1. اردو محفل سالگرہ پانزدہم

    اردو محفل کی یوم تاسیس کی پندرہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

اسلامی معیشت

زیک نے 'معیشت و تجارت' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 8, 2008

  1. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,330
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    اسلامی فنانس پر فوربز میگزین نے کئی اچھے مضامین شائع کئے ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  2. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    11,306
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زیک ان میں کیا کیا عنوان زیر بحث آئے ہیں
     
  3. ایچ اے خان

    ایچ اے خان معطل

    مراسلے:
    14,183
    موڈ:
    Cool
    اللہ کرے کہ اسلامی فنانس بوم بوم کرے اور سود سے چھٹکارا ملے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. سعود الحسن

    سعود الحسن محفلین

    مراسلے:
    388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    میں نے موجودہ دور میں چلنے والی اسلامی معیشت کو جیتنا دیکھا ہے اسے ایک دھکاوے سے زیادہ نہیں سمجھتا- بنیادی طور پر پروڈکٹ وہی ہے صرف لفافہ بدلہ گیا ہے۔ اور ان میں سے اکثر حیلوں سے سود کو جائز کرنے کی کوشش ہیں۔
     
  5. وجی

    وجی لائبریرین

    مراسلے:
    24,720
    موڈ:
    Daring
    سعود صاحب پہلے تو اپنے ذہن پر اتنا ذورنہ دیں‌ آپکے سمجھنے اور نہ سمجھنے سے صحیح غلط اور غلط صحیح نہیں ہوگا پاکستان میں تمام اسلامی بینک بڑے علماء کے ذیرے نگرانی کام کررہیں ہیں اور اگر آپ کولگتا ہے کہ وہ غلط ہیں تو ان علماء کو سمجھائیں کہ وہ غلط کررہے ہیں اور آپ بلکل ٹھیک کہ رہے ہیں
    بھائی قتل کرنے کی سزا اسلام میں بھی موت ہے اب آپ اس کو گولی مار کر دیں ، لٹکا کر دیں ، زہر دیں کر دیں یا سر قلم کر کے دیں بات تو ایک ہی ہے
    لیکن اسلام میں طریقہ بیان ہے کہ سر قلم کرکے دیا جائے اگر آپکے نذدیک اسلام نظام ضابطائے حیات نہیں تو پھر آپ جو کچھ بھی کہ سکتیں ہیں یہ آپکی اپنی مرضی پر ہے
    میرا تایازاد بھائی ایک اسلامی بینک میں ملازم ہے وہ بھی اکثر آپ جیسے لوگوں کو سمجھا سمجھا کر تھک گیا ہے کہ ایک اسلامی طریقہ ہے اور ایک غیر اسلامی طریقہ ہے اور اب تو وہ کسی سے اس بارے میں بحث بھی نہیں کرتا کہ یہ کرنا فضول ہے ان پر االلہ رحم کریں آمین
     
  6. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    بھائی ہر بینک سود کیساتھ ہی چلتا ہے، سود کے بغیر کوئی بینک بنا کر دکھا دیں،،،، وہی صحیح اسلامی بینک ہوگا
     
  7. سعود الحسن

    سعود الحسن محفلین

    مراسلے:
    388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    میرے دوست میں جب یہ پوسٹ کررہا تھا تو مجھے ایسے ہی کسی ردعمل کی امید تھی۔ میں عام طور پر اس طرح کے موضوعات جن سے لوگوں کی جزباتی وابستگی ہوتی ہے پر بحث سے ہر ممکن بچتا ہوں، لہٰزا میں یہ پوسٹ نہیں کرنا چاہتا تھا، لیکن پتہ نہیں کیوں کر گیا- تمہیں اور دوسرے لوگ جن کا اس پوسٹ سے دل دکھا ہے ان سے معزرت خواہ ہوں۔

    لیکن آپ نے جس انداز میں یہ پوسٹ لکھی ہے ، اور میرے اور شائد معیشت اور اسلامی معیشت اور اسلامی بنکاری، اسلامی انشورنس کے متعلق کچھ نہ جانتے ہوے جو طرز تخاطب اختیار کیا ہے اس کا مجھے بہت افسوس ہوا۔بحرحال میری کوشش یہی ہوگی کہ میری تحریر میں تلخی نہ آے۔

    سب سے پہلے تو میں اپنا تعارف کرادوں، آپ نے کہا کہ میں اپنے زہن پہ زور نہ دوں، اب اتفاق یہ ہے کہ میرا کام ہی زہن پر زور دینا ہے، میں ایک ٹیکس پروفیشنل ہوں ، اور بہت بڑی اکاونٹنٹ فرم میں تقریبا دس سال سے کام کررہا ہوں۔
    اتفاق سے پاکستان میں اسلامی معیشت پر کام کے حوالے سے میری فرم سب سے زیادہ ماہر مانی جاتی ہے، مزید اتفاق یہ ہے کہ پاکستان میں پرائیوٹ سیکٹر میں کام کرنے والے اکثر بڑے بینک اور انشورنس کمپنیز اور کی اسلامی بنک اور انشورنس کمپنیز میری پورٹفولیو میں شامل ہیں۔ اور میں انہیں مختلف ٹرانزیکشنس کے سلسلے میں ٹیکس ایڈوایز دیتا رہتا ہوں۔اور اس دوران اکثر ان کے ٹیکس اور فانینشل ہیڈس اور کبھی کبھار شریعہ بورڈ کے ممبر سے بھی ملاقات یا فون پر گفتگو ہو جاتی ہے۔

    اس کے علاوہ اسلامی نظام حکومت و معیشت اور اس کے نفاز کا مطالہ کرنا بھی میرا شوق ہے۔ اور پھر ایک وکیل کی حثیت سے بھی اسلامی قوانین کا کافی مطالعہ کیا ہے۔
    امید ہے میرے اس پس منظر کو دیھکتے ہوے اب آپ مجھے کم از کم اپنے زہن پر زور دینے کی اجازت تو مرحمت فرما ہی دینگے ۔
    جناب میرے خیال میں، میں شاید آپ سے زیادہ اسلامی معیشت اور اسلامی نظام کے نفاز کا متمنی ہوں گا، لیکن اس کے لیے میں سیاہ کو سفید نہیں کہ سکتا-
    میں مزید تفصیل میں نہیں جانا چاہتا کیوں کہ اس کے لیے میں خود کو اخلاقی طور پر پابند سمجھتا ہوں۔

    یہ پوسٹ اس امید کے ساتھ ختم کرتا ہوں کہ اس کہ اس جواب میں آپ کم از کم مجھے کافر قرار نہیں دے دیں گے۔
     
  8. دوست

    دوست محفلین

    مراسلے:
    13,056
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Fine
    اس سلسلے میں واقعی بہت سے اعتراضات کیے جاتے ہیں۔ میرے اردگرد بھی اکثر دوست عزیز اسے ڈھونگ ہی سمجھتے ہیں۔
     
  9. باسم

    باسم محفلین

    مراسلے:
    1,767
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Festive
    ظاہر بات ہے کہ اسلام کا آئیڈیل بینکاری نظام وہ ہے جو شرکت اور مضاربت کے اسلامی قوانین کے مطابق ہو جس میں غریب کے حق کی حفاظت بہترین طریقے سے کی گئی ہو۔
    جو کہ موجودہ اسلامی بینکوں میں پوری طرح سے نہیں ہے
    اس لیے کہ ایک بینکاری نظام پرانا ہے جو اپنی جڑیں مضبوط کرچکا ہے اور دوسرا نیا ہے جسے کاغذ سے باہر آئے ہوئے بمشکل ایک دہائی گزری ہے
    ایک پھل دے رہا ہے دوسرا محنت مانگ رہا ہے۔
    پھر صارف کو وہ سب کچھ طریقہ کار کی مکمل تبدیلی کے بغیر چاہیے جو دوسرا بینک دے رہا ہے۔
    اسلامی بینک کو دوسرے بینک سے بھی معاملہ رکھنا ہے اور اسٹیٹ بینک کی اسلامی بینک کے ساتھ بھی وہی شفقت ہے جو دوسرے بینک کے ساتھ ہے۔
    لیکن پھر بھی اسلامی بینکاری بہتر ہے کہ ایک راستہ تو ہے ایک ابتدا تو ہے اسے اتنا موقع ضرور دیجیے جو آپ نے دوسرے نظام کو دیا ہے۔

    ہم اپنے کاروبار کو مکمل اسلامی اصولوں کے مطابق چلانے کو تیار نہیں ہاں بینک کے اندر انہیں مکمل اسلام چاہیے کیونکہ پہلا کام مشکل ہے دوسرا آسان ہے۔
     
  10. وجی

    وجی لائبریرین

    مراسلے:
    24,720
    موڈ:
    Daring

    سعود بھائی میں نے کسی کو کافر نہیں کہا اورمیں مانتا ہوں کے میری بات آپ کو بری اور تلخ لگی ہوگی
    لیکن بھائی شاید یہ ہمارے معاشرے کے ساتھ کا ایک مسئلہ ہے کہ ہم جلدباز ہیں اور اکثر چیزوں میں جلدی کرتے ہیں
    آپ نے ٹھیک کہا کہ میرا معیشت وبینکاری کے بارے میں علم محدود ہے لیکن مجھے یہ سن کر اور پڑھ کر دکھ ہوتا ہے کہ ہم چھوٹے بچے کو بڑی جلدی بڑا ہوتا دیکھنا چاہتے ہیں اکثر دیکھا ہے کہ کسی نے داڑھی رکھی ہے تو اسکو یہ کہتے تھکتے نہیں کہ مش بھر داڑھی افضل ہے مش بھر داڑھی اصل اسلامی داڑھی ہے اس شخص نے ابھی قدم رکھا ہے اور ہم چاہتے ہیں کہ وہ آخری قدم رکھے
    میں یہ بھی مانتا ہوں کہ بہت سے اسلامی بینک جو فکس دیپازیٹ پر منافع دیں رہے ہیں وہ ایک حد میں ہوتا ہے یعنی ایک دو ہزار کا فرق میں رہتا ہے اور شاید اور بھی ایسے کئی معاملات میں غیر اسلامی اصول اپنا رکھے ہونگے لیکن اسکا یہ مطلب نہیں کہ اس کو آگے بڑھنے کا موقعہ ہی نہ دیا جائے اور تنقید کر کے اسکو دوسروں کے ساتھ ملا دیا جائے
     
  11. محسن حجازی

    محسن حجازی محفلین

    مراسلے:
    2,513
    موڈ:
    Breezy
    حضور غلط غلط ہی ہوتا ہے اس میں تھوڑا یا کم نہیں ہوتا۔
    میں سعود بھائی کی بات کی تائید کرنا چاہوں گا اور یہ اضافہ کروں گا کہ یہ مکمل دھوکہ دہی ہے۔ وہی سود ہے بس نام بدل دیا گیا ہے۔
    یہ بات میں سنی سنائی نہیں کہہ رہا بلکہ میرا ذاتی تجربہ ہے۔
    حقیقت جاننے پر میرا پارہ اس قدر چڑھ گیا کہ جی میں آئی انہیں بے نقط سناؤں
    اس بارے میں تفصیلات بھی بتاتا ہوں فرصت میں۔
    باقی رہے علما تو یہود کی طرح ہمارے ہاں بھی مناسب نرخوں پر کرائے کے لیے دستیاب ہیں۔
    یہ جنہیں آپ عالم کہتے ہیں ان سے زیادہ جاہل میری نظر میں نہیں۔

    تاہم یہ میری ذاتی آرا ہیں ان کی صحت و درستگی کی طرح آپ کا متفق ہونا بھی ضروری نہیں۔
     
  12. ابوشامل

    ابوشامل محفلین

    مراسلے:
    3,253
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    اس حوالے سے ایک ساتھی نے بتایا ہے کہ درست اسلامی بینکاری اس وقت پورے پاکستان میں صرف "میزان بینک" کر رہا ہے۔ باقی سب بہتی گنگا میں ہاتھ دھو رہے ہیں اور اسلامی بینکاری کے نام پر عوام کو دھوکہ دے رہے ہیں۔ ابھی کل ہی ایم سی بی کا اشتہار اخبارات میں آیا ہے، اسلامی حلال منافع کے نام سے۔ اس کو تو پڑھ کر ہی اندازہ ہو رہا ہے کہ اسلام کا نام لے کر سود کھلایا جا رہا ہے۔ اللہ ہم پر رحم کرے۔ علاوہ ازیں کچھ باہر کے بینک بھی اس حوالے سے اچھی خدمات فراہم کر رہے ہیں۔
     
  13. دوست

    دوست محفلین

    مراسلے:
    13,056
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Fine
    یہ منافع، مارک اپ اور شراکت وغیرہ میں سب کچھ کاغذی کاروائی ہی ہوتا ہے۔ بچت جمع کروانے والے کو بھی پتا ہے کہ مجھے ایک مقررہ شرح سے ہی "منافع" ملنا ہے اور قرض لینے والے کو بھی پتا ہے کہ مجھے مقرر شرح سے ہی مارک اپ ادا کرنا ہے (ہاں اس میں اضافہ ہوسکتا ہے۔) جبکہ اسلامی شراکت کے اصولوں کے تحت اگر بچت جمع کروائی گئی ہے تو اس پر منافع ایک شرح سے نہیں بلکہ متعلقہ کاروبار کی آمدن کے حساب سے کم زیادہ ہونا چاہیے۔ یہی حال کاروبار کے لیے لِیے جانے والے قرض پر ادا کیے جانے والے مارک اپ یا جو بھی ہے کا ہو۔ کاروبار کی سالانہ آمدن کے حساب سے بینک جو کہ قرض دینے کی وجہ سے کاروبار میں حصہ دار ہے منافع وصول کرے۔ لیکن یہاں ایسا نہیں ہوتا۔ سب کچھ قرض دار پر چھوڑ کر بس اپنی اصل رقم اور مارک اپ کی فکر کی جاتی ہے بس۔ تو سود میں اور مارک اپ میں فرق کیا رہ گیا۔ بس نام کا ہی فرق ہے۔
    وسلام
     
  14. ابوشامل

    ابوشامل محفلین

    مراسلے:
    3,253
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cheerful
    بالکل شاکر بھائی۔ میرے خیال میں اس حوالے سے عام افراد کو بتانے کی بھی ضرورت ہے۔ ایک سادہ سا اصول ہے یہ کہ اگر منافع پہلے سے مقرر ہے تو وہ واضح طور پر سود ہے۔ آپ نے بہت اچھا کیا کہ اس معاملے کی مزید اور آسان وضاحت کر دی۔ بہت شکریہ۔
     
  15. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    سود پر چلائے جانے بینکوں میں برکت نہیں ہوتی۔ پاکستانی معیشت کی مثال آپ کے سامنے ہے۔
     
  16. وجی

    وجی لائبریرین

    مراسلے:
    24,720
    موڈ:
    Daring
    محسن حجازی صاحب میں آپ کی تفصیل کا انتظار کروں گا
    علماء کے بارے میں بھی کچھ تفصیل دے دیجئے گا

    عارف کریم صاحب پاکستانی معیشت کی بگڑی ہوئی شکل کی مثال صرف سود پر نہیں آتی کیا ہم اس کے قصور وار نہیں
    کبھی ہم اپنا محاسبہ بھی کرکے دیکھے تو بہت ساری برائیاں نظر آئیں گی
     
  17. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    بھائی جب پہلے دن سے ہی معیشت سود پر منحصر ہے، تو آج 60 سال بعد یہ سن دیکھنا ایک لازمی بات ہے!
     
  18. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    3,169
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    میری ذاتی معلومات اس ضمن میں صفر ہیں۔ لہذا کچھ سوالات۔ سود کے بارے میں‌قرانی احکامات لکھئے (‌کٹ پیسٹ‌ نہیں ، تھوڑی سی تکلیف فرمائیے) ، آیات لکھئے اور پھر یہ بتائیے کہ اللہ تعالی کا قران ، سود یعنی ربا، تقسیط یعنی ڈیویڈنڈ اور عشری (یوزری ) سے ملتے جلتے معاملات میں کیا احکامات فراہم کرتا ہے؟ ان میں‌سے ہر ایک کی تعریف ڈیفی نیشن مہیا کیجئے اور بتائیے کہ ان میں‌ سے کیا جائز ہے اور کیا نہیں؟ قرآنی یا سنت (اعمال و افعال رسول ) سے حوالہ ضروری ہیں۔

    سود کیا ہے اور تجارت کیا ہے، یہ بھی بتائیے؟
    کیا اگر ایک شخص دوسرے شخص سے ادھار لے کر ایک کھیتی اگاتا ہے اور اس کھیتی سے ہر ایک روپے کے دانوں سے 5 ہزار روپے کے دانے پیدا ہوتے ہیں تو قرض‌لینے والا شخص کتنے پیسے قرض دینے والے کو ادا کرے گا؟ قرض‌ دینے والا قرض‌دے ہی کیوں؟ کھیتی کو استعمال کی ضرورت ہی کیا ہے ؟‌

    اسی مثال کو آپ کاروبار ، زراعت، فیکٹری، کارخانہ پر لگا کر بتائیے کہ سود کیا ہوگا؟ منافع کیا ہوگا؟ قرآن کی آیات یا سنت رسول (‌قول و فعل ) بہت ضروری ہیں حوالہ کے لئے۔ امید کرتا ہوں کہ بھائی بہن مناسب جوابات سے سب کی رہنمائی فرمائیں گے ۔
     
  19. ابن جمال

    ابن جمال محفلین

    مراسلے:
    468
    میں نے آج کل میں ہی ایک آرٹیکل پڑھاہے جس میں لکھاہے کہ موجودہ دور میں اگر کوئی ایک ہزار روپیہ قرض دیتاہے اورایک سال کے بعد وہ اس رقم میں اضافہ کرکے ایک ہزار تین سو لیتاہے تویہ سود نہیں ہے کیونکہ آج کل جس طرح افراز زر لگاتاربڑھ رہاہے اورروپئے کی قیمت ہرگزرتے دن کے ساتھ کم ہوتی جارہی ہے۔ توآج قرض دینے والے شخص کے ایک ہزار کی جو قیمت ہے کیا ایک سال بعد اس ایک ہزار روپئے کی قیمت اتنی ہی ہوگی یا گھٹ جائے گی۔ گھٹنے کی صورت میں جو یقینی ہے۔ توپھر قرض دینے والا ہمیشہ نقصان میں ہی رہے گا۔پھر کوئی قرض دیناکیوں چاہے گا۔لہذا مضمون نگار کا کہنا ہے کہ آج کل جو اضافی رقم قرض پر لی جاتی ہے وہ سود میں شامل نہیں ہے۔امید ہے کہ تمام احباب اس پر غور کرکے اپنے علم کی روشنی میں مزید نئی باتیں سامنے رکھیں گے۔ والسلام
     
  20. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    بھائی سیدھی سی بات ہے۔ یہ روپیہ کرنسی سب ڈرامہ ہے۔ جب آپ کسی چیز کی اصل قدر کو سونے اور چاندی سے ہٹا کر کاغذ کے نوٹوں میں سجائیں گے، تو مسائل آپکا پیچھا نہیں چھوڑیں گے! ایک زمانہ تھا کہ دنیا کی سب سے مضبوط کرنسی نوٹ "ڈالر "سونے میں تبدیل ہو جاتا تھا۔ آج فیڈرل ریزرو کے قیام کے بعد صرف سود میں تولا جاتا ہے! :grin: اسی سود کی مدد سے پھر آئندہ مزید ڈالرز ، فیڈرل ریزرو چھاپتا ہے۔ یوں ڈالرز کی قیمت مسلسل ایک جگہ ٹکی رہتی ہے! اس طرح ہمارے ملٹی نیشنل بینکرز نے دنیا سے اصل "دولت" کا صفایا کرکے پیسا صرف نام کا ذریعہ معاش بنا دیا ہے۔ اور اسکی ترسیل کو کنٹرول کرکے انسانوں پر حکومت کرتے ہیں! میں‌جانتا ہوں یہ سب باتیں آپکے لئے ایک شاق سے کم نہیں ہیں۔ لیکن تھوڑی سی ریسرچ پر سب راز سامنے آجاتے ہیں۔:devil:
    یہ جو آپنے کہا نا کہ ایک سال بعد روپیہ کی قیمت کم جائے گی۔ لہٰذا قرض خواہ بڑھا کر رقم واپس کرے۔ اسکا مطلب یہی ہے کہ معاشرہ میں روپیہ کے نوٹس زیادہ ہو جائیں گے۔ اور نوٹ ہمیشہ زیادہ اسلئے چھپتے ہیں کیونکہ یہ پچھلے سال کےسود کا "بوجھ" ہوتے ہیں۔ اگر ملک کی معیشت طاقت ور نہ ہو تو یہ "سودی" نوٹ معیشت کو تباہ بھی کر سکتے ہیں۔ اس قسم کی بڑھی تباہیاں امریکہ میں کئی بار آچکی ہیں!
    پس سود پر چلنے والا معاشی نظام کسی بھی صور ت اسٹیبل نہیں‌ہو سکتا۔ ہر دس بیس سال بعد عالمی معیشت میں بھونچال آنا اسکی زندہ مثالیں ہیں!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر