ن م راشد اسرافیل کی موت - از ن م راشد

فرخ منظور نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 20, 2007

  1. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    ن م راشد نے یہ نظم ایوب کے مارشل لا کے دور میں تحریر و تقریر کی آزادی پر پابندی لگنے کے بعد کے تناظر میں لکھی تھی -

    اسرافیل کی موت - از ن م راشد

    مرگ اسرافیل پر آنسو بہاؤ
    وہ خداؤں کا مقرّب، وہ خداوند کلام
    صوت انسانی کی روح جاوداں
    آسمانوں کی ندائے بے کراں
    آج ساکت مثل حرف ناتمام
    مرگ اسرافیل پر آنسو بہاؤ!

    آؤ، اسرافیل کے اس خواب بے ھنگام پر آنسو بہائیں
    آرمیدہ ھے وہ یوں قرنا کے پاس
    جیسے طوفاں نے کنارے پر اگل ڈالا اسے
    ریگ ساحل پر، چمکتی دھوپ میں، چپ چاپ
    اپنے صور کے پہلو میں وہ خوابیدہ ھے!
    اس کی دستار، اس کے گیسو، اس کی ریش
    کیسے خاک آلودہ ہیں!
    تھے کبھی جن کی تہیں بود و نبود!
    کیسے اس کا صور، اس کے لب سے دور،
    اپنی چیخوں، اپنی فریادوں میں گم
    جھلملا اٹھتے تھے جس سے دیر و زود!

    مرگ اسرافیل پر آنسو بہاوء
    وہ مجسّم ہمہمہ تھا، وہ مجسّم زمزمہ
    وہ ازل سے تا ابد پھیلی ھوئی غیبی صداوءں کا نشاں!

    مرگ اسرافیل سے
    حلقہ در حلقہ فرشتے نوحہ گر،
    ابن آدم زلف در خاک و نزاز
    حضرت یزداں کی آنکھیں غم سے تار
    آسمانوں کی صفیر آتی نہیں
    عالم لاھوت سے کوئی نفیر آتی نہیں!

    مرگ اسرافیل سے
    اس جہاں پر بند آوازوں کا رزق
    مطربوں کا رزق، اور سازوں کا رزق
    اب مغنّی کس طرح گائے گا اور گائے کا کیا
    سننے والوں کے دلوں کے تار چب!
    اب کوئی رقاص کیا تھرکے گا، لہرائے گا کیا
    بزم کے فرش و در و دیوار چپ!
    اب خطیب شہر فرمائے گا کیا
    مسجدوں کے آستان و گنبد و مینار چپ!
    فکر کا صیّاد اپنا دام پھیلائے گا کیا
    طائران منزل و کہسار چپ!

    مرگ اسرافیل ھے
    گوش شنوا کی، لب گویا کی موت
    چشم بینا کی، دل دانا کی موت
    تھی اسی کے دم سے درویشوں کی ساری ھاؤ ھو
    ۔۔۔۔۔۔۔۔ اہل دل کی اہل دل سے گفتگو
    اہل دل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جو آج گوشہ گیر و سرمہ در گلو!
    اب تنانا ھو بھی غائب اور یارب ھا بھی گم
    اب گلی کوچوں کی ہر آوا بھی گم!
    یہ ہمارا آخری ملجا بھی گم!

    مرگ اسرافیل سے،
    اس جہاں کا وقت جیسے سو گیا، پتھرا گیا
    جیسے کوئی ساری آوازوں کو یکسر کھا گیا،
    ایسی تنہائی کہ حسن تام یاد آتا نہیں
    ایسا سنّاٹا کہ اپنا نام یاد آتا نہیں!

    مرگ اسرافیل سے
    دیکھتے رہ جائیں گے دنیا کے آمر بھی
    زباں بندی کے خواب!
    جس میں مجبوروں کی سرگوشی تو ھو
    اس خداوندی کے خواب!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 5
  2. محمد وارث

    محمد وارث لائبریرین

    مراسلے:
    25,448
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Depressed
    بہت خوب محترم، لا جواب
     
  3. سارہ خان

    سارہ خان محفلین

    مراسلے:
    15,819
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    بہت خوب ۔۔
     
  4. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت شکریہ پسندیدگی کا- اگر راشد کی کسی مزید نظم کی فرمائش ہو تو ضرور بتایئے-
     
  5. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    آج کے ایمر جنسی کے تناظر میں قندِ مکرّر کے طور پر یہ نظم دوبارہ پڑھیے - بہت شکریہ!
     
  6. شمشاد

    شمشاد لائبریرین

    مراسلے:
    200,069
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    تاریخ اپنے آپ کو دہرا رہی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  7. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    سبحان اللہ سبحان اللہ ، ۔۔ جواب نہیں صاحب۔
    شکریہ فرخ بھائی ، کیا عمدہ انتخاب ہے ۔واہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  8. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,661
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold
    بہت شکریہ جناب، لگتا ہے کراچی کے قہوہ خانوں میں آج کل راشد پر گفتگو ہو رہی ہے اور خاص طور پر اس نظم پر۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  9. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    ممکن ہے کہ ایسا ہو۔ مگر ان دنوں حسین مجروح کراچی میں نہیں وہ ہوتے ہیں تو راشد پر گفتگو دیدنی و شنیدنی ہوتی ہے ۔
    میں کوشش کر رہا ہوں کہ راشد کو بالاستیعاب پڑھ سکوں ۔ بس اسی کوشش میں یہاں آگیا تھا۔ :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر