1. احباب کو اردو ویب کے سالانہ اخراجات کی مد میں تعاون کی دعوت دی جاتی ہے۔ مزید تفصیلات ملاحظہ فرمائیں!

    ہدف: $500
    $453.00
    اعلان ختم کریں

فارسی شاعری خوبصورت فارسی اشعار مع اردو ترجمہ

محمد وارث نے 'پسندیدہ کلام' کی ذیل میں اس موضوع کا آغاز کیا، ‏جنوری 7, 2008

  1. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «فخری هِرَوی» کی ایک فارسی-تُرکی بیت:

    گُفتَمَش: دارم ز هجرانِ تو بر دل بارِ غم
    گُفت: عاشق کۉنگلی‌گا اېرماس عجب گر بۉلسه بار

    (فخری هِرَوی)

    میں نے اُس سے کہا: "تمہارے ہجر کے باعث میرے دل پر بارِ غم ہے"
    اُس نے کہا: "اگر عاشق کے دل پر بار ہو تو [کوئی] عجب نہیں ہے"
    × بار = بوجھ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  2. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک «کشمیری» شاعر «مُحسِن فانی کشمیری» کی ایک بیت میں اُن کے مُلک و وطن «کشمیر» کا ذِکر:

    نازد به من ار گوشهٔ کشمیر عجب نیست
    آری شرَف ار هست مکان را ز مکین است

    (مُحسِن فانی کشمیری)

    اگر گوشۂ «کشمیر» مجھ پر ناز و فخر کرے تو عجب نہیں ہے۔۔۔ بےشک! اگر مکان کو [کوئی] شرَف ہے تو وہ مکین سے ہے۔
    (یعنی شاعر کی نظر میں «مکان» (یعنی جگہ) بِالذّات کوئی شرَف نہیں رکھتا، بلکہ اُس کو اُس مکان کا مکین اپنے شرَفِ ذاتی سے باشرَف بناتا ہے۔ لہٰذا شاعر اِس بیت میں کہہ رہے ہیں کہ «کشمیر» کو اگر شرَف حاصل ہے تو وہ میرے باعث ہے، اِس لیے «کشمیر» کو زیب دیتا ہے کہ وہ مجھ پر فخر و ناز کرے، اور اگر وہ ایسا کرے تو یہ کوئی تعجُّب‌انگیز چیز نہیں ہے۔ ذہن‌نشین رہے کہ فارسی میں لفظِ «مکان» خانہ و گھر کے معنی میں نہیں، بلکہ جگہ کے معنی میں استعمال ہوتا ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  3. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سَحَر خورشید لرزان بر سرِ کُویِ تو می‌آید
    دلِ آیینه را نازم که بر رُویِ تو می‌آید
    (نوّاب صمصام‌الدّوله خانِ دَوران خان)


    بہ وقتِ سحَر خورشید [بھی] لرزتے ہوئے تمہارے کُوچے کے نزد آتا ہے۔۔۔ آئینے کے دِل پر آفریں کہ وہ تمہارے چہرے کے مُقابِل آتا ہے! (یعنی آئینہ اپنی اِس جسارت و دِلیری پر تحسین کا مُستحق ہے کہ وہ تمہارے چہرے کے مُقابِل آ جاتا ہے۔)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  4. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    کردیم سَیرِ گُلشن تا ما و یار هر دو
    گشتند بُلبُل و گُل بی‌اعتبار هر دو
    (مُشتاق اصفهانی)


    جُوں ہی ہم اور یار دونوں نے گُلشن کی سَیر کی، بُلبُل اور گُل دونوں بے‌اہمیّت و بے‌قیمت ہو گئے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  5. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تا برگِرِفت آن مه بُرقع ز رُخ به شوخی
    گشته خجِل ز رُویش باغ و بهار هر دو
    (مُلّا محمد علی آگه کشمیری)


    جُوں ہی اُس ماہ نے شوخی کے ساتھ رُخ سے بُرقع بالا اُٹھایا، باغ و بہار دونوں اُس کے چہرے سے شرم‌زدہ و خجِل ہو گئے ہیں۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  6. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    چُنان گردیده‌ام خاک از خیالِ گُلشنِ رُویت
    ز خاکم گر گُلی سر زد ازو بُویِ تو می‌آید
    (مُلّا محمد علی آگه کشمیری)


    میں تمہارے چہرے کے گُلشن کے خیال سے اِس طرح خاک ہو گیا ہوں کہ اگر میری خاک سے کوئی گُل نِکلے تو اُس سے تمہاری خوشبو آتی ہے/آئے گی۔
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 10, 2019
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  7. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «مُحتَشم کاشانی» کے شُہرۂ آفاق عاشورائی مرثیے کا بندِ اوّل:

    باز این چه شورش است که در خلقِ عالَم است

    باز این چه نوحه و چه عزا و چه ماتم است
    باز این چه رَستَخیزِ عظیم است کز زمین
    بی نفْخِ صور خاسته تا عرشِ اعظم است
    این صُبحِ تِیره باز دمید از کُجا کزو
    کارِ جهان و خلقِ جهان جُمله درهم است
    گویا طُلوع می‌کند از مغرب آفتاب
    کاشوب در تمامیِ ذرّاتِ عالَم است
    گر خوانَمَش قیامتِ دُنیا بعید نیست
    این رَستَخیزِ عام که نامش مُحرّم است
    در بارگاهِ قُدس که جایِ ملال نیست
    سرهایِ قُدسیان همه بر زانویِ غم است
    جِنّ و ملَک بر آدَمیان نوحه می‌کنند
    گویا عزایِ اشرفِ اولادِ آدم است
    خورشیدِ آسمان و زمین نورِ مشرقَین
    پروَردهٔ کنارِ رسولِ خُدا حُسَین
    (مُحتَشَم کاشانی)

    دوبارہ مردُمِ عالَم میں یہ کیسی شورِش ہے؟۔۔۔ دوبارہ یہ کیسا نوحہ اور کیسی عزا اور کیسا سوگ ہے؟۔۔۔۔ دوبارہ یہ کیسی قیامتِ عُظمیٰ ہے کہ جو صُور کے نفْخے (پھونک) کے بغیر ہی زمین سے عرشِ اعظم تک برپا ہو گئی ہے؟۔۔۔ یہ صُبحِ تاریک دوبارہ کہاں سے طُلوع ہوئی کہ جس سے جہان و مردُمِ جہان کے جُملہ کارہا درہم و برہم ہیں؟۔۔۔۔ خورشید گویا سَمتِ مغرب سے طُلوع کر رہا ہے، کیونکہ تمام ذرّاتِ عالَم میں [اِس وقت] آشوب ہے۔۔۔۔ اگر میں اِس محشر و قیامتِ عام کو، کہ جس کا نام مُحرّم ہے، قیامتِ دُنیا پُکاروں تو بعید نہیں ہے۔۔۔۔ بارگاہِ قُدس میں، کہ جو جائے ملال نہیں ہے، [وہاں بھی اِس وقت] تمام قُدسیوں کے سر زانوئے غم پر ہیں۔۔۔ جِنّ و فرِشتگان آدمیوں (بنی آدم) پر نَوحہ کر رہے ہیں، [معلوم ہوتا ہے کہ] گویا باشَرف‌ترین اولادِ آدم کی سوگ‌واری ہے۔۔۔ [وہی کہ جو] خورشیدِ آسمان و زمین [اور] نُورِ مشرقَین [ہے]۔۔۔ [اور جو] پہلوئے رسولِ خُدا میں پرورِش‌یافتہ [اور] «حُسَین» [ہے]۔۔۔
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 12, 2019 6:13 شام
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  8. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «مُحتَشَم کاشانی» کے شُہرۂ آفاق عاشورائی مرثیے کا بندِ دوازدہُم:

    ای چرخ غافِلی که چه بیداد کرده‌ای
    وز کین چه‌ها در این سِتم‌آباد کرده‌ای
    در طعنت این بس است که بر عترتِ رسول
    بیداد خصم کرد و تو امداد کرده‌ای
    ای زادۂ زیاد نکرده‌ست هیچ گه
    نمرود این عمل که تو شدّاد کرده‌ای
    بهرِ خسی که بارِ درختِ شقاوت است
    در باغِ دین چه با گُل و شمشاد کرده‌ای
    کامِ یزید داده‌ای از کُشتنِ حُسین
    بِنْگر که را به قتلِ که دل‌شاد کرده‌ای
    با دُشمنانِ دین نتوان کرد آنچه تو
    با مُصطفیٰ و حیدر و اولاد کرده‌ای
    حلقی که سوده لعلِ لبِ خود نبی بر آن
    آزُرده‌اش به خنجرِ بیداد کرده‌ای
    ترسم تو را دمی که به محشر درآورند
    از آتشِ تو دُود ز محشر برآورند

    (مُحتَشَم کاشانی)

    اے فلک! تم غافِل ہو کہ تم نے کیسا سِتم کر دیا ہے۔۔۔۔ اور کینہ و عداوت کے سبب اِس سِتم‌آباد میں تم نے کیا کیا کر دیا ہے۔۔۔۔ تمہارے طعن و سرزنِش کے لیے یہ کافی ہے کہ عِترتِ رسول پر دُشمن نے سِتم کیا اور تم نے اِمداد کی ہے۔۔۔۔ اے اِبنِ زِیاد! نمرود نے [بھی] کسی وقت یہ عمل نہیں کیا ہے جو تم شُدّاد نے کیا ہے۔۔۔ اِک [اِیسے] خس کی خاطِر، کہ جو درختِ شقاوت کا ثمر ہے، تم نے باغِ دین میں گُل و شمشاد کے ساتھ کیا کِیا ہے!۔۔۔ تم نے حُسین کو قتل کر کے یزید کی آرزو برآوردہ کی ہے۔۔۔ نِگاہ کرو کہ تم نے کِس [شخص] کو کِس [شخص] کے قتل سے دِل‌شاد کیا ہے!۔۔۔ دُشمنانِ دین کے ساتھ [بھی] وہ نہیں کیا جا سکتا جو تم نے مُصطفیٰ و حَیدر و اولاد کے ساتھ کیا ہے۔۔۔۔ جس حَلق کو خود نبی کے لعلِ لب نے لمْس کیا تھا، تم نے اُس کو خنجرِ ظُلم و سِتم سے آزُردہ کر دیا ہے۔۔۔ مجھے خوف ہے کہ تم کو جس لمحہ محشر میں لائیں گے، تمہاری آتش سے محشر کو [جلا کر اور تباہ کر کے] دُھواں دُھواں کر دیں گے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  9. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک «کشمیری» شاعر کی «کُشتَگانِ کربلا»‌ کے سوگ میں ایک بیت:

    داد از بی‌مِهریِ چرخِ سِتم‌پروَر که کرد
    زهرِ غم در کاسهٔ لب‌تشنگانِ کربلا
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    چرخِ سِتم‌پروَر کی بے‌مِہری و نامِہربانی و جفاکاری کے باعث فریاد!۔۔۔ کہ اُس نے لب‌تشنَگانِ کربلا کے جام میں زہرِ غم ڈالا۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  10. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایک «کشمیری» شاعر «میرزا داراب بیگ جُویا کشمیری» نے ایک بیت میں اپنے مُلک و وطن «کشمیر» کی سِتائش کرتے ہوئے اُس سرزمین کو خُوب‌رُوؤں کا مسکن کہا ہے:

    خوب‌رو بِسیار از کشمیر می‌آید بُرون
    گُل بسی زین خاکِ دامن‌گیر می‌آید بُرون
    (میرزا داراب بیگ جویا کشمیری)


    دِیارِ «کشمیر» سے کثیر تعداد میں خُوب‌رُویان و زیبایان ظُہور میں آتے ہیں۔۔۔۔ اِس خاکِ دامن‌گیر سے فراواں گُل ظُہور میں آتے اور اُگتے ہیں۔۔۔۔

    × «خاکِ دامن‌گیر» سے مُراد وہ خاک ہے جو شخص کا 'دامن پکڑ لے' اور اُس کو کسی دیگر جگہ جانے یا سفر کرنے نہ دے، اور اُسی جگہ اِقامت کرنے پر مجبور کر دے۔۔۔ شاعر نے خاکِ کشمیر کو «خاکِ دامن‌گیر» اُس کی سِتائش کرنے کی غرَض سے کہا ہے۔۔۔ یعنی شاعر کے نزدیک مُلکِ «کشمیر» کی خاکِ پاک ایسی دل‌‌رُبا ہے کہ جو شخص «کشمیر» میں ہو، اُس کو کسی بھی دیگر خِطّے کی جانب عازِم سفر ہونے کا دل نہیں کرتا۔

    ============

    مجھے یہ کہنے میں ہرگز کوئی عار نہیں کہ میں مِلّتِ «کشمیری» اور اُن کے مِلّی وطن «کشمیر» سے محبّت کرتا ہوں۔۔۔ [​IMG] «کشمیریوں» اور «کشمیر» پر سلام ہو!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  11. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    لب‌هایِ تو خِضر اگر بِدیدی
    گُفتی لبِ چشمهٔ حیات است
    (سعدی شیرازی)


    اگر «خِضر» تمہارے لب دیکھتا تو کہتا: "یہ چشمۂ [آبِ] حیات کا کنارہ ہے"۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 3
  12. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تیموری پادشاہ «ظهیرالدین محمد بابُر» کے پِسر «کامران میرزا» کی ایک فارسی بیت:

    چون چهره بِیارایی رُخساره برافروزی
    خود گُوی کُجا مانَد آیینِ شِکیبایی
    (کامران میرزا)


    [اے یار!] جب تم چہرہ آراستہ کرو [گے اور] رُخسار کو رَوشن و فُروزاں کرو [گے]، تو خود بتاؤ کہ صبر کی رسم و روِش کہاں باقی رہے [گی]؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  13. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    «کشمیری» شاعر «مُحسِن فانی کشمیری» کی ایک مُتَصوِّفانہ رُباعی:

    (رباعی)
    گه ارض و سمایِ عالَمِ لاهوتیم
    گه آب و هوایِ گُلشنِ ناسوتیم
    گه در جبَروتیم و گهی در ملَکوت
    گه یونس و گاه بحر گاهی حوتیم

    (مُحسِن فانی کشمیری)

    گاہے ہم عالَمِ لاہُوت کے ارض و سماء ہیں۔۔۔ گاہے ہم گُلشنِ ناسُوت کی آب و ہوا ہیں۔۔۔ گاہے ہم عالَمِ جبَروت میں ہیں، اور گاہے عالَمِ ملَکوت میں۔۔۔۔ ہم گاہے یونُس ہیں، گاہے بحر ہیں، اور گاہے مچھلی۔۔۔
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 12, 2019 6:12 شام
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  14. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    سُلطانِ عُثمانی «سُلطان سُلیمان قانونی» کی ایک فارسی بیت:

    هر کسی جُوید مُحِبّی بهرِ دردِ خود دوا
    گُم مبادا از دلِ من دردِ بی‌دارُویِ دوست
    (سُلطان سُلیمان قانونی 'مُحِبّی')


