پشتو اشعار مع اردو ترجمہ

حسان خان

لائبریرین
بابائے شعر و ادبیاتِ پشتو «خوشحال خان خټک» کی ایک پشتو بیت میں «کاشُروں» کے مِلّی وطن «کشمیر» کے ضرب‌المثَل حُسنِ خُوباں کا ذِکر اور «پختونخوا» کے دِل‌بروں کی سِتائش:

دا دلبرې چه په دا کشور کښې نن دي
په کشمیر کښې به یې نه مومې عدیلې
(خوشحال خان خټک)


جو [زنانہ] دِل‌بران اِمروز اِس مُلک (پختونخوا) میں ہیں، تمہیں اُن کی مِثل و نظیر «کشمیر» میں [بھی] نہ مِلے گی!

=============

میں زبانِ پشتو نہیں جانتا، لہٰذا اگر میرے پشتوگو دوستوں کو مذکورۂ بالا بیت کے ترجمے یا اِملاء میں کوئی خطا نظر آئے تو لُطفاً اُس سے آگاہ کریں۔ :)
 
آخری تدوین:

آورکزئی

محفلین
اصل میں عبدالرحمٰن بابا ، خوشحال خان خٹک ، غنی خان ، حمزہ بابا وغیرہ کے شاعری کو سمجھنا ویسے ہی مشکل ہے ۔۔۔ اگے سے اسکا اردو ترجمہ۔۔۔ افف ف ف
 

حسان خان

لائبریرین
«خوشحال خان خټک» (رح) نے ایک پشتو قصیدہ فصلِ بہار اور «نَوروز» کی آمد کے موقع پر اُس کی شادمانی میں لِکھا تھا۔ وہ اُس قصیدے کے مطلع میں «نَوروز»‌ کی سِتائش میں کہتے ہیں:

د نوروز منت په باغ دی په صحرا هم
نوراني یې شي له فیضه هغه دا هم

(خوشحال خان خټک)

«نَوروز» کا اِحسان باغ پر بھی ہے، اور بِیابان پر بھی۔۔۔ [کیونکہ] اُس کے فَیض سے یہ بھی مُنوّر ہو جاتا ہے، اور وہ بھی۔۔۔
 

حسان خان

لائبریرین
د یوسف د مینې لاف واړه عالم کا
ولې بل پسې ړوند نه شو بې یعقوبه
(خوشحال خان خټک)


«یوسُف» کی محبّت کا اِدّعا تو کُل عالَم کرتا ہے، لیکن «یعقوب» کے بجُز بعد میں کوئی دیگر شخص [اُس کے غم میں] کور (اندھا) نہ ہوا۔
 
آخری تدوین:

حسان خان

لائبریرین
«خوشحال خان خټک» کی ایک پشتو بیت میں «خُوبانِ مُلکِ کشمیر» کا ذِکر:

آفرین دی په دا تورو شهلا سترګو
چه یې کښلي د کشمیر کړلې مملوکې
(خوشحال خان خټک)


اِن زیبا و دل‌فریب چشم‌ہائے سِیاہ پر آفرین! کہ اِنہوں نے «خُوبانِ کشمیر» کو غُلام کر لیا ہے۔۔۔۔
 

حسان خان

لائبریرین
محبت غلام بادشاه، بادشاه غلام کا
خبر واخله له ايازه له محموده
(خوشحال خان خټک)


محبّت غُلام کو پادشاہ، اور پادشاہ کو غُلام کر دیتی ہے۔۔۔ [جاؤ] ایاز و محمود کی خبر لو [اور اِس قَول کی صداقت دیکھو]!
 

حسان خان

لائبریرین
قومِ پختون تقریباً کُلّاً ایک حنَفی سُنّی قوم ہے، اور اُس میں شیعوں کی تعداد بِسیار قلیل ہے، اور پختونوں کے کئی قبائل میں سے صرف «پختونخوا» کے «طُوری» و «بنگَش» و «اورَکزئی» قبائل ہی میں اِثناعشَری شیعیان موجود ہیں۔۔۔ «خوشحال خان خټک» ایک راسخ‌الاعتقاد اور سخت سُنّی تھے، اور اُن کو قبیلۂ بنگَش کی شیعیت پسند نہیں تھی۔ اُنہوں نے ایک پشتو قصیدے میں بنگَشوں کی ہَجو کرتے ہوئے ایک بیت میں اُن کی "رافِضیت" کی بھی نکوہِش (مذمّت) کی ہے:

بد مذهب رافضی ډېر دي په بنګښ کښ
چه خبر ندي د شرع په احکام
(خوشحال خان خټک)


«بنگَشوں» میں بدمذہب رافِضی بِسیار ہیں، کہ جو شریعت کے احکام سے آگاہ نہیں ہیں۔
 

حسان خان

لائبریرین
په یوه نسب کښ نېک و بد پیدا شي
محمد و بو لهب دواړه مکي دي

(خوشحال خان خټک)

ایک ہی نسَب میں نیک و بد [دونوں] مُتَوَلِّد ہوتے ہیں۔۔۔ حضرتِ محمد اور ابولہب دونوں مکّی ہیں۔۔۔۔
 

حسان خان

لائبریرین
(مصرع)
هر چرته چه کښېني هغه ځای لکه ګلشن کا
(خوشحال خان خټک)


وہ (یار) جِس بھی جگہ بیٹھتا ہے، اُس جگہ کو مِثلِ گُلشن کر دیتا ہے
 
آخری تدوین:

حسان خان

لائبریرین
و محمود وته نظر کوه مدام
چه غلام کړ خپلې مینې د غلام

(رحمان بابا)

«محمود» پر [بہ عِبرت] ہمیشہ نظر کرو، کہ [اُس کو] اُس کی محبّت نے غُلام کا غُلام کر دیا۔
× محمود = سُلطان محمود غزنَوی
 
آخری تدوین:

حسان خان

لائبریرین
ما بې عشقه بل هنر نه زده ناصحه
بخښنده شه که نادان یم که دانا

(رحمان بابا)

اے ناصِح! مجھ کو عشق کے بجُز [کوئی] دیگر ہُنر معلوم نہیں ہے۔۔۔ [اب] خواہ میں نادان ہوں یا دانا، [مجھ کو] مُعاف کر دو!
 
آخری تدوین:

حسان خان

لائبریرین
و هغو ته عاشق مه ویلی بویه
چه یې فکر یا د سر یا د دستار وي
(رحمان بابا)


اُن اشخاص کو عاشق نہ کہنا چاہیے کہ جن کو سر (زِندگی) یا دستار (نامُوس) کی فِکر ہو۔۔۔
 

حسان خان

لائبریرین
ایک جالِب چیز نظر آئی ہے کہ زبانِ پشتو میں «کوّا» (فارسی: کَلاغ/زاغ) کے لیے ایک تُرکی‌الاصل لفظ «قارغه» رائج ہے۔۔۔ بُلبُلِ پِشاور «عبدالرحمان بابا» کی ایک بیت دیکھیے جس میں یہ لفظ استعمال ہوا ہے:

هر مرغه په خپله جاله کښې همای دی
که قارغه که مښګیرک دی که ققنس
(رحمان بابا)


ہر پرندہ اپنے آشیانے میں «ہُما» ہے۔۔۔ خواہ کوّا ہو، خواہ چِیل، یا خواہ قَقنُوس (فِینِکس)۔۔۔

(«ہُما» کو ایک سعید و خوش‌شُگون پرندہ تصوُّر کیا جاتا تھا۔ «رحمان بابا» یہ کہنا چاہ رہے ہیں کہ ہر اِنسان اور ہر جانور اپنے گھر میں مَیمَنَت و سعادت محسوس کرتا ہے اور خوش‌بخت و خوش‌حال ہوتا ہے۔)
 

حسان خان

لائبریرین
لکه زه چه ستا د در په خاورو خوښ یم
خوښ به نه وي سلطانان په سلطنت کښ
(رحمان بابا)


[اے یار!] جِس طرح مَیں تمہارے در کی خاک پر شاد ہوں، [اُس طرح] سلاطین [بھی اپنی] سلطنت میں شاد نہ ہوں گے۔۔۔
 

حسان خان

لائبریرین
له فلکه د وفا امید باطل دی
کله دېو له آدم زاد سره وفا کا
(رحمان بابا)


فلک سے وفا کی اُمید باطِل ہے۔۔۔ دیو کب [کِسی] آدم‌زاد کے ساتھ وفا کرتا ہے؟ {دیو (dev) = شَیطان؛ عِفرِیت}
 

حسان خان

لائبریرین
عاشقي آسانه مه گڼه خبر شه
سر بازي ده هر نفس په دا میدان کښ
(رحمان بابا)


عاشقی کو آسان مت گُمان کرو۔۔۔ آگاہ ہو جاؤ کہ اِس میدان میں ہر لمحہ سربازی [و جاں‌بازی کرنا پڑتی] ہے۔۔۔
 

حسان خان

لائبریرین
زه رحمان بې یاره هسي شول و شل شم
لکه کب چه بې محیطه شول و شل شي
(رحمان بابا)


مَیں «رحمان» یار کے بغیر اُس طرح مفلوج و شل ہو جاتا ہوں کہ جس طرح مچھلی بحر کے بغیر مفلوج و شل ہو جاتی ہے۔
 

حسان خان

لائبریرین
ما سحر سبا لیدلی وُ د چا مخ
چه مې درسته ورځ و نه لیده دا ستا مخ
(رحمان بابا)


میں نے صُبح صُبح کس کا [شُوم] چہرہ دیکھا تھا کہ مجھ کو تمام روز تمہارا چہرہ نظر نہ آیا۔
 

حسان خان

لائبریرین
دا هلال دی چه لیده شې په شفق کښې
که په لاس د گل اندامې سپین وښی دی
(رحمان بابا)


آیا یہ ہِلال ہے جو شفَق پر نظر آ رہا ہے، یا پھر آیا یہ [کسی] گُل‌اندام [محبوبہ] کے دست پر سفید دست‌بند ہے؟۔۔۔ (دست‌بَند = کنگن)

(یعنی شاعر سمجھ نہیں پا رہا ہے کہ جو چیز اُس کو سُرخ شفق پر سفید ہِلال کی شکل میں نظر آ رہی ہے آیا وہ واقعی ہِلال ہی ہے، یا پھر کسی زنِ گُل‌اندام و گُل‌فام کے دست پر موجود سفید دست‌بند۔ یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ شفَق پر ہِلال دیکھ کر شاعر کو اپنی گُل‌اندام محبوبہ اور اُس کا سفید دست‌بند یاد آ گیا ہے۔)
 
Top