اردو کا آغاز اور ارتقاء

زیف سید نے 'اردو نامہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 9, 2006

  1. زیف سید

    زیف سید محفلین

    مراسلے:
    224
    کل رات میں جیو ٹی وی کا پروگرام ’کیپیٹل ٹاک‘ (ذرا اردو پروگرام کا نام ملاحظہ ہو!) دیکھ رہا تھا جس کا موضوع پاکستان کی ثقافت تھا۔ پروگرام کے شرکا میں کئی ’بھاری بھرکم‘ شخصیات موجود تھیں: وفاقی وزیر براے ثقافت، خالد حسن بٹ (بانی نیشنل کونسل آف آرٹس)، جمال شاہ، دشکا سید (تاریخ دان) ثمینہ پیرزادہ، ابرارالحق اورریما۔ پروگرام میں درجنوں بار دہرایا گیا کہ اردو لشکری زبان ہے اور لشکریوں کی بولیوں کے آپس میں گڈمڈ ہونے سے وجود میں آئی ہے۔ پروگرام میں بحث ہو رہی تھی کہ ہم ثقافتی دیوالیہ پن کا شکار ہیں (یہ ترجمہ میرا ہے، ورنہ معززشرکا نے’ کلچرل بینک رپسی ‘کا شدھ شبد استعمال کیا تھا)۔ معذرت کے ساتھ کہوں گا کہ اتنے بڑے درجے پر اپنی زبان اور اس کی تاریخ سےاس قدر بیگانگی ہی ہمارے ثقافتی دیوالیہ پن کی سب سے بڑی مثال ہے ۔

    اس پروگرام کو دیکھ کر میرا یقین قوی تر ہو گیا ہے کہ زبان کے نام پر بحث انتہائی ضروری ہے۔ اور مجھے اطمینان ہے کہ جو تیلِ چراغ (اور تیلِ دماغ!) میں نےاس کے نام کے اشتقاق کی کھوج میں جلایا ہے، وہ کچھ ایسا رائیگاں بھی نہیں گیا۔

    دوسری قسط حاضر ہے۔

    http://zaffsyed.googlepages.com/thecamplanguage,part2

    زیف
     
  2. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,863
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    زیف۔ تمھارا یہ مضمون اردو میں جب لکھ دو تو مجھے بھی بھیجنا۔ میں جریدے ’سمت‘ کے اگلے شمارے میں دے دوں گا۔ اس شمارے سے ایک سلسلہ شروع کر رہا ہوں کچھ مباحثے کے موضوعات پر۔
     
  3. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زیف بہت اچھے نکتہ کی طرف توجہ دلائی ہے آپ نے کہ لوگوں کو زبان کی تاریخ سے کم ہی واقفیت حاصل ہے۔

    ویسے میں سمجھتا ہوں زبان کو بگاڑنے میں بہت زیادہ ہاتھ الیکٹرونک میڈیا کا ہے جنہوں نے انگریزی اور اردو کی آمیزیش سے ایک نئی ہی زبان نکال لی ہے جو نہ انگریزی ہے نہ اردو ، جس کا لکھنا محال ہے مگر بولی بہت زیادہ جاتی ہے۔ ہر کوئی بغیر خیال کیے اسے بولے چلا جارہا ہے اور یوں لاعلمی یا بے خبری میں دونوں زبانوں کا حسن تباہ کر رہا ہے۔ میڈیا کی یلغار سے زبان کو بچانے کی اشد ضرورت ہے کیونکہ زبانیں تبھی زندہ رہتی ہیں جب تک بولنے والے زندہ ہیں اور اگر بولنے والے ہی اجنبی ہوجائیں تو زبانیں بھی ختم ہو جاتی ہیں۔
     
  4. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    39,158
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    اردو کی تاریخ کی بات ہو رہی ہے تو کچھ آن‌لائن معلومات:

