1. اردو محفل سالگرہ شانزدہم

    اردو محفل کی سولہویں سالگرہ کے موقع پر تمام اردو طبقہ و محفلین کو دلی مبارکباد!

    اعلان ختم کریں

پشتو اشعار مع اردو ترجمہ

ربیع م نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مئی 17, 2017

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    و آسمان ته لاس د عقل نه رسېږي
    دا خو عشق دی چه په عرش کرسي قدم ږدي
    (رحمان بابا)


    آسمان تک عقل کا دست نہیں پہنچتا۔۔۔ یہ تو عشق ہے کہ جو عرش و کُرسی پر قدم رکھتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زه به څه رنګ د رقیب و مخ ته ګورم
    کله اهل سنت ګوري د ترسا مخ
    (رحمان بابا)


    میں رقیب کے چہرے پر نگاہ کیسے کروں گا؟!۔۔۔ اہلِ سُنّت [مُسلمان] کب [کِسی] مسیحی کا چہرہ دیکھتا ہے؟ (یعنی یہ مُحال و ناشُدَنی ہے کہ میں کبھی رقیب کے چہرے پر نگاہ ڈالوں گا۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    لکه حرف چه سیه پوش وي په بیاض کښې
    په ښادۍ کښې ماتمیان کا ماتمونه
    (کاظم خان شَیدا)


    جس طرح [سفید] بَیاض میں حَرف سیاہ‌پوش ہوتا ہے، [اُسی طرح] سوگ‌واران شادمانی [کے موقع] میں [بھی] سوگ کرتے ہیں۔ (سفید کاغذ پر حُروف سیاہ سیاہی سے لِکھے جاتے ہیں۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    فارسی و اُردو میں ایک ضرب‌المثَل رائج رہی ہے کہ «قهرِ درویش به جانِ درویش»۔۔۔ یعنی درویشِ بےچارہ کا زور فقط اپنی ذات پر چلتا ہے، اور وہ کم‌زور شخص صِرف خود پر قہر کرنے کی قُدرت رکھتا ہے، لہٰذا اگر وہ کسی دیگر شخص پر بھی خشم‌گین ہو تو وہ خود ہی کو اپنے خشْم کا ہدف بناتا ہے۔۔۔ «پختونخوا» کے شاعر «کاظِم خان شَیدا» کی ایک بیت میں اُس ضرب‌المثَل کا استعمال نظر آیا ہے:

    د دروېش قهر همېش په خپل صورت وي
    ستا له جوره چه په خپل خاطر عتاب کړم
    (کاظم خان شَیدا)


    [اے یار!] میں تمہارے جَور و سِتم کے سبب جو خود کے قلب و جان پر عِتاب کرتا ہوں [تو اُس کا باعث یہ ہے کہ] درویش کا قہر ہمیشہ اپنے ہی جسم و جان پر ہوتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  5. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    413
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    هم نغمي کاندي هم رقص او هم خاندي
    درحمان په شعر ترکے د باگرام
    رحمان بابا

    نغمیں گاتی ہیں رقص کرتی ہیں اور ہنستی ہیں رحمان کا شعر سن کر بگرام کی ترک عورتیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    413
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    پہ جامات شے ڈیرہ ژغیژا بیا ملک یے
    او پہ نہ قیصا تیے کیژا بیا ملک یے
    عزیز

    مسجد میں زیادہ بولا کر پھر تو ملک ہے
    اور بات بات پر چھاتی تانا کر پھر تو ملک ہے

    ۔۔یاد رہے مَلک۔ پنجاب میں ایک قوم ہے لیکن پٹھانوں کے ہاں قوم کے سرادر کو ملک کہتے ہیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    413
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    چه بیوسی یه شوا ایس ویي چہ جداي شه خیر دا
    کنړی ہر چا ته د وصال په دواي شه خیر دا
    عزیز

    جب (عاشق) بےبس ہوگیا اب کہتا ہے کہ جداي میں ہی خیر ہے
    لیکن خیر تو ہر کسی کیلیے وصال کی دواي میں ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    413
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    ته کتپیز یے زہ عزیز یه ملگیری گرونه دو
    توتا پہ تیارہ شه خیر او موتا رنړاي شه خیر دا
    عزیز

    تو چمگاڈر ہے اور میں عزیز ہوں ہماری دوستی مشکل ہے
    تیرے لیے تاریکی میں خیر ہے اور میرے لیے روشنی میں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. انیس جان

    انیس جان محفلین

    مراسلے:
    413
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Psychedelic
    زہ دے ملک ماما د حکم نہ آزود یه چے په
    موتا ملگریے په بیلچه او په کاي شه خیر دا
    عزیز

    جن کے ذریعہ میں ملک ماما کے حکم سے آزاد ہوں
    دوستو انہیں بیلچے اور کدال میں میری خیر ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    روشنائي مې د چشمانو ستا دیدن دی
    په دا کور کښې بل څراغ و مشال نشته
    (رحمان بابا)


    میری چشموں کی روشنائی تمہارا دیدار ہے۔۔۔ اِس گھر میں [کوئی] دیگر چراغ و مَشعَل نہیں ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    هر ساقي چه جام د عشق لري په لاس کښې
    دا پیاله یې په مستانو ده مباحه
    (رحمان بابا)


    جس بھی ساقی کے دست میں عشق کا جام ہو، اُس کا یہ پیالہ مستوں پر حلال و مُباح ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    چه کیمیا د قناعت یې په لاس کښېوزي
    که ګدا وي د قارون په څېر توانګر شي

    (رحمان بابا)

    جب شخص کے دست میں قناعت کی اِکسِیر آ جائے، تو اگر وہ گدا بھی ہو تو قارُون کی مانند ثروَت‌مند و مال‌دار ہو جاتا ہے۔۔۔

    × کِیمیا/اِکسِیر = وہ افسانوی مادّہ کہ جس کے ذریعے سے گویا مِس (تانبے) یا کسی دیگر کم‌قیمت دھات کو زر میں تبدیل کیا جا سکتا ہے
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 22, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «خوشحال خان خټک» جس وقت «سرزمینِ ہِند» میں وقت گُذارنے کے بعد اپنے وطن «پختونخوا» واپَس جا رہے تھے تو اُنہوں نے «دِیارِ ہِند» کی مذمّت میں ایک غزل کہی تھی۔ اُس غزل کی ابتدائی دو ابیات دیکھیے:

    که مې یو ځله رسد وشي تر سینده
    نور دِ مه وینم په تورو سترګو هنده
    نه به سترګې د سړی په چا خوږې شي
    نه یې ماته په اوبو شي د چا تنده

    (خوشحال خان خټک)

    اگر ایک بار مَیں دریائے سِندھ تک پہنچ جاؤں تو پھر خُدا کرے کہ، اے ہِند، مَیں تم کو دوبارہ کبھی نہ دیکھوں!۔۔۔ یہاں نہ کسی شخص کو دیکھ کر اِنسان کی چشمیں خُنُک (آنکھیں ٹھنڈی) ہوتی ہیں، اور نہ یہاں کے آب سے کسی کی تشنَگی بُجھتی ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    راحت بې زحمته نه دی چا موندلی
    غم ښادي د دې دهر خور و ورور

    (رحمان بابا)

    کسی شخص نے زحمت و مشقّت کے بغیر راحت نہیں پائی ہے۔۔۔ اِس دہر کے غم و شادمانی خواہر و برادر ہیں۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «رحمان بابا» کی ایک اَخلاقی نصیحت:

    په آزار د چا راضي مه شه رحمانه
    که خلاصي په قیامت غواړې له عذابه
    (رحمان بابا)


    اے «رحمان»! اگر تم قِیامت میں عذاب سے خَلاصی چاہتے ہو تو کسی شخص کے آزار پر راضی مت ہوؤ! (یعنی کسی شخص کو آزار پُہنچانے کا باعث مت بنو اور اُس کے آزار پر رِضامندی مت کرو!)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    میں نے اِمروز زبانِ پشتو کا ایک لفظ «تمه» سیکھا ہے جو معلوم ہوا ہے کہ عربی‌الاصل لفظ «طمَع» کی پشتون‌شُدہ شکل ہے، اور پشتو میں «اُمید» و «توقُّع» کے معنی میں استعمال ہوتا ہے۔۔۔ میں پشتو کے بہ شُمول جب کسی سیکھی جا رہی زبان میں کوئی نیا لفظ سیکھتا ہوں تو میری کوشش ہوتی ہے کہ اُس کو ذہن‌نشین کرنے کے لیے کوئی مِصرع یا بَیت بھی حِفظ کر لوں۔ کیونکہ اوّلاً تو اُس کے ذریعے سے لفظ اور اُس کا استعمال آسانی سے حِفظ ہو جاتا ہے، ثانیاً یہ کہ میں شاعری میں بےانتہا دل‌چسپی رکھتا ہوں، اور ثالثاً یہ کہ میں فارسی سے مُتَأثِّر مشرقی زبانیں تُرکی، اُزبَکی، پشتو وغیرہ سیکھتا ہی اِسی لیے رہا ہوں کیونکہ سب سے قبل اُن میں موجود کلاسیکی شعری سرمائے نے میری توجُّہ کو جَلب کر کے مُجھ کو اپنی جانب کھینچا تھا (اگرچہ پشتو سیکھنے کی خواہش ذرا اِس لیے بھی ہے کہ یہ میرے دادا پردادا کی زبان تھی)۔

    بہر حال، پشتو کے لفظ «تمه» کو حافِظے کا جُزء بنانے کے لیے اِس پشتو مِصرعے کی مدد لی ہے:

    "زه د بهار په تمه شپې تېروم"

    مَیں بہار کی اُمید میں شبیں گُذارتا ہوں۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    څومره تکې تورې شپې دي څومره لوئې دي اوږدې دي
    تيروم يې ستا د تورو اوږدو زلفو په خيالونو
    (سعدالله خان حيران)


    کس قدر کامِلاً سِیاہ شبیں ہیں!۔۔۔ [اور] کس قدر دراز و طویل شبیں ہیں!۔۔۔۔
    میں اِن [شبوں] کو تمہاری سِیاہ و دراز زُلفوں کے خیالوں میں گُذار رہا ہوں۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    هر نگاه د دلبرانو ذوالفقار دی
    (عبدالرّحمان بابا)


    دِل‌بَروں کی ہر نِگاہ ذوالفِقار ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «عبدالرّحمان بابا» کی ایک پُرشُہرت پشتو بَیت دیکھیے جِس کو پشتون مُعاشروں میں ضربُ‌المَثَل کی حیثیت حاصِل ہے:

    د مکې په بزرګۍ کښې هیڅ شک نشته
    ولې خر به حاجي نه شي په طواف
    (عبدالرّحمان بابا)


    «مکّہ» کی بُزُرگی میں کوئی شک نہیں ہے۔۔۔ لیکن طواف کرنے سے خر حاجی نہ ہو جائے گا!۔۔۔

    ===========

    «عبدالرّحمان بابا» فارسی‌دان تھے، اور یقیناً اُنہوں نے «سعدی شیرازی» کی کِتاب «گُلستان» بھی پڑھی ہو گی، لہٰذا کہا جا سکتا ہے کہ مُندَرِجۂ بالا پشتو بَیت اُنہوں نے «گُلستانِ سعدی» کی اِس مشہور بَیت سے مُتَأَثِّر ہو کر کہی تھی:

    خرِ عیسیٰ گرش به مکّه بَرَند
    چون بِیاید هنوز خر باشد
    (سعدی شیرازی)


    اگر «حضرتِ عیسیٰ» کے [بھی] خر کو «مکّہ» لے جایا جائے، تو جب وہ واپس آئے گا تو ہنوز خر ہی ہو گا۔۔۔۔

    ===========

    جِس طرح «عبدالرّحمان بابا» کی بَیت زبانِ پشتو میں ضربُ‌المَثَل ہے، اُسی طرح «سعدی شیرازی» کی بَیت بھی فارسی میں ضربُ‌المَثَل رہی ہے۔ دونوں ہی ابیات شعری لحاظ سے زیبا ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,932
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «عبدالرّحمان بابا» کی ایک پَندآمیز پشتو بَیت:

    ملایم ویل اثر په هغو څه کا
    چې په زړه کې یې نه شرم نه حجاب وي
    (عبدالرّحمان بابا)


    جِن اشخاص کے دِل میں نہ شرم نہ حیا ہو، اُن پر مُلائم گُفتار کیا اثر کرے گی؟!۔۔۔

    ============

    «دیوانِ رحمان بابا» کے ایک نُسخے میں بَیت کا متن یہ نظر آیا ہے:

    ملایم ویل اثر ورباندې نه کړي
    چه په زړه کښې یې نه شرم نه حجاب وي
    (عبدالرّحمان بابا)


    جِس شخص کے دِل میں نہ شرم نہ حیا ہو، اُس پر مُلائم گُفتار اثر نہیں کرتی۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر