی نہ کریں عرضِ تمنا جا کر

    ہم تجھے منع تو کرتے نہیں جانے سے فرازؔ
    جا اُسی در پہ مگر ہاتھ نہ پھیلا جا کر
    ٭٭٭​
     
  7. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    گماں یہی ہے کہ دل خود اُدھر کوجاتا ہے
    سو شک کا فائدہ اُس کی نظر کوجاتا ہے

    حدیں وفا کی بھی آخر ہوس سے ملتی ہیں
    یہ راستہ بھی اِدھر سے اُدھر کوجاتا ہے

    یہ دل کا درد تو عمروں کا روگ ہے پیارے
    سو جائے بھی تو پہر دو پہر کوجاتا ہے

    یہ حال ہے کہ کئی راستے ہیں پیشِ نظر
    مگر خیال تری رہگذر کوجاتا ہے

    تو انوریؔ ہے نہ غالبؔ تو پھر یہ کیوں ہے فرازؔ
    ہر ایک سیلِ بلا تیرے گھر کوجاتا ہے
    ٭٭٭
     
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    جو بھی پیرایۂ اظہار نظر آتا ہے
    سامنے تُو بھی ہو تو بیکار نظر آتا ہے

    کس قدر خوگرِ آزار ہیں ہم بھی کہ یہیں
    جو ستمگر ہو وہ غم خوار نظر آتا ہے

    دیکھ یہ بے مہریِ دنیا کا عالم ہے ہے
    تُو بھی بے یار و مدد گار نظر آتا ہے

    شاید آ جائے کوئی میرؔ سا آرام طلب
    ابھی کچھ سایۂ دیوار نظر آتا ہے

    کیا کہیں جب سے مسیحا کوئی آیا ہے ادھر
    شہر کا شہر ہی بیمار نظر آتا ہے

    اب بھی ناپید نہیں مسلکِ منصور فرازؔ
    کوئی کوئی تو سرِ دار نظر آتا ہے
    ٭٭٭​
     
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ضبطِ گریہ سے تو کچھ اور بیکل ہوئے ہم
    پھر جو تنہائی میں روئے ہیں تو جل تھل ہوئے ہم

    یہی تہذیبِ دل و جاں ہے، محبت کیا ہے
    تم نے دیوانہ کہا ہم کو تو پاگل ہوئے ہم

    زندگی ترا پیمانِ محبت تو نہ تھا
    پھر تو یوں ٹوٹ کے بکھرے ہیں کہ پَل پَل ہوئے ہم

    یار اغیار سبھی اہلِ تماشا نکلے
    کتنے تنہا تھے کہ جب داخلِ مقتل ہوئے ہم

    یہ کہانی کسی اک موڑ پہ رُک جاتی تھی
    تُو ہُوا شاملِ قصّہ تو مکمل ہوئے ہم

    دم بھی لینے نہ دیا ضربتِ دنیا نے فرازؔ
    پھر جو مسمار ہوئے ہیں تو مسلسل ہوئے ہم
    ٭٭٭​
     
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کہاں سے لائیں مئے ناب بیچنے والا
    تمام شہر ہے زہراب بیچنے والا

    یہ ہم کہ جان ہتھیلی پہ رکھ کے پھرتے ہیں
    کوئی ہے بس ادب آداب بیچنے والا

    عجب نہیں کہ اگر سرد مہر ہے گاہک
    یہ دیکھ کر کہ ہے بیتاب بیچنے والا

    سنا ہے آج وہ تیر و کماں کا تاجر ہے
    جو کل تھا بربط و مضراب بیچنے والا

    پھرے ہے راتوں کو سرگشتہ و چراغ بکف
    وہی فرازؔ وہی خواب بیچنے والا
    ٭٭٭
     
  11. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    کوئی ہزار اکیلا ہو پر نہیں تنہا
    سو کیوں کہیں کہ ترے ساتھ ہمیں تنہا

    یہ زندگی ہے شب و روز کٹ ہی جاتے ہیں
    کبھی کبھی کوئی محفل کہیں کہیں تنہا

    ہر اک نے اپنی ہی دنیا بسائی ہوتی ہے
    سو خلوتوں میں بھی رہتا نہیں کوئی تنہا

    دل و جگر کا بھی احوال پوچھ لینا تھا
    تری نگاہ میں ہیں جیب و آستیں تنہا

    کدھر گیا ترے کوچے سے پھر خدا جانے
    فرازؔ گھوم رہا تھا یہیں کہیں تنہا
    ٭٭٭​
     
  12. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اب تو اتنا بھی ہو نہیں پائے
    رونا چاہا تو رو نہیں پائے

    ہم سے تعبیرِ خواب پوچھتے ہو
    زندگی بھر جو سو نہیں پائے

    مدتوں غم کی پرورش کی ہے
    یہ صِلے آج تو نہیں پائے

    جستجو رائیگاں نہیں تھی مگر
    جن کو چاہا تھا وہ نہیں پائے

    کیوں گلہ ہم سے ہو کسی کو فرازؔ
    ہم تو اپنے بھی ہو نہیں پائے
    ٭٭٭​
     
  13. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    جو سادہ دل ہوں بڑی مشکلوں میں ہوتے ہیں
    کہ دوستوں میں کبھی دشمنوں میں ہوتے

    ہَوا کے رخ پہ کبھی بادباں نہیں رکھتے
    بلا کے حوصلے دریا دِلوں میں ہوتے ہیں

    پلٹ کے دیکھ ذرا اپنے رہ نوردوں کو
    جو منزلوں پہ نہ ہوں راستوں میں ہوتے ہیں

    پیمبروں کا نسب شاعروں سے ملتا ہے
    فرازؔ ہم بھی انہیں سلسلوں سے ملتے ہیں
    ٭٭٭​
     
  14. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    سامنے اُس کے کبھی اُس کی ستائش نہیں کی
    دل نے چاہا بھی اگر ہونٹوں نے جنبش نہیں کی

    اہلِ محفل پہ کب احوال کھُلا ہے اپنا
    ہم بھی خاموش رہے اُس نے بھی پُرشش نہیں کی

    جس قدر اُس سے تعلق تھا چلے جاتا ہے
    اس کا کیا رنج ہو جس کی کبھی خواہش نہیں کی

    یہ بھی کیا کم ہے کہ دونوں کا بھرم قائم ہے
    اُس نے بخشش نہیں کی ہم نے گزارش نہیں کی

    اک تو ہم کو ادب آداب نے پیاسا رکھا
    اس پہ محفل میں صراحی نے بھی گردش نہیں کی

    ہم کہ دکھ اوڑھ کے خلوت میں پڑے رہتے ہیں
    ہم نے بازار میں زخموں کی نمائش نہیں کی

    اے مرے ابرِ کرم دیکھ یہ ویرانۂ جاں
    کیا کسی دشت پہ تُو نے کبھی بارش نہیں کی

    کٹ مرے اپنے قبیلے کی حفاظت کے لیے
    مقتلِ شہر میں ٹھہرے رہے جُنبش نہیں کی

    وہ ہمیں بھول گیا ہو تو عجب کیا ہے فرازؔ
    ہم نے بھی میل ملاقات کی کوشش نہیں کی
    ٭٭٭
     
  15. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    جن کو دوست سمجھتے تھے وہ دوست نما کہلاتے تھے
    ہم میں کچھ اہلِ دل بھی اہلِ دنیا کہلاتے تھے

    لوگو ایک زمانہ تھا جب ہم کیا کیا کہلاتے تھے
    دردِ آشوب سے پہلے ہم تنہا تنہا کہلاتے تھے

    جتنے بھی محبوب تھے ان کو عہد شکن یاروں نہ کہا
    جتنے بھی عشاق تھے سارے اہلِ وفا کہلاتے تھے

    ہم تو دیارِ جاناں کو کہتے ہیں دیارِ جاناں بس
    پہلے دلداروں کے قریے شہرِ سبا کہلاتے تھے

    تیرے لئے اب کیوں نہ کوئی تازہ تشبیہ تلاش کریں
    چاند فسانہ تھا تو دلبر ماہ لقا کہلاتے تھے

    تیرے خرام کو نسبت دیتے کبکِ دری کی چال سے لوگ
    گل جب چاک گریباں ہوتے تیری قبا کہلاتے تھے

    آؤ خاک سے رشتہ جوڑیں، وہم فلک افلاک ہوئے
    ہاتھ قلم ہونے سے پہلے دستِ دعا کہلاتے تھے

    اپنی ویراں آنکھوں کا اب کس سے حال احوال کہیں
    اب جو صحرا دیکھتے ہو آگے دریا کہلاتے تھے

    جو نایافت تھی اُس خوشبو کی کھوج میں ہم صحرا صحرا
    لہو لہان پھرا کرتے تھے آبلہ پا کہلاتے تھے

    دل پاگل تھا یونہی پکارے جاتا تھا جاں جاناں
    پر جو بیت بھی ہم کہتے تھے ہوشربا کہلاتے تھے

    بے آواز گلی کوچوں میں عشق دہائی دیتا تھا
    بستی بستی اہلِ نوا زنجیر بپا کہلاتے تھے

    گلیوں گلیوں لئے پھرے نابینا شہر میں آئینہ
    شاعر تھے پر شعر اپنے حرفِ عیسا کہلاتے تھے

    پس انداز سبھی موسم تھے اہلِ چمن کے توشے میں
    عہدِ خزاں کے جھونکے بھی جب بادِ صبا کہلاتے تھے

    اب بھی خوابِ گل ہے پریشاں اب بھی اسیر عنادل ہیں
    کل بھی باغ میں گلچیں اور صیاد خدا کہلاتے تھے

    غزل بہانہ کرتے کرتے لفظ ہی بے توقیر ہوئے
    سازِ سخن کو بھول چکے جو نغمہ سرا کہلاتے تھے

    جب سے فرازؔ تخلص رکھا ملکوں ملکوں رسوا ہیں
    ورنہ ہم بھی اوّل اوّل احمد شا کہلاتے تھے
    ٭٭٭
     
  16. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    چشمِ گریاں میں وہ سیلاب تھے اے یار کہ بس
    گرچہ کہتے رہے مجھ سے مرے غم خوار کہ بس

    زندگی تھی کہ قیامت تھی کہ فرقت تیری
    ایک اک سانس نے وہ وہ دیے آزار کہ بس

    اس سے پہلے بھی محبت کا قرینہ تھا یہی
    ایسے بے حال ہوئے ہیں مگر اِس بار کہ بس

    اب وہ پہلے سے بلا نوش و سیہ مست کہاں
    اب تو ساقی سے یہ کہتے ہیں قدح خوار کہ بس

    لوگ کہتے تھے فقط ایک ہی پاگل ہے فرازؔ
    ایسے ایسے ہیں محبت میں گرفتار کہ بس
    ٭٭٭​
     
  17. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    فرازؔ تم نے عبث شوق سے سجائے سخن
    کہاں وہ قامتِ جاناں کہاں قبائے سخن

    بیان اُس گلِ رعنا کا بے قیاس نہ کر
    کہ عندلیب کا دل چاہیے برائے سخن

    کہ ذکرِ یار تو جان و جگر کا سودا ہے
    کہ خونِ دل تو نہیں ہے فقط بہائے سخن

    اُسی کے دھیان سے روشن ہیں دل کی قندیلیں
    اُسی کی یاد سے منسوب ہر شعاعِ سخن

    اُسی کے دم سے ہیں سر سبز زخم عمروں کے
    اُسی کے دم سے صبا آشنا، فضائے سخن

    اُسی کے ہہجر میں لکھے ہیں مرثیے دل کے
    اُسی کے وصل میں دیکھے ہیں عشوہ ہائے سخن

    اُسی کے قرب سے گویا سکوت ِ لالہ و گل
    اُسی کے لطف سے لب بستگی، بجائے سخن

    تم اپنے عجز کو سمجھتے ہوئے ہو اوجِ ہنر
    سو اِس تضاد پہ غالبؔ کا یاد آئے سخن

    "نہ شعلے میں وہ کرشمہ نہ برق میں وہ ادا"
    تو کیا بیان سراپا ہو کیا بنائے سخن

    "ز فرق تا بقدم ہر کجا کہ می نگرم"
    نظر تو چیز ہے کیا ہے نہ تاب لائے سخن

    وہ یاد آئے تو الہام بن کے شعر اترے
    وہ بھول جائے تو پھر کس کو یاد آئے سخن

    کبھی کبھی ہی دل و جاں سے آنچ اُٹھتی ہے
    فرازؔ ہم نہیں کہتے سخن برائے سخن
    ٭٭٭​
     
  18. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    "اے عشق جنوں پیشہ سے انتخاب"۔۔۔ٹائپنگ مکمل
    یہ رہا ورڈ فائل کا میڈیافائر لنک بھی
    لیکن اس ورڈ فائل میں ایک مسئلہ ہو گیا ہے۔
    ونڈوز 7 کرپٹ ہونے کی وجہ سے آخری تین غزلوں کے علاوہ ساری کتاب میں سے spaces کافور ہو گئی ہیں۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  19. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    • زبردست زبردست × 1
  20. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,970
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ٹیکسٹ کے طور پر سیو کر کے دیکھا؟
     
    • متفق متفق × 1

اس صفحے کی تشہیر