Hamzad (همزاد)

ساقی۔ نے 'متفرقات' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏فروری 12, 2014

  1. ZA Rajput

    ZA Rajput محفلین

    مراسلے:
    21
    جھنڈا:
    UnitedArabEmirates
    موڈ:
    Lurking
    جنات کو کہے یا مجهے! کوئی فرق نہیں پڑتا بس کہنے والے کی فطرت معلوم ہو جاتی ہے
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,735
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    معلوم نہیں جن تھا یا ہمزاد جس نے میرے مراسلوں میں املا خراب کر دی
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  3. عنا یت علی خان

    عنا یت علی خان محفلین

    مراسلے:
    11
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    اس وڈیو کے بارے آپ کیا کہتے ہیں؟؟؟؟
    میں پچھلے کچھ عرصے سے یو ٹیوب پہ وڈیو دیکھ رہا ہوں انڈیا میں ایک بابا جی ہیں جو لوگوں کے مسایل حل کرتے ہیں لیکن حیرن انگیز بات یہ ھے کہ جو انسان مر جاتے ہیں وہ ان کی روحوں کو حاضر کرتے ہیں ۔ اس بابا جی کی کوئی 1000 سے زیادہ وڈیو ہیں
    کیا یہ ہمزاد ہیں یا واقعی روھیں ہی ہیں کوئی دوست اس پہ اپنے خیالات شئئیر کرنا چاھے تو پلیز
    ان بابا جی کو آپ یو ٹیوب پہ انگلش میں بابا جی بھوت لکھ کہ سرچ کریں بہت سی ودٰو مل جایئں گی۔ ایک ودٰو کا لنک یہ ھے
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  4. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    اور احمق عوام ان باباجی کو مالدار کر کے انکے معاشی مسائل حل کرتی ہے
     
  5. نور وجدان

    نور وجدان مدیر

    مراسلے:
    6,323
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Asleep
    واہہہہہہ ! مزیدار گفتگو ! کافی عرصے بعد اتنا لمبا دھاگہ مکمل پڑھنے کا اتفاق ہوا ، ہر کسی نے اپنی عقل ، خیال ، سوچ ، سمجھ ، شعور کے مطابق ہمزاد کو سمجھا ۔۔۔۔۔۔پڑھنے کی حد تک ناول کی مانند ہے یہ لڑی ، عمل تو اس کا تساہلی کی جانب انتہائی قدم ہے
     
  6. سید لبید غزنوی

    سید لبید غزنوی محفلین

    مراسلے:
    3,535
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    ماخذ کا بھی پتہ نہیں اور حقیقت کا بھی ۔۔۔کیا کوئی آج تک ہمزاد پر قابوپا سکا ہے ۔۔سوائے نبی کریم کے ۔۔کہ نبی کریم ﷺ نے فرمایا اللہ نے میرے ہمزاد(جن) کو میرے تابع کر دیاہے وہ مجھے غلط رستہ نہیں سجھاتا۔۔۔
     
  7. سید لبید غزنوی

    سید لبید غزنوی محفلین

    مراسلے:
    3,535
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Breezy
    احمق عوام ۔۔۔اسے ایک ڈھونگ کے سواکیا کہا جاسکتاہے ۔۔؟
     
  8. نور وجدان

    نور وجدان مدیر

    مراسلے:
    6,323
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Asleep
    میں روحی کی یا سے بنایا گیا ہوں
     
    آخری تدوین: ‏اگست 24, 2020
  9. زیک

    زیک محفلین

    مراسلے:
    38,735
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Bookworm
    یہ ہمزاد immortal لگتا ہے
     
  10. فہد مقصود

    فہد مقصود محفلین

    مراسلے:
    313
    بہت ہی طویل دھاگہ ہے۔ پورا پڑھا نہیں ہے البتہ آپ دونوں محترم اراکین کے ان مراسلوں سے ایک سوال دماغ میں آرہا ہے۔ کیا "من روحی" سے آپ دونوں کی مراد یہ ہے "روح اللہ تعالیٰ کا ایک جزء ہے"
    الشفاء بھائی صاحب "موتو قبل ان تموتو" موضوع روایت ہے۔ ملاعلی قاری حافظ ابن حجر عسقلانی سے نقل کرتے ہیں کہ یہ حدیث کہیں ثابت نہیں۔
    (موضوعات:۷۵) اس سے استدلال حاصل نہ ہی کیا جائے تو بہتر ہوگا۔
     
  11. الشفاء

    الشفاء لائبریرین

    مراسلے:
    2,832
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amazed
    محترم، روح میرے رب کے امر میں سے ہے۔۔۔
    حضرت ، یہ بات بطور ایک پراسیس، عمل یا کیفیت کے لکھی ہوئی ہے۔دوبارہ پڑھیں۔۔۔
     
  12. فہد مقصود

    فہد مقصود محفلین

    مراسلے:
    313
    جَزَاکَ اللَّهُ خَيْرًا۔ آپ نے بے شک قرآن کا روح کے بارے میں فرمان نقل فرمایا ہے۔ روح امر ربی ہے یعنی اللہ تعالیٰ کی مخلوق ہے۔ یعنی روح اللہ تعالىٰ كى صفات ميں سے نہيں بلكہ اللہ تعالىٰ كى مخلوقات ميں سے پيدا كردہ ایک مخلوق ہے۔
    چند سطروں کا اور اضافہ کرنا چاہوں گا ان کے لئے جو اس معاملے میں ہو سکتا ہے شکوک شبہات کا شکار ہوں۔ "روح كے بارہ ميں قول ايسا ہى ہے جيسا كہ ( بيت اللہ ) اور ( ناقۃ اللہ ) اور ( عباداللہ ) اور ( رسول اللہ ) يعنى اللہ كا گھر، اللہ كى اونٹنى، اللہ كے بندے، اور اللہ كا رسول ہے لھذا يہ سب اللہ تعالىٰ كى مخلوقات ہيں اور شرف و كرم كے اعتبار سے ان كى اضافت اللہ تعالىٰ كى جانب كى گئى ہے."
    ايك نصرانى سے مباحثہ كرنے والا دريافت كرتا ہے كہ كيا اللہ كى روح ہے ؟ - اسلام سوال و جواب

    جہاں تک مذکورہ موضوع روایت کی بات ہے تو کسی پراسیس کو سمجھانے کے لئے بھی مناسب معلوم نہیں ہوتا ہے کہ اسے استعمال کیا جائے۔ جب ایک روایت ہے ہی من گھڑت اور غیر معتبر تو اس سے کس کیفیت کو ثابت کیا جا سکے گا؟ جب ساکھ ہی مشتبہ ہو تو ایسی روایت کس کام کی؟
     

اس صفحے کی تشہیر