خوبصورت نظمیں

ظفری نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جون 29, 2006

  1. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    خوشحال سے تُم بھی لگتے ہو
    یُوں افسُردہ تو ہم بھی نہیں
    پر جاننے والے جانتے ہیں
    خوش تُم بھی نہیں خوش ہم بھی نہیں
    تُم اپنی خودی کے پہرے میں
    اور دَمِ غرور میں جکڑے ہوئے
    ہم اپنی زعم کے نرغے میں
    اَنا ہاتھ ہمارے پکڑے ہوئے
    ایک مدّت سے غلطاں پیچاں
    ہم اپنے آپ سے اُلجھے ہوئے
    پچھتاوے کے انگاروں میں
    محصور تلاطم آج بھی ہو
    گو تُم نے کنارے ڈھونڈ لیئے
    طوفان سے سنبھلے ہم بھی نہیں
    کہنے کو سہارے ڈھونڈ لیئے
    خا موش سے ہم تم مہر بہ لب
    جگ بیت گئے ٹک بات کئے
    سنو ! کھیل ادھورا چھوڑتے ہیں
    بناء چال چلے ، بناء مات کیئے
    جو بھاگتے بھاگتے تھک جائیں
    وہ سائے رک بھی سکتے ہیں
    چلو توڑو قسم ۔۔۔۔ انکار کریں
    ہم دونوں جُھک بھی سکتے ہیں۔​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  2. دوست

    دوست محفلین

    مراسلے:
    12,952
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Fine
    بہت عمدہ
     
  3. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    اچھا نہیں لوگوں سے کہنا


    دونوں نے جب ، سیکھ لیا ہے

    خوش خوش اپنے حال میں رہنا

    اچھا نہیں لوگوں سے کہنا

    عہدِ وفا کس نے توڑا تھا

    کس نے کسے کیسے چھوڑا تھا​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  4. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    ہم ہی نادان تھے


    ہم ہی نادان تھے
    سوچا کرتے تھے جو
    کیسے ہو سکتا ہے
    ایک وعدہ شکن
    اپنی نادانی پر
    اب پشیمان نہ ہو
    بیتی رُت کے لئے
    وہ اکیلا بھی ہو
    اور پریشان نہ ہو​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    اُس شخص کو بھلا کر


    اُس شخص کو بُھلا کر

    اب زندگی ہماری

    پہلے سے بھی زیادہ

    دُشوار بن گئی ہے

    ہم دَر بنا رہے تھے

    دیوار بن گئی ہے​
     
    • زبردست زبردست × 1
  6. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question
    شکریہ دوست بھائی ۔۔۔ اب آپ بھی کچھ شئیر کریں یہاں ۔۔۔
     
  7. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    اُس گھڑی یوں لگا



    کپکپاتے لبوں سے جو اُس نے کہا

    اب یہ طے ہے کہ ہم کو بچھڑ جانا ہے

    اُس گھڑی یوں لگا

    یہ اَنا بھی کسی ایسے حاکم سے کم تو نہیں

    جس کے دربار میں بات جیسی بھی ہو

    اُس کی تائید میں ہاتھ اُٹھانا پڑے

    سر جھکانا پڑے​
     
  8. دوست

    دوست محفلین

    مراسلے:
    12,952
    جھنڈا:
    Germany
    موڈ:
    Fine
    محبت روٹھ جائے تو۔۔۔۔۔۔
    وفا جب مصلحت کی شال اوڑھے
    سرد رت کا روپ دھارے
    دل کے آنگن میں اترتی ہے
    تو پلکوں پہ ستاروں کی دھنک مسکانے لگتی ہے
    کبھی خوابوں کے ان ہیولوں سے بھی
    ان دیکھی سی، ان جانی سی خوشبو آنے لگتی ہے
    کسی کے سنگ بیتے ان گنت لمحوں کی زنجیریں
    اچانک ذہن میں جب گنگناتی ہیں
    نفس کے تار میں سناٹا ایک دم چیخ اٹھتا ہے
    تو یوں محسوس ہوتا ہے
    ہوائیں آکے سرگوشی سی کرتی ہیں
    محبت کا تمہیں ادراک اب تو ہوگیا ہوگا
    یہ جو بھی زخم دیتی ہے، کبھی سپنے نہیں دیتی
    محبت روٹھ جائے تو جینے نہیں دیتی۔۔
     
    • زبردست زبردست × 1
  9. قیصرانی

    قیصرانی لائبریرین

    مراسلے:
    45,875
    جھنڈا:
    Finland
    موڈ:
    Festive
    بہت خوب
    بےبی ہاتھی
     
  10. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    بھٹکتے بھٹکتے
    سارا دن گلیوں میں
    آوارگی کرتے کرتے
    جب شام کا سورج
    ڈھلنے لگا اور
    ٹھٹھرتی شام میں
    سیاہی مائل اندھیرا چھا گیا
    جب ہوا کی سرد لہر
    سارے جسم کی رگوں کو
    منجمد کرنے لگی
    تو آوارہ روح کی طرح
    در در بھٹکتی
    آخر تیری یاد
    میرے دل کے دروازے پر آن پہنچی
    رات کے سناٹے میں
    میں اور تیری یاد
    سرگوشیاں کرتے کرتے
    ایک دوسرے کی بانہوں میں بانہیں ڈالے
    تیرے انتظار کے دیئے جلائے
    یوں تمام رات جلتے رہے
    پگھلتے رہے
    تیرے انتظار کی
    گرہیں گنتے رہے ۔۔۔​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  11. پاکستانی

    پاکستانی محفلین

    مراسلے:
    4,529
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Brooding
    پرستش

    پرستش

    اے رب پاک
    شب کی تنہائیوں میں
    جب ترے بندے اٹھتے ہیں
    تیری عبات کے لئے
    تو اس وقت میری بھی آنکھ کھلتی ہے
    پر وہ تیری عبادت کے لئے نہیں
    وہ تو اس بت کی پرستش کے لئے
    جو میرے من میں چھپا ہے
    اے رب ذوالجلال
    یہ سب تجھے کیسے گوارا ہے
    کہ ترا کوئی شریک ہو
    میں تو ناتواں ہوں نا سمجھ ہوں
    میری تو ایک تجھ سے التجا ہے
    یا تو اس بت کو من سے نکال دے
    یا پھر اپنا خیال ہی نہ آنے دے
    کیونکہ اس ناسمجھ سے
    دو خداؤں کی پوجا نہیں ہو سکتی
     
    • زبردست زبردست × 1
  12. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question
    بہت ہی خوب پاکستانی اور شاکر بھائی ۔۔۔ :good:
     
  13. ظفری

    ظفری محفلین

    مراسلے:
    11,533
    جھنڈا:
    UnitedStates
    موڈ:
    Question

    کسی دن میرے گھر آؤ
    میرے کمرے میں بیٹھو
    اور ہر ایک شے کو دیکھو
    بُک شیلف میں پڑی ہوئی
    کتابیں اور ڈائریاں
    میز پر رکھی ہوئی تصویریں
    اور گُلدان میں مرجھائے ہوئے پُھول
    تمہیں بتائیں گے
    دراز میں موجود کیسٹ
    دیواروں پر لگے کارڈز
    تُم پر عیاں کریں گے
    کہ کیسے میرے ارمانوں نے تیرے خواب دیکھے تھے
    اگر ہو سکے تو کسی دن میرے گھر آؤ
    دیواروں پر کُھدے ہو حرف
    اور بستر پر نقشِ بے قراری تم پر عیاں کریں گی
    کہ میری آرزؤں نے کس طرح تمہاری آرزو کی ہے
    اور کیسے میرے خوابوں نے تمہارے خواب دیکھے ہیں
    اگر ہو سکے تو کسی دن میرے گھر آؤ ​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
    • زبردست زبردست × 1
  14. حجاب

    حجاب محفلین

    مراسلے:
    3,433
    وہی قصہ وہی ملنے کا بچھڑ جانے کا
    وہی انداز پرانا کسی افسانے کا
    وہی ملنا وہی وعدے وہی پیمانَ وفا
    عمر بھر ساتھ نبھانے کی وہ جھوٹی قسمیں
    خواب ہو جائیں گے یہ ایک دن ہمارے قصے
    اور پھر یونہی کسی روز کسی موڑ تلے
    تم یہ چاہو گی کوئی اور سہارا کرلوں
    میں بھی چاہوں گا چلو تم سے کنارہ کر لوں
    راستے ختم نہ ہوں گے مگر اُس موڑ تلے
    تم کسی اور طرف دور نکل جاؤ گی
    کئی یادیں کئی پیمان کئی صدمے دے کر
    خواب بن جاؤ گی پرچھائیں میں ڈھل جاؤ گی
    میں بھی رک جاؤں گا کچھ دیر کو کچھ سوچوں گا
    پھر کسی سمت کہیں دور نکل جاؤں گا
    پھر نئی صبح نئے لوگ نئے رستوں پر
    اُسی قصے اُسی افسانے کو دہرائیں گے
    ہاتھ میں ہاتھ دئیے ایک نئے جذبے سے
    عمر بھر ساتھ نبھانے کی قسم کھائیں گے
    منزلَ عشق کو پانے کی قسم کھائیں گے
    لیکن اس دشت میں مٹی کے کے سوا کچھ نہیں
    تجھ سے میری جان گلہ کچھ بھی نہیں
    سب کو ایک روز کسی موڑ پر بچھڑ جانا ہے
    سانس کا کیا ہے کسی روز اُکھڑ جانا ہے
    کیونکہ ہر شخص کی قسمت میں جدائی نکلی
    جسم بھی خاک ہوا روح پرائی نکلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
     
  15. امیداورمحبت

    امیداورمحبت محفلین

    مراسلے:
    3,057
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed


    “ایک اداس نطم“

    یہ حسین شام اپنی
    ابھی جس میں گھل رہی ہے
    ترے پیرہن کی خوشبو
    ابھی جس میں کھل رہے ہیں
    میرے خواب کے شگوفے
    ذرا دیر کا ہے منظر!


    ذرا دیر میں افق پہ
    کھلے گا کوئی ستارہ
    تری سمت دیکھ کر وہ
    کرے گا کوئی اشارہ
    ترے دل کو آئیگا پھر
    کسی یاد کا بلاوا
    کوئی قصہء جدائی
    کوئی کار نا مکمل
    کوئی خواب نا شگفتہ
    کوئی بات کہنے والی
    کسی اور آدمی سے !


    ہمیں چاہیے تھا ملنا
    کسی عہد مہرباں میں
    کسی خواب کے یقیں میں
    کسی اور آسماں میں
    کسی اور سر زمیں میں!


    (پروین شاکر-انکار)
     
  16. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    11,262
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بہت عمدہ امید یہ نظم سنی تو بہت دفعہ تھی آج پڑھ بھی لی اور کیا وجہ ہے کہ اداس نظم کے ساتھ واپسی ہوئی ہے تمہاری ۔ :)
     
  17. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    11,262
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    احمد ندیم قاسمی کی شہرہ آفاق نظم

    ریت سے بت نہ بنا اے میرے اچھے فنکار

    اک لمحہ کو ٹھہر میں تجھے پتھر لادوں
    میں تیرے سامنے انبار لگادوں لیکن
    کون سے رنگ کا پتھر تیرے کام آئے گا
    سرخ پتھر جسے دل کہتی ہے بے دل دنیا
    یا وہ پتھرائی ہوئی آنکھ کا نیل پتھر
    جس میں صدیوں کے تحیر کے پڑے ہوں ڈورے


    کیا تجھے روح کے پتھر کی ضرورت ہوگی
    جس پر حق بات بھی پتھر کی طرح گرتی ہے
    اک وہ پتھر ہے جو کہلاتا ہے تہذیبِ سفید
    اس کے مرمر میں سیاہ خوں جھلک جاتا ہے
    اک انصاف کا پتھر بھی تو ہوتا ہے مگر
    ہاتھ میں تیشہ زر ہو تو وہ ہاتھ آتا ہے


    جتنے معیار ہیں اس دور کے سب پتھر ہیں
    شعر بھی رقص بھی تصویر و غنا بھی پتھر
    میرے الہام تیرا ذہن ِ رسا بھی پتھر
    اس زمانے میں ہر فن کا نشان پتھر ہے
    ہاتھ پتھر ہیں تیرے میری زبان پتھر ہے


    ریت سے بت نہ بنا اے میرے اچھے فنکار
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. امیداورمحبت

    امیداورمحبت محفلین

    مراسلے:
    3,057
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    میری بھی پسندیدہ نظموں میں سے ایک ہے- - -
     
  19. امیداورمحبت

    امیداورمحبت محفلین

    مراسلے:
    3,057
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Relaxed
    “محبت کم نہیں ہوگی“

    مری آنکھیں سلامت ہیں
    مرا دل میرے سینے میں دھڑکتا ہے
    مجھے محسوس ہوتا ہے
    محبت کم نہیں ہوگی

    محبت ایک وعدہ ہے
    جو سچائی کی ان دیکھی کسی ساعت میں ہوتا ہے
    کسی راحت میں ہوتا ہے
    یہ وعدہ شاعری بن کر مرے جذبوں میں ڈھلتا ہے
    مجھے محسوس ہوتا ہے
    محبت کم نہیں ہوگی

    محبت ایک موسم ہے
    کہ جس میں خواب اگتے ہیں تو خوابوں کی ہری
    شاخیں
    گلابوں کو بلاتی ہیں
    انہیں خوشبو بناتی ہیں

    یہ خوشبو جب ہماری کھڑکیوں پر دستکیں دے کر
    گزرتی ہے
    مجھے محسوس ہوتا ہے
    محبت کم نہیں ہوگی

    (نوشی گیلانی-اداس ہونے کے دن نہیں ہیں)


     
  20. محب علوی

    محب علوی لائبریرین

    مراسلے:
    11,262
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    پچھلے سال کی ڈائری کا آخری ورق

    کوئی موسم ہو وصل و ہجر کا
    ہم یاد رکھتے ہیں
    تیری باتوں سے اس دل کو
    بہت آباد رکھتے ہیں
    کبھی دل کے صفحے پر
    تجھے تصویر کرتے ہیں
    کبھی پلکوں کی چھاؤں میں
    تجھے زنجیر کرتے ہیں
    کبھی خوابیدہ شاموں میں
    کبھی بارش کی راتوں میں
    کوئی موسم ہو وصل و ہجر کا
    ہم یاد رکھتے ہیں
    تیری باتوں سے اس دل کو
    بہت آباد رکھتے ہیں

    نوشی گیلانی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر