ریاست پاکستان کا قیام کس حد تک درست تھا؟

arifkarim نے 'تاریخ کا مطالعہ' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏مارچ 9, 2009

  1. زونی

    زونی محفلین

    مراسلے:
    4,268
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Amused


    لیکن آپ یہ کیسے کہہ سکتے ہیں ، فرقے تو خلافتِ راشدہ کے بعد سے چلے آرہے ہیں اور مغل کونسے دودھ کے دھلے ہوئے تھے ، طاقت جب فرد واحد کے ہاتھ میں ہو تو اسکی شرافت اور پرہیزگاری کا اندازہ تو بخوبی لگایا جا سکتا ھے اور تو اور اس وقت تو کوئی لانگ مارچ اور دھرنے کا رواج بھی نہیں تھا :battingeyelashes:
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  2. قمراحمد

    قمراحمد محفلین

    مراسلے:
    1,561
    کیا تقسیم ہند کی بنیاد غیر مذہبی ہے؟

    تکبیر مسلسل…خورشید ندیم

    مسلمانوں اور ہندووں میں موجودتہذیبی تضاد اگر امر ِواقعہ ہے تو اس کا سبب مذہب کے علاوہ کیا ہو سکتا ہے؟دو قو می نظریہ اگر جنوبی ایشیا میں بسنے والے مسلمانوں کے سیاسی موقف کا صحیح عنوان ہے تو قیام ِ پاکستان کی اساس غیر مذ ہبی کیسے ہو سکتی ہے ؟قا ئداعظم کا نقطہ نظر اگر درست تھا تو بھارت اور پاکستان کی نظریا تی شناخت یکساں کیسے ہو سکتی ہے ؟ذہنی توازن دونوں کو ایک ساتھ قبول کر نے میں مانع ہے۔جو لوگ دونوں باتیں ایک سانس میں کہتے ہیں،نہیں معلوم وہ اس فکری تضاد کا کتنا احساس رکھتے ہیں۔تہذیب کیا ہے ؟جغرافیہ،تاریخ ،مذہب اور رسوم ورواج کے اشتراک سے جو طرز ِ معاشرت وجود میں آتا ہے ،وہ تہذیب ہے۔تہذیب کے ان اجزائے ترکیبی میں سے اگرکسی ایک میں اختلاف پیدا ہو جائے تو دیگر اجزا میں اشتراک کے باوجود تہذیبی تضاد کا پیدا ہو نا یقینی ہے۔

    بر صغیر کے ہندو اور مسلمان صرف مذہب میں ایک دوسرے سے مختلف تھے۔ایک تاریخ،ایک جغرافیہ اورایک طرح کے رسوم و رواج کے باوجود اگر تہذیبی تضاد موجود تھا تو اس کا سبب مذہب کے علاوہ آخر کیا ہو سکتا ہے؟معاشی تضاد تو اس بنیا دی فرق کا ایک نا گزیر نتیجہ ہے،سبب کسی طرح نہیں۔تاریخ میں کبھی ایسا نہیں ہوا کہ محض اقتصادی مفادات کے ٹکراؤ نے کسی تہذیبی تضاد کو جنم دیا ہو۔سیاسی تنازعات کے نتیجے میں تو یہ ضرور ہوا کہ وقت گزرنے کے ساتھ ان اختلافات نے تہذیبی رنگ اختیار کر لیا ہو، معاشی اختلافات کبھی تہذیبی تضاد میں نہیں ڈھلے۔اشتراکیت اور سرمایہ داری دو مختلف اقتصادی نظام ہیں لیکن ان میں کوئی بنیا دی تہذیبی اختلاف نہیں۔ اقتصادیات میں مسابقت ہو تی ہے ،تضاد نہیں۔ سر مایہ دارانہ معیشت پر تو یہ بات بطور خاص صادق آتی ہے۔ آج پاکستان میں بہت سی ملٹی نیشنل کمپنیاں کاروبار کر رہی ہیں۔وہ 14اگست کو پاکستان کے ترانے گاتیں اور اسلام کے تہواروں، عیدین وغیرہ کے موقع پر مسلمانوں سے اظہار َ یکجہتی کرتی نظر آتی ہیں۔مقامی مارکٹ اجازت دے گی تو اشتہارات میں عورت نیم برہنہ ہو گی،بصورت ِ دیگر اسے سکارف بھی پہنایا جا سکتا ہے۔

    یہاں کوئی تہذیبی تضاد ان کے راستے میں حائل نہیں کہ ان کی تہذیب منافع کماناہے۔اس لیے مسلمانوں اور ہندووں میں اگراقتصادی مسابقت،نہ کہ تضاد،موجود تھی تو اس کا سبب تہذیبی تضاد تھا جس کی بنیاد مذہب کے سوا کچھ اور نہیں ہو سکتی۔
    بر صغیر کے مسلمانوں نے جب اس سوال کو غور و فکر کا موضوع بنا یا کہ انگریزوں کی رخصتی کے بعد یہاں مسلمانوں کا مستقبل کیا ہو گا تو اس باب میں تین نقطہ ہا ئے نظر وجود میں آئے۔ایک جو دو قو می نظریہ کے عنوان سے شہرت رکھتا ہے۔اس کا حاصل یہ تھا کہ ہندو اور مسلمان ایک ساتھ نہیں رہ سکتے اس لیے مسلم اکثریتی علاقوں کو ملا کر ایک علیحدہ ملک بنا دیا جائے۔دوسرا نقطہ نظرمتحدہ قو میت کے عنوان سے معروف ہے،جس کے مطابق قومیں وطن اورسر زمین سے بنتی ہیں،مذہب سے نہیں۔تیسرا نقطہ نظر یہ تھا کہ متحدہ قومیت کا نظریہ غیر اسلامی ہے اور علیحدہ ملک اس مسئلے کا کوئی پائیدار حل نہیں۔اس کا ایک سبب یہ ہے کہ الگ وطن کا مطالبہ کرنے والے اس نظریے سے کوئی فکری منا سبت رکھتے ہیں نہ عملی جس کی بنیاد پر وہ پاکستان بنانا چاہتے ہیں۔ ہندوستان کے مسلمانوں کو چائیے کہ وہ پہلے شعوری مسلمان بنیں اور پھر پورے بر صغیر کو اسلامی ریاست بنا نے کی کوشش کریں۔ان تینوں نقطہ ہائے نظر سے اختلاف کیا جا سکتا ہے لیکن ان سے انکا ر تاریخی مسلمات کا انکا ر ہے۔اب ان تینوں طرح کے خیالات پر ایک نظر ڈالیے۔متحدہ قو میت کا تصور دراصل دوقو می نظریے کا رد عملanti thesis )تھا۔مذہب کے بجائے وطن کو قو میت کی اساس کے طور پر پیش کرنا خود اس بات کی دلیل ہے کہ دو قو می نظریے کی بنیادمذہب ہے۔اگر ایسا نہ ہوتا تو متحدہ قومیت کا مقدمہ بے معنی اور اور بے وقت کی راگنی ہو تا اور کوئی وجہ نہ تھی کہ جمعیت علمائے ہندکے اکابر مسلم لیگ کی تنقید کا نشانہ بنتے۔ اسی طرح مسلم لگ کی قیادت پر یہ اعترض بے معنی ہو تا کہ وہ اسلام کے ساتھ کوئی فکری اور عملی مناسبت نہیں رکھتی۔اگر وہ اسلام کے نام پر الگ وطن کا مطالبہ نہیں کررہی تھی تواس کی اسلام سے وابستگی کو پرکھنے کی کوئی ضرورت نہیں تھی۔ اگر کوئی شخص پیغمبر ہونے کا دعویٰ نہیں کر رہا تو اس سے معجزے کا مطالبہ کوئی لا علم ہی کر سکتا ہے۔ اس بات کے حق میں کہ قیام ِپاکستان کی بنیاد مذہب تھا، قائد اعظم کے بہت سے ارشادات بھی پیش کیے جا سکتے تھے لیکن میں نے ان سے دانستہ صرف ِ نظر کیا ۔اس کا سبب یہ ہے کہ اس حوالے سے یہ کہا جا تا ہے انہوں نے ایسی باتیں صرف مخالف مذہبی گروہوں کی تنقید کے جواب میں کہی تھیں۔یہ موقف علم و استدلال کے حضور میں اتنا بے وقعت ہے کہ اس کے جواب میں کچھ کہنا محض وقت کا ضیاع ہے۔یوں بھی اس وقت مجھے صرف یہ بتانا ہے کہ ہندووں اور مسلمانوں میں تہذیبی تضاد کو مان لینے کے بعد یہ قبول کیے بغیر کوئی چارہ نہیں کہ اس تضاد کا سبب مذہب ہی تھا۔

    علمی حقائق اور تاریخی مسلمات کے انکا ر کا ایک ناگزیر نتیجہ موقف کا تضاد ہے۔ اسلامی علوم اور تاریخ سے ایسی بہت سی مثالیں پیش کی جا سکتی ہیں کہ جب ہم کسی بنیادی مسلمے کا انکا ر کر تے ہیں تو پھر ہر قدم پر ہمیں ایک نئے تضاد کا سامنا کر نا پڑتا ہے۔ہم انکا ر پر قائم رہتے ہوئے جب اس تضاد کو حل کر نے کی کوشش کر تے ہیں تو ایک نیا تضاد کھڑا ہو جا تا ہے۔اس طرح غلطی ہائے مضامین کا سلسلہ دراز ہو تا چلا جا تا ہے اور لوگ ان تضادات کے ساتھ جینے کے عادی ہو جا تے ہیں۔تاہم ہر طبیعت اس تضاد کو گوارا نہیں کرتی۔ایسا رحجان رکھنے والا فرد جب ان تضادات کو حل کر نے کی کوشش کر تا ہے تو ان مقد مات کو زیربحث لا تا ہے جنہیں مقد مین بطور مسلمات قبول کر تے رہے ہیں۔ اسلامی علوم میں یہ کام تجدید کہلاتا ہے اور دیگر علوم میں تحقیق۔ہند ووں اور مسلمانوں کے اختلاف اور قیام ِپاکستان کی بنیاد کو جب ہم مذہبی ماننے سے انکا ر کر تے ہیں تودر اصل ایک تا ریخی مسلمے کوجھٹلانا چاہتے ہیں۔پھر اس تضاد سے چھٹکا را ممکن نہیں رہتا جس کی میں نے نشان دھی کی ہے۔

    اس تضاد کو ایک اور زاویے سے دیکھیے۔تقسیم ِہند کے بارے میں ایک نقطہ نظر یہ ہے کہ یہ ایک غلط فیصلہ تھا۔اس نقطہ نظر کی تین تعبیریں ہیں۔ایک یہ کہ پاکستان کا قیام مسلمانوں کی تقسیم کا سبب بنا جس سے ان کی قوت میں کمی آئی۔اس سے یہ تو ممکن تھا کہ ان مسلمانوں کی کچھ بھلائی ہو جو مسلم اکثریتی علاقے میں رہتے تھے لیکن ان سے بڑی تعداد ایسے مسلمانوں کی تھی جو غیر مسلم اکثریت کے علاقے میں رہتے تھے۔ قیا م پاکستان کا مطلب انہیں ہند ووں کے رحم و کرم پر چھوڑنا تھا۔تاریخی اعتبار سے یہ موقف مولا نا ابو الکلام آزادسے منسوب ہے۔دوسری تعبیر یہ ہے کہ اگربر صغیر تقسیم نہ ہو تا تو متحدہ ہندوستان ایک بڑی طاقت ہو تا اورعالمی قو توں کے لیے یہ ممکن نہ تھا کہ وہ ایسی مضبوط ریاست پر وہ دباؤ ڈالتیں آج پاکستان جس کا شکا ر ہے۔یوں اس خطے اور دنیا کی تاریخ مختلف ہو تی۔ تیسرا نقطہ نظر یہ ہے کہ ہندووں اور مسلمانوں میں کوئی تہذیبی اختلاف نہیں تھا۔ مذہب ہر شخص کا ذاتی معاملہ ہے۔ جب بعض لوگوں نے سیاسی مسائل کو مذہب کے زاویے سے دیکھا تو اس سے مزید الجھا ؤ پیدا ہوا اور اس عمل میں قائد اعظم بھی شریک تھے۔ اگر متحدہ ہندو ستان ایک سیکو لر ریاست کے طور پر قائم رہتا تو اس میں مسلمان اسی طرح ترقی کر سکتے تھے جس طرح دوسری اقوام کے لوگ ترقی کر رہے ہیں۔ میں نے ابتدامیں جن لوگوں کے فکری تضا دکا ذکر کیا ہے وہ یہی را ئے رکھتے ہیں۔پاکستا ن میں چونکہ یہ بات کہنا مشکل ہے اس لیے وہ ہرچند دن بعد مختلف طرح سے یہ کہنے کی تقریب پیدا کرتے ہیں کہ پاکستان تو مذہب کے نام پر نہیں بنا تھا اور یوں ایک تایخی واقعے کا انکا ر کر کے جہاں خودنظری تضاد میں مبتلا ہو تے وہاں دوسروں کو بھی فکری پرا گندگی کا شکار بنا تے ہیں۔

    میرے نزدیک ہمیں پاکستان میں وہ فضا پیدا کر نی چائیے کہ کسی کو اپنی بات کہنے میں کو ئی تکلف محسوس نہ ہو۔اگر چو مسکی جیسے لوگ امریکا اور ارون داتی رائے بھارت میں اپنی بات کہہ سکتے ہیں جو ریاست کی سوچ اور عوامی مذاج سے مختلف ہے تو پاکستان میں کیوں نہیں۔ ایک موضوع پر جب مختلف آرا سامنے آئیں گی تو اس سے با لآخرعام آدمی بھی صحیح بات تک پہنچ سکے گا۔تاہم تاریخی واقعات کو بس اسی حوالے سے بیان کر نا چاہیے کہ اس سے مقصودان کی تنقیح ہے۔ پاکستان ّج دینا کے نقشے پر ایک حقیقت ہے اور ان شا اللہ یہ حقیقت ہی رہے گا۔اسی طرح ستانوے فی صد مسلمان آبادی سے یہ توقع رکھنا بھی عبث ہے کہ وہ اپنے اجتماعی مسائل کے حل کے لیے قرآن مجید کو وہی اہمیت دیں گے جو اس کی نظروں میں گیتا کی ہو سکتی ہے۔پاکستان کی نظر یا تی شناخت کے حوالے سے عمو می رائے سے مختلف رائے رکھنے والے یقیناً یہ حق رکھتے ہیں کہ وہ اپنی بات عام لو گوں کے سامنے رکھیں لیکن اس کے لیے تاریخی مسلمات کے انکا ر سے خود ان کی اصابت ِ رائے مشکوک ٹھہرے گی۔
     
  3. قمراحمد

    قمراحمد محفلین

    مراسلے:
    1,561
    پاکستان اور بھارت ایک دوسرے کے دشمن نہیں؟

    ....سفیر احمد صدیقی


    واہ! واہ! کیا خوب بیان دیا گیا ہے کہ پاکستان اور بھارت ایک دوسرے کے دشمن نہیں ہیں۔ یہ ایسا انکشاف ہے جس سے عقل دنگ رہ گئی ہے۔ دشمن نے ہمیں مار مار کر ادھ موا کردیا ہے (مشرقی پاکستان اور جنگی کیمپوں کے حوالے سے) اور بین الاقوامی برادری میں رسوا اور ذلیل کرنے میں کوئی کسر اٹھا نہیں رکھی لیکن ہم یہ کہہ رہے ہیں کہ بھارت ہمارا دشمن نہیں۔ ہمارے صدر صاحب فرماتے ہیں کہ ممبئی میں دہشت گردی کے نتیجے میں بھارت کا طرزعمل محض جذباتی ردّعمل تھا۔ کیا عالی مرتبت بھارت کی ازلی عناد اور دشمنی جو سقوط ڈھاکہ پر منتج ہوئی اسے بھول گئے ہیں؟ کیا زرداری صاحب پنڈت جواہر لال نہرو کے یو این او میں کیے ہوئے وعدے بھول گئے ہیں کہ کشمیر میں رائے شماری کرائی جائے گی تاکہ کشمیری اس بات کا فیصلہ کریں کہ وہ پاکستان کے ساتھ الحاق چاہتے ہیں یا ہندوستان میں ضم ہونا چاہتے ہیں۔ سیاچن میں بھارتی فوج گھس جاتی ہے اور اس ارادے سے گھستی ہے کہ جب بھی موقع ملا وہ بلتستان اور گلگت پر قابض ہو جائے گی۔ کیا بھارت کی اس حرکت کو ہم دوستی کا نام دیں۔ڈپلومیسی بہت نازک اور اچھی چیز ہے لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ ہم بھونڈی ڈپلومیسی اختیار کرتے ہوئے اپنا تشخص ہی کھو بیٹھیں۔ مثلاً صدر محترم بھارت کو خوش کرنے کے لئے یہ فرماتے ہیں کہ: ”ہم (ہندو اور مسلمان) ایک ہی مٹّی کے بنے ہوئے ہیں۔“

    کیا ہمیں یہ بات دہرانے کی ضرورت ہے کہ ان کی بود و باش، لباس، طور طریقے، رہن سہن مسلمانوں سے اتنے جدا اور مختلف ہیں جیسے قطب شمالی اور قطب جنوبی۔ میں حیران ہوں کہ انہیں مسجد اور مندر میں کوئی فرق نظر نہیں آتا۔ اگر یہ کہنا درست ہے کہ ہم ایک ہی خمیر سے بنے ہوئے ہیں تو اس کا مطلب یہ ہوا کہ گاندھی جی ٹھیک ہی کہا کرتے تھے کہ: "How can a group of converts claim a separate homeland."
    پھر سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ اگر ہم ایک ہی مٹی کے بنے ہوئے ہیں تو پھر کیا خدانخواستہ دو قومی نظریہ ایک ڈھونگ تھا اور جدوجہد پاکستان "An Exercise in Futility" ۔ کیا دس ملین مسلمانوں نے حصول پاکستان کے لئے اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کیا تھا وہ بھی ان کی بھول تھی اور پاکستان کے نام پر کرہٴ ارض پر وقوع پذیر ہونے والی سب سے بڑی ہجرت بھی لاحاصل تھی۔ مائی لارڈ اگر ہم ایک مٹّی کے بنے ہوئے ہوتے تو گاندھی اور نہرو ہمیں متحدہ ہندوستان میں اقلیت کا درجہ دینے پر کیوں مصر تھے۔ اگر ہم ایک ہی خمیر کے بنے ہوئے ہیں تو مسلمانوں کے لئے گائے ایک مقدس جانور تو نہیں ہے۔ پھر ہم ایک جیسے کیوں کر ہوئے۔ کس زاویئے سے کس منطق کی رو سے۔ جب کسی دو شے کی مماثلت پیش کی جاتی ہے تو ان دو چیزوں میں کوئی مشابہت کا ہونا لازمی ہے۔ زرداری صاحب مذہب، ثقافت، تہذیب و تمدن، معاشرتی اقدار سب کو اپنے ایک نا مناسب بیان سے ضم کر دینا چاہتے ہیں۔
     
  4. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    (یہی وہ ملا کا کردار ہے جس پر "Hot post" میں صفحے کالے کیے جا رہے ہیں مگر ملا پر آنچ نہیں آنے دی جا رہی)
    وسلام
     
  5. dxbgraphics

    dxbgraphics محفلین

    مراسلے:
    5,388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    اس پر بحث کی جاسکتی ہے اگر محفل کے منتظمین حذف یا بین نہ کریں تو ۔۔۔۔
    کیوں جیسا کہ اوپر بیان کیا گیا کہ خلافت راشدہ کےبعد سے فرقہ بندی ہوئی ہے تو یہ سچ ہے تمام فساد کی جڑ عبداللہ بن سبا یہودی منافق تھا جس نے حضرت عثمان رضی اللہ اور حضرت علی رضی اللہ کے درمیان اختلافات پیدا کئے۔
    یہ وہی عبداللہ بن سبا ہے جس کو حضرت علی کرم اللہ وجہ نے قتل کا حکم دیا لیکن یہ مصربھاگ گیا۔
     
  6. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    چلیں آپ کوشش کر کے دیکھ لیں۔ ابھی دودھ کا دودھ اور پانی کا پانی ہو جائے گا!
     
  7. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,872
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold

    قبلہ لگتا ہے آپ کا اسلام اتنا کمزور ہے کہ ایک بندے کی سازش نہ سہہ سکا۔ :)
     
  8. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    جی ہاں۔ مسائل سے بھاگنے کا اچھا طریقہ ہے :grin:
     
  9. dxbgraphics

    dxbgraphics محفلین

    مراسلے:
    5,388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    شاید آپ برائے نام لائبریری رکن ہیں
     
  10. فیصل عظیم فیصل

    فیصل عظیم فیصل محفلین

    مراسلے:
    3,646
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    اس موضوع میں لائبریری رکنیت کا کیا تعلق ہے ۔۔۔؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. dxbgraphics

    dxbgraphics محفلین

    مراسلے:
    5,388
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    لائبریری رکن کو پاس اتنا تو علم ہونا چاہئے کہ عبداللہ بن سبا یہودی جیسے سردار المنافقین کو نہیں جانتا
     
  12. طالوت

    طالوت محفلین

    مراسلے:
    8,353
    جھنڈا:
    SaudiArabia
    موڈ:
    Bashful
    موضوع سے متعلق گفتگو رہے تو بہتر ہے ۔ آپ دونوں جس مختصر بیانی سے کام لے رہے ہیں اس سے دونوں کے موقف غیر واضح ہیں اور بات بگڑنے کے علاوہ کچھ نہ ہو گا۔
    وسلام
     
  13. مغزل

    مغزل محفلین

    مراسلے:
    17,597
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Dunce
    عارف کریم صاحب اس لڑٰ ی کے ابتدائی دس مراسلے آج دیکھیے ہیں، فی الحال رسید حاضر ہے ، مجھے آپ کی کئی باتوں سے اتفاق ہے ، شکریہ
     
  14. فرخ منظور

    فرخ منظور لائبریرین

    مراسلے:
    12,872
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Cold

    بقول حالی
    مذہبی بحث میں نے کی ہی نہیں
    فالتو عقل مجھ میں تھی ہی نہیں

    :)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    پسند کرنے کا شکریہ، بہت کم لوگوں کو میرے مراسلوں سے اتفاق ہے۔ کیونکہ تقریبا 90 فیصد ہمارے ہاں لکیر کے فقیر ہیں۔
    جی ہاں اس دھاگے کا مذہبی بحث سے کوئی تعلق نہیں۔ ریاست پاکستان کا قیام ایک سیاسی و تاریخی مسئلہ ہے۔ اگر یہ مذہبی فیصلہ ہوتا تو آج بھارت میں پاکستان سے زیادہ مسلمان نہ ہوتے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  16. ابن جمال

    ابن جمال محفلین

    مراسلے:
    469
    آج کل جسونت سنگھ کی کتاب کا ہرجگہ چرچا ہے اوراس کے جو مندرجات ہیں وہ کوئی نئی بات نہیں‌ہے۔ یہی بات کافی پہلے مولانا ابوالکلام آزاد انڈیاونس فریڈم یاآزادی کی کہانی میں لکھ چکے ہیں۔ انہوں‌نے اس کتاب کے تیس صفحات میں لاکر میں رکھوادیاتھا اوروصیت کی تھی کہ ان کے انتقال کے تیس سال بعد وہ شائع کئے جائیں۔ تیس سال بعد جب ان تیس صفحات کو کھولا گیا تواس میں بھی پاکستان کے قیام میں جواہر لال نہرو کی ہٹ دھرمی اورسخت موقف کا ذکر تھا۔
    ویسے حال ہی میں ڈاکٹر اسرار احمد کی بھی ایک کتاب دیکھنے کا اتفاق ہوا۔اس میں انہوں‌نے عجیب بات لکھی ہے کہ پاکستان کے قیام کا بنیادی مقصد معاشی مفادات کا تحفظ تھایعنی زمینداروں اورجاگیرداروں نے اپنے مفادات کے تحفظ کیلئے پاکستان بنایا۔
     
  17. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    ہاں نا وہی امرا کی لاٹھی بھینس والا معاملہ تھا یہاں‌بھی!
    جیسا کہ ہر ملک میں ہوتا ہے! :notlistening:
     
  18. محسن حجازی

    محسن حجازی محفلین

    مراسلے:
    2,513
    موڈ:
    Breezy
    بنیادی طور پر قیام پاکستان ایک سنگین غلطی تھی۔
    تاہم دلچسپ امر یہ ہے کہ اس غلطی کا ارتکاب خود نادان اور ناعاقبت اندیش ہندو قیادت کے ہاتھوں ہوا۔ برصغیر کی تقسیم انگریزوں کی بساط لپیٹتے وقت wrap up activity تھی سو انہیں تو کسی طرح اسے تقسیم کرنا ہی تھا۔ دوسری طرف قائداعظم کا فہم و ادراک بہت گہرا تھا ابتدا میں وہ خود کانگریس میں شامل رہے اور ہندو مسلم اتحاد کے داعی تھے۔ تاہم مسلم نکتہ نظر سے اگرچہ جزوی سہی لیکن بہت بڑی کامیابی تھی۔ جزوی اس طرح سے کہ تقسیم میں دھاندلی کے سبب بہت سے علاقے جو پاکستان کے حصے میں آنا تھے وہ نہ آ سکے۔اگر ہندو قیادت 1930 میں 2030 کا سوچتی تو وہ تقسیم کو روکنے کی ہر ممکن کوشش کرتی بلکہ مسلم آبادی کے تحفظات کو ہر طرح سے دور کرتے ہوئے ہندوستان کو متحد رکھتی۔
    مگر ایسا نہ ہو سکا جس کا نقصان بہرطور دونوں اقوام کو اٹھانا پڑا۔ تاہم مسلمانان ہند کو اس نقصان کے بدلے میں ظاہر ہے کہ ایک الگ آزاد ریاست بھی ملی جو اس نقصان کی تلافی سے کہیں بڑھ کر ہے تاہم بنیوں کے ہاتھ کچھ نہیں آیا۔
    موجودہ حالات کا قیام پاکستان سے کچھ لینا دینا نہیں یہ سراسر قیادت کی نالائقی ہے اس کاکردگی کی بنیاد پر قیام پاکستان کو غلطی قرار دینا بذات خود ایک غلطی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 8
  19. arifkarim

    arifkarim معطل

    مراسلے:
    29,828
    جھنڈا:
    Norway
    موڈ:
    Happy
    یہ ایک اچھا پوائنٹ ہے۔ مگر قیادت کے فقدان کو خالی سیاست دانوں پر ٹھونسا شاید درست نہ ہو۔ ویسے ہماری حکومتیں اتنی دور اندیش کبھی نہیں ہوئیں کہ اگلے سال تک کی بھی دور اندیشی کر سکیں۔ :battingeyelashes: اسکا سب سے بڑا ثبوت برصغیر کا ٹھاٹھے مارتا آبادی کا سیلاب ہے جو کہ ہر سال روز بہ روز بڑھتا جا رہا ہے! :biggrin:
     
  20. محسن حجازی

    محسن حجازی محفلین

    مراسلے:
    2,513
    موڈ:
    Breezy
    نومولود کی پیدائش کے بائیس برس بعداس کے ڈاکوں اور ڈکیتیوں کا الزام والدین اور ہسپتال کی انتظامیہ پر ڈالنا کیسا ہے؟ :noxxx:
     

اس صفحے کی تشہیر