    اے «مُحِبّی!» ہر شخص اپنے درد کے لیے دوا تلاش کرتا ہے۔۔۔ [جبکہ میری آرزو و دُعا یہ ہے کہ] میرے دِل سے محبوب کا دردِ بے‌دوا [کبھی بھی] گُم نہ ہو!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  15. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    حاکمِ ماوراءالنّہر «عُبیدالله خان اُزبَک» کی دو فارسی ابیات:

    بُتان شُما شهِ حُسنید و ما گدایِ شُما
    ز دستِ ما چه برآید بجُز دُعایِ شما
    به خاکِ پایِ شُما چهره سودَنم هوَس است
    جُز آن مُراد ندارم به خاکِ پایِ شُما

    (عُبیدالله خان اُزبَک)

    اے خُوب‌رُویان و زیبایان! آپ شاہِ حُسن ہیں، اور ہم آپ کے گدا ہیں۔۔۔ ہم آپ کے لیے دُعا کرنے کے بجُز کس کارِ دیگر کی توانائی و استطاعت رکھتے ہیں؟ (یعنی ہم گدایان آپ پادشاہانِ حُسن کے لیے فقط دُعا ہی کر سکتے ہیں)۔۔۔ مجھے آپ کی خاکِ پا پر چہرہ مَلنے کی آرزو ہے۔۔۔ میں اُس کے بجُز کوئی مُراد [و آرزو] نہیں رکھتا، آپ کی خاکِ پا کی قسم!

    × مصرعِ چہارُم میں «ندارم» کی بجائے «نداریم» بھی نظر آیا ہے، لیکن اُس صورت میں مصرعے کا وزن بِگڑ جاتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  16. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    جس «کشمیری» شخص کا مُلک و وطن «کشمیر» ہو، اور جس نے اپنی زندگی بہشتِ «کشمیر» میں گُذار دی ہو، طبیعی ہے کہ اُس کو «هِند» کی آب و ہوا (بلکہ کسی بھی جائے دیگر کی آب و ہوا) ہرگز پسند نہ آئے گی اور وہ جب تک «هِند» میں رہے گا، وہ دل‌گرفتہ و ناراحت رہ کر ہمیشہ اپنے وطن «کشمیر» ہی کی حسرت کرتا رہے گا۔۔۔ «کشمیری» شاعر «مُلّا طاهر غنی کشمیری» کی ایک رُباعی دیکھیے جس میں وہ دِیارِ «هِند» اور اُس کی غیرمُعتَدِل و گرم آب و ہوا کی نکوہِش (مذمّت) کرتے ہوئے، اور اپنے وطن «کشمیر» کی حسرت میں تحسُّر کھاتے ہوئے کہتے ہیں:

    کرده‌ست هوایِ هِند دل‌گیر مرا
    ای بخت رسان به باغِ کشمیر مرا
    گشتم ز حرارتِ غریبی بی‌تاب
    از صُبحِ وطن بِدِه تباشیر مرا
    (غنی کشمیری)


    «ہِند» کی آب و ہوا نے مجھ کو دِل‌گیر و ملول کر دیا ہے۔۔۔ اے بخت! مجھ کو باغِ «کشمیر» میں پہنچا دو۔۔۔ میں غریب‌الوطنی کی حرارت سے بے تاب ہو گیا۔۔۔ مجھ کو صُبحِ وطن کی بشارتیں دو۔

    =============

    اِس طرح، اُنہوں نے ایک بیت میں بھی «هِندوستان» کی گرمی کو ناپسندیدگی سے یاد کیا ہے:

    گردد اگر بِرِشته ز گرمی عجب مدار
    هر کس که سایه‌پروَرِ هِندوستان بُوَد
    (غنی کشمیری)


    جو بھی شخص «ہِندوستان» کے سائے میں پرورِش پاتا ہو، وہ اگر گرمی کے باعث بُھنا ہُوا ہو جائے تو عجب مت شُمار کرو!

    =============

    «غنی کشمیری» کی بیشتر زندگی «کشمیر» ہی میں گُذری تھی، لہٰذا احتمال ہے کہ مندرجۂ بالا اشعار اُن کے قلم سے اُس وقت نِکلے ہوں گے جب وہ کِسی کار کی غرَض سے «کشمیر» سے بیرون آ کر «هِند» کی مُسافرت کر رہے ہوں گے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  17. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ایرانی تقویم میں ماہِ «فروَردِین» سال کا ماہِ اوّلین ہوتا ہے، اور یہی وہ ماہ ہے کہ جس میں «نَوروز» کا جشن منایا جاتا ہے اور اُسی ماہ کو فصلِ بہار کا آغاز سمجھا جاتا ہے۔۔۔ سرزمینِ «کشمیر» میں جشنِ نوروز اسلامی دَور کی اِبتداء سے منایا جا رہا ہے، اور ہنوز اُس دِیار میں ہر سال جشنِ نَوروز منایا جاتا ہے۔ بُلبُلِ کشمیر «غنی کشمیری» کی ایک رُباعی دیکھیے جو اُنہوں نے جشنِ نَوروز کی تجلیل کرتے ہوئے اور آمدِ نَوبہار کا شادمانی کے ساتھ استقبال کرتے ہوئے کہی تھی:

    برخیز غنی هوایِ فروَردین است
    مَی نوش که وقتِ باده خوردن این است
    فصلی‌ست که آشیانِ مُرغانِ چمن
    از کثرتِ گُل چون سبَدِ گُل‌چین است

    (غنی کشمیری)

    اُٹھو، اے «غنی»، [کہ اِس وقت] ماہِ فروَردین کی آب و ہوا ہے۔۔۔۔ شراب نوش کرو کیونکہ بادہ پِینے کا وقت یہ ہے۔۔۔۔ یہ وہ موسِم ہے کہ [جس میں] کثرتِ گُل کے باعث پرندگانِ چمن کا آشیانہ، گُل چُننے والے شخص کے سبَد (ٹوکری) جیسا [ہو گیا] ہے۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  18. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    تیموری پادشاہ «ظهیرالدین محمد بابُر» کے پِسر «کامران میرزا» کی ایک فارسی بیت:

    خُو گرفتیم به درد و غمِ عشقت بِفِرِست
    دم به دم درد و غمی بر دلِ غم‌پروَرِ ما
    (کامران میرزا)


    [اے یار!] ہم کو تمہارے عشق کے درد و غم کی عادت ہو گئی [ہے]۔۔۔۔ [لہٰذا] لمحہ بہ لمحہ ہمارے دلِ غم‌پروَر پر کوئی درد و غم بھیجو!
     
    آخری تدوین: ‏ستمبر 14, 2019 7:25 شام
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  19. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    صُبح از نسیمِ کُویِ تو هر مُوی بر تنم
    همچون دلِ غریب ز بُویِ وطن شِکُفت

    (طالب آمُلی)

    بہ وقتِ صُبح تمہارے کُوچے کی بادِ نسیم سے میرے تن پر ہر بال ویسے ہی کِھل اُٹھا جیسے شخصِ غریب‌الوطن کا دِل وطن کی بُو سے کِھل اُٹھتا ہے۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2
  20. حسان خان

    حسان خان لائبریرین

    مراسلے:
    17,368
    جھنڈا:
    Pakistan
    موڈ:
    Bookworm
    ز دهان و رُخ و زُلفِ تو همیشه خجِل‌اند
    غُنچه و لاله و سُنبُل به گُلستان هر سه
    (شیخ یعقوب صَرفی کشمیری)


    تمہارے دہن و رُخ و زُلف سے گُلستان میں غُنچہ و لالہ و سُنبُل تینوں ہمیشہ شرم‌سار ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ × 2

اس صفحے کی تشہیر