غزل: آج یہ کون مرے شہر کا رستہ بھولا

Qamar Shahzad نے 'آپ کی شاعری (پابندِ بحور شاعری)' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏ستمبر 17, 2020

  1. Qamar Shahzad

    Qamar Shahzad محفلین

    مراسلے:
    25
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cool
    آج یہ کون مرے شہر کا رستہ بھُولا
    دیکھ کر جس کو مرا قلب دھڑکنا بھُولا

    میں ہی مبہوت نہیں حسنِ فسوں گر کی قسم
    جس نے دیکھا اسے پلکوں کو جھپکنا بھُولا

    بھولتا کیسے مرا دل مری جاں کا مالک
    کون حاکم ہے کہ جو اپنی رعایا بھُولا

    بھولپن میں کیا اظہارِ محبت اس نے
    کتنا بھولا ہے، مرا بزم میں ہونا بھُولا

    چاند بھی دے گا شہادت کہ درونِ فرقت
    میں کسی شب نہ ترا چاند سا چہرہ بھُولا

    بھول جاتا ہے حقیقت میں وہی روزِ وصال
    جو نہیں خواب میں اک روز بھی آنا بھُولا

    بعد چسکی کے ترے ہاتھ کو چوما یوں ہے
    خیر سے چائے میں تُو آج ہے میٹھا بھُولا

    یاد رہتی نہیں باتیں مجھے کل کی لیکن
    آج تک مجھ کو نہیں اس کا سراپا بھُولا

    غیر ہی دیکھا کیے اس کو درونِ محفل
    وہ سجا جس کے لیے اس کو دکھانا بھُولا
    قمر آسی
     

اس صفحے کی تشہیر