شفیق خلش شفیق خلش ::::: حالت سے ہُوئے اِس کی بدنام نہ تم آئے ::::: Shafiq Khalish

طارق شاہ نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏نومبر 20, 2015

  1. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,645
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm

    غزلِ
    [​IMG]

    حالت سے ہُوئے اِس کی بدنام نہ تم آئے
    دینے دلِ مضطر کو آرام نہ تم آئے

    جب وقت پڑا دِل پر کُچھ کام نہ تم آئے
    تھی چارہ گری خاطر اِک شام نہ تم آئے

    لاحق رہے اِس دِل کو اوہام نہ تم آئے
    بِھجوائے کئی تم کو پیغام نہ تم آئے

    افسوس تو کم ہوتا، گر ساتھ ذرا چلتے
    تا عُمْر کے وعدے پر دو گام نہ تم آئے

    کم ظُلم و سِتم تم نے ہم پر نہ روا رکھّا
    دے وعدہ و آمد کے پیغام نہ تم آئے

    تنہا جو کیا تم نے، دُنیا نے لِیا ہاتھوں
    کیا کیا نہ لگے ہم پر اِلزام نہ تم آئے

    لوگوں سے سُنے ہم نے اِس ترک تعلّق پر
    تمہاری ہی نِسبت سے دُشنام نہ تم آئے


    اب آئے تو کیا آئے، کُچھ دل کو نہیں پروا
    جب ہجر و مصائب کے ایّام نہ تم آئے


    سب درد و خلش دِل سے دھونے کا اِرادہ تھا
    تیار تھے بِکنے کو بے دام نہ تم آئے

    شفیق خلش
     
    آخری تدوین: ‏نومبر 20, 2015

اس صفحے کی تشہیر