اصلاح طلب ایک اور غزل۔۔۔۔

محمد فخر سعید نے 'اِصلاحِ سخن' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏اگست 9, 2020

  1. محمد فخر سعید

    محمد فخر سعید محفلین

    مراسلے:
    26
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    سمجھیے جیسے مر گیا ہوں میں
    خود سے خود ہی بچھڑ گیا ہوں میں

    آپ کو کیا بتاؤں حال اپنا
    اپنی قسمت سے لڑ گیا ہوں میں

    جانتا تھا وفا نہیں ملنی
    پھر بھی ان ہی پہ مر گیا ہوں میں

    دیکھ کر خود کو آج آئینے میں
    ایک بار پھر بکھر گیا ہوں میں

    ان کا اب ذکر بھی نہیں کرتا
    لگ رہا ہے بگڑ گیا ہوں میں

    اب کسی سے نہیں ہے دل لگتا
    مانو جیسے سدھر گیا ہوں میں

    ہنستا رہتا ہوں اور ہنساتا ہوں
    اب تو کافی سنور گیا ہوں میں

    ان کی ہر اک ادا بیاں کرتے
    چاند تاروں سے لڑ گیا ہوں میں

    یاد باتوں کو انکی کر کے آج
    فخر آنکھوں کو بھر گیا ہوں میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    1,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    مر اور بچھڑ قافیے کیسے ہوسکتے ہیں؟؟؟
     
  3. محمد فخر سعید

    محمد فخر سعید محفلین

    مراسلے:
    26
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    خود سے خود ہی بپھر گیا ہوں میں
    ؟
     
  4. محمّد احسن سمیع :راحل:

    محمّد احسن سمیع :راحل: محفلین

    مراسلے:
    1,902
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Confused
    بھائی آپ جو کہنا چاہ رہے ہیں وہ کھل کر بیان کریں ۔۔۔ اس طرح آدھی ادھوری بات کرنے کا مقصد کیا ہے؟
     
  5. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,889
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    آر پانچ قوافی ڑ والے الفاظ کو غلط استعمال کیا گیا ہے، صرف مطلع میں تبدیلی سے تو کام نہیں چلے گا نا!
     
  6. محمد فخر سعید

    محمد فخر سعید محفلین

    مراسلے:
    26
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    سمجھیے جیسے مر گیا ہوں میں
    خود سے خود ہی بپھر گیا ہوں میں

    آپ کو کیا بتاؤں حال اپنا
    اپنی قسمت سے ڈر گیا ہوں میں

    جانتا تھا وفا نہیں ملنی
    پھر بھی ان ہی پہ مر گیا ہوں میں

    دیکھ کر خود کو آج آئینے میں
    ایک بار پھر بکھر گیا ہوں میں

    ان کا اب ذکر بھی نہیں کرتا
    لگ رہا ہے سدھر گیا ہوں میں

    ہنستا رہتا ہوں اور ہنساتا ہوں
    اب تو کافی سنور گیا ہوں میں

    یاد باتوں کو انکی کر کے آج
    فخر آنکھوں کو بھر گیا ہوں میں
     
  7. محمد فخر سعید

    محمد فخر سعید محفلین

    مراسلے:
    26
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    دوبارہ پڑھ کر مزید اصلاح کریں محترم!
     
  8. محمد فخر سعید

    محمد فخر سعید محفلین

    مراسلے:
    26
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    محترم! اب پڑھیں ۔۔۔ اور اصلاح کریں۔۔۔
    سمجھیے جیسے مر گیا ہوں میں
    خود سے خود ہی بپھر گیا ہوں میں

    آپ کو کیا بتاؤں حال اپنا
    اپنی قسمت سے ڈر گیا ہوں میں

    جانتا تھا وفا نہیں ملنی
    پھر بھی ان ہی پہ مر گیا ہوں میں

    دیکھ کر خود کو آج آئینے میں
    ایک بار پھر بکھر گیا ہوں میں

    ان کا اب ذکر بھی نہیں کرتا
    لگ رہا ہے سدھر گیا ہوں میں

    ہنستا رہتا ہوں اور ہنساتا ہوں
    اب تو کافی سنور گیا ہوں میں

    یاد باتوں کو انکی کر کے آج
    فخر آنکھوں کو بھر گیا ہوں میں
     

اس صفحے کی تشہیر