غزل: خوب سمجھا ہوں میں دنیا کی حقیقت لوگو

عاطف ملک نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 18, 2020

  1. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,351
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    ایک پرانی غزل محفلین کی خدمت میں پیش ہے۔

    خوب سمجھا ہوں میں دنیا کی حقیقت لوگو!
    تب تلک چاہ ہے، جب تک ہے ضرورت، لوگو!

    خود پرستی کے فسوں ساز سمندر میں کہیں
    مر گیا ڈوب کے احساسِ مروت لوگو!

    نہ رہا دور کہ انمول تھے اخلاص و وفا
    اب تو لگتی ہے ہر اک چیز کی قیمت، لوگو!

    "جن پہ تکیہ تھا وہی پتے ہوا دینے لگے"
    چھین کر گل سے صبا لے گئی نکہت لوگو‌!

    سیلِ جذبات نے سب توڑ دیے ضبط کے بند
    عشق کو حُسن کی راس آئی نہ صحبت لوگو!

    اس کے در، اس کے سگِ در کی بھی عزت کی جائے
    عشق یہ ہے، اسے کہتے ہیں محبت، لوگو!


    عاطفؔ ملک
    اکتوبر ۲۰۱۷​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 6
  2. محمد شکیل خورشید

    محمد شکیل خورشید محفلین

    مراسلے:
    430
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Tolerant
    خوب، عمدہ
     
    • متفق متفق × 1
  3. جاسمن

    جاسمن مدیر

    مراسلے:
    14,984
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Fine
    اس کے در، اس کے سگِ در کی بھی عزت کی جائے
    عشق یہ ہے، اسے کہتے ہیں محبت، لوگو!
    واہ واہ! بہت خوب!
     
  4. عاطف ملک

    عاطف ملک محفلین

    مراسلے:
    1,351
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Innocent
    بہت شکریہ محترمی
    بہت شکریہ آپا
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1

اس صفحے کی تشہیر