فراق زمیں بدلی فلک بدلا مذاق زندگی بدلا - فراق گورکھپوری

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 4, 2018

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (فراق گورکھپوری)
    زمیں بدلی فلک بدلا مذاق زندگی بدلا
    تمدن کے قدیم اقدار بدلے آدمی بدلا


    خدا و اہرمن بدلے وہ ایمان دوئی بدلا
    حدود خیر و شر بدلے مذاق کافری بدلا


    نئے انسان کا جب دور خود نا آگہی بدلا
    رموز بے خودی بدلے تقاضائے‌ خودی بدلا


    بدلتے جا رہے ہیں ہم بھی دنیا کو بدلنے میں
    نہیں بدلی ابھی دنیا تو دنیا کو ابھی بدلا


    نئی منزل کے میر کارواں بھی اور ہوتے ہیں
    پرانے خضر رہ بدلے وہ طرز رہبری بدلا


    کبھی سوچا بھی ہے اے نظم کہنہ کے خداوندو
    تمہارا حشر کیا ہوگا جو یہ عالم کبھی بدلا


    ادھر پچھلے سے اہل‌‌ مال و زر پر رات بھاری ہے
    ادھر بیداری جمہور کا انداز بھی بدلا


    زہے سوز‌ غم آدم خوشا ساز دل آدم
    اسی اک شمع کی لو نے جہان تیرگی بدلا


    نئے منصور ہیں صدیوں پرانے شیخ و قاضی ہیں
    نہ فتوے کفر کے بدلے نہ عذر دار ہی بدلا


    بتائے تو بتائے اس کو تیری شوخئ پنہاں
    تری چشم توجہ ہے کہ طرز بے رخی بدلا


    بہ فیض آدم خاکی زمیں سونا اگلتی ہے
    اسی ذرے نے دور مہر و ماہ و مشتری بدلا


    ستارے جاگتے ہیں رات لٹ چھٹکائے سوتی ہے
    دبے پاؤں کسی نے آ کے خواب زندگی بدلا


    فراقؔ ہمنوائے‌‌ میرؔ و غالبؔ اب نئے نغمے
    وہ بزم زندگی بدلی وہ رنگ شاعری بدلا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 2
  2. طارق شاہ

    طارق شاہ محفلین

    مراسلے:
    10,642
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    فراقؔ گورکھپُوری

    زمِیں بدلی، فلک بدلا، مذاقِ زِندگی بدلا
    تمدّن کے قدِیم اقدار بدلے، آدمی بدلا

    خُدا و اَہٗرمَن بدلے، وہ ایمانِ دُوئی بدلا
    حدُودِ خیر و شر بدلے، مذاقِ کافرِی بدلا

    نئے اِنسان کا جب، دَور ِخود نا آگہی بدلا
    رمُوز ِبے خودی بدلے ، تقاضائے‌ خودی بدلا

    بدلتے جا رہے ہیں ہم بھی، دُنیا کو بدلنے میں!
    نہیں بدلی ابھی دُنیا ، تو دُنیا کو ابھی بدلا

    نئی منزِل کے مِیر ِکارواں بھی اور ہوتے ہیں
    پُرانے خضرِرہ بدلے، وہ طرزِ رہبَرِی بدلا

    کبھی سوچا بھی ہے، اے نظم ِکُہنہ کے خُداوندو !
    تمہارا حشر کیا ہوگا ؟ ، جو یہ عالَم کبھی بدلا

    اِدھر پچھلے سے اہل‌‌ ِمال و زر پر رات بھاری ہے
    اُدھر بیداریِ جمہُور کا انداز بھی بدلا

    زہے سَوزِ‌ غَمِ آدم ، خوشا سازِ دلِ آدم
    اِسی اِک شمع کی لَو نے، جہانِ تِیرَگی بدلا

    نئے منصوُر ہیں ،صدیوں پُرانے شیخ و قاضی ہیں
    نہ فتوے کُفر کے بدلے، نہ عُذر دار ہی بدلا

    بتائے تو بتائے اِس کو تیری شوخئ پنہاں
    تِری چشمِ توجّہ ہے کہ طرزِ بے رُخی بدلا

    بہ فیضِ آدمِ خاکی، زمِیں سونا اُگلتی ہے
    اِسی ذرے نے، دَور ِمہر و ماہ و مُشتَرِی بدلا

    سِتارے جاگتے ہیں، رات لَٹ چھٹکائے سوتی ہے
    دَبے پاؤں، کسی نے آ کے خوابِ زندگی بدلا

    فراقِؔ ہمنوائے‌‌ میرؔ و غالبؔ! اب نئے نغمے
    وہ بزمِ زِندگی بدلی، وہ رنگِ شاعِرِی بدلا

    فراقؔ گورکھپوری
    (شری رگھوپتی سہائے)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر