اے عشق جنوں پیشہ۔۔۔ احمد فراز کی آخری کتاب سے انتخاب

محمد بلال اعظم نے 'اردو شاعری' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اکتوبر 23, 2012

  1. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    میں یہاں "احمد فراز" کی آخری کتاب "اے عشق جنوں پیشہ" ٹائپ کر کے پوسٹ کیا کروں گا، پہلے ورڈ فائل میں کررہا تھا لیکن فائل کرپٹ ہونے کی وجہ سے مجھے کام دوبارہ کرنا پڑا۔
    لہٰذا اس سے زیادہ محفوظ جگہ کوئی نظر نہیں آتی۔

    نوٹ:تبصروہ جات کے لئے یہ دھاگہ استعمال کریں۔
    استادِ محترم الف عین صاحب
    مقدس آپی
    قیصرانی صاحب
     
    • زبردست زبردست × 2
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اے عشق جنوں پیشہ
    (احمد فراز)
     
  3. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اے عشق جنوں پیشہ
    عمروں کی مسافت سے
    تھک ہار گئے آخر
    سب عہد اذیت کے
    بیکار گئے آخر
    اغیار کی باہوں میں
    دلدار گئے آخر
    رو کر تری قسمت کو
    غمخوار گئے آخر
    یوں زندگی گزرے گی
    تا چند وفا کیشا
    وہ وادئ کلفت تھی
    یا کوہِ الم جو تھا
    سب مدِّ مقابل تھے
    خسرو تھا کہ جم جو تھا
    ہر راہ میں ٹپکا ہے
    خوننابہ بہم جو تھا
    رستوں میں لٹایا ہے
    وہ بیش کہ کم جو تھا
    نے رنجِ شکستِ دل
    نے جان کا اندیشہ
    ۔۔۔۔۔
    کچھ اہلِ ریا بھی تو
    ہمراہ ہمارے تھے
    رہرو تھے کہ رہزن تھے
    جو روپ بھی دھارے تھے
    کچھ سہل طلب بھی تھے
    وہ بھی ہمیں پیارے تھے
    اپنے تھے کہ بیگانے
    ہم خوش تھے کہ سارے تھے
    سو زخم تھے نس نس میں
    گھائل تھے رگ و ریشہ
    ۔۔۔۔۔
    جو جسم کا ایندھن تھا
    گلنار کیا ہم نے
    وہ زہر کہ امرت تھا
    جی بھر کہ پیا ہم نے
    سو زخم ابھر آئے
    جب دل کو سیا ہم نے
    کیا کیا نہ محبت کی
    کیا کیا نہ جیا ہم نے
    لو کوچ کیا گھر سے
    لو جوگ لیا ہم نے
    جو کچھ تھا دیا ہم نے
    اور دل سے کہا ہم نے
    رکنا نہیں درویشا
    ۔۔۔۔۔
    یوں ہے کہ سفر اپنا
    تھا خواب نہ افسانہ
    آنکھوں میں ابھی تک ہے
    فردا کا پریخانہ
    صد شکر سلامت ہے
    پندارِ فقیرانہ
    اس شہرِ خموشی میں
    پھر نعرۂ مستانہ
    اے ہمّتِ مردانہ
    صد خارہ و یک تیشہ
    اے عشقِ جنوں پیشہ
    اے عشقِ جنوں پیشہ
    ٭٭٭
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    قتلِ عشاق میں اب عذر ہے کیا بسم اللہ
    سب گنہگار ہیں راضی بہ رضا بسم اللہ

    میکدے کے ادب آداب سبھی جانتے ہیں
    جام ٹکرائے تو واعظ نے کہا بسم اللہ

    ہم نے کی رنجشِ بے جا کی شکایت تم سے
    اب تمہیں بھی ہے اگر کوئی گِلا بسم اللہ

    بتِ کافر ہو تو ایسا کہ سرِ راہگذار
    پاؤں رکھے تو کہے خلقِ خدا بسم اللہ

    ہم کو گُلچیں سے گِلہ ہے گُل و گُلشن سے نہیں
    تجھ کو آنا ہے تو اے بادِ صبا بسم اللہ

    گرتے گرتے جو سنبھالا لیا قاتل نے فرازؔ
    دل سے آئی کسی بسمل کی صدا، بسم اللہ
    ٭٭٭
     
  5. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اُس کا اپنا ہی کرشمہ ہے فسوں ہے یوں ہے
    یوں تو کہنے کو سبھی کہتے ہیں یوں ہے یوں ہے

    جیسے کوئی درِ دل پر ہو ستادہ کب سے
    ایک سایہ نہ دروں ہے نہ بروں ہے یوں ہے

    تم نے دیکھی ہی نہیں دشتِ وفا کی تصویر
    نوکِ ہر خار پہ اک قطرۂ خوں ہے یوں ہے

    تم محبت میں کہاں سو د و زیاں لے آئے
    عشق کا نام خرد ہے نہ جنوں ہے یوں ہے

    اب تم آئے ہو مری جان تماشا کرنے
    اب تو دریا میں تلاطم نہ سکوں ہے یوں ہے

    ناصحا تجھ کو خبر کیا کہ محبت کیا ہے
    روز آ جاتا ہے سمجھاتا ہے یوں ہے یوں ہے

    شاعری تازہ زمانوں کی ہے معمار فرازؔ
    یہ بھی اک سلسلۂ کُن فیکوں ہے یوں ہے
    ٭٭٭
     
  6. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بھید پائیں تو رہِ یار میں گم ہو جائیں
    ورنہ کس واسطے بیکار میں گم ہو جائیں

    کیا کریں عرضِ تمنا کہ تجھے دیکھتے ہی
    لفظ پیرایۂ اظہار میں گم ہو جائیں

    یہ نہ ہو تم بھی کسی بِھیڑ میں کھو جاؤ کہیں
    یہ نہ ہو ہم بھی کسی بازار میں گم ہو جائیں

    کس طرح تجھ سے کہیں کتنا بھلا لگتا ہے
    تجھ کو دیکھیں ترے دیدار میں گم ہو جائیں

    تم ترے شوق میں یوں خود کو گنوا بیٹھے ہیں
    جیسے بچے کسی تہوار میں گم ہو جائیں

    پیچ اتنے بھی نہ دو کرمکِ ریشم کی طرح
    دیکھنا سر ہی نہ دستار میں گم ہو جائیں

    ایسا آشوبِ زمانہ ہے کہ ڈر لگتا ہے
    دل کے مضموں ہی نہ اشعار میں گم ہو جائیں

    شہر یاروں کے بلاوے بہت آتے ہیں فرازؔ
    یہ نہ ہو آپ بھی دربار میں گم ہو جائیں
    ٭٭٭
     
  7. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    ذکرِ جاناں سے جو شہرِ سخن آراستہ ہے
    جس طرف جائیے اک انجمن آراستہ ہے
    یوں پھریں باغ میں بالا قد و قامت والے
    تو کہے سر و و سمن سے چمن آراستہ ہے
    خوش ہو اے دل کہ ترے ذوقِ اسیری کے لئے
    کاکلِ یار شکن در شکن آراستہ ہے
    کون آج آیا ہے مقتل میں مسیحا کی طرح
    تختۂ دار سجا ہے رسن آراستہ ہے
    شہرِ دل میں تو سدا بھیڑ لگی رہتی ہے
    پر ترے واسطے اے جانِ من آ، راستہ ہے
    ہاں مگر جان سے گزر کر کوئی دیکھے تو سہی
    عشق کی بند گلی میں بھی بنا راستہ ہے
    اہلِ دل کے بھی مقدر میں کہاں منزلِ دوست
    عام لوگوں پہ تو ویسے ہی منع راستہ ہے
    خوش لباسی ترے عشاق کی قائم ہے ہنوز
    دیکھ کیا موجۂ خوں سے کفن آراستہ ہے
    ایک پردہ ہے اسیروں کی زبوں حالی پر
    یہ جو دیوارِ قفس ظاہرن آراستہ ہے
    حوصلہ چاہیے طوفانِ محبت میں فرازؔ
    اِس سمندر میں تو بس موجِ فنا راستہ ہے
    1؎ قافیہ غلط سہی پر اچھا لگا۔
    ٭٭٭
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    یہ دِل کسی بھی طرح شامِ غم گزار تو دے
    پھر اس کے بعد وہ عمروں کا انتظار تو دے

    ہوائے موسمِ گُل جانفزا ہے اپنی جگہ
    مگر کوئی خبرِ یارِ خوش دیار تو دے

    ہمیں بھی ضد ہے کہاں عمر بھر نبھانے کی
    مگر وہ ترکِ تعلق کا اختیار تو دے

    بجا کہ درد سری ہے یہ زندگی کرنا
    مگر یہ بارِ امانت کوئی اُتار تو دے

    ترا ہی ذکر کریں بس تجھی کو یاد کریں
    یہ فرصتیں بھی کبھی فکرِ روزگار تو دے

    ترے کرم بھی مجھے یاد ہیں مگر مرا دل
    جو قرض اہلِ زمانہ کے ہیں اُتار تو دے

    فلک سے ہم بھی کریں ظلمِ ناروا کے گِلے
    پہ سانس لینے کی مہلت ستم شعار تو دے

    فرازؔ جاں سے گزرنا تو کوئی بات نہیں
    مگر اب اس کی اجازت بھی چشمِ یار تو دے
    ٭٭٭​
     
  9. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    بجھا ہے دل تو غمِ یار اب کہاں تُو بھی
    بسانِ نقش پہ دیوار اب کہاں تُو بھی

    بجا کہ چشمِ طلب بھی ہوئی تہی کیسہ
    مگر ہے رونقِ بازار اب کہاں تُو بھی

    ہمیں بھی کارِ جہاں لے گیا بہت دُور
    رہا ہے درپئے آزار اب کہاں تُو بھی

    ہزار صورتیں آنکھوں میں پھرتی رہتی ہیں
    مری نگاہ میں ہر بار اب کہاں تُو بھی

    اُسی کو وعدہ فراموش کیوں کہیں اے دل!
    رہا ہے صاحبِ کردار اب کہاں تُو بھی

    مری غزل میں کوئی اور کیسے در آئے
    ستم تو یہ ہے کہ اے یار! اب کہاں تُو بھی

    جو تجھ کو پیار کرے تیری لغزشوں کے سبب
    فرازؔ ایسا گنہگار اب کہاں تُو بھی
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    اک ذرا سُن تو سہی مہکتے گیسو والی
    راہ میں کون دکاں پڑتی ہے خوشبو والی

    پھر یہ کیوں ہے کہ مجھے دیکھ کے رم خوردہ ہے
    تیری آنکھوں میں تو وحشت نہیں آہو والی

    دیکھنے میں تو ہیں سادہ سے خدوخال مگر
    لوگ کہتے ہیں کوئی بات ہے جادو والی

    گفتگو ایسی کہ بس دل میں اُترتی جائے
    نہ تو پُرپیچ نہ تہہ دار نہ پہلو والی

    ایک منظر کی طرح دل پہ منقش ہے ابھی
    ایک ملاقات سرِ شام لبِ جُو والی

    درد ایسا ہے کہ بجھتا ہے چمک جاتا ہے
    دل میں اک آگ سی ہے آگ بھی جگنو والی

    جیسے اک خواب سرائے سے گزر ہو تیرا
    کوئی پازیب چھنک جاتی ہے گھنگھرو والی

    زعم چاہت کا تھا دونوں کو مگر آخرِ کار
    آ گئی بیچ میں دیوار من و تو والی

    ایس لگتا ہے کہ اب کے جو غزل میں نے کہی
    آخری چیخ ہے دل توڑتے آہو والی

    اک نگاہِ غلط انداز ہی اے جانِ فرازؔ
    شوق مانگے ہے خلش تِیر ترازو والی
    ٭٭٭​
     
    • متفق متفق × 1
  11. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    مثالِ دستِ زلیخا تپاک چاہتا ہے
    یہ دل بھی دامنِ یوسف ہے چاک چاہتا ہے

    دعائیں دو مرے قاتل کو تم کہ شہر کا شہر
    اُسی کے ہاتھ سے ہونا ہلاک چاہتا ہے

    فسانہ گو بھی کرے کیا کہ ہو کوئی سرِ بزم
    مآلِ قصۂ دل دردناک چاہتا ہے

    اِدھر اُدھر سے کئی آ رہی ہیں آوازیں
    اور اُس کا دھیان بہت انہماک چاہتا ہے

    ذرا سی گردِ ہوس دل پہ لازمی ہے فرازؔ
    وہ عشق کیا ہے جو دامن کو پاک چاہتا ہے
    ٭٭٭​
     
  12. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    جنتِ گوش بنی مجھ سے گنہگار کی بات
    آ گئی تھی مرے لب پر میرے دلدار کی بات

    وہ نہیں ہے تو یونہی دل کو دُکھانے کے لئے
    چھیڑ دی ہم نے کسی یارِ دل آزار کی بات

    اُس ستمگر کو سبھی لوگ بُرا کہتے ہیں
    کوئی سنتا ہی نہیں مرے غم خوار کی بات

    خود کو بیچیں تو کہاں ہم کہ دل و جاں کی جگہ
    ہر خریدار کرے درہم و دینار کی بات

    صوفیِ شہر بھی پردے میں تصوّف کے سہی
    چھیڑ دیتا ہے اُسی یارِ طُرحدار کی بات

    کل ہوئی حضرتِ ناصح سے ملاقات فرازؔ
    پھر وہی پند و نصیحت وہی بیکار کی بات
    ٭٭٭​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    روگ ایسے بھی غمِ یار سے لگ جاتے ہیں
    در سے اُٹھتے ہیں تو دیوار سے لگ جاتے ہیں

    عشق آغاز میں ہلکی سی خلش رکھتا ہے
    بعد میں سینکڑوں آزار سے لگ جاتے ہیں

    پہلے پہلے ہوس اک آدھ دکاں کھولتی ہے
    پھر تو بازار کے بازار سے لگ جاتے ہیں

    بے بسی بھی کبھی قربت کا سبب بنتی ہے
    رو نہ پائیں تو گلے یار سے 1؎ لگ جاتے ہیں

    کترنیں غم کی جو گلیوں میں اُڑی پھرتی ہیں
    گھر میں لے آؤ تو انبار سے لگ جاتے ہیں

    داغ دامن کے ہوں، دل کے ہوں کہ چہرے کے فرازؔ
    کچھ نشاں عمر کی رفتار سے لگ جاتے ہیں
    1؎ ضرورتِ اظہار
    ٭٭٭​
     
  14. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    پیشِ جاناں سخن آشفتہ سری ہے، خاموش
    تو جو گویا ہے تری بے خبری ہے خاموش

    دل کو ایک فیصلہ کرنا ہے ترے بارے میں
    اِس گھڑی جان ہتھیلی پہ دھری ہے، خاموش

    اب کے شب گزری تو اک تیری مری بات نہیں
    شہر کا شہر چراغِ سحری ہے خاموش

    نالۂ نے، شررِ سنگ، سکوتِ صحرا
    اپنی اپنی روشِ نوحہ گری ہے، خاموش

    وہ قفس ہو کہ چمن، نالہ و نغمہ بے سود
    جب تلک عالمِ بے بال و پری ہے خاموش
    ٭٭٭​
     
  15. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    گفتگو اچھی لگی ذوقِ نظر اچھا لگا
    مدتوں کے بعد کوئی ہمسفر اچھا لگا

    دل کا دکھ جانا تو دل کا مسئلہ ہے پر ہمیں
    اُس کی ہنس دینا ہمارے حال پر اچھا لگا

    پر طرح کی بے سرو سامانیوں کے باوجود
    آج وہ آیا تو مجھ کو اپنا گھر اچھا لگا

    باغباں گلچیں کو چاہے جو کہے ہم کو تو پھول
    شاخ سے بڑھ کر کفِ دلدار پر اچھا لگا

    کون مقتل میں نہ پہنچا کون ظالم تھا جسے
    تیغِ قاتل سے زیادہ اپنا سر اچھا لگا

    ہم بھی قائل ہیں وفا میں اُستواری کے مگر
    کوئی پوچھے کون کس کو عمر بھر اچھا لگا

    اپنی اپنی چاہتیں ہیں لوگ اب جو بھی کہیں
    اک پری پیکر کو اک آشفتہ سر اچھا لگا

    میرؔ کے مانند اکثر زیست کرتا تھا فرازؔ
    تھا تو وہ دیوانہ سا شاعر مگر اچھا لگا
    ٭٭٭​
     
  16. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    چل نکلتی ہیں غمِ یار سے باتیں کیا کیا
    ہم نے بھی کیں در و دیوار سے باتیں کیا کیا

    بات بن آئی ہے پھر سے کہ مرے بارے میں
    اُس نے پوچھیں مرے غم خوار سے باتیں کیا کیا

    لوگ لب بستہ اگر ہوں تو نکل آتی ہیں
    چپ کے پیرایۂ اظہار سے باتیں کیا کیا

    کسی سودائی کا قصہ کسی ہرجائی کی بات
    لوگ لے آتے ہیں بازار سے باتیں کیا کیا

    ہم نے بھی دست شناسی کے بہانے کی ہیں
    ہاتھ میں ہاتھ لئے یار سے باتیں کیا کیا

    کس کو بِکنا تھا مگر خوش ہیں کہ اِس حیلے سے
    ہو گئیں اپنے خریدار سے باتیں کیا کیا

    ہم ہیں خاموش کہ مجبورِ محبت تھے فرازؔ
    ورنہ منسوب ہیں سرکار سے باتیں کیا کیا
    ٭٭٭​
     
  17. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    رقص میں
    کل شب ہوئی کسی سے ملاقات رقص میں
    وہ کب تھی زندگی تھی مرے ساتھ رقص میں

    اک دوسرے کو تھامے ہوئے بے سبب نہ تھے
    محسوس کی ہے گردشِ حالات رقص میں

    اُس کے بدن کی آنچ مرے دل تک آ گئی
    آوارہ ہو رہے تھے مرے ہاتھ رقص میں

    وہ ایڑیوں پہ مثلِ زمیں گھومتی رہی
    سات آسماں تھے رقص کناں ساتھ رقص میں

    کوئی نہیں تھا گوش بر آواز پھر بھی وہ
    سرگوشیوں میں کرتی رہی بات رقص میں

    یہ دل کہ اپنا سود و زیاں جانتا نہیں
    آئے طرح طرح کے خیالات رقص میں

    لمحوں کا التفات کہیں عارضی نہ ہو
    میں کر رہا تھا خود سے سوالات رقص میں

    موسیقیوں کی لے سے لہو موج موج تھا
    وہ اس کے با وجود تھی محتاط رقص میں

    پھر آ گئے کچھ اہلِ عبا بھی سبو بہ دست
    کیا کیا دِکھا رہے تھے کرامات رقص میں

    کچھ دیر بعد جیسے بہم ہو گئے تھے سب
    اہلِ قبا و اہلِ خرابات رقص میں

    آخر کو رقص گاہ میں ایسی پڑی دھمال
    اک دوسرے سے چھوٹ گئے ہاتھ رقص میں

    وہ کون تھی کہاں سے تھی آئی کدھر گئی
    اتنا ہے یاد بیت گئی رات رقص میں
    ٭٭٭
     
  18. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    زباں پہ حرف سے پہلے ہی زخم آ جاتا
    یہ حالِ دل تھا تو کیا حالِ دل کہا جاتا

    میں حیرتی ہوں کہ سارا جہاں ہے سحرِ زدہ
    جو دیکھتا تھا اسے دیکھتا چلا جاتا

    وفا کا نام ہے ناکامئ محبت سے
    وگرنہ کوئے ہوس تک یہ سلسلہ جاتا

    اگر یہ زخم نہ بھرتا تو دل نہیں دکھتا
    اگر یہ درد نہ تھمتا تو چین آ جاتا

    کسی کے ہجر کو جی سے لگا لیا ہے عبث
    یہ چند روز کا آزار تھا چلا جاتا

    کیا ہے جس سے بھی اُس کی ستمگری کا گلہ
    وہ اپنی درد بھری داستاں سنا جاتا

    عجب ادا سے وہ گل پیرہن ہے محوِ خرام
    فرازؔ دیکھ بہاروں کا قافلہ جاتا
    ٭٭٭​
     
  19. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    تجھ کو بُھولے ہیں تو کچھ دوش زمانے کا نہ تھا
    اب کے لگتا ہے کہ یہ دکھ ہی ٹھکانے کا نہ تھا

    یہ جو مقتل سے بچا لائے سروں کو اپنے
    ان میں اک شخص بھی کیا میرے گھرانے کا نہ تھا

    ہر برس تازہ کِیا عہدِ محبت کو عبث
    اب کُھلا ہے کہ یہ تہوار منانے کا نہ تھا

    اب کے بے فصل بھی صحرا گل و گلزار سا ہے
    ورنہ یہ ہجر کا موسم ترے آنے کا نہ تھا

    دوش پر بارِ زمانہ بھی لئے پھرتے ہیں
    مسئلہ صرف ترے ناز اٹھانے کا نہ تھا

    یار! کیا کیا تری باتوں نے رُلایا ہے ہمیں
    یہ تماشا سرِ محفل تو دِکھانے کا نہ تھا

    کوئی کس منہ سے کرے تجھ سے شکایت جاناں
    جس کو تُو بھول گیا یاد ہی آنے کا نہ تھا

    آئے دن اک نئی آفت چلی آتی ہے فرازؔ
    اب پشیماں ہیں کہ یہ شہر بسانے کا نہ تھا
    ٭٭٭​
     
  20. محمد بلال اعظم

    محمد بلال اعظم لائبریرین

    مراسلے:
    10,288
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Angelic
    وہ قرب و ہجر کے سب روز و شب گذارے ہوئے
    ہمارے شعر بنے یا سُخن تمہارے ہوئے

    قمار خانۂ شہرِ وفا میں حوصلہ رکھ
    یہاں تو جشن مناتے ہیں لوگ ہارے ہوئے

    حرم تو خیر مگر بتکدے ہیں کیوں ویراں
    تو کیا خدا کو صنم آشنا بھی پیارے ہوئے

    جو اشک جذب ہوئے میری تیری آنکھوں میں
    یہاں تو زخم بنے ہیں وہاں ستارے ہوئے

    جو یادِ یار سے اب منہ چھپائے پھرتے ہیں
    ہمی تو ہیں وہ غمِ زندگی کے مارے ہوئے

    نگاہِ یار کو اب کس لئے تقاضا ہے
    کہ ایک عمر ہوئی قرضِ جاں اُتارے ہوئے

    فرازؔ خلوتِ جاں میں سکوت ہے کہ جو تھا
    زمانے ہو گئے جیسے اُسے پکارے ہوئے
    ٭٭٭
     

اس صفحے کی تشہیر