آتش چمن میں شب کو جو وہ شوخ بے نقاب آیا - آتش

سیفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 28, 2005

  1. سیفی

    سیفی محفلین

    مراسلے:
    634
    [marq=right:ebe9514feb]ویسے آتش کے کلام کا اپنا ہی ایک لطف ہے۔۔۔۔اگر آپ محسوس کریں تو[/marq:ebe9514feb]

    چمن میں شب کو جو وہ شوخ بے نقاب آیا
    یقیں ہو گیا شبنم کو، آفتا ب آیا

    ان انکھڑیوں میں اگر نشئہ شرکاب آیا
    سلام جھک کر کروں گا جو پھر حجاب آیا

    اسیر ہونے کا اللہ رے شوق بلبل کو
    جگایا نالوں سے صیاد کو جو خواب آیا

    کسی کی محرم آب رواں کی یاد آئی
    حباب کے جو برابر کوئی حباب آیا

    شبِ فراق میں مجھ کو سلانے آیا تھا
    جگایا میں نے جو افسانہ گو کو خواب آیا
     
    • زبردست زبردست × 1
  2. NAZRANA

    NAZRANA محفلین

    مراسلے:
    36
    آج تو آتش ہی آتش ہے۔۔۔۔۔

    سیفی صاحب،
    السلام علیکم،
    خواجہ حیدر علی آتش کے کلام سے آپکا انتخاب بہت پسند آیا۔
    امید ہے آئندہ بھی ایسا ہی خوبصورت و نایاب کلام عطا فرمائینگے۔
     
  3. سیفی

    سیفی محفلین

    مراسلے:
    634
    سلام

    پسند کا شکری جناب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     

اس صفحے کی تشہیر