اردو کا آغاز اور ارتقاء

زیف سید نے 'اردو نامہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 9, 2006

  1. زیف سید

    زیف سید محفلین

    مراسلے:
    224
    نبیل بھائی: تحریرکی پسندیدگی کا شکریہ۔ کیا ہی اچھا ہواگر آپ تھوڑی زحمت فرما کر اس جرمن ماہرِ‌لسانیات کے مضمون کے چیدہ چیدہ نکات فراہم کردیں۔ اگر یہ ممکن نہ ہو تو کم از کم حوالہ ہی عنایت فرما دیں (میں لائبریری آف کانگرس سے بیس منٹ پیدل کی دوری پر رہتا ہوں :D

    آداب عرض ہے،

    زیف
     
  2. نبیل

    نبیل محفلین

    مراسلے:
    16,800
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Depressed
    زیف صاحب، یہ مضمون جرمن زبان میں ہے اور جرمن آن لائن جریدہ شپیگل آن لائن میں شائع ہوا تھا۔ آپ شپیگل آن لائن میں Weltsprachen : Goodbye English پر سرچ کریں تو آپ کو اس کا ٹائٹل نظر آئے گا۔ یہ مضمون چونکہ آرکائیو میں ہے اس لیے اسے پڑھنے کے یا ڈاؤنلوڈ کرنے کے 50 سینٹ ادا کرنے پڑیں گے۔
     
  3. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زیف ،

    میں نے ایک نیا دھاگہ کھول دیا ہے جہاں پر وہ پوسٹس کاپی کردی ہیں جن میں اردو پر بحث ہوئی ہے۔ ربط یہ

    http://www.urduweb.org/mehfil/viewtopic.php?p=51906#51906
     
  4. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    شاہد اب اس بات کو نئے دھاگے پر کرتے ہیں ، ویسے بڑا لطف آرہا ہے اور اس طرح کی گفتگو بڑے عرصہ سے نہیں ہوئی تھی اب امید ہو چلی ہے کہ نیٹ پر لوگوں کے اذہان سے انگریزی کا خمار کچھ نہ کچھ یہ پڑھ کر ضرور اترے گا ورنہ لوگ انگریزی سے اس قدر مرعوب ہو گئے کہ لگتا ہے جیسے ان پر کسی ساحرِ اعظم نے طلسم پھونک دیا ہے اور آپ کچھ بھی کر لیں یہ طلسم نہیں ٹوٹے گا۔

    میں کوشش کروں‌گا مستقبل کی بڑی زبانوں پر بھی گفتگو کریں اور ہوسکے تو اس گفتگو کو انٹرنیٹ پر پھیلائیں، ہم سب کی مشترکہ کوشش ضرور رنگ لائے گی۔ اردو اگر بدترین اور نامساعد حالات میں بھی پلتی بڑھتی رہی تو اب کسی کے آنکھیں بند کر لینے سے اس کی ترقی اور عروج رک نہیں سکے گا۔
     
  5. نبیل

    نبیل محفلین

    مراسلے:
    16,800
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Depressed
    محب، اس کا بہتر طریقہ اس تھریڈ کے پیغامات کو تقسیم کرنا ہے۔ اس کا طریقہ میں بیان کر چکا ہوں۔ میں اس گفتگو سے متعلقہ پیغامات کو اردو کا آغاز اور ارتقاء کے زیر عنوان علیحدہ کرکے اردو نامہ کے زمرہ میں منتقل کر رہا ہوں۔
     
  6. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اس کے لیے کیا میرے پاس دونوں فورمز پر ناظم کے اختیارات ہونا ضروری نہیں :)
     
  7. نبیل

    نبیل محفلین

    مراسلے:
    16,800
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Depressed
    اسی لیے تو مجھے یہ کام کرنا پڑا۔
     
  8. زیف سید

    زیف سید محفلین

    مراسلے:
    224
    نبیل صاحب: اس سلسلے کونئی لڑی میں منتقل کرنے کا شکریہ۔ میں اپنی کتاب کا ایک باب یہاں پیش کر سکتا ہوں جس میں اردو زبان کے ارتقا پر بات کی گئی ہے، ‌لیکن اڑچن یہ ہے کہ کتاب انگریزی میں‌ہے اور اردو میں اس کو ترجمہ کرتے کرتے کافی وقت لگ جائے گا۔ انگریزی میں‌کیوں ہے؟ دراصل کتاب میں شامل مضامین بعض ہندوستانی دوستوں کے اردو پر اس الزام کے ردعمل میں‌لکھے گئے تھے کہ اردو دراصل ہندی کا ایک لہجہ (ڈائلکٹ) ہے۔ مضامین کے اس سلسلے میں خاکسار نے ثابت کرنے کی کوشش کی تھی فی الحقیقت معاملہ اس کے برعکس ہے۔ مجھے امید ہے کہ کتاب مکمل ہونے کے بعدیہاں کے ایک اچھے اشاعتی ادارے کی وساطت سے شائع ہو جائے گی۔

    تو بتائیے کہ انگریزی ہی میں مکمل مضمون بھیج دوں یا پھر اس کا اردو میں‌خلاصہ ؟

    زیف
     
  9. نبیل

    نبیل محفلین

    مراسلے:
    16,800
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Depressed
    زیف صاحب، آپ جس انداز میں بھی پوسٹ کریں، یہ ہمارے لیے نہایت عزت افزائی کا باعث ہوگا۔ میں یہ ضرور چاہوں گا کہ یہ پوسٹ کسی متعلقہ زمرے میں اور مناسب فارمیٹ کے ساتھ پوسٹ ہو۔

    ایک طریقہ تو لائبریری پراجیکٹ کے زمرے میں پوسٹ کرنے کا ہے۔ اگر آپ انگریزی میں پوسٹ کریں تو اس بات کا خیال رکھیں کہ ہر پوسٹ‌ کے گرد ذیل کا بی بی کوڈ شامل کر دیں تاکہ یہ صحیح انداز میں ظاہر ہو، اور اسے رائٹ الائن بھی کرنا پڑے گا۔

    دوسرا طریقہ یہ ہے کہ میں انگریزی سیکشن میں اردو پر گفتگو سے متعلقہ ایک فورم سیٹ اپ کر دیتا ہوں۔ وہاں آپ کو پوسٹ کرنے میں کوئی دقت پیش نہیں آئے گی۔

    شکریہ
     
  10. نبیل

    نبیل محفلین

    مراسلے:
    16,800
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Depressed
    محب، یہاں خالص اردو سے متعلقہ موضوعات پر گفتگو نہ ہونے کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ ابھی تک یہاں زیف سید اور شاہد احمد خان جیسے صاحب علم لوگوں کی آمد کم ہے۔ میں اس بارے میں پہلے بھی شکایت کر چکا ہوں کہ شاعر اور ادیب حضرات دوسری فورمز پر رومن اردو اور تصویری اردو میں پوسٹ‌کرنا قبول کر لیتے ہیں لیکن وہ یہاں آنا پسند نہیں کرتے۔ بہرحال کچھ عرصے سے تفسیر، زیف سید، شاہد اور دوسرے دوستوں کے آنے سے یہ صورتحال کچھ تبدیل ہوئی ہے۔
     
  11. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بالکل صحیح کہہ رہے ہو نبیل اور اب یہ شاہد اور زیف کی ذمہ داری ہے کہ اس سلسلے کو رواں دواں رکھیں اور اپنے جاننے والوں کو بھی محفل پر لے کر آئیں تاکہ چراغ سے چراغ جلتے چلے جائیں۔

    اس فورم کی مدد سے ہم اردو کی اصلاحات اور اردو پر چھائے جہالت کے پردے دور کرنے کی کوشش کرتے رہیں گے۔
     
  12. پاکستانی

    پاکستانی محفلین

    مراسلے:
    4,529
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    ایک خبر ۔ جاپان کی اوساکا یونیورسٹی آف فارن سٹیڈیز کے شعبہ جنوبی ایشیا کے ایسوسی ایٹ پروفیسر سویما نے کہا ہے کہ اردو تاریخی اور ثقافتی زبان ہے اسے انگریزی زبان کی دستبرد سے بچانا جائے، اس کے لئے شعوری کوشش ہونا چاہیے۔ جاپان میں حکومت نے اپنی زبان کو انگریزی اور دوسری بڑی ثقافتوں کی یلغار سے بچانے کے لئے یہ ہدایت کی ہے کہ دفاتر میں جتنے انگریزی کے الفاظ استعمال ہو رہے ہیں ان کا جاپانی ترجمہ کیا جائے اور آئندہ ان ترجمہ شدہ الفاظ کا ستعمال کیا جائے۔ یوینسف کی رپورٹ میں اردو کو دنیا کی تیسری بڑی زبان قرار دیا گیا اگر اتنی بڑی زبان کو بچانے کی شعوری کوشش نہ کی گئی تو یہ بدقسمتی ہو گی۔
     
  13. شاہد احمد خان

    شاہد احمد خان محفلین

    مراسلے:
    355
    معزرت

    دوستو ، معزرت چاہتاہوں‌کہ ، ہماری گفتگو کا دھاگا ، نیٹ‌کی کائینات میں اردو کی دنیا سے یہاں‌منتقل ہو گیا اور ہمیں خبر بھی نہ ہوئی ۔۔میں‌ نے اسے سینسر پالیسی گردانا ،کیونکہ ہم پاکستانی صحافیوں کو ہر جگہ او‌ر ہر وقت سینسر کا سامنا رہتا ہے ۔۔۔ بہر حال یہ جگہ بہتر ہے اس بحث کے لئے جسے ہم جنگ بقائے اردو کا نام دے سکتے ہیں‌۔۔ زیف سے درخواست ہے کہ اپنے مضمون اردو میں‌منتقل کر کے ہی یہاں‌بھیجیں کیونکہ ایک تو یہ اردو کا فورم ہے دوسرے اردو پڑھنا مجھے اچھا لگتا ہے اور دیگر دوستو کو بھی اچھا لگتا ہوگا ۔۔۔۔
     
  14. شاہد احمد خان

    شاہد احمد خان محفلین

    مراسلے:
    355
    بھائ، زبانوں کے ارتقاء میں دیگر زبانوں کا اختلاط ہمیشہ جاری رہتا ہے ،،، اور اردو کا حسن تو ویسے بھی مختلف زبانوں‌کے سولہ سنگھار سے نکھرا ہے ۔۔اردو کی خوبی یہ ہے کہ دیگر زبانوں‌ کے الفاظ‌اس میں‌مل کر اسی کے ہو جاتے ہیں‌،، آپ کے خیال میں چابی ، الماری وغیرہ کیا اردو کے اپنے الفاظ‌ہیں‌،،بھائی یہ پرتگیزی زبان کے الفاظ ہیں‌،، کیا آپ انہیں‌اردو سے نکال سکتے ہیں‌؟؟؟؟

    اور ہاں‌ایک غلط فہمی دور کر لیجئے ، یونیسکو نے اردو کو دنیا کی دوسری سب سے زیادہ بولی جانےو الی زبان نہیں‌ کہا ہے بھائی ، یہ اعزاز مشترکہ طور پر اردو ، ہندی اور ہندوستانی کو حاصل ہے ۔۔۔اب ان تینوں‌زبانوں‌کا کیا رشتہ ہے یہ ایک علیحدہ بحث‌ہے ۔۔۔
     
  15. باذوق

    باذوق محفلین

    مراسلے:
    1,093
    اُردو ہے جس کا نام

    معذرت محترمین کہ بندہءناچیز یہاں کافی تاخیر سے داخل ہوا ہے
    جبکہ یہ میرا بھی پسندیدہ موضوع ہے
    فیروز اللغات کے حالیہ ایڈیشنز میں پتا نہیں کس سبب ایک اہم مقالہ شامل نہیں کیا جا رہا ہے۔ جبکہ آج سے بیس سال پہلے کے ایڈیشن میں مولوی عبدالحق (غالباََ ؟) کا ایک طویل مقالہ شامل کیا جاتا رہا ہے جو اردو کی تاریخ پر ایک سیرحاصل مضمون کہا جا سکتا ہے۔
    موقع ملنے پر اس کو یونی کوڈ میں یہاں پیش کرنے کی کوشش کروں گا میں۔
    فی الحال ڈاکٹر فرمان فتح پوری کے ایک طویل مضمون (جو غالباََ رابطہ میں شائع ہوا تھا) سے کچھ اہم اور مفید اقتباسات یہاں پیش کر رہا ہوں ، ملاحظہ فرمائیں :
    -------------------------------
    اُردو ... اِس وقت دنیا کی چند بڑی زبانوں میں سے ایک ہے۔
    اقوام متحدہ کے ادارے ' یونیسکو' کے اعداد و شمار کے مطابق عام طور پر سمجھی اور بولی جانے والی زبانوں میں 'چینی' اور ' انگریزی' کے بعد دنیا کی یہ تیسری بڑی زبان ہے۔
    اُردو کے بولنے اور سمجھنے والے دنیا کے ہر علاقے اور ہر ملک میں موجود ہیں ۔ اُردو کے اِس حلقہ ء اثر کو دیکھتے ہوئے اِسے انگریزی کے بعد دنیا کی دوسری سب سے بڑی زبان کہنا مبالغہ نہ ہوگا۔
    اُردو ... اپنی ساخت میں بین الاقوامی مزاج کی مخلوط زبان ہے ۔ اس کا بنیادی ڈھانچہ مقامی ہے لیکن اس میں مختلف زبانوں کے الفاظ اس کثرت سے اور اس انداز سے داخل ہو گئے ہیں کہ اُردو اپنی اساس میں بین الاقوامی زبانوں کی ایک انجمن بن گئی ہے اور ہر شخص کے لیے ایک کشش رکھتی ہے۔
    ایشیائی زبانوں ، خصوصاً عربی ، فارسی ، ترکی ، سنسکرت اور پاکستان اور ہندوستان کی دوسری مقامی بولیوں کے الفاظ کی تعداد بھی اس میں خاصی ہے اور یہ الفاظ روزمرہ کی تقریر و تحریر میں برابربولے اور لکھے جاتے ہیں ۔
    اِس سلسلے میں چند نمونے پیش خدمت ہیں ۔

    ١) عربی :
    صندوق ، کرسی ، کتاب ، علاج ... وغیرہ۔
    ٢) ترکی :
    بیگم ، توپ ، اتالیق ، قلی ، قورمہ ، خاتون ۔
    ٣) فارسی :
    گل و غنچہ ، برگ و بار اور آب و خاک ... وغیرہ۔
    ٤) چینی :
    کاغذ ، چائے ، تام جھام ، چوں چوں (چوں چوں کا مربہ )۔
    ٥) سنسکرت :
    پنڈت ، برکھا ، رُت ، رشی ، وید ، کوی ، کویتا ، کریاکرم ، دھرم ... وغیرہ۔
    ٦) یونانی :
    گراموفون ، فون ، ٹیکنیکل ، ایجنٹ ، آپریشن ، لیکچر ، الیکشن ، پائپ ، سرکس ، کانگریس ، کانفرنس ، ووٹ ، ڈراما ، کیمرہ ، کورس ، بکس ، ایلوپیتھی ، آکسیجن ، نمونیہ ، جنکشن ، ڈویژن ، ریگولر ، فیملی ، فوکس ... وغیرہ ۔
    (اِن میں سے کچھ براہ راست اور کچھ انگریزی کی معرفت اُردو میں داخل ہوئے ہیں )
    ٧) پرتگالی :
    الماری ، انناس ، تولیہ ، پادری ، چابی ، صوفہ ، صابن ، فالتو ، گرجا ، گودام ، میز ، نیلام ، ورانڈا ... وغیرہ۔
    ٨) فرانسیسی :
    ایڈی کانگ ، پریڈ ، کارتوس ، پارک ، گارڈ ، اردلی ، ٹروپ ... وغیرہ۔
    ٩) اطالوی :
    انفلوئنزا ، ملیریا ، پیانو ، سوڈا ، لاٹری ، لاکٹ ، سائز ، بیلٹ ، بالکنی ... وغیرہ۔
    ١٠) جرمن :
    ڈرل ، اسپرے ، ٹب ، سوئچ ، مگ ۔
    ١١) اسکنڈے نیویا :
    اسکاؤٹ ، ٹفن ، ٹرام ، جمپ ، جمپر ، جرسی ، ٹرسٹ ، فیلو ، کیک ، لفٹ ، لگیج ، کیتلی ... وغیرہ۔
    ١٢) ولندیزی :
    برانڈی ، پلگ ، ڈرم ، ویگن ، گولف ... وغیرہ۔
    ١٣) انگریزی :
    کار ، کالج ، یونی ورسٹی ، لوٹ ، ترپال ، بلڈنگ ، برجس ، پریس ، مشین ، اسکول ، کلاس ، روم ، ٹکٹ ، اسٹیشن ... وغیرہ۔


    اُردو کے اس مخلوط مزاج کے نتیجے میں یہ ہوا ہے کہ اردو کے ہر جملے میں کئی کئی زبانوں کے الفاظ شامل ہوتے ہیں اور ان جملوں کو سننے اور سمجھنے والا ذرا دیر کے لیے یہ محسوس کرتا ہے جیسے وہ خود بھی اُردو سے مانوس ہے یا کم ازکم اس زبان کے بعض الفاظ سے آشنائی رکھتا ہے۔ یوں یہ احساس اُسے اُردو کے قریب لاتا ہے اور وہ اسے حسبِ ضرورت آسانی سے سیکھ لیتا ہے ۔
    تحریر : ڈاکٹر فرمان فتح پوری
     
  16. زیف سید

    زیف سید محفلین

    مراسلے:
    224
    دوستو؛

    میں اپنے مضامین کے سلسلے کہ پہلی قسط کا لنک پیش کر رہا ہوں۔

    http://zaffsyed.googlepages.com/urduhaijiskaanaam

    انگریزی کی معذرت لیکن اسے اردو میں منتقل کرنے کے میں کئی ہفتے لگ جائیں گے (امتحانات بھی سر پر کھڑے ہیں :(

    دوستوں‌سے گزارش ہے کہ اسے پڑھ کر اگر ذہن میں کوئی سوال اٹھتے ہیں تو یہاں‌پوسٹ کر دیں، اس طرح سے بحث کا سلسلہ آگے بڑھایا جا سکتا ہے۔ زیرِ نظر مضمون میں‌صرف اردو کے نام پر بحث کی گئی ہے۔ دوسری اقساط میں‌اردو کی لسانی تاریخ اور اردو ہندی اورہندوستانی میں فرق پر بات کی گئی ہے۔

    زیف
     
  17. شاہد احمد خان

    شاہد احمد خان محفلین

    مراسلے:
    355
    زیف ، آپ کا مضمون پڑھا ، کیا ہی اچھا ہوتا کہ اسے اردو میں ترجمہ کردیتے تاکہ ایک تو اپنی زبان میں لکھا ہوتا دوسرے سمجھنے میں زیادہ آسانی رہتی ۔۔ خیر آپ کا مضمون تقریبا پورا کا پورا لفظ اردو اور اس لفظ کے اوریجن کی بحث پر مبنی ہے ۔۔بھائی یہ لفظ خیمے یا کیمپ کے معنے میں کچھ کمی زیادتی کے ساتھ انگریزی سمیت اکثر انڈو یورپین زبانوں میں موجود ہے ۔۔۔ بحث اس لفظ کی نہیں اس زبان کے بارے میں ہے جسے میں اور آپ بولتے ہیں ،،، اس کو اردو کا نام دیں یا کچھ بھی کہیں ،، زبان تو وہی رہے گی نا جو ہماری ماں بولی ہے ۔۔۔ آپ نے خود لکھا ہے کہ انشا اللہ خان انشا نے 1807 کی تصنیف دریائے لطافت میں اس زبان کو ۔۔ہندی ۔۔کہا ہے ۔۔ تو میرے خیال میں ، یہ زبان جو میں اور اپ استعمال کر رہے ہیں اسے اردو کا نام کلکتہ کے فورٹ ولیم کالج سے ملا ۔۔ آپ کے علم میں ہوگا ہی کہ انگریز نے فارسی کی جگہ دیسی زبان کو رائج کرنے کی کوشش کی اور یہ زبان اپنے افسران کو سکھانے کا خاص انتظام کیا ۔اسی کالج کے تحت وہ کتابیں بھی شائع کی گئیں جنہیں اردو کی اولین کتب قرار دیا گیا ۔۔لیکن صورت حال یہ ہے کہ 1796میں اردو کی پہلی گرامر بھی ۔۔اے گرامر آف ہندستانی لینگویج ۔۔کے نام سے شائع ہوئی ۔۔جبکہ 1802 میں چھپنے والی ۔۔دی ہندی ارابک مرر ۔۔وہ کتاب تھی جس میں ہندستانی میں استعمال ہونےوالے عربی الفاظ کی فرہنگ چھاپی گئی تھی ۔۔۔اخلاق ہندی او ر نقلیات ہندی 1803 میں چھاپی گئی تھیں ۔۔۔یہی کتب اردو نثر کی اولین کتب کہلاتی ہیں ۔۔
     
  18. زیف سید

    زیف سید محفلین

    مراسلے:
    224
    شاہد بھائی:

    مضمون پڑھنے کا شکریہ۔ میں نے پہلے ہی معذرت کر دی تھی کہ فی الحال میرے لیے مضمون کو ترجمہ کرنا بہت مشکل ہے۔ ہاں ایک دو مہینے بعد دلجمعی سے یہ کام کیا جائے گا۔
    میں آپ سے اتفاق نہیں کرتا شاہد بھائی۔ میری نظر میں زبان کے نام کی بہت اہمیت ہے اور اسی لیے میں نے اس موضوع پر اتنی سمع خراشی کی ہے۔ وہ یوں کہ ہر کوئی سمجھتا ہے کہ اردو کا مطلب لشکر ہے اور اس لیے اردو لشکری زبان ہے۔ یعنی مغلوں کی فوج میں مختلف زبانیں بولنے والے سپاہیوں کے لسانی اختلاط سے یہ زبان وجود میں آئی ہے۔ سو میرے خیال سے یہ واضح کرنا بہت ضروری ہے کہ اس زبان کے نام کا لشکر سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ جس وجہ سے اسے اردو کہا جاتا ہے وہ کچھ اور ہی ہے۔ جب تک یہ بات واضح نہیں ہو گی، ہم زبان کی تاریخ پر بات نہیں‌کر سکتے۔اگلی

    اقساط میں بات اردو کے آغاز و ارتقا تک پھیلائی جائے گی۔

    آپ کی توجہ کا شکریہ۔

    زیف
     
  19. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    12,470
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    میں زیف کی بات سے متفق ہوں کہ زبان کے نام سے ہی بحث کا آغاز ہونا چاہیے اور میں خود اب تک اسے لشکری زبان ہی سمجھتا رہا ہوں گو کہ میں فورٹ ولیم کالج اور انگریزوں کی سرپرستی سے بھی واقف تھا۔
     
  20. شاہد احمد خان

    شاہد احمد خان محفلین

    مراسلے:
    355
    زیف بھائی ، آپ کے مضمون کی اگلی قسط کا انتظار رہے گا ۔۔

    ویسے آپ کی تحقیق کیا کہتی ہے ،، اس زبان کو اردو کا نام کب اور کس نے دیا ۔۔ اور کیا یہ نام دینے سے پہلے یہ زبان موجود نہیں‌تھی ؟؟ اور اگر تھی تو کیا کہلاتی تھی ۔۔
     

اس صفحے کی تشہیر