رُخ تو میری طرف سے پھیرے ہیں - مُنشی بشیشور پرشاد منوّر لکھنوی

کاشفی نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 21, 2017

  1. کاشفی

    کاشفی محفلین

    مراسلے:
    15,384
    غزل
    (مُنشی بشیشور پرشاد منوّر لکھنوی)
    رُخ تو میری طرف سے پھیرے ہیں
    پھر بھی مدِّنظر وہ میرے ہیں

    جس طرف میں نگاہ کرتا ہوں
    کچھ اُجالے ہیں، کچھ اندھیرے ہیں

    آپ کی مُسکراہٹوں کے نثار
    پُھول چاروں طرف بکھیرے ہیں

    کروٹیں وقت کی انہیں کہیئے
    نہ ہیں شامیں نہ یہ سویرے ہیں

    میں ہوں اُن کے سلوک کا کشتہ
    جو منوّر حبیب میرے ہیں
     

اس صفحے کی تشہیر