1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    رُویِ تو گر ز دُور بِبیند خطیبِ شهر
    دیگر حُضورِ قلب نباشد خطیب را

    (اَوحَدی مراغه‌ای)
    اگر خطیبِ شہر دُور سے تمہارا چہرہ دیکھ لے تو پھر خطیب میں مزید حُضورِ قلب نہیں رہے گا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
    • پر مزاح پر مزاح × 1
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ترسا گر آن دو زُلفِ چو زُنّار بِنْگَرَد
    درحال همچو عود بِسوزد صلیب را

    (اَوحَدی مراغه‌ای)

    اگر [کوئی] مسیحی، زُنّار جیسی وہ دو زُلفیں دیکھ لے تو وہ فوراً [اپنی] صلیب کو عُود کی مانند جلا ڈالے [گا]۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک «چِترالی» شاعر «میرزا محمد سِیَر» کی ایک فارسی بَیت:

    آبِ حَیوان در بغل دارم ولی لب‌تشنه‌ام
    در خیالِ یارم و در انتظارِ بوسه‌ام
    (میرزا محمد سِیَر)


    آبِ حیات میرے پہلو میں ہے، لیکن [اِس کے باوُجود] مَیں لب‌تَشنہ ہوں
    میں یار کے خیال میں ہوں اور [اُس کے] بوسے کے اِنتِظار میں ہوں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «کشمیریوں» کے مِلّی وطن «کشمیر» کی سِتائش میں «طالب آمُلی» کہتے ہیں کہ اُس دِیار کی توصیف سُن کر خُلدِ بریں کی بھی جبین پر خِجالت و شرم‌ساری کا پسینہ آ جاتا ہے:

    چو وصفِ گُلشنِ کشمیر بر زبان گُذَرَد
    جبینِ خُلد زند غوطه در خویِ تشویر
    (طالب آمُلی)


    جب «گُلشنِ کشمیر» کا وصف زبان پر گُذرتا ہے تو خُلد (بہشت) کی جبین شرم‌ساری کے پسینے میں غوطہ کھا جاتی ہے۔

    × «خوی» بہ معنیِ «عرَق و پسینہ» کا تلفُّظ ماوراءالنّہری فارسی میں «xay»، اور مُعاصِر ایرانی فارسی میں «xoy» ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    در چشمِ گریه‌خیزم لختِ جگر ز مِژگان
    از دُور می‌نماید منصور و دار هر دو
    (مُلّا محمد علی آگه کشمیری)


    میری چشمِ گِریہ‌خیز میں مِژگاں، [اور اُس] سے [آویزاں خُون‌آلود] لختِ جِگر دونوں دُور سے سُولی اور منصورِ [حلّاج] نظر آتے ہیں۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ای پرتوِ روحُ‌القُدُس تابان ز رُخسارِ شُما
    نورِ مسیحا در خمِ زُلفِ چو زُنّارِ شُما
    (اَوحَدی مراغه‌ای)


    اے کہ آپ کے رُخسار [پر] سے رُوحُ‌القُدُس کا پرتَو تاباں [ہوتا ہے]۔۔۔۔ [اور اے کہ] آپ کی زُنّار جیسی زُلف کے خَم میں نُورِ مسیح [مَوجود ہے]۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ماوراءالنّہری شاعر «کامِل خوارَزمی» (وفات: ۱۸۹۹ء) کی ایک تُرکی-فارسی غزل دیکھیے کہ جس کے مصرعے نِصفاً تُرکی میں ہیں، اور نِصفاً فارسی میں ہیں:

    ===============


    جمالینگ تا سِپِهرِ حُسن اوزه چون مِهرِ انوَر شُد
    بۉله آلمای مُقابل گُل‌رُخان از ذرّه کم‌تر شُد
    گُل و سُنبُل شمیمی بر مشامِ من نمی‌سازد
    یوز و زُلفینگ ایسی‌دین تا دماغِ من مُعطّر شُد
    یوزونگ نظّاره‌سی از سَیرِ گُل مُستَغنی‌ام دارد
    وِصالینگ بزمی‌ده چون ذَوقِ دیدارت مُیسّر شد
    نِهان بۉلدی مېن‌گا تا از نظر خورشیدِ رُخسارت
    کۉزوم‌غه اول قویاش هَجری‌ده روز و شب برابر شُد
    لبینگ یادی‌ده انداق خون‌فِشان گردید چشمِ من
    که قان یاش‌دین من‌گه دامن پُر از یاقوتِ احمر شُد
    اجل پَیکانی‌دین کس را خلاصی نیست چون عیسیٰ
    چیقیب گردون‌غه باشینگ‌‌غه اگر خورشید مِغفَر شُد
    اِلاهی کامِل اشعارین بِکُن مقبولِ سُلطانش
    فلاطون حِکمتی ینگلیغ که مقبولِ سِکندر شُد
    (کامِل خوارَزمی)


    ===============

    جب سے تمہارا جمال آسمانِ حُسن پر خورشیدِ انوَر کی مانند ہوا، گُل‌رُخان تمہارے مُقابِل نہ آ سکے اور ذرّے سے [بھی] کم‌تر ہو گئے۔

    جب سے تمہارے چہرے و زُلف کی بُو سے میری ناک مُعطّر ہوئی [ہے]، گُل و سُنبُل کی خوشبو میرے مشام کو سازگار نہیں آتی۔

    تمہارے وِصال کی بزم میں جب [سے]/چونکہ تمہارے دیدار کا مزہ مُیَسّر ہوا، تمہارے چہرے کا نظارہ مجھے گُل کی سَیر و تماشا سے بے‌نیاز رکھتا ہے۔

    جب سے میری نظر سے تمہارا خُورشیدِ رُخسار نِہاں ہوا، اُس خورشید کے ہجر میں میری چشم کے لیے روز و شب مساوی ہو گئے (یعنی روز بھی شب کی مانند تاریک ہو گیا)۔

    تمہارے لب کی یاد میں میری چشم اِس طرح [اور اِس قدر] خون‌فِشاں ہوئی کہ اشکِ خُونیں کے باعث میرا دامن یاقوتِ سُرخ سے پُر ہو گیا۔

    اگر [کوئی شخص مانندِ عیسیٰ] فلک کی جانب بالا چلا جائے اور خورشید اُس کے سر کے لیے مِغفَر بن جائے تب بھی تیرِ اجل سے کسی شخص کو عیسیٰ کی مانند نجات و خلاصی نہیں ہے۔ (مِغفَر = جنگ میں سر پر پہنے جانے والی آہنی کُلاہ)

    اے میرے خُدا! «کامِل» کے اشعار کو اُس کے سُلطان [کی بارگاہ میں] مقبول و پسندیدہ کر دو!۔۔۔ [ویسے ہی کہ] جیسے «افلاطون» کی حِکمت «اِسکَندر» [کے حُضور میں] مقبول و پسندیدہ ہو گئی تھی۔

    ===============

    Jamoling to sipehri husn uza chun mehri anvar shud,
    Bo'la olmoy muqobil gulruxon az zarra kamtar shud.
    Gulu sunbul shamimi bar mashomi man namisozad,
    Yuzu zulfing isidin to dimog'i man muattar shud.
    Yuzung nazzorasi az sayri gul mustag'niyam dorad,
    Visoling bazmida chun zavqi diydorat muyassar shud.
    Nihon bo'ldi mengo to az nazar xurshidi ruxsorat,
    Ko'zumg'a ul quyosh hajrida ro'zu shab barobar shud.
    Labing yodida andoq xunfishon gardid chashmi man,
    Ki qon yoshdin manga doman pur az yoquti ahmar shud.
    Ajal paykonidin kasro xalosi nest chun Iso,
    Chiqib gardung'a boshingg'a agar xurshid mig'far shud.
    Ilohi Komil ash'orin bikun maqbuli sultonash,
    Falotun hikmati yanglig'ki maqbuli Sikandar shud.
    (Komil Xorazmiy)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ماوراءالنّہری شاعر «کامِل خوارَزمی» کی ایک تُرکی-فارسی بَیت:

    لبینگ یادی‌ده انداق خون‌فِشان گردید چشمِ من
    که قان یاش‌دین من‌گه دامن پُر از یاقوتِ احمر شُد
    (کامِل خوارَزمی)


    تمہارے لب کی یاد میں میری چشم اِس طرح [اور اِس قدر] خون‌فِشاں ہوئی کہ اشکِ خُونیں کے باعث میرا دامن یاقوتِ سُرخ سے پُر ہو گیا۔

    Labing yodida andoq xunfishon gardid chashmi man,
    Ki qon yoshdin manga doman pur az yoquti ahmar shud.
    (Komil Xorazmiy)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    هم لفظتان انجیل‌خوان، هم لهجتان داودسان
    سِرِّ حوارِیّون نِهان در بحرِ گُفتار شما

    (اَوحَدی مراغه‌ای)

    [اے محبوب!] آپ کے لفظ بھی اِنجیل‌خوان ہیں، آپ کا لہجہ بھی مِثلِ داؤد ہے۔۔۔ [اور] آپ کی گُفتار کے بحر میں حوارِیانِ [مسیح] کا راز نِہاں ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    زان زُلف‌هایِ جان‌گُسِل تسبیحِ یوحنّا خجِل
    صد جاثَلیقِ زنده‌دل چون من خریدارِ شُما
    (اَوحَدی مراغه‌ای)


    [اے محبوب! آپ کی] اُن جاں‌گُسِل زُلفوں سے تسبیحِ «یوحنّا» خجِل ہے۔۔۔ صدہا زندہ‌دل مسیحی روحانی پیشوایان میری مانند آپ کے طالِب و مُشتاق ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «چِترال» کے ایک «چِترالی» شاعر «میرزا محمد سِیَر» کے نزدیک «مُلکِ چِترال» (سلام بر آن باد!) ہِند/ہِندوستان کا جُزء نہ تھا۔ وہ ایک فارسی بیت میں کہتے ہیں:

    آن خُداوندی که در هِند است این‌جا نیز هست
    از برایِ مالِ دُنیا سُویِ هِندوستان مرَو
    (میرزا محمد سِیَر)


    جو خُداوند ہِند میں ہے، وہ اِس جگہ بھی موجود ہے۔۔۔ [لہٰذا] مالِ دُنیا کی خاطِر ہِندوستان کی جانب مت جاؤ [اور یہیں «چِترال» میں رِزق تلاش کرو]!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک «چِترالی» شاعر «میرزا محمد سِیَر» کی ایک فارسی بَیت:

    علاجی نیست غیر از وصلِ جانان دردِ عاشق را
    مسیحا بر سرِ بالینِ این بیمار می‌گِرید
    (میرزا محمد سِیَر)


    عاشق کے درد کا وصلِ جاناں کے بجُز کوئی عِلاج نہیں ہے۔۔۔ اِس بیمار کے بِستَر کے سِرہانے مسیحا [بھی ناچاری کے باعث] گِریہ کرتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    بر نقشِ فنا چه عشق بازد
    آن کس که بِدید کِبریا را
    (مولانا جلال‌الدین رومی)


    جس شخص نے [ذاتِ] کِبریا کو دیکھ لیا ہو، وہ [کِسی] نقشِ فنا کے ساتھ کیا عِشق‌بازی کرے!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
    • زبردست زبردست × 1
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    مُصحَف آریم و به ساقی همه سَوگند خوریم
    که جُز از دست و کفَت مَی نسِتانیم همه
    (مولانا جلال‌الدین رومی)


    [آؤ،] ہم سب مُصحَف (قُرآن) لائیں اور [اُس پر] ساقی سے قسَم کھائیں کہ "ہم سب تمہارے دست و کف کے بجُز [کسی دیگر کے دست] سے شراب نہیں لیں [گے]!"
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    دُرّانی پادشاہ «تیمور شاه دُرّانی» کی ایک فارسی بَیت:

    عید است دِلم قرار نگْرِفت

    کان شوخ مرا کنار نگْرِفت
    (تیمور شاه دُرّانی)

    عید [کا روز] ہے، [لیکن] میرے دِل نے قرار نہ پایا۔۔۔ کیونکہ اُس شوخ نے مجھ کو آغوش میں نہ لِیا (گلے نہ لگایا)۔
     
    آخری تدوین: ‏اکتوبر 7, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    برنَدارم دل ز مِهرت دِل‌برا تا زنده‌ام
    ورچه آزادم، تُرا تا زنده‌ام من بنده‌ام
    (سَنایی غزنَوی)


    اے دِل‌بر! جب تک مَیں زِندہ ہوں مَیں تمہاری محبّت سے دل نہ اُٹھاؤں گا!۔۔۔ اور اگرچہ مَیں آزاد ہوں، [لیکن] مَیں جب تک زِندہ ہوں، تمہارا بَندہ (غُلام) ہوں!

    × مذکورۂ بالا مطلعِ غزل میں «زِنده» اور «بَنده» کا ہم‌قافیہ باندھا جانا مجھ کو ذرا عجیب محسوس ہوا ہے۔ :dont-know:
     
    آخری تدوین: ‏اکتوبر 7, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    885
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    حسان خان مجھے اس ترجمے میں ایک شبہ ہے.. کیا مندرجہ بالا ترجمہ صحیح ہے یا ایسے صحیح ہے :
    ہر کوئی دریا کو نہروں کے ذریعے جدا کرسکتا ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  18. انعام ندیم

    انعام ندیم محفلین

    مراسلے:
    11
    اریب آغا صاحب، اس نوازش کے لیے بےحد شکرگزار ہوں۔ جزاک اللہ۔ چند مزید اشعار کے فارسی متن کی تلاش ہے۔ امید ہے آپ آگے بھی مدد فرمائیں گے۔ مزید اشعار کی بابت علیحدہ پوسٹ لکھتا ہوں۔ ایک بار پھر شکریہ قبول کیجیے۔
     
    • دوستانہ دوستانہ × 1
  19. انعام ندیم

    انعام ندیم محفلین

    مراسلے:
    11
    حضرات، حسب سابق، موالانا رومی کے کلام سے ایک اور نمونے کے اصل فارسی متن کی تلاش ہے۔ ممکن ہو تو اردو ترجمہ بھی۔
    انگریزی ترجمہ یہ ہے:
    Everyone has eaten and fallen asleep.
    The house is empty.
    We walk out to the garden to let the apple meet the peach, to carry messages between rose and jasmine.


    Spring is Christ,
    Raising martyred plants from their shrouds.
    Their mouths open in gratitude, wanting to be kissed.
    The glow of the rose and the tulip means a lamp is inside.
    A leaf trembles. I tremble in the wind-beauty like silk from Turkestan.
    The censer fans into flame.
    This wind is the Holy Spirit.
    The trees are Mary.
    Watch how husband and wife play subtle games with their hands.
    Cloudy pearls from Aden are thrown across the lovers,
    as is the marriage custom.
    The scent of Joseph’s shirt comes to Jacob.
    A red carnelian of Yemeni laughter is heard
    by Muhammad in Mecca.
    We talk about this and that. There’s no rest except on these branching moments.
    – Jalaluddin Rumi (from The Essential Rumi, by Coleman Barks)
     
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    (مصرع)
    مرا گُفتی که "تَرکِ عشقِ من کُن"، تَرکِ جان کردم
    (محمد فضولی بغدادی)

    تم نے مجھ سے کہا کہ: "میرے عِشق کو تَرک کر دو!"۔۔۔ میں نے جان کو تَرک کر دیا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1

اس صفحے کی تشہیر