قامتِ دل ربا پر شباب آ گیا - نشور واحدی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جولائی 25, 2018

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (نشور واحدی)
    قامتِ دل ربا پر شباب آ گیا
    یا سوا نیزے پر آفتاب آ گیا


    جاگی جاگی ان آنکھوں کا عالم نہ پوچھ
    سامنے ایک جام شراب آ گیا


    اک نگاہ محبت کی تخمیر میں
    سب سمٹ کر جہان خراب آ گیا


    یہ چلے وہ بڑھے وہ جواں ہو گئے
    چند لمحوں میں یوم الحساب آ گیا


    جھوم اٹھی ایک ارماں بھری زندگی
    جب ہوائیں چلیں جب سحاب آ گیا


    آئیے آئیے اس طرف وہ نشورؔ
    شاعر یادگار شباب آ گیا
     

اس صفحے کی تشہیر