    اردو ہندی تاریخ آن‌لائن ذخائر۔

    اردو ہندی تاریخ کی کتابیں

    شمس الرحمان فاروقی کی کتاب “اردو کا ابتدائی زمانہ: ادبی تہذیب و تاریخ کے پہلو“ کی انگریزی ورژن Early Urdu Literary Culture and History کا پہلا باب History, Faith, Politics: Origin Myths of Urdu and Hindi آن‌لائن موجود ہے۔
     
  5. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    [html:a365bd2df5]
    <table cellspacing="0" align="center" cellpadding="4" border="0" width="75%">
    <tr><td>
    قیصرانی صاحب


    شاید آپ میرا مضمون نہیں پڑھ رہے کیا ناراض ہیں؟


    اردو کی تارخ 35 سوسال پرانی ہے۔ اردو پاکستانی ہے -لاہور میں میری پڑوسن تھی- جب دارلخلافہ لاہور سے دلی منتقل ہوا ۔وہ دہلی چلی گی تھی - ساٹھ سال پہلے وہ اپنی سوتیلی بہنوں ( تمیل ، ملایالام , اور تِلوغا) سے ناراض ہو کے واپس آگی ہے۔سوتیلی بہنوں نے اس سے ساتھ دیواناگری کی

    :p
    اپ بھرنساس زبانوں کے تیں جماعتں ہیں۔



    • ڈراویڈیّن - تمیل ، ملیالم , اور تِلوغا وغیرہ ۔ َ


      پوشاچی - کھڑی بولی ، سندھی ، پنجابی ، سِرائکِی ، ہندکو ، کشمیری ، ہریانوی وغیرہ


      داردا - پختون اور بلّوچی


    پوشاچی جماعت ( زبانوں کی تقسیم) میں کھڑی بولی کا ترجمہ کھڑی زبان ہے۔اس کو شورسینی پراکرِیت بھی کہا جاتا ہے۔ اس زبان میں فعل کا اختیام زیادہ تر “ الف“ پر ہوتا ہے۔ جیسے کھایا، آیا وغیرہ بہ نسبت وہ زبانیں جن میں فعل کا اختیام “ او“ پر ہوتا ہے۔ جیسے کھائیو ، آئیو، وغیرہ - زیادہ ترعلم لسنیات کے ماہراس بات پر متفق ہیں کہ جب مسلمان دہلی آئے د ہلی میں کھڑی بولی استعمال ہوتی تھی



    اگر آپ دیکھں تو اردو میں بہت سےالفاظ جھونپٹری ، نانا ، سالا ، آنچل ، گہنہ ، کوس ، کریلا ، پھاٹک ، ڈنڈا ، دالان ، ڈحیٹ ، اڑوس پڑوس ، دھوم دھام ،سب پزاروں سال پہلے مُنڈا کے زمانے میں استعمال ہوتے تھے ۔



    کیا آپ کو پتہ ہے کہ اردو کا پہلا جملہ ایک نوکرانی نےبولا تھا!.!. ۔۔۔۔

    </td>
    </tr>
    </table>






    <table cellspacing="0" align="center" cellpadding="4" border="0" width="85%">
    <tr>
    <td align="center">
    تاریخِ اردو - تفسیر کی زبانی
    </td>
    </tr>
    </table>
    ٕٕ[/html:a365bd2df5]
     
  6. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    السلام علیکم

    میں نے ابھی یہ دھاگہ دیکھا ہے (زیف صاحب کے انگریزی مضامین کو ابھی نہیں دیکھ سکی)۔ اس میں کچھ نکات کے حوالے سے تشنگی محسوس ہورہی ہے ۔ اردو زبان کے آغاز و ارتقاء کی گفتگو میں اس بات کی بھی ضرورت ہے کہ خود زبان (زبانوں) کے آغاز و ارتقاء کو دیکھا اور تجزیہ کیا جائے ۔ ماہرینِ لسانیات کے مطابق دنیا بھر کی زبانیں بنیادی طور پر تین میں سے کوئی ایک ماخذ رکھتی ہیں ۔ یعنی پہلی تین زبانیں ایسی ہیں جن کی بنیاد پر (آغاز و ارتقاء کے نتیجے میں) باقی تمام زبانوں کی عمارت کھڑی ہوتی ہے ۔ انگریزی سمیت تمام یا متعدد یورپی زبانوں کا ابتدائی ماخذ وہی ہے جو کہ اردو اور یہاں ہمارے علاقوں ( اسی طرح وسط ایشیا کا علاقہ اور اس میں بولی جانے والی تمام یا متعددزبانوں ) کا ماخذ ہے ۔ میں یہ درخواست کروں گی اگر کوئی صاحب یا صاحبہ اس پہلو پر تفصیلی نظر ڈال سکیں تو متعدد اختلافی پہلوؤں کی وضاحت ہو جائے گی۔


    شکریہ
     
  7. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    سیدہ
    السلام علیکم
    میں یہ ریسرچ مضمون لکھ رہا ہوں - تین قسط مکمل ہو چکی ہیں اور سب ایک ہی جگہ ہیں کام جاری ہے۔ مہربانی سے نیچے لکھےہوےلنک پر جاینے

    تاریخِ اردو - تفسیر کی زبانی
     
  8. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    39,158
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    عموماً ماہرِ لسانیت زبانوں کو تین سے کافی زیادہ خاندانوں میں تقسیم کرتے ہیں۔ اس بارے میں معلومات ایتھنولاگ اور وکی‌پیڈیا پر۔

    اردو، فارسی، انگریزی، وغیرہ سب انڈویورپین زبانیں ہیں جبکہ عربی اور عبرانی وغیرہ Afro-Asiatic خاندان سے تعلق رکھتی ہیں اور ترکی Altaic family سے۔
     
  9. شاہد احمد خان

    شاہد احمد خان محفلین

    مراسلے:
    355
    زیف ، جیو نیوز کے جس پروگرام کا آپ نے ذکر کیا ہے وہ میں‌ بھی دیکھ رہا تھا ،، اس گفت گو پر کوئی تبصرہ اس لئے نہیں‌کر رہا کہ علمی گفت گو کے لئے صاحب علم ہونا بھی شرط ہے ۔۔ ادب ہے شرط منہ نہ کھلوائیئے ۔۔۔ ویسے آپ لوگوں‌نے الیکٹرونک میڈیا کے حوالے سے زبان کی بے زبانی کا زکر کیا ہے ،،، میں‌اس چوری اور سینہ زوری کا چشم دید گواہ ہوں‌کہ جیو ٹی وی سے وابستہ ہوں‌۔۔ مگر صورت حال یہ ہے کہ ایمان کے تیسرے درجے پر قائم رہنے میں‌بھی دانتوں‌پسینہ آ‌جاتا ہے ۔۔ ویسے زبان ایک مسسلسل تبدیلی کا عمل ہے ،، آج کا دور الیکٹرونک میڈیا کا دور ہے ،، آج پاکستان کا ٹی وی چینل بھی وہی زبان استعمال کر رہا ہے جو بھارت کا ٹی وی چینل استعمال کر رہا ہے ،، دونوں‌ملکوں‌میں‌ہندی اور اردو ،، تقریبا یکساں‌قالب میں‌ڈھلی معلوم ہوتی ہیں‌۔۔۔ یعنی فی زمانہ ہندستانی کا چلن بڑھ رہا ہے ۔۔۔ اردو کے متوالوں‌کی حیثیت سے ہمیں‌ اس نازک وقت میں اپنے فرض‌سے غافل نہیں‌رہنا چاہیئے ۔۔مگر کیا ہم الیکڑونک میڈیا کے دور میں گل و بلبل کے قصے گا کر اردو کی بقا کا فرض‌سر انجام دے سکتے ہیں‌۔۔۔ ذرا سوچیئے ۔۔۔۔۔۔
     
  10. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,863
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    تفسیر
    شاید آپ نے انگریزی سے زبانوں کی تاریخ پڑھی ہے، تلفظات درست کر دوں:
    خاری بولی نہیں ، کھڑی بولی ، مزید: ملیالم ،دیو ناگری
     
  11. سیدہ شگفتہ

    سیدہ شگفتہ لائبریرین

    مراسلے:
    29,439
    راجہ فارحریت

    اس شعر میں تبدیلی بلکہ تبدیلیاں آپ نے شعوری طور پر کی ہیں یا لاشعوری طور پر؟!

    اور ہر دو صورت میں ان دونوں شاعروں پر کیا گذری جن کے اشعار سے ایک ایک مصرعہ لے کر آپ نے ایسا کیا :)
     
  12. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    محترم اگر برا نہ منائیں تو مجھے یا کئی دوستوں کو اس پیغام کی کوئی سمجھ نہیں آئی؟ خاص طور پر یہ کہ مارچ والی بات؟
    بےبی ہاتھی
     
  13. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    واقعی لگتا ہے کہ تفسیر نے اعجاز صاحب کی پوسٹ میں قطع برید کردیا ہے۔
     
  14. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    39,158
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    تفسیر: آپ نے شاید اعجاز صاحب کی پوسٹ ہی میں لکھ دیا ہے۔ اسے پلیز ٹھیک کر دیں۔
     
  15. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    جی اسی واسطے میں‌ نے یہ پیغام لکھا۔ دوسرا بزرگوں کو ایسے اوپن فورم پر نہیں‌لکھنا چاہیے، یہ بات وہ ای میل یا ذپ میں بھی کر سکتے ہیں۔ :( اگردوسرا دوست کوئی جواب نہیں دیتا تو پھر بات کو گول کر جائیں۔ کیسے؟
    بےبی ہاتھی
     
  16. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
     
  17. تفسیر

    تفسیر محفلین

    مراسلے:
    3,088
    میں نے اعجاز صاحب کے پرچے کو صحیح کردیا
     
  18. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    شکریہ تفسیر بھائی۔ بہت اچھا لگا :)
    بےبی ہاتھی
     
  19. الف عین

    الف عین لائبریرین

    مراسلے:
    35,863
    جھنڈا:
    India
    موڈ:
    Psychedelic
    ایسی اہم تحریریں جن کو کتاب کے روپ میں شائع کیا جانے کا منصوبہ ہے، اغلاط سے پاک ہونا ہی چاہئے۔ ذ پ کا مجھے خیال آیا بھی نہیں، لیکن یہاں پوسٹ کرنے سے کم از کم جن حضرات نے مضمون پڑھ لیا ہے وہ تو اپنی معلومات درست کر لیں۔ اور کھڑی بولی کو خاری بولی لکھنے سے صاف پتہ چلتا ہے کہ یہ انھوں نے انگریزی کی
    Khari Boli
    کو اردو خط میں اس طرح لکھا ہے اور ملیالم کو بھی
    Malyalam
    کی املا کے باعث مالیلم لکھ دیا ہے۔ تفسیر نے میرے پیغام میں کیا تدوین لی ہے، مجھے پتہ نہیں چل سکا۔
    میں خود بھی چاہوں گا کہ میری غلطی کو بر سرِ عام ہی بتلا دیا جائے تاکہ کسی کو کوئ غلط فہمی نہ ہو۔
    تفسیر اور زیف دونوں کے مضامین بہت اہم ہیں، اس لئے احتیاط کی اور بھی زیادہ ضرورت ہے
     
  20. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    جی استادٍ محترم۔ تصحیح کا شکریہ۔ اصل میں انہوں‌نے اپنا پیغام آپ کے پیغام میں‌ہی غلطی سے لکھ دیا تھا۔ جب منتظم ہو بندا تو اقتباس اور قطع و برید کے بٹن بہت نزدیک ہیں :) مجھے سے بھی کئی بار ایسا ہوا ہے۔ اس لئے ہمارے ظآہر کرنے پر انہوں نے اپنی غلطی کی درستگی کر لی۔ باقی تفسیر بھائی، استادٍ محترم کی یہ بات بالکل درست ہے کہ مضمون اتنا اہم ہے کہ اس میں یہ چھوٹی سی بھی غلطی برداشت نہیں‌کی جاسکتی :)
    بےبی ہاتھی
     

اس صفحے کی تشہیر