کیا یورپ کی ترقی مذہب کو ترک کرنے کی مرہون منت ہے؟

سید رافع نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 3, 2020

  1. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,603
    بالکل۔ رسول اللہ ﷺ کا کونسا فرقہ تھا؟
     
    • زبردست زبردست × 1
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  2. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    3,131
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    قرآن حکیم سے کیا دلیل ہے اس کی کہ سال پورا ہونے کے بعد اللہ تعالی کا حق ادا کیا جائے؟
     
    • زبردست زبردست × 1
  3. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    3,131
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    وہ کنکریاں مار رہے تھے اور آپ نے ایٹم بم داغ دیا :)
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  4. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    یہ شیعہ مذہب کا اضافہ ہے۔ آیت اللہ سیستانی کی تحقیق یہاں دیکھیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  5. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    رسول اللہ ﷺ یکسو مسلم ہیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  6. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    سوال وہ ہونے چاہیں جس سے ایمان بڑھے۔
     
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  7. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    پاکستان کے آئین کا دیباچہ قرار داد مقاصد ہے۔ یہ سب تو اسکی شاخیں ہیں۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  8. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    علاوہ قادیانیوں اور بہائیوں کے آپ کے ذکر کردہ مسلمانوں کے ٹکڑوں میں امام ہی کی بحث رہی ہے۔ وہ علمی و روحانی بحث ہے۔ اس سے امت کو فائدہ ہے۔

    برطانوی راج میں قادیانیوں اور بہائیوں نے نبی ہونے کا دعویٰ کیا جو کہ دجل ہے۔ اس سے امت کو سراسر نقصان ہے۔
     
    • غمناک غمناک × 1
  9. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    لیکن پاکستان میں ہے اور یہاں کا حال یہ ہے۔

    Pakistan's fight against feudalism

    [​IMG]
     
    • غمناک غمناک × 1
  10. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    جناب دنیا کے اخبار آپکو بتا رہے ہیں کہ پاکستان کا مسئلہ فیوڈل ازم ہے۔ آپ فیوڈل لارڈز ختم کر دیں فوج، سیاست اور ملاء سب کی سمت صحیح ہو جائے گی۔ ورنہ 10 10 یا 12 12 ہزار کمانے والے ملاء پر وقت لگانے کے بعد آپکو اندازہ ہو گا کہ وقت ضایع کیا۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  11. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    سندھ میں صرف جتوئی کے پاس 30 ہزار ایکڑ بہترین زرعی زمین ہے۔ اندازہ بھی ہے آپکو کہ 30 ہزار ایکڑ کتنا ہوتا ہے؟ 121 اسکوئر کلو میڑ۔ صرف زمین ہی نہیں وہ زمین جس کی پیداوار سے منافع ہوتا ہے۔ جس منافع سے مرد دوسرے مردوں کو غلام بناتا ہے۔ قانون سے بالا ہونے کی سوچ پیدا ہوتی ہے۔ آپ مذہب کے بجائے جاگیرداروں پر فوکس کریں خاص کر جو عمران سے ملے ہوئے ہیں۔ پاکستان ایک بہترین ملک ان جاگیرداروں کو قابو کرنے سے بن سکتا ہے۔




    آپکا پورے کا پورا سیاسی سسٹم فیوڈل لارڈز کے قبضے میں ہے۔

    Feudal Lords continue to dominate the ‘democratic’ system
     
    • متفق متفق × 1
  12. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    آپ یورنیورسٹی آف آکسفورڈ کے پڑھے ہوئے ، 500 بااثر مسلمانوں کی لسٹ میں شامل اور الجزیرہ میڈیا نیٹ ورک میں کام کرنے والے مہدی حسن کو سنیں۔ ہدیۃ یہ لیجیے کچھ ویڈیوز:







     
    • زبردست زبردست × 1
  13. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    جی ہاں۔ امام مہدی جب ظاہر ہوں گے کہ جب انکا تذکرہ تک بند ہو چکا ہو گا۔ ابھی تو ہم تذکرہ کر رہے ہیں۔

    تبھی قرآن اور حدیث ﷺ کو ہدایت کے لیے پڑھنا چاہیے اور یاد دھانی کے لیے سنانا چاہیے۔ زیادہ سوال میں ایمان نہیں بلکہ زیادہ صبر میں ایمان ہے۔ امام مہدی علیہ السلام پر بات اتنی ہی ضروری ہے کہ جتنی احادیث میں آئی ہے۔ نیک کاموں کی ترغیب اور صبر کی تلقین اصل موضوع ہونا چاہیے۔ گفتگو ایمان بڑھانے کے لیے ہونی چاہیے نہ کہ ہنسی ٹھٹا یا کج بحثی کے لیے۔ اپنے حال پر غور کرنا چاہیے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  14. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    3,131
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    بر سبیل تذکرہ

    ‏یعقوب الکندی
    فلسفے، طبیعات، ریاضی، طب، موسیقی، کیمیا اور فلکیات کا ماہر تھا۔ الکندی کی فکر کے مخالف خلیفہ کو اقتدار ملا تو مُلّا کو خوش کرنے کی خاطر الکندی کا کتب خانہ ضبط کر کے اس کو ساٹھ برس کی عمر میں سرعام کوڑے مارے گئے۔ ہر کوڑے پر الکندی تکلیف سے چیخ مارتا تھا اورتماش بین

    ‏عوام قہقہہ لگاتے تھے۔

    ابن رشد
    یورپ کی نشاۃ ثانیہ میں کلیدی کردار ادا کرنے والے اندلس کے مشہورعالم ابن رشد کو بے دین قراردے کراس کی کتابیں نذرآتش کر دی گئیں۔ ایک روایت کے مطابق اسے جامع مسجد کے ستون سے باندھا گیا اورنمازیوں نے اس کے منہ پر تھوکا۔ اس عظیم عالم نے زندگی کے‏آخری دن ذلت اورگمنامی کی حالت میں بسر کیے۔

    ابن سینا
    جدید طب کے بانی ابن سینا کو بھی گمراہی کا مرتکب اورمرتد قراردیا گیا۔ مختلف حکمران اس کے تعاقب میں رہے اوروہ جان بچا کر چھپتا پھرتا رہا۔ اس نے اپنی وہ کتاب جو چھ سو سال تک مشرق اورمغرب کی یونیورسٹیوں میں پڑھائی‏گئی، یعنی القانون فی الطب، حالت روپوشی میں لکھی۔

    زکریاالرازی
    عظیم فلسفی، کیمیا دان، فلکیات دان اور طبیب زکریا الرازی کوجھوٹا، ملحد اورکافر قرار دیا گیا۔ حاکم وقت نے حکم سنایا کہ رازی کی کتاب اس وقت تک اس کے سر پر ماری جائے جب تک یا تو کتاب نہیں پھٹ جاتی یا رازی کا سر۔ اس طرح‏باربارکتابیں سرپہ مارے جانے کی وجہ سے رازی اندھا ہو گیا اوراس کے بعد موت تک کبھی نہ دیکھ سکا۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  15. جاسم محمد

    جاسم محمد محفلین

    مراسلے:
    20,603
    اسی لئے دور حاضر کے مسلمانوں کی اکثریت ابھی تک اندھی جہالت میں زندگی گزار رہی ہے۔
     
    • متفق متفق × 1
  16. فاروق سرور خان

    فاروق سرور خان محفلین

    مراسلے:
    3,131
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Breezy
    قران حکیم کے مطابق، رسول اکرم، مستقبل کا حال ، قرانی واقعات کے علاوہ ،خود سے نہیں جانتے تھے۔ امام مہدی کا قران حکیم سے کوئی ریفرنس؟؟؟
     
    • متفق متفق × 1
  17. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    دعوت اسلامی قدیم کالج اور اسلامی یورنیورسٹی کی طرز پر دارالمدینہ بنا رہی ہے۔ جہاں سے وہ تمام مضامین جو بیرون ملک یورنیورسٹیز میں پڑھاے جاتے ہیں آفر کیے جائیں گے۔

    ویسے تو پاکستانی یا مسلمان آپکو ناسا، مائکرو سافٹ، گوگل، ایپل اور دنیا کی ہر بڑی کمپنی میں مل جائیں گے۔ معلوم ہوتا ہے آپ آغا خانیوں کی طرز پر ظاہری شریعت کو ایک طرف رکھ کر دنیاوی تعلیم کے ذریعے اندھی جہالت کو دور کرنا چاہتے ہیں؟
     
    • مضحکہ خیز مضحکہ خیز × 1
  18. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    شاید آپ معراج سے واپسی پر مسجد اقصی کے ستنوں والے واقعے کی طرف اشارہ کر رہے ہیں؟

    قرآن میں کہیں امام مہدی کا ذکر نہیں ہے۔
     
    • معلوماتی معلوماتی × 1
  19. سید رافع

    سید رافع محفلین

    مراسلے:
    1,131
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    رسول اللہ ﷺ کی ذات عیب سے پاک ہے۔ اللہ ہر عیب سے پاک ہے۔ اللہ ایک چھپا ہوا راز تھا جس کو قرآن نے سورہ اخلاص میں ھو کہا ہے۔ جب اللہ نے چاہا کہ وہ پہچانا جائے تو ھو کا ظاہر اللہ ہوا۔ اللہ جب ھو کے لا محدود بھید سے ظہور پزیر ہوا تو اس ظاہر اللہ کی صفات کے نورانی جوڑے ظاہر ہوئے۔ جیسے رحمن و قہار۔ رسول اللہ ﷺ پہلی مخلوق ہیں جو ان صفات کے جوڑوں سے بنائی گئی۔ رسول اللہ ﷺ عبد اور اللہ معبود ہے۔ اس بنا پر نہ ہی اللہ کی حقیقت رسول اللہ ﷺ سے زیادہ کوئی جانتا ہے اور نہ ہی رسول اللہ ﷺ کی حقیقت اللہ کے علاوہ کوئی جانتا ہے الا یہ کہ یہ خود ہی اس غیب پر کسی کو مطلع کر دیں۔

    اللہ اپنے بارے میں فرماتا ہے کہ:

    عَالِمُ الْغَيْبِ فَلَا يُظْهِرُ عَلَى غَيْبِهِ أَحَدًاo إِلَّا مَنِ ارْتَضَى مِن رَّسُولٍ فَإِنَّهُ يَسْلُكُ مِن بَيْنِ يَدَيْهِ وَمِنْ خَلْفِهِ رَصَدًاo

    الجن، 72 : 26۔ 27

    ’’(وہ) غیب کا جاننے والا ہے، پس وہ اپنے غیب پر کسی(عام شخص) کو مطلع نہیں فرماتا۔ سوائے اپنے پسندیدہ رسولوں کے (اُنہی کو مطلع علی الغیب کرتا ہے کیونکہ یہ خاصۂ نبوت اور معجزۂ رسالت ہے)، تو بے شک وہ اس (رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) کے آگے اور پیچھے (علمِ غیب کی حفاظت کے لیے) نگہبان مقرر فرما دیتا ہے۔ ‘‘



    اور رسول اللہ ﷺ کے بارے میں بتایا جاتا ہے۔

    وَمَا هُوَ عَلَى الْغَيْبِ بِضَنِينٍo

    التکویر، 81 : 24

    اور وہ (یعنی نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم ) غیب (کے بتانے) پر بالکل بخیل نہیں ہیں۔


    جو جسقدر استعداد رکھتا ہے اسکو اتنا مل جاتا ہے۔

    فرقہ کثیر علم کے بعد دل کی جلن سے بنتا ہے۔ مسلک کثیر علم کے بعد دل کی سلامتی سے بنتا ہے۔

    فرقہ سے لوگوں کی ہوا اکھڑ جاتی ہے۔ مسلک سے لوگوں کے قدم جم جاتے ہیں۔

    فرقہ باعث زحمت ہے۔ مسلک باعث رحمت ہے۔
     
  20. فہد مقصود

    فہد مقصود محفلین

    مراسلے:
    213
    محترم بھائی صاحب آپ نے تو مجھے بہت ہی حیران کیا ہے۔ آپ نے دعویٰ کیا تھا کہ ظاہری توحید اور باطنی توحید کا مذہب میں تصور موجود ہے اور میں نے اسی حوالے سے آپ سے ثبوت مانگا تھا۔

    جواب میں آپ نے بطورِ دلیل جو حدیث نقل کی ہے اس میں ظاہری توحید اور باطنی توحید کا کہیں بھی تصور نہیں ملتا ہے۔ توحید کا زبان سے اقرار کرنا دل سے اقرار کرنے کے برابر ہی سمجھا جاتا ہے بلکہ توحید ہی کیا ایمان کی جتنی بھی شاخیں ہیں مثلاً اللہ کے بھیجے ہوئے رسولوں اور انبیاء علیہم السلام پر ایمان لانا، اللہ کی کتابوں پر ایمان لانا، فرشتوں پر ایمان لانا وغیرہ ان سب کا زبان سے اقرار کرنا ہی دل سے تصدیق کرنے کے برابر ہی سمجھا جاتا ہے کیونکہ ہم انسان کسی کے دل کا بھید معلوم نہیں کر سکتے ہیں۔ یہ تو خدائے رب العزت کی صفت ہے کہ وہ دلوں کا حال جانتا ہے اور اگر کسی کا عمل اور اقرار ثبات میں ہو تو ہم اپنی طرف سے کسی کے اوپر یہ الزام نہیں لگا سکتے ہیں کہ تیرے دل میں یہ ہے اور آپ نے خود ہی اس بات کی تصدیق اس حدیث کو نقل کر کے کر دی ہے۔

    سیدنا اسامہ بن زید رضی اللہ عنہ کہتے ہیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ہمیں ایک سریہ میں بھیجا۔ ہم صبح کو حرقات سے لڑے جو جہنیہ میں سے ہے۔ پھر میں نے ایک شخص کو پایا، اس نے لا الٰہ الا اللہ کہا میں نے برچھی سے اس کو مار دیا۔ اس کے بعد میرے دل میں وہم ہوا (کہ لا الٰہ الا اللہ کہنے پر مارنا درست نہ تھا) میں نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سے بیان کیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ کیا اس نے لا الٰہ الا اللہ کہا تھا اور تو نے اس کو مار ڈالا؟ میں نے عرض کیا کہ یا رسول اللہ! اس نے ہتھیار سے ڈر کرکہا تھا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ تو نے اس کا دل چیر کر دیکھا تھا تاکہ تجھے معلوم ہوتا کہ اس کے دل نے یہ کلمہ کہا تھا یا نہیں؟ (مطلب یہ ہے کہ دل کا حال تجھے کہاں سے معلوم ہوا؟) پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم باربار یہی فرماتے رہے یہاں تک کہ میں نے آرزو کی کہ کاش میں اسی دن مسلمان ہوا ہوتا (تو اسلام لانے کے بعد ایسے گناہ میں مبتلا نہ ہوتا کیونکہ اسلام لانے سے کفر کے اگلے گناہ معاف ہو جاتے ہیں)

    اس حدیث : ’’ایمان کی ستر (70) سے زائد شاخیں ہیں۔ اس کی سب سے افضل شاخ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ کہنا ہے اور سب سے ادنیٰ شاخ راستے سے کسی تکلیف دہ چیز (کانٹا، پتھر، نجاست وغیرہ) کا ہٹانا ہے اور حیا بھی ایمان کی ایک شاخ ہے۔‘‘

    کی کہیں بھی ایسی تشریح پڑھنے کو نہیں ملی ہے کہ دل سے اقرار کرنا ایک الگ شاخ ہے اور زبان سے اقرار کرنا ایک الگ۔ آپ ایمان کی ایک ہی شاخ کو دو میں کیسے تقسیم کر رہے ہیں سمجھ سے باہر ہے۔ اس طرح تو پھر ایمان کے ہر جز کو دو جز کے برابر گنا جانے لگے گا اور ایسا کہیں بھی آج تک پڑھنے کو نہیں ملا ہے۔ اس حدیث کو کچھ اس طرح بھی نقل کیا گیا ہے۔
    [​IMG]

    ایمان کی شاخیں!!!

    اگر آپ ایمان کی شاخوں کے بارے میں مزید مطالعہ کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں تو آپ کی خدمت میں بہت ہی عمدہ کتاب پیش کرنا چاہوں گا جس میں ایمان کی شاخوں پر سیر حاصل گفتگو کی گئی ہے اور وہ بھی قرآن اور حدیث کی روشنی میں۔

    ایمان کے درجات اور شاخیں | Iman-K-Darjat-Aur-Shakhain | کتاب و سنت
     
    • زبردست زبردست × 1

اس صفحے کی تشہیر