1. اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں فراخدلانہ تعاون پر احباب کا بے حد شکریہ نیز ہدف کی تکمیل پر مبارکباد۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    $500.00
    اعلان ختم کریں

فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    885
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    گنجِ آزادگی و کنجِ قناعت ملکیست
    که به شمشیر میسر نشود سلطان را
    (سعدی شیرازی)

    آزادمنشی و وارستگی کی دولت اور قناعت کا گوشہ و خلوت وہ قلمرو ہے جو پادشاہ کو شمشیر کے ذریعے میسر نہیں ہوتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    885
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    هر آدمی که کشته‌ی شمشیرِ عشق شد
    گو غم مخور که ملکِ ابد خونبهایِ اوست
    (سعدی شیرازی)

    وہ بندہ، جو عشق کے شمشیر کا مقتول ہوگیا، اسے کہہ دو کہ غم مت کرو کہ تیرا خون بہا ہمیشہ کی پادشاہی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    885
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    دانی حیاتِ کشته‌ی شمشیرِ عشق چیست
    سیبی گزیدن از رخِ چون بوستانِ دوست
    (سعدی شیرازی)

    تو جانتا ہے کہ عشق کے شمشیر کے مقتول کی حیات کیا ہے(کس چیز سے زندہ ہوتا ہے)؟ محبوب کے بوستان جیسے چہرے سے ایک سیب دانتوں سے کاٹنا!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. انعام ندیم

    انعام ندیم محفلین

    مراسلے:
    11
    • حضرات، مولانا رومی کے بعض اشعار کے فارسی متن اور اُردو ترجمے کی تلاش ہے۔ بدقسمتی سے میرے پاس فقط انگریزی ترجمہ ہے۔ وہی یہاں درج کرتا ہوں اگر کوئی صاحب مدد کرسکیں تو سپاس گزار رہوں گا:
    • Again, the violet bows to the lily.​
    • Again, the rose is tearing off her gown!​
    • The green ones have come from the other world,​
    • tipsy like the breeze up to some new foolishness.​
    • Again, near the top of the mountain​
    • the anemone’s sweet features appear.​
    • The hyacinth speaks formally to the jasmine,​
    • “Peace be with you.” “And peace to you, lad!​
    • Come walk with me in this meadow.”​
    • Again, there are sufis everywhere!​
    • The bud is shy, but the wind removes​
    • her veil suddenly, “My friend!”​
    • The Friend is here like water in the stream,​
    • like a lotus on the water.​
    • The narcissus winks at the wisteria,​
    • “Whenever you say.”​
    • And the clove to the willow, “You are the one​
    • I hope for.” The willow replies, “Consider​
    • these chambers of mine yours. Welcome!”​
    • The apple, “Orange, why the frown?”​
    • “So that those who mean harm​
    • will not see my beauty.”​
    • The ringdove comes asking, “Where,​
    • where is the Friend?”​
    • With one note the nightingale​
    • indicates the rose.​
    • Again, the season of Spring has come​
    • and a spring-source rises under everything,​
    • a moon sliding from the shadows.​
    • Many things must be left unsaid, because it’s late,​
    • but whatever conversation we haven’t had​
    • tonight, we’ll have tomorrow.​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  5. اریب آغا

    اریب آغا محفلین

    مراسلے:
    885
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    گنجور » مولوی » دیوان شمس » غزلیات » غزل شمارهٔ ۲۱۱
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 1
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    چگونه پیشِ وُجودِ تو نفْیِ خود نکنم
    که آفتابِ رُخَت محو کرد هستیِ من
    (سیِّد عمادالدین نسیمی)


    میں تمہارے وُجود کے پیش میں‌ کیسے خود کی نفی نہ کروں؟۔۔۔ کہ تمہارے چہرے کے خورشید نے میری ہستی کو محو و معدوم کر دیا [ہے]۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    از مذاقِ جانِ من ذوقِ دمِ عیسیٰ نرفت
    تا چو موسیٰ نُطقِ آن شیرین‌دهن بِشْنیده‌ام
    (سیِّد عمادالدین نسیمی)


    جب سے میں نے «موسیٰ» کی مانند اُس [یارِ] شیریں‌دہن کا نُطق و کلام سُنا ہے، میری جان کے کام و دہن سے دمِ «عیسیٰ» کا مزہ نہیں گیا [ہے]۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    دوستانِ ارجمند، میں نے «سیِّد عِمادالدین نسیمی» کی ایک زیبا فارسی غزل کو اُردو میں ترجُمہ کیا ہے۔ لُطفاً نِگاہ کیجیے۔

    ز بندِ زُلفِ تو جانِ مرا نجات مباد
    دلِ مرا نفَسی بی رُخَت حیات مباد


    [خُدا کرے کہ] تمہاری زُلف کی قید سے میری جان کو نجات نہ مِلے!۔۔۔ [خُدا کرے کہ] میرا دل ایک لمحہ [بھی] تمہارے چہرے کے بغیر زندہ نہ رہے!

    ===========

    ز عشقت آنکه ندارد حیاتِ لم یزَلی
    نصیبِ او به‌جُز از مُردن و ممات مباد


    جو شخص تمہارے عشق کے باعث حیاتِ جاوِدانی نہیں رکھتا، [خُدا کرے کہ] اُس کو مرگ و ممات کے بجُز کچھ نصیب نہ ہو!

    ===========

    دِلی که عابدِ بیتُ‌الحرامِ رُویِ تو نیست
    عِبادتش به‌جُز از سُویِ سومنات مباد


    جو دِل تمہارے چہرے کے بَیتُ‌الحرام کا عابد نہیں ہے، [خُدا کرے کہ] اُس کی عبادت سومنات کے بجُز کسی بھی جانب نہ ہو! (یعنی خُدا کرے کہ کہ وہ شخص مؤمن سے کافر ہو جائے اور اُس کا چہرہ بیت‌الحرام سے سومنات کی طرف پِھر جائے!)

    ===========


    دوایِ دردِ دلِ خود به درد اگر نکنی
    دِلا به دردِ دِلی چون رسی دوات مباد


    اے دل! اگر تم اپنے دردِ دل کی دوا درد سے نہیں کرتے تو [میری دُعا ہے کہ] جب تم کسی دردِ دل تک پہنچو تو تم کو دوا [نصیب] نہ ہو!

    ===========

    به‌جُز وصالِ تو ما را اگر مُرادی هست
    مُیَسّراتِ حُصولش ز مُمکِنات مباد


    اگر تمہارے وصال کے بجُز ہماری کوئی مُراد ہے تو [خُدا کرے کہ] کہ اُس کے حُصول کا مُیَسّر ہونا مُمکِنات میں سے نہ رہے!

    ===========

    چو روحِ ناطقه جانی کاسیرِ زُلفِ تو نیست
    همیشه راهِ خَلاصش ز شش جِهات مباد


    جو جان تمہاری زُلف کی اسیر نہیں ہے، [خُدا کرے کہ] کہ رُوحِ ناطِقہ کی مانند اُس کو کسی بھی وقت شش جِہات سے راہِ خَلاص نہ مِلے!

    ===========

    اگرچه زُلفِ سیاهِ تو لَیلةُ‌الاسراست
    مرا جُز این شبِ قدر و شبِ برات مباد


    اگرچہ تمہاری زُلفِ سیاہ شبِ اَسرا ہے۔۔۔ [لیکن خُدا کرے کہ] اِس کے بجُز میری کوئی شبِ قدر و شبِ برات نہ ہو!

    ===========

    صلات و قبلهٔ من هست اگر به‌جُز رُویت
    چو عابدِ وثَنم قبله و صلات مباد


    اگر میری صلات و قِبلہ تمہارے چہرے کے بجُز کوئی دیگر چیز ہے، تو [خُدا کرے کہ] کہ پرَستِش‌کُنندۂ بُت کی مانند مجھ کو قِبلہ و صلات [نصیب] نہ ہو! (یعنی خُدا کرے کہ میں کافر و بُت‌پرست ہو جاؤں!)

    ===========

    چو حُسنِ رُویِ تو درویش را زکات دِهد
    فقیرِ عشقِ تو محروم از آن زکات مباد


    جب تمہارے چہرے کا حُسن درویش کو زکات دے تو [خُدا کرے کہ] کہ تمہارے عشق کا فقیر و نادار اُس زکات سے محروم نہ ہو!

    ===========

    دِلی که جُز رُخ و زُلفِ تو باشدش شطرنج
    به هر طرف که نِهد رُخ به‌غیرِ مات مباد


    جس دِل کا شطرنج تمہارے [سفید] رُخ اور تمہاری [سیاہ] زُلف کے بجُز کوئی چیزِ دیگر ہو تو [خُدا کرے کہ] کہ وہ جس طرف بھی [مُہرۂ] رُخ رکھے، اُس کو مات کے بجُز [نصیب] نہ ہو! (یعنی خُدا کرے کہ وہ ہمیشہ مات ہی کھائے!)

    ===========

    اگر نه رِزقِ حُسنِ صورتِ تو می‌بینم
    نعیمِ جان و دلِ من ز طیِّبات مباد


    اگر میں تمہاری صُورت کے حُسن کا رِزق نہیں دیکھتا ہوں (یعنی اگر مجھے تمہاری صُورت کے حُسن کا رِزق مُیَسّر نہیں ہوتا ہے) تو [خُدا کرے کہ] کہ میری جان و دِل کی نعمتیں طیِّبات (پاکیزہ چیزوں) میں سے نہ ہوں!

    ===========

    ز عَقدِ زُلفِ تو شد مُشکِلِ نسیمی حل
    که کارِ زُلفِ تو جُز حلِّ مُشکِلات مباد


    تمہاری زُلف کی گِرہ سے «نسیمی» کی مُشکِل حل ہو گئی۔۔۔ [خُدا کرے کہ] حلِّ مُشکِلات کے بجُز تمہاری زُلف کا کوئی کار نہ ہو!

    (سیِّد عمادالدین نسیمی)
    مُتَرجِم: حسّان خان
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    صُوفیان اور قُدَماء «دیوانِ حافظِ شیرازی» کے لیے کس قدر احترام کے قائل تھے اور اُس کو کس قدر مُقدّس و مُعظّم سمجھتے تھے، اُس کا اندازہ اِن کلِمات سے لگایا جا سکتا ہے جو «امیر علی‌شیر نوایی» نے، کہ خود ایک نقشبَندی صُوفی تھے، اپنی تُرکی کتاب «نسایِم‌المحبّت» میں «شمس‌الدین محمّد حافظ شیرازی» کے دیوانِ اشعار کی سِتائش میں لِکھے ہیں:

    "سِلسلۂ خواجَگان میں سے ایک عزیز و بُزُرگوار نے کہا ہے کہ اگر [کوئی] شخص صوفی ہو تو کوئی بھی دیوان «دیوانِ حافظ» سے خوب‌تر نہیں ہے۔ اِس فقیر کو یہ معلوم ہوا ہے اور مشہور یہ ہے کہ «حضرتِ میر قاسم» قَدّسَ اللہُ سِرَّہُ اُن کے دیوان کو «قُرآنِ فارسی» کہتے تھے، کیونکہ وہ آیاتِ کلام‌اللہ کے معانی سے مملو اور اُن کے اَسرار و نِکات سے پُر ہے۔"

    (تُرکی سے ترجُمہ‌شُدہ‌)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    خانهٔ دل بود آبادم ز تقوا، وه، که ساخت
    عِشوه‌هایِ ساقی و سَیلِ قدح ویران مرا
    (امیر علی‌شیر نوایی)


    میرا خانۂ دِل تقوا سے آباد و معمور تھا۔۔۔ آہ! کہ ساقی کے ناز و عِشووں نے اور قدَحِ [شراب] کے سیلاب نے مجھ کو ویران و تباہ کر دیا۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    دِلی که مَحرمِ اَسرارِ غیب شد صائب
    نسیم را نفَسِ جبرئیل می‌داند
    (صائب تبریزی)


    اے «صائب»! جو دِل مَحرمِ اَسرارِ غَیب ہو گیا ہو، وہ بادِ نسیم کو نفَسِ جِبرئیل جانتا (سمجھتا) ہے۔
    × نفَس = سانس
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «یغْما» پاکستان کے شُمالی ہم‌سایہ مُلک «مشرقی تُرکستان» کے ایک خِطّے کا نام تھا جہاں کے خُوب‌رُویان و زیبایان فارسی شاعری میں مشہور تھے۔۔۔ «اَوحدی مراغه‌ای» کی ایک غزل کا مطلع دیکھیے کہ جس میں اُنہوں نے «دل‌برانِ یغمائی» کی معیّت میں «شہرِ دِمَشق» اور «دِیارِ مِصر» کو بھی خوب الفاظ کے ساتھ یاد کیا ہے:

    دِمَشقِ عشق شد این شهر و مِصرِ زیبایی
    ز حُسنِ طلعتِ این دل‌برانِ یغمایی
    (اَوحدی مراغه‌ای)


    اِن دِل‌برانِ یغمائی کے حُسنِ چہرہ سے یہ شہر دِمَشقِ عشق اور مِصرِ زیبائی ہو گیا [ہے]۔

    × «یغما» زبانِ فارسی میں‌ غارت و تاراج کو بھی کہتے ہیں، لہٰذا «دل‌برانِ یغمایی» سے اُن دِل‌بروں کی غارت‌گری و دِل‌سِتانی و دِل‌رُبائی کی جانب بھی اشارہ سمجھا جا سکتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    درِ سرایِ تو بیتُ‌المُقدّس است اِمروز
    رُخِ تو قِبلهٔ شوریدگانِ شَیدایی
    (اَوحَدی مراغه‌ای)


    [اے یار!] اِمروز تمہاری منزِل‌گاہ کا در «بیتُ‌المُقَدّس» ہے، [اور] تمہارا چہرہ آشُفتگانِ شَیدائی کا قِبلہ ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    آنچه هرگز مَحرمِ گوشَت نشد دادِ من است
    وانچه نگْذشته‌ست در خاطِر تُرا یادِ من است
    (میرزا داراب بیگ جُویا کشمیری)


    [اے یار!] جو چیز ہرگز تمہارے کان کی مَحرَم نہیں ہوئی [ہے]، وہ میری فریاد ہے۔۔۔۔ اور جو چیز [کبھی] تمہارے ذہن و حافِظے میں نہیں گُذری ہے، وہ میری یاد ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    چو رُوی باز کُنی نیستی کم از یوسف
    چو غَنج و ناز کُنی بهتر از زُلیخایی
    (اَوحَدی مراغه‌ای)


    جب تم چہرہ کھولو تو تم «یوسُف» سے کم نہیں ہو۔۔۔ اور جب تم عِشوہ و ناز کرو تو تم «زُلیخا» سے بہتر ہو۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سلامٌ عَلَیک، ای نسیمِ صبا
    به لُطف از کُجا می‌رسی؟ مرحَبا
    (اَوحَدی مراغه‌ای)


    سلامٌ عَلَیک، اے نسیمِ صبا!۔۔۔ [اِس] لُطف کے ساتھ تم کہاں سے آ رہی ہو؟ مرحَبا!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    اگر یابم از بُویِ زُلفش خبر
    نیابد وُجودم گزند از وبا
    (اَوحَدی مراغه‌ای)


    [اے نسیمِ صبا!] اگر میں اُس [یار] کی زُلف کی بُو کی [ذرا] خبر و اِطِّلاع پا لوں تو میرا وُجود وبا سے [کبھی] گزَند نہیں پائے گا!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    از من بجُز طپیدن کارِ دِگر نیاید
    کز دل شِکیب و طاقت بُرد آن نِگار هر دو

    (مُلّا محمد علی آگه کشمیری)

    میں تڑپنے کے بجُز کوئی کارِ دیگر نہیں کر پاتا کیونکہ وہ محبوبِ زیبا [میرے] دِل سے صبر و طاقت دونوں لے گیا۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «چِترال» کے ایک «چِترالی» شاعر «میرزا محمد سِیَر» کی ایک فارسی غزل کا مطلع:

    بِرو ای زُهدِ خُشک از دل که عشقِ ناب می‌آید
    وُضو باید، تیمُّم می‌رود چون آب می‌آید
    (میرزا محمد سِیَر)


    اے زُہدِ خُشک! [میرے] دل سے چلے جاؤ کیونکہ عشقِ خالِص آ رہا ہے۔۔۔ جب آب آتا ہے تو تیمُّم چلا جاتا ہے [اور] وُضو لازم [ہوتا] ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,462
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک «چِترالی» شاعر «میرزا محمد سِیَر» کی ایک فارسی بیت:

    نیست ما را حاجتِ غُسل [و] کفن بعد از فنا
    من شهیدِ مَوجِ تیغِ آب‌دارِ بوسه‌ام
    (میرزا محمد سِیَر)


    مجھ کو موت کے بعد غُسل و کفن کی حاجت نہیں ہے، [کیونکہ] میں بوسۂ [یار] کی تیغِ آب‌دار کی مَوج کا شہید ہوں